TEHREEM

اردو میں عضو کے نام

Recommended Posts

یہ میری کسی سیکس فورم میں پہلی تھریڈ ہے۔

میں کئی سالوں سے کہانیاں پڑھتی آ رہی ہوں۔

مجھے ایک بات سمجھ نہیں آتی کہ یہ جو اردو میں الفاظ استعمال کیے جاتے ہیں اعضا کے لیے، جیسے مرد کے لیے لن یا لنڈ یا لوڑا وغیرہ۔ جبکہ عورت کے لیے اس سے بھی غلط لفظ ہیں۔ جو میں تو بولتے ہوئے بھی شرماتی ہوں۔

کیا ایسا نہیں ہو سکتا کہ کچھ بہتر الفاظ ہوں۔

میں آپ لوگوں کی راے جاننا چاہوں گی کہ وہ کون کون سے الفاظ ہو سکتے ہیں۔ جو اردو کہانیوں میں ان کی جگہ یوز کیے جا سکتے ہوں۔

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

ابتدا میں میں کہانیاں رومن میں لکھا کرتا تھا۔

اس وقت میں لفظ لن اور کنٹ استعمال کرتا اور کہیں کہیں ویجائنہ بھی استعمال کرتا۔ مگر اردو بول چال میں لفظ چوت اور پھدی اتنا کامن ہو گیا کہ اصل الفاظ ہی مسخ ہو گئے ہیں۔

میں جب وہ الفاظ کرتا تھا تو اکثر قاری کہتے کہ ان کی جگہ اردو لفظ ہی لکھا کرو،وہ پڑھ کر زیادہ ہیجان پیدا ہوتا ہے۔

اب پتا نہیں یہ کسی ایک قاری کی پسند تھی یا اکثریت ایسا محسوس کرتی ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 مگر میرا سوال یہ تھا کہ ان کی جگہ اور کونسے ورڈ ہو سکتے ہیں جو مزا بھی دیں اور سننے میں عجیب یا  برے بھی نہ لگیں۔

لڑکوں کو تو یہ لفظ لیتے یا بولتے اتنا عجیب نہیں لگتا ہو گا مگر لڑکیاں کچھ ان ایزی فیل کرتی ہیں۔

میں کہہ رہی ہوں کہ کوئی اردو میں ایسے لفظ ہوں جو سننے میں عجیب نہ ہوں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

ہاہاہاہا

یہ کیا موضوع چھیڑا ہے

پہلے بھی کہیں میں نے اعضاء کے نام پر تفصیلاََ لکھا تھا

مہذب ہونے یا بے ہودہ ہونے میں بات چیت کے سلیقے کا عمل دخل بہت زیادہ ہے

شائستہ گفتگو میں الفاظ کا انتخاب بنیادی حیثیت رکھتا ہے

کونسے الفاظ شائستگی کے دائرے میں آتے ہیں اور کونسے بدتہذیبی کے دائرے اس کا تعین تو مختلف لوگوں یا سرکلز میں مختلف ہوتا ہے لیکن معاشرے میں بھی ایک قابل قبول معیار ضرور موجود ہوتا ہے

عموماََ ادب یا میڈیا پر آپ کو تہذیب کے دائرے میں رہتے ہوئے الفاظ ملیں گے

میری رائے میں غیر مہذب الفاظ ہر زبان میں اسلیے ہوتے ہیں تاکہ گالم گلوچ کے وقت ان الفاظ سے دوسرے کو اشتعال دلایا جائے

بہت سے الفاظ جو ہماری مادری زبان میں بہت فحش گردانے کسی دوسری زبان میں ہوں تو ہمارے لیے قابل قبول ہوتے ہیں

جیسے لن یا لوڑا ہمیں جتنا بےہودہ اور غیر مہذب محسوس ہوتا ہے پینس ، ڈک یا کاک بالکل بھی نہیں ہوتا

اسی طرح پھدی یا چوت جتنا واہیات لگتا ہے پوسی یا کنٹ ایسا نہیں لگتا

بہرحال پہلے تو آتے ہیں مرد کے عضو تناسل پر

اردو یا پنجابی میں اس کےفحش الفاظ یہ ہیں

لوڑا، للی، للا، لن، لنڈ، پھلو

غالباََ مہذب الفاظ یہ ہیں

ذکر، کیر، نفس، اندری، لنگ، عضوتناسل ، آلت

انگلش میں یہ الفاظ ہیں

Penis, Cock, Dick, Dickie, prick, shaft, bishop, rod, fuck rod, love rod, manhood

اسی طرح عورت کی چوت کے فحش الفاظ تو یہ ہیں

پھدی، پھدا، کس، کوسہ، بھوسڑی، بھوسڑ

مہذب الفاظ یہ ہیں

اندام نہانی، فرج

انگلش کے الفاظ یہ ہیں

Vagina, cunt, pussy, vulva

جعفرزٹلی ایک شاعر ہیں انہوں نے اسمہائے کُس (چوت) کے عنوان سے لکھا ہے
شادی سے پہلے کنواری چوت کو کہیں گے - پونی، ٹینی، ٹنا، چیچا، پھوسو
حمل کے بعد کہیں گے - چوت
بچہ پیدا ہونے کے بعد - بھوسڑی
تیس سال بعد کہیں گے - چُڑ
پچاس سال بعد - بُر ، بُل
ساٹھ کے بعد - بھوسڑا

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

واقعی الفاط تو بہت ہیں اور ان کے استعمال میں ہر جگہ پر مختلف ہیں۔

مگر عام فہم وہی ہیں جو کہانیوں میں استعمال ہوتے ہیں۔

کہانیوں کے حساب سے شاید وہ سب سے زیادہ مہذب الفاظ کہلائے جا سکتے ہیں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 یہ سب نام تو واقعی ہیں مجھے معلوم ہے۔ مگر وہ نام ہوں جو کہانیوں میں ویسا ہی ہیجان لائیں۔

کیا کہانی میں ڈک یا پینس کہنے سے ویسا ہی فیل ہو گا؟

ایک کام سوچا ہے کہ کوئی کہانی ایسے پوسٹ کی جائے یا ایڈیٹ کی جائے جس میں کوئی دوسرا لفظ ہو اور پھر پڑھ کر دیکھیں ہم سب کہ کیا ویسا مزا فیل ہوتا ہے؟؟؟؟

:-<:-<

Share this post


Link to post
Share on other sites

جنسی ہیجان تو فحش کہلائے جانے والے الفاظ ہی  دلاتے ہیں

مہذب الفاظ سے ہیجان کہاں ہوتا ہے

اور مزا تو ہیجان انگیزی میں ہی ہے

اور بہتر ہیجان انگیزی تبھی ہوتی ہے جب یہ الفاظ آپ کی مادری زبان میں لوفر اور فحش انداز میں بولے جائیں

Share this post


Link to post
Share on other sites

Please login or register to see this quote.

اس کا مطلب ہے کہ سیکس کا مزا لینے کے لیے کچھ گندی باتیں بھی شامل کی جاتی ہیں۔ اگر وہ گندی باتیں یا لفظ نہیں ایڈ ہوتے تو مزا پورا نہیں ملتا؟؟؟؟؟

اگر لفظ گندے نہیں ہوتے تو کہانی بےمزا ہو جائے گی۔

NOW I GOT IT.

Share this post


Link to post
Share on other sites

میرے نزدیک لڑکوں/مردوں  کے ساتھ تو معاملہ ایسا ہی ہے

فحش باتیں کرکے انہیں مزا آتا ہے

اسی لیے لڑکے بہت فحش گو ہوتے ہیں

لڑکیوں کو دیکھتے بھی بالکل ایکسرے لگا کر ہیں اور پھر آپس میں جو تبصرہ کرتے ہیں وہ بہت ہی بے ہودہ ہوتا ہے

اسی  فحش گوئی میں مزا لیتے ہیں

دوسرا لڑکوں کی خواہش ہوتی ہے کہ لڑکیوں کے منہ سے بھی فحش الفاظ سنیں --- اس میں انہیں مزید مزا ملتا ہے

یہ جو سیکسی کہانیاں ہیں یہ لڑکوں کی فینٹسی کو زیادہ پورا کرتی ہیں --- اور اسی میں آپ مشاہدہ کرسکتی ہیں کہ سیکس کے دوران لکھاری لڑکی کے منہ سے گالیاں یا فحش کلمات نکلواتے ہیں --- جو لڑکوں کی فینٹسی کے مطابق ہوتی ہے

گناہ کے کام یا  شیطانی کام ویسے بھی پرکشش ہوتے ہیں

اب اگر کہانی ایسی لکھی جائے کہ لڑکے اور لڑکی کی شادی ہوئی اور پھر انہوں نے سیکس کیا  بہت تہذیب کے دائرے میں رہتے ہوئے بات کی --- تو کسی کو مزا ہی نہیں آئے گا

Share this post


Link to post
Share on other sites

اچھا مگر اگر کوئی لڑکا کسی لڑکی سے ڈائریکٹ ایسے ورڈز میں بات کرے تو مائنڈ کرتی یا سمجھتی ہے کہ لڑکے کو تمیز نہیں ہے لڑکیوں سے بات کرنے کی۔

تو پھر بھی لڑکے یہ ورڈ خود کیوں بولتے ہیں لڑکیوں کے سامنے۔

میں اکثر دیکھتی ہوں کہ لڑکے آپس میں باتیں کرتے ہوئے یہ گندے ورڈز بولتے ہیں اور لڑکیوں کو بھی سناتے ہیں۔

اگر کوئی ان کے ساتھ ہے تو ٹھیک ہے اس سے بیشک بول لیں مگر آتے جاتے دوسروں کے سامنے تو ایسے ورڈ نہیں کہنے چاہیے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 آپ کا الفاظ پر اتنا زور کیوں ہے بھلا؟آپ کیا چاہ رہی ہیں کہ مکمل الفاظ ہی بدل دیئے جائیں۔

ہم تو شوق سے بدل سکتے ہیں مگر جو زبان زد عام الفاظ ہیں ان کو لوگ کیسے ترک کریں گے؟

آپ فرمائیے کہ کیسے لوگوں کو فحش گفتاری سے باز رکھا جائے؟

Share this post


Link to post
Share on other sites

لوگوں کا مائنڈ سیٹ تو ہم نہیں چینج کر سکتے مگر میں نے کچھ ممبرز کو دیکھا ہے کہ وہ عجیب بےہودہ سی باتیں پوسٹ کرتے ہیں اور ان میں بار بار ایسے ہی کہتے ہیں اور سمجھتے ہی انٹرٹین کر رہے ہیں۔

ایسا تو نہ کیا کریں،مجھے بہت گندا فیل ہوتا ہے۔ بہت سی لڑکیوں کو بھی ہوتا ہو گا۔ اسی لیے وہ فورم کو دیکھتی ہوں گی اور سمجھتی ہوں گی کہ یہاں تو بس گندی باتیں ہی ہوتی ہیں۔ جبکہ ایسا تو کچھ بھی نہیں ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

Please login or register to see this quote.

میرے خیال میں ہر جوڑا کچھ نہ کچھ مختلف ہی بولتا ہوگا

میں اپنے بارے میں بتا دیتا ہوں

مجھے عموماََ تو زبان سے بولنے کی ضرورت نہیں پڑتی --- یہ کھیل تو چھیڑ چھاڑ سے شروع ہوجاتا ہے

اگر کبھی کہنا پڑے تو اتنا ہی کہتا ہوں کہ آج کریں --- دل چاہ رہا ہے

کیونکہ فحش الفاظ میں گھر پر بیوی کے سامنے بھی منہ سے نہیں نکالتا - میرے خیالات ایسے ہیں کہ فحش گوئی سے  میاں بیوی میں ایک دوسرے کا احترام کم ہو جاتا ہے - اس لیے

فحش گوئی محض دوستوں کے درمیان میں چلتی ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

لڑکے بے حد فحش گو ہوتے ہیں اور فحش گوئی ان کی تفریح کا ایک بڑا ذریعہ ہے

لیکن کیا لڑکیاں بھی اتنی ہی فحش گو ہوتی ہیں ؟؟؟

اور کیا لڑکیاں بھی لڑکوں کی طرح فحش گوئی سے تفریح محسوس کرتی ہیں ؟؟؟؟

اورکیا اپنی عام بات چیت میں یہی بےہودہ الفاظ استعمال کرتی ہیں

گالم گلوچ کس طرح کی کرتی ہیں

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now