khoobsooratdil

اُردو طنز و مزاح

Recommended Posts

اونچے ہوٹل میں عمدہ اور قیمتی کھانا کھانے کے بعد ایک شخص نے بل ادا کرنے سے انکار کر دیا اور کہنے لگا ” میری جیب میں تو ایک پیسہ بھی نہیں ہے“۔ یہ سن کر بیرا منیجر کے پاس پہنچا اور تمام حقیقت سے آگاہ کر دیا منجیر کو بہت غصہ آیا اور اس نے آکر اس شخص کی اچھی خاصی پٹائی کر ڈالی مار کھانے کے بعد وہ شخص دروازے کی طرف جا رہا تھا۔ کہ بیرے نے آگے بڑھ کر دو مُکے اور جڑدےئے۔ منیجر نے بیرے کوڈانٹتے ہوئے کہا: ” جب میں مار چکا تھا تو تمھیں ارنے کی کیا ضرورت تھی؟“۔ بیرے نے جواب دیا: ”جناب! آپ نے تو اپنا بل وصول کر لیا مگر میں اپنی ٹپ کیسے چھوڑ دیتا“۔


Share this post


Link to post
Share on other sites

ایک دیہاتی ریل گاڑی میں بیٹھنے کے لیے آیا بیٹھتے ہی اس نے گھی کا ڈبہ زنجیر کے ساتھ لٹکا دیا گاڑی رک گئی گارڈ نے اس ڈبے میں آکر دیکھا کہ گھی کا ڈبہ زنجیر سے لٹک رہا ہے۔ گارڈ نے اس سے پوچھا:”کیا یہ ڈبہ تمھارا ہے؟“۔ دیہاتی نے جواب دیا: ”جی ہاں جناب!“ گارڈ نے غصے سے کہا:”تمھارے ڈبے نے زنجیر کھینچ دی جس کی وجہ سے گاڑی رک گئی ہے“۔ دیہاتی نے مسکرا کر جواب دیا:


 


 


”جناب! یہ اصلی دیسی گھی کی طاقت ہے“۔


Share this post


Link to post
Share on other sites

ایک صاحب نے اپنے دوست کو بتایا: ”میرا گھوڑا بھی عجیب ہے ایک روز میری طعبیت بہت خراب تھی ۔ گھر میں کوئی موجود نہیں تھا میری حالت کو دیکھتے ہوئے میرا گھوڑا دوڑا دوڑا گیا اور اپنی پیٹھ پر ڈاکٹر کو بٹھا کر لے آیا“۔ دوست بولا: ”تمھارا گھوڑا تو بہت ہوشیار ہے“۔ وہ صاحب بولے:” ارے اتنا بھی ہوشار نہیں


 


وہ اپنی پیٹھ پر جانوروں کے ڈاکٹر کو لے آیا تھا“۔


Share this post


Link to post
Share on other sites

ایک شخص شراب خانے میں داخل ہوا وہ بہت افسردہ تھا۔ وہاں اسے ایک دوست مل گیا۔ اس نے پوچھا۔” تم اس قدر دل شکستہ کیوں نظر آرہے ہو؟“ ”یار کیا بتاؤں۔ میری ماں کا جولائی میں انتقال ہو گیا وہ میرے لئے دس ہزار روپے چھوڑ گئی۔“ ” بہت افسوس ہوا تمہاری پیاری ماں کے مرنے کا چلو غم کے ساتھ تھوڑی بہت خوشی تو ملی۔“ اس کا دوست کہنے لگا۔ ”پھر اگست میں میرا والد بھی چل بسا۔ اس نے میرے لئے بیس ہزار کا ترکہ چھوڑا۔ پھر ویسا ہی ملا جلا صدمہ !“ دوست نے ہمدردی کا اظہار کیا۔ دوسرے نے اپنی بات جاری رکھی۔ ” ایک اور حادثہ یہ ہوا کہ میری مالدار خالہ بھی گذشتہ ماہ چل بسی اورمیرے لئے پچاس ہزار روپے چھوڑ گئی۔“ ”بہت صدمے کی بات ہے۔“ دوست نے پھر چھوٹ موٹ کا اظہار ہمددری کیا۔ ”پراب تم کیوں اداس ہو؟“ ”وہ اس لئے کہ اس مہینے ا بھی تک کچھ نہیں ہوا


Share this post


Link to post
Share on other sites

پاکستانیوں کے چند اہم سوالات جن کے حقیقی جوابات صرف دِل میں ہی دیے جا سکتے ہیں ۔۔۔

 جب بس میں ایک موٹے انکل آپ کے پاوٗں پر چڑھ جائیں
انکل : بیٹا زیادہ تو نھیں لگی ؟
جواب : نہیں انکل بہت مزہ آیا ، ایک بار پھر چڑھیں۔
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جب آدھی رات کو نیند سے اٹھ کر کال ریسیو کریں
کالر : یار سو تو نہیں رہے تھے
جواب : نہیں تو ، لیٹ کر مرنے کی پریکٹس کر رہا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جب آپ کو گھر یا آفس کے لینڈ لائن پر کال آئے
کالر : کہاں ہو ؟
جواب : مارکیٹ آیا ہوں ، فون بھی گلے میں لٹکا کر لایا ہوں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
 جب آپ بال چھوٹے کروا کر جائیں
موصوف : تم نے بال کٹوائے ہیں ؟
جواب : نہیں ، شاید خود ہی اندر چلے گئے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جب آپ کسی جگہ پہنچیں
میزبان : آپ آ گئے؟
جواب : نہیں ابھی راستے میں ہوں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

لڑکا دربار پر گیا


وہاں 7 ملنگ زمین پر دریاں بچھا کر بیٹھے تھے ،


ملنگ : بیٹا کیا مسئلہ ہے کیوں آئے ہو ؟



لڑکا : بابا جی جس لڑکی سے میں پیار کرتا تھا اس نے کسی دوسرے سے شادی کر لی ہے ،


ملنگ نے آواز دی : چھوٹے اندر سے ایک اور دری لے آ ۔۔۔


Share this post


Link to post
Share on other sites

بیٹی بددل ہو کر میکے آگئی -

باپ نے کہا "تمہارے ہاتھ کا کھانا کھائے بہت دن ہوگئے ہیں، آج میرے لئے
ایک انڈا
ایک آلو ابال دو اور
ساتھ٘ گرما گرم کافی
لیکن 20 منٹ تک چولہے پر رکھنا"

جب تیار ہو گیا تو بولے :
"چیک کرلو آلو ٹھیک سے نرم ہو گیا ہے ، اب انڈا چھو کے دیکھو ہارڈ بوائل ہوگیا ہے؟
کافی چیک کرو رنگ اور خوشبو آگئی ؟؟"

بیٹی نے چیک کر کے بتا دیا کہ سب پرفیکٹ ہے ۔

باپ نے کہا : "دیکھو 3 چیزوں نے گرم پانی میں یکساں وقت گزارا اور برابر کی تکلیف برداشت کی،
آلو سخت ہوتے ہیں اس آزمائش سے گزر کے نرم ہوگیا ،
انڈا نرم ہوتا ہے گرے تو ٹوٹ جائے ، وہ اب سخت ہوگیا اور
اس کے اندر کا لیکویڈ بھی سخت ہوگیا ہے،
کافی نے پانی کو خوش رنگ خوش ذائقہ اور خوشبودار بنا دیا ہے"

پھر باپ نے بیٹی کو سب سے آخر میں یہ تاکید کی "یہ سب اپنے خاوند کو سنانا اور پوچھنا کہ وہ کیا بننا چاہتا ہے ----------- آلو، انڈا یا کافی ؟"

Share this post


Link to post
Share on other sites

ایک لنگڑے فقیر کو دیکھ کر خاتون کا دل بھر آیا ، اس نے اسے پیسے بھی دیئے اور تازہ خریدے ھوئے سیبوں میں سے چند سیب بھی اسے دیئے ،، اس کے پاس بچھے ایک کپڑے پر چند سکے دیکھ کر خاتون نے دکھ کا اظہار کیا کہ لوگوں میں اب انسانیت نام کو بھی نہیں رھی ،، ایک فقیر کے سامنے پڑے چند سکے ھماری انسانیت کا نوحہ پڑھ رھے ھیں ،، خاتون نے درد بھری آواز میں اپنی گفتگو جاری رکھی !
ظلم ھے باجی خالص ظلم ،، آپ کو کیا بتاؤں ،، لنگڑا بننے سے پہلے میں اندھا بنا تھا ،مگر لوگ کھوٹے سکے دے جاتے تھے اور نقلی نوٹ رکھ کر اصلی اٹھا لے جاتے تھے ،جس کے بعد آپ جیسے کسی ھمدرد کے مشورے پر لنگڑا بنا ھوں ، معذور نے خاتون کا تراہ نکالتے ھوئے کہا

Share this post


Link to post
Share on other sites
ﺍﯾﮏ ﻣﻔﮑﺮ ﮐﮩﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻋﻈﯿﻢ ﺍﻧﻘﻼﺑﺎﺕ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﯽ۔

ﺗﻢ ﺩﯾﮑﮭﻮ ﮔﮯ ﮐﮧ ﺯﺑﺮﺩﺳﺖ ﺗﺒﺪﯾﻠﯿﺎﮞ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺩﺑﮯ ﭘﺎﺅﮞ ﺁﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺗﺎﺭﯾﺨﯽ ﮐﯿﻠﯿﻨﮉﺭ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﺎ ﮐﮩﯿﮟ ﺫﮐﺮﻧﮩﯿﮟ۔

.

ﺳﺐ ﺟﺎﻧﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺳﮑﻨﺪﺭ ﻧﮯ ﮐﺲ ﺳﻦ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﻥ ﺳﺎ ﺷﮩﺮ ﻓﺘﺢ ﮐﯿﺎ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﯾﮧ ﮐﻮﺋﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮐﮧ ﺑﻦ ﻣﺎﻧﺲ ﮐﻮﻥ ﺳﮯ ﺳﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺑﻨﺎ۔

ﺍﺗﻨﺎ ﺗﻮ ﺍﺳﮑﻮﻝ ﮐﮯ ﺑﭽﮯ ﺑﮭﯽ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﮟ ﮔﮯﮐﮧ ﺳﯿﻔﻮ ﮐﺐ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺳﻘﺮﺍﻁ ﻧﮯ ﮐﺐ ﺯﮨﺮ ﮐﺎ ﭘﯿﺎﻟﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻮﻧﭩﻮﮞ ﺳﮯ ﻟﮕﺎﯾﺎ...

.

ﻟﯿﮑﻦ ﺁﺝ ﺗﮏ ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻮﺭﺥ ﯾﮧ ﻧﮩﯿﮟ ﺑﺘﺎ ﺳﮑﺎ ﮐﮧ ﻟﮍﮐﭙﻦ ﮐﺲ ﺩﻥ ﺭﺧﺼﺖ ﮨﻮﺍ۔ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﺲ ﺳﺎﻋﺖ ﻧﺎﯾﺎﺏ ﻣﯿﮟ ﻋﻮﺭﺕ ﺑﻨﯽ۔ ﺟﻮﺍﻧﯽ ﮐﺲ ﺭﺍﺕ ﮈﮬﻠﯽ۔ ﺍﺩﮬﯿﮍ ﭘﻦ ﮐﺐ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺑﮍﮬﺎﭘﺎ ﮐﺲ ﮔﮭﮍﯼ ﺷﺮﻭﻉ ﮨﻮﺍ..

.

ﮐﮩﻨﮯ ﻟﮕﮯ...

" ﺑﺮﺍﺩﺭ ...!

ﺍﻥ ﺳﻮﺍﻻﺕ ﮐﺎ ﺗﻌﻠﻖ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﯾﻮﻧﺎﻥ ﺳﮯ ﻧﮩﯿﮟ, ﻃﺐ ﯾﻮﻧﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﮨﮯ۔

.

ﭼﺮﺍﻍ ﺗﻠﮯ ﺍﺯ ﻣﺸﺘﺎﻕ ﺍﺣﻤﺪ ﯾﻮﺳﻔﯽ...

Share this post


Link to post
Share on other sites
جدید تعلیم سے فارغ ہونے والے دو نوجوان دوستوں کو ایک ہی ملٹی نیشنل کمپنی میں اچھی ملازمت مل گئی۔

.

ایک بار باس نے کمپنی کے ملازمین کو دعوت دی۔ دعوت کے دوران باس نے ان میں سے ایک نوجوان کے ادبی ذوق کا اندازہ کرنے کیلئے پوچھا...

"عمر خیام کے بارے میں تمہارا کیا خیال ہے؟"

.

نوجوان نے جواب دیا...

"اچھی جگہ ہے سر۔

لیکن ذاتی طور پر میں کے ایف سی میں جانا زیادہ پسند کرتا ہوں۔"

.

با س نے ناگواری سے منہ بنایا اور دوسرے مہمانوں سے باتیں کرنے لگا...

دعوت سے واپسی پر راستے میں دوسرے دوست نے پہلے کو ڈانٹا...

"بے وقوف آدمی...!

اگر تمہیں معلوم نہیں تھا کہ عمر خیام کیا ہے تو بات بدل دیتے۔

احمقانہ جواب تو نہ دیتے۔

 

گدھے کہیں کے ...!

 

 

تمہیں یہ بھی معلوم نہیں کہ عمر خیام کسی ریسٹورنٹ کا نہیں بلکہ پرفیوم کا نام ہے۔

.

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now