All Activity

This stream auto-updates     

  1. Last week
  2. Plz admen sir mujy free he faad sycsiotn dykny dijy aor ak bat is form fy my qarib1 1/5sal sy visit kar raha hoo lykin tariqa nahi janta ta so ab ok ho gya lykin masla ab paiso ka ay Hy to my wifi bi free use kar raha hoo so plz
  3. Earlier
  4. یہ سہولت صرف 31 دسمبر 2017 سے 01 جنوری 2018 تک کے لیئے ہے۔اور آج آخری دن ہے۔
  5. Dear admin I am new member was not aware of discounted offer I want this discount till 10 january 2018 can you allow me
  6. بدلہ از سٹوری میکر

    بہت اعلئ ایس ایم بھائ کمال کا لکھتے ہو آپ ابھی میں نے مکمل سٹوری نھیں پڑھی لیکن جتنی پڑھی ھے بھت خوب لکھا ھے آپ نے
  7. تمام وی آئی پی ممبرشپ پر ٪50 پرسنٹ تک ڈسکاؤنٹ وی آئی پی سلور پرو 3000 کی بجائے صرف 2000 روپے میں حاصل کریں۔ وی آئی پی گولڈ پرو 5000 کی بجائے صرف 3000 روپے میں حاصل کریں۔ وی آئی پی ماسٹر پرو 7000 کی بجائے صرف 4000 روپے میں حاصل کریں۔ نئے سال 2018 کی آمد کے موقعہ پر اردو فن کلب آپ سب ممبرز کے لیئے ممبرشپ کے خصوصی پیکج متعارف کروا رہا ہے۔جو آپ کو 40 سے 50 پرسنٹ تک کی ڈسکاؤنٹ آفر کی سہولت دیتا ہے۔یہ آفر فورم پر موجود وی آئی پی سلور پرو گولڈ پرو اور ماسٹر پرو تینوں پر موجود ہے۔ نئے ممبران کے ساتھ ساتھ جن ممبران کی ممبرشپ ایکسپائر ہو چکی ہے۔وہ بھی اس آفر سے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔اور ڈسکاؤنٹ ریٹ پر ممبرشپ حاصل کر سکتے ہیں۔ جن ممبران کی ممبرشپ ایکٹویٹ ہے۔ اگر وہ بھی چاہیں۔تو ان پیکج کو خرید کر اپنی ممبرشپ کی ایکسپائری ڈیٹ میں اضافہ کروا سکتے ہیں۔ یہ آفر ایک سال کی ممبرشپ کے دورانیہ سے پانچ سال تک کے کسی بھی پیکج پر ہے۔یہ سہولت 31 دسمبر 2017 سے 01 جنوری 2018 تک کی کمپلیٹ ٹرانزیکشن محدود ہے۔اس کے بعد ممبرشپ اپنے پرانی قیمت پر دستیاب ہو گی۔ اس آفر ڈسکاؤنٹ پر خریداری کرنے کے لیئے یہ کوپن کوڈ استعمال کریں۔ وی آئی پی ممبرشپ سیکشن وزٹ کے لیئے یہاں کلک کریں۔ HNY2018 کوپن کوڈ کی معلومات یا اسے استعمال کا طریقہ جاننے کے لیئے یہ تھریڈ وزٹ کریں۔ نوٹ ! کوپن کوڈ ہر ممبرصرف ایک مرتبہ استعمال کر سکتا ہے۔ مزید معلومات کے لیئے ایڈمنسٹریٹر سے رابطہ کریں۔ پے منٹ ان طریقوں سے کی جا سکتی ہے جاز کیش موبائل اکاؤنٹ۔۔۔۔۔ٹیلی نار ایزی پے موبائل اکاؤنٹ۔۔۔۔۔اے ٹی ایم اور بنک اکاؤنٹ ۔۔۔۔۔پے پال آن لائن اور ڈیبٹ / کریڈٹ کارڈ
  8. update 38 karan hamari bat sunne ko tayyar tha par usne chaku apne hanto pe pir liya sneha ko dar to lag raha tha par yahi karne se karan ko ham par thoda vishwas aa gaya sneha muze dek rahi thi ki main bat karna suru kar du suruvat muze hi karni thi Avi- to karan tume hamare shadi ki bat pata chali meri bat se karan ko guass aa gaya Avi- aur ab hame ek sath hotel ke room me dek liya Avi-to tume lag raha hai ham Avi- ham sirf towel ne the to tume laga Avi- deko main suru se batata hu karan- jo bhi bolna wo soch samaj kar bolna Avi- jo kuch ho raha hai usne teri sabse jada galti hai karan- meri galti , shadi tumari fix huyi meri girlfriend ke sath aur galti meri hai Avi- us raat ager tu sneha ki madat karta to ye din nahi dekna padta sneha- us raat tum muze akela chhod gaye iske liye muze tum pe guass hona chaiye lekin guass tum ho karan- hotel ke room me main nahi tum pakdi gayi ho sneha-pir ek bar ye sab kaha to hamara rsta khatam samjo karan- rista to tum Avi ke sath jod rahi ho Avi- tum dono zagda mat karo , pahale meri bat suno karan- tum bhi kohi zuti kahani bana lo Avi- main to sach bataunga , usko sach ya zut samajna tume hai mere muh se sach word sunkar sneha thodi dar gayi ager us raat ka sach bataya diya to Avi- to karan ye jo kuch ho raha hai , hamari shadi fix huyi uski vaja tum ho karan- main Avi- us raat ke bad tum ek bar bhi sneha se pucha nahi ki wo kaisi hai karan-muze manaa tumne kiya tha Avi- main kahu kuhe me jump maaro to maar doge karan ne is pe kuch nahi kaha Avi- jane do us sab ko , aaj ki bat karta hu main Avi- tumko kisne bataya ki ham hotel ke is room me hai karan- sonali ne Avi-muze laga hi tha karan- kya laga tha tume Avi- sonali ko ek mis understanding hai jiske vajase usne tume yaha bhej diya karan- kaisi misunderstaing Avi-wo badme bataunga , wo deko tumare right side me kya dik raha hai karan- sabji giri huyi hai table aur zameen lar Avi- aur baki ki sabji ham dono ke kapdo ke upar giri sneha- kapde kharab ho gaye to main ne done ke liye rake Avi- kapde sukne tak ham towel me the sneha - tumne ham pe shak kiya karan- achi kahani banayi hai Avi- ham tumare samne hi the , ab batav ham kab ye decide kiya ki tume ye kahani batayenge karan soch me pad gaya Avi-ham is hotel.me is liye aaye ki ye jo hamari shadi fix huyi hai usko cancel kaise kare , sneha- bato bato me hamara zagda ho gaya , main bol rahi thi ki isme galti Avi ki hai aur Avi bol raha tha ki galti meri hai , sneha-aur bato bato me Avi ne muze thappad maar diya to main Avi ke upar tut padi jis se sabji ham dono ke upar gir gayi Avi- to ye hai is hotel ke room ki kahani , wo na meri galti hai aur na sneha ki is sab me galti teri hai , darpok fattu karan ko hamari bate sachi lagne lagi sneha- mera pyar pe tumne shak kiya pir bhi main tumare samne hu tumse bat kar rahi, guass to muze hona chaiye tha karan- pir ye shadi , Avi- gadde ek bar muzse puch leta ki shadi kaisi aur kyu fix huyi karan- kaise huyi Avi- tere galti ki vajse karan- tab se meri galti meru galti kah rahe ho kya hai meri galti Avi- tu ham dono ko apne room.me chhod kar niche chala gaya aur ek bar bhi dekne nahi aaya , Avi- nahi aaya dekne uska gum.nahi hai par tum ne apne papa aur mousi ko upar aane se roka nahi karan- wo main karan- to kya hua wo upar aa gaye sneha- main batati hu , tumare papa ka kala chehara karan- snehaaa smeha- chilane se kuch nahi honga ,tumare papa aur tumari mousi ke bich affirs chalu hai , dono us raat upar aaker sex karne lage the karan sneha ko maarne ko khada hua main ne karan ko pakad liya Avi- chalo sneha ham chalte hai , karan ko sach sunkar guass aayenga aur ham be vaja mare jayenge karan- kya saboot hai is bat ka sneha- Avi ki chhodo , kya tume lagta hai main tumare papa pe itna bada ilajam aise laga dungi , kya tume lagta main aisi bat zut bolungi karan- par Avi- karan yahi sach hai , karan- tik hai maan leta hu unka affiars hai to iska tumare shadi se kaisa samband Avi-main aur sneha parde ke piche chup kar ye sab dek rahe the karan- to Avi- to uske bad tumare papa ne dood me neend ki goli daal di aur wo dood galti se sneha ne pi liya sex ki jaga neend ki goli bolne se sneha relax ho gayi karan- wi kyu Avi- tumare mousa ko sulana chahte the par is se sneha so gayi sneha- aur Avi muze apne ghar le aaya karan- pir Avi- pir kya subha jab sneha ki ankhion khuli to neend ki goli ka side effect hua , sneha ka sar fatne laga , usko chakker aane laga , sneha se chala hi nahi ja raha tha , sneha ko itna pasina aaya ki lagta sneha naha rahi hai sneha- meri halat dekte to tum dar jate (meri choot ki halat dekte to tum suicide kar lete ,) Avi- main sneha ko docter ke pass le gaya to docter ne kaha sneha ko aaram karne do , aise halat me sneha ko jane kaise deta uske ghar to dusare din bhi sneha mere yaha ruki karan- to tumne zut kyu kaha ki sneha ko bhej diya ghar pe sneha- main ne aisa bolne ko kaha tha , muze tum pe bahot guass aa raha tha , mere kahne pe Avi ne tumse zut kaha , sneha- main ne tumse break up karne ka faisala kiya tha sneha- par Avi- par ek gadbad ho gayi aur tu bach gaya karan- kaisi gadbad Avi-docter ne goliya to di lekin raat me pir se sneha ko side effect hone laga , ek to tumare sath adura sex jis se heat bahot jada badh gayi thi sneha ke badan me karan- to kya kiya tumne karan dar gaya ki kahi kuch ho to nahi gaya sneha bhi sochne lagi ki ab main kya bataunga Avi- itni raat me main sneha ko docter ke pass kaise le jata , to sneha thande pani se 4 bar nahayi har gante me , freeze me raki huyi sari ice creaam kha li aur kapde nikaal kar so gayi , muze ye sab dusare din pata chala sneha- main ne Avi ko jagana sahi nahi samaja Avi- raat bhar sneha ko neend nahi aayi aur jab neend aayi to bahot gahri neend aayi karan- pir kya hua Avi- subha main to jogging karne laga sneha- Avi ke jate uske maa aur papa aa gaye sneha- aur muze bina kapdo ke Avi ke bedroom.me dek liya sneha- unko laga ki Avi aur main ne raat bhar sex kiya party ki , sneha- us din cinema hall me sonali ko tumne muze Avi ko girlfriend bataya aur uske bad hame komal mili thi , aur komal ko Avi ne us wakt muze uski dost bataya sneha- komal ko laga main Avi ki girlfeiend hu sneha- Avi ke papa guasse me the , tumare vajse Avi pe mushibat aa rahi thi sneha- Avi ke maa ne muze himmat di aur mere ghar ka number liya , us wakt main dar gayi thi sneha- muze kya pata tha ki Avi ki maa ham dono ki shadi karvane vali hai sneha- jab mere papa aur maa aayi to main dar gayi laga ki ab sab khatam ho gaya hai sneha- par mere papa aur Avi ke papa bachpan ke dost nikale sneha- sara guass khatam ho gaya sneha-aur jaise Avi ki maa ne meri aur Avi ki shadi bat ki to mere papa bahot khush ho gaye , unke best friend ke bete se meri shadi ye sunte wo naachne lage aur shadi fix ki sneha- main to hang ho gayi sneha- kuch samaj nahi aaya ki kya bolu sneha- ek to main Avi ke bedroom me bina kapdo ki mili ager ye bat mere maa aur papa ko pata chal jayengi ager main ne muh khola to sneha- muze laga Avi aaker sab tik kar denga sneha- par Avi jab vapas aaya sneha- usko jab meri aur uske shadi ki bat pata chali to karan+ to sneha- to Avi behosh ho gaya aur direct sham me ankhion khuli Avi- aur tab tak der ho gayi thi sneha-Avi muzpe guass tha ki main ne sabko manaa kyu nahi kiya Avi- sneha muzpe guass thi ki main uskoo akela chhod kar kyu gaya sur badme sab tik kyu nahi kiya sneha- ye hai puri kahani Avi-ham yaha shadi thodne ka soch rahe hai aur tum apne dost pe shak kiya sneha- apne pyar pe shak kiya sneha- ab to muze hamare bareme pir se sochna honga karan sneha- muze laga is mushkil gaddi me kohi samaje ya na samaje par tum muze samajoge sneha- par tum bhi sonali ki bato me aaker sneha- muze apni bat rakne ka mokka bhi nahi diya sneha- Avi ko hi galat maan liya tumne Avi- sneha ab sach karan ke samne hai faisala usko karna hai karan ke hant se chaku niche gir gaya
  9. update 37 karan aur nere bich hatta payi suru ho gayi ham dono khusti khelne lage sneha to hang ho gayi usko samaj hi nahi aa raha tha ye ho kya raha hai karan yaha aaya kaise khud ka huliya dek kar sneha samaj gayi ki karan kya soch raha honga karan- kutte kamine main tera khoon pi jaunga Avi- karan chaku lag jayenga karan- tera khoon se lal na kiya chaku to mera naam karan nahi karan pir se muz pe hamla karne laga main chaku ke war se khud ko bacha raha tha sneha-karan ye kya kar rahe ho karan- chup sali bewafa Avi ke bad teri bari hai , karan ke muh se galiya sunkar sneha hakki bakki rah gayi sneha-karan ye kya bol rahe ho karan- chup saali randi , tuze aaj rula rula ke maarunga , tuze apni randi na banaya to naam badal dunga sneha ke ankhion se assu nikal lage muze pata tha ki karan aisa kyu bol raha hai karan ko pata chal gaya honga mere aur sneha ke shadi ke bareme tabi wo itna guqss hai par karan ko bataya kisne ki ham yaha hai hamari halat dek kar karan samaj raha honga ki hamne sex kiya hai main karan ki jaga hota to yahi karta karan ki galti nahi hai pyar aur dosti me ek sath dhokka milte kuch sochne samajne ki takat nahi rahti main khud ko karan ke war se bacha raha tha mera towel bhi nikal raha tha sneha roye ja rahi thi karan ke upar khoon ka bhoot sawar ho gaya tha sneha- karan karan- tu aisi nahi maanegi randi , , tuze to ek se kaam nahi chalta , teri pyass bhuzane ko lund chaiye na ruk tuze abi batata hu ki main kya chiz hu jaise karan sneha ki taraf badne laga to main ne apna towel nikaal kar ek jordar war kiya karan ke hant par mere war se karan ka chaku niche gir gaya karan palatne vala tha ki main ne uske pit pe ek lath maari aur karan sidha jake bed pe gir gaya karan ko main kohi chance nahi dene vala tha main karan ke pit par sawar ho gaya sneha bed se dur ho gayi main ne kas ke karan ko pakad liya Avi- sneha is towel se karan ke hant band lo sneha ko meri bat sunayi nahi di main jor se chilaya Avi- sneha karan ke hant band lo tab jake sneha hosh me aayi karan ko dek kar sneha ne mera sath diya sneha ne karan ke hant bed se band diye ab karan kohi harkat nahi karenga pass ne sukh raha sneha ke dupata se karan ko ghuma kar pair bandh diye ab karan kuch nahi kar payenga karan khud ko chudane ki kosish kar raha tha par main ne sneha ke knot ko jor se laga liya aur karan ke muh me apna mozza daal kar uski galiya band ki Karan ko kabu me karte main sofe par baite gaya sneha abi bhi ro rahi thi main nanga tha aur sneha towel me Avi- sneha tumare kapde sukh gaye honge wo pahan lo sneha bas karan ko.deke ja rahi thi Avi-sneha kapde sneha hosh me aayi sneha sukhe huye kapde lekar bathroom.me chali gayi main ne bhi apne aade gile kapde pahan liye karan muze gur raha tha Avi- aise kya gur raha hai ager aur gura to teri gaand maarunga sneha aur main ne kapde pahan liye ab karan ko samajna tha chalo acha hua karan hamare pakad me hai to wo hamari puri bat sun lenga Avi- sneha ro mat , karan guasse me hai is liye aisa kaha sneha- karan muze tumse aisi umid nahi thi Avi- sneha karan guasse me hai , shayad usko hamare shadi ki bat pata chali hongi aur ham yaha hotel ke kamre me sirf towel me hai , aise me karan ko laga ki ham sneha- karan tum aisa soch kaise sakte ho Avi- karan ki galti nahi hai , karan ki jaga main hota to main bhi yahi karta , sneha- main karan ke liye tumse ladne lagi aur karan ne kya kiya mere sath Avi- sneha santh ho jav , tum aisa karogi to ham karan ko samajyenge kaise sneha- muze bat bhi nahi karni karan se Avi- sneha pagal mat bano sneha- karan tumne aisa kyu kiya Avi- deko sneha ham baite kar aaram se bat karte hai par sneha meri bat sun nahi rahi thi.karan hamari bat sun raha tha main me sneha ko ek thappad maar diya ye dek kar karan shocked ho gaya sneha bhi shocked thi chalo ek thappad se do log hosh me aaye Avi- ab main kuch bolu sneha ne haa me gardan ghuma diya Avi- pahale sneha tum karan ko ye vishwas dila do ki tum uski ho usko pyar karti ho sneha- par kaise Avi- us din jo tum dono ne kiya vaise hi sneha- kab Avi- us din , tum dono bedroom me the akele aur main hall me sneha ko samaj nahi aa raha tha jaise samaji to wo muze gurne lagi pir thodi der sochne ke bad sneha ne ek faisala liya sneha ne thodi himmat dikayi aur karan ki jeans aur underwear nikaal li karan dekta rah gaya main ne apna sar dusari taraf ghuma liya ye sneha bhi na muze laga kiss karengi par sneha to lund pe kiss karne lagi jab se mere sath sex kiya tab se besharam ban gayi hai aur sneha ne karan ke lund ko choosna suru kiya karan ka muh khol kar kiss kar sakti thi par karan ager sneha ke hont kaat keta ya galiya suru kar deta pir bacha hi kya hai aajkal premi ki kalayi kaat kar yakin dilaya to fake lagta hai vahi ager sex kar lo to wo pyar true lagta hai sneha bhi cahi kar rahi thi sneha ne karan ke lund pe kiss kiye aur thodi der choos liya pir sneha ne vapas karan ko kapde pahna diye Avi- deko karan , ager sneha muze pasand karti to tumare sath ye sab nahi karti Avi- sneha tumari hai aur tumari rahengi Avi- ab main tume kholne vala hu , ager tume ham par thoda bhi vishwas ho to hamari bat sun lena varna ye chaku tumare hant me de raha hu ,maar dena badi himmat jama karke main ne karan ko khol diya aur uske hant me chaku diya karan shoched tha ki wo kya kare muze aur sneha ko maar dale ya hamari bat sun le
  10. update 36 karan to guasse me nikal gaya par komal bhi guasse me karan ko dundte huye karan ke ghar aa gayi komal- sonali didi , karan bhaiya kaha hai sonali- kyu kya hua komal- karan bhaiya ne mera mobile thod diya sonali- par kyu ? komal- pata nahi , bhabhi ki photo dek rahe the ki guasse me mobile thod diya sonali- khon bhabhi komal- aapko to batana bhul gayi ki Avi bhaiya ki shadi fix hi gayi Avi ki shadi ki bat sunkar sonali sofe par gir gayi sonali- Avi ki shadi komal- haa , Avi bhaiya ki shadi fix huyi hai sneha bhabhi ke sath sneha ke sath ye word sunte sonali khadi ho gayi sonali- sneha ke sath komal-haa , aap kyu itna chouk gayi sonali- Avi ne shadi ko haa kaha komal- haa , dono khush the is shadi se sonali ko bahot bada zatka laga Avi ne kaha tha ki wo bas usko pyar karta hai ek minute , Avi ne kaha sneha aur sonali ko pyar karta hai sonali ne manaa kiya to sneha ne haa kaha honga ye kya ho gaya sonali ne socha nahi tha sab itne jaldi ho jayenga sonali ke ankhion se aasu nikalne kage sonali ne jab dopehar me Avi aur sneha ko hotel ke room me jate huye deka to uska dil tut gaya tha par ab shadi ki bat sunker sonali ki aatma mar gayi sonali ko rota hua dek komal shokced thi komal-kya hua didi aap ro kyu rahi hai sonali- muze akela chhod do komal- ajib bat hai Avi bhaiya ki shadi ki bat sunkar karan bhaiya bhi rone lage aur aap bhi ro rahi hai sonali iska kya jawab deti sonali rote huye apne kamre me chali gayi komal ka mobile tut gaya in sab me komal vapas apne ghar chali gayi -------- idar hotel me Avi aur sneha sneha aur Avi dono ne apne kapde do kar sukane ko rak diye ab dono sirf towel me the Avi- sneha tum jab bhi mere sath hoti ho to kapde kyu nikaal deti hu sneha-stup up Avi- tum bina kapdo ke hot lagti ho sneha-chup nahi rah sakte Avi- sneha tumare boobs dik raha hai sneha ne jaldi towel upar kiya Avi- tum itna sharama kyu rahi ho ye pahali bar nahi hai sneha-tu muze tang karna band karo Avi- to kya karu sneha-chup chap ye socho ki is musibat se bahar kaise nikale Avi- musibat bahot badi ban gayi gai , ek to shadi fix huyi , tumare papa mere papa friend nikale , karan dost hai uski tum.girkfriend ho , karan ko dhokka dene se sonali mere hanto se chali gayi sneha-ye sab tumsre vajse hua Avi- meri vajse kyu sneha-tu muze akela chhod kar kyu gaye the Avi- kyu ki tume mere bedroom me nangi sonali ne dek liya tha , aur muze thappad maar diya jis muze laga mera pyar meri sonali muzse dur ho gayi aur main depression me chala gaya tha sneha-sonali kab aayi thi Avi- aayu thi khana lekar sneha-ab main sonali ke samne kaise jaungi Avi- kapdo me jana sneha-mazak mat karo Avi- muze sochne do ki kya karna hai sneha-Avi sab tik kar do , main tumari madat kar dungi sonali se bat karungi Avi- tum to rahne do , main apna khud dek lunga , par ye batav ki tumare ghar me hamari shadi se khon khush nahi hai sneha-papa to bahot khush hai kyu ki tum unke best friend ke bete ho , aur chutki bhi khush hai Avi- tumari maa sneha-unko rich family chaiye thi mere liye par tum mil gaye Avi- iska matlab hai ki tumari maa is shadi se jada khush nahi hai sneha-haa Avi- pir to hamara kaam ban jayenga sneha-wo kaise Avi- tum apni maa se bat karo ye kaho ki Avi tume pasand nahi hai , tum to karan se pyar karti ho aur karan to rich hai wo tumari maa ko pasand aayenga sneha-par papa unka kya Avi- unke liye main kuch sochta hu sneha-kya ? Avi- sochne do , ek to tum.mere samne nangi ho jis se main kuch soch nahi paa raha hu sneha-aisa kyu ? Avi- kyu ki tumare vajase mera lund khada ho gaya hai , dek lo aur main ne towel nikaal liya mera lund dekte sneha ne chehara ghuna diya sneha-tum bahot gande ho , chupa do isko Avi- mere lund ko to bahot pyar aa raha us din sneha-please Avi towel pahan lo Avi- bilkul nahi main aisa hi rahunga aur main sneha ke pass jaker nanga let gaya sneha ka hant pakad kar apne lund pe raka to sneha ne jor se marod diya Avi-mmaaaaaaaa Avi-ye kya kiya, aisa kohi karta hai sneha-tumare sath aisa hi hona chaiye Avi- iska badla lunga main aur main sneha ki taraf badne laga to door bell baj gayi Avi- ab khon aaya sneha-waiter honga main towel oahan kar door kholne chala gaya towel me door kholne se muze zatka laga door kholte kisi ne muze jordar dhakaaa diya main zameen par gir gaya jo.shaks under aaya wo karan tha karan ke hant me chaku tha karan bed par baiti sneha jo towel me thi usko dek raha tha sneha ko towel me dek kar sari picture karan ke samne aayi ki kya hua honga hamare bich main bhi towel me tha karan ka guass ab satve aasman me chala gaya usko ham dono rang rangila mante huye dik rahe the uske sar pe khoon sawar ho gaya wo meri taraf badne laga chaku lekar ______________________________
  11. کوپن کوڈ کا تعارف اور استعمال کا طریقہ کار کوپن کوڈ کا مطلب چند شناختی الفاظ ہیں ۔جو کسی بھی پروڈکٹ اور آفر پر کسی مخصوص ممبر یا گروپ کو مخصوص ٹائم میں خریداری کرنے کے لیئے دیئے جاتے ہیں۔جس سے وہ اس پروڈکٹ کو کوپن کوڈ استعمال کر کے خصوصی ریٹ پر خرید سکتے ہیں۔یہ ایک لفظ کا ہو یا سو الفاظ کا اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا ۔یہ بس شناختی الفاظ کے طور پر کوپن کوڈ کے ٹیب میں درج کرنے کے لیئے ہوتے ہیں۔ان کی افادیت فورم سرور پر دی گئی سہولت میں چھپی ہوتی ہے۔جو کوپن ٹیب میں درج کرنے پر موجودہ سہولت/آفر اس پروڈکٹ پر اپلائی ہو جاتی ہے۔کوپن کوڈ پر تمام پرمیشن سیٹ کی گئی ہوتی ہیں۔ کہ یہ کس ممبر یا گروپ کے لیئے کار آمد ہے۔ یا اسے ہر ممبر کتنی بار استعمال کر سکتا ہے۔اور یہ ٹوٹل کتنی بار استعمال کیا جا سکتا ہے۔ وغیرہ وغیرہ اس کو استعمال کیسے کیا جاتا ہے یہ تب آپ کے کام کا ہو سکتا ہے۔ جب آپ موجودہ آفر یا سہولت سے فائدہ اٹھانا یا اس پروڈکٹ کو خریدنا چاہتے ہوں۔اس کواردو فن کلب پر استعمال کرنے کا طریقہ ہم نیچے دی گئی ویڈیو کی مدد سے آپ کو بتاتے ہیں۔ مثال کے طور پر مجھے پیڈ ممبر شپ خریدنی ہے اور ایک آفر کے طور پر مجھے ایک کوپن کوڈ 12345 دیا جاتا ہے۔ یا سب ممبرز کے لیئے اس کوپن کوڈ کو استعمال کر کے پیڈ ممبر شپ پر ٪50 ڈسکاؤنٹ آفر دی گئی ہے۔ تو میرا طریقہ کار کچھ اس طرح کا ہو گا۔ سب سے پہلے تو مجھے مطلوبہ پروٖڈکٹ یا فائل کے پیچ پر جانا ہو گا۔ اور اس پروڈکٹ کے پرچیز ٹیب پر کلک کرنا ہو گا۔ اپنے آرڈر کو جاری رکھتے ہوئے آپ پے منٹ چیک آؤٹ کے صفحے پر آئیں گے۔ یہاں پے منٹ سے پہلے آپ کو یہ کوپن کوڈ استعمال کرنا ہے۔ ورنہ آپ کو اس پروڈکٹ کی پےمنٹ بغیر آفر کے چارج ہو گی۔مزید کے لیئے یہ ویڈیو دیکھیں۔
  12. مجھے تم سے محبت ہے

    شاید یہ محبت ہے مجھے اس شخص سے کل تک محبت تھی، حماقت آج لگتی ہے مجھے اچھا لگا شاید اور اس سے بڑھ کے کب کچھ تھا؟ مگر میں یہ سمجھ بیٹھی کہ شاید یہ محبت ہے اور اب جب مجھ کو سچ مُچ دل کی گہرائی سے کوئی بھا گیا جاناں تو میں اس سوچ میں خاموش بیٹھی ہوں کہ کچھ کہنا نہیں مجھ کو میں کیوں دل میں چھپے جذبے عیاں کر دوں قوی امکان ہے کل یہ بھی پچھتاوا نہ بن جائے میں اس لمحے سے ڈرتی ہوں
  13. ~:- Congratulations to "Story Maker" -:~

    thanks dost
  14. Dubai In Pictures By Milestone

    Hellooo Friends Kasie ho Ap sub? Kuch Pictures Share kar raha hon, Random pics taken by Me Mazeed Pics Pasand Any par
  15. Hearttheaf80

    Thank you Administrator, Story Maker and Mile Stone for your comments i will try to get in touch with you all and seek guidance dear Administrator i have joined paid section with start up from silver category
  16. وکی لوز مونومنٹس 2017: پاکستان کی دس بہترین تصاویر دنیا میں فوٹوگرافی کا سب سے بڑا مقابلہ سمجھے جانے والے وکی میڈیا کے تصویری مقابلے میں رواں سال کسی بھی پاکستانی فوٹوگرافر کی تصویر 15 بہترین تصاویر میں جگہ نہیں بنا سکی۔ سال 2016 میں اس مقابلے میں تین پاکستانی فوٹوگرافروں کی تصاویر بہترین دس تصاویر میں شامل تھیں۔ ’وکی لوز مونومنٹس‘ کے نام سے اس مقابلے کا آغاز سنہ 2010 میں ہوا تھا جس میں وکی میڈیا کومنز کے ذریعے تصاویر بھیجی گئی تھیں۔ رواں سال منعقدہ مقابلے میں وکی میڈیا فاونڈیشن، یونیسکو اور فلِکر کے اشتراک سے منعقد کیا گیا جس کا مقصد ثقافتی ورثے کی دیکھ بھال کے لیے عالمی تحریک پیدا کرنا تھا۔ وکی میڈیا کا کہنا ہے یہ تصاویر ان ممالک کی قومی یادگاروں سے متعلق مضامین کے ساتھ تصویری جھلک پیش کرنے میں مدد کر سکتی ہیں اور بلا کسی لائسنس کے دستیاب ہیں۔ وکی میڈیا کے مطابق اس تصویری مقابلے کا ایک مقصد یہ بھی ہے کہ تصاویر بنانے والوں کو کریئٹو کومنز لائسنس کے تحت تصاویر مہیا کرنے کےلیے رضامند کیا جائے جس کے تحت کوئی بھی دنیا میں انھیں تصویر بنانے والے کا نام دے کر استعمال کر سکتا ہے۔ رواں سال منعقدہ مقابلے میں 52 ممالک سے دس ہزار افراد نے تقریباً ڈھائی لاکھ تصاویر اپ لوڈ کیں۔ وکی میڈیا کے مطابق پاکستان سے 270 فوٹوگرافرز نے 1900 سے زیادہ تصویروں کے ساتھ اس مقابلے میں شرکت کی۔ خیال رہے کہ پاکستان سنہ 2014 میں وکی لوز مونومنٹس کا حصہ بنا تھا اور اب تک پاکستان سے 1500 افراد 27000 سے زائد تصاویر اپ لوڈ کر چکے ہیں۔ وکی میڈیا کی پاکستان جیوری کی جانب سے پاکستان سے منتخب کی گئی 2017 کی دس بہترین تصاویر پیش ہیں۔ لاہور میں واقع بادشاہی مسجد کا غروب آفتاب کے وقت کا منظر، پس منظر میں دریائے راوی بھی دیکھا جا سکتا ہے وادئ ہنزہ میں واقع تاریخی قلعہ بلتت صحرائے چولستان میں قلعہ دراوڑ اسلام آباد کی فیصل مسجد فریئر ہال کراچی کی تصاویر بھی دس بہترین تصاویر میں شامل ہے کراچی میونسپل کارپوریشن بلڈنگ صوبہ خیبرپختوخوا میں واقع بودھ دور کے تخت بھائی کھنڈرات ملتان میں واقع مزار شاہ رکن عالم لاہور کا عجائب گھر لاہور کے اندرون شہر میں واقع مغل دور کی مسجد وزیر خان
  17. قائداعظم کی زندگی کے چند انوکھے واقعات دنیا میں بہت کم لوگ ایسے ہوتے ہیں جو دنیا کا نقشہ بدل کر رکھ دیتے ہیں اور بانیِ پاکستان محترم قائداعظم محمد جناح رحمتہ اﷲ علیہ کا شمار ایسی ہی گوہر نایاب شخصیات میں ہوتا ہے- ہر سال 25 دسمبر کو قائداعظم کا یومِ پیدائش پاکستان میں قومی سطح پر منایا جاتا ہے اور اس حوالے سے ملک بھر میں تقریبات اور سیمینارز منعقد کیے جاتے ہیں جن میں ان کی شاندار خدمات پر روشنی ڈالی جاتی ہے- اسی مناسبت سے آج قائد اعظم محمد علی جناح کے یومِ پیدائش کے موقع پر ہم ان کی زندگی کے وہ چند واقعات آپ کے سامنے پیش کر رہے ہیں جو ہم سب کے لیے مشعلِ راہ ہیں- وقت کی پابندی کتنی ضروری وفات سے کچھ عرصے قبل بابائے قوم نے اسٹیٹ بنک آف پاکستان کا افتتاح کیا یہ وہ آخری سرکاری تقریب تھی جس میں قائداعظم اپنی علالت کے باوجود شریک ہوئے وہ ٹھیک وقت پر تقریب میں تشریف لائے انہوں نے دیکھا کہ شرکاء کی اگلی نشست ابھی تک خالی ہیں انہوں نے تقریب کے منتظمین کو پروگرام شروع کرنے کا کہا اور یہ حکم بھی دیا کہ خالی نشستیں ہٹا دی جائیں حکم کی تعمیل ہوئی اور بعد کے آنے والے شرکاء کو کھڑے ہو کر تقریب کا حال دیکھنا پڑا ان میں کئی دوسرے وزراء سرکاری افسر کے ساتھ اس وقت کے وزیرا عظم خان لیاقت علی خان بھی شامل تھے وہ بے حد شرمندہ تھے کہ ان کی ذراسی غلطی قائد اعظم نے برداشت نہیں کی اور ایسی سزا دی جو کبھی نہ بھولی گئی ۔ اعلیٰ ظرفی 1943ء میں الہ آباد یونیورسٹی میں ہندو اور مسلمان طلباء کے درمیان اس بات پر تنازعہ ہو گیا کہ یونیورسٹی میں کانگریس کا پرچم لہرا یا جائے۔ مسلمان طلباء کا ماننا تھا کہ کا نگریس کا پرچم مسلمانوں کے جذبات کا عکاس نہیں اور چونکہ الہ آباد یورنیورسٹی میں مسلمان طلبہ کی اکثریت زیر تعلیم تھی اس لیے یہ پر چم اصولاً وہاں نہیں لہرایا جا سکتا ابھی یہ تنازعہ جاری تھا کہ اسی سال پنجاب یونیورسٹی کے مسلم طلباء کی یونین سالانہ انتخاب میں اکثریت حاصل کر گئی یو نین کے طلباء کا ایک وفد قائداعظم کے پاس گیا اور درخواست کی کہ وہ پنجاب یورنیوسٹی ہال پر مسلم لیگ کے پر چم لہرانے کی رسم ادا کریں قائداعظم نے طلباء کو مبارک باد دی اور کہا اگر تمھیں اکثریت مل گئی ہے تو یہ خوشی کی بات ہے لیکن طاقت حاصل کرنے کے بعد اپنے غلبے کی نمائش کرنا نا زیبا حرکت ہے کوئی ایسی با ت نہ کرو جس سے کسی کی دل آزاری ہو ہمارا ظرف بڑا ہونا چاہیے کیا یہ منا سب بات نہیں کہ ہم خود وہی کام کریں جس پر دوسروں کو مطعون کرتے ہیں۔۔ رشوت ایک ناسور ایک بار قائد اعظم سفر کر رہے تھے سفر کے دوران انہیں یاد آیا کہ غلطی سے ان کا ریل ٹکٹ ملازم کے پاس رہ گیا ہے اور وہ بلا ٹکٹ سفر کر رہے ہیں جب وہ اسٹیشن پر اترے تو ٹکٹ ایگزامنر سے ملے اور اس سے کہا کہ چونکہ میرا ٹکٹ ملازم کے پاس رہ گیا ہے اس لیے دوسرا ٹکٹ دے دیں ٹکٹ ایگزامنر نے کہا آپ دو روپے مجھے دے دیں اور پلیٹ فارم سے باہر چلے جائیں قا ئداعظم یہ سن کر طیش میں آگئے انہوں نے کہا تم نے مجھ سے رشوت مانگ کر قانون کی خلاف ورزی اور میری توہین کی ہے بات اتنی بڑھی کہ لوگ اکھٹے ہو گئے ٹکٹ ایگزامنر نے لاکھ جان چھڑانا چاہی لیکن قائداعظم اسے پکڑ کر اسٹیشن ماسٹر کے پاس لے گئے بالاخر ان سے رشوت طلب کرنے والا قانون کے شکنجے میں آگیا۔۔ کفایت شعاری اختیار کرو محمد حنیف آزاد کو قائداعظم کی موٹر ڈرائیوری کا فخر حاصل رہا ہے ایک بار قائداعظم نے اپنے مہمانوں کی تسلی بخش خدمت کرنے کی صلے میں انہیں دو سو روپے انعام دئے- چند روز بعد حنیف آزاد کو ماں کی جانب سے خط ملا جس میں انھوں نے اپنے بیٹے سے کچھ روپے کا تقاضا کیا تھا- حنیف آزاد نے ساحل سمندر پر سیر کرتے ہوئے قائد سے ماں کے خط کا حوالہ دے کر والدہ کو کچھ پیسے بھیجنے کی خاطر رقم مانگی- قائداعظم نے فوراً پوچھا ” ابھی تمھیں دو سو روپے دئے گئے تھے وہ کیا ہوئے “حنیف آزاد بولے ”صاحب خرچ ہوگئے قائد اعظم یہ سن کر بولے ” ویل مسٹر آزاد، تھوڑا ہندو بنو “- وکالت کے اصول وکالت میں بھی قائدِاعظم کے کچھ اُصول تھے جن سے وہ تجاوز نہیں کرتے تھے۔ وہ جائز معاوضہ لیتے تھے۔ مثلاً ایک تاجرایک مقدمہ لے کر آیا۔ مؤکل:مَیں چاہتا ہوں کہ آپ اس مقدمہ میں میری وکالت کریں۔آپ کی فیس کیا ہوگی۔ قائدِاعظم: مَیں مقدمے کے حساب سے نہیں، دن کے حساب سے فیس لیتا ہوں۔ مؤکل: کتنی؟ قائدِاعظم: پانچ سوروپے فی پیشی۔ مؤکل: میرے پاس اس وقت پانچ ہزار روپے ہیں۔ آپ پانچ ہزار میں ہی میرا مقدمہ لڑیں۔ قائدِاعظم: مجھے افسوس ہے کہ مَیں یہ مقدمہ نہیں لے سکتا۔ہوسکتا ہے کہ یہ مقدمہ طول پکڑے اور یہ رقم ناکافی ہو۔ بہتر ہے کہ آپ کوئی اور وکیل کرلیں کیوںکہ میرا اصول ہے کہ مَیں فی پیشی فیس لیتا ہوں۔ چنانچہ قائدِاعظم ؒنے اپنی شرط پر مقدمہ لڑا اور اپنی فراست سے مقدمہ تین پیشیوں ہی میں جیت لیا اور فیس کے صِرف پندرہ سو روپے وصول کیے۔ تاجر نے اس کامیابی کی خوشی میں پورے پانچ ہزار پیش کرنا چاہے تو قائدِاعظم نے جواب دیا، ’’میں نے اپنا حق لے لیا ہے۔‘‘ عید کی نماز یہ 25 اکتوبر 1947 کی بات ہے۔ قیام پاکستان کے بعد پہلی بار عید الاضحیٰ کا تہوار منایا جانا تھا۔ عید الاضحیٰ کی نماز کے لیے مولوی مسافر خانہ کے نزدیک مسجد قصاباں کو منتخب کیا گیا اور اس نماز کی امامت فریضہ مشہورعالم دین مولانا ظہور الحسن درس نے انجام دینی تھی- قائد اعظم کو نماز کے وقت سے مطلع کردیا گیا۔ مگر قائد اعظم عید گاہ نہیں پہنچ پائے۔ اعلیٰ حکام نے مولانا ظہور الحسن درس کو مطلع کیا کہ قائد اعظم راستے میں ہیں اور چند ہی لمحات میں عید گاہ پہنچنے والے ہیں۔ انہوں نے مولانا سے درخواست کی کہ وہ نماز کی ادائیگی کچھ وقت کے لیے مؤخر کردیں۔ مولانا ظہور الحسن درس نے فرمایا ’’میں قائد اعظم کے لیے نماز پڑھانے نہیں آیا ہوں بلکہ خدائے عزوجل کی نماز پڑھانے آیا ہوں‘‘ چناں چہ انہوں نے صفوں کو درست کرکے تکبیر فرما دی۔ ابھی نماز عید کی پہلی رکعت شروع ہوئی ہی تھی کہ اتنے میں قائد اعظم بھی عید گاہ پہنچ گئے۔ نماز شروع ہوچکی تھی۔ قائد اعظم کے منتظر اعلیٰ حکام نے قائد سے درخواست کی وہ اگلی صف میں تشریف لے چلیں مگر قائد اعظم نے ان کی درخواست مسترد کردی اور کہا کہ میں پچھلی صف میں ہی نماز ادا کروں گا۔ چناں چہ ایسا ہی ہوا اور قائد اعظم نے پچھلی صفوں میں نماز ادا کی۔ قائد اعظم کے برابر کھڑے نمازیوں کو بھی نماز کے بعد علم ہُوا کہ ان کے برابر میں نماز ادا کرنے والا ریاست کا کوئی عام شہری نہیں بلکہ ریاست کا سربراہ تھا۔ قائد اعظم نمازیوں سے گلے ملنے کے بعد آگے تشریف لائے۔ انھوں نے مولانا ظہور الحسن درس کی جرأت ایمانی کی تعریف کی اور کہا کہ ہمارے علما کو ایسے ہی کردار کا حامل ہونا چاہیے۔
  18. ~:- Congratulations to "Story Maker" -:~

    Congrats Brother
  19. Hearttheaf80

    Welcome Dear
  20. Google Ads at Forums

    ok g hum zaror amal kren gen thanks
  21. UAre bhai dusri website pe ise age pahuc gai hai story ye batao ki jab B chachi ko komal aur avi ke bare me pata chalta hai us ke bad kya hota hai wo batao ya wo part ka name kya hai ?
  22. یہاں سے کسی بھی ایک پیکج کو خرید لیں۔پھر آپ پردیس کے ساتھ اور بھی لاتعداد پریمیم کہانیوں سے لطف اندوز ہو سکیں گے۔
  1. Load more activity