Jump to content
URDU FUN CLUB

Leaderboard


Popular Content

Showing content with the highest reputation since 08/22/2018 in all areas

  1. 2 points
    Doston ye story aj se koi 3 saal purani hy us waqt ma orkut use krta tha. Ma ek civil engineer hon aur aus wqat ma enginerring k 3rd yr ma tha. Ma bhi dosre larko ki tarah sex ka deewana tha Aur larkiyon k peechy pagal meri ek girl frend bhi thi jo is waqt meri wife bhi hy per mane shadi se pahle us se kabhi sex nhi kia ku k wo mana krti thi. Khair story pe aate hn tu orkut pe esy he ek no mil gaya us no pe mane call ki tu larki ne attend ki. Hello hi k bad mane usey bataya k uska no mane orkut se liya hy jis k neechy likha tha for fun n fone sex. Us ne foran se fone kat di aur ek sms aya jis ma ek aur no likh k bheja aur kaha k rat ko package pe bat hogi phir dekhege kitna dum hy tum ma. Khair ma apko pahle us larki k barey ma bata don uska naam sumaira tha age 28 rung saaf safaid boobs 36D aur height hogi koi 5'-6" uski jisamat thori chubby thi per zada nhi sirf gand aur bazo per maas zada tha hont ek dum malika sherawat k jese mote se thy.. Mane rat ko package start hote he cal ki thori si rasmi baton k bad hum seedha sex ki baton pe utar aye usne apna figure exact sahi bataya aur mane bhi.. Phir sumaira ne pocha kese kroge sex mane kaha tum room lock kr k agar mirror hy room ma tu uske samne beth jao ya lait jao. Usne kaha aamir mirro mere bed k bilkul samne hy ma khud ko dekh skti hon us ma. Mane kaha good. Wo rat december ki rat thi 23 dec. Sardi buhat thi ma bhi kambal tha aur wo bhi. Mane us se pocha sumaira kya pahna hoa hy tumne usne kaha skin tight trouser n loose t-shirt. Mane pocha andar kya pahna hy tu boli white cokor ki net wali embriodery wali bra with vry thin bra strips. Ye sun k mera lun khara hona shuro hoa usne panty nhi pahni thi. Phir hum ek dosre k jism se waqif hoty rhy mane usko pura nanga hone ko kaha aur wo hogai bus ek bra nhi utari usne. Mane pocha kyun tu boli k mere boobs ko sardi buhat lagti hy nipples dry hojati hn jaldi per phir mere zor dene pe us ne bra b utardi. Phir mane pocha sub se zada kya pasand hy boli choot chatwana. Mane kaha mirror ki taraf muh kr k leto aur tagien khol ma beech ma aky choot ko chatta hon. Ye sun k usne bataya k uska pani nikalna shuro hogaya khair mane usko buhat khush kia us rat. Jab hum donu farig hoye tu us ne kaha k ab roz yehi routine rahega ma khush bhi tha aur tang bhi k roz roz kon muth marey ga. Us ne bataya k wo ek birgadier ki beti thi aur MBA kr chuki thi aur rawalpindi ma rehti thi jab k ma hyderabad ma. Aus do dafa mangni tut chuki thi jis k wajhse wo bht dilshikasta thi. Khair hum roz yuhi phonesex kerty rahe aur akhir ma tang agaya aur us se jan churane laga. Mere ajeeb behaviour ko samjh gai aur kehne lagi mujhse jan churana chahte ho. Mane kaha ma ek larka hon kub tak muth pe guzara kroga. Us ne kaha phir ajao pindi phir dekhte hn kya kre. Mane kaha esy kese ajao tum koi paka program banao phir ao. Ye april ka month tha hum ne program banaya pindi islamabad ma milne ka. Usko driving ati thi aur us k pas apni toyota vitz car thi. Wo ek army waly ki beti hone ki wajh se kafi paise wali thi. Aur akser ma us se mobil k cards leta tha. Khair mane kaha k mere pas sirf ane ka kharcha wahan pe rehne ka jagah ka intezam tum krlena aus ne kaha tum bus ajao ma sub arrange krlogi phir 19 april ko ma din k flight le k islamabad puhcha plan k mutabiq wo mujhe lene agai thi airport. hun ek net pe ek dosre ko pics dekha k waqif krliya tha. Airport pe cal k zariye mile aur wo mujhe apni car ma bitha k ek F6/2 area k hotel one ma le gai jahan us ne pahle he room liya hoa tha. Hum seedha hotel room puhchy us waqt 4 bj rahe thy us ne lunch order kia hum ne sath lunch kia aur batien bhi. Lunch hum ne bed pe beth k kia aus doraan meri nazar sirf us k boobs par thi aus ne ek tight light blue floral print wala lawn ka suit pahna tha jis per net jesa barik dupata tha. Kameez ka gala bara hone ki wajh se clevage nazar araha tha aur us k galey ma gold ki chain jo us clevage ma phasi hoi thi mujhe pagal bana rahi thi. Wo meri nazro ka khel samjh gai thi aur kehne lagi aamir saber kro itna ghoor k mat dekho... Ma hans para aur wo bhi.. Khair khana khane k bad jub wo washroom fresh hone gai tu ma uske bahir atey he usko peechy se chipak gaya aur garden pe chumne laga abhi thora madhosh hoye he thy k sumaira ne kaha aamir abhi time buhat hogaya hy mujhe pindi jana hy ma kal ajao gi subah 9 bje phir shaam tk sath rahege so abhi ye 3-4 ghante akele guzar k sabr kro. Humnr ek achi khasi lambi french kisss ki aur wo chali gai. Jatey he uska sms aya k hotel ka bill wagera pay krdiya hy tum jo chaho kha lena without worrying about payment. Rat ko as per our routine hum ne fone pe bat ki aur aglay din ki planning krty rahe usne pocha kal konsa dress pahn k ao mane kaha jo b pahen k ao ma tu wese b dress utar donga tumhara, kehne lagi mujhe darr k utarne k bajai pharr na do mera dress.. Khair us ne bataya k wo ek do new style ki nighty le k ayi hy aur meri fav bra bhi (red color ki embriodry wali jis ma half mummay nazar aaty hon) wo le k aogi aur tumhare hatho se pahnogi aur tumhare he hatho se utarwaogi. Us raat hum 5 bj tk bat krte rahe mane us se pocha k choot k bal saf kiye hn tu bataya k kal kiye thy. subah nahate waqt phir se krogi. Usko pata tha k mujhe gori aur saaf smooth chot buhat pasand hy. Subah alaram pe 8 bje meri ankh khuli mane sumaira ko cal ki tu wo mujhse pahle he jag chuki thi aur bath le rahi thi. Meri cal k wait ma mobil bathroom ma he le gai thi. Mane jis tim cal ki tu us waqt bataya k choot k baal saf kr rahi hon razor se mane kaha razor le ana mujhe bhi apne bal saf krwane hn tum se. Sumaira na kaha thek hy ma new leti aogi. Aur ek do lotion aur oil bhi le aogi kam aye ga tera masage krne ma. Sumaira koi virgin nhi thi wo mujhse pahle apne mageter se chudwa chuki thi aur phone sex tu pata nhi kitno k sath kr chuki thi. Paisa aur army ka background hone ki wajhse nidarr thi. Takreeban 9:30 bj wo hotel puhchi aus k baal bhi abhi purey dry nhi hoye thy us k hath ma ek chota bag tha jis ma wo saman laiyi thi. Room ka door khultey he usne andar aky do not disturb ka tag bahir lock pe hang kia aur door lock kr k seedha mere pas ayi mane bhi bina kuch sochy samjhy usy kas k hug kia aur uske face garden aur seene pe kiss krne laga jaldi jaldi aus ka dopata hataya aur boobs ko kameez k oper se he kiss kia. Mera lun khara ho chuka tha aur uski tango ma lag raha tha. Us ki height mujhse do inch choti thi aur us k bal shoulders se 4 inch nechy tak thy. Wo mujhe aami jano kehti thi. Phir kehne lagi aami ab ma tumhari hon jo dil kre jese dil kre kro koi kuch nhi kahega. Mane kaha ma apne boobs k liye buhat tarsa hon ab aur wait mat krwao ,, wo boli sub kuch tumhara hy jan le lo donu boobs aur ye keh k aus ne mera face pakra aur zor se apna khum ( ckevage) bana k us ma dabaya. Us kr boobs ki mahek aur khushboo ma aj tk nhi bhola. Mane ausy bed k corner pe bethaya aur khud nechey carpet pe knees pe beth gaya aur boobs ko chumne laga suck krne laga aur dabane bhi. Mane mammo ko itna choosa k uski kameez he geeli hogai wo mujhe esy dekh k bht khush horahi thi aur bol rahi thi mera payara bacha kitna bhoka hy apne mammo k liye aur choso aur chumo aur khao enko ye sirf tumhare hain. Mane us k ane se thori dair pahle chai aur cake pestree magwali thi. Pestree ko dekh k khayal aya k kyun na enko boobs pe laga k khao mane ye khayal sumaira ko bataya. Usne bina kuch sawal kiye apne kameez utari jo bht tight thi kameez jese hi utri us k boobs (36 size) jhatke se nechy latke. Usne khud pestree uthai aur pocha kese khaoge mane kaha cream ko nipples pe lagao aur cake ko clevage ma masal do. Usne kaha bra utaro . Ma uske peechy ja betha aur huk khol k bra k nechy se hath dala aur donu mammay daba k pakre aur bra utar k phek di phir sumaira ne mujhe front ma bulaya ta k ma boobs ko dekh sako. Usne jese he cream aur cake boobs per masaly ma deewano ki tarah boobs pe tuta aur cake khane laga uski cream chatne laga. Mane apne mu ma pestree ka bana piece liya aur sumaira ko french kiss krte khila diya mera sara face cake ki cream se bhara tha per uske boobs ko mane chat chat k ek dum saf krdia tha. Phir sumaira ne mera face honte naak gaal sir chin sub chaat k saf kia. Phir mane kaha k ab chalo ek bar naha k ate hn wo mere sath bathroom ayi ma us se pahle he wahan nanga khara tha uski kameez n bra tu utar chuka tha shalwar bhi mane hr utari. Shower k nechy tub ma khare thy wo meri bahon ma bilkul band thi. Donu boobs meri chest se chipke hoye thy. Mera lund uski choot se laga hoa tha mera ek hath uski back pe tha ur dosra uski gand k beech ma. Aur hum lip kissing kr rhy thy. Usne mujhe nahlaya shampo kia soap laga aur mere khuchay ( lun k oper bal ) bhi saaf kiye. Hum ne ek towel se khud ko dry kia aur bed pe aky gire. Girty he ma us k oper aya aur uske jism ko chumne aur chatne laga. Wo bhi masti ma thi aur mujhe utna he chum rahi thi jitna ma. Mujhe pata tha usko choot chatwane ka shok tha jo usne sirf fone pe pura kia tha. Mane sumaira se ejazat mangi k kya ma uski choot chato wo buhat khush hoky boli k aamir kya tum waqai esa kroge. Mane kaha han. Tu wo khushi khushi boli aami jano bus dair mat kro ma aur wait nhi krskti, uska ye kehna aur mera uski tagien utha k uski choot k aaspaas apni saason ka lagana , phir halki halki chumiyan dena. Uski chot se halka pani nikal raha tha mane sumaira se kaha kya ma tumhari chot ka pani po jao tu wo aur pagal hogai aur mere balon ma hath dal k chot ma mere face ko dabaya. Phir tu ma pura mu khol k uski choot k lips ko andar lia aur phir gaand k hole se le k choot tk chatta raha kabhi choot k lips ko chosta kabhi zaban ko choot k andr dal k zor se hilata raha. Es doran uska pani bhi nikalta raha aur ma beech beech ma apne hatho se boobs ko press krta raha. Wo es doran paglo ki tarah siskiyann le le k mera naam le rhi aur keh rhi thi aamir aur pyar kro mujhe meri choot ko apne mammo ko bus ma tumhari hon sir se le k pao tk teri hon. Jab adhey ek ghante tak ma uski choot chat chuka tha tu mane bus kia aur phir us ko bola k bag ma aur kya kya lai ho. Us ne usi nangi halat ma bed se uthi sofay per parey bag k pas gai aur wohi bra aur ek do nighty nikali. Phir pochne lagi kya pahno pahle mane kaha bra to ma pahnao ga baki nity pahn lo wo nity b kya nity thi length ma choot se thori nechy thi aur oper se bilkul bra k shape ma thi jis ma se adhe boobs nazar arahe thy mane kaha ye kyun pahn rahi boli ta k tum Madhosh ho k es ko phar do. Ye sunte he mera lun toob ki tarah salami dene laga aur ma bed se uth k seedha uske pas gaya usko deewar se laga k uska gala dabaya aur clevage ma hath dal k nity ko zor se kheecha jis se nity ka front phat gaya aur mammay bahir agai aur ma ne thora nechy jhuk k unko chosa. Ma boobs ka bht shokeen hon aur ye bat wo bhi janti thi. Phir sumaira ne mujhe sofay pe bethaya aur khud zameen pe beth gai aur lun ko aas bhari nazron se taarne lagi kabhi apne gaal lun pr laagati tu kabhi apni gram sasain. Kabhi tatto ko sooghti tu kabhi meri gand k hole k pas apni zaban lagati. Akhir usne meri tarap ko choti pe charah k mere lun ka topa chuma uske malika sherawat jese hont jese hi mere lun k lage mere ek do qatre nikal aye pre-cum k. Ab wo mere pure lun ko donu hath se rub kr rhi thi. Phir jub lun ek dum hard hogaya tu us ne apne mu ma dalna start kia topay se shuro kia aur ahista ahista adhe se zada lun mu ma le rahi thi. Lun choste waqt wo itni zor se hil rahi thi k mammay jhatke kha k mere knees se lag rahy thy aur ma bhi boobs ko neechy se parak k daba raha tha bht tez.. Phir neechy ko jhuki aur mere taagien utha k apne shoulders pe rakhi aur mere tatte chosne lagi. Tatte pure uske mu ma thy. Ye sub kuch hum pahle he phone sex ma kr chuky thy. Phir us ne pas he pare bag ma se lotion nikala aur apni hatheliyon pe laga k mere lun ko apne hatho ma band kia aur zor zor se ragarne lagi mujhe us waqt bht maza araha tha kyun sumaira k jism ka har hisa buhat soft mulayam aur garam tha. Ma akhien band kr k 10 mint beth gaya phir us ne lotion le k apne boobd pe lagaya aur clevage bana k lun ko beech ma lia aur rub krne lagi. Ye sub kuch mane xxx ma dekha tha ya phir sumaira k sath phone sex ma kia tha aj hakikat ma feel kr rha tha. Kafi dair rub krne k bad ma farig hone wala tha tu mane usey eshara dia sumaira ne kaha yehien farig hojao mane kaha nhi mere boobs kharab hojai ge ma abhi enko aur pyar krna chahta hon kyun k us waqt sirf 11 bje rhy thy aur hum sham 6 bje tk tu pakey sath thy. Sumaira ne kaha tu farig ho ma ja k saaf kr aaogi tere mammay pareshan na hon mere chanda. Phir kya ma bhi fatak se apna sara load un dhood se bhare gol gol boobs pe nikal dia. Sumiara ne us phati hoi nity se mera lun saf kia apne boobs se mony saf ki aur bathroom ma mammay dhone chali gai phir hum ne khana order kia, kuch dair ma khana aya sumaira nangi bethi tu wo bathroom chali gai mane jaldi se tourser shirt pahen k room service waly se khana liya aur usko farig kia phir sumaira ko bulaya tu usne mere kapre utarey aur kaha hum Nange beth k khana khayr ge. Hum Sofay pe bethey thy wo meri goud ma ek taag pe bethi thi mera ek hath usko back se kamar per pakre hoye tha uske donu hath agay thy wo khud bhi khana kha rhi aur mujhe b khila rhi thi., ma beech beech ma boobs ko bhi khaa raha tha. Khane k doran mane apni ek ugli uski choot ma di hoi thi. Bus khana khate khate hum donu ka mod bun gaya aur mane usey bed pe patka aur wo lun ko pakar k chosne lagi jese he lun tayar hoa mane uski kamar k nechy do takiye diya aur khud knees pe khara hoky uski taago ko oper hawa ma uthaya lun ko aram se choot ma dala. Seal na hone ki wajh se lun aram se andr gaya. Phir ma train ki tarah speed pakarta gaya aur uski halki soft dard bhari siskiyan mujhe aur pagal krti gai mane uski taago ma hath chore aur boobs dabane laga kyun k jhatkr martey waqt wo buhat tez hil rahy thy. Sumaira kehti rahi aram se kro aamir plz meri choot dukh rahi hy pr mane usko french kiss di aur uski awaz ko hi band krdia. Mane us ghuma k dogy styl ma laya aur gand k soorakh pr lun ko rub kr k choot ma dala aur usi position ma 15 mint tk laga raha sumaira ka boobs tez hil rahe thy jinko ma samne lage mirror ma dekh raha tha. Mane sumaira ko balo se parak k 5-6 jhatke tez mare jis se uski phati hoi choot aur phat gai aur uski ankho ma ansu agai. Wo beech do dafa farig hochuki thi aur uska pani lun se hota hoa bed sheet pe gir raha tha. Ma jab farig hone k qareeb tha tu lun bahir nikala wo samjh gai ma farig hone wala hon mane bed crown se taik lagai taagein kholi tu sumaira ulti lait k hatho ma lun pakar k chosna shoro hogai. Ma bilkul madhosh tha us waqt.. Mane sumaira ko kaha ma farig hojao wo boli hojao per apna ek ek qatra mere jism pe nikalo. Ma khara hogaya aur wo adhi lait gai mane aus k boobs se le k choot tak apni money k qatre lagai aur bed pe gir gaya. Sumaira ne bhi khud ko saf kia aur mere oper aky lait gai, us waqt sirf 2 bje thy abhi humare pas kafi tim tha hum donu fresh hoye aur phir bacha hoa khana khaya mane apne liye shake magwaya. Sumaira room ma nangi phir rahi thi kabhi mirror k samne khari hoky bal bana rahi thi kabhi bra nity pahn k dekha rhi thi ma bhi lun ko hila hila k usey bula raha tha jab phir se mera mod bana tu mane sumaira ko peechy se ja pakra apna ek hath uski kamar pe kasa aur dosre se bubba dabaya aur lun uski choot ma dala aur udhar hi jhatka dena shuro kia aur tez tez sumaira ko chodne laga sumaira bhi kehti rahi bed pe lait k kro esy dard horaha hy pr mane ek na suni aur mirror k samne he khari halat ma chodta rha sumaira ko. Jab sumaira ek do dafa farig hoi tu mane kaha ma teri gand ma farig hona chahta hon tu wo boli gand ma nhi aamir mane kaha pura andr nhi daloga bus oper se he farig hoga ye keh k mane tez tez jhatke mare aur uski cheekhien nikal di jab farig hone laga tu choot se lun nikal k gaand k soorakh ma diya aur halka daba k farig hoa Phir hum donu nange zameen pe lait gai... Thakan ki wajh se meri thori ankh lagi jab utha tu sumaira ne shalwar pahn li thi aur without kameez khari bal bana rhi thi ma uth k peechy se hug kia tu boli bra pahnao na mane bra pahnai aur nipples ko kas k choosa itna kas k k sumaira ne mujhe zor se jhatka de k peechy kia.. Phir tayar hoi aur apna saman bag ma dala aur mujhe kiss ki 10-12 mint phir chali gai ... Rat ko phone aya tu kehne lagi kal phir aogi ma usi time mane rat rukne ka program banao ta k ma tumhe apni biwi ki tarah chodo kehne lagi kal subah aogi parso ghar waly jai ge tu rat rukne b ajao gi tum ek hafta kum se kum yehien stay kroge phir kya meri to moujey hogai sari rat mera lun uske intezaar ma khara raha... Dosre din ka haal apko phir kabhi sunaoga......
  2. 1 point
    * ایک نوجوان کی کہانی جوگاوں سے شہر پڑھنے آیا تھا *
  3. 1 point
    سالی کو چودا
  4. 1 point
    ھنستے رھیئے
  5. 1 point

    Version

    51 downloads

    غافل از ڈاکٹر فیصل خان کل صفحات 125 / مکمل ناول.

    $2.00

  6. 1 point
    مالک نے چودا میرا نام نیلم عمر 23 سال ہے اور میں اپنا گھر چلانے کے لیئے لوگوں کے گھروں میں صفائی کرتی ہوں- میں نے 2 سال پہلے ایک گھر میں کام کرنا شروع کیا تو انہوں نے مجھے گھر کے پیچھے والے کوارٹر میں رہائش دے دی- اور میں اپنی چھوٹی بہن کے ساتھ وہاں رہنے لگی- پورا دن کام کرنے کے بعد رات 8 بجے چھٹی ملتی تھی اور میں اپنے کوارٹر چلی جاتی تھی- جن کے گھر میں نوکری کرتی تھی وہ2 افراد کی فیملی تھی میاں بیوی کی اور انکی بیوی اکثر بیمار رہتی تھی جسکی وجہ سے مجھے انکی دیکھ بھال بھی کرنی پڑھتی تھی- میں ڈوپٹہ پہن کر اور اپنا منہ ڈھک کر مردوں کے سامنے آتی تھی اور کبھی سکس جیسی چیز کو محسوس نہیں کیا تھا- خیر ایک دن میں بیگم صحابہ کا باتھ روم صاف کر رہی تھی تو اچانک باتھ روم میں انکے شوہر آگئے اور انہوں نے مجھے دیکھا تو میری کمیز اوپر تھی کمر سے ڈوپٹہ نہیں تھا اور چھینٹوں سے میری شلوار گھیلی ہورہی تھی- مجھے باتھ روم میں دیکھ کر وہ فورن باہر چلے گئے- اسکے بعد تو کچھ دنوں تک وہ مجھے گھورنے لگے مجھے کبھی کسی مرد نے اس نظر سے نہیں دیکھا تھا اور میں انکو سمجھ نہیں رہی تھی- پھر وہ جب بھی میرے پاس سے گزرتے میرے بدن پر کہیں نہ کہیں ہاتھ مارتے ہوئے چلے جاتے اور میں انکو کچھ نہ کہتی اور بنہکچھ سمجھے کام کرنے لگ جاتی- ایک دن میں اپنے کوارٹر میں رات کو اپنی بہن کو سلا کر انکی ہرکتیں سوچ رہی تھی کہ اچانک صاحب کمرے میں آگئے اور میرے قریب بیٹھ کر باتیں کرنے لگے میں حیران بھی تھی مگر انکی باتوں جواب دیتی رہی- باتیں کرتے کرتے وہ میرے ہاتھ کو چھونے لگے اور مجھے اجیب لگنے لگا پھر وہ ایک دم میرے قریب آئے اور کہا لیٹ جاو تو انہوں نے مجھ لٹاکر میرے اوپر لیٹ گئے اور میں آنکھیں بڑی کرکے انکو دیکھ رہی تھی اور روک نہیں پارہی تھی- انہوں نے مجھے اپنی باہوں میں دبایا اور میرے ہونٹوں کو چوسنے لگے اور نیچے سے انکا لنڈ میری چوت کو کپڑے کے اوپر سے رگڑ رہا تھا- میرے تو پورے بدن میں گرمی جیسی بجلی ڈوڑنے لگی اور وہ میرے ممے مسلنے لگے- میرے منہ سے سسکیاں نکل رہی تھی اور میں انکے نیچے لیٹی تھی- انہوں نے مجھے گود میں اٹھا کر میری کمیز اتار دی میں نے اندر کچھ نہیں پہنا تھا اور وہ میرے ممے دیکھ کر انکو بے اختیار چوسنے لگے میں پاگل ہورہی تھی اور منہ سے آہ ہ ہ ہ س س س س نکل رہا تھا مجھے یہ مزہ کبھہی نہیں ملا تھا- اور مجھے نشہ چڑھنے لگا- انہوں نے ایک جھٹکے سے میرے شلوار اتار دی اور اپنی شلوار اتار کر لنڈ دکھایا میں نے پہلی مرتبہ کسی کا لنڈ دیکھا تھا انکا لمبا لنڈ دیکھ کر میں تو مست ہونے لگی اور وہ میری چوت پر ہاتھ رگڑنے لگے مجھے بہت اجیب لگ رہا تھا اور جب وہ میری چوت کو چھوتے میرے منہ سے س سس نکلنے لگتا اور سناٹا چھا جاتا- اور جیسے ہی انگلی اندر جاتی تو میں اچھل پڑتی کمر کی طرف سے- میری چوت سے پانی نکلنے لگا اور ساتھ ہی تھوڑا خون بھی- انہوں نے اسے صاف کیا اور پھر میرے اوپر لیٹ کر اپنی کمیز اتار دی اور ہم فل ننگھے تھے پھر انہوں نے میری ٹانگیں اٹھائی اور اپنا لنڈ چوت پر رگڑنے لگے میرے تو ہوش اڑ گئے اور میں اپنے ممے مسلنے لگی آنکھیں بند تھیں - اور پھر اپنے لنڈ پر تھوک لگا کر میرے اوپر لیٹ کر مجھ سے لپٹ گئے اور کس کرنے لگے اور اچانک نیچے سے لنڈ میری ورجن کنواری چوت میں جانے لگا اور میرا درد بڑھنے لگا اور میرے منہ سے م م م م نکل رہا تھا مگر انہیوں نے میرا منہ نہیں چھوڑا اور جھٹکا مارا اور لنڈ چوت میں چلا گیا میرے تو ہوا ضشک ہوگئی اور پھر وہ تیز تیز اندر باہر کرنے لگے- اور زور زور سے چھکے لگنے سے میرے آنسوں نکل رہے تھے مگر وہ نہ رکے اور 2 منٹ بعد میرا درد کم ہوا اور مجھے ایک عجیب مزہ آنے لگا اور میں بھی اپنی گانڈ ہلانے لگی- میرے منہ سے آہ ہ ہ ہ اور اور اور نہ رکنا نکلنے لگا – 10 منٹ بعد میری چوت سے دھار مارتا ہوا پانی نکلا اور میری آہ زور سے نکلی لیکن وہ مجھے چودتے رہے نان اسٹاپ کوئی 15 منٹ بعد انکی مٹھ مجھے اپنی چوت کے اندر نکلتی محسوس ہونے لگی اور میں نڈھال ہوگئی تھی اور وہ میرے اوپر لیٹ گئے اور مجھے چومنے لگے اور میں انکے بدن کو زبان سے چاٹنے لگی- اور انکا لنڈ میری چوت میں چھوٹا ہوا انہوں نے کہا تجھے مزہ آیا میں شرماتے ہوئے آنکھیں بند کرلیں اور انہوں نے میرا منہ چوما اور اپنے کپڑے پہن کر چلے گئے- اس دن کے بعد میں جب انسے ملتی تو وہ مجھے بہت پیار کرتے اور ہر روز رات کو میرے پاس آکر یا مجھے ساتھ کہیں لے جاکر میری چدائی مارتے اور ابمیرے نپلز اور ممے کافی بڑے ہوگئے ہیں- انہیں میری جوان چوت سے کھیلتے ہوئے بہت مزہ آتا ہے-
  7. 1 point
    ایک لڑکی تھی سترہ سال کی - بہت خوبصورت تھی اور سامنے ایک لڑکا رہتا تھا پچیس سال کا جس نے بڑی کوشش کی کہ دے دے، دے دے لیکن نہیں دی - زمانہ گذرتا گیا جب لڑکا اسی سال کا ہوگیا اور لڑکی تہتّر کی ہوگئی تو ایک دن آگئی کہ بھئی لے لو تو لڑکے نے اپنی طرف دیکھا اور لڑکی کی طرف دیکھا پھر اس پر ایک نظم کہی - ملاحظہ ہو اب جو تم مرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو میں نے مانا کہ تم اک پیکرِ رعنائی تھیں چوچیاں بارھویں سال ہی ابھر آئیں تھیں ہر نظر باز کی تفریح تھیں ہرجائی تھیں اپنے جوبن کے خریداروں پر اترائی تھیں اس وقت نہ پوچھا تو اب کیوں آئی ہو یہ چدی اور پٹی چوتیاں لائی ہو اب جو تم میرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو مجھ کو یاد ہیں وہ تمہارے نشیلے جوبن رس بھرے رس داررسیلے جوبن جن کی نوکیں چبھیں دل میں وہ نوکیلے جوبن اب کیا رہا اب تو ہوگئے ڈھیلے جوبن ہاتھ کتنے حرامیوں نے گرمائے ہیں اتنے کھینچے ہیں کہ پیٹ پہ لٹک آئے ہیں اب جو تم میرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو چوتوں نے مرے لوڑے کی یوں ماری ہے اک مدت سے بے چارے پر بے ہوشی طاری ہے اب نہ سدھ ہے نہ احساس ہے نہ ہوشیاری ہے یہ اک ہیرو ہے جو معذور اداکاری ہے اب تو لہنگے کی ہوا سے بھی نہ ہوش آئے گا کھول کے لیٹ بھی جاؤ تو نہ جوش آئے گا اور اے دوست !!! اب تو اس کام سے بھی گھن آتی ہے صرف سوچنے سے مری گانڈ پھٹی جاتی ہے اب جو تم مرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو اک زمانہ تھا جب مجھے کام مزہ دیتا تھا رنگ اپنا میں ہر چوت پہ جما دیتا تھا ایک اک کونے میں چوتوں کے ہلا دیتا تھا اچھے اچھے لوڑوں کو میں نظروں سے گرا دیتا تھا ایک ہی موقع میں وہ چبھنے کا مزہ پاتی تھی چدھ کہ ہر چوت دعا دیتی چلی جاتی تھی لیکن اے دوست اب نہ وہ میں ہوں نہ لوڑے میں دم باقی ہے پھٹ چکی گانڈ اب صرف بھرم باقی ہے اب جو تم مرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو یہ کہانی ہے حرف بہ حرف مرے لوڑے کی سر نیچے رہتا ہے نیچی ہے نظر لوڑے کی گانڈ میں گھس گئی سب اینٹھ مرے لوڑے کی اپنی حالت پر افسوس کیا کرتا ہے چوت کو دیکھ کے منہ موڑ لیا کرتا ہے اب جو تم مرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو تم ایک سفلس ہو سوزاک ہو کوئی کیا جانے خشک ہوں چوت کے کونے کوئی کیا جانے اب تو لوڑے کو نہ آفت میں پھنساؤں گا میں اس گڑھیا میں تو غوطہ نہ لگاؤں گا میں جھک کے دیکھو تو ذرا بھوسڑے کی حالت زار یہ وہ تلیّا ہے جس پہ چھائی ہوئی ہے سوار نام باقی نہ رہا صرف نشان باقی ہے اب تو جھانٹیں ہی جھانٹیں ہیں چوت کہاں باقی ہے اب جو تم مرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو دیکھتی رہتی تھیں نظریں مرے لوڑے کی بہار چوبیسوں گھنٹوں کھرا رہتا تھا میرا ہتھیار موتتا تھا تو جاتی تھی گزوں دور پیشاب کی دھار مرے لوڑے کا ہوتا تھا حسینوں میں شمار لیکن اے دوست اب تو ایک بالشت کی بھی نہیں جا پاتی ہے دھار پیشاب کی ٹٹوں پہ ٹپک جاتی ہے اب جو تم مرے پاس آئی ہو تو کیوں آئی ہو آڈیو ملاحظہ ہو
  8. 1 point
    کہا جاتا ہے کہ ایک دفعہ سرِ بازار کسی لڑکی نے غالب کو نامرد اور بے اولاد ہونے کا طعنہ دیا جس پر غالب کا ردّعمل تھا کون کہتا ہے کہ غالب کا کھڑا نہیں ہوتا سربازار جو نہ دوں تا غالب نہ کہیو
  9. 1 point
    ہاہاہاہاہاہاہا واہ جی واہ بہت خوب اسی طرح کسی شاعر نے فرمایا وہ آئیں میرے خواب میں احتلام ہوگیا ان کی بھی عزّت بچ گئی اپنا بھی کام ہوگیا
  10. 1 point
    ایک لڑکی غالب کا دل توڑ کر چلی گئ تو غالب نے عرض کیا وہ چلی گئی ہماری شکل پر موت کے چلو اسی بہانے دیدار تو ہوئے اس کی چوت کے ایک لڑکی نے غالب سے لیٹ نائیٹ ملنے کا وعدہ کیا اور بہت انتظار کے بعد لڑکی ملنے پہنچی غالب نے عرض کیا لے جا اپنی چوت کسی اور کو دے دے غالب کو اپنے ہی ہاته سے قرار آ گیا
  11. 1 point
    ہاہاہاہاہا چچا غالب سے معذرت کے ساتھ بے خودی بے سبب نہیں غالب سچ بتاؤ کس نے گانڈ ماری ہے
  12. 1 point
    کون کہتا ہے کہ غالب کا ننھا سا ہے سکڑے تو گنڈیری اکڑے تو گنا سا ہے
  13. 1 point
    رات اک دم کسی نے سسکی لی نہیں معلوم کس نے کس کی لی
  14. 1 point
    ہاہاہاہاہا بہت خوب ڈاکٹر صاحب بہن کے چڈ کو پنجابی میں غالباََ یوں کہیں گے کہ جو بھی ملا ہے پین لن ملا ہے
  15. 1 point
    زمانے سے بس یہی اک گلہ ہے جو بھی ملا ہے بہن کا چڈھ ہی ملا ہے۔
  16. 1 point
    مانا کہ تیری چوت کے لائق نہیں ہوں میں تو میرا لنڈ دیکھ میرا اعتماد دیکھ
  17. 1 point
    Name: Sameen Age 27 Aur i hope kaafi log mujhe jante hi hain
  18. 1 point
    (From Internet) My name priya kappor aur me Delhi k ek posh ilake ki rehne wali ladki hu. I am 29 Married with gora badan Big round breast and light brown soft short hair. I am 36″ 28″ 36″ . Meri sexy figure ke alawa mera plus point he meri height (5 ft 9 inches). Teenage se he muze sex ke baare me bari ruchi thi. Whenever I use to see couple kissing on tv i use to get ripples in my stomach. 18 saal k hone per me college gai. Me aur mei behen ruchi swimming karne jaate. Mere mama ne hum dono ko bahut sexy swimsuits bangkok se laa k diye thai. Phle to hume wo swimsuit pehne me itni sharam aati thi kyoki we itne revealing or short thai ki hum kuch chupana chahe to bhi nai chup sakta tha.Per jab log hume bhooki nazroo se dekhte thai wo pehne hue to hume bara maja aane laga. Hamare swimming sir rakesh bare he gathhele badan k aur lambi height k thai. Wo hume bahut line maarte thai. Swimming sikhte hue hum unhe jor se kaas ke pakar leti thi aur float karti thi. Mere badan ke sparsh paate he unke roye kahre ho jaate thai, aur unka 9″ ka lund unke chote se red underwear me se fat k bahar nikalne ko hota tha. Ye dekh kar hum dono unko apni taango se pakar leti thi aur aise pretend karti thi ki jais hume paani me darr lag raha he . Unka mota lund meri gaand k neeche knock knock karne lagta. Sir pehle insaan thai jinhone muzhe chodha. Aur shayad meri behen ko bhi. Ye to hui bacpan ki baat. Ab hum bari shaadishuda ho gai thi. Hum dono ne shaadi se pehle bahut logo se chudhwaya tha. Pehle swimming sir, fir class ke dost honey aur jitu se.Fir paros ke uncle shaam se, uske baad to hume jo mila hum ne kisi ka lund nai chora. Sabzi wale uncle ka, school bus driver ka.Ek baar goa gaye to waha humne college ke ladko se paise le k chudhwaya. Mere gore badan se khelne k liye mohalle ka her ladka aur her uncle tayyar rehte. Muje kabhi mere flat ki siriyo me nanga kar deta to kabhi koi park me le ja k meri chut faad deta. Me lund ki obsessed ho chuki thi. Mere gharwaalo ki kaafi badnaami hui , Is kaaran unhone ne ghar badal liya aur meri shaadi jaldi kar di. Per Kuch aadate kabhi bhi nai badalti. Maine shaadi k doosre din he apne husband aakash k bhai gautam ke saath bistar garam kar diya. Mere pati din bhar kaam karte he aut raat ko sone k alawa kuch nai kar sakte . Unko meri in harkato k baare me pata chala to bare gussa hue. Per apni haalat dekh kar wo jyada kuch na kar sake. Ab sab baate unko pata he aur me unko bol k logo ke saath ghumne jaati thi. Ek din meri behen ruchi ne hume apni couple kitty me invite kiya. Hum dono waha per pahuche to dekha ki jyaadataar couple newly wedded hai. Ruchi ne hume bataya ki ye sab broadminded couples he. To mene poocha ki tumne hume yaha kyo invite kiya ? Is per ruchi k pati karan bole ,â€Priya wait karo , abhi aage aage dekho hota he kya.†. Aur me abhi ek kone me jaa k baithi he thi ki light off ho gai. Aur kisi ne mere muh per rumaal rakh diya. Me chilla nahi saki .wo muzhe utha k ek kamre me le gaya aur andhere me maine mehsus kiya ki kafi haatho ne muzhe kas k pakar raha he. Itni he der me do haatho ne mere badan se kapade utarne shuru kar diye. Me ghabre gai. Per kuch na kar pai.Un haatho ne muzhe chand seconds me apne kapdo se alag kar diya. Iske baad ek dum se light on ho gai . Waha sab k sa waise he khade thai. Sab muzhe is halat me dekh kar has rahe thai. Me ghabra gai. Mene dekha ruchi bhi muzhe dekh kar haas rahi he. Usne muzhe kaha ,â€Didi abhi to trailor hua he, ab dekho kitna maza aaiga. Mene ek kone me dekha to mere pati karan k saath Khare hue Hus rhe thai. Karan mere paas aya aur bola ,â€Priya ye sab plan mera aur tumhare pati ka heâ€. Tum jaisi biwi se badla lene k liye AAKASH ne ye sab karwaya.†Muze aakash pe bahut gussa aa rha tha . Do ladko ne muzhe nanga sab k saamne kas k pakda hua he aur mera pati aur meri behen mujh per has rahe he. Thori der me waha jitne aadmi thai sabne apne kapde utar diye. Un sab k lund dekh kar meri aakhe fati ki fati reh gai. Aur mere muh se aaahhh… Ke awaaj nikal pari. Itne mote aur itne saare lund maine Zindagi me aaj tak nai dekhe thai. Meri chut itni geeli ho chuki thi, aur mere pink bare bare nipple ek dum tight ho gai thai.Sharam k maare meri aankhe band ho rahi thi, per itne ssare jawaan lund ko dkhne k liye meri aankhain baar baar un per chali jaati.Un logo ne mujhe ek table per lita diya. Fir do ladko ne apna apna lund mere hatho me pakra diya. Itne garam aur itne mote lund mere haath me sama nai rahe thai. Karan mere muh ke paas aya aur gande gande naamo se mujhe bulaane laga,†raand, lund ki bhooki, saali, aaj teri hawas ko poora thanda kar dunga. Tere badan ke ek ek ang ko chudhai ka maza dengeâ€. Uski baate sun kar mere tunbadan kaanp utha. Aur poore badan me ajeeb se gudgudi mehsus hone lagi. Usne apna lund mere muh me dhaakel diya. Wo itna bada lund tha k mere muh me nai sama rha tha. Do ladke apne lund mere nipples k saaath ragarne lage. Aur baaki saare ladke apna lund mere aas paas hilaane lage. Itni importance milti dekh kar me proud feel kar rahi thi, per saath saath ek randi jaisa mehsoos kar rahi thi. Karan ka dost Ajay jo 6 foot ka body builder tha , usne apna lund meri chut pe tikaya aur ek dhaake se poora anadar daal diya. Meri lambi cheekh nikal gai. Aaahhhhiiiii… ! Wo muzhe gaaliyaa de de k chodh raha tha. Uske powerful Zhatko se me pagal hoi ja rahi thi. Aur us waqt muzhe ek bahut strong orgasm ho gaya. Ajay ne apna paani mere anadar he chor diya. Karan ne mere Poore baalo ko apne safed paani se gila kar diya. Uske baad to Muzhe itna maaza aane laga ki aisa mun kar rha tha ki yeh raat kabhi khatam na ho. Uske baad do Ladke jo judwa bhai thai (robin aur sherry) unhone apne lund meri chut me ikatthe daalne ki koshish kari . Me to dard se behosh se ho gai. Per abhi to shuraat thi. Mere pati ne niche se mere gaand me ungli karna shuru kar diya. Unhone poori teen ungliya meri gaand ke under daal dee aur unglyo ko andar fealaane ki koshish karne lage. Meri to gaand bilkul fut gai. Aahhh… Uohhh ..uiiii… Chor do kamino. Me mar jaaungi. Mene do ladko k lund ko kuss k pakar liya Aur jor jor se hilaana lagi. Dheere dheere sab ladko ne muzhe jum kar chodha. Mene bhi apni gaand utha utha k sabke lund ko poora andar liya. Mera stamina dekh K saare ladke aur ladkia heraan reh gai. Muzhe nai pata tha ki saari ladkia apne camera phones se meri photos aur video le rahi he.ye muzhe baad me pata chala tha. Abhi raat 2 baje tak me 25 baar chut me aur 14 baar gaand me chudh chuki thi. Ab muzhe thakaan mehsus ho rahi thi , per ladke thakneka naam nai le rahe thai. Mene apne ko unki will pe chor diya. Aur chup chaap jo kar rahe thai unhe karne de rahi thi.mera poora sharir semen se lipta hua tha aur semen ki smell muzhe abhi bhi horny kar rahi thi. Muzhe unhone poore 6 baze tak chodha. Muzhe yaad nai mene kitni baar chudhwaya. Sab chale gai. Mai, ruchi , karan Aur mere pati sirf reh gai thai. Ruchi ne muzhe khada karne ki koshish ki. Me khadi nai ho pai. Meri taango k beech me bahut dard tha. Karan muzhe nanga he utha k bathroom me garam paani k tub me chor aya.Paani mere badan ko relax karne laga.Me ghante baad bathroom se bahaar aai. Nangi he sofa pe let gai. Mere Hubby Aakash mere paas aai aur bole kasia feel ho rahe he. Mene kaha thank you aakash Muzhe yaha laane k liye. Ruchi boli ,â€Didi ye sab kaand mere saath bhi ho chuka he . And i am also enjoying this since last six months.
  19. 1 point
  20. 1 point
    part 4 اگلے دِن ناشتے کے ٹائم ہی میری پیشی ہو گی والد حضور نے ناشتے کے بعد کہا شارق ہم سب کو خوشی ہے کے تم وو کیس جیت گے اب میں یہ قطعی برداشت نہیں کر سکتا تم اس فاروقی کو اسسٹ کو کرو تم آج سے نصرت کے ساتھ جو گے میں نے کہا اپ کا حکم سر آنکھوں پے ڈیڈی لیکن کیا اپ نے بھائی جان سے پوچھ لیا ہے وو بولے کیا مطلب میں نے کہا ڈیڈی میں سچائیوں کا پرستار ہوں اور اگر مجھے لگا کے بھائی کے دفتر میں کسی بیگناہ کے ساتھ ظلم ہو رہا ہے تو میں اسی کا ساتھ دوں گا بھائی نصرت نے اب کہا ڈیڈی ہر فیلڈ میں سچے اور جھوتھے لوگ ملتے ہیں اور پھر میرے پاس تو سب ہی آییں گے ظالم بھی مظلوم بھی اب سب نے بھائی کی تائید کی میں نے کہا بھائی اپ صرف پیسا دیکھتے ہیں وو بولے ہاں میں میں اب فری میں تھوڑا کس لڑوں گا میرا ایک نام ہے وکیلوں میں ان کے لہجے میں غرور کوٹ کوٹ کے بھرا تھا جو مجھے بلکل اچھا نہیں لگا میں نے کہا تو میں اپ کے ساتھ نہیں بیٹھہ سکتا اب کے ڈیڈی نے کہا یہ میرا حکم ہے میں نے کہا سوری ڈیڈی میں کوئی بھی غلط بات نہیں منوں گا بس پھر کیا تھا ڈیڈی نے غضب ناک لہجے میں کہا تیری یہ جرات تو مجھے انکار کرے اور کہا اس گھر میں ووہی رہ سکتا ہے جو میری بات ماننے میں یہ سنتے ہی عجیب سی نظروں سے اپنے گھر والوں کو دیکھنے لگا جو بس اپنے آپ کو ہی سب کچھ سمجھتے تھے میں بھی آخر انہی کا خوں تھا میںنے بھی اسی وقت اپنے کپڑے لئے اور گھر سے نکل آیا بیچاری والدہ صاحبہ بوہت رویی لیکن آئی .جی سحاب کے آگے کوئی پیش نہ چلی میں نے اپنا سامان لیا اور فاروقی سحاب کے گھر آ گیا اب میں نے ان کو ساری بات بتا دی وو بولے نا سمجھ ہیں آشیانے والی جو ایک ہیرے کی قدر نہیں کر رہے اور کہا بتا آج سے تم یہی رہو میرے اس چوتھے سے گھر میں بوھت جگہ ہے لیکن میری خدار طبیت نے یہ نا مانا اور میں نے ایک اچھی سی بلڈنگ میں ایک کراے پے فلیٹ لے لیا جو بوھت ہی اچھا اور پیارا بنا ہوا تھا ، پھر واہی روز کی روٹین اب فاروقی صاب کا کام خوب چل نکل تھا ان کے پاس دہرا دھر کیس انے لگے وو اور میں اس کیس پے فل محنت کرتے اب یہ میری خدا داد ذہانت کا ہی کمال تھا میں جو بھی بحث تیار کرتا وو اب کم ہی کسی وکیل کو پکڑائی دیتے تھے اکثر عدالت میں اتے جاتے بھائی نصرت اور کمرہ عدلت میں بھائی امجد سحاب سے ملاقات ہو جاتی دونو ہی مجھے اگنور کرتے اب میں نے بھی ان کو اہمیت دینا چھوڑ دی اب ہماری وکالت پورے زوروں پے تھی ،ایک دِن میں اپنے فلیٹ میں جا رہا تھا کورٹ سے فارغ ہو کر کے مجھے راستے میں ثنا عباسی نظر آی اس نے بھی مجھے دیکھ لیا اور میری طرف آی وو ایک بس استنڈ پے کھڑی تھی میں نے بھی اپنی بائیک کو روک لیا اور اسے حال چال پوچھا وو بولی سب ٹھیک ہے راحیل بھائی اب دبئی چلے گے ہیں اور میں ایک سچول میں ٹیچر کی جاب کر رہی ہوں آج میں مارکیٹ سے کچھ ضروری سامان لینے یی تھی اب واپس گھر جا رہی ہوں میں نے اسے کہا چلو او پاس ہی میرا فلیٹ ہے وہاں چلتے ہیں وو میرے ساتھ بیٹھ گی فیلٹ میں آ کر میں نے اسے ڈرائنگ روم میں صوفی پے بیٹھننے کو کہا اور کہا میں تمہارے لئے چاۓ بنا کے لاتا ہوں وو میرے ساتھ ہی آ گئی کچن میں اور خود چاۓ بنانے لگی میں اس کے پاس ہی کھڑا ہو گیا وو کالے رنگ کے لباس میں تھی اس کا یہ فٹنگ والا سوٹ اسے بوھت پیارا لگ رہا تھا وواس لباس میں جگمگا رہی تھی ثنا ایک سانولے رنگ کی دراز قد لڑکی تھی جس کے مممے چوتیس اور کمر اٹھائیس تھی کمر سے نیچے آ کر اس کے کولہے کافی بھاری تھے وو کوئی چھتیس سائز کے ہوں گے 34 ، 28 ،36 میں اسے کافی غور سے دیکھ رہا تھا وو بولی شارق سحاب کیا دیکھ رہے ہیں میں نے کہا آپ کی جوانی وو شرما گی اب ہم واپس کمرے میں آے اور چاۓ پینے لگے ساتھ میں کچھ بیکری کا سامان بھی کھا رہے تھے میں نے اسے کہا لوگ بات کر کے بھول جاتے ہیں وو سمجھ گئی اور کہا یہ لوگو کی غلط فہمی ہے لوگ آج بھی مجھے بوھت یاد آتے ہیں میں نے کہا تو پھر تم نے مجھ سے رابطہ کیوں نہیں کیا وو بولی میں آپ کا انتظار کر رہی تھی کب آپ مجھے بلائیں اور میں کچے دھاگے سے بندھی دوری چلی آؤں میں نے اس کا ایک ہاتھ پکڑ کےسہلانے لگا وو بولی شارق آپ بوھت اچھے ہیں میں آپ کو بوھہت پسند کرتی ہوں میں نے کہا سچی وو میرے پاس آی اور میرے ہونٹوں پے کس کر کے کہا مچی اور کھلکھلا کر ہنس دی میں نے اب اسے اپنی بانہوں میں بھر لیا اور اس کے رس بھرے ہونٹوں کو اپنی پکڑ میں لے لیا میرے ہونٹ اب اس کی ہونٹوں کو اپنے اندر ساماے ہوے تھے میں اس کے نچلے ہونٹ کو بیتابی سے چوم رہا تھا اب اس نے مجھے بھی اپنی بانہو میں جکڑ لیا میں اس کی کمر پے ہاتھ بھی پھیر رہا تھا اور ساتھ میں اس کے ہونٹ بھی چوس رہا تھا اب میرے ہاتھو نے اس کے بھرےبھرے ممموں کو اپنے قبضے میں کیا میں اس کی چوچیاں مسل رہا تھا اب ثنا بوھت گرم ہو گے اس کی آنکھوں میں ایک عجیب سی آگ نظر آ رہی تھی میں نے کوئی پندرہ منٹ تک اس کے ہونٹوں کا رس پیا ساتھ ساتھ اسے کے مممے بھی دبا رہا تھا وو اب تڑپ رہی تھی میںنے اس کی کمر سے قمیض کی زپ نیچے کی اور اس کی قمیض اتر دی اب اس کے مممے ایک سکن کلر کے برازیئر میں تھے میں نے اب اسی کی برا بھی اتر پھینکی اب میںنے اسسے اپنے ساتھ ایک صوفے پے بیٹھا کے اس کی نپل کو منہ میں نے کر چوسنے لگا اور دوسری سائیڈ والی نپل کو اپنے ہاتھ کی انگلیوںمیں لے کر مسلنے لگا وو اب مزے سے سسکاریاں بھر رہی تھی سسسسسسسسسسس شارق پلز کچھ کرو میرے اندر سب جل رہا ہے میں نے اس کی بات پے کوئی دھیان نا دیا اور اسے چومتا رہا اب میرا ہاتھ آھستہ آہستہ اس کی شلوار کی حنب جا رہا تھا اس نے لاسٹک والی شلوار پہنی تھی میرا ہاتھ آسانی سے اندر چلا گیا اس کی پھدھی آگ کی طرح تپ رہی تھی میں نے اب اپنی انگلی سے اس کی چوٹ کا دانہ مسلنے لگی اب کے وو تڑپ تڑپ کے نیچے گر رہی تھی شارق کچھ کرو نا پلیز میں نے کہا کیا کروں وو بولی اپنا اسس کے اندر ڈال دو میںنے کہا اس کا کیا نام ہے وو بولی مجھے نہیں پتا میں نے کہا جب تک تم اپنے منہ سے سبنہی بتاؤ گے میں کچنہی کروں گا اور دوبارہ سے اس کے مممے چوسنے لگا وو اب اتنا بیتاب ہو رہی تھی اس کے منہ سے اب چیخیں نکل رہی تھی اہھھھھھہ افففف سسسس جانو مت ترپاؤ میں مر جو گی اور پھر وو اپنے آپ سے بیگانہ ہو گے اس نے مجھے اپنے نیچے کر لیا کروٹ بدل کر اور میری پینٹ اترنیکے بعد میرا انڈر ویر بھی خود ہی اٹھارہ اب وو میرے لن کو پیار سے دیکھ رہی تھی پھر اس نے خود ہی اسے اپنے منہ میں لے کر چوسنا سٹارٹ کر دیا اب وو میرے لن کو آئسکریم کی تارہا چاٹ اور چوس رہی تھی مجھے اب مزہ انے لگا میں اس کچوچیاں دبا رہا تھا میں نے کہا ثنا اسے کیا کہتے ہیں وو اب بیتابی سے میرا لن چاٹ رہی تھی وو میرے لن کی ٹوپی پر زبان فیرتے ہوے بولی شارق تمہارا لن بوھت برا ہے مجھے لگ رہا ہے آج میری کنواری چوٹ کا ستیا ناس ہو جاتے گا لیکن میں اب اسے ہر حال میں اپنی پھدھی میں لینا چاہتی ہوں میں نے کہا ٹھیک ہے جانو اور اسے دوبارہ سے اپنے نیچے کیا اس کی دونو ٹانگیں اپنے کندھے پے رکھی اب میں نے اپنا لن اس کی پھودھی کے سوراخ پے سیٹ کیا اور اس کی طرف دیکھ کے بولا ثنا میں اندر کر دوں وو بولی ہاں شارق مجھے آج اتنی تکلیف دو جس میں راحت ھو مزہ ھو میں اس مزے بھری تکلیف ک لئے تیار ہوں پلیز جانو ایک ہی دھکے سے سارا اندر کر دو جو ہونا ایک ہی دفع ہو جائے میں نے اب اس کے ہونٹ اپنے ہونٹوں میں لیا اور ایک زور دار دھکا مارا میرا لن اس کی تنگ اور کنواری چوٹ کو پھاڑتا ہوا اس کی بچا دانی سے جا ٹکرایا وو میرے نیچے ایسے تڑپی جیسے مچھلی تڑپتی ہے پانی سے بھر نکل کر اس کا جسم کانپ رہاتھا اس کی زور دار چیخ میرے منہ میں ہی دب گی تھی میں نے اب کچھ دیر ایسے ہی اس کے اپر لیتا رہا اس کے ہونٹ چوستا رہا اس کی آنکھوں سے مارے درد کے آنسوؤں کی جھڑی پھوٹ گئی تھی میں نے اس کے نمکین نمکین آنسوں کو اپنے ہونٹو سے صاف کیا اور پھر ہلکے سے اپنا لن باہر نکل لیا وو پھر تڑپ گی میرا لن اس کی چوٹ کے خوں سے لبھرا ہوا تھا میں نے اب دوبارہ سے تھوڑا تھوڑا کر کے اپنا لن اندر کیا اس کی چوٹ کے اور پھر ایک دو دفع ہلکے ہلکے یہی کیا اندر باہر اب وو پرسکون تھی میں نے کہا جانو اب زیادہ درد تو نہیں ہو رہا وو بولی اب نہیں ہے میںنے اب زورو سے دھکے مارنے لگا میرے ہر دھکے پے وو اچھل جاتی تھی اب میں نے اس کی ایک ٹانگ نیچے کی اور ایک اپنے ہاتھ میں پکڑ کر چاٹ کی طرف کر دی ابمیں زور دار دھکے مر رہا تہ اب وو مستی اور مزے سے سسک رہی تھی آھہ اووو جانو اور زور سے اوئی من میں مر گے اب کے وو میرا ساتھ دینے لگا اب میں نے کچھ در ایسے ہی اسے چودہ پھراسے ڈوگی سٹائل میں چودننے لگا اب وو مزے کی وادیوں میں سیر کر رہی تھی اس کی آنکھیں بند اور کمرے میں اس کی سسکیاں گونج رہی تھیں پھر وو ایک زور کی چیخ کے ساتھ ہی فارغ ہو گی اور لمبے لمبے سانس لینے لگی جانو ذرا رک جاؤ پلیز میں ویسے ہی لن اس کی چوٹ میں ڈالکر ہی اس کے اپر لیٹ گیا پھر میں نے دوبارہ سے اپنا لن اسسے اب سیدھا کر کے اس کی چوٹ میں ڈال دیا اب میں ایسے جھٹکے لگا رہا تھا جیسے کوئی مشین سٹارٹ ہو گے ھو میرے ہر دھکے سے اب وو ہلکے ہلکے چیختی جاتی تھی میں نے کہا ثنا مجھے تمری گند میں بھی اپنا لن ڈالنا ہے وو بولی نہیں نہیں شارق میں اب یہاں بھی برداشت نہیں کر پا رہی پلیز اب باہر نکل لو نا میں اسسے ہاتھ سے فارغ کر دیتی ہوں میں نا اس کی کسی بات پے دھیان نا دیا اور اسے زوردار طریقنے سے چودتا رہا وو اب چلا رہی تھی شارق بس کرو جانو پلیز بس کرو میں بس دھکے ماری جا رہا تھا اب کی بار میں نے اسے وحشیوں کی طرح چودا تھا وو اب میرے نیچے تڑپ رہی تھی کسی طرح اس کی جان چھوٹ جائے پر میں اب بنا رکے دھکے پے دھکا مارنے لگا وو بولی پلیز کچھ در ہی رک جاؤ ہے میری ماں میں مر گئی اس س س س س س س س ‘ ام م م م م م ف ف ف ف ف ف ف ف ف ف ف شارق پلیز ایک دفع رک جو میری جان نکل جائے گی ش ش ش ش ش ش ش ش ناں کرو اب بس کرو اس کے ساتھ اس کے ہاتھ میری کمر پر سخت سے سخت ہوتے جارہے تھے تھوڑی دیر کے بعد وہ پھر سے فارغ ہو گے وو اب تک تین دفع فارغ ہو چکی تھی میں ابھی تک ویسے کا ویسا ہی تھا میں بنا رکے اسی طرح اسے چودے جا رہا تھا اب کی بار اس کی چیخیں پہلے سے بھی زیادہ زور دار تھیں اب کی بار اس کے منہ سے نکلنے والی چیخیں شائد پہلے سے زیادہ اونچی آواز میں تھیں وو درد کی وجہ سے بے حال ہوئے جارہی تھی میں ایک بار پھر اس کے اوپر لیٹ گیا اور تھوڑی دیر کے بعد اٹھ کر ایک اور جھٹکا دے مارا جس کے ساتھ ہی اس کے منہ سے اوووووووووووں کی آواز اور آنکھوں سے آنسو نکل آئے اب میں نے اپنے لن کو آہستہ آہست سے اندر باہر کرنا شروع کردیا اور تقریباً پندرہ منٹ میں فارغ ہوگیا میں نے اپنا سارا پانی اس کی گرم چوت میں ہی چھوڑ دیا اب اس نے مجھے زور سے اپنے گالی لگا لیا اور روٹی آواز میں کہا شارق آپ تو واقعی جانوروں کی طرح چودتے ہیں جو لڑکی ایک دفع آپ سے چدوا لے گے وو کبھی کسی اور کے بارے میں نہیں سوچ سکتی اور روتے روتے ہی ہنس دی اور کہا آئی .لو .یو شارق مجھے برا مزہ آیا ہے میں نےکہا ثنا مجھے تمہاری گاند بھی لینی ہے وو بولی ظالم آج رحم کھاؤ اگلی دفع جو مرضی کر لینا میں پہلے ہی درد سیمرننے والی ہوں اور مجھے ہونٹوں سے چومنے لگی میں نے بھی اسے کس کی اور اس کے اپر سے اٹھ گیا وو بھی اٹھی تو لڑکھڑا گی اس سے سہی طرح چلا نہیں جا رہا تھا اس کی تانگہیں خوں اور منی سے لتھڑی ہوئی تھیں وو بولی دیکھا کیا حال کیہے تمہارے اس جانباز نے میری اس کنواری چھاؤنی کو ہر طرح سے تباہ کر دیا ہے میں نے اسے سہارا دیا اور واش روم لے گیا وہاں ہم نے اپنے اپ کو صاف کیا اور میں اسے اپنی بانہوں میں اٹھے ہی باہر لے آیا وو میرے ہونٹوں پے ایک کس کر کے بولی شارق میں اب جاؤں کافی ٹائم ہو گیا ہے اس نے کپڑے پہنے اور میں ے اب اسے فریش جوس دیا وو پیتے ہوے بولی شارق پلیز مجھے گھر چھوڑ او میں نے کہا ٹھیک ہے پھر میں اسے اس کے گھر کے باہر چھوڑ کے واپس آ گیا میں بھی اب آتے ہی نہا کر لیٹ گیا کیوں کے مجھے رات کو کسی سے ملنا تھا رات کو میں اٹھا اور تیار ہو کر قاروقی صاحب کے گھر چل دیا وہاں میری ملاقات ایک آدمی سے ملاقات ہوئی وو اپنے لباس سے کافی امیر لگ رہا تھا فاروقی صاحب نے کہا شارق یہ خواجہ ظفر صاحب ہیں ان کا کیس پہلے چوہدری احسن صاحب کے پاس تھا اب یہ ان سے فائل لے کر ھمارے پاس اے ہیں میں نے کہا خواجہ صاحب احسن صاحب کا نام بوہت برے برے وکیلوں میں لیا جاتا ہے آپ نے ان سے کیس کیوں لیا واپس تو خواجہ صاحب نے کہا شارق صاحب احسن صاحب میرے مخالفوں سے مل گے تھے میں کیا کرتا میں نے کہا ٹھیک ہے اگر ایسی بات ہے تو یہ احسن صاحب نے بوہت غلط کیا ہے کسی بھی وکل کو یہ زیب نہیں دیتا وو ایسے اپنے کلائنٹ کے ساتھ کرے ہم آپ کا کیس لڑیں گے پھر میں نے وو فائل لی اور پڑھنے لگا مجھے پہلی نظر میں ہی اس میں سے کچھ ایسے نکتے مل گے جو ھمارے حق میں جاتے تھے ، وو ایک قتل کا کیس تھا جس میں خواجہ صاحب کے بیٹے کو ملزم کو مشورہ دینے میں شامل کیا گیا تھا اب میں نے وو فائل لی اور اپنے گھر آ گیا کیوں کے اگلے دِن اس کیس کی ڈیٹ تھی میں نے پھر کوئی چار یا پانچ گھنٹے لگا کر اس کیس کی تیاری کے نوٹس لکھے اور سو گیا اگلے دِن بارروم میں ہم نے اپس میں ڈسکس کی ساری بات ھمارے خلاف جو وکیل کیس لڑ رہا تھا وو اس شہر کا جانا منا کریمنل کیسوں میں ماہرسمجھا جاتا تھا اور ابھی تک کوی کیس نہیں ہارا تھا اب جج ارشاد علی گھمن صاحب کی عدالت میں ہم پیش ہوے انہی کے پاس اس کیس کی ٹرائل چل رہی تھی استغاثہ کا وکیل رانا عارف تھا جس کی جج حضرات بھی عزت کرتے تھے اب ھمارے موکل کو آواز لگی اور خواجہ صاحب کا بیٹا کاشف دوسرے ملزم طارق کے ساتھ پیس ہوا تو وکیل استغاثہ رانا صاحب نے ملزموں کے خلاف کافی دھواں دار دلائل دے اب جج صاحب نے کہا جی وکیل صفائی کیا کہتے ہیں اب فاروقی صاحب نے اپنا وکالت نامہ عدالت میں پیش کیا اور پھر فاروقی صاحب نے ایسے ایسے دلائل دئے کے ساری عدالت واہ واہ کر اٹھی جو دلائل میں نے ان کے لئے تیار کیے تھے وو انہوں نے بری خوبصورتی سے ہر لفظ ادا کیا پھر موقع کے گواہ پے بھی کافی جرح کی دونوں گواہ اپنےبیانات سے کئی دفع اکھڑے اب جج صاحب نے ایک گھنٹے کا وقفہ دیا کیوں کے ہم نے آج خواجہ صاحب کے بیٹے کی ضمانت کی درخواست بھی دی تھی ایک گھنٹے بعد اس کی بحث تھی پھر ایک گھنٹہ ہم نے بارروم میں ہی گزارا سرے ہی وکیل اب فاروقی صاحب کی تعریف کر رہے تھے ایک سینئیر وکیل نے کہا فاروقی صاحب ایسا کون سا چراغ کا جن آپ کے قابو میں آ گیا ہے کے آج کل ہر وکیل کی تباہی مچاۓ جا رہے ہیں اب تو آپ کے سامنے کیس پکرتے ہوے سوچنا پڑتا ہے فاروقی صاحب نے کہا بس میرے مولا کا کرم ہو گیا ہے مجھ پے ان کا لہجہ بڑی عاجزی لئے ہوے تھا پھر ایک گھنٹے بعد ہم پھر عدالت میں پیش ہوے اور کوئی ایک گھنٹے کی بھر پور بحث کے بعد ہماری ضمانت کی درخواست جج صاحب نے قبول کر لی اور کہا آپ پانچ لاکھ کی ضمانت کا مچلکہ جمع کرا دیں خواجہ صاحب نے اسی وقت مچلکے دئے اور ہم نے بعد میں خواجہ صاحب کے بیٹے کو آزاد کرا لیا خواجہ صاحب تو ہماے آگے بچھے جا رہے تھے اسی رات کو خواجہ صاحب نے فاروقی صاحب کو طا شدہ فیس سے بھی زیادہ دئے پھر بولے ایک درخواست ہے آپ سے شارق صاحب میں نے کہا جی بولیں وو بولے میرا ایک فلیٹ ہے ظہور بلڈنگ میں اگر آپ مہربانی کریں تو وہاں اپنا دفتر بنا لیں پلیز انکار نہیں سنوں گا میں خواجہ صاحب نے جیسس بلڈنگ کا نام لیا تھا وہاں پہلے بھی کافی وکیلوں کے آفس تھے وو بوہت قیمتی جگہ تھی میں نے کہا خواجہ صاحب وو بوہت قیمتی جگہ ہے تو وو بولے میرے پاس وو بیکار ہی پر ہے پلیز آپ من جایئں تو مجھے لگے گا آپ مجھے اپنا سمجھتے ہیں آخر کار ہم مان گے پھر کوئی تین روز بعد جب خواجہ صاحب اپنے بیٹے کاشف کے ساتھ اے تو ہم ان کے ساتھ چل دئے وو فلیٹ دیکھنے فلیٹ کو دیکھ کر میں اور فاروقی صاحب حیران رہ گے کیوں کے فلیٹ اب ایک بہترین آفس کی شکل میں تھا جس کے باہر قاروقی اینڈ کمپنی کا بورڈ لگا تھا اور اندر تو کمال حکیا گیا تھا لاکھوں روپے لگا کر خواجہ صاحب نے تین کمرے دفتر کی شکل میں بنادئیے تھے ایک میرا ایک فاروقی صاحب کا اور ایک اضافی اورباہر سیکٹری کے لئے بھی ایک روم تھا ہر روم میں دو دو سیٹ صوفے تھے ہر چیز بوہت مہنگی تھی ہر ہماری تو آنکھیں فتنے والی ہو گیں تھیں مجھے نہیں لگتا تھا اس شہر میں کسی وکیل کا اتنا خوبصورت دفتر ہو گا میں نے کہا خواجہ صاحب یہ سب کیا ہے تو مجھے گلے لگا لیا خواجہ صاحب نے اور بھیگے لہجے میں بولے بیٹا کاشف میرا اکلوتا بیٹا ہے جو میری شادی کے ١٠ سال بعد پیدا ہوا تھا اور خدا کے بعد میں تمہارا شکر گزار ہوں تم نے میرے بیٹے کو بچا لیا پلیز کچھ نہ کہنا یہ سمجھو مجھے خوشی محسوس ہو گی جب تم اس دفتر میں بیٹھو گے پھر فاروقی صحابنے کہا ٹھیک ہے خواجہ صاحب اور ہم نے اگلے دِن اپنا سارا سامان اس دفتر میں شفٹ کر دیا پھر خواجہ صاحب نے تین چار نوکر رکھ لئے اس دفتر میں کیوں کے اب ھمارے پاس اتنے کیس آ رہے تھے کے ھمارے پاس سر خارش کرنے کا بھی ٹائم نہیں مل پاتا تھا پھر ایک دِن عدالت کے باہر مجھے بھائی نصرت نے کہا تم کو آج ڈیڈی نے گھر بلایا ہے میں نے کہا میں حاضر ہو جاؤں گا
  21. 1 point
    ustad g kia khana ap ke story ka maza a jata hai update chye jitna b ho us ka maza he apna hai wow
  22. 1 point
    جب اس کی آنکھ کھلی قریبی مسجد سے فجر کی اذان کی آواز آرہی تھی۔ آنکھوں میں بے پناہ دکھن کی وجہ سے اس نے بمشکل اپنی آنکھیں کھولیں۔ ماحول میں ملگجا اندھیرا چھایا ہوا تھا۔ "تو کیا یہ سب ایک بھیانک خواب تھا؟" تحریم نے سب کچھ یاد کرنے کی کوشش کی۔ "کاش، کاش یہ سب خواب ہو۔" یہی دعائیں مانگتے ہوئے اس نے اپنے موبائل کے لیے نظریں دوڑائیں جو ہمیشہ اس کی سائڈ ٹیبل پر رکھا ہوتا تھا۔ مگر آج ناموجود پاکر وہ اٹھ کر باہر نکل آئی تھی۔ لاؤنج کی لائٹ جل رہی تھی اور وہاں اس کی ساس، جو کہ اس کی تائی بھی تھیں، یقیناً فجر کی نماز پڑھ رہی تھیں۔ اس نے تیزی سے جاکر گھر کے فون سے اسد کو کال ملائی تھی۔ جس پر مسلسل اسد کا میسج چل رہا تھا۔ "اسد تو فجر سے پہلے اٹھ جاتے ہیں، فون کیوں نہیں اٹھارہے۔" اس نے پانچ چھ دفعہ کوشش کرنے کے بعد پریشانی سے فون رکھا اور اپنی تائی کے قریب ہی انگلیاں مروڑتی ہوئی کارپیٹ پر بیٹھ گئی۔ ان کے سلام پھیرتے ہی اس نے فوراً پوچھا تھا "تائی امی اسد فون نہیں اٹھا رہے۔ میں نے اتنی بار کوشش کی ہے۔ اتنا بھیانک خواب دیکھا۔ تائی امی میں نے دیکھا کہ ۔ ۔ ۔ تائی امی اگر خواب میں کسی کو مرتا دیکھتے ہیں تو اس کی عمر لمبی ہوتی ہے نا؟ آپ نے بتایا تھا نا؟ تائی امی میں نے دیکھا کہ اسد ۔ ۔ ۔" وہ ٹوٹے پھوٹے لفظوں میں بتانے کی کوشش کررہی تھی مگر آنسوؤں نے مزید کچھ بولنے ہی نہیں دیا تھا۔ تائی نے اسے جواب دینے کے بجائے گلے سے لگا کر پھوٹ پھوٹ کر رونا شروع کردیا۔ "تائی امی آپ رو کیوں رہی ہیں؟ اس طرح۔ ۔ ۔ اس طرح مت روئیں، میرا دل بہت گھبرا رہا ہے تائی امی۔ دعا کریں کہ اسد بالکل خیریت سے ہوں۔ میں دوبارہ کوشش کرتی ہوں فون ملانے کی۔" تحریم نے پریشانی سے انہیں چپ کراتے ہوئے اٹھنے کی کوشش کی مگر تائی نے اس کا ہاتھ پکڑ کر دوبارہ بٹھا لیا۔ "تحریم اب ہماری کوئی دعا اسد کو واپس نہیں لاسکتی۔ وہ ہم سے بہت دور جاچکا ہے۔ " یہ کہہ کر وہ ایک بار پھر سسک اٹھی تھیں اور تحریم جو اب تک اپنے آپ کو یقین دلاچکی تھی کہ وہ ایک بھیانک خواب تھا ان کی بات سن کر بالکل سن رہ گئی۔ اس کے ذہن میں جھماکا سا ہوا تھا۔ سب کچھ اس کے ذہن میں کسی فلم کی مانند چل پڑا۔ وہ اندوہناک خبر جو اس نے ٹی وی اسکرین پر دیکھی تھی۔ پھر ہر طرف اٹھتا شور اور پھر ہر طرف چھاتا گہرا سناٹا۔ اس نے ذہن پر زور دینے کی کوشش کی۔ پھر اسے سب یاد آنے لگا تھا۔ اس سناٹے کے بعد اسے کسی نے جگانے کی کوشش کی تھی، شاید تائی امی نے یا پتا نہیں چھوٹی تائی تھیں۔ اور۔ ۔ ۔ اور پھر اسے پکڑ کر لاؤنج میں لایا گیا تھا۔ جہاں اسد سامنے ہی سفید کفن، سبز پرچم کے ساتھ آخری بار جانے کو بالکل تیار تھا۔ وہ میکانکی انداز میں چلتی ہوئی اس کے قریب بیٹھ گئی تھی۔ "اسد، اسد آپ واپس آگئے نا؟ اب نہیں جائیے گا۔ میں نے، تائی امی نے بہت دعائیں کیں کہ آپ خیریت سے واپس آجائیں۔ میں بہت پریشان تھی اسد۔ اب نہیں جانے دوں گی میں۔ اور یہ اور یہ اس طرح کیوں لٹایا ہے اسد کو؟ ہٹائیں یہ سب" وہ ارد گرد سے بے نیاز اس کے قریب بیٹھی بولے جارہی تھی پھر ادھر ادھر دیکھ کر ناراضگی سے بولی تھی۔ تب ہی چھوٹی تائی کی آواز اسے ہوش میں لے آئی۔ "تحریم اسد ہمیشہ کے لیے جارہا ہے۔ اسے، اسے آخری بار دیکھ لو۔ دیکھو ہمارے بیٹے نے وعدہ کیا تھا نا کہ ایک دن سبز پرچم میں لوٹے گا۔ وہ لوٹ آیا ہے مگر ہمیشہ کے لیے جانے کے لیے۔" انہوں نے روتے ہوئے کہا تھا۔ تحریم نے لاؤنج میں نظر دوڑائی جو پتا نہیں کتنے لوگوں سے بھرا پڑا تھا۔ سب کی ترحم بھری نظریں اسی پر ٹکی تھیں۔ "نہیں تائی، یہ یہ ہمیشہ کے لیے نہیں جاسکتے۔ ایسے کیسے ہوسکتا ہے؟ اسد اسد اٹھیں۔ اسد پلیز اٹھیں۔ پہلے ممی پاپا اور اب آپ۔ نہیں اسد" وہ ایک بار پھر اسد سے مخاطب تھی اور اب زور زور سے رونا شروع کردیا تھا۔ تایا ابو نے اپنے آنسو پونچھتے ہوئے تحریم کو اٹھایا تو وہ ان کے گلے سے لگ کر پھوٹ پھوٹ کر روپڑی تھی۔ ان کے اپنے بھی آنسو بہہ رہے تھے۔ انہوں نے اسے سنبھالنے کی کوشش کی مگر وہ بھربھری ریت کی مانند ان کے ہاتھوں سے پھسلتی چلی گئی تھی۔ اور اس کے بعد اسے اب ہوش آیا تھا۔ پتا نہیں کتنے دن گزرگئے تھے۔ اس نے تائی امی کی طرف دیکھا، وہ اب بھی رورہی تھیں۔ اس کے اپنے بھی آنسو بہے جارہے تھے۔ پتا نہیں وہ کتنی دیر تک روتی رہتیں کہ آذر، چھوٹے تایا کا بیٹا، شاید مسجد سے نماز پڑھ کر آیا تھا۔ ان دونوں کو لاؤنج میں روتا دیکھ کر وہ بھی خاموشی سے وہیں آکر بیٹھ گیا تھا۔ تائی امی نے اپنے آنسو پونچھتے ہوئے تحریم کو پیار کیا تھا اور جاءنماز اٹھا کر کھڑی ہوگئی تھیں۔ "چائے پیو گے آذر؟ تمہارے تایا ابو کے لیے بنانے جارہی ہوں۔" انہوں نے آذر کی طرف دیکھتے ہوئے پوچھا جو تحریم کو ترحم بھری نگاہوں سے دیکھ رہا تھا۔ "نہیں تائی امی ابھی دل نہیں چاہ رہا۔ امی نہیں اٹھیں ابھی تک؟" اس نے نفی میں سر ہلاتے ہوئے چھوٹی تائی کا پوچھا تھا۔ "اٹھی تھی ابھی تھوڑی دیر پہلے علی اٹھ گیا تھا تو اسے اپنے کمرے میں لے گئی ہے۔" آذر کو جواب دیتے ہوئے وہ کچن میں چلی گئی تھیں۔ لاؤنج میں اب بھی تحریم کی سسکیاں گونج رہی تھیں۔ "تحریم، پلیز اپنے آپ کو سنبھالو۔ اسد کو کتنی تکلیف ہورہی ہوگی۔" آذر نے تحریم کو مسلسل روتے دیکھ کر دکھ بھرے انداز میں کہا تھا۔ ابھی وہ اسے اور سمجھانے کا ارادہ رکھتا تھا مگر اسی وقت چھوٹی تائی علی کو لے کر وہیں آگئی تھیں جو روئے جارہا تھا۔ "تحریم اسے لے لو میں اس کے لیے دودھ لاتی ہوں۔ بہت دیر سے رورہا ہے۔" انہوں نے علی کو اسے پکڑایا جو اس کی گود میں آتے ہی چپ ہوگیا تھا۔ جاری ہے*----------*----------*----------*
  23. 1 point
    Hi friends! My name is Sheraz and I live in Rawalpindi. I am 27 years old guy. Its my true story which I am telling you this time after reading my story please contact with me immediately for your complements. Meray ghar kay samany aik larki rehti thi. Us ka naam Aroosa tha. Aroosa ki umer 17 saal thi. Aroosa bahut hi khoobsorat larki thi. Khas Kar us kay goal matol motay motay tight bubbay aur makhmal ki tarah naram choot mujhay bahut hi piayari lagti thi. Usay daikh kar mera lun foran khara ho jata tha. Mera dil chata tha kay mein us gori phudi chatoon. Aik din mujhay mauqa mil hi gia. Hoowa yah kay Aroosa nay mujhay apnay ghar phone kar kay bullaya kay us ka TV kharab ho gia hay, woh theek karna hay. Mein fauran us kay ghar challa gia. Woh mera intizar kar rahi thi. Us din us kay ghar par bhi koi nahin tha. Woh mujhay TV walay kamray mein lay gai aur mujh say kaha kay TV saaf nahin a raha. Mein nay dekha to TV kay peechay say aik taar tooti howi thi. Mein nay taar jore di to TV saaf anay laga. Aroosa bahut khush howi. To us nay kaha kay kia peeyin gain kia khaien gay. Mein nay kaha kay jo dil chahay lay aoo. Woh thori dair baad sharbat bana kar lay ai aur jhuk kar glass mein dalnay lagi. Us kay baray galay mein say us kay baray baray goal matol bubbay bahir ki taraf jhank rahay thay. Mein nay us kay bubboon ki taraf dekha to woh bajay sarmany kay apnay bubboon kai taraf dekh kar boli, kia app ko meray booobs achay lag rahay hein to mein nay kaha kay haan app kay booobs bahut hi achay hein to us nay kaha kay in ko pakar lo. Mein nay jaldy say us kay bubbay pakar liay aur us ko apnay galay say laga lia. Woh bahut garam ho rahi thi. Us nay jaldy jaldy apnay tamam kapray uttar diay. Mera lun lohay ki tarah sakhat ho raha tha. Us nay kaha kay meri phudi chato gay. Mein nay us ki baat ka jawab nahin dia aur jaldy say us ki gori phudi chatnay laga, us ki phudi bahut hi mazaydar thi. Us ki phudi ka taste bahut hi acha tha. Us ki phudi mein taqreeban aik ghanta tak chata raha. Who masti mein ayi howi thi. Mujhay bar bar yehi keh rahi thi kay Reehan meri phudi mein apna lun ghusao, meri kanwari phudi phaar do please. Mein us ki phudi chata raha, who pagal ho rahi thi. Mein nay usay bed par litaya aur sharbat us ki phudi par daal kar us ki phudi chatnay laga. Mujhay is tarah bahut ziayada maza aya. Woh bar bar keh rahi thi kay meri phudi pharo, meri phudi pharo. Mein nay usay table par bithaya aur us ki legs apnay shoulder par rakhin, aur apnay lun ko us ki phudi kay hole par rakh kar aik zoordar jhatka mara to us ki cheekh hi nikal gai. Mein nay us kay mouth par haat rakh dia. Who ro rahi thi. Mera 7 inch ka lun us ki phudi phar chukka tha. Us ki phudi say khoon nikalnay laga. Mein nay jaldy say apna lun us ki phudi say bahir nikala aur kapary say us ki phudi saaf ki, aur aik baar phir us ki phudi mein apna lun ghussa dia to is baar us ki siskari nikli, mein zoor zoor say jhatkay marnay laga, us kay mouth say awazin anay lagin, aoooooaaaaooooaaaaahhhhhhhhhhhhhooooooooooo uf mat karo, mat karo, apna lun bahir nikalo please dard ho raha hay magar mein us ki aik na sunni, zoor zoor say jhatkay marta raha, phir usay bhi maza anay laga who jalad hi chooooot gai, mein usay kaafi dair tak chodta raha, Jab mein chooootnay laga to mein forran apna lun us ki phudi say bahir nikala aur us ka mouth apnay lun kay sath laga dia, jab mera lun choooota to mein nay sari ki sari mani us kay mouth par chore di, woh mera mani wala lun baray shauq say chooosnay lagi aur kehnay lagi kay Sheraz tum nay meri garm phudi phar kar meri jawani ki aag ko thanda kar dia hay. Is kay baaad mein nay Aroosa ko us kay ghar mein ja kar kai baar choda aur us ki gori aur chickni phudi bhi chatti. Aroosa ki phudi chatnay ka mujhay bahut maza atta tha aur who bhi mera lun shauq say choooosti thi. ANy lady, girl wanna sex with me???????????????? plz write me at
  24. 1 point
    mairay muhalay main maira ek dost rehta hai jiss ka naam azeem hai.aus kee bewi k baray main aap ko bata ta hoon wo bouhat khubsurat hai aur aus ka jissam aus kee sourat say bhe ziyada khubsurat hai maira lund aus ko daikhtay he kharda ho jata thaa kyun k azeem kee bewi ka seena bouhat mota aur barda thaa bouhat barday barday doodh thay aus k main jin ko bus daikhtay he jata thaa dil main sochta thaa k azeem kitna khush naseeb hai k wo aus ka shohra hai aur wo aus kee layta hai ek din main bahar baitha thaa k aus kee bewi ko daikha wo kaheen ja rahee hai mujh say aus nay poocha aap nay khurram ko daikha hai main nay kaha k nahain main nay kaha kahireyat hai kehnay lagi k mujhay doodh mangana thaa main nay aus say kaha main la dayta hoon aur main nay aus say paisay leay aur kaha aap jain main lay k aata hoon aur main doodh kee dukan pay chala gaiya doodh lay k main nay apni bike khardi kee aur azeem k ghar chala gaiya bell bajai to azeem ke bewi nay darwaza khola w! o baghear doopatay kee thee aur aus k barday barday doodh nazar aay maira lund phir say kharda ho gaiya aur aus nay thanks kaha aur bolo hamara cabel sahee nahain aa raha zara aap daikh lain main nay kaha ji aur main ander gaiya aus ka tv daikha cabel kee taar ghalat lagii hoi thee wo sahee karee to main janay laga wo kehnay laggi chaay bana lee hai wo pee k jain main nmay kaha ok aur wo kuch dear baad chaay lay k aai bina doopatay k wo jhuki chay kee tray rakhnay k leay to aus ka seena aadhay say ziyada bahar nikal aaya maira lund na poochain kiya halat thee aus kee aur main chaay peenay laga aur phir aus nay kaha aap baithain main aati hoon wo dooray kamray main chali gai mujhay dear ho rahi thee main bahar janay k leay nikl ak aus say bolon k main ja raha hoon magar ek dum doosray kamray main meri nigah pardi k wo kaprday badal rahee hai aus nay apni kameez autari wow main kiya batun black rang ka brazer pehnay hooway thee jiss main barda barda seena nazar aa raha thaa b! us ab meri himat ja wab day gai thee main achanak say ander dakhil hoo wa aur main nay aus ko pichay say pacad k apni banhon main jacard liya wo ek dum ghabra gai aur boli ye kiya kar rahay hain main nay kuch jawab nahain diya aur aus k honton ko choosnay laga wo boli chord dain mujhay magar main nay aus k chehray pay kissing shuru kardi aur aus k boobs ko sehlanay laga aus k barazer autar diya aur aus k doodh ko choosnay laga wo bhe machal gai thee aus kee aankhen band theen magar wo kehay ja rahi thee mujhay chord dain main any aus ko bed pay dhaka diya apni jeanz autari aur aus main say maira garam garam mota lund bahar nikal aaya main nay apna lund aus k hath main day diya wo aus ko sehlanay laggi aur ro bhe rahee thee k plz mujahy chord dain magar mujh pay shaitan sawar ho chuka thaa main aus k seenay ko kaat raha thaa apnay danton say aus k chehray ko choom raha thaa aur aus k gulabi honton ko bhe choomay ja raha thaa ab main nay aus kee shalwar autar dee aur aus kee tangon ko chatnay laga ab maira lorda aus kee raan pay tuch kar raha tha! a wo bouhat garam ho chuka thaa aur azeem kee bewi bhe mazay lay rahi thee aanklhen band kar k magar kehay ja arhi thee mujhay chord do ab main nay apna lund aus k moun main day diya wo aus ko choosnay laggi chatnay laggi aus nay is doran khoob mazay leay ab aus nay apnay danton say meray seenay [pay katna shuru kar diya aus nay maira luind pacra aur apnay boobs pay masalnay laggi main nay apna lund aus k seenay pay rakha aur ragarta gaiya ab main nay aus k nagnay jissam pay lait gaiya khoob chooma azeem kee bewi ko aur khoob chata ab main nay apna lund aus kee choot kee nouk pay rakha aur ahista ahista say ander dakhil karnay laga ek jhatkay say wo ander chala gaiya ab wo azeem kee bewi nashay main mast thee aur main ander bahar karnay laga aus nay kai baar kaha i love u meri jaan i love u tumhari kiya baat hai aur main aus ko zorzor say chodnay laga wo opper nichay ho rahi thee aur ab main nay apnay lund ka garam garam pani aus kee choot maion chord diya aur aus kee choot! say bhe pani nikal aaya aus k baad hum dono kafi dear tak nangay lait ay rahay aus nay mujhay apna seena choomnay ko phir say bola aur main nay ab aus ka seena choosa to aus main say doodh bhe nikalnay laga kyun k wo ek bachay kee maa thee aur main nay dil khol kar aus k barday barday doodh say bharay seenay ka mitha mitha doodh piya ab aus nay mujhay dhaka diya aur mairay opper lait gai aur apni choot ko mairay lund say ragarnay lagi aur ragarti rahee aur aus k baad aus kee choot say pani nikal aaya ab main bistar say autha nahanay k leay bathroom main aaya to wo bhe mairay stah ander aagai aur hum dono nay khoob nahaya aur wahan bhe ek dafa aus ko main nay bathroom main choda ab main janay laga to aus nay kaha aap nay aaj meri izzat loot lee hai main nay kaha ye izzat ab main har roz loota karoon ga to wo kehnay laggi har roz nahain saturday ko kyun k aus din azeem dear say aatay hain main nay kaha ok meri jaan aur yoon main ab har saturday azeem kee bewi ko chodta hooon aur ek aur mazay kee baat k ab azeem kee bewi bachay kee maa banay wali! hai aur azeem samjhta hai k ye bacha aus ka hai halankay azeem kee bwi mairay bachay kee maa ban nay wali hai
  25. 1 point
    sab ka boht boht thnx meri post like krnay k leay


×