shahg

"چوبا" (لن چبھونے والا)

Recommended Posts

 

"چوبا" (لن  چبھونے  والا)

          ہیلو دوستو! ایک  نئی  کہانی    کے  ساتھ  حاضر ہوں ۔۔ سوری    میں    آپ کو     بتانا    بھول گیا   کہ    یہ کہانی اتنی  بھی   نئی  نہیں   ہے   بلکہ   یہ سٹوری  آج   سے  کافی  عرصہ    پہلے    رومن   اردو   میں   شائع   ہو   چکی  ہے   جسے  میں  نے   اپنی   پرانی   فائلوں  سے  جھاڑ  پونچھ  کر   اس   میں  تھوڑی       کمی    تو   نہیں     ۔۔۔البتہ  کافی زیادہ      بیشی  کر  کے  آپ  کے  لیئے   شریطہ  نیا   پرنٹ    بنایا    ہے  اگر  آپ    کو   میری  یہ      کاوش     پسند  آ  گئی   تو  یہ   میری   خوش بختی   ہو گی   اور اگر  نہ  آئی   تو   آپ کو   بور    کرنے   پر  ۔۔۔۔میری  طرف  سے   پیشگی   معذرت  قبول  فرمایئے۔  اب  آتے   ہیں  سٹوری   کی   طرف ۔۔۔

         دوستو    کچھ   دن    پہلے   کی   بات   ہے کہ   میں  اپنے    ایک   دوست   کی   بہن   کی  شادی  میں  گیا  تھا   چونکہ  وہ     میرا    کافی   قریبی  دوست   تھا   اس   لیئے   اس    نے     مجھے     بھی    اپنے       ساتھ      باراتیوں    کے     لیئے     استقبالیہ    قطار   میں  کھڑا   کر     لیا   تھا     ابھی    مجھے     قطار   میں   کھڑے     کچھ   دیر   ہی          گزری      تھی     کہ     بارات  آ  گئی    دستور    کے  مطابق   سب   سے  آگے    دلہے     میاں     کی    کار تھی   چنانچہ    سب   سے    پہلے     وہی    گاڑی    سے    اُترا     اور    باری  باری     ہمارے     ساتھ    گلے   ملا    اس  کے   بعد   دلہے  کے  ساتھ   آئی   ہوئی      باقی   گاڑیوں    میں   سوار  لوگوں  کا  بھی   اسی طرح      خیر مقدم  کیا  گیا۔    اسی   اثنا   میں  شادی   ہال    کے  پورچ   میں     عورتوں   سے  بھری    ہوئی   کوسٹر داخل  ہو ئی۔  چنانچہ   زنانہ    کوسٹر   کو     دیکھتے      ہی۔۔۔۔ میں    کار    والے    باراتیوں   کو   چھوڑ  ۔۔۔   کوسٹر     کی  طرف  چل    پڑا۔۔۔ ۔۔اور   اس    سے   اترنے   والی    خواتین   کو  دیکھ کر اپنا   دل  پشوری  کرنے  لگا  ۔۔۔   کوسٹر  سے   ابھی   چند         ہی      لیڈیز     اتری      ہوں  گی کہ    اچانک    اس      کی   سیڑھیوں     سے   اترتے      ہوئے   مجھے    'وہ" نظر    آ  گئی   ۔۔۔ اسے    دیکھ      کر     ایک  دفعہ   تو   میں ٹھٹھک       کر     رہ گیا۔۔۔اور   سوچنے   لگا  کہ  کہیں        یہ   میری   نظروں    کا    دھوکہ    تو     نہیں     ہے۔۔۔ پھر  زرا      جو    غور    سے    دیکھا   ۔۔۔۔تو     وہ ۔۔۔ " وہی" تھی۔۔۔ اتنے   عرصہ   گزرنے       کے    بعد  بھی   اس    میں   زرا     بدلاؤ    نہیں    آیا    تھا     ظالم    ابھی   تک   ویسی    کی   ویسی      ہی  تھی         اس   کی  گریس   ، اس   کا  بانکپن   ۔۔۔  اس  کی  دل کشی    اور  سب   سے   بڑی   بات     یہ کہ    اس   کے  انگ    انگ       میں   بھری       سیکس    اپیل     غرض   سب  کچھ   ویسے  کا  ویسا   ہی  تھا۔۔۔۔   ۔  میں  نے  اسے  دیکھا   تو  دیکھتا   رہ   گیا۔۔  کوسٹر  کی    سیڑھیوں    سے  اترتے    ہوئے     ایک   لمحے   کے  لیئے    ہماری   آنکھیں   چار  ہوئیں۔۔  اسی     ایک  لمحے   کے  دوران۔۔۔    مجھے   اس  کی     آنکھوں   میں  ان  گنت    ۔۔۔ باتیں  ۔۔شکوے   شکایات   ۔اور     بہت  سارے     ان   کہے  سوالات   نظر  آئے    ۔۔ لیکن  پھر     اگلے    ہی      لمحے   اس   نے   ایک    ادائے    بے نیازی    کے    ساتھ    اپنے       سر  کو    جھٹکا   جو  کہ اس  کا  خاصہ   تھا ۔۔۔اور  پھر  بڑی     تمکنت  کے   ساتھ     چلتی   ہوئی     شادی      ہال    میں  داخل  ہو  گئی ۔۔۔ وہ    تو   چلی   گئی  ۔۔ لیکن    اسے    جاتے   دیکھ    کر    میرے   من     کے   دریچوں      میں  آپ    ہی   آپ     یادوں   کے  جھروکے    کھلتے     چلے     گئے۔ اور   میں اپنے   دوست   سے   آنکھ    بچا    کر      چپکے  سے  شادی   ہال    کے ایک     کونے  میں   پڑی     خالی   کرسی    پر   جا      کر        بیٹھ  گیا۔۔۔اس    وقت      میرے   زہن   میں   اس     کی   من   موہنی   صورت  ، اس  کی  باتوں  کا  انداز،   اور سب  سے   بڑھ کر     اس  کے  سیکس    کرنے    کا   سٹائل   اور   سیکس    کے   دوران    اس  کی  مست  باتیں ۔۔غرض     اس    سے   جڑی     ایک    ایک     بات      یاد     آنے  لگی۔

 

 

        دوستو! یہ  قصہ تب  کا   ہے کہ   جب    ہمارے   ملک   میں  اچانک   ہی    پیاز     کی    بہت  ہی  شدید   قلت   پیدا      ہو  گئی تھی۔۔ اور   اوپر    سے     بکرا   عید      کی  آمد آمد  تھی     ۔ عام   بازار   میں    اول     تو     پیاز       ملتے   ہی  نہیں   تھے     لیکن  اگر  کہیں    سے  مل  بھی    جاتے     تو    وہ   اتنے      زیادہ      مہنگے      ہوتے    تھے       کہ      ہم   جیسے  لوئر   مڈل   کلاس     کے        لوگ   اسے   خریدنے    سے  قاصر   تھے    اس    لیئے      گزشتہ         کئی       دنوں  سے   ہمارے    گھر   میں       پیاز    کے   بغیر   کُکنگ  ہو  رہی  تھی ۔   یہ    ایک   اتوار   کے   شام   کی   بات   ہے کہ   ہماری   ہمسائی    جو  کہ اکثر   اتوار    بازار   سے   ہی    پورے     ہفتے    کا     راشن      خریدا    کرتی  تھی    نے   آ  کر  امی  کو   اطلاع   دی  کہ  ابھی  ابھی   اتوار   بازار  میں   پیاز وں  سے    بھرا          ٹرک   آیا    ہے     اور     یہ    پیاز              بازار  سے  کافی   سستے    داموں     مل   رہے   ہیں   جس     وقت     ہماری     وہ    ہمسائی    امی    کو   پیازوں     کے    بارے    یہ  قیمتی   معلومات     فراہم   کر   رہی تھی   تو   عین     اس    وقت     اتفاق    سے    میں   بے   چارا      قسمت   کا     مارا    کچن   میں   ہی     موجود   تھا  ۔  ہمسائی    کی   بات    سنتے    ہی    امی    نے    میری   طرف   دیکھا   اور   پھر   پرس  سے   پیسے   نکال  کے  دیتے   ہوئے   بولیں  کہ   ابھی   اور   اسی   وقت    اتوار    بازار   جا   کر     پیاز    لے آؤ۔  میں نے   مختلف   حیلے   بہانوں   سے   بات  کو     ٹالنا     چاہا ۔۔ لیکن   سستے     پیازوں     کا   سن    کا      امی    حضور  بھلا  کہاں  رہنے   والی  تھیں     اس   لیئے    انہوں   نے    میری  ایک     نہ  سنی   اور  اس  سے  پہلے    کہ    وہ    اپنی  بات کو بزورِ  کفگیر  مناتیں۔۔۔ چار  و   ناچار   مجھے    اتوار     بازار   جانا    ہی    پڑا۔ میں   اپنی     ہمسائی  کی  شان   میں قصیدے   پڑھتا  ہوا      جب   اتوار   بازار   پہنچا    تو    وہاں    پر    ایک  ٹرک   کے  پاس   مجھے       خواتین   و   حضرات   کا    زبردست    رش   دیکھنے   میں   نظر آیا ۔ تھوڑی    سی    پوچھ  گچھ  پر     ہی   پتہ  چل  گیا    کہ    اسی   جگہ    پیاز      مل   رہے    ہیں    چنانچہ  میں بھی  مطلوبہ    جگہ    پر  پہنچ   گیا ۔۔۔ اور    وہاں  جا   کر    بہ  چشم ِ خود        دیکھا   تو   مرد  و   زن   کا     ایک  جمِ غفیر     تھا  جو  کہ   میری       طرح       پیاز       خریدنے   کے   لیئے   آیا     ہوا   تھا    چنانچہ   میں  بھی   لائن   میں  کھڑا   ہوا   گیا   بلکہ   یوں   کہنا   چاہئے   کہ   لائن    کی   بجائے     ایک  عجیب   قسم     کی   دھکم  پیل  جاری  تھی  جیسے  کہ  یہاں  مفت  میں  پیاز    مل  رہے  ہوں ۔ خیر  میں  بھی   اسی   دھکم  پیل  کا  حصہ  بن  گیا   اور   دوسروں    کی طرح   بائی  ائیر         پیاز     لینے   کی   کوشش  کرنے   لگا    چنانچہ   اس   دھکم  پیل   میں ۔۔۔میں  نے   بھی    زور   لگا  کر آگے  کی طرف   بڑھنا   شروع  کر  دیا۔۔۔ میرے  قریب      ہی      کچھ   لیڈیز    بھی   کھڑی  تھیں    اسی   اثناء     میں   اچانک  ہی       پیچھے   سے   مجھے    ایک   دھکا     لگا   جس     کی    وجہ     سے      میں   پھسل  کر   ان   لیڈیز    کے    مزید    قریب   بلکہ  عنقریب      ہو   گیا۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

   جیسے  ہی  میں  خواتین  کے  قریب      ہوا۔۔۔ تو  عین  اسی   وقت    دکاندار    کی  آواز   سنائی  دی  کہ  خواتین   و  حضرات        مہربانی       کر     کے     لائین   بنائیں   ورنہ   کسی   کو  بھی    پیاز   نہیں  ملے    گا ۔۔ساتھ   ہی  وہ      روہانسا    ہو  کر  بولا    ۔۔   خدا کے  لیئے  لائین     بنا   لو   ورنہ۔۔ میں  اپنا  ٹھیہ   بند  کر  دوں  گا ۔  دکاندار   کی   دھمکی    سنتے   ہی   سب  نے  جلدی  سے  لائن  بنا  لی ۔۔۔اور   پھر۔۔۔۔۔     لائین    بنتے      ہی      اتفاق     سے      میرے   عین    آگے  ایک  خاتون   آ   گئی     ۔۔۔ جیسا        کہ  ہوتا   آیا   ہے  ۔۔۔۔ یہ  لائین   بھی   بس   کچھ     ہی     دیر       تک       برقرار       رہی ۔۔۔ اور   پھر        پیچھے  سے        ایک    دھکا     لگتے    ہی      اس    لائین      کا     بھی      وہی   حال   ہو   گیا   اور   میں  اس     وقت     کو     کو س   رہا   تھا    کہ      جس     وقت       ہمسائی     کو     دیکھنے       کے      باوجود   بھی    میں      گھر      پر  موجود     رہا۔۔۔  اور     ساتھ     ہی    یہ بھی     سوچ    رہا   تھا  کہ     کاش   میں   اس   کو         دیکھ   کر    کھسک  گیا     ہوتا   ۔۔۔ تو      آج  یہ   ذلت   تو   نہ      دیکھنی    پڑتی۔۔۔ادھر   جیسے  ہی   لائین    ٹوٹی  ۔۔تو      میں   نے   بھی   آگے    بڑھنے    کے  لیئے   زور  لگانا    شروع      کر  دیا۔۔۔ اتفاق    سے   اس   وقت   بھی  میرے  آگے    وہی    خاتون   کھڑی  تھی   اور   یوں  زور   لگا    کر  آگے    بڑھنے      سے   میں   اس   خاتون   کے  بلکل  ساتھ   لگ   گیا۔۔۔ اتنا   قریب   کہ    میری  فرنٹ      اس  کی   بیک   کے   ساتھ     ہلکی   سی   ٹچ     ہو  گئی   لیکن   اس    وقت    تک      میں    نے   اس      بات  کو     بلکل  بھی    نوٹ    نہ    کیا       تھا    کیونکہ      میری   تو    ساری  توجہ       پیازوں   کی  طر ف    لگی    ہوئی   تھی۔۔۔۔۔

 

      اس  طرح      کھڑے     ہونے   کے     کچھ   ہی   دیر   بعد ۔۔۔۔  ایک   لحظے     کے  لیئے     مجھے      کچھ   ایسا     محسوس  ہوا  کہ     میرے  آگے  کھڑی     ہوئی   خاتون  کے   نرم  و   ملائم      ہپس   کچھ  زیادہ   ہی  میرے  ساتھ  ٹچ   ہو    رہے  ہیں ۔۔لیکن  میں   نے  کوئی    خاص   توجہ   نہ   دی ۔۔۔۔ پھر   تھوڑے    وقفے   کے   بعد۔۔۔۔۔ پتہ   نہیں   کیسے   اس   خاتون   کی   نرم   سی   گانڈ     میرے    اگلے  حصے    کے  ساتھ    ہلکی  ہلکی    رگڑ  کھانے  لگی ۔۔ اور   جب     یہ   واقعہ   لگا   تار       وقوع       پزیر    ہونا      شروع       ہوا      ۔۔۔۔۔ تو      ۔۔۔ پہلے  پہل     تو  میں   نے  اس        کا  کوئی   نوٹس   نہ   لیا۔۔۔  اور        سوچا  کہ      رش    میں   ایسا   ہو    ہی   جاتا   ہے ۔۔لیکن  جب ۔۔۔۔ وہ  رگڑ ۔۔۔ مسلسل   ہونے  لگی   تو  میرا    ماتھا   ٹھنکا ۔۔۔ اور   میں   کچھ  سوچنے   پر  مجبور  ہو  گیا ۔۔   اس    کے   اگلے     ہی  لمحے    میرے   آگے   کھڑی     ہوئی  اسی      خاتون    کی     موٹی   اور  نرم  گانڈ    عین   میرے   نیم   کھڑے  لن   کے  ساتھ    فکس     ہو  کر    ۔۔۔ ساکن      ہو  گئی۔۔۔پھر   چند   سیکنڈ  ساکن     رہنے   کے   بعد ۔۔   جیسے    ہی    میرے   لن     پر ۔۔۔ اس   خاتون      کی  نرم       ہپس      کی     وہی   رگڑ  اور   سافٹ سا   ٹچ   ۔۔۔ محسوس     ہوا۔۔۔      میرے  جسم  میں   ہائی   وولٹیج     کرنٹ    دوڑنے   لگ  گیا۔۔۔اور    اس   وقت     میرے   دل   میں    خیال  آیا     کہ    پیازوں      کی   ماں   چودو ۔۔۔ پہلے   اس نرم  گانڈ  کے   مزے   لے   لوں  اور۔۔۔ پھر        اس  کے  بعد      میری    ساری        توجہ  اس   خاتون   کی  کومل   سی     گانڈ   کی  طرف  مبزول   ہو  گئی۔   چنانچہ   اگلی   بار   جیسے  ہی        اس     کی     نرم   اور   کومل   سی    گانڈ    میرے  نیم     کھڑے     لن   کے  ساتھ  ٹکرائی   ۔۔۔ تو    بندہ      پہلے  سے    ہی     ہوشیار     باش     تھا   اس    لیئے     جب     اس    خاتون   نے   اپنی   گانڈ    کو   میرے   لن   کے   ساتھ    رگڑ نے      کے   لیئے   تھوڑا     پیچھے   کی  طرف         کیا    تو    میں   نے    جلدی   سے  اپنے  نیم    کھڑے    لن  کو  اس   کی   موٹی    سی    گانڈ   کی  دراڑ    میں  پھنسایا ۔۔۔اور  پھر      بڑی   معصومیت   کے  ساتھ   لن  کو       ہلکا  سا  دبا   کر ۔۔۔۔۔۔ اس   خاتون  کے  ردِ عمل  کا  انتظار  کرنے  لگا۔۔۔۔واؤؤؤؤؤؤؤؤؤ۔۔۔ اس  کا   ردِ عمل  بہت  حوصلہ   افزا   تھا   ۔۔۔  لن     کے  گانڈ    میں    رکھتے     ہی     ۔۔۔ اس       نے  بھی ۔۔۔اپنی   گانڈ  کو   میرے    لن   کی   طرف    ہلکا     سا     پُش  کیا      اور   اس  کے  ساتھ ہی  اس   نے   کھڑے کھڑے   اپنی  گردن     کو   گھما    کر    ایک  نظر    میری   طرف   دیکھا    اور   پھر       دھیما  سا   مسکرا    دی ۔۔۔۔۔آہ ہ ہ ہ۔۔۔ ۔۔ کیا   ظالم   مسکان تھی۔۔   اس   چاند   چہرہ   ستارہ   آنکھوں   اور شبنمی    ہونٹوں   والی   خاتون   کی ۔۔۔ ۔اور کس  قدر    خوب صورت  اور  پُر کشش   لیڈی  تھی    یارو۔۔۔   میں    تو    اسی   وقت    سچے   دل   سے اس   پر      عاشق    ہو   گیا۔۔میں   نے   ا س  کے گورے گورے  گالوں کو  ابھی   ٹھیک   سے   دیکھا   بھی  نہیں   تھا   کہ   اس     نے  دوبارہ      سے       اپنا    منہ    آگے   کی  طرف      کر لیا ۔۔۔۔اور   پھر   پہلے     کی  طرح  اپنی      گانڈ   کو      میرے  لن    کے  ساتھ فکس    کر  کے          دھیرے  دھیرے     اسے          ہلانے     ۔۔۔جیسا   کہ    میں   آپ   کو   پہلے   ہی   بتا   چکا   ہوں  کہ    ۔۔۔۔ وہاں    پر    ایک  عجیب  ادھم     مچا   ہوا  تھا۔۔۔ اور   اس    دھکم   پیل     میں         ہم    دونوں   اپنی     اپنی      مستی    میں    مست  ۔۔۔۔موقعہ     دیکھ   کر   میں۔۔   کبھی   اس   کی   گانڈ    میں  اپنا    لن   پھنسا  لیتا ۔۔۔اور کبھی    اسے      باہر   نکال  لیتا  ۔۔۔     یونہی      چلتے   چلتے   کچھ   ہی  دیر  میں   جب   میرے    آگے کھڑی     وہ   کافر    حسینہ  ۔۔۔۔ ٹرک    کے    پاس   پڑی        پیازوں     کی   ڈھیری   کے قریب   پہنچ    گئی   تو   اچانک    ہی    اس    نے ایک نظر   مڑ   کر  میری   طرف   دیکھا ۔۔۔۔۔اور   پھر     نیچے  جھک  کر   بظاہر   پیازوں    کو   دیکھنے    لگ   گئی۔۔۔

 

 

      مجھے  اس  کی  طرف   سے  گرین  سگنل  تو   مل   ہی  چکا    تھا    اس  لیئے   جیسے   ہی     وہ     نیچے    کو     جھکی ۔۔۔ تو    اسی  لمحے        میں   نے  کن   اکھیوں    سے   ادھر  ادھر   دیکھ       کر   حالات     کا   جائزہ    لیا۔۔۔ ۔۔۔۔  تو   محسوس       ہو  ا        کہ    وہاں   پر  موجود    لوگوں   کی    پوری    توجہ    پیازوں     کی     طرف    لگی  ہوئی  تھی  ۔۔۔۔ ہر   کوئی  اسی   چکر  میں  لگا   ہوا   تھا  کہ کسی  طرح  سے    وہ        سب  سے   پہلے     پیاز    لے  لے۔۔۔   ہر طرف  ایک   عجیب  سی     ہڑ نگ  بونگ  مچی   ہوئی  تھی۔۔  چنانچہ  ادھر   ادھر     دیکھنے      کے    بعد     میں    بڑی     احتیاط      کے    ساتھ     آگے   بڑھا  اور  ایک  ہاتھ   سے  اس  خاتون     کی  قمیض  کو ایک   سائیڈ   پر   کیا۔۔۔ (اپنی     قمیض    کو    میں    پہلے   ہی   سائیڈ     پر کر   چکا    تھا)۔۔۔۔ اور   پھر  کن  اکھیوں     سے    آس   پاس     دیکھتے    ہوئے  اپنے   لن  کو  پکڑ  کر   اس     کی    بڑی   سی  گانڈ  کی  دراڑ   میں   گھسا     کر     ۔۔  ہلکا     سا   دھکا    بھی       لگا   دیا۔۔۔ ۔۔۔۔اُ ف ف ف فف ف  ۔۔ کیا   بتاؤں    یارو۔۔۔اس  کی   بڑی   سی   گانڈ   نہ   صرف   یہ  کہ   روئی       کے  گالے      کی   طرح   بہت   ہی  نرم  و  ملائم   بلکہ   خاصی    گرم    بھی    تھی   اس   لیئے     میرا   لن   اس   کی   ریشمی      شلوار     سے   پھسلتا    ہوا    سیدھا    اس  کی   گانڈ    کے   سوراخ     کے  ساتھ    ٹچ   ہو  گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔

 

لنڈ صاحب      کا    اس  کی    گانڈ    کے    سوراخ   کو      چھُونے     کی   دیر تھی ۔۔کہ   وہ    کافر  حسینہ    تھوڑا    سا  کسمائی ۔۔۔ ۔ اور پھر   میرے   لنڈ     کو   اپنے   سوراخ     پر   ایڈجسٹ   کرنے  لگی۔۔۔ اور  پھر         جب    میرا   ٹوپا ۔۔ بلکل  اس   کی  گانڈ      کے   سوراخ    کی    سیدھ    میں  آ گیا  ۔۔۔ تو     اس  کے ساتھ   ہی  اس  نے  اپنی   گانڈ  کو   ڈھیلا    چھوڑ  دیا     ۔جس     کی  وجہ     سے   میرے   لن  کی    موٹی  سی    نوک  کا  تھوڑا    سا  حصہ  پھسل  کر  اس  کی   ریشمی  شلوار  سمیت  اس  کی   گانڈ    کے   سوراخ   میں  پھنس  گیا  ۔۔۔۔ اُف  اس  کی  گانڈ     کا   رِنگ  بہت   ہی   نرم   اور    ڈھیلا       تھا ۔۔۔۔اور       شاید  تھوڑا      کھلا  بھی  ہو گا  ۔۔ لیکن   میرے        لن   کے  حساب    سے    ابھی  بھی  اس     کا      سوراخ    بہت   تنگ   تھا   اسی     لیئے  اس    کی کوشش کے  بوجود  بھی      میرا      پورا       ٹوپا     اس  کی  گانڈ   کے  اندر  نہیں     جا      پا       رہا    تھا۔۔۔ یہ    دیکھ    کر  اس    خاتون   نے    ہمت  نہ  ہاری     اور  اپنی  گانڈ  کو  آخری   حد    تک      ڈھیلا     چھوڑ    کر     اسے     پھر    سے       پیچھے   کی   طرف      دھکیلنا      شروع   کر   دیا۔۔۔  ۔۔ دوستو۔۔جیسا    کہ  آپ  کو  معلوم   ہے  کہ  میرا   لن   کافی   موٹا  اور  بڑا  ہے  اس      لیئے   اس   کی   بار   بار  کی  ٹرائی   کے   باوجود     بھی  ۔۔۔۔ میرے   ٹوپے   کی   چونچ        ہی   اس    کی    گانڈ   کے     ڈھیلے     سوراخ       میں   جا     سکی ۔ میرے  خیال  میں   میرے    ٹوپے      کی  موٹائی    کو  محسوس  کر  کے  ۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔ کچھ  سیکنڈز    کے  بعد      اس   نے   میرے    پورے   ٹوپے  کو   اپنے   اندر   لینے    کی   کوشش     ترک  کر  دی ۔۔۔اور    پھر     کچھ    دیر   تک      ایسے   ہی    ساکت     ہو  کر     جھکی     جھکی  ۔۔۔      میرے    ٹوپے   کی  چونچ   کو  اپنے  سوراخ      میں   لیئے    لطف  اندوز   ہوتی      رہی۔۔۔۔

 

 

اس   وقت   شام   کا  دھند  لکا     گہرا     ہوتا   جا   رہا  تھا ۔۔۔    اور      آس  پاس    اندھیرا   بھی  کافی   حد  تک   بڑھتا    جا   رہا    تھا    جب     اس  نے    اپنی   گانڈ     کے       کریک   میں     پھنسے    میرے   لن    کو   اپنے        ہاتھ     سے   پکڑ   کر    باہر     نکالا   اور  پھر ۔۔   مجھے    اشارہ   کرتے   ہوئے   مین       رش   والی    جگہ   سے  تھوڑا     ہٹ    کر   نسبتاً    ایک  زیادہ    اندھیری   جگہ    کی  طرف   چلنا    شروع       ہو  گئی   ۔جہاں    پر   ایک    تو      اس     جگہ    کی  نسبت   رش     کم    تھا     اور    دوسرا     بیوپاری   نے   وہاں    پر    تھوڑے     خراب       پیازوں    کی   ایک   علحٰیدہ    سے     ڈھیری      لگائی       ہوئی  تھی  اسی  لیئے  اس  طرف   لوگوں  کی  توجہ  بہت    کم تھی۔۔۔ ۔۔  اس   وقت   چونکہ      شام     بہت   گہری        ہو  چکی  تھی ۔۔اور   بیوپاری    کے  پاس    مال  بھی   کم    رہ   گیا   تھا  ۔اس   لیئے     تمام   لوگ   پیاز   لینے   کے   لیئے   پاگل   ہو   چلے   تھے   جبکہ    دوسری    طرف        میں   اس    خاتون    کی   سندر   گانڈ    کے   لیئے   مرا      جا   رہا  تھا ۔۔۔ چنانچہ   اسے   آگے   جاتا   دیکھ  کر   میں   کہاں    پیچھے      رہنے      والا   تھا  ۔۔۔ اس    لیئے    میں    بھی  اس  کے  پیچھے  پیچھے   چلتا  گیا۔۔۔۔اور  پھر    جہاں  پر   جا   کر   وہ   رُکی۔۔۔ میں  بھی  رک گیا   اور   اس   کو    یہ      باور کرانے     کے  لیئے   کہ   میں    اس کے  پیچھے   کھڑا ہوا    اپنے  لن  کو  اس  کی     گانڈ  کے  ساتھ   ٹچ   کیا۔۔  ادھر  جیسے    ہی   میرا   لن  اس   کی  گانڈ   کے  ساتھ   ٹچ   ہوا     اس  نے    مُڑ  کر     ایک  نظر     میری   طرف   دیکھا    اور   پھر  مطمئن     ہو کر ۔۔۔۔     نسبتاً    خراب    والے     پیاز وں   کے     ڈھیر   پر جھک  کر   بظاہر     صاف صاف        پیاز  سلیکٹ  کرنے لگی۔۔۔ جیسے  ہی   وہ  نیچے  جھکی   میں  نے کن   اکھیوں   سے  ایک نظر  ہجوم   پر   ڈالی   ۔۔۔۔ شام    ڈھلنے   کی   وجہ  سے  لوگوں   کی  چیخ    و  پکار     میں      کافی   شدت   آ گئی تھی اور    وہ    پیاز   لینے  کی   کافی   زور  و  شور   کے  ساتھ  کوشش   کر  رہے   تھے   اس  طرف   سے  اطمینان    کے   پہلے  تو   بعد    میں   نے احتیاط     کے  ساتھ  اپنی  اور  اس    خاتون   کی قمیض  کو   ایک سائیڈ  پر کیا اور   پھر  اپنا   لن پکڑ کر  اس  کی   بڑی  سی   گانڈ   کی   دراڑ   میں گھسا   دیا۔۔۔ دوسری  طرف  وہ   پہلے   سے   ہی   تیار بیٹھی  تھی   چنانچہ  جیسے  ہی   میرا   لن   اس   کی   گانڈ   کی   دراڑ   میں گھسا ۔۔۔   اس   نے  اپنی   گانڈ  کو    ڈھیلا   چھوڑ   کر    تھوڑا   سا   ہلایا   جلایا ۔۔اور پھر  حسبِ سابق   میرے   ٹوپے کی        چونچ         کو     اپنی    گانڈ     کے  سوراخ   پر  رکھ    کر  کے   تھوڑا    پیچھے   کی   طر ف   دھکا   لگایا۔۔۔۔گانڈ    ڈھیلی   ہونے  کی وجہ  سے   میرے    ٹوپے    کا   اگلا     سرا ۔۔۔۔ سرکتا   ہوا   اس   کی   بڑی   سی    گانڈ   کی     موری   میں  جا  کر    پھنس گیا۔۔۔ جیسے  ہی   میرے    ٹوپے     کا    اگلا     سرا      اس  کی  گانڈ        کے   سوراخ   میں  ایڈجسٹ   ہوا۔وہ    اوپر   کو      اُٹھ   گئی  اور  اس  کے   ساتھ  ہی ۔۔۔  اس    نے        میرے      باقی    ماندہ         تنے      ہوئے  لن کو     اپنی    گانڈ     کے   کریک    میں  لے   کر    اسے  "  کُھل بند " کرنا  شروع   کر  دیا   اُف   کیا    بتاؤں           دوستو۔۔۔جیسے        ہی     وہ      اپنی     گانڈ         کو    مستی     سے    بند   کرتی  ( جسے   پنجابی   میں  گھوٹ  مارنا   کہتے   ہیں )  تو    اس   کی    گانڈ     کے        نرم    سوراخ     میں      پھنسا     ہوا     میرا    ٹوپا      پھسل کر    اس    کی  موری      سے    باہر آ  جاتا   ۔۔۔۔ یہ   دیکھ  کر   اگلے    ہی    لمحے    وہ      دوبارہ                   سے        اپنی      گانڈ      کو      ڈھیلا   چھوڑتی    اور ۔۔۔۔۔پھر  اسی   طرح      ۔۔۔۔۔  ایک     مستی     اور سُرور      کے   عالم    میں    وہ    دوبارہ               سے      میرے  ٹوپے  کی   چونچ    کو       اپنی      گانڈ     کے       سوارخ    میں  لے کر  ٹھیک         اسی طرح    گھوٹ     مارتی ۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔۔۔          ۔۔ اس    کے  اس    طرح    کرنے     سے  میں  پوری  طرح   شہوت   کے  نشے        میں   میں   ڈُوب گیا    تھا  ۔۔۔۔اور پھر  اسی    نشے     کے   زیرِ اثر   میں   نے اس   کی  گانڈ      میں   دھکے    لگانا    شروع    کر   دیئے۔۔۔ ۔یہاں     پر     ایک    اور    بات    واضع    کر تا   چلوں       اور وہ   یہ کہ ۔۔۔۔ایسا      بلکل بھی نہیں         تھا       کہ ہم   دونوں  آس   پاس     سے   بے خبر  ہو کر  اندھا  دھند  ۔۔ یہ کھیل  کھیل   رہے  تھے    بلکہ   ہم   تو      بڑی    ہی   احتیاط     اور    دھیان   کے    ساتھ  مزے  لے   رہے تھے  اوپر           سے     اندھیرا  بھی  ہم   دنوں   کی  اس   سیکس    سے  بھر   پور  گیم  کو   کافی   حد           تک    کور  کر  رہا   تھا۔۔۔  ہاں  تو   میں   کہہ   رہا   تھا کہ   جیسے    ہی   میں   اس   کو   دھکا  لگاتا ۔۔۔میری   ٹوپے  کی  نوک  اس  کی    گانڈ   کے  نرم   اور  ملائم           رنگ      کے       تھوڑا   اندر گھستی ۔۔۔  اور  میرے  دھکے   کے   جواب  میں  وہ   بھی   بلا توقف       اپنی   مست   گانڈ   کو    میرے لن   پر   نہ  صرف   یہ کہ   رگڑتی    بلکہ ۔۔۔۔  کھل  بند    بھی  کرتی    تھی      جس   کی   وجہ    سے   میرا    سارا    لن اس  کی نرم      گانڈ    کی   دونوں   پہاڑوں         میں   دھنس       جاتا   تھا  اور      میرے  لن   کے  ساتھ    اس کی  گانڈ        کی             دونوں  پہاڑیں  جھپی      ڈال    دیتیں  تھی       اور       ہم   دونوں          شہوت   کے    نشے    میں   چُور      ایک   دوسرے   کے  جنسی   اعضاء        کے  ساتھ      بھر   پور  مزہ     لے    رہے   تھے۔۔۔۔۔ ۔۔

 

 

    کچھ   دیر  وقفے     کے   بعد   اس  نے ایک  بار  پھر  حاضرین   پر  نظر     ڈالی۔۔۔۔اور   ادھر  سے اطمینان     کے بعد     میرے   لن   کو  اپنی  نرم   گانڈ   میں  لیئے   لیئے   وہ  پھر         سے       نیچے  کو  جھکی   ۔۔۔اور۔۔۔۔اور  اب  کی  بار      میں  نے   نوٹ کیا   کہ    پہلے   کے   مقابلے   میں   اس   دفعہ   وہ   کچھ   زیادہ    ہی  نیچے    کوجھک    گئی  تھی   ابھی  میں  اس   بارے   میں غور        ہی   رہا    تھا  کہ  اچانک  اس  نے   اپنے    ہاتھ کو   دونوں   ٹانگوں   کے  بیچ    میں      سے  گزارا۔۔۔۔اور     اپنی    گانڈ       میں  پھنسے  میرے لن کو   اپنے   ہاتھ  میں پکڑ   لیا۔۔۔۔ ۔۔۔وہ      کچھ   دیر  تک   میرے   لن   کو   دباتی   رہی      اور     میں   یہ   سوچ    رہا   تھا   کہ   یا  تو    یہ        خاتون   بڑی   ہی سیکسی   ہے   یا   پھر     بہت    زیادہ   پیاسی ۔۔۔ بعد  میں  میری  دونوں  باتیں  درست  نکلیں     مطلب  یہ کہ  وہ   بڑی   ہی   پیاسی  اور سیکسی  عورت تھی    سیکس            کی   طلب   اس   میں  کوُٹ    کوُٹ  کر   بھری    ہوئی  تھی۔۔۔۔ میرے  لن  کو   کچھ   دیر    تک   دبانے   کے   بعد   اس نے  اپنی    گانڈ  کو  تھوڑا      اوپر  اُٹھایا  ۔۔۔اور ۔۔اور ۔۔۔پھر      میرے  لن  کو    پکڑ   کر    اپنی     چوت   کے  دونوں    لبوں   کے   بیچ   میں رکھ  کر     رگڑنے   لگی۔۔اُف ف فف   ف ف فف ۔۔   اس  خاتون  کی    ساری    چوت  پانی   میں    ڈوبی   ہوئی تھی    اور   اس   وقت   اس   کا      یہ       پانی   چوت   کے  لبوں   سے  باہر  چھلک  رہا   تھا ۔   وہ  کچھ  دیر  تک   میرے  لن  کو   اپنی  چوت   کے   دونوں   لبوں   کے   بیچ   میں  رگڑتی  رہی    پھر  اس   نے  میرے  لن  کو  پکڑ  کر  اپنی  کھلی   پھدی   کے   دونوں   ہونٹوں   کے   بیچ   میں   رکھا  ۔۔۔ اور  اس  کے  ساتھ      اپنی     ہپس   کو    پیچھے    کی  طرف       پُش کیا۔۔۔۔۔جس     کی   وجہ      سے      میرے    لن   کا   ٹوپا           پھسلتا  ہوا   اس   کی  گیلی       شلوار  سمیت   ۔۔۔۔ اس    کی   کھلی  پھدی   میں  گھس  گیا ۔۔اُف    اندر   سے   اس  کی   پھدی   تندور  کی  طرح  گرم  اور   (لن  کی طلب  میں)  جل  رہی تھی۔۔ ۔ جب   میرے  لن  کا  تھوڑا  سا   حصہ  اس  کی  کھلی  ہوئی      چوت   میں گھس  گیا ۔۔۔تو  اب  وہ    خود   ہی        احتیاط   کے  ساتھ    آگے  پیچھے   ہونے  لگی۔۔۔اس  کے  آگے   پیچھے  ہونے  سے  میرا   لن  اور   اس  کے  ساتھ   شلوار   کا  وہ   حصہ  جو  کہ  اس   کی   چوت   میں  گھسا  ہوا تھا      اس  کی   چوت          کے     پانی     سے  بہت  زیادہ  گیلا  ہو گیا    تھا۔۔۔۔۔دسری   طرف   وہ  اپنی   چوت   میں  میرے  آدھ   پھنسے    لن کو  لے  کر   کھڑی  ہو  گئی    اور      پھر       بڑی    آہستگی    کے  ساتھ    اپنی    ہپس   کو     میرے  لن   پر   برش   کرنے  لگی۔۔۔جس  کی  وجہ   سے  میں   مزے   کے   ساتویں  آسمان  پر پہنچ  گیا   ۔اور         بے خودی       کے   عالم       میں  اس  کی    گیلی    چوت   کے  مزے   لیتا   رہا۔۔    جیسا کہ آپ کو  معلوم  ہے کہ  اس   وقت  تک   میں   کافی   آنٹیوں   کی   بجا   چکا   تھا   اپنی     اپنی  جگہ     پر    وہ     خواتین  بھی       بے حد   گرم اور    سیکسی تھیں       لیکن   بلا شبہ  اس   خاتون   کی   بات    ہی    کچھ   اور تھی ۔۔۔۔  اس       کی   چوت   بڑی  ہی  گرم   اور  تندور   کی   دھک    رہی تھی ۔۔۔۔اس    کے    باوجود        کہ    اس    خاتون   کی   چوت    کافی   کھلی   اور  کچھ     زیادہ          ہی     استعمال شدہ تھی    تھی   لیکن   جیسی بھی  تھی  ۔۔۔ وہ تھی   بڑی     ہی  مست   اور   زبرست ۔۔۔  کچھ    دیر  تو  میں  اس  کے  ہلکے  ہلکے  گھسوں  کا   مزہ     لیتا  رہا ۔۔۔۔ پھر ررررررررر۔۔اچانک  ہی  میری   سیکس   لائف  کی  و ہ      انہونی       ہو  گئی ۔۔۔۔ جو       آج     تک     نہ    ہوئی  تھی   ۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔ یہ۔۔ یہ  نہیں  ہونا  چایئے   تھا۔۔۔۔ لیکن  پتہ   نہیں   کیسے  ہو  گیا۔۔۔۔ اس  کی  گیلی  چوت  کے  مزے   لیتے   ہوئے   اچانک  ہی   میرے   سارے   بدن   میں   مستی   کی   ایک  شدید   لہر    اُٹھی ۔۔۔اور     اس     کے   ساتھ   ہی       مجھے   یوں       محسوس   ہوا   کہ     جیسے      میری    ٹانگوں    کا    سارا      خون    سمٹ  کر     میرے   لن    کی     طرف   بڑھ   رہا  ہے۔۔۔۔میں نے    اسے    روکنے    کی      بڑی   کوشش   کی۔۔۔۔پر۔۔۔پر۔۔۔۔ میں  نہیں  رُکا    اور    پھرررررر۔۔۔۔اچانک   ہی   بڑی   تیزی    کے   ساتھ    میرے     لن    سے    منی    کا ایک   طاقت   ور     فوارا      نکلا       جو       میری   اور    اس     کی     شلوار     سے     ہوتا        ہوا       اس    کی    چوت   میں  گرنا   شروع   ہو   گیا ۔۔۔  اور  پھر   مارے  شرمندگی  کے     میرا     سکڑ    کر   چھوٹا     ہونا      شروع          ہو   گیا    تھا۔۔۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 

 

 دوسری   طر ف   وہ    خاتون   ابھی   مزید   مستی    کے    موڈ    میں  نظر   آ    رہی تھی     کیونکہ    جیسے    ہی اس  نے  اپنی    چوت   میں ۔۔۔میرے  لن    سے    نکلے    ہوئے   گرم    پانی   کو   محسوس   کیا۔۔۔۔ ۔۔ تو  اس   نے  تڑپ     کر     بڑی    ہی   غضب     ناک     اور     شکایتی  نظروں   سے  کچھ  اس  طرح    سے     میری  طرف   دیکھا  ۔کہ   جیسے  اس  کو   میرا   اس   طرح     اچانک   چھوٹنا    بڑا   گراں    گزرا    ہو ۔۔۔۔۔۔۔۔لیکن   اس    کے   باوجود   بھی       اس     نے    میرے    ساتھ     اتنا       تعا  ون   ضرور     کیا        کہ  جب    تک   میرا   لن       سکڑ   کر     بلکل  چھوہارا           نہ     بن   گیا۔۔    ۔۔۔۔اور     جب     تک     میرے  لن   سے  منی    کا    آخری    قطرہ  بھی       نہ  نکل گیا۔۔۔۔ وہ    ایک   عجیب         بےچینی  اور  شاید          مستی       کے  عالم  میں   اپنی   گانڈ   کی   دونوں    پہاڑیوں   کو   میرے   لن    کے   گرد   کس    کر       بڑی  سختی   کے  ساتھ     کھُل    بند  کرتی    رہی   ۔۔۔ اور     جب   میں    ٹوٹل  فارغ    ہو  گیا۔ ۔۔۔۔ تو   اس   نے   ایک  بار  پھر    شعلہ بار نظروں   سے    میری  طرف   دیکھا    اور     اس    کی    تیز     نظروں   کی   تاب   نہ    لا تے   ہوئے     میں  نے   شرم   کے   مارے   اپنے   سر  کو   جھکا   لیا۔۔۔۔۔ اور     اپنے   آپ  کو    کوسنے   لگا ادھر   یہ   صورت  دیکھ  کر  میری   منی    بھی   لن       سے        بار  بار     یہی   کہتی   رہی      کہ۔۔۔۔ مجھے  کیوں نکالا  ۔۔ مجھے  کیوں  نکالا ۔۔

 

۔ پھر     کچھ    دیر   کے   بعد   میں   نے  سر   اُٹھا  کر اس   طرف   دیکھا   کہ   جہاں   پر    چند     لمحے  قبل           وہ    خاتون  کھڑی  تھی ۔۔۔۔ لیکن  اب  وہ   موجود         نہ تھی ۔۔۔ اسے   اپنی   جگہ   پر     نہ    پا   کر   میں    بے چین    سا   ہو  گیا  اور   پاگلوں  کی  طرح    ادھر  ادھر  دیکھنا    شروع   کر   دیا ۔۔۔  میں  اسے  نظروں   ہی  نظروں     میں     تلاش     کر   رہا   تھا  کہ       اچانک     میرے    کانوں   میں   دکاندار    کی   آواز   گونجی   کہ  باؤ   کتنے    پیاز   ڈالوں؟    لیکن  میں    نے    اس  کی  آواز   پر  کوئی     توجہ    نہ   دی  اور    ہجوم کو    چیرتا   ہوا ۔۔۔ دیوانہ    وار   باہر     کی   طرف    بھاگا ۔۔۔۔ اور   پھر     بڑی   شدت  کے  ساتھ     اس سیکسی   لیڈی کو   تلاش  کرنے  لگا۔۔۔  لیکن  وہ  تو    وہاں     سے    ایسے      غائب تھی  کہ   جیسے  گدھے   کے سر   سے  سینگ  ۔۔۔ کافی  دیر  تلاش   کرنے  کے  بعد  میں تھک   ہار کر    واپس    پیاز    والے     کی  طرف  آ گیا اور   پھر  جیسے   تیسے   پیاز  لے  کر گھر  چلا  گیا۔۔۔

 

                گھر  جا  کر  بھی   میرا  سارا   دھیان  اس   شاندار   خاتون   کی   طرف   لگا   رہا۔  مجھے   بار  بار  اس    کی     گانڈ  کی  نرمی   اور اس  کی     گیلی  چوت  کی گرمی  یاد آ تی         رہی۔۔   اور  اسی    بات     کو     سوچ   سوچ  کر  میرا    لن   دوبارہ    سے  کھڑا   ہو گیا   جو  اب     بیٹھنے    کا     نام     ہی   نہیں   لے    رہا   تھا    ۔۔۔اور   پھر   تنگ آ  کر  میں   سیدھا   واش  روم   میں  گیا  اور   اس سیکسی    لیڈی    کی   یاد   میں    ایک     زبردست   مُٹھ  مار ی۔ مُٹھ  مارنے   کے    بعد    میں    کافی  حد    تک     پُر سکون     ہو گیا تھا۔۔   واش  روم   سے   نکل  کر   جیسے   ہی  میں  باہر  آیا۔۔۔    تو    پتہ  چلا  کہ  میرا    ایک    دوست        گلی    میں       انتظار      کر    رہا     ہے  سو   میں  جیسے    ہی     گھر    سے    باہر  نکلا   ۔۔۔۔تو   مجھے       دیکھتے       ہی     وہ      کہنے   لگا۔۔۔۔ کہاں  تھے   یار    ۔۔۔ یہ  میرا  دوسرا   چکر   ہے     اس   کی   بات   سن کر   میں  نے      اسے      اتوار      بازار     اور      پھر     اس    خاتون    کے  ساتھ    بیتا    ہوا   سارا     واقعہ   سنا   دیا۔۔   میری   سیکس  سٹوری    سننے   کے   بعد     وہ   اپنے   نیچے  کی  طرف   اشارہ   کرتے  ہوئے    بولا ۔۔۔ یار   اس   آنٹی    کا     قصہ  سن   کر     میرا    بھی    لن    کھڑا   ہو  گیا  ہے      ۔۔۔۔اور  پھر   اس   کے    بعد     وہ    مجھ     سے  آنٹی    کے   بارے    میں  کرید  کرید   کر   معلومات     لینے  لگا۔۔۔۔

 

 اس  واقعہ   سے   دوسرے        دن  کی   بات    ہے   کہ   وہی   دوست    میرے  پاس  آیا  اور    مجھے  اس  سیکسی  لیڈی  والا   واقعہ   یاد  کرواتے     ہوئے    بولا    ۔۔ کہ      وہ       نامعلوم    آنٹی    تم    سے   دوبارہ  بھی   مل  سکتی   ہے   دوست   کی  بات  سن  کر   میں    بہت    حیران    ہوا    اور   اس    سے  کہنے   لگا    لیکن  کیسے یار؟۔  تو   اس   پر   بجائے   میرے   سوال    کا    جواب    دینے   کے    وہ   کہنے    لگا    کہ  میں  نے  تمہاری سیکس  سٹوری   ایک " چوبھے "  کو   سنائی  تھی ۔۔   دوست   کے   منہ   سے"  چوبھے"  کا  نام  سن کر   میں  پریشان     ہو  گیا    اور    اس   سے   بولا    کہ   یار    یہ   چوبھا    کون  ہے؟   میرے   اس   " معصوم   " سوال   پر     دوست    نے    حیرت    بھری    نظروں    سے   میری    طرف      دیکھا  اور   پھر    مجھے    ایک    موٹی    سی     گالی  دیتے   ہوئے   بولا کہ        بہن    چود  ا            سچ      بتا   کہ      تجھے              چوبھے     کے   بارے  میں  کچھ  معلوم  نہیں؟   ادھر        واقعی      ہی     مجھے  اس  ذات   شریف    کے   بارے   میں  کچھ  پتہ   نہ تھا    اس    لیئے   میں   نے   اس کو   جواب    دیتے    ہوئے    کہا ۔۔قسم   لے   لو    یار     میں   نے آج   پہلی   بار    یہ   نام          تمہارے    منہ    سے     سنا   ہے۔۔۔ میری   اس   بات  پر   اس   نے    بڑی   عجیب   سی  نظروں   سے   میری   طرف    دیکھا  اور  پھر      بڑے   ہی     طنزیہ   لہجے   میں    کہنے   لگا۔سر   جی    ایک  بات   تو   بتاؤ   اور  وہ   یہ کہ  جب  آپ  سرکاری   بس   کے  اگلے   دروازے   سے۔۔۔ یا    یوں   کہہ  لو  کہ  لیڈیز   کمپارٹمنٹ   والے    حصے    میں   چڑھتے   ہو    تو    کیا   کرتے   ہو؟     اس   کی   بات   سن    کر  میں  نے   دانت    نکالتے    ہوئے   اس   سے     کہا    کہ   کسی     ایسی    خاتون    کو        ڈھونڈتے    ہیں  کہ  جس  کو "تکلیف"  ہو ۔۔ تو   وہ   اسی    طنزیہ   لہجے   میں   بولا    کہ  اچھا   یہ    بتاؤ    کہ   تم  کو   یہ  کیسے    پتہ   چلتا   ہے  کہ  اس   خاتون   کو   " تکلیف "  ہے  اس  پر   میں       نے  جھلا    کر   کہا  کہ      یار     پہلے     اس کو  چیک  کرتے  ہیں ۔تو    وہ  کہنے   لگا   کہ   وہ    کیسے؟   تو     اس   پر  میں   نے   کہا  کہ    پہلے     تو   بہانے   سے  اس  کو  ٹچ  کرتے  ہیں    یا  پھر    اتفاقاً     اس   کی   گانڈ      کی  ساتھ     اپنے         اگلے        حصے  کو    مَس  کرتے     ہیں۔۔  میری   بات  سن کر  وہ  کہنے  لگا  کہ    فرض  کرو  وہ  آگے   سے  کچھ  نہیں   بولتی    تو   پھر    تم       کیا  کرتے  ہو ؟  تو   میں  نے  اس  کی  طرف   آنکھ     مار  کر     کہا۔۔کہ       لن کھڑا   کر   کے   اس    کی   گانڈ  کے  چھید   میں   دے     دیتے    ہیں  اور  کیا    کرنا   ہے ۔۔۔ ۔۔ میری   بات   سن   کر   اس    نے   ایک  گہری    سانس   لی اور  پھر     کہنے  لگا ۔۔ مطلب    پہلے   تم  اس کی      گانڈ        پر      اپنا     لن  چبھو تے      ہو ؟۔۔اس    کی  بات  سن کر   میں  نے  دانت    نکالتے  ہوئے   ہاں  میں  سر    ہلا    دیا۔۔۔ تب    وہ   کہنے  لگا  ۔۔ بس  میں  ایسی     حرکات    کرنے   والوں    کا   تو     مجھے   پتہ   نہیں۔۔۔ البتہ     اتوار   بازار    جانے   والے   اس  قسم  کے  لڑکوں  کو   ہم      لوگ     "چوبھا" کہتے    ہیں   مطلب   لن    چبھونے    والا۔۔۔  دوست  کی  بات سن  کر   مجھے   ساری   بات سمجھ   آ  گئی  تھی    جبکہ   دوسری   طرف    وہ   کہہ  رہا    تھا  ہمارے   علاقے     کا   ایک   مشہور   چوبھا    ہے   جس  کو   تم     بھی   اچھی     طرح      سے      جانتے    ہو ۔۔ پھر     میرے   استفسار   پر    کہنے  لگا     وہ   اپنا      عارف   یار ۔۔۔ جو     کہ   ڈاک   خانے   والی   گلی    میں   رہتا   ہے۔۔ دوست  کے  منہ  سے  عارف  کا   نام  سن  کر   میں  تو   حیران   رہ گیا   کیونکہ   میری  نظر    میں   وہ         ایک     نہایت  شریف  اور  بہت       اچھا      لڑکا   تھا ۔۔۔ اسی   بات    کا     تزکرہ     جب    میں   نے   اپنے  دوست  کے   ساتھ  کیا  تو   میری   بات سن    کر   وہ         ہنس   پڑا   ۔۔۔اور  کہنے   لگا   ۔ سیم      تیرا   کیس   ہے  یار۔۔ پھر  وہ   مجھے  گالی   دیتے   ہوئے    بولا ۔۔۔ گانڈو       تو   بھی   تو    شکل    سے  کتنا   معصوم  اور شریف   نظر آتا  ہے لیکن    تم   نے  اس   علاقے        کی   اچھی    خاصی     آنٹیوں   کو     چود    رکھا        ہے ۔۔۔ اس  پر  میں  نے   دانت   نکالتے   اس     سے      ہوئے  کہا  کہ       میرا    کیس    الگ     ہے   یار۔۔۔ تو   آگے   سے   وہ    کہنے   لگا۔۔  سب  یہی   کہتے    ہیں  یار   ۔۔   پھر    اچانک    ہی   وہ    سنجیدہ     ہو  کر   بولا   اسے  چھوڑ         کام  کی  بات   یہ   ہے    کہ    آج   منگل   کا    دن      ہے اور    شاید تم   کو  معلوم  ہو  کہ   آج   کے        دن  اسی   جگہ      منگل  بازار بھی   لگتا  ہے    اور کیا   عجب  کہ آج   پھر   تمہاری   ملاقات   اس  گرم  آنٹی   کے   ساتھ   ہو  جائے۔۔۔۔  اس  لیئے   اگر    موڈ  ہے   تو   عارف    کے   پاس   چلتے    ہیں ۔۔۔

 

 

  گرم آنٹی  کا   ذکر  سن  کر  میرے   منہ   میں      پانی  بھر آیا ۔۔۔اور   میں     بڑی   بے  تابی  کے  ساتھ  بولا۔۔ چلو   یار     اس  کے   گھر   چلتے   ہیں۔۔راستے    میں  ۔۔ میں  نے  اس  سے کہا  کہ  سُن    یار..    عارف   کے  ساتھ   میری   بس    والی   بات   کا      تزکرہ   مت  کرنا ۔۔۔ میری     بات   سن   کر  اس         نے   زہر خند  نظروں       سے   میری    طرف     دیکھا    اور    کہنے    لگا۔۔۔۔۔کیوں   اس     سے   تیری     پارسائی   پر حرف آتا  ہے   ؟   تو      میں    نے   اسے  آنکھ     مارتے    ہوئے   کہا ۔۔۔ کہ   سمجھا  کر      نا   یار ۔۔۔۔ تو      اس    پر    وہ   ایک  دم  سیریس    ہو کر   بولا  ۔۔۔۔     فکر    نہ  کر  یار۔۔۔ ۔۔ مجھے  سب     معلوم    ہے کہ کون   سی  بات  کہاں   پر کرنی    ہے  اور کون    سی    نہیں  اور  پھر سیریس     ہو    کر     چلنے   لگا۔۔۔

 

۔۔۔۔۔۔۔   عارف    کا    گھر   ہمارے   محلے   سے    کافی   دور   تھا     ہم   اس کی  طرف   جا     رہے    تھے    کہ   تانگہ  سٹینڈ   کے   پاس   وہ   ہمیں  مل  گیا۔۔اور  پھر    مجھے    دیکھتے    ہی   کہنے   لگا     سنا    ہے     استاد  کہ تم     نے     بڑا   اونچا   ہاتھ    مارا   ہے ۔۔۔ پھر     اس       کے   اصرار        پر      ایک    دفعہ   پھر    میں   نے   اس  کو  اپنی   حکایتِ  لذیز       سنائی ۔۔   سن  کر   کہنے   لگا    اچھا     یہ   بتا   کہ    ۔۔ کیا   اس   گرم   آنٹی   نے    نیچے    سے  اپنی   شلوار    پھاڑی   ہوئی  تھی ؟    اس   کی   بات  سن  کر     میں   حیرت    میں    ڈوب    گیا  اور  اس   سے   بولا ۔۔۔ نہیں   یار  ۔۔۔۔ میری   بات   سن  کر   وہ    کہنے    لگا    کہ     اس    کا    مطلب    یہ    ہے  کہ   ہمارے    اتوار   بازار    میں    یہ  کوئی   نیا    مال  آیا          ہے   اس     سے     پہلے  کہ   میں     اس    سے  کوئی   سوال   کرتا       اچانک    وہ    کہنے    لگا      کہ      چلو   کہیں    بیٹھ   کر   بات  کرتے    ہیں ۔پھر      وہ       ہمیں      ایک   ہوٹل  میں  لے آیا   اور          چائے    کا   آرڈر    دینے   کے    بعد     ۔۔  اس  نے   مجھے   اتوار   اور   منگل    بازار    میں   ہونے    والی   اس    قسم   کی     خفیہ   جنسی  سرگرمیوں   کے   بارے    میں     بتاتے    ہوئے    کہا  کہ    ایسی    خواتین  جو کہ     لن  کا   ٹھرک    رکھتی    ہوں      وہ      ہمیشہ     شام     ڈھلے       اتوار      بازار     میں   آتی   ہیں    اس  کی  ایک  وجہ     تو    یہ   ہوتی    ہے  کہ   اس   وقت      دکانداروں      کا   زیادہ     مال     بک  چکا  ہوتا   ہے اور   ان      کو     گھر   جانے   کی   جلدی    ہوتی      اس    لیئے    شام    کے   وقت          وہ    اپنی     چیزوں   کے  ریٹ    گرا  دیتے   ہیں اور  اس  کی   دوسری      وجہ      یہ   ہے   کہ    ہلکے  ہلکے    اندھیرے   میں     وہ      اپنا    مزہ   بھی         لے   لیتی    ہیں ۔۔اس  کے    بعد   وہ     کہنے    لگا    کہ      ایسی    خواتین      اتوار    بازار    میں     آ  کر    ہمیشہ     رش   والی    جگہ    میں   سب    سے   آگے   کھڑے    ہونے    کی  کوشش  کرتی     ہیں  ۔۔ سودا          لیتی   کم    ۔۔۔  اور     ریٹ    کم    کرانے     کے   لیئے     تکرار     زیادہ    کرتی    ہیں ۔ پھر  میری   طرف   دیکھ   کر      کہنے  لگا   کہ   ایک     بات    اور ۔۔۔  وہ     یہ   کہ    ضروری  نہیں   کہ    اتوار   بازار     میں   آگے    کھڑے    ہونے   والی    ہر  عورت     گانڈو    ہوتی    ہو     ۔

 

 اس   کے   بعد  وہ   میر ی طرف  دیکھ کر  کہنے  لگا  ۔ ہاں    تو   میں کہہ  رہا   تھا    کہ   ایسی    خواتین     کے       ساتھ    ہم      کرتے    یہ    ہیں   کہ  ان         کے   پیچھے   جا کر    کھڑے   ہو   جاتے   ہیں    اور    اس       سے      آگے   کی   سٹوری   تم   کو  پتہ  ہے   اس  کی  بات  سن کر  میں   نے  اس  سے  کہا    اچھا   یہ  بتا    کہ     یہ     نیچے  سے  شلوار  پھاڑنے  کا   کیا  سین  ہے؟    تو   میری   بات   سن  کر    وہ    ترنت    ہی    کہنے    لگا    کہ  وہ    اس   لیئے    میری   جان   کہ     بعض  اوقات۔۔۔ خاص  کر  سردیوں   میں   رات   جلدی   پڑ   جاتی    ہے  تو   وہ   کسی   سنسان       جگہ  پر     یا     اگر   رش  زیادہ    ہو۔۔۔ جیسا    کہ    اس  دن    تمہارے  ساتھ   ہوا       تو   وہ    چانس   دیکھ   کر    موقعہ    کے  حساب    سے   بہ   آسانی     لن  کو    اپنے  اندر   بھی   لے   لیتی    ہیں    پھر   میری   طرف   دیکھتے   ہوئے   آنکھ  دبا  کر    بولا     کہ  جیسا    کہ تم   کو   معلوم     ہے         کہ  ہماری  طرح   بعض     خواتین   بھی        بڑی   ہی    شریف    ہوتی   ہیں    گھر   سے   باہر   نکل    نہیں   سکتیں     یا   ان   پر  سخت   پابندی   وغیرہ   ہوتی    ہے اس  لیئے  وہ     اتوار   بازار   یا    اس    جیسی    دوسری         جگہوں    پر      آ  کر   اپنا     ٹھرک       پورا   کر   لیتی   ہیں   اور    جیسا  کہ   ابھی   میں      نے     تم    کو      بتلایا   کہ     اگر  موقعہ     ملے    تو    رات   کے    اندھیرے   میں   لن   کا   ذائقہ     بھی     چکھ    لیتی   ہیں ۔۔عارف   کی    یہ   بات   سن کر    میں   چونک  گیا  اور   اس    سے    بولا ۔۔۔  یہ  کیسے ممکن  ہے  یار؟    تو   اس    پر      وہ    کہنے    لگا     وہ     ایسے   میری   جان  کہ   ہمارے    اتوار   بازار   میں     گندے      نالے      کے    پاس      میونسپل     کارپوریشن       والوں    کا   ایک    صدیوں      پرانا        ٹرک  خراب     حالت     میں   کھڑا    ہے   اور    اتفاق   سے       جس  جگہ        پر    یہ   ٹرک     کھڑا    ہے     اس      سے   آگے    گندا      نالہ   شروع      ہو   جاتا    ہے۔ اس   لیئے  اس   طرف   کوئی   نہیں   جاتا۔۔۔۔۔۔اور    مزے  کی   بات   یہ   ہے  کہ    اس   گندے   نالے   اور   ٹرک  کے   بیچ       بہت    تھوڑی   سی    خالی   جگہ   ہے   اور  اس   خالی     جگہ        پر  لن  پھدی    کا  ملاپ   ہوتا  ہے   اس  پر   میرا   دوست   کہنے   لگا   کہ   یار   وہاں    پر   خطرہ    نہیں    ہوتا  ؟    میرے    دوست    کی  بات  سن  کر   عارف   نے  ایک     فرمائیشی      سا       قہقہہ       لگایا   اور   اس    سے     کہنے    لگا      پین  یکا ۔۔۔ یہ   جو    اتنے    لوگوں  کی   موجودگی   میں   ہم   لوگ    ایک    انجان      خاتون   کی   بنڈ      میں   لن   پھنسا   کر    کھڑے    ہوتے    ہیں    کیا     اس    میں    کوئی  خطرہ      نہیں    ہوتا ؟   پھر  ایک      دم   سیریس      ہو    کر   کہنے   لگا۔۔۔۔۔۔ خطرہ        تو        یقیناً    ایسے      کاموں    میں     بہت   زیادہ    ہوتا   ہے ۔۔ لیکن    میری    جان    چونکہ      اس   کام   میں   ایک  عجیب     سی     لذت     اور     ایک     انوکھی          تھرل   اور     ایڈوینچر           ہوتا      ہے   اس  لیئے   اس  قسم    کے    کاموں      کے    لیئے     ہم    لوگ   ہر قسم   کا   خطرہ    مول   لے   لیتے   ہیں۔۔۔ پھر اس  کے  بعد      کہنے  لگا     کہ   جیسا   کہ    میں   نے   تم    لوگوں   کو   پہلے  بھی    بتایا   تھا     کہ   اس  قسم  کی    لیڈیز    اور   ہم    لوگوں       نے  پہلے    سے   ہی    اپنی  اپنی   شلواریں    پھاڑی    ہوتیں    ہیں  پھر  مسکراتے    ہوئے     کہنے   لگا۔۔۔  کہ   نیچے   سے     شلوار    پھاڑنے      کا   ایک    تو       فائدہ    یہ    ہوتا     ہے   کہ     شلوار  اتارنے    میں       وقت   ضائع      نہیں   ہوتا  ۔۔اور    دوسرا       فائدہ    یہ      ہے  کہ    بوقتِ خطرہ          آزار   بند   کھولنے    یا    اسے        بند    کرنے     کا     کوئی    جھنجھٹ       نہیں  ہوتا ۔۔   اور   بندہ      بڑی    آسانی   کے    ساتھ     لن کو  واپس        شلوار    میں   ڈال    کے     ادھر   ادھر  ہو  سکتا   ہے    ۔۔۔پھر    ہماری   طرف   دیکھ  کر     ہنستے    ہوئے     بولا   اور     ویسے    بھی   دوستو     ۔۔ادھر   کون   سا   کوئی    سال    دو  سال   لگتے   ہیں  ۔۔۔ بس     دو    چار  منٹ    ہی   کی     تو     بات    ہوتی    ہے  اور  پھر   ہمارا   ایک  بندہ   ٹرک  کے  پاس     دیکھ   بھال   کے      لیئے     کھڑا  بھی    ہوتا     ہے  ۔۔اس   لیئے    میری   جان  اس   میں  اتنا   بھی   رسک  نہیں   ہے   جتنا  کہ آپ سمجھ   رہے   ہو۔۔۔۔۔  ہاں   شرط  بس      اتنی    ہے    کہ    لینے  اور  دینے    والے  دونوں  راضی   ہوں ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔اس  کے  بعد تھوڑی     مزید  گپ  شپ  کے  بعد   ہم   لوگوں   نے   منگل  بازار   کی  ایک  جگہ   سلیکٹ    کی   اور  طے   یہ   پایا   کہ    شام    ہوتے     ہی   ہم   لوگ    وہاں    پہنچ    جائیں    گے۔۔۔

 

 

 

سورج  غروب  ہونے  سے  ٹھیک آدھا  گھنٹہ  قبل  میں  اور   میرا    دوست   منگل    بازار    کی      مقررہ   جگہ پر  پہنچ   چکے   تھے ۔ ابھی  ہمیں   وہاں  پر کھڑے    ہوئے   تھوڑی     ہی   دیر   گزری تھی  کہ  عارف  اور  اس  کے  ساتھ   دو   اور  لڑکے  بھی   وہاں   پر  پہنچ   گئے   اب   ہم    کُل   ملا   کر 5      لڑکے   ہو  گئے  تھے   یہ  دیکھ کر  عارف  نے   اپنے   ساتھ  آئے     ہوئے    دوسرے    لڑکوں    کو    میرے    دوست  کے  ساتھ  منگل  بازار   کے  ایک  طرف  ۔۔۔اور   خود   مجھے   لے  کر    اس   کی     دوسری    طرف   نکل  کھڑا    ہوا ۔  اس   دن   عارف  اور   میں  نے    منگل    بازار     کا   کونا    کونا     چھان    مارا      لیکن    وہ   آنٹی   کہ  جس   کا     ہم   لوگوں   نے  کوڈ  نیم    گرم آنٹی   رکھا   ہوا   تھا    نہ صرف   یہ    کہ    وہ   کہیں بھی  دکھائی    نہ   دی    بلکہ   بائے   چانس   اس   دن    وہاں   پر    ریگو لر    آنے     والی   کوئی    اور   آنٹی   یا   لڑکی    بھی نظر  نہ  آئی    یہ صورتِ حال   کر    میرا    دوست    بڑا      مایوس     ہوا     لیکن     عارف    نے     اسے     یہ  کہہ کر  تسلی  دی  کہ    اس  کام  میں  انتظار    کا      چلہ      تو   کاٹنا    ہی      پڑتا   ہے    پھر   کہنے    لگا      یہ ضروری  نہیں  کہ    آپ کو     روز  ہی   کوئی   خاتون    ملے۔ بلکہ     بعض  اوقات   تو   ایک     ایک    ماہ   بھی   گزر  جاتا  ہے  اور کوئی  سالی   نہیں    ملتی    اور   اس     کے   برعکس    بعض  اوقات      ایک   دن    میں   دو    دو     تین  تین    بھی    مل   جاتی     ہیں    یہ  سب   قسمت   کی   بات    ہے۔ اس   کے   بعد   وہ   ہم   سے  یہ  کہتا   ہوا   اپنے   دوستوں   سمیت    غائب   ہو  گیا   کہ   اب    اگلے       اتوار   کو     اسی    جگہ        ملاقات   ہو  گی   عارف   کے   جانے   کے    بعد      میرا    دوست     بھنا     کر     بولا      ۔۔۔ اگلے       اتوار     کو    میرا    لن   آتا   ہے   اس  کی  بات  سن  کر  میں    نے   اس   کہا       تُو۔۔ آ۔۔    یا  ۔۔ نہ۔۔ آ  ۔۔۔ لیکن   میں   تو   ہر حال  میں  آؤں   گا  اور    اس   وقت   تک   آتا    رہوں   گا    کہ      جب   تک        مجھے        وہ   گرم   آنٹی     نہیں  مل جاتی۔۔۔ میری   بات سن   کر  دوست  کہنے  لگا۔۔۔یار تم    چلہ     کاٹ   سکتے       ہو     تو     کاٹو۔  ایک  پھدی   کے  لیئے     مجھ      سے     تو     یہ      خواری    والا    کام    ہر گز    نہیں   ہو  گا۔۔۔ اس   پر   میں  نے  اس    سے   کہا   زیادہ      لن   پہ   نہ   چڑھ  ۔۔۔ اگر تم     نے   ادھر   نہیں    آنا    تو     مت  آ ۔۔پھر    میں   نے    اس   کی   طرف     دیکھتے    ہوئے   کہا۔۔ بس    اتنا   ہی   شوق    تھا   تیرا ؟؟   تو    آگے    سے     وہ     کہنے     لگا     سچ    کہتا   ہوں   یار  ۔یہ  بڑا   مشکل    کام     ہے  ۔ میری      تو    پہلے   دن     ہی    بس   ہو    گئی    ہے۔اس    لیئے     ۔۔۔۔   عورت    کو    چھوڑ ۔۔۔ میں   پھر         سے        ہاتھ   کو        چوت     بنا    لوں   گا   ۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

  اتوار  کے  دن  میں   یہ سوچ  کر  کہ    کہیں  وہ    دوپہر  کو نہ     آ  جائے ۔   میں   دوستوں    کے   دیئے  ہوئے   ٹائم  سے   دو تین    گھنٹے    پہلے   پہنچ   گیا۔۔۔ اور  مختلف    رش  والی   جگہوں   کا    چکر    لگایا  لیکن     کام  نہیں  بنا  اس  لیئے    تقریباً     ایک    گھنٹہ   خواری     کاٹنے   کے   بعد    میں  واپس     گھر آ   گیا ۔۔۔اور  پھر  شام   کو    مقررہ     وقت  سے  تھوڑا     لیٹ   وہاں    پہنچ       کر      دیکھا     تو     میرے   انتظار   میں   صرف   عارف   کھڑا  تھا    میرے    پوچھنے    سے    پہلے    ہی    اس     نے       بتلایا     کہ       اس   کے   باقی  دوست   شکار  کی  تلاش  میں   نکلے   ہوئے   ہیں   جبکہ    وہ    میرا     انتظار    کر     رہا   تھا    اس   کے  بعد   میں   نے  بھی     اپنے   دوست   کے  بارے  میں    بتا    دیا ۔۔۔ سن   کر  بولا     کہ    استاد   جی     چلہ  کاٹنا     بڑا      اوکھا       کام  ہے ۔  پھر    میرا    ہاتھ   پکڑ  کر  کھینچتے      ہوئے    بولا   کہ ۔۔۔ آ ؤ    اب   ہم   بھی   چلتے   ہیں  ۔اس    وقت    شام  کے   سائے    کچھ  اور  گہرے     ہو     رہے    تھے   کہ   چلتے    چلتے ۔۔۔ اچانک   ہی   عارف    نے   میرا    ہاتھ   دبایا   اور کہنے    لگا    ادھر  دیکھ    استاد ۔۔ اپنا   تو    کام     بن گیا  ہے    عارف   کی   بات  سن کر  میں   نے   ہونقوں    کی  طرح    ادھر  ادھر    دیکھا    لیکن      مجھے     تو      آس  پاس  کوئی   بھی   آنٹی   نظر   نہیں   آئی   اس   پر   میں    نے   اس   سے   کہا    لیکن    یار   مجھے   تو   کوئی    آنٹی نظر   نہیں آ   رہی     تو     اس    نے ایک       طرف    اشارہ    کر   دیا۔۔۔        کہ   جہاں   پر   گھی  کے   ڈبوں     سے    بھرا     ہوا      ایک     مزدا    کھڑا    تھا   اور     سستا    گھی     لینے         کے   لیئے      مرد  و   زن      کا    کافی   ہجوم       نظر آ  رہا   تھا      کہنے   لگا   تم   میرے   ساتھ  آؤ  ۔۔ اور   آس   پاس       کے     لوگوں    پر   نظر  رکھ  کر،     مجھے    کور   کرتے   ہوئے    اس    مست    کڑی     کا     تماشہ      دیکھو  ۔۔  اتنے    میں   میری  نظر  بھی  اس لڑکی   پر   پڑ   چکی تھی ۔۔۔۔ وہ   ایک   درمیانہ  قد    کی          نو جوان  سی  لڑکی تھی   میرے  خیال        میں    اس  وقت  اس     کی  عمر 23 / 24   کے  قریب     ہو    گی۔   اس    نے   اپنے جسم    پر   ایک    آگے    سے  کھلا    ہوا      عبایا   نما    برقعہ           پہنا       ہوا      تھا    اس کے ساتھ    اس  نے     اپنے     چہرے  کو    نقاب      سے     بھی     ڈھانپ      رکھا   تھا   اسے    دیکھ  کر    میں    بڑا         حیران     ہوا           اور    اس   سے قبل کہ  میں   عارف   سے  کوئی   سوال   کرتا   وہ    میرا    ہاتھ     چھڑا      کر     اس     برقعے     والی  لڑکی   کے  پاس    پہنچ    چکا   ت ھا۔۔۔ میں بھی    چلتا   ہوا   ان     سے  تھوڑے   فاصلے   پر   جا   کر      کھڑا    ہو گیا۔۔

 

 اور    پھر  بڑے  غور  لیکن   کن اکھیوں   سے   عارف   کی   واردات    کو    دیکھنے    لگا۔۔۔ اور    پھر    میں     نے  دیکھا   کہ   کچھ   ہی    دیر  بعد  عارف    کھسکتا    ہوا   اس   لڑکی   کے  بلکل       قریب       کھڑا    ہو   گیا ۔۔اور   پھر  پتہ  نہیں   اس   نے  کیا   حرکت   کی کہ  اچانک   لڑکی   نے گردن   گھما کر    عارف   کی طرف   دیکھا ۔۔۔اور  پھر  عارف  پر نظر   پڑتے    ہی    اس  کی  آنکھوں   میں   ایک   عجیب   سی   شہوت  بھری      حیوانی      چمک  آ  گئی۔۔۔۔ اور   اس   کے   ساتھ   ہی          وہ    لڑکی   عارف   کے   ساتھ  جُڑ   کر   کھڑی    ہو   گئی   اب   میری   نطریں   ان   دونوں   کے   نچلے    دھڑ    پر  مرکوز     ہو گئیں   تھیں   ۔۔۔ کچھ   ہی    دیر  گزری  تھی  کہ   اس    لڑکی   کا   ہاتھ   رینگتا   ہوا     عارف   کے   فرنٹ     پر    آن     لگا۔۔۔ ۔۔اور  پھر      اس  نے  ادھر   ادھر    دیکھتے    ہوئے اپنے   دائیں     ہاتھ   کی     اُلٹی    ہتھیلی       کے   ساتھ    عارف   کی      قمیض       کے   اوپر    سے          اس      کے    عین       لن   والے      حصے     پر      بڑے     ہی      محتاط      طریقے      سے   مساج  کرنا     شروع  کر  دیا.. اس    کے  مساج         کرنے  کے        کچھ    ہی   دیر    بعد      عارف    کی  قمیض     آگے   سے   اُٹھنا    شروع   ہو  گئی  تھی۔۔۔ جب  اس  کی   قمیض       آگے  سے       اُٹھ    کر     ایک   تمبو   سا   بن  گئی  ۔۔۔ ۔۔۔تو     پھر     اس  کے  ساتھ    ہی    اس   نوجوان    لڑکی    نے   بڑی       ہی       مہارت     کے  ساتھ          ا پنے          ہاتھ    کو        عارف      کی      قمیض    کے    نیچے       سے    اندر  کیا  اور  پھر    اس   کے   لن    کو        اپنے                      ہاتھ    میں    پکڑ  لیا  ۔۔۔وہ   اس    کام   میں     کافی      ایکسپرٹ     لگ     رہی تھی ۔۔۔ ادھر    سے   فارغ      ہو   کر    میں    نے  عارف   کے   ہاتھ   کی   طرف    نگاہ       کی         لیکن    وہ     پہلے      سے    ہی      اس   نوجوان   لڑکی   کی   عبایا  نما   برقعے   میں   غائب    ہو  چکا    تھا ۔۔۔  وہ   دونوں   چونکہ   پہلے    سے   ایک   دوسرے   کو   جانتے   تھے  اس  لیئے   کچھ  دیر  بعد   عارف   نے    اِدھر   اَدھر   دیکھتے    ہوئے   حالات   کا   جائزہ  لیا   ۔۔۔۔۔ اور    پھر     لڑکی  کی  طرف   جھک  کر   اس     کے    کان    میں   کچھ   کہا ۔۔۔ عارف  کی  سرگوشی  سنتے   ہی    اس   لڑکی   نے   اپنے      ہاتھ     کو     عارف   کے   لن    سے   ہٹایا۔۔۔۔اور    پھر      عارف      کی    طرح      وہ    بھی          بڑی    ہی      محتاط  نظروں    سے   چاروں   اورھ         دیکھتے     ہوئے      اپنے     اُلٹے      ہاتھ      چلنے   لگی ۔۔۔اس    نوجوان     لڑکی     کے    جانے    کے      چند     سیکنڈ    بعد ۔۔۔۔ اس      سے    کچھ     فاصلہ    رکھتے     ہوئے    عارف       بھی   اسی  سمت     چل    پڑا       کہ جس   طرف   وہ    لڑکی   جا   رہی    تھی۔۔۔ لیکن     چلنے      سے   پہلے  اس  نے   مجھے   اپنے   پیچھے     آنے  کا  اشارہ    کر  دیا   تھا     اس    لیئے   میں  بھی    عارف      سے  تھوڑا      فاصلہ   رکھ     کر  اس  کے   پیچھے  پیچھے  چل   دیا۔۔۔۔  تھوڑا      آگے    جا    کر    وہ     لڑکی  ایک   طرف کھڑی   ہو   گئی ۔۔اور    عارف        کا  انتظار   کرنے    لگی۔۔۔ لیکن     جیسا        کہ   آپ      کو   معلوم        ہے            کہ  عارف      سے       تھوڑا     فاصلہ   رکھ       کر    میں   بھی   اسی     جانب      چل   رہا    تھا ۔۔۔اس   لیئے     وہ   لڑکی     مجھے    دیکھ       کر تھوڑا      مشکوک    ہو   گئی۔۔  چنانچہ       جیسے     ہی     عارف    اس  کے  قریب     پہنچا ۔۔ اس   نے   عارف  سے   بات   کرتے   ہوئے   میری   طرف   اشارہ  کیا   تو   اس   پر  عارف   نے    مُڑ  کر   ایک   نظر   میری   طرف     دیکھا     اور     پھر اس   لڑکی    سے      کچھ  کہا ۔۔۔ عارف     کی  بات  سن کر   اس   لڑکی نے      بڑی    گہری  نظروں         سے     میرا    جائزہ     لیا۔۔۔ ۔۔۔۔۔  وہ    کچھ    دیر     تک      میری     طرف   دیکھتی     رہی     پھر       اس    نے    عارف     کی    طرف     دیکھتے      ہوئے   اسے     کچھ     کہا ۔ اور  پھر    اگلے   ہی  لمحے   ہم  لوگ  اسی    تر تیب    سے    چلتے   ہوئے  ایک   طرف     کھڑے    مینونسپل     کارپوریشن        کے     خراب  ٹرک   کی   طرف   چلنے    لگے۔۔۔۔۔   کچھ   آگے   جا  کر    جیسے   ہی  وہ   لڑکی       ٹرک   کے  نزدیک    پہنچی ۔۔۔۔تو      میں  اور   عارف    اپنی    اپنی       جگہوں       پر     رُک  گئے۔۔ ادھر      وہ   لڑکی    بڑے   ہی  محتاط   انداز   میں   چلتی   ہوئی   ٹرک اور      گندے    نالے     کے      درمیان     بنی    ہوئی      تنگ         سی    گلی       کے     پاس  پہنچی۔۔۔۔اور   پھر    وہاں     پر     رُک  کر    آس      پاس    کا     جائزہ      لینے    لگی۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔   جائزہ   لینے   کے   بعد ۔۔۔ وہ  ۔۔۔ کچھ مطمئن     سی نظر     آئی۔۔۔۔اور  پھر  اس  کے   ساتھ  ہی     وہ     ادھر   ادھر   دیکھتے   ہوئے      ٹرک   کے   ساتھ      بنی    اس      تنگ        سی     گلی      میں      غائب   ہو  گئی۔۔۔

 

 

 

               اس    لڑکی       کے    اندر      جانے    کے    بعد         ۔۔عارف       اپنی     جگہ    پر   کھڑے    کھڑے     کچھ     دیر    تک     کن   اکھیوں      سے    ادھر  ادھر    دیکھتا         رہا ۔۔پھر   جب   اسے   اس    بات   کا     یقین    ہو    گیا    کہ      ٹرک   کی  طرف        کوئی    بھی    متوجہ   نہیں ۔۔۔۔تو    اس   نے    ایک  نظر    میری    طرف    دیکھا   اور  پھر    آنکھوں   ہی   آنکھوں   میں    مجھے   ہوشیار     رہنے   کی    تاکید  کرتے    ہوئے    وہ    بھی   اس  لڑکی       کی   طرح        بڑے   ہی         محتاط      انداز   میں   ٹہلتا      ہوا      ٹرک      کے بنی   ۔۔۔   اس    تنگ         سی     گلی   کے    اندر    چلا   گیا۔۔۔ ۔۔۔جیسے  ہی   عارف      اس   تنگ  گلی      میں   داخل      ہوا       ۔۔ تو   پتہ  نہیں    کیوں    اس    وقت  اچانک    ہی   میرے   اندر   یہ   شدید   خواہش   پیدا   ہوئی     کہ  کیوں      نا       میں  ان   دونوں   کا   سیکس   سین   دیکھوں   ۔۔۔اور   میں  ادھر   ادھر    دیکھتے    ہوئے   مسلسل        اسی    اینگل    پر سوچتا   رہا ۔۔۔پھر     اچانک  ہی    مجھے  ایک   ایسی   ترکیب  سوجھی   کہ   جس     میں        ہینگ   اور  پٹھکڑی      دونوں      نہیں     لگنی  تھیں   اور    میرا     کام                 مفت     میں  ہو  جانا   تھا۔۔۔۔۔۔اور    وہ   اس   طرح     کہ   اگر   میں  ٹرک      کے      پاس      پاؤں   کے   بل  زمین      پر     بیٹھ   جاتا   تو    میں      اس     بوسیدہ     ٹرک     کی   باڈی     کے       نچلے   حصے         سے    (ٹرک  کے    ٹائر   اور  باڈی    کے    درمیان    بنے     گیپ    میں    سے )  ان    کے   بیچ    ہونے   والے    سیکس   کو     دیکھ    سکتا    تھا ۔۔

 

 

         ترکیب    ذہن    میں   آتے   ہی   میں   نے  ادھر  ادھر    دیکھتے    ہوئے   اپنے   ایک       ہاتھ    کو        شلوار  کی   طرف    بڑھایا ۔۔۔اور     بظاہر   بیشاب  کرنے   کے    لیئے     آزار بند     کھولنے     لگا     ( لیکن       نے اسے    کھولا    نہیں     بلکہ  کھولنے     کی  ایکٹنگ    کرنے   لگا)  ۔۔۔اور   پھر  ٹرک   کے      ٹائر   کے   پاس    ایسی   حالت   میں   بیٹھ  گیا  کہ    جیسے          میں    پیشاب   کر    رہا    ہوں ۔۔۔۔۔  نیچے      بیٹھتے         ہی     ہلکے     اندھیرے      کی     وجہ       سے     مجھے            دوسری     طرف     کا     نظارہ      کچھ   دھندلا      سا             دکھائی     دینے    لگا     لیکن     یہ    نظارہ       اتنا   بھی   دھندلا   نہیں     تھا    کہ    مجھے   اپنے   سامنے     کا    منظر         دکھائی    نہ  دیتا ۔۔۔   بلکہ    تھوڑی    دیر     کے     بعد      جب      میری    آنکھیں    اندھیرے     میں    دیکھنے    کی    عادی   ہوگئیں    تو     پھر     مجھے     ہر   چیز   واضع    طور   پر     نظر  آنا    شروع     ہو  گئی۔۔۔۔۔ اور   میں   نے     دیکھا کہ     ٹرک   کے  اس پار    دو    سائے    آپس   میں    لپٹے     ہوئے   تھے    یہ  منظر   دیکھ    کر   میں سمجھ گیا  کہ   وہ   دونوں    ایک    دوسرے    کے    ساتھ       جڑے       کسنگ   کر   رہے  ہیں  ۔۔ اس   لیئے   میں  دم   سادھے    اسی   سٹائل  میں    بیٹھا   رہا ۔۔۔  ۔پھر  کچھ   دیر   بعد  وہ   دونوں    ایک    دوسرے     سے الگ  ہوئے  اور   لڑکی    اکڑوں    بیٹھ   گئی  اس   وقت    اس   کا     نقاب     اترا     ہوا    تھا ۔۔۔جو  کہ     ظاہر    ہے   اس نے  کسنگ   کرتے   وقت     اتارا    ہو  گا۔۔۔ ۔۔۔اب  میں  نے   غور   سے   اس  کی   چہرے     کی  طرف      دیکھا      تو      وہ        گندمی    رنگ     کی   ایک       بڑی     ہی    دل کش  لڑکی   تھی ۔۔۔اس   کی   دل کش  صورت      دیکھنے     کے    بعد    میں      یہ سوچ     سوچ  کر    ہلکان    ہو   رہا  تھا   کہ  اتنی   خوب  صورت   لڑکی  کو   آخر    اتوار    بازار   میں   چوت    مروانے   کی   کیا    ضرورت     پیش   آ   گئی   تھی ؟؟۔۔   جبکہ     اس   جیسی   کیوٹ     لڑکیوں   کے   ایک   اشارے  پر   تو    ہزاروں    دیوانے   مرنے   مارنے  پر تُل   جاتے   ہیں   میں  اس    بات    پر    غور    کر     رہا  تھا ۔۔۔۔جبکہ     دوسری    طرف      میرے   دیکھتے    ہی    دیکھتے          اس  لڑکی     نے       عارف  کی   پھٹی   ہوئی   شلوار   میں   سے   اس  کے   لن  کو  باہر   نکالا۔۔۔ اس   وقت   تک   عارف    کا   لن   نیم    مرُجھایا    ہوا   تھا     لیکن    اس   کے    باوجود         وہ   نوجوان    لڑکی     عارف    کے     ڈھیلے       ڈھالے      لن   کو    اپنے    ہاتھ    میں  پکڑے    بڑی    ہی     ندیدی     نظروں   سے   اس   کی   طرف   دیکھ    رہی تھی ۔۔۔ پھر   میرے   خیال  میں   عارف    نے    اسے    کچھ  کہا   کیونکہ  اس  نے  ایک نظر   اوپر   دیکھا   ۔۔۔اور  پھر   عارف    کے   نیم   کھڑے   لن    کو    اپنے    منہ  میں   لے  لیا۔۔۔۔اور   پھر    اسے    بڑے   ہی  سیکسی  ۔۔۔۔      لیکن      ندیدے  پن    سے          چوسنے  لگی۔۔۔۔۔ جیسا  کہ  آپ  لوگ       جانتے     ہیں   کہ          مجھے   بھی     لن     چوسوا  نے      کا     از    حد      شوق    ہے  اس   لیئے   یہ  ہوش  ربا   منظر   دیکھ   کر   میرا    لن     بھی    ایک   دم   سے    کھڑا     ہو   گیا ۔۔۔۔  جبکہ  دوسری  طرف    وہ     کیوٹ  سی     لڑکی    عارف    کے   لن   کو   اپنے       منہ   میں     لیئے        ندیدوں   کی  طرح    چوسے   جا   رہی تھی   اور      جوش   سے  چوسنے      کی   وجہ     سے      اس     کے    منہ   سے  غُوں غُاں۔۔۔۔ غُوں غُاں     کی     جیسی     آوازیں     نکل  نکل  کر   ماحول   کو    گرما       اور        مجھے   تڑپا      رہیں  تھیں۔ اس   کے   انداز      سے  ایسا      لگ     رہا     تھا   کہ     جیسے    وہ       عارف         کا     لن       چوس   کر    بڑا     انجوائے   کر  رہی    ہو ۔۔۔۔۔۔   ۔۔پھر       کچھ  دیر     تک     لن       چوسنے    کے   بعد      جب   اس    نے     عارف    کے  لن  کو   اپنے   منہ   سے   باہر   نکالا         تو    میں    نے       دیکھا    کہ   عارف    کا     لن   اس   کے   تھوک    سے  چمک   رہا   تھا    لیکن   اس   کے   ساتھ   ساتھ    میں   یہ   دیکھ     کر    بھی     حیران     رہ    گیا    کہ      عارف    کا        لن   ابھی    تک     اسی    طرح      ڈھیلا     ڈھالا   کھڑا     تھا ۔۔ ہاں      اس    لڑکی     کے    منہ    میں     لے  کر   چوسنے   کی  وجہ    سے        اس     میں   بس    تھوڑی          ہی    سختی     آئی   تھی ۔۔۔ لیکن      مجموعی       طور     پر   ہم      ایسے    لن    کو     ڈھیلا   ہی   کہیں   گے۔۔ ۔۔اس    کے     برعکس      دوسری    جانب        میرا     یہ    حال    تھا   کہ  صرف  لڑکی   کے   منہ   میں    لن   جاتا   دیکھ   کر   میرا      اپنا       ہتھیار        کسی        لوہے    کے   راڈ     کی  طرح   اکڑا   کھڑا   تھا  ۔۔ ہاں    تو     میں    کہہ     رہا    تھا    کہ    اس     لڑکی    نے   عارف   کے    لن  کو   اپنے   منہ   سے   باہر      نکالا   اور  پھر    اس     کے     ٹوپے    کو   چوم         کر    اُٹھ    کھڑی     ہو گئی۔۔ ۔۔ وہ    کچھ    دیر    عارف       کے    ساتھ   (شاید)    کسنگ    کرتی    رہی۔۔۔۔پھر   اس    کے  بعد        وہ    میرے    سامنے    کی    طرف    جھکی      اور   اپنی        گانڈ   کو     باہر  نکال    لیا۔۔۔۔۔۔   اس   کے    بعد   اس    نے   اپنے    ایک  ہاتھ   کو     پیچھے       کی  طرف    بڑھایا   ۔۔۔۔۔   اور     اپنی     قمیض  کو   ایک  سائیڈ    کی طرف      کر    کے ۔۔  اپنی    شلوار  کی    پھٹی  ہوئی     جگہ   کو     عین   اپنی   پھدی    کے    سامنے   لے   آئی۔۔۔ ۔۔۔واؤؤؤؤ۔۔۔۔ اور  میں   نے    دیکھا       کہ      نیچے    سے      اس  لڑکی         کی  شلوار      کافی   سے    زیادہ    پھٹی        ہوئی تھی       جس  کی  وجہ  سے   اس     کی  ابھری      ہوئی     پھدی    کی     لکیر           اور            اس  کی         گانڈ   دونوں     صاف     دکھائی    دے      رہیں      تھیں     ۔۔۔  

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

۔۔۔  لیکن     بدقسمتی   سے    میں   اس  کی    بالوں     والی      پھدی     کی    بس      ایک      ہی    جھلک    دیکھ    سکا      کیونکہ  اگلے  ہی   لمحے     میرے   آگے  عارف  آ  گیا     تھا۔۔  لڑکی   کے     پیچھے      کھڑے    ہوتے     ہی        عارف   نے   اپنے      ڈھیلے    لن   کو    اس    نوجوان    لڑکی  کی   پھدی  پر  رکھ کر     ایک  دھکا   لگایا۔۔۔ جس  کی  وجہ   سے   عارف           اور  اس    لڑکی    دنوں   کے   منہ    سے     بیک     وقت    'اوع "  کی آواز  نکلی ۔۔۔۔۔۔۔ اور    پھر    اس    کے   بعد            عارف             تیزی       کے  ساتھ   آگے    پیچھے    ہونا  شروع   ہو  گیا۔۔ اب   چونکہ    مجھے  ان   کا   شو   نظر   نہ آ    رہا     تھا     اور    ویسے  بھی   پاؤں  کے  بل    زمین   پر   بیٹھ  بیٹھ      کر   میں     کچھ    تھک     سا    گیا   تھا۔۔۔۔اس   لیئے    میں     وہاں     سے     اُٹھ   کھڑا     ہوا ۔۔۔اور   پھر   ادھر   ادھر  دیکھا     تو    ہر  طرف   امن    شانتی    تھی    ادھر     جیسے     ہی     میں   کھڑا    ہوا   مجھے   اس     نوجوان    لڑکی    کی   ہلکی  ہلکی  لزت  آمیز        کر اہنے      کی  آوازیں      سنائی  دینے    لگیں۔۔  پھر     کچھ    دیر    بعد     اچانک    ہی   اس   لڑکی   کے    کراہنے    کے    ساتھ   ساتھ   عارف   کے   منہ   سے بھی  غراہٹ   نما   آوازیں    نکلنا   شروع     ہو گئیں   جنہیں     سن کر     میں سمجھ گیا  کہ  عارف    اب      چھوٹنے    والا    ہو گیا     ہے ۔۔۔اس   کے   ساتھ    ہی      لڑکی  کی   کراہوں     میں    تھوڑی    تیزی       اور      اس   کی   آواز     پہلے      سے   تھوڑی      زیادہ       بلند   ہو  گئی تھی۔۔۔۔  ۔۔۔ اور   پھر   اس   کے  کچھ  سیکنڈ     کے    بعد   اچانک   ہی    عارف        کی  آواز   گونجی   ۔۔۔ اوع    ۔۔۔اوع۔۔۔۔۔اس  کے  ساتھ    ہی  لڑکی   نے   بھی    کچھ            چوں  چاں  کی ۔۔۔اور     پھر      دوسری    طرف    سے     آوازیں   آنا  بند   ہو  گئیں۔۔۔اور ان    کی  یہ  آوازیں   سن کر  میں سمجھ   گیا   کہ   وہ   دونوں   خلاص   ہو  گئے   ہیں۔۔۔یہ    ماجرا         دیکھ   کر     میں ٹرک    سے  تھوڑا    دور    ہٹ    کر   ۔۔۔۔۔۔     لاتعلق   سا    کھڑا      ہو گیا۔۔۔ کچھ   ہی   دیر    بعد   مجھے   ٹرک  کی  جانب       سے    اونچی    آواز     میں   بلی     کی  آواز   سنائی    دی۔ میاؤں   میاؤں ۔ اس  کا   مطلب  تھا  کہ    وہ     لوگ   فارغ          ہو   گئے    ہیں ۔۔۔۔اور   باہر    آنا     چاہتے        ہیں۔۔۔۔   چنانچہ  ٹرک  کی   طرف   سے   بلی       کی  آواز    سن   کر   میں   نے     بڑی        گہری  نظروں     سے  آس   پاس  کا   جائزہ   لیا۔۔۔اور پھر   عارف    کو    گرین  سگنل     دینے     کی    خاطر     ہلکی   آواز    میں  سیٹی   بجا      دی   جس   کا  مطلب   تھا    کہ   باہر    آل    اوکے    ہے۔۔  میرے    سیٹی    بجانے       کے   کچھ  ہی  دیر   بعد  وہ    خوبصورت سی       لڑکی    باہر نکلی ۔۔  اور   میں   نے  دیکھا         کہ      اس   نے     دوبارہ    سے   اپنے     منہ  پر   نقاب کر   لیا  تھا ۔۔۔۔چونکہ   میں   اس    وقت   ٹرک    سے     تھوڑا     دور۔۔۔۔۔ لیکن    اتفاق      سے    میں     اس   کے    گزرنے       والے     راستے    کے   عین      درمیان     میں     کھڑا    تھا  ۔۔۔۔ اور  اندر     کا     سیکس     سین     دیکھنے   کے  بعد   ابھی    تک   میرا   لن    ویسے     کا      ویسا        اکڑا     کھڑا       تھا  ۔۔ اسی   لیئے    چلتے   وقت        شاید   اس   لڑکی  کی  نظر   میری  تنبو    بنی   قمیض   پر    پڑ      گئی   تھی  تبھی        تو      میرے    پاس  سے  گزرتے   ہوئے   اچانک     ٹھٹھک       کر    رُک  گئی۔۔۔۔اور   پھر      ایک  نظر    پیچھے        مُڑ کر    دیکھا۔۔۔۔تو    عارف    ابھی    تک   باہر       نہیں    نکلا      تھا    ۔۔۔۔چنانچہ   اپنے     پیچھے      کسی   کو   نہ    پا  کر ۔۔۔۔ اس  نے  ایک نظر     ادھر ادھر       دیکھا ۔۔۔۔۔ اور    پھر ایک  عجیب حرکت    کی     اور   وہ  یہ کہ      اچانک      اس   نے   میری  تنبو   بنی   شلوار   پر     قمیض     کے   اوپر   ۔۔۔  عین    میرے  لن     والی  جگہ     پر    اپنا    ہاتھ   رکھا  ۔اور   میرے  موٹے  اور    لمبے      لن   کی  سختی        کو    محسوس  کرتے     ہوئے   اس       نے    میری     طرف      دیکھتے      ہوئے    اسے        ہلکا     سا    دبا     دیا   ۔۔۔     اس         کی یہ حرکت دیکھ    کر    جب     میں    حیرانی    سے  اس  کی   طرف   دیکھا   تو    اس        مجھے     آنکھ      مار  دی        ۔  اس   سے  قبل کہ  میں     اسے    کوئی          ردِ عمل دیتا     وہ    تیز تیز     قدموں    سے     چلتی     ہوئی     یہ  جا   وہ   جا۔۔۔۔

 

اس   کے    کچھ   دیر   بعد  عارف  بھی   ٹرک    سے         باہر      نکل   آیا  ۔۔۔اور  پھر     میرے   ساتھ    چلنے    لگا۔۔ اسی    دوران      میں    نے      اس    سے    شرارتاً      پوچھا     کہ     سناؤ    یار    کیسی   گزری؟    میری     بات    سن    کر    وہ     کہنے    لگا۔۔۔   ۔۔  مزہ     آ  گیا   یار۔۔۔  پھر    میری         طرف       دیکھتے    ہوئے      بڑے فخر     کے  ساتھ   بولا۔۔۔ تمہیں    معلوم  ہے   کہ   یہ  لڑکی     میرے   لن   کی   از   حد    دیوانی     ہے     پھر   مجھے   آنکھ       مارتے     ہوئے    بڑی   شوخی     کے   ساتھ   کہنے     لگا۔۔۔۔ آج   بھی    میں   نے   اپنے     سخت     لن    سے    اس   کی   گرم      چوت       میں     ایسے   دھکے    مارے    ہیں  کہ      سالی     کی     بس   ہو   گئی   تھی   اس    کے   بعد        وہ    میرے     سامنے    شیخی     بگھارتے       ہوئے   بولا۔۔۔  آج      تو    یار      اس      نے    میرے    آگے   ہاتھ   بھی       جوڑ     دیئے     اور  کہنے  لگی۔۔۔        کہ    بس   کرو       میری       جان        ۔   یہ       تمہارا     لن   ہے  کہ   واپڈا   کا    کھمبا ۔۔۔ اس    نے  تو       آج      میری     چوت    کو     پھاڑ    کے   رکھ   دیا    ہے۔۔۔  دوستو۔۔۔کہتے   ہیں   کہ    گپ غریب    کا    پردہ      ہوتا    ہے   اور     عارف      نے بھی       اپنا      پردہ     خوب     رکھا     تھا۔۔۔    ۔۔ویسے    کوئی  اور   دن    ہوتا     تو    میں   اس   کی   بات     کا     یقین    بھی    کر  لیتا ۔۔۔۔ لیکن  چونکہ   آج   ہم   بھی    وہیں    موجود    تھے     ہر   ایک   سین   دیکھا   کیئے۔۔  اس   لیئے  عارف    کی   بات  سن   کر۔۔۔ ۔۔۔ ہم  ہنس   دیئے۔۔۔ ہم  چُپ    رہے۔۔ منظور   تھا ۔۔۔ پردہ  اس  کا ۔۔  چند  لمحوں   کے  بعد   میں   نے   عارف   کی  طرف       دیکھتے     ہوئے    کہا  کہ      یار   ایک    بات    تو   بتاؤ؟   اور  وہ    یہ کہ    چلو   آنٹیوں   کی   بات   تو   سمجھ     آتی   ہے   کہ     وہ   ایسا  کر    سکتیں    ہیں    لیکن  یار    یہ لڑکی   تو     بہت   خوب صورت   اور  کسی     اچھے    گھرانے    کی   لگتی  تھی   اس     کو     یہاں   آنے  اور  اس     گندے      نالے       کے  پاس    کھڑے      ہو  کر     پھدی     مروانے    کی      کیا    ضرورت تھی؟ ۔۔ جبکہ   میرے   خیال      میں    اس    جیسی    حسینہ    کے   لیئے    تو     بہت     سے    لوگ   دیدہ   و    دل چشمِ   بر   راہ    کیئے     ہوں   گے   میری   بات   سن کر    وہ    کہنے    لگا ۔۔تم   ٹھیک   کہہ     رہے   ہو    لیکن   تم  کو   پتہ   ہے کہ   گندے   نالے   کے  قریب     سرِِ عام     پھدی   مروانے       کا   ایک      اپنا    ہی    مزہ    ہوتا   ہے   پھر  کہنے  لگا۔۔۔۔۔اور   ویسے  بھی   دوست    چسکہ    کوئی     بھی   ہو  بہت   برا     ہوتا    ہے    پھر     میری طرف   دیکھتے    ہوئے   آنکھ   دبا   کر  بولا۔۔۔۔ مت   پوچھ  یار    اس     بازار   کے     چسکے      کا     بھی  ایک    اپنا    نشہ   ہے ۔۔اور     اس        بازار   کی     لت     بہت     بری     لت   ہے۔۔اور  ۔۔۔ پھر    کہنے     لگا     اور   خاص   کر  اس    چسکے  میں  جو   تھرل    اور ایڈوینچر      ہے  وہ   کہیں   اور نہیں ۔۔۔ یہ  لڑکی   بھی      شاید     ایک        ایسا     ہی  کیس   ہے۔ پھر  مجھ    سے  کہنے    لگا۔۔۔یار  آخر     کب    تک   اس   گرم  آنٹی     کو  تلاش   کرتا     رہے  گا     جبکہ      یہاں   پر    ایک       سے      ایک  گرم      لیڈی         موجود        ہے    تو      ٹرائی      تو     کر ۔۔ اور      اگر     ایک   دفعہ     کوئی     اچھی    سی     آنٹی      تیرے      ہتھے         چڑھ     گئی    تو   ۔۔۔  یقین  کر    کہ    تُو   اس   گرم   آنٹی     کو    بھول   جائے  گا۔۔اس  کی  بات   سن   کر   میں   نے   ہاں    میں   سر    ہلا   دیا ۔۔۔ویسے   بھی    وہ     اگر        مجھے    یہ  نصیحت        نہ    کرتا   ۔۔۔     تو     بھی      آج         کا     سیکس     سین     دیکھ    کر   میں    نے   دل   ہی     دل   میں    یہ    فیصلہ کر  لیا   تھا    کہ     کہ    اب    میں     اس     گرم    آنٹی     کو       ڈھونڈنے     کے ساتھ  ساتھ    میں    اتوار    بازار      آنے   والی       دوسری        خواتین     پر بھی      ضرور        ٹرائی    کروں   گا۔۔۔۔ ۔۔ ۔۔۔

 

 

    اس   کے  بعد   اگلے   منگل    اور   اتوار   کو   بھی    کوئی     خاص   بات   نہیں    ہوئی۔۔۔ یہ    دوسرے       اتوار   کی   بات   ہے   میں  حسبِ معمول   اپنے   وقت       پر   اتوار    بازار   پہنچ    گیا ۔۔۔ لیکن   اس  وقت  اتفاق  سے   وہاں  پر    میرے     علاوہ      کوئی  بھی     چوبھا     موجود      نہ    تھا     چنانچہ  میں       وہیں  کھڑے   ہو کر   ان  کا    انتظار   کر نے   لگا۔۔۔۔لیکن    جب   کافی    وقت    گزر   گیا     اور   ان   میں   سے   کوئی   بھی   لڑکا    نہ   آیا    تو    میں   نے   ان     سب   پر  تین  حرف   بھیجے    اور   خود   ہی   شکار   کی   تلاش   میں   نکل  کھڑا   ہوا۔اور   چلتے    چلتے   میں    ایک آلو   پیاز    والے   ٹھیئے     پر  پہنچ   گیا   جہاں  پر  آلو    پیاز    وغیرہ     ایک     ڈھیری   کی  شکل    میں     زمین        پر   پڑے     تھے ۔۔۔  شام      کے   وقت     چونکہ    یہ     چیزیں         کافی      سستی      ہو     جاتی     ہیں ۔۔اس     لیئے      یہاں    پر   لوگوں     کا     بہت     زیادہ       رش     تھا   ۔۔   ۔  اور    اسی    رش    کو     دیکھ       میں     وہاں    آیا     تھا۔۔۔۔وہاں    پہنچ        کر      میں   کھستا    ہوا      اس    طرف   چلا    گیا   کہ    جہاں     پر     بہت    سی     لیڈیز      اکھٹی     کھڑی تھی۔۔ اور ان  کو  غور   سے   دیکھنے    لگا ۔۔ کچھ    ہی    دیر    بعد   میری     تیز    نظروں    نے  ایک  ایسی     خاتون     کو    مارک   کر  لیا    جو  کہ   ایک   کھلے      برقعے   میں    ملبوس   تھی   اور     اس      رش     میں    بغیر       شور شرابے     کے    چپ   چاپ     ایک     طرف   کھڑی تھی ۔۔۔  کچھ   دیر   اس     بات   پر    غور   کے     بعد   کہ    اس    برقعے    والی     کے   ساتھ  کوئی   مرد    وغیرہ     تو     نہیں      ہے؟   اور    پھر         جب      مجھے    اس     بات     کا      یقین    ہو    گیا    کہ    وہ   اکیلی     ہی  آئی     ہے   تو    میں  نے   اس   خاتون   پر   قسمت   آزمانے     کا   فیصلہ  کر  لیا۔ اور  کھستا   ہوا   اس    لیڈی     کے  نزدیک   پہنچ    گیا ۔۔۔ جیسے   ہی   میں   اس   کے  نزدیک   پہنچا   تو      خوش   قسمتی        سے  اسی   وقت     ہجوم   میں ایک    ہلچل   سی    مچی اور  اس   ہلچل   کا    فائدہ    اُٹھاتے     ہوئے      میں     عین   اس   خاتون   کے   پیچھے   جا      کر    کھڑا    ہو  گیا۔۔۔ اور    پھر    کچھ    دیر    بعد      کن اکھیوں    سے     ادھر ادھر    دیکھتے      ہوئے     میں      نے     بڑی   نرمی   کے  ساتھ   اس   کی  گانڈ   پر   اپنا    اگلا     حصہ    ٹچ     کر   دیا۔۔۔  ۔۔۔خاتون     کی  گانڈ    کافی    نرم  اور   موٹی  تھی   اس   لیئے     مجھے       مزہ    آ  گیا۔۔۔ لیکن   دوسری     طرف       میرے   اس   ٹچ    کا   اس   خاتون     نے    کوئی     خاص    نوٹس   نہ    لیا ۔۔یہ     دیکھ   کر   میں    نے      تھوڑی     دیر    بعد    بڑے    غیر محسوس   طریقے    سے   اس   کی   گانڈ   پر  اپنے      نیم   مرجھائے    ہوئے     لن کو      ٹچ   کیا۔۔۔جیسے    ہی        میرے    نیم          کھڑے        لن       نے     اس       کی     نرم     گانڈ    کو   چھوا۔۔۔۔تو    میرے    نیم    کھڑے  لن    کو     اپنی      گانڈ     پر     محسوس   کرتے     ہی        اس     خاتون  نے   پیچھے     مُڑ کر   ایک     نظر     میری طرف       دیکھا    لیکن   ۔۔۔کہا    کچھ    نہیں ۔اور      نہ        ہی     میں    نے     اس   کی  آنکھوں     میں  کسی   قسم     کے     غصے      کے    آثار      دیکھے۔۔۔۔یہ   صورتِ حال     دیکھ  کر      میں    کچھ      دلیر  سا     ہو گیا   ۔۔۔ اتنی     دیر    میں    میرا     لن   بھی      تھوڑا     ۔۔۔   جوبن    میں    آ  چکا   تھا     چنانچہ  اب   کی  بار    میں    نے    اپنے        نیم      کھڑے   لن    کو   اس    کی    گانڈ     کے     کریک    میں  تھوڑا     سختی     کے   ساتھ   دبا   دیا۔۔۔ برقعہ       ہونے   کے    باوجود      بھی      میرا    لن  اس    کی    گانڈ    کی     بڑی    سی     دراڑ    میں    تھوڑا    سا   اندر  گھس       گیا۔۔   میں     لن   کو    اس    کی     گانڈ     میں      رکھ  کر        وہاں   سے   بلکل  نہیں        ہلا  ۔۔۔۔ ۔۔۔ بلکہ   ایسے    ہی  کھڑا   اس    خاتون     کے       ردِ عمل     کا    انتظار        کرنے   لگا ۔   لیکن     اس    کی    طرف       سے      کوئی     ہل جُل    نہ تھی    اور    وہ      میرے     لن      کو        اپنی       گانڈ      میں      لیئے   بدستور    ویسے   ہی          خاموش    کھڑی  تھی     وہ     عجیب    خاتون تھی          لن  کو     اپنی     گانڈ     میں     واضع       طور      پر    بھی     محسوس   کر    کے  ۔۔۔    کوئی     رسپانس      نہیں      دے   رہی تھی    اس    وقت    تک   میرا    لن   تن  کر فُل    جوبن       میں    آ   چکا    تھا  ۔۔ اس    لیئے    میں  نے  اس  کی    خاموشی   کو   نیم    رضا مندی     سمجھا   اور      پھر      اس     کے     ساتھ      انجوائے    کرنے     کا    فیصلہ کر  لیا۔۔۔چنانچہ       یہ  سوچتے    ہی       میں   تھوڑا       پیچھے      ہٹا     اور      اپنی      قمیض    کو    ایک    سائیڈ       پر کیا ۔۔۔۔۔ پھر   میں    آگے  بڑھا   اور    اپنے    لن   کو     ہاتھ     میں       پکڑ    کر اس    کی      گانڈ    کی    لکیر        میں   گھسا نے    ہی    لگا    تھا   کہ   اچانک      پیچھے   سے  ایک  زبردست         دھکا     لگا     جس   کی      وجہ       سے۔۔۔    وہ    خاتون      میرے   آگے    سے   ہٹ   گئی   اور     دھکہ       لگنے         کی      وجہ        سے   ۔۔    اس    خاتون        کی    جگہ     میرے   سامنے     ایک   اور   لیڈی آن   کھڑی   ہوئی ۔۔۔  یہ   سب    ایک     سیکنڈ      کے     دسویں     حصے    میں    ہو   گیا۔۔۔ادھر    چونکہ    میں   اپنے   دماغ   کو    اس     خاتون    کی  گانڈ     میں   لن   گھسانے   کا   آرڈر     دے   چکا   تھا۔۔۔۔  اور   اس    دماغ      کی   کمانڈ        پر     اس خاتون   کی گانڈ میں لن گھسانے کے لیئے۔۔۔        میرا   پورا   جسم        اپنی   جگہ     سے   حرکت    کر       چکا    تھا ۔۔۔    اس   لیئے۔۔۔  اس    دھکم    پیل   میں    جیسے   ہی     پرانی    کی    جگہ    ایک     نئی      خاتون      میرے   سامنے      کھڑی    ہوئی۔۔۔   تو     میرا    دماغ   جسم   کو       بروقت   نئی  کمانڈ    دینے  میں   ناکام     رہا۔۔ ۔۔۔۔ لیکن  پھر    بھی  اس  پرانی  کی  جگہ     نئی  خاتون   کو    دیکھ     کر   میں    نے   اپنے    آپ   کو    روکنے    کی     بڑی    کوشش      کی     لیکن۔۔۔۔۔۔۔ہونے        والی        بات      ہو   گئی۔۔۔۔ ۔۔۔۔    اور     میرا       لن       سنسناتا         ہوا      اس    انجان     خاتون    کی     گانڈ     میں  گھس  گیا۔۔۔۔۔۔ میرے    خیال   میں   گھسہ       مارتے     وقت      میں    کچھ    زیادہ     ہی      جزباتی     ہو   گیا   تھا     اسی     لیئے      جیسے    ہی    میرا     زور دا ر       جھٹکا      اس      انجان     خاتون      کی     گانڈ   پر    لگا۔۔۔۔۔ تو     گھسے     کی    شدت     کی   وجہ     سے    وہ    تھوڑا      سا     لڑکھڑا      گئی  ۔۔۔۔ ۔ پھر   لڑکھڑا      کر     سنبھلتے       ساتھ      ہی        اس       انجان        خاتون      کو      جیسے       ہی       میری       اس      چیپ     حرکت      کا      اندازہ            ہوا۔۔۔۔ تو      اس    نے    ایک    دم     سے      پیچھے      مُڑ کر   شعلہ     بار      نظروں           سے     میری   طرف     دیکھا۔۔   اسے      غصے     میں          دیکھ    کر     میرا    رنگ    اُڑ  گیا۔۔۔۔اور     دونوں     ٹٹے        ہوائی      ہو   گئے۔اور      میں     یہ   کہہ     کر      خود       کو     کوسنے       لگا   کہ  ۔۔سالے     یہ   تُو        نے  کیا   کر  دیا۔۔۔ ۔۔۔ اتوار    بازار    میں آنے   والی    ہر    آنٹی       گانڈو     نہیں     ہوتی۔۔۔۔اس    لیئے       بہتری        اسی      میں   ہے  کہ  اس   سے قبل  کہ   یہ  خاتون   شور مچا   کر سب   کو   اکھٹا   کرے ۔۔۔۔۔  بھاگ  ملکھا    بھاگ۔۔لیکن   میرے  لیئے      اس     رش     میں     بھاگنا       تقریباً     ناممکن      تھا ۔۔۔۔۔۔لیکن   پھر   بھی      میں    نے     بھاگنے    کے     لیئے     ابھی    اپنا       پہلا     قدم   اُٹھایا          ہی      تھا  کہ۔۔۔۔۔ ۔۔۔عین    اسی   وقت   وہ  انجان    خاتون      میری    طرف  بڑھی۔۔۔۔۔۔۔۔اور     ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔اور ۔۔۔۔اور۔۔۔۔

(سوری    دوستو     کوشش    کے    باوجود   بھی       کہانی    کچھ  لمبی    ہو   گئی تھی   اس  لیئے۔۔۔)

……………………باقی آئیندہ…………………..

Share this post


Link to post
Share on other sites

Please login or register to see this quote.

کہانی کو ادھورا کہاں چھوڑا جناب

یہ تو ابھی جاری ہے۔۔۔۔ہاں   کہانی  کو  پسند کرنے لے لیئے بہت  بہت شکریہ

Share this post


Link to post
Share on other sites

Please login or register to see this quote.

عاصمہ جی

کہانی کی تعریف پڑھ کر یقین کریں کہ میرا دل گارڈن گارڈن   ہو گیا ہے

بہت بہت شکریہ۔۔آپ دوستوں کی حوصلہ افزائی ہی میرا سرمایہ ہے

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now