Jump to content
URDU FUN CLUB

Leaderboard


Popular Content

Showing most liked content on 01/10/2019 in all areas

  1. 3 likes
    شہوانی جذبوں کا کوئی ٹھکانہ نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔یہ جب عود آئیں تو عقل سلب ہوجاتی ہے اور کسی بھی رشتے میں اپنا بسیرا کرلیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ انسان اور جانور میں عقل ہی تو فرق کرتی ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن !!!! کیا کہا جائے عقل سلیم پر جب شہوت کے بادل چھا جائیں تو عقل وہی سوچتی ہے جو شہوانی جذبات اسے سوچنے پر مجبور کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔آنکھیں وہی دیکھتی ہیں جو اسے شہوت دیکھاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔فطرت ِحضرت ِانساں بھی کیا غضب شے ہے ۔۔۔۔۔ہر لمحہ ایسے بدلتی رہتی ہے جیسے گرگٹ اپنا رنگ ۔۔۔۔۔۔۔۔بیشتر اوقات تو گرگٹ بھی شرما جائے ۔۔۔۔۔۔چند لمحات کی قیمت ہمیں بیشتر اوقات پوری زندگی تک اداکرنا پڑتی ہے ۔۔۔۔۔۔اور باقی کی زندگی محض ایک شے کے ساتھ گزرتی ہے وہ ہے پچھتاوا !!!!!!!!!!!!!یہ کہانی بھی ایسے ہی لمحات کی ہے جب شہوت عقل پر غالب آگئی تھی ۔۔۔۔۔۔میں نے یہ کہانی عرصہ پہلے گلیمر میگزین میں لکھی تھی ۔۔۔۔۔۔یہ میری پہلی سیکس کہانی بھی تھی ۔۔۔۔۔۔اس فورم پر اسے نئے پیرائے میں ڈھال کر لکھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔آپ کے ذوق پر پورا اترے تومیری خوش نصیبی ۔۔۔۔۔۔۔نہ پورا اترے تو میری کجیوں سے درگزر فرمائیے گا ۔۔۔۔۔۔۔آداب ۔۔۔۔۔۔۔ عاکف اور ماہم کاغان کی وادیوں کی بھول بھلیوں میں کھو گئے تھے ۔۔۔۔۔ان کا یہ ایڈونچر انہیں بڑی مصیبت میں ڈال گیا تھا۔۔۔۔۔۔موسم بے حد خراب تھا ۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش ۔۔۔۔۔۔ ماہم عاکف کی بھابھی بھی تھی اور ہونے والی خواہر نسبتی تھی ۔۔۔۔۔۔عاکف کے بڑے بھائی عاطف سے ماہم کی شادی کو ابھی چند ماہ ہی تو ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور شادی کے دن ماہم کی چھوٹی بہن عرشیہ عاطف کے من کو بھا گئی ۔۔۔۔۔۔۔شادی کے چند روز بعد عاکف اور عریشہ کی منگنی کی رسم بھی ادا کردی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم اگر حُسن و شباب میں سیر تھی تو عریشہ سوا سیر ۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں کا حُسن دیکھنے والے کو سحرزدہ کردیتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم عاطف کی محبت تھی ۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے لیے عاطف محض محبت نہیں اس کی پوری کائنات تھی ۔۔۔۔۔۔۔عاطف ماہم کو پا کر گویا زمین سے آسمان کی طرف پرواز کر گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔یہی جذبات ماہم کے بھی تھے ۔۔۔۔۔۔۔ عاطف اپنے ڈیڈی کے وسیع بزنس کی دیکھ ریکھ میں اتنا مصروف تھا کہ اسے ماہم پر اپنی محبت لٹانے کو چند روز ہی مل سکے ۔۔۔۔۔۔۔لیکن یہ وعدہ ہوگیا کہ وقت ملتے ہی وہ ہنی مون کے لیے شمالی علاقہ جات جائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ وقت آیا ضرور لیکن !!!!!!شومئی قسمت اسی دن عاطف کی اہم ارجنٹ بزنس میٹنگ ان کے ہنی مون کے درمیان حائل ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔اسی دن عریشہ کا فائنل ایگزام تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔فیصلہ یہ ہوا کہ عاکف ماہم کو لے جائے گا اور اگلے روز عاطف عریشہ کو لے آئے گا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف اور ماہم فلائیٹ لے کر کاغان پہنچ گئے ۔۔۔۔۔۔ماہم اور عاکف کی خوب گاڑی چھنتی تھی ۔۔۔۔۔۔عاکف ماہم کا لاڈلا اکلوتا دیور اور ہونے والا بہنوئی جو تھا ۔۔۔۔۔۔۔ ہوٹیل سے کار لی اور وادی کی سیر کو چل نکلے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔چلتے چلتے بہت دور آ پہنچے ۔۔۔۔۔۔۔۔اچانک موسم کے تیور بدلے اور طوفانی بارش شروع ہوگئی ۔۔۔۔۔۔دور دور تک کوئی پناہ گاہ نہ تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ایسے پُر خطر موسم میں پُر خطر پہاڑی وادیوں میں ڈرائیونگ خود اپنے آپ میں موت کو دعوت دینا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ عاکی اب کیا ہوگا ہم ہوٹیل واپس کیسے پہنچیں گے ماہم کی متوحش آواز سن کر عاکف اسے تسلی دیتا ہوا بولا بھابھی گھبرانے کی بات نہیں میں ابھی ہوٹیل فون کرتا ہوں بات کرتے کرتے اس کی نگاہ سیل فون پر پڑی تو ۔۔۔۔۔۔۔سگنل ندارد ۔۔۔۔۔۔۔۔اوگاڈ ۔۔۔۔۔کیا ہوا عاکی ماہم نے اس کی نگاہوں کا تعاقب کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔عاکف فون کو گھور رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے اپنا سیل فون شولڈر بیگ سے نکال کر دیکھا ۔۔۔۔۔اوہ نو عاکی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا دل دہل گیا ۔۔۔۔۔۔۔بھابھی آپ پریشان نہ ہوں ہم کار میں محفوظ ہیں ۔۔۔۔۔عاکف کو اپنے لہجے کے کھوکھلے پن کا احساس تھا ۔۔۔۔۔۔کیونکہ ۔۔۔۔۔۔۔بارش مزید طوفانی ہوتی جارہی تھی ۔۔۔۔۔۔اور پانی کے ریلے کے سامنے کار کاغذ کی کشتی جتنی مزاحمت نہ کرپاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا حَسین چہرہ خوف کی شدت سے سفید پڑ گیا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف ونڈ سکرین کو گھورتا ہوا کچھ سوچنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔اس نے کار کو بیک گیئر میں ڈالا اور طوفان سے زیادہ طوفانی اسپیڈ سے کار بھگانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔عاکی عاکی عاکی کیا کررہے ہو پلیز رک جاؤ ۔۔۔۔۔فار گاڈ سیک عاکی ۔۔۔۔۔۔ماہم چلاتی رہی لیکن عاکی کچھ نہیں سن پا رہا تھا۔۔۔۔۔۔کار کا انجن ہچکولے کھانے لگا ۔۔۔۔عاکف نے بہت کوشش کی لیکن کار کو رکنا ہی تھا رک گئی ۔۔۔۔۔۔آسمانی آفات کا مقابلہ انسانی تخلیق تھوڑی کر سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش کا کب تک مقابلہ کرپاتی ۔۔۔۔۔۔ بھابی وہ دیکھیں سامنے ایک کٹیا ہے ۔۔۔۔۔عاکف کی پُرجوش آواز نے ماہم میں گویا زندگی کی رمق پیدا کردی تھی ۔۔۔۔۔۔چند فرلانگ کا فاصلہ طے کرتے کرتے وہ دونوں بری طرح بھیگ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ویران کٹیا میں ایک چارپائی اور ٹپکتی ہوئی چھت ۔۔۔۔۔کسی ذی روح کا وجود تو نہ تھا ۔۔۔۔۔۔بھابھی آپ بیٹھ جائیں میں دیکھتا ہوں شاید کوئی ہو ۔۔۔۔۔۔عاکف اس ویرانے میں کون انسان آکر بسے گا ۔۔۔۔۔۔شاید یہ کسی گائیڈ نے عارضی آرام گاہ بنا رکھی ہے ۔۔۔۔۔۔ماہم کا اندازہ درست تھا ۔۔۔۔۔۔قریب شاید کوئی بستی ہو عاکف اب بھی پُرامید تھا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف طوفان کی شدت دیکھو اب کہاں بستی تلاش کرنے جائیں ۔۔۔۔۔۔ماہم اس گھڑی کو کوس رہی تھی جب اس نے عاکف کو مجبور کرکے اسی وقت کاغان کی وادیاں دیکھنے کی ضد کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہونی کو کوئی ٹال پایا ہے آج تک؟؟؟؟؟؟۔۔۔۔۔رات بھی دبے پاؤں اپنا بسیرا کرنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔بجلی کی چمک روشنی کی جھلک دکھلا جاتی تھی وگرنہ رات کا مہیب سایہ تھا ۔۔۔۔۔ایک کٹیا ۔۔۔۔۔۔۔ایک چارپائی ۔۔۔۔۔۔اور دو انسان ۔۔۔۔۔۔آپ آرام کرلیں بھابی عاکف نے سیل فون کی لائٹ آن کرنے کی کوشش کی لیکن سیل فون کی بیٹری بھی آخری ہچکی لینے کو بے تاب تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔کٹیا کی چھت طوفانی بارش سے مزاحمت کی کوشش میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔لیکن کب تک ۔۔۔۔۔۔عاکی کہاں ہو تم ۔۔۔۔۔۔ماہم کی متوحش آواز مہیب اندھیرے میں گونجی ۔۔۔۔۔۔یہیں پہ ہوں بھابھی ۔۔۔۔۔۔تم بھیگ رہے ہو ۔۔۔۔۔چارپائی پر آجاؤ ۔۔۔۔۔۔اب اپنا فیصلہ مقدر پر چھوڑ دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔حالات سے سمجھوتا ہی آخری آپشن ہوتا ہے ۔۔۔۔۔جی بھابی عاکف ہاتھ سے ٹٹولتا ہوا چارپائی تک پہنچ گیا ۔۔۔۔۔طوفان میں کمی کے کچھ آثار دیکھائی نہ دے رہے تھے ۔۔۔۔۔عاکی تھک جاؤ گے تم بھی لیٹ جاؤ۔۔۔۔۔ماہم چارپائی پر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔عاکف سوچ میں ڈوبا رہا ۔۔۔۔۔۔۔اس نے ایک سرد آہ بھری اور چارپائی پر لیٹ گیا ۔۔۔۔۔ مردوزن ایک چھت کے نیچے ہوں ایک بات ہے ۔۔۔۔۔ایک ہی جگہ پر ہوں دوسری بات ہے ۔۔۔۔۔ایک ساتھ ہوں تیسری بات ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن !!!!! اتنے قریب ہوں کہ بدن سے بدن لپٹ رہا ہو یہ معجزہ ہی ہوگا کہ اس عمل کا کوئی ردعمل پیدا نہ ہو۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا بھیگا پُرشباب بدن عاکف کے بدن میں کچھ ایسے جذبات پیدا کرنے لگا جس کا مقابلہ کرنا عاکف کے لیے جوئے شیر لانے سے بھی زیادہ کھٹن ثابت ہورہا تھا ۔۔۔۔۔اُدھر ماہم عاکف کے جذبات سے بے خبر عاطف کی محبت کی تپش کو یاد کرکے ان سنگین حالات میں اپنے لیے خوشی کا سامان مہیا کرنے کی جدوجہد میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔۔ ماہم کے رعنائی بدن کی تپش نے عاکف کے بدن کو سلگا کر رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا لن تن کر سٹیل کی سلاخ کی مانند سخت ہوگیا ۔۔۔۔۔عاکف کے لیے اس کا لباس بوجھ بن گیا ۔۔۔۔۔اس نے پہلے اپنی پینٹ اتاری ۔۔۔۔اس کے بعد انڈوئیر اور آخر میں شرٹ ۔۔۔۔۔ماہم عاکف کی حالت سے بےخبر اپنے ہی خیالات میں کھوئی رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف کی شہوانی جذبات میں ڈوبی ہوئی آواز سن کر ماہم چونک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا عاکی اس نے رخِ زیبا عاطف کی طرف موڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔گھپ اندھیرا بھی ماہم کے حُسن کی چاندنی کو کم نہ کرسکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکی تمہاری طبیعت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم بس اتنا ہی کہہ پائی تھی ۔۔۔۔۔۔عاکف نے اپنے سلگتے لب ماہم کے یاقوتی لبوں میں پیوست کردئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی کھلی حسین آنکھیں استعجاب سے پتھرا گئیں ۔۔۔۔۔۔عاکف نے اس کا پھول جیسا نازک بدن اپنی آہنی گرفت میں جکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے لباس کو تار تار کرتے ہوئے اس نے ماہم کی مومی چوت میں اپنا تنا ہوا لن پُر قوت وار سے اندر گھسیڑ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔لن ماہم کی نازک چوت کو بیدردی سے چیرتا ہوا اندر ۔۔۔۔۔۔۔۔بہت اندر تک گھس گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف حیوان بن چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ماہم کے شادابی بدن کو بھنبھوڑنے لگا۔۔۔۔۔۔۔اس کے رعنائی پستان ۔۔۔۔۔۔۔اس کے یاقوتی لب ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے شادابی رخسار ۔۔۔۔۔۔عاکف کی دردنگی کا نشانہ بننے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی التجائیں ۔۔۔۔۔اس کی آہ و بکا ۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش کے شور کا حصہ بنتی گئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف نے اس کے پھول جیسے بدن کو کچل ڈالا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب اس کے شہوانی جذبات لن کے مادے کی صورت میں نکل کر ماہم کی گلابی چوت کو بھرچکے ۔۔۔۔۔۔۔۔تو عاکف شہوانی جہان سے پرواز کرتا ہوا حقیقت کی دنیا میں آبسا ۔۔۔۔۔۔۔۔پچھتاوے اور تاسف کے جذبے نمودار ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور شہوانی جذبوں کو پیچھے دھکیل دیا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف کی آنکھوں سے آنسو بہہ نکلے ۔۔۔۔۔۔وہ بلکتا ہوا ماہم کے پستانوں پر ڈھیر ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔چند لمحات پہلے تک یہی پستان جنہیں وہ بیدردی سے بھنبھوڑ رہاتھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اب ان میں اس کے لیے مامتا کا احساس تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی میں اپنے آپ کو کبھی معاف نہیں کرپاؤں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جیتے جی مرگیا بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ مجھ سے کیا ظلم ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف کو اس حالت میں دیکھ کرماہم اپنا درد بھول گئی ۔۔۔۔۔۔۔چپ ہوجاؤعاکی ۔۔۔۔۔۔جوہوا اسے بھیانک خواب سمجھ کر بھول جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ماہم عریشہ کی خوشیوں کے لیے یہ زہر بھی پینے کو تیار تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکی میری بات سمجھ رہے ہو نہ ۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف چارپائی پر ڈھیر ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم اس کے بالوں میں اپنی مخروطی انگلیاں گھماتے ہوئے اس بھیانک رات کے سحر سے نکلنے کی سرتوڑ کوششیں کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف رو رو کر سو چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے بدن کا ریشہ ریشہ درد سے چُور تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے کروٹ بدلی اور نیند کے جھونکوں کی زد میں آگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم تو سو گئی لیکن !!!!!!!! اس کے رعنائی بدن کے گذار کولہوں کے لمس نےعاکف کو نیند سے جگا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کی آنکھوں کے ساتھ اس کی ہوس بھی جاگ اٹھی۔۔۔۔۔۔لن دوبارہ آپے سے باہر ہونے لگا ۔۔۔۔۔۔۔پچھتاوے کے جذبوں کو کچلتے ہوئے شہوانی جذبے قوت پکڑنے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے دلکش کولہوں کی نرماہٹ اور گرماہٹ نے عاکف کے بدن کو آتش کدہ بنا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا لن تن کر دوبارہ اپنا مسکن تلاش کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار اس کا مسکن ماہم کے دلنشیں کولہوں میں دبکا ہوا اس کا خوبصورت سوراخ تھا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف نے لن ہاتھ میں تھاما اور اسے ماہم کے پچھلے سوراخ کی لذت آفرینی سے روشناس کروانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔درد کی کربناک لہروں نے ماہم کو بیدار کردیا ۔۔۔۔۔۔لیکن بہت دیر ہوچکی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف کے قوت سے پُر جھٹکے نے اس کے نازک سوراخ کو چیر ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور نصف لن اندر گھس گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی آنسوؤں سے پُر خوبصورت آنکھوں میں ایک حسین منظر ڈبڈباتا ہوا ابھرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتنا مت ترساؤ جان من ۔۔۔۔۔عاطف کی آنکھیں شدید مزے سے بند ہونے لگیں ۔۔۔۔۔۔وہ بیڈ پر چت لیٹا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ماہم اس کے لن کو اپنے روئی جیسے نرم ونازک کولہوں میں دبائے اس پہ بیٹھی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔دونوں کے بدن پر لباس نام کی کوئی شے موجود نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے اپنی بانہوں کا ہار عاطف کے گلے میں ڈالا اور اپنے کولہوں کو اس کے لن پہ مسلتے ہوئے اس پر جھک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہاں لوں اسے ۔۔۔۔۔۔۔اس نے عاطف کے کان میں سرگوشی کی ۔۔۔۔۔۔۔ساتھ ہی اپنے کولہوں کا دباؤ لن پر بڑھا دیا ۔۔۔۔۔۔اااااااہ وہیں جہاں کی سیر کرنے کے لیے یہ مسکین کب سے تڑپ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔عاطف کی لذتوں میں ڈوبی سرگوشی اس کے کان سے ٹکرائی ۔۔۔۔۔۔بالکل نہیں ۔۔۔۔۔۔۔کی سیر نہیں کرپائے گا ۔۔۔۔۔۔یہ اس کی سزا ہے ۔۔۔۔۔۔ہنی مون ہر نئے شادی شدہ جوڑے کا سب سے حسین رومانوی ارمان ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن آپ ہیں کہ بس بزنس بزنس اور بس بزنس ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے اس کے بھپرے ہوئے لن پر اپنے کولہوں کو ذرا زور سے دبادیا ۔۔۔۔۔۔۔۔او گاڈ میں مر گیا ۔۔۔۔۔۔۔عاطف کے چہرے پر درد کے آثار نمایاں ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔عاطی کیا ہوا آپ ٹھیک تو ہیں نہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا دل دھک دھک کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔عاطف نے ہنستے ہوئے اسے اپنی آہنی گرفت میں لے لیا اور اسے لٹا کر لن اس کے پچھلے سوراخ پر رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔اب بتاؤ سیر کروادوں اسے اس خوبصورت جہان کی ۔۔۔۔۔۔عاطف ہنستے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔۔۔آپ کو جو جی چاہتا وہ کریں لیکن مرنے کی بات دوبارہ مت کیجئے گا ۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی خوبصورت آنکھوں میں نمی دیکھ کر عاطف کے چہرے پر ہوائیاں اڑنے لگیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے ماہم کو اپنے سینے سے لگا لیا ۔۔۔۔۔۔۔آئی ایم ساری ماہم ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اس کی جمالی آنکھوں کو چومتے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا چھوڑو یار یہ بتاؤ ہنی مون پہ کہاں چلنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف اس کی توجہ بٹانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔فار گاڈ سیک عاطی یہ جملہ میں پچاسوں بار سُن چکی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی مترنم ہنسی اتنی دلکش و دلنشین تھی کہ عاطف کا جی چاہتا بس اپنی محبوبہ اپنی جان من ماہم پر فدا ہی ہوجائے ۔۔۔۔۔۔۔اس نے ماہم کو بیڈ لٹاتے ہوئے اپنے تنے ہوئے لن کو اس کی گلاب رو چوت میں ڈال دیا ۔۔۔۔۔۔ دونوں کے بدن کیف آفرین مستی سے لہرانے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دوسرے سے لذت کشید کرنے کا دل آفرین رومان پرور کھیل ۔۔۔۔۔اس کھیل میں لن چوت میں پیوست ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔لب لبوں میں پیوست ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اور بدن بدن میں پیوست ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ عاطی ہنی مون پہ تمہیں خاص تحفہ دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی شہوانی خمار میں ڈوبی آواز سن کر عاطی نے لن کو چوت کی گہرائی میں لے جاکر روک دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا تحفہ دو گی جان من ۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف ماہم کی آتشی چوت کی سلگتی ہوئی تپش سے لذتوں کے انتہائی پُر لطف جہان کی سیر کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے عاطف کا ہاتھ تھام لیا اور اسے لے جا کر اپنے کولہوں کے سوراخ پر رکھ دیا۔۔۔۔۔۔۔یہ والا تحفہ وہ لجائی ہوئی آواز میں بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سچ ۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف کے جنون نے اس رات کو بے حد خوبصورت بنادیا ۔۔۔۔۔۔۔ لیکن!!!!!!!!!!!!!!! یہ عاطف نہیں عاکف تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جس شے کا ہم تصور بھی نہیں کرپاتے جب وہ حقیقت بن کر ہماری آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر کھڑی ہوجاتی ہے تو ہم اس کا سامنا نہیں کرپاتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے دل کی کیفیت کا حال بس وہی جانتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف اپنی ہوس پوری کرچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار کوئی تاسف کوئی پچھتاوا اسے چھو بھی نہ پایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بے خبر سو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے دل و دماغ کی جنگ میں دونوں ہی جیت گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دکھ۔۔۔۔۔درد۔۔۔۔۔۔۔۔ہر احساس سے وہ بے گانہ ہوچکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔چارپائی سے اتر کر اس نے اپنا بچا کچا لباس پہنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش تھمنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اس نے اپنا شولڈر بیگ تلاش کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس میں سے نوٹ پیڈ نکالا ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تحریر لکھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نفرت بھری نگاہ عاکف کے جسم پر ڈالی ۔۔۔۔۔۔۔اور کاغذ اس کے ہاتھ میں تھما دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔باہر نکل کر اس نے ایک آسمان کی جانب دیکھا اور کار میں بیٹھ کر اندھا دھند ڈرائیونگ کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔کار ایک چٹان سے ٹکرائی اور الٹ کر گہری کھائی میں جا گری ۔۔۔۔۔ماہم کا دلنشین بدن جل کر رکھ ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عاکف کی آنکھ کھلی تو وہ چند لمحات خلا میں گھورتا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے باہنے طرف نگاہ دوڑائی تو ماہم کی غیر موجودگی نے اسے دہلا دیا ۔۔۔۔۔۔۔گزری رات اس کی آنکھوں کے سامنے رقص کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔اسے اپنے ہاتھ میں کسی شے کی موجودگی کا احساس ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عاکف ۔۔۔۔۔۔رات تم نے مجھ سے میرا سب کچھ چھین لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اب میرے زندہ رہنے کا کوئی جواز باقی نہیں رہا ۔۔۔۔۔۔میرا زندہ رہنا بہت سی زندگیوں کو زندہ درگور کردے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہلی بار جب تم میری عزت پر حملہ آور ہوئے۔۔۔۔۔۔۔اور اس کے بعد جس طرح تم پچھتائے میں اسے کمزور لمحات کی لغزش سمجھ کر بھول جانا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔لیکن!!!!!!! دوسری بار تم نے میرے سارے ارمان لوٹ لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور تمہیں کوئی پچھتاوا بھی محسوس نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔میرے اندر کی عورت جان گئی کہ اب اگر میں زندہ رہتی ہوں تو تا زندگی تمہاری داشتہ بن کررہنا پڑے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں ایسا ہرگز نہیں ہونے دوں گی ۔۔۔۔۔۔بس ایک وعدہ کرو مجھ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم ہمیشہ عریشہ کو خوش رکھو گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور عاطف کو کبھی اس بات کی خبر نہیں ہونی چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک حادثہ ہوا اورمیں زندگی کی بازی ہار گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف اس صدمے کو برداشت کرلیں گے ۔۔۔۔۔۔لیکن جو زخم تم نے میری روح پر لگائے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسے جان کر ان کی روح ان کے بدن کا ساتھ چھوڑ جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔میں تمہارے بھائی کو تم سے زیادہ جانتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عریشہ کو کبھی دکھ مت دینا ۔۔۔۔۔۔۔۔اگر تم ایسا کرپائے تو شاید میری روح بھی تمہیں معاف کردے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ عاکف بلک بلک کر رو پڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہت دیر ہوچکی عاکف ۔۔۔۔۔۔دور سے ایک آواز آتی سنائی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔اب تمہیں ایک ہی شے کے سہارے باقی کی زندگی گزارنے ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔وہ تھا پچھتاوا۔۔۔۔۔۔ختم شد
  2. 3 likes
    جب اچانک آ جائے تو سمجھ جائیں کہ اگلے 48 گھنٹے کے لیئے شیخو صاحب غائب۔۔۔ 😃😃
  3. 2 likes
    54.55path Ghar k bahir sheher wale taya ki gari khari thi Hashoo: lgta ha mehman aye hn tumhare ghar Me: han chhote taya hn…sheher wale Hashoo: ma phir chalta hn baad mein ajaun ga pulao aur palak khane Me: nai nai…tu bethak mein beth akathe khate hn khana Ma ne pehle bethak ka darwaza khol k hashoo ko bithaya…wese to hashoo ki free entry thi hamare ghar lekin muje pata tha k jb mehman hote the wo bethak tk he rehta tha Sehan mein chhote taya tayi aur komal aur kanwal bethe the Salam dua k baad ma un k pas he beth gya Komal aur kanwal dono ki nazren meri taraf he thn…aur kuch fasle se fiza ki nazren b muj pe he thn Me: bua wo hashoo ha bethak mein Bua: acha acha…ma deti hn khana Bua se apna aur hashoo ka khana le k ma bethak mein agya ‘’apni favourite jagah pe hn janab’’ Sham k waqt ma chhat pe leta hua tha k komal aur kanwal aagae…dono ne 1 jesa pink color ka dress pehna hua tha aur dono he bohat pyari lg rai thn Chhote taya aur tayi ne bare taya k ghar rehna tha aj raat aur yeh dono hamari taraf he ruk gae thn Me: g janab Wo dono be-takallufi se charpoy pe mere left aur right pe paon neche kr k beth gaen Komal: bohat be-murawwat ho tum wese faizi Kanwal: aur kya Me: yar parhae se time he nai milta…aur tum ne kb msg kia muje? Kanwal: hum ne to sharam ki waja se nai kia msg Me: han g…wese b tum dono ho na 1 dosre k liye Ma hansa aur un dono ne mere seene pe mukka mara ‘’chaye’’ Fiza chaye ki tray k sath khari thi Komal: arrey baji humen awaz de deti Us ne jldi se uth k tray fiza k hath se li Kanwal: ap ki chaye kahan ha? Fiza: ma neche he pi lu gi Me: yeh kya baat hui? Komal: ma le k ayi abi ap ki chaye Fiza thi he itni achhi k sb he us k sath bohat jld frank ho jate the Me: ap bethen Fiza chair le k beth gae aur itne mein komal us ki chaye le ayi thi Kanwal: fiza baji ye hap ko tng to nai krta ? Us ne meri taraf ishara kia Fiza: nai bilkul b nai Wo muskurae Komal: fiza baji ap ko yahan dekh k bohat ach alga…bua b kitni khush hn na Wo teeno apas mein he lgi hui thn Ma ne chaye khatam ki aur un se hashoo ki taraf jane ka bol k neeche agya ‘’ab tu phuddi to nai le ga na?’’ Hashoo ne puchha Me: matlab? Hashoo: matlab ab hania aagae ha to… Me: han nai lu ga Hashoo: pakka ? Wo hansa Me: ma ne kaha k han…nai…lu..ga…is mein han aur na dono aa jate hn Hashoo: bohat bara shaitan ha tu Me: yar jese he hania se shadi ki date fix ho gi ma sb chhor du ga Hashoo: chal dekhte hn Me: tu b to le leta ha na faiqa k hone k bawajood Hashoo: meri baat aur ha Me: meri baat b aur he samajh Hashoo: acha faiqa apne hath se aloo gosht bna k de k gae ha…khaye ga? Me: faiqa ne bnaya ha? Ma faiqa k hath ka pehle b kha chuka tha Hashoo: han Me: phir b muje khane ka keh raha ha? Hashoo: yar muje aur tuje pata ha usay achha pakana nai ata…lekin ab yeh aloo gosht wala zulm ma akela he bardasht kru?kesa dost ha tu mera? Me: chalk ha leta hn tere sath…tere sath dosti ki kuch to qeemat deni he pare gi Ma hansa Hashoo: han qeemat to deni parti he ha dosti ki Wo dosri taraf dekh k bola aur apne kitchen ki taraf chala gya ‘’hashoo plz na kr yar aise…jo baat dil mein ha wo kr mere sath’’ Ma uswaqt yeh soch raha tha ‘’ajnabi logo’’ Raat hania ka msg aya to ma ne usay foran call kr di…hum ne numbers exchange kr liye the foran he Me: ajnabi kise bola? Hania: tumhe Me: kyu? Hania: gaon kya gye muje bhool he gye Keh to wo sahi rai thi Me: yara yahan…. Hania: faizi g abi bs 13 ghante hue hn iqrar e mohabbat ko Wo muje tng kr rai thi yeh saaf zahir tha Me: tumhare hue hn ge 13 ghante…mere to… Hania: salon beet gye Wo meri baat kaat k hansi Me: oye Hania: han g Me: luv u Hania: hmmm Me: hmm ka matlab? Hania: I luv u too faizi Wo sargoshi mein boli to mere jisam mein jese zindagi dor gae uswaqt Me: hania Hania: g faizi Me: miss u Hania: miss u 2…faizi? Me: g hania Hania: muj se shadi kro ge na? Me: sirf tum se Hania: kb ao ge wapis? Me: Monday ko Hania: pata ha faizi ma ne socha tha k kisi se mohbt krni he nai…lekin ho gae faizi muje mohabbat…aura b aisa lgta ha k jane kb se hum sath hn… Me: mohbt kyu nai krni thi wese? Hania: meri ammi…achha btaun gi kbi phir…tum yeh btao k kitni sahelian hn tumhari gaon mein? Me: bohat si hn Hania: hmmm…ma so jaun? Us ki awaz mein narazgi thi ab Me: kyu kya hua? Hania: nai tum jao apni sahelion k pas Me: ab raat k 1 bje ma kis k pas… Hania: faizi Me: ma kr to raha hn apni saheli se baat..acha muje apni pic bhejo …abi Ma jldi se bola Hania: kya krni ha? Me: tum bhejo to sahi Hum subah 4 bje tk baten krte rai 10 bje ma uth k bahir aya to bua kahin jane k liye tayyar khari thn Me: bua 1 to ap k social visit khatam nai hote Bua: haa haye…bche yeh apne log hn to… Me: ja rai hn gi sumaira ki ammi k pas Bua: nai nai…wo kalsoom ki mangni ha na aj…us ki maa ne kaha k ap b ayen Me: kyu ap ne kya krna ha wahan? Bua: isi liye kehti thi tere baba ko k ise sheher na bhejo…kesi puthi seedhi baten kr raha ha…aa k baat krti hn tuj se Bua muje daant k bahir ko chali gaen aur meri nazar komal aur kanwal pe pari jo meri taraf dekh k hans rai thn ‘’fiza baji…nashta’’ Ma ne awaz lgae Komal: fiza baji college gae hn Me: lekin aj to Saturday ha Kanwal: un k college mein function type cheez ha koi…nashta kya kro ge? Me: tum dono mein se kisi ko kha leta hn Yeh bol k ma apne room mein aya aur nahane lga ‘’faizi’’ Bathroom k darwaze pe knock hui Me: kya ha ‘’jldi ao nashta tayyar ha’’ Me: aa raha hn yar Naha k mere zehen mein shaitan aya to ma bs towel lapait k bahir agya ‘’haaaaa…kuch pehen to lete?’’ Komal ne munh pe hath rkh lia aur kanwal dosri taraf dekhne lgi…lekin muskura dono he rai thn Me: hum dekha to hua ha 1 dosre ko kapron k bgher Komal: lekin phir b… Me: nashte mein kon ha? Kanwal: tumhara matlab nashte mein kya ha shayed Me: nai mera matlab kon he ha Komal: kon mein to kuch nai ha Kanwal: komal ki mangni ho rai ha..faraz bhai se…next week Wo hansi Faraz chhoti tayi ka bhatija tha Me: hain?waqae? Komal ne sharma k nazren neeche kr li Kanwal: aur kya…usi ki invitation dene to ammi abbu aye the aj Nashta kr k ma apne kamre mein agya aur kanwal ko chaye lane ka bol dia Kanwal jese he room mein ayi ma ne chaye us k hath se le k side pe rkh di aur usay banhon mein le lia Kanwal: kbi msg tk to kia nai aura b pyar jata rai ho…aur yeh sara din kya towel mein he rehna ha? Me: utar deta hn Yeh bol k ma ne towel khol dia aur wo mere paon mein gir gya Kanwal: yeh… Usay kuch kehne ka moqa diye bgher ma ne us ka nichla hont apne honton mein le lia Kanawal ka hont aur zuban chooste hue ma ne hath peeche us ki shalwar mein dale aur us ki gaand ko masalne lga Kanwal: komal…ajaye gi… Me: ane do…wo b hamare sath…mere lun ko hath mein lo na plz Jese he mera lun kanwal k narm hath mein aya us ne jhatka lia Kanwal: mmm…komal….nai kre gi…ab Wo apna hath mere lun pe ooper neeche kr rai thi aur meri finger us ki gaand ki lakeer mein harkat kr rai thii Me: tumhare sath b nai krti? Kanwal: wo to…krti ha.. Ma ne kanwal ki kameez aur bra utar di aur chehra neeche kr k us k nipples ko choosne lga Kanwal: ahhhh…sssiiii Wo neeche bethti chali gae aur ma usay lita k sath lait gya Ma us k mammon ko chaat’te hue hath us ki shalwar mein le gya Meri finger us ki balon se pak phuddi pe lgi to us ka jisam kamp gya Tb meri nazar komal per pari jo darwaze se andar khari thi Ma aur kawal beth gye Komal: ruk kyu gye? Wo b neeche carpet pe sofa k sath tek lga k beth gae…us ka chehra b surkh ho raha tha Ma ne 1 nazar kanwal ki taraf dekha aur usay phir se apne sath lita k ooper hua aur us k mammon k darmyan se kiss krte hue neeche ane lga Mere hont kanwal k pait se hote hue us ki shalwar tk pohnch gye to ma ne us ki usay neeche kr k us k paon se nikal dia Kanwal ki side pe bethe hue he ma ne us ki thighs khol di Ab us ki phuddi komal k bilkul samne thi Komal k hath apne mammon pe the aur wo ankhon mein hawas liye hamari taraf dekh rai thi Apne hath kanwal ki thighs k neeche se le ja k ma ne us ki phuddi k lips khole aur zuban us k sorakh pe push ki Kanwal: aaahhhhh…..uuuufffff…… Us ki gaand ooper ho k neeche hui Kanwal ki phuddi chat’te hue ma ne komal ki taraf dekha to wo apnni kameez aur bra ooper kr k apne nipples ko masal rai thi Yeh dekh ma aur b garam hogya aur ziada josh k sath kanwal ki phuddi k daane ko choosne aur chatne lga Kanwal: aaaahhhhh….ooohhhh…..sssiiiiiii….bohat…maza aa raha ha…komal…ajao na Mera lun us k mammon k pas tha jise us ne hath mein le k masalna shuru kr dia Komal: ma…dekhun gi…bs Wo tez sanson k sath boli aur sath he apni shalwar utar di Lgta tha k dono behno ne 1 din pehle he apni phuddi k baal saaf kiye the Kuch der aur kanwal ki phuddi chaat k ma lait gya Me: tumhari bari… Kanwal: mere ooper ao na faizi… ‘’kanwal…lo na ise munh mein…’’ Komal ki dheemi si awaz ayi to kanwal mere lun k pas bethi aur mera akra hua lun hath mein le k hath ooper neeche krne lgi Phir us ne 1 nazar komal ki taraf dekha aur chehra neeche kr k mere lun ki cap ko Charon taraf se chatne lgi Me: ohhhh… Muje lazzat ka jhatka lga Ab ma apna lun kanwal k munh mein jate dekh raha tha Komal ne apni thighs kholi hui thn aur ahista ahista apni phuddi ko rub kr rai thi aur us ki nazren mere lun pe jami hui thn jise kanwal sir ooper neeche kr k choos rai thi Mera dil to bohat kr raha tha k komal b hamare pas ajaye ‘’andar daal do na ab’’ Yeh komal ne kaha tha Kanwal ne mera lun apne munh se nikala aur laitne lgi to ma ne us ka bazoo pakar lia Me: ooper ao na Kanwal: haye muje se nai ho ga aise Me: ao to sahi Kanwal apne ghutne meri hips ki sides pe rkh k ooper ko agae Ma ne apna lun hath mein le k us ki taraf dekha to wo ahista ahista apni phuddi mere lun k ooper lane lgi Kanwal: hayeeee…..aaaaahhhhhhh…..uuuufffffff Wo ankhen bnd kiye siskian le rai thi Ma ne besabri se apni gaand ko ooper ki taraf jhatka dia aur mera poora lun us ki phuddi mein ghayeb hogya Kanwal: aaaahhhhhhhhh Wo mere ooper he gir gae Mera lun abi b us ki phuddi mein he tha Kanwal ki gaand ko hathon mein le k ma khud he apna lun us ki phuddi se andar bahir krne lga Us ki tez aur garam sansen meri neck pe thn Udhar komal ki fingers tezi se apni phuddi pe harkat kr rai thn Ma ne kanwal ko shoulder se pakar k seedha kia aur us k mamme hathon mein le liye Ab wo khud he ooper neeche ho k mera lun apni phuddi se andar bahir kr rai thi Kanwal: ah…ah…ooohhhhh…. Kuch mint baad wo shayed thuk gae thi Ma ne usay lita k us ki tangen apne shoulder pe ki aur 1 he dhakke mein lun us ki phuddi mein utaar dia Kanwal: aaahhhh….aram se….sssiiiiiii Komal ab kanwal k sath aa k lait gae thi aur hamari taraf dekhte hue apni phuddi ko rub kr rai thi Kanwal lazzat se sir dayen bayen kr rai thi Phir us ka jisam akarne lga Kanwal: aahhhhh….oohhhh…aaaaahhhhh….komallllllllllllll Jese he us ki phuddi ne pani chhora komal ki gaand b hawa mein buland hui aur zordar jhatkon k baad us ka jisam b dheela par gya Aur apna lun kanwal ki phuddi se bahir nikal kr jldi se us k mammon k pas aya aur pani us k mammon pe nikal dia Kanwal: gndeeeeeeeeeeee Ma hampta hua un dono k sath he lait gya Aijaz un dono ko lene aya tha kyu k unho ne aj ki raat wahan reh k chhote taya tayi k sath wapis chale jana tha Ma kuch ziada he garam joshi se usay mila Me: kese hn aijaz bhai Aijaz: ma theek…tu to ab bara bara lgne lga ha…lgta ha Lahore raas agya ha tuje Uswaqt wo nashe mein nai tha Me: aijaz bhai Ma us k pas hua Aijaz: bolo Me: 1 baat krni thi aap se…kisi ko btayen ge to nai? Aijaz: nai btata yar…mard hn ma Me: wo…sheher mein mera 1 dost ha…us ne sharab bheji ha…imported ha…lekin ma to peeta nai hn apko to pata ha Aijaz: kahan ha wo sharab Us ki ankhon mein 1 dum chamak si agae thi Me: ma ne dera pe chhupae ha…lekin 1 bottle bethak mein b rkhi ha…ap ki gari mein rkh deta hn Aijaz: yeh hui na yaron wali baat Me: ap chahe dera pe ajana…wahin beth k b pi lena…gupshup b kren ge dono Aijaz: han yeh b theek ha…wahan to waise b afzal mere peechhe para rehta ha k kum pia kru Me: lekin ap plz kisi ko btana nai …bua ko pata chala to meri kher nai Aijaz: tu fikar na kr ma nai btata kisi ko…dost ha akhir tum era Sharab ki waja se ma us ka dost b nn gya tha ab Me: bs phir kul milte hn ‘’ufff..peechhe hato’’ Kitchen mein fiza ko ma ne hug kia to us ne sir ghuma k muje ghoora Me: nai hatun ga Fiza: bua ajayen gi Me: pehle promise kren k aj raat… Fiza: kul subah nahana ha ma ne Me: acha Ma usay chhor k peechhe hogya Mere chehre pe mayoosi dekh k wo hansne lgi ‘’yeh dekhen bua…kesi ha?’’ Ma ne bua k samne hania ki pic ki jo us ne raat he send ki thi muje Bua: haye kitni pyari ha…kon ha yeh? Me: ap ki hone wali bahu…hania nam ha us ka Bua: hain? Me: g bua Bua: tu wahan parhae krne gya ha ya… Me: mera ap se waada ha k parhae mein koi harj na hua ha na ho ga…ap bs han kr den Bua: aise kese han kr du? Sb se mashwara krna pare ga…akhir ko un ki b betian hn.. Me: bua apko meri khushi azeez ha ya logon ki? Bua: teri puttar…muje milaye ga is se jb ma Lahore aun gi? Me: g bua bilkul…aur muje pata ha k is se milte he ap ne foran maan jana ha Ma bua k chimat gya Bua: acha peechhe ho..makhan na lga muje ‘’kb ao ge?’’ Raat hania ne puchha 3 din purani mohbt mein he ma us k liye bohat ahem hogya tha shayed Me: bul kul ka din sabar kr lo…parson tumhare pas hn ga Hania: acha Me: jan Hania: zara phir se kehna Me: kya Hania: jo abi kaha Me: jan Hania: faizi…ma bta nai skti muje kitna acha lga ha yeh lafz sun k Me: jaan Hania: g meri…jan Me: luv u Hania: luv u too Me: bua ko tum pasand agae ho Hania: tum ne wo pic isliye mangwae thi Me: g janab…jb wo Lahore ayen gi to tum se milen gi b Hania: haye muje to abi se ghabrahat ho rai ha Me: meri bua bohat achi bohat narm tbiat wali hn Hania: faizi…tumhe 1 kam aur b krna pare ga Me: wo kya? hania: meri mom ko b tumhe manana pare ga faizi itna to muje pata tha k us k father ki kuch saal pehle death hogae thi me: to mana lu ga..is mein kya ha hania: pata ha faizi…bohat chhoti umer se unho ne yeh baat mere zehen mein bithana shuru kr di thi k pyar vyar k chakkron se door rehna ha… me: bohat sakht hn wo? Hania: bilkul b nai…bs is mamle mein he sakht hn Me: ma mana lu ga un ko…kahin nai jane de raha ma tumhe Hania: bs 1 baat yaad rkhna …agar wo nai maani to ma kuch nai kr sku gi… Me: tum meri ho…sirf meri…ma mana lu ga un ko Bua k sir mein dard tha aur wo tablet le k soi hui thn Fiza kitchen mein thi Us k geele baal us ki kamar per bikhre hue the Me: ajayen Ma ne usay hug kr k us ki neck pe kiss ki Fiza: raat ko na Me: raat ko ap so jati hn… Fiza: subah jldi jana hota ha na Ma ghutno k bal neeche betha aur 1 jhatke se us ki shalwar neeche kr di Fiza: faiziiiii Kameez us ki gaand se hata k ma ne us ki gaand k ubharon ko pakra aur unhe chatne lga Fiza: faizi Ab us ki awaz kafi dheemi thi Fiza ki safaid gaand k ubharon ko khol k ma ne zuban ki nok us k sorakh tk le jane ki koshish ki Fiza: hahhh… Us k jisam ne jhatka lia lekin ma apni zuban us ki gaand ki lakeer mein ooper neeche krta raha Faizi: nai…kro…na.. Lekin ma kahan sun raha tha ma ne us ka hath pakra aur usay apne kamre mein le gya Study table k sath fiza ko lga k ma ne apne hont us k honton se mila diye Ab wo b garamjoshi se mera sath de rai thi aur kbi meri zuban choos rai thi aur kbi apni zuban mere honton mein de rai thi Fiza:tumhe…pata ha… Me: kya… Fiza: periods khatam hote he…larkian bohat hot…hoti hn Yeh baat muje waqae nai pata thi Me: kapre utaren Ma peechhe hua aur jldi se shalwar kameez utar di aur inte mein fiza b nangi ho chuki thi Ma ne us ka mamma pakra aur chehra neeche kr k us ka nipple honton mein le lia Fiza: sssiiiiii…. Aur us ne aj pehli bar khud he mera tana hua lun apne hath mein le lia Ma bari bari us k nipples ko choos raha tha aur us ka hath tezi se mere lun k ooper neeche ho raha tha Me: munh mein lo …plz Fiza foran he neeche bethi aur agle lamhe he muje apna lun us k garam munh mein feel hua Me: oooohhhhhh… Ma ne us k balon mein apni fingers pansa di Fiza: hm..mm…mm… Wo poore josh se sir agay peechhe kr k mere lun ko choos rai thi Me: ahhhh…chooso…mere lun ko…. Fiza ne mera lun munh se nikala aur cap pe sorakh pe apni zuban se mera pre-cum chaata aur khari hogae Fiza: bed pe…chalo Jawab mein ma ne usay uthaya aur study table pe bitha k usay push kr k lita dia Me: yeh kya ha? Ma ne us ki geeli phuddi k lips ko rub krte hue pucha Fiza: mmmm…daal do na… Me: btayen Fiza: vagina Me: nai sahi btayen Fiza: phuddi…faiziiiiii Me: aur is k andar kya jaye ga? Fiza: tumhara…penis Wo bohat ziada hot ho chuki thi aur ankhen bnd kiye hampte hue bol rai thi Me: sahi btayen Fiza: tumhara…lun… Us k munh se yeh alfaaz sun k ma aur b garal hogya aur us ki tangen ooper kr k bend ki aur unhe us k mammon k sath lga dia Sb se pehle ma ne us ki phuddi k ooper wale hisse mein daane ko honton mein le k choosa Fiza: aaahhhhhhh….ssssiiiiii….kro…aur kro… Ma fiza ki phuddi ko chatne lga Me: maza…aa rha ..ha.. Fiza: bohat…. Us ki phuddi k ooper wale hisse se safar krti hui meri zuban us k gaand k sorakh tk agae Fiza: uuuuffff……sssiiiiiii…. Wo tarapne lgi aur ma us ki gaand k sorakh ko chat’ta raha Ma ne 1 finger fiza ki phuddi mein utaari aur usay andar bahir krte hue us ki phuddi k danne ko choosne lga Fiza: aaahhhh……oooohhhhhh…..sssiiiiiii…. Me: andar dalun? Fiza: han…daalo…jldi se…. Ma seedha khara hua aue apna lun us ki phuddi k sorakh pe rkh k ruk gya Fiza: daalo na Us ne mera lun pakar k andar ki taraf dabaya to ma ne apne lun pe b rehem krte hue usay fiza ki tight phuddi mein utaar dia Fiza: uuuffff…..han…han …kro… Ma ne 1 bar apna lun us ki phuddi se bahir nikala aur phir 1 he jhatke mein andar daal dia Fiza: sssiiiiii….mmmmmm… Ma ab tezi se fiza ki phuddi se lun andar bahir krte hue usay chod raha tha Mere dhakkon ki waja se us k tane hue mamme ooper neeche ho rai the aur mere hath jese khud he fiza k mammon pe pohnch gye Ma khara ho k usay chodte hue us k mammon ko masalne lga Me: aj to…jese…ap ki phuddi mein…aag lgi hui ha Waqae us ki phuddi andar se tanoor bni hui thi Fiza: aaaahhhh…bs…krte …raho..ma hone…wali hn Us ki baat sun k ma ne aur b tezi se usay chodna shuru kr dia Fiza: haye…haye…ah…ah…oh…ooohhhh…aaaaahhhhhh Is k sath he us ki phuddi ne pani chhor dia aur mere lun ne pani us ki phuddi k lips mein nikala ‘’fiza’’ Bua ki apne kamre se awaz ayi Fiza: haye ma mer gae Us ne seconds mein kapre pehne aur bhaag k bahir chali gae ‘’yar yeh brand to mera favourite ha…bari mushkil se milta ha sheher se’’ Aijaz adhi bottle khali kr k bola Wo hamare dera per tha uswaqt…us ne muje call kr k btaya tha k seedha der ape he aa raha ha Me: acha aijaz bhai?ma apne dost se keh k aur mangwa lu ga Aijaz: abi 10-15 pari hn teri almari mein Wo hansa Me: aur ajayen gi Aijaz: yar faizi tu to bare kam ka bnda nikla…sb aiwen he… Me: muje to sb bcha samajhte hn aijaz bhai…bs 1 aap he hn jo muj se ache tareeke se baat krte hn Aijaz: tu tension na le…ab tu mera pakka yar ha Me: thnx aijaz bhai Us k baad wo derh bottle peene tk khamosh he raha Itne mein majid bhuna hua gosht le k agya jo us ne mere kehne pe khud bnaya tha Aijaz: mere yar ne poora bndobast kia hua ha aj to Me: g aijaz bhai ap k liye bs Aj ma jhoot bolne ki inteha kr raha tha Aijaz: oye majid…tu…yahan? Majid: g sahib…faizi sahib ne muje rkh lia ha apne pas Aijaz: oye..yeh faizi mera pakka wala yar ha…is ka khyal rkhna Wo lamba sa ghoont le k bola Majid: g sahib Wo meri taraf dekh k muskuraya…shayed wo samajh chukka tha k mere zehen mein kya ha Me: majid zara aijaz bhai k driver ko b khana de de Majid sir hila k bahir nikal gya Aijaz: tere sath bari ziadati krte hn yar sb Me: kese aijaz bhai? Aijaz: yehi jo tuje ..apne se neeche samajhte hn Me: muje koi parwah nai…lekin shayed ap k sath b aisa he ha kuch Aijaz: han na yar…wo…. Us ne teesri bottle khatam ki aur wo b neat aur peeche ko lurhak gya Ma uth k bahir aya to majid bahir he tha Me: yar ise jb thora sa hosh aye to is k driver k sath mil k ise utha k is ki gari mein daal dena..agar mera puchhe to kehna k ghar se call ayi thi chala gya Majid: theek ha..lekin muje kuch kuch samaj aa rai ha k faizi sb krna kya chahte hn Wo hansa Me: bs dekhta ja…aur… Majid: zuban bnd Us ne meri baat kaati Me: han…zuban bnd…aur Ma agli baat krte hue ruk gya Majid: aur? Me: hashoo ko kbi pata na chale k ….tu samajh raha ha na meri baat? Ma us k jawab ka intezar kiye bgher apni gari ki taraf barh gya
  4. 2 likes
    update.. .میں نے مٹھ مار کر ساری منی نسرین کے جسم پر انڈھیل دی ۔ اور لمبے سانس لیتا ھوا چارپائی سے اترا ۔ اور جب بلب کی روشنی میں لن کو دیکھا تو میرا لن نسرین کی پھدی سے نکلنے والے خون سے رتا لال ھوگیا تھا ۔۔ خون کی بدبو بھی میرے نتھنوں سے ٹکرا رھی تھی ۔ نسرین ابھی تک ویسے ھی لیٹی ھوئی کسی گہری سوچ میں گم تھی ۔ میں نے لن صاف کیے بغیر ھی ٹراوزر پہنا اور نسرین کے بازو کو پکڑ کر اسے ہلاتے ھوے کہا ۔ نسرین اٹھو بہت دیر ھوگئی ھے جلدی سے کپڑے پہنو ۔۔ نسرین نے آنکھیں کھولیں اور میری طرف دیکھ کر طنزیہ انداز میں مسکرائی اور پھر اٹھنے لگی تو آہہہہہہہہ کرتے ھوے پھر لیٹ گئی ۔ میں نے اسے بازو سے پکڑ کر اٹھا کے بٹھایا اور ادھر ادھر دیکھتے ھوے کپڑا تلاش کرنے لگ گیا ۔ اور پھر میری نظر ایک میلے سے گہرے رنگ کے کپڑے پر پڑی جسکو شاید جھاڑ پونچھ کے لیے استعمال کرتے تھے ۔۔ میں نے جلدی سے وہ کپڑا اٹھایا ۔ اور نسرین کے جسم پر لگی منی صاف کی اور پھر اسکی ٹانگوں کو صاف کیا جو خون سے بھری ہوئیں تھی ۔ نسرین کی حالت کافی خراب تھی مگر اس کی ہمت تھی کہ وہ خود کو سنبھالے ھوے تھی اور صفائی کے بعد کراہتی ھوئی چارپائی سے اتری تو جیسے ھی اسکی نظر شیٹ پر پڑی تو اس نے دونوں ہاتھ منہ پر رکھ لیے اور پھٹی آنکھوں سے خون سے بھری شیٹ کو دیکھنے لگ گئی ۔ ۔ میں. نے اسے دلاسا دیتے ھوے کہا ۔ نسرین گبھراو نہیں یہ تمہارے کنوارے پن کی نشانی تھی پہلی دفعہ خون نکلتا ھی ھے ۔۔ نسرین میری طرف دیکھتے ھوے بولی ۔ یاسر جو بھی ھوا اچھا نہیں ھوا ۔ تم نے مجھے کسی کا نہ چھوڑا ھے ۔ ھاے میری بدقسمتی کہ تمہارے ساتھ کیوں آئی ۔۔ اس سے پہلے کہ نسرین کے رونے اور دُکھڑے پھر شروع ھوتے میں نے جلدی سے شیٹ اکھٹی کی اور اسے یہ کہتے ھوے کمرے سے باہر نکل گیا کہ جلدی سے شلوار پین لو اور یہ رونا دھونا بند کرو ورنہ عظمی اور نازی کو شک ھوجانا ھے ۔۔ میں شیٹ پکڑے واش روم میں گیا اور اسے اچھی طرح دھو کر واپس کمرے میں آیا اور شیٹ کو ویسے ھی لپیٹ کر جس جگہ پڑی تھی ادھر رکھ دیا ۔ نسرین بھی کپڑے پہن کر اپنا حلیہ درست کرکے کھڑی تھی ۔ میں. نے اسے نمبر والی پرچی کا پوچھا تو اس نے ھاتھ میری طرف کیا اور بند مٹھی کو کھول کر پرچی میرے سامنے کی میں نے اسکے ھاتھ سے پرچی پکڑ کر جیب میں ڈالی اور پھر اسے چلنے کا کہا ۔ نسرین ٹانگیں چوڑی کر کے ہاتھ ناف کے نیچے رکھ کر چل رھی تھی ۔۔ میں نےا اسکو یوں چلتے دیکھا تو بولا ۔ نسرین یار سہی ہوکر چلو ایسے چلو گی تو لازمی پھنسو گی ۔ کچھ دیر کے لیے اپنے آپ پر کنٹرول کرو اور جب بستر پر لیٹ جاو گی تو صبح تک سہی ھو جاو گی ۔ نسرین بولی ۔یاسر میں کون سا جان بوجھ کر ایسے چل رھی ھوں میرے درد بہت ھو رھا ھے اور ابھی بھی نیچے سے خون نکل رھا ھے ۔۔ میں نے کہا تم ایسا کرنا صبح اگر کوئی پوچھے تو کہہ دینا کہ ماہواری شروع ھوگئی ھے ۔۔ نسرین بولی تمہیں بہت پتہ ھے ان باتون کا ۔۔ میں نے کہا لو جی توں ہن نواں کٹا کھول کے بے جا۔۔ میں کوئی بچہ تو نہیں ھوں جو مجھے ان سب باتوں کا علم نہیں ۔۔۔ چلو شاباش سہی ھوکر چلو ۔۔۔ نسرین خقد پر کنترول کرتے باہر دروازے تک میرے کندھے پر ھاتھ رکھ کر آئی ۔۔ اور پھر ہمارے گھر تک آتے ھوے اس نے اپنے آپ پر مکمل کنترول کر لیا تھا ۔۔ میں نے دروازہ کھولا اور نسرین بھی میرے ساتھ گھر میں داخل ھوئی ۔ تو میں نے دروازہ لاک کیا اور نسرین کو کہا کہ میں سونے جارھا ھوں اگر وہ دیر سے آنے کی وجہ پوچھیں تو کوئی بھی بہانہ لگا دینا اور یہ کہتے ھوے میں واش روم میں گیا ٹراوزر اتار کر اچھی طرح لن کو دھویا ۔ اور کپڑے پہن کر بیٹھک میں چلا گیا اور لیٹتے ھی پرسکون نیند نے گھیر لیا۔۔۔ صبح اٹھا تو گھر میں سب نارمل ھی تھا میں نے شجر ادا کیا کہ نسرین نے سب سنبھال لیا ھے ۔ میں نے فریش ھوکر بائک نکالی اور شہر پہنچا ضوفی کو اسکے گھر سے لیا اور دکان پر پہنچا ۔ سارا دن کام میں گزر گیا میں نے فری وقت میں آنٹی فوزیہ کے بھائی کو کال کی اور آنٹی سے بات کر کے انکی اور انکل کی خیریت دریافت کی آنٹی نے مزید دو تین دن بعد آنے کا کہا ۔اور عظمی نسرین کا اچھے سے خیال رکھنے کا کہا۔ میں نے انکو تسلی دی اور بے فکر رہنے کا کہا ۔۔۔ پھر میں نے فرحت کا نمبر ڈائل کیا تو پتہ چلا کہ وہ ہسپتال ھے اپنی امی کے ساتھ میں نے کال سننے والے کو جو شاید اسکا رشتہ دار تھا کہا کہ آنٹی فرحت کو بتا دینا کہ یاسر کی کال آئی تھی اور انکی امی کی صحت یابی کا پوچھ رھا تھا ۔۔۔ رات کو میں ضوفی کو لے کر گھر پہنچا کچھ دیر انکے گھر رکا آنٹی کا حال احوال اور ماہی کی سٹڈی کا پوچھا اور واپس گھر آگیا ۔۔۔ گھر میں سب کچھ نارمل ھی تھا مگر نسرین بخار سے بستر کے ساتھ لگی ھوئی تھی ۔میں نے نسرین سے حال احوال پوچھا تو نسرین سواے مجھے گھورنے کے کچھ نہ بولی ۔ جبکہ عظمی مجھے عجیب نظروں سے دیکھ رھی تھی ۔ اور اسکا موڈ بھی کچھ اوف لگ رھا تھا ۔ مجھے اسکی نظروں اور اسکے موڈ سے کھٹک رھی تھی کہ اسے پتہ تو نہیں چل گیا ۔ میں نے انکو آنٹی کو کال کرنے اور انکل کی طبعیت سہی ھونے کا بتایا اور ابھی دو تین دن تک آنٹی کے نہ آنے کا بھی ۔ مگر عظمی ہوں ہاں اچھا کہہ کر میری بات کا جواب دیتی رھی ۔ میں اندر سے ڈر بھی گیا تھا کہ کہیں سچ میں تو نہیں عظمی کو پتہ چل گیا اور پھر اسے اپنا وہم سمجھ کر دل کو دلاسا دیتا رھا ۔ اگلے دن جمعہ تھا دکان سے بھی چھٹی مارنی تھی اس لیے میں باہر نکل گیا اور دوستوں کے ساتھ خوب گپ شپ کی اور رات کو کافی لیٹ گھر آیا دروازہ کھول کر اندر داخل ھوا تو سب کمروں کی لائٹ بند تھی جسکا مطلب تھا کہ سب سے ھوے ہیں ۔۔۔ میں واش روم کے آگے سے گزرنے لگا تو مجھے واش روم کی لائٹ جلتی نظر آئی اور دروازہ بھی بند نظر آیا ۔ میں یہ سوچ کر کمرے میں جانے لگا کہ ھوسکتا ھے بھا واش روم وچ ھوے۔۔ جب میں کمرے کے دروازے پر پہنچا تو واش روم کا دروازہ کھلنے کی آواز آئی تو میں نے گردن گھما کر پیچھے دیکھا تو ۔ عظمی واش روم سے نکل کر نلکے کی طرف ہاتھ دھونے جارھی تھی ۔۔۔ میں نے جلدی سے چاروں طرف کا جائزہ لیا تو ہر طرف شانتی دیکھ کر دبے پاوں چلتا ھوا نلکے کی طرف جانے لگا ۔ عظمی کی چھٹی حس نے اسے احساس دلایا تو اس نے گردن گھما کر پیچھے دیکھا تو مجھے دیکھ کر چونک گئی اور پھر سیدھی ھوکر چلتے ھوے نلکے کے ہاس پہنچی ۔۔ میں بھی اتنی دیر میں اسکے سر پر پہنچ گیا ۔۔۔اور نلکے کی ہتھی پکڑ کر اوپر نیچے کرکے نلکے سے پانی نکالتے ھوے بولا دھو لو ھاتھ ۔۔ عظمی خاموشی سے ھاتھ دھو کر اہنے دوپٹے سے ہاتھ صاف کرتے ھوے کمرے کی طرف جانے لگی تو میں نے آہستہ سے اسے آواز دی تو عظمی میری آواز سن کر رک گئی میں چلتا ھوا اسکے پاس پہنچا اور بولا۔۔۔ عظمی کیا بات ھے ناراض ھو مجھ سے ۔ عظمی نے نفی میں سر ہلانے پر ھی اکتفاء کیا ۔ میں نے کہا ۔ تو پھر اتنی بےرخی کیوں ۔ عظمی آہستہ سے بولی میں نے کیا بےرخی دیکھائی ھے ۔ میں نے کہا جس دن سے تم ہمارے گھر آئی ھو میرے ساتھ سیدھے منہ بات بھی نہیں کرتی ھو ۔۔ا اگر مجھ سے کوئی غلطی ھوگئی ھے تو بتاو۔۔ عظمی بولی ۔ نہیں ایسی تو کوئی بات نہیں تمہیں لگتا ھے ورنہ میں کیوں تم سے ناراض ھوں گی ۔ میں. نے عظمی کا ہاتھ پکڑا تو عظمی نے ادھر ادھر دیکھتے ھوے ہاتھ مجھ سے چھڑوانا چاہا ۔ اور دھیمی آواز میں بولی ۔ ہاتھ تو چھوڑو میرا کوئی آجاے گا ۔۔ میں نے کہا سب سے ھوے ہیں کوئی نہیں آتا۔۔ عظمی بولی یاسر پلیززز تم جاو یا مجھے جانے دو اگر کسی نے دیکھ لیا تو پتہ نہیں کیا ھوجاے گا ۔۔۔۔ میں تو پہلے ھی مر رھی ھوں ۔۔ عظمی کا ہاتھ کانپ رھا تھا ۔۔ میں نے کہا یار کیا ھوا ھے ایسے کیوں ڈر رھی ھو کچھ نہیں ھوتا ۔۔ عظمی بولی ۔ یاسر تم لڑکے ھو اس لیے ایسی باتیں کررھے ھو ۔ میں نے عظمی کی بات کاٹتے ھوے کہا کیوں لڑکوں کی عزت نہیں ھوتی ۔ عظمی جھنجھلا کر بولی مجھے نہیں پتہ پلیز میرا ھاتھ چھوڑ دو۔۔ میں نے کہا اچھا میری بات سنو ۔ عظمی بولی ھاں جلدی بولو۔۔ میں نے کہا چلو میرے ساتھ بیٹھک میں ۔ عظمی مجھ سے ہاتھ چھڑواتے ھوے بولی پاگل ھوگئے ھو ۔ کمرے میں بھا سویا ھوا ھے ادھر نازی کے ساتھ سے میں اٹھ کر آئی ھوں کیوں مجھے مروانا ھے ۔۔۔ میں. نے کہا اچھا تو پھر کل چھٹی ھے کسی طرح ادھر گھر جانے کا پروگرام بناو مجھے تم سے لازمی ملنا ھے ۔۔۔ عظمی بہت گبھرائی ھوئی تھی اور بار بار کمروں کی طرف دیکھی جارھی تھی ۔ میری بات سنتے ھی بولی اچھا ٹھیک ھے صبح کچھ کروں گی اب تو مجھے جانے دو ۔۔ میں نے اسے کھینچ کر اہنے ساتھ لگایا اور اسکے ہونٹوں کو چوم کر اسے چھوڑ دیا ۔ عظمی مجھ سے جان چھڑوا کر تقریباً بھاگتی ھوئی کمرے کی طرف چلی گی اور میں کچھ دیر ادھر کھڑا کمرے کی طرف دیکھتا رھا اور پھر اپنے کمرے کی طرف چلا گیا ۔۔۔۔۔ صبح میں دیر تک سویا رھا مجھے امی نے اٹھایا کہ پتر اٹھ جا کہ سارا دن سویا رہنا ھے ۔۔ میں نے انگڑائی لیتے ھوے آنکھ کھولی اور امی سے ٹائم پوچھا تو امی نے بتایا کہ دس بجنے والے ہیں ۔ اٹھ جا میں نسرین کو ڈاکٹر کے پاس لے کر جارھی ہوں شہر اسکا بخار نہیں اتر رھا ۔۔ .میں ڈاکٹر کا سن کر جلدی سے اٹھ کر بیٹھ گیا ۔۔۔۔کہ کہیں لیڈی ڈاکٹر کی بات تو نہین کررھی ۔ میں نے آنکھیں ملتے ھوے کہا ۔ اسکو کیا ھوا چنگی پلی تے سی. ۔امی بولی پتہ نہیں لگتا ھے اپنے ابو سے اداس ھوگئی ھے باپ کی بیماری سے بیچاریاں پریشان بھی تو بہت ہیں ۔۔ میں نے ہمممم کیا اور امی سے پوچھا کہ میں موٹر سائکل پر لے چلوں آپ کو ۔ تو امی نے بتایا کہ نازی نے بھی ساتھ جانا ھے اس کے بھی کان سے ریشہ نکلتا رھتا ھے ۔ میں نے کہا تو عظمی کو بھی پھر ساتھ لے جائیں اسکی بھی کوئی دوائی لے آئیں ۔۔ امی نے میرے سر پر چپت مارتے ھوے کہا ۔ ہے نہ چلا جیا ۔ اونوں کی ھوگیا اے جیڑا اودی دوائی لیانی اے ۔ میں نے کہا ایک وہ ھی تو رھ گئی میں نے کہا اسے بھی لے جاو ساتھ میں تو سکون سے سووں ۔۔ امی بولی ۔ چل ہن بوتی بکواس نہ کری جا اٹھ کہ منہ ہتھ دھو تے تینوں ناشتہ کروا کے ای جاواں گیاں ۔۔ میں جلدی سے اٹھا اور نہا کر فریش ھوا اور ٹریک سوٹ پہن لیا ۔۔ امی نے ناشتہ دیا اور بولیں ناشتہ کر کے تانگہ لے آ تے نالے اپنی آنٹی کار وی چکر لا آویں عظمی کپڑے تون چلی گئی اے تے تیان نال پین کول رویں ایویں آوارہ گردی کرن نہ نکل جاویں ۔۔۔ میں نے منہ بسورتے ھوے کہا امی ایک جمعہ کی تو چھٹی ھوتی ھے اور چھٹی بھی سکون سے نہیں گزارنے دیتی ۔۔ امی بولی ایویں بوتیاں گلاں نہ کری جا جیڑا کم کیا اے او چپ کر کے کریں ۔ میں برا سا منہ بنا کر سرنیچے کر کے ناشتہ کرنے لگ گیا ۔ اور پھر امی سے پوچھا کہ کتنی دیر تک واپس آئیں گی ۔ امی بولی ۔ کیوں توں کیڑا آفس جانا اے ۔ میں نے کہا ویسے ھی پوچھ رھا ھوں میں نے بھی شہر جانا ھے ۔ امی بولی شہر رھ رھ کے رجدا نئی جیڑا اک دن وی پنڈ وچ تینوں اوکھا لگدا اے ۔ میں نے کہا امی مجھے کام ھے ایک دوست کی طرف جانا تھا ۔۔ امی ادھر ادھر دیکھتے ھوے بولی مینوں سب پتہ اے جیڑے دوست نوں ملن جاناں اے کوئی نہ تن چار کینٹے تک آجاواں گیاں فیر چلا جاویں میں نے پھر روٹھنے والے انداز سے کہا پھر تو شام ھوجانی ھے ۔ امی ہنستےھوے بولی ۔ پتر شہر آن جان وچ گھنٹہ لگ جاندا اے اسی کیڑا سکوٹر تے یا رکشے تے چلیاں ایں ۔۔ میں نے ہمممم کیا اور امی سے باتوں کے دوران ھی ناشتہ ختم کیا اور پھر جلدی سے چوک کی طرف گیا اور تانگے والے کو کہہ کر میں واپس گھر آگیا ۔۔ اور نسرین کے پاس گیا جو بیچاری واقعی بخار سے مرجھا گئی تھی ۔۔ ایک دن میں ھی بخار نے اسے نچوڑ کر رکھ دیا تھا ۔۔ نسرین کا اب بھی میرے ساتھ موڈ اوف ھی تھا ۔ خیر کچھ دیر بعد گلی میں تانگے کی آواز آئی تو امی نے نازی کو آواز دی کے تانگہ آگیا ھے جلدی سے برقعہ پہن لو دونوں بہنیں اور چلو میرے ساتھ ۔۔ عظمی لگتا تھا میرے سوے ھوے ھی اپنے گھر چلی گئی تھی کپڑے دھونے کے بہانے ۔۔۔ میں دل ھی دل میں بہت خوش ھوربا تھا کہ آج جی بھر کے چدائی کرنے کا موقع ملا ھے اور بےفکری سے نہ کسی کے آنے کا ڈر اور نہ ھی کوئی اور پریشانی ۔۔۔ خیر کچھ دیر بعد نازی نسرین کا بازو پکڑے اسے باہر لے آئی نسرین اب بھی ٹانگیں کھول کر چل رھی تھی اور تقریباََ جھک کر چل رھی تھی اس نے ہیٹ درد کے بہانے ناف کے نیچے ھاتھ بھی رکھا تھا ۔۔ خیر دس پندرہ منٹ بعد سب تانگے پر سوار ھوکر شہر چلے گئے وہ دس پندرہ منٹ میرے لیے دس پندرہ گھنٹے تھے ۔۔ انکے جانے کے بعد میں ایک دفعہ پھر چوک کا چکر لگا آیا کنفرم کرنے کے لیے کہ تانگہ واقعی گاوں سے نکل چکا ھے ۔ کنفرم کرنے کے بعد میں گھر آیا اور ۔بائک اندر کمرے میں کھڑی کر کے لاک کی اور پھر سیٹی بجاتا ھوا ۔ عظمی کے گھر کی طرف چل دیا۔۔۔ .گلی میں چھوٹے چھوٹے بچے کھیل رھے تھے ۔ حالانکہ کے ایسی کوئی ڈر والی بات بھی نہیں تھی کہ مجھے کوئی آنٹی کے گھر جاتا دیکھتا تو شک کرتا ۔۔ مگر پھر بھی میرے اندر کا چور مجھے چوکس رکھے ھوے تھا ۔۔ میں گلی کا جائزہ لیتا ھوا تیز تیز قدم اٹھاتا دروازے پر پہنچا تو دروازہ اندر سے کنڈی لگا کر بند کیا ھوا دیکھ کر مجھے غصہ چڑھنے لگا کہ کوئی مجھے دیکھ نہ لے ۔ میں نے دروازہ بجایا تو کچھ دیر بعد عظمی کی آواز آئی کون۔۔ میں نے جنجھلا کر کہا کون دی بچی جلدی نال دروازہ کھول ۔۔ عظمی نے جلدی سے دروازہ کھولا اور گبھراے ھوے میری طرف دیکھتے ھوے کہا کی ھویا خیر تے ھے ۔۔۔۔ میں جلدی سے اندر داخل ھوا اور لمبا سانس کھینچ کر چھوڑتے ھوے بولا ۔ کنڈی کیوں لائی سی ۔۔ عظمی حیران ھوکر میری طرف دیکھتے ھوے بولی ۔ کیوں لگائی تھی کا کیا مطلب ۔ گھر ہر اکیلی تھی اس لیے لگائی تھی ۔ مگر تمہارے رنگ کیوں اڑے ھوے ہیں ۔اور سانس کیوں چڑھا ھوا ھے میں کھسیانا سا ھوکر خود کو سنبھالتے ھوے بولا ۔ کچھ نہیں چوک سے بھاگ کر آیا ھوں اس لیے ۔۔ عظمی حیران ھوتے ھوے بولی چوک سے بھاگ کر آے ھو وہ کیوں ۔۔۔ میں نے جنجھلا کر کہا ویسے ھی یار تم کیوں پولیس والوں کی طرح تفتیش کرنے بیٹھ گئی ۔ اور میں یہ کہتے ھوے اندر کمرے میں چلا گیا ۔۔ اندر داخل ھوتے ھی میری نظر سب سے پہلے چارپائی پر پڑی اور پھر دستر خوان والی شیٹ پر ۔۔ سب کچھ ٹھیک تھا ۔۔۔ کچھ دیر بعد عظمی بھی کمرے میں آگئی مین نے کہا باہر کی کنڈی لگا دی ھے ۔ عظمی حیران ھوتے ھوے بولی کیوں باہر کی کنڈی کیوں لگانی ھے ۔۔۔ میں. نے جھنجھلا کر کہا یار ایسے کوئی اندر نہ آجاے ۔۔ عظمی پھر سنجیدہ ھوکر بولی آجاے جس نے آنا ھے ہم کون سا ننگے بیٹھے ہیں ۔۔۔ میں جلدی سے اٹھا اور دروازے کی طرف بڑھنے لگا تو عظمی ہنستے ھوے بولی ۔ بیٹھ جاو جناب کنڈی لگا کر آئی ھوں ۔۔۔ میں نے عظمی کے پاس سے گزرتے ھوے اسکے سر پر چپت ماری اور بولا ۔ بہت شوخی ھو تم ۔۔۔ عظمی منہ میں بڑبڑائی تیرے نالوں کٹ ای آں ۔ میں. نے اسکی بات سن کر بھی انجان بنتے ھوے کہا کیا کہا۔۔۔ عظمی سر ہر دوپٹہ سہی کرتے ھوے بولی کچھ نہیں ۔۔۔ میں چارپائی پر بیٹھتے ھوے بولا ۔۔ امی نسرین اور نازی شہر گئیں ہیں ۔۔۔ عظمی لاپرواہی سے بولی ۔ مجھے پتہ ھے ۔۔۔ میں نے کہا واہ یعنی کے تم جان بوجھ کر نئی گئی ۔۔ اور میرے لیے ادھر آگئی ھو۔۔ عظمی اپنی انگلیوں کو مروڑتے ھوے بولی۔ زیادہ خوش ھونے کی ضرورت نہیں میں نے کپڑے دھونے تھے اس لیے آئی ھوں ۔۔ میں نے اتھ کر باہر نلکے کی طرف دیکھا اور بولا تو دھوے نہیں کپڑے عظمی بولی میری مرضی جب مرضی دھووں ۔۔ میں چلتا ھوا عظمی کے پاس آیا اور اس کی ٹھوڑی کو پکڑ کر اوپر کرتے ھوے بولا ۔ بڑا غرور ھے ۔۔۔۔ عظمی کے چہرے پر طنزیہ مسکراہٹ آئی اور بولی ہوووووں غرور ۔۔۔۔ کاش غرور ھوتا۔۔۔۔۔۔ اور ساتھ ھی اسکی آنکھیں نم ہوگئیں ۔۔۔ مجھے اسکی کیفیت کا اندازہ ھوگیا میں نے ماحول کو مزید خراب ھونے سے بچاتے ھوے اسکو بازوں سے پکڑا اور اپنے سینے کے ساتھ لگا کر بازو اسکی کمر کمر کے گرد کس لیے ۔ مگر یہ کیا معاملہ پھر بھی خراب ھوگیا ۔۔۔۔ عظمی میرے سینے کے ساتھ لگتے ھی پھوٹ پھوٹ کر رونے لگ گئی ۔۔۔ میں اسکی کمر کوسہلاتے ھوے اسے چپ کرانے لگ گیا ۔ کچھ دیر بعد عظمی نارمل ہوئی تو میں ہاتھ سے اسکی گال سے آنسو صاف کرنے لگ گیا ۔ عظمی کی ہچکی بندھی ھوئی تھی ۔۔ میں اسکو بغل میں لے کر چارپائی کی طرف گیا اور اس کندھوں سے پکڑ کر چارپائی پر بیٹھایا اور خود اسکے ساتھ بیٹھ کر اسکی کمر میں ہاتھ ڈال کر اسے اپنے ساتھ لگالیا اور بولا ۔ عظمی بس کرو اب اتنا اچھا ماحول تھا تم نے سارا خراب کردیا ۔ عظمی اپنے آنسو صاف کرتےھوے بولی ۔۔۔۔ یاسر میں کیا کروں میں روزمرتی ۔یہ جو میرے نیچے نام لکھاھے یہ ہر وقت مجھے اس واقعہ کی یاد دلاتارہتا ھے ۔۔ میں نے اسےمذید اپنے ساتھ لگاتے ھوے کہا۔۔۔ یار بھول جاو سب ۔۔۔ .عظمی میری بات کاٹتے ھوے بولی کیسے بھول جاوں ۔۔ یہ مجھے پتہ ھے کہ میں سانس بھی کیسے لے رھی ہوں میں تو خودکشی بھی نہیں کرسکتی کہ میرے ماں باپ کی بدنامی ھوجاے گی ۔ اور وہ جیتے جی مرجائیں گے ۔۔ مجھے تو اپنے اس جسم سے بھی گھن آتی ھے ہر سانس پر مجھے وہ واقعہ یاد آتا ھے جو مجھے اندر ھی اندر کھاے جا رھا ھے ۔۔ میں نےکہا عظمی تم خود کو سنبھالو ۔ دیکھو میں ھوں نہ میں انکو ایسا سبق سکھاوں گا کہ انکی آنے والی نسلیں بھی یاد رکھیں گی ۔۔بس مجھے تھوڑی مہلت دو پھر دیکھنا کہ میں کیا کرتا ھوں ۔۔۔ اور رھی یہ نام لکھے کی بات تو اسکا بھی میں کل ھی کوئی حل نکالتا ھوں تم بس اپنے آپ کو پہلے جیسی کرلو ۔ اور اس واقعہ کو ایک ڈراونا خواب سمجھ کر بھول جاو۔۔۔۔ عظمی پھر سر نیچے کر کے نفی میں ہلاتے ھوے بولی ۔ نہیں بھولتا یاسر نہیں بھولتا بہت کوشش کرکے دیکھ لی ھے ۔۔ میں نے اسکی ٹھوڑی کو پکڑا اور اسکا چہرہ اوپر کر کے اپنی طرف گھماتے ھوے کہا۔۔۔ مجھ پر یقین نہیں ھے تمہیں ۔۔۔عظمی نے اثبات میں سر ہلایا۔۔ میں نے کہا تو پھر اب میں تمہیں روتا ھوا نہ دیکھوں نہ ھی افسردہ ۔بلکہ جیسے تم پہلے تھی ہنستی کھیلتی ویسے مجھے نظر آو ۔۔۔ اگر نہیں تو پھر آج کے بعد تم میری شکل نہیں دیکھو گی ۔۔۔ عظمی پھر سر نیچے کر کے گہری سوچ میں گم ھوگئی ۔۔ میں نے کچھ دیر اسکے بولنے کا انتظار کیا اور پھر اٹھتے ھوے کہا ۔ ٹھیک ھے عظمی پھر میں یہ ھی سمجھوں کہ تمہاری نظر میں میری کوئی اہمیت نہیں ھے ۔۔میں چلتا ھوں عظمی نے جلدی سے میرا بازو پکڑ کر مجھے واپس بٹھاتے ھوے کہا ۔۔نہیں یاسر ایک تم ھی تو ھو جس پر مجھے اندھا یقین ھے اور تم بھی ایسی باتیں کرنے لگ گئے ۔۔ میں نے بیٹھتے ھوے کہا۔ تو پھر میری بات کیوں نہیں مانتی ھو۔۔ عظمی بولی اچھا اب نہیں روتی خوش ۔۔۔ میں نے کہا صرف رونا ھی نہیں افسردہ رہنا اور خود کو یوں ملنگنی جیسا بناے رکھنا بھی ختم کرو اور مجھے پہلے والی ہنستی کھیلتی عظمی چاہیے ۔۔۔ عظمی میری گالوں کو ہاتھوں میں تھام کر بولی ۔ ٹھیک ھے جیسے تم کہو گے میں ویسا کروں گی ۔ مگر میری ایک شرط سمجھ لو یا منت سمجھ لو ۔ میں نے کہا کیا ۔۔۔ عِظمی بولی ۔ تم نے ان کنجروں کے منہ نہیں لگنا اوپر والا خود ھی انکو سزا دے گا ۔۔۔ میں نے کہا مگرررر۔۔۔۔ عظمی میری بات کاٹتے ھوے بولی ۔ اگر مگر کچھ نہیں ۔ میں نے تمہاری ساری باتیں مان لی ہیں ناں۔ تم میری ایک بات نہیں مان سکتے ۔۔ میں نے مسکراتے ھوے کہا چلو ٹھیک ھے میں انکے منہ نہیں لگوں گا ۔۔ عظمی مسکراتے ھوے بولی ۔ وعدہ میں نے ہممممممم کیا تو عظمی نے ساتھ ھی اپنے ہونٹ میرے ہونٹوں پر رکھ کر میرے ہونٹوں کو ذوررررر سے چوما اور پھر چہرہ پیچھے کر کے بیٹھ گئی ۔۔۔ .2 میں چارپائی سے اٹھا اور کمرے کا دروازہ بند کر کے واپس عظمی کے پاس آگیا جو بیٹھی میری طرف دیکھ کر مسکرا رھی تھی ۔ میں نے عظمی کی کلائیوں کو پکڑ کر اسے کھڑا کیا عظمی ۔ نے سمپل سا سوٹ پہنا ھوا تھا مگر اس میں بھی اسکا جسم بہت سیکسی لگ رھا تھا ۔ اس کے جسم کے نشیب وفراز نمایاں نظر آرھے تھے ۔ ممے قمیض میں پھنسے ھوے اور تنے ھوے تھے ۔ میں نے عظمی کا دوپٹہ اتار کر چارپائی پر پھینکا اور اسکے بازوں کے نیچے سے بازو گزار کر اسکی کمر پر ھاتھ رکھ کر اسے اپنے سینے سے لگا لیا اور اسکے نرم گلابی ہونٹوں کو اپنی ہونٹوں کی گرفت میں کرکے چوسنے لگ گیا ۔عظمی کے ساتھ جپھی ڈالتے ھی میرا لن تن کر عظمی کی ناف کے ساتھ لگ گیا تھا ۔ میں نے کچھ دیر بعد ایک ھاتھ عظمی کی گردن پر لیجا کر اسکے سلکی بالوں میں انگلیاں پھیرتے ھوے اسکا اوپر والا ہونٹ چوسنے لگ گیا ۔ عظمی بھی گرم ھوچکی تھی اور وہ بھی میرے نچلے ہونٹ کو چوستے ھوے میرے ساتھ چپکتے ھوے مموں کو میرے سینے کے ساتھ مسل رھی تھی عظمی کے نرم نرم ممے میرے سینے میں دھنسے ھوے تھے ۔۔۔ ہم کچھ دیر ایسے ھی ایک دوسرے کے ہونٹ چوستے رھے کبھی میں عظمی کا اوپر والا ہونٹ چوستا تو عظمی میرا نیچے والا ہونٹ چوستی کبھی میں اسکا نیچے والا ہونٹ چوستا تو وہ میرا اوپر والا ہونٹ چوستی کبھی زبانوں کی لڑائی ھوتی تو کبھی دونوں کی سانسیں ایک دوسرے کے اندر ٹرانسفر ھوتی تو کبھی ایک دوسرے کے لباب کو نگھلتے اسی دوران میں نے عظمی کی پیچھے سے قمیض اوپر کر کے اسکی لاسٹک والی شلوار میں ھاتھ ڈال کر اسکی گول مٹول سڈول گانڈ کے چوتڑوں کو پکڑ کر مٹھیاں بھرنے لگ گیا عظمی کی گانڈ بہت ھی ملائم تھی اور کافی گوشت چڑھا ھوا تھا ساتھ ساتھ میں اپنی گانڈ کو دائیں بائیں ہلا ہلا کر لن اسکے جسم کے ساتھ رگڑ رھا تھا عظمی بھی فل مستی میں آئی ھوئی تھی اور اسکا بھی یہ ھی حال تھا وہ بھی لن پھدی کے اندر لینے کے لیے تاولی ھوتی جارھی تھی ۔ عظمی بھی ایڑیاں اٹھا کر لن کو پھدی کے ساتھ ملانے کی کوشش کررھی تھی میں تھوڑا سا نیچے ھوا اور کپڑوں کے اوپر سے ھی لن اور پھدی کا ملاپ کر دیا اب میرے ہونٹ عظمی کے ہونٹوں کو چوم اور چوس رھے تھے اور میرے سینے کے نپل صدف کی چھاتیوں کے نپلوں کو چوم رھے تھے اور نیچے سے لن اور پھدی بھی بھرپور انداز میں مشاورت کررھے تھے کچھ دیر یہ ھی سین چلتا رھا پھر ہم دونوں الگ ھوے اور عظمی اپنے ہونٹوں کو مسلتی ھوئی بولی میرے ساڑ پین لگ گیا اے یاسر پتہ نی تینوں کی ھو جاندا اے ۔میں نے کہا یار تیرے ہونٹوں کا رس ھی اتنا لزیز ھے کہ انکو چوستے دل ھی نہیں بھرتا۔۔ عظمی بولی کہیں جوش میں کھا ھی نہ جانا میں نے کہا یہ کھانے کی نہیں بس چوسنے والی شے ھے ۔ اور پھر میں نے عظمی سے پوچھا ادھر کوئی گدا نہیں پڑا عظمی بولی گدا کیا کرنا ھے میں. نے کہا یار نیچے لیٹ کر پیار کرتے ہیں چارپائی پر مزہ نہیں آتا تو عظمی نے چارپائی پر سے چادر اٹھائی اور نیچے سے گدا اٹھا کر فرش پر بچھانے لگ گئی ۔ میں نے چادر پکڑی اور گدے پر چادر درست کر کے بیچھا دی اور عظمی کو لے کر چادر کے اوپر بیٹھ گیا اور بیٹھتے ھی میں نے عظمی کو سیدھا لٹا دیا اور اسکی قمیض پیٹ سے اوپر تک کردی ۔ میں نے عظمی کے چٹے سفید ریشم سے ملائم پیٹ پر ھاتھ پھیرا تو عظمی کے منہ سے سسکاری نکلی ۔۔ میں ھاتھ سے پیٹ پر مساج کرتا ھو ھاتھ کو نیچے اسکی کمر تک لے گیا اور ھاتھ سے اسکو تھوڑا اوپر ہونے کا کہا تو عظمی نے گانڈ اٹھا کر کمر اوپر کو کی تو میں نے نیچے سے اسکی قمیض اوپر کردی اور پھر ھاتھ آگے لا کر آگے سے بھی اسکی قمیض اسکے مموں سے اوپر کردی عظمی نے سکن کلر کا بریزیر پہنا ھوا تھا میں نے اسکے مموں کو بریزیر کے اوپر سے ھی مسلنا شروع کردیا جوش میں آکر مجھ سے اسکا مما ذیادہ دبایا گیا تو عظمی نے زور سے سیییییییی کیا اور بولی یاسسسرررر آرام سے کرو میں نے ھاتھ نرم کر لیا اور پھر بریزیر کو نیچے سے پکڑ کر اوپر کردیا اور اسکے کِھلتے ھوے ممے ایکدم میرے سامنے آے میں مموں پر ایسے جھپٹا جیسے بچہ بھوک کی حالت میں مموں کو منہ مارتا ھے عظمی میرے سر کے بالوں میں انگلیاں پھیر کر سسکیاں لینے لگ گئی ۔۔ عظمی کی سسکاری سنتے ھی میں نے ایک ھاتھ اسکی شلوار میں ڈالدیا اور پھدی کو مسلنے لگ گیا ۔ جیسے ھی پھدی کو میری انگلیوں نے چھوا تو ساتھ ھی عظمی کا برا حال ھونا شروع ھوگیا اور چند لمحوں میں عظمی کی پھدی کافی گیلی ھوچکی تھی میں نے دوسرے ھاتھ سے اپنے ٹراوز کی ڈوری کھولی اور ٹراوزر نیچے کیا اور لن کو باھر نکال لیا اور عظمی کا ایک ھاتھ پکڑ کر اپنے ننگے لن پر رکھا عظی جو پہلے ھی سیکس میں چُور چُور ھوئی تھی اس نے بھی بنا کچھ کہے لن کو پکڑ لیا اور مٹھیاں بھرنے لگی ساتھ ساتھ وہ میرے لن کے سائز کو بھی ایسے ناپ رھی تھی جیسے پہلی دفعہ میرا لن دیکھ رھی ھو وہ کبھی ٹوپے کو انگلیاں لگا کر اسکی موٹائی کو چیک کرتی کبھی لن کو جڑ سے پکڑتی اور پھر ٹوپے تک ھاتھ کو لا کر لمبائی چیک کرتی میں نے عظمی کے مموں سے ہونٹ ہٹاے اور اسکی طرف دیکھ کر بولا ۔پہلے جتنا ھی ھے یا اور بڑا ھوگیا ھے ۔ عظمی نے ذور سے میرے لن کو مٹھی میں بھینچا اور بڑی سیکسی آواز میں نیم بند آنکھوں سے بولی بووتتتتت بڑاااااااا آہہہہہ میں نے مسکرا کر پھر اسکے مموں پر ہونٹ رکھ دیے اور تنے ھوے نپلوں کو باری باری چوسنے لگ گیا۔۔ میں عظمی کی پھدی مسلنے کے ساتھ ساتھ اسکی شلوار بھی نیچے کردیتا یہاں تک کہ اسکی شلوار اسکے گھٹنوں سے نیچے کردی تھی اور میں نے اپنیا ٹراوزر بھی اپنے پیروں تک نیچے کردیا تھا اور پھر اسی پوزیشن میں اپنے ٹراوزر کو پاوں کے ساتھ ھی اتار دیا اور پھر اپنی شرٹ اوپر گلے تک کی اور اپنے ننگے جسم کو عظمی کے ننگے جسم کے ساتھ ملاپ کرانے لگ گیا عظمی ابھی تک لن کو ٹٹول رھی تھی جیسے اسے ابھی تک یقین ھی نھی ھوا ھو کہ یہ واقعی پہلے جتنا ھی ھے یا پہلے سے بڑا ھوگیا ھے ۔ میں نے اپنی ایک ٹانگ عظمی کی ٹانگوں کے درمیان کی اور پاوں کے ذریعے اسکی شلوار مزید نیچے کی طرف لے گیا اور اسکے پاوں سے اتار دی عظمی کی قمیض اور میری شرٹ ھی جسم پر تھی وہ بھی دونوں کے کندھوں تک تھیں جبکہ ہم دونوں کا جسم سینے سے پیروں تک بلکل ننگا تھا میں نے عظمی کے ھاتھ میں پکڑے لن پر ھاتھ رکھ کر ہلاتے ھوے کہا اپنے اس شزادے کے ہونٹوں پر ایک کس تو کردو تو عظمی نے میرے ھونٹوں پر کس کردی میں نے کہا اس شزادے پر نہیں ۔ اور اس کے ساتھ ھی میں گھٹنوں کے بل بیٹھ گیا اور لن ہلا کر اسکے منہ کی طرف کردیا تو عظمی نے پریشان ھوکر کہا شرم کرو گندے کام مجھ سے کرواتے ھو کیا ایسے بھی کوئی گندے کام کرتا ھے تو میں نے کہا بس ایک چھوٹی سی کس کردو کچھ نھی ھوتا اور میں عظمی کی ٹانگوں سے نکل کر اسکے چہرے کے قریب آکر لن اسکے ہونٹوں کے بلکل قریب کردیا عظمی نخرے دیکھاتے ھوے نھی نھی میں سر ہلانے لگ گئ اور ہونٹوں کو مضبوطی سے آپس میں بھینچ لیا۔۔ میں نے کہا یار تم تو ایسے کررھی ھو جیسے پہلے اسکو چوما نہیں ۔۔ عظمی بولی یاسر مجھ سے یہ گندا کام نہیں ھوتا۔ میں مزید آگے کی طرف ھوا اور لن اسکے ہونٹوں پر رکھ کر اسے کہنے لگا بس ایک چمی بس بس ایک تو عظمی نے آنکھیں بند کر کے کڑوی دوائی پیتے ھوے ایک چھوٹی سے چُمی لی اور دوسری طرف منہ کر کے تھوکنے لگ گئی . اور کہنے لگ گئی گندے بےشرم گندے کام کرتے ھو میں نے کہا تم کو مجھ سے پیار نھی ھے اس لیے تمہیں یہ گندا لگتا ھے پیار کیا ھوتا ھے اور کسکو پیار کہتے ہیں یہ میں تمہیں بتاتا ھوں اور میں یہ کہتے ھی اسکی ٹانگوں کے پاس آیا اور عظمی کی دونوں ٹانگیں اوپر کی تو عظمی پھدی پر ہاتھ رکھ کر میری طرف دیکھنے لگ گئی ہاتھ ہٹاو عظمی بولی تم پھر گندا کام کرنے لگے ھو تو میں نے کہا پیار کرنے لگا ہوں یار تو عظمی نے منہ بسورتے ھوے گنداااا کہتے ھوے ھاتھ پیچھے کرلیا تو میں عظمی کی کلین شیو پھدی کو غور سے دیکھنے لگ گیا عظمی کی پھدی گیلی ھونے کی وجہ سے چمک رھی تھی میری نظر اچانک لکھے ھوے ناموں پر پڑی تو ایک دفعہ تو میرا دماغ گھوما مگر میں نے انکو نظر انداز کیا اور پھدی کے دونوں باریک سے ہونٹ جو آپس میں ملے ہوے تھے انکو غور سے دیکھنے لگ گیا ۔ اتنی بار چدنے کے باوجود بھی عظمی کی پھدی کی شیپ وہسے کی ویسی تھی اور ہونٹوں کی لمبائی بھی اتنی ذیادہ لمبی نہیں تھی میں نے اپنا ہاتھ آگے کیا اور دو انگلیاں جوڑ کر پھدی کے ہونٹوں کو کھولا تو گلابی ہونٹ تھوڑا سا کھلے اور اندر کی جلد ایسے سرخ نظر آئی جیسے سارا خون ادھر ھی جمع ھو پھدی کے شروع کے حصے میں چھوٹی سی جھلی تھی جو پیشاب کرنے کا سوراخ تھا میں نے اس جھلی کو انگلی سے دبا کر مسلنا شروع کیا تو عظمی ایک دم تڑپی اور میری کلائی کو مضبوطی سے پکڑ لیا میں کچھ دیر چھوٹی سی جھلی کے ساتھ کھیلتا رھا پھر میں نے پھدی کے قریب منہ کر کے لمبا سانس اندر کھینچ کر پھدی کو سونگھا تو مجھے بدبو سی آئی اور ابھکائی سی آنے لگی میں نے تھوڑا سا اپنا منہ پیچھے کیا اور چند لمحوں کے بعد میں نے سانس روک کر زبان باہر نکالی اور پھدی کے لبوں کے درمیان ایک چھوٹے سے ابھرے ھوے دانے کے اوپر زبان رکھ کر زبان کو اوپر نیچے کر کے چاٹنا شروع کردیا جیسے ھی میں نے یہ عمل کیا عظمی کے منہ سے آواز نکلی ھاےےےےےےےےےے میییییں مرگئیییییییی اور وہ یہ کہتے ھی ساتھ ھی اوپر کو اٹھی اور دونوں ھاتھوں سے میرے سر کو پیچھے کی طرف دھکیلا اس کے اس اچانکے دھکے سے ایک دفعہ تو میری زبان اسکی پھدی کے ہونٹون سے نکل گئی مگر میں نے اسکی ٹانگیں اپنے کندھوں پر رکھی اور اسکے بازوں کو مضبوطی سے پکڑ کے گدے کے ساتھ لگا دیا اور پھر سے پھدی کے لبوں میں زبان پھیرنے لگ گیا .عظمی ذور ذور سے سر دائیں بائیں مار رھی تھی اور اپنا آپ مجھ سے چھڑوانے کی کوشش کررھی تھی مگر میں نے اسکو قابو ھی ایسے کیا ھوا تھا کہ میرے شکنجے سے نکل ھی نھی سکتی تھی عظمی ساتھ سسکیاں اور اففففففف یاسرررررررر نہ کرو میں مرجاوں گی ھاےےےےے یاسر میری جان نکل رھی ھے یاسرررررر پلیززززززز نہ کرو ھاےےےےےے امممممممم اففففففف عظمی کی سسکیاں اور آہیں سن کر مجھے اور جوش چڑھ رھا تھا اور میں زور زور سے پھدی کو لِک کر رھا تھا کہ اچانک عظمی کی سسکیاں اور آہیں تیز ھوگئی اور اس نے بُنڈ اوپر کر کے پُھدی کو میرے منہ کے ساتھ مزید جوڑ کر اوپر کو گھسے مارنے شروع کردیا اور دونوں ھاتھ سے چادر کو مٹھی میں بھر لیا اور چند لمحوں بعد ھی اچانک عظمی نے اپنی ٹانگیں بلکل سیدھی چھت کی طرف کر کے اکڑا لیں اور اسکے ساتھ ھی عظمی کی پھدی سے ایک لمبی سی پھوار نکلی اور عظمی نے زور سے ھاےےےےےےےےے میں گئیییییییی اور اسکی پھدی سے نکلنے والی پھوار میرے منہ پر میرے ناک پر میری آنکھوں پر پڑی اس سے پہلے کے دوسری پھوار بھی میرے منہ پر پڑتی میں پیچھے کو ہٹ کر منہ کے آگے ہاتھ رکھ لیا اور باقی کی تین چار منی اور پانی کی پھواریں میرے ھاتھ پر گری اور ساتھ ھی عظمی کی پھدی کے ہونٹ کھلتے بند ھوتے ہوے گاڑھا گاڑھا پانی اگلنے لگے ۔ اور پھر عظمی بےجان ھوکر جسم ڈھیلا چھوڑ کر لیٹی لمبے لمبے سانس لینے لگ گئی کچھ دیر بعد عظمی کچھ سنبھلی تو میں اسکی ٹانگوں کے درمیان اسکے اوپر لیٹ کر اپنا منہ اسکے منہ کے قریب کیا تو اچانک اس نے میرے دونوں کانوں کو اپنی مٹھیوں میں بھینچ کر ذور سے میرے سر کو ہلاتے ھوے کہا یاسررررررر تم نے باز نہیں آنا اس گندے کام سے تو میں نے مسکرا کر کہا دیکھ لیا میرے پیار کا ثبوت اسے کہتے ہیں پیار تو عظمی نے ویسے ھی میرے کان پکڑے میرا منہ اپنے منہ کے قریب کیا اور ایک لمبی سی فرنچ کس کی اور میرے کان چھوڑ دیے ۔۔ میں نے عظمی کو کہا اب کیا پروگرام ھے ۔ عظمی میری طرف غور سے دیکھتے ھوے بولی کون سا ۔۔۔ میں نے لن اسکی آنکھوں کے سامنے لہراتے ھوے کہا ۔ اپنے شزادے کے ساتھ لاڈیاں کرنے کا ۔۔۔ عظمی جلدی سے اٹھ کر بیٹھ گئی ۔ تو میں نے اسے قمیض اور بریزیر اتارے کا کہا تو عظمی نے جھٹ پٹ میں دونوں چیزیں اتار کر ایک طرف رکھیں ۔ .تو میں نے بھی اتنی دیر میں اپنی شرٹ اتار کر اایک طرف رکھ دی اب ہم دونوں مادر ذاد ننگے تھے ۔۔۔ عظمی کا جسم انڈے کی طرح سفید تھا اور چمک رھا تھا ۔ بیشک اسکے چہرے کی ککش پہلے جیسی نہیں رھی تھی ۔ مگر اسکا فگر اور جسم کی رنگت ویسی کی ویسی دودھیا تھی ۔۔۔ میں گھٹنوں کے بل تنے ھوے لنڈ کے ساتھ بیٹھا ھوا تھا کہ عظمی بڑی ادا سی میری طرف بڑھی اور میرے سینے پر دونوں ھاتھ رکھ کر مجھے پیچھے کی طرف دھکیل کر لیٹاتے ھوے میری سیدھی ٹانگوں پر گانڈ رکھ کر بیٹھ گئی اور پھر میرے لن کو مٹھی میں پکڑ سہلاتے ھوے لن کی مٹھ مارنے لگ گئی ۔ اور پھر میری ٹانگوں سے پیچھے کو کھسکی اور جھکتے ھوے زبان نکال کر میرے لنڈ کے ٹوپے کے چاروں اطراف پھیرتے ھوے اپنی پلکوں کو اٹھا کر میری طرف دیکھ دیکھ کر زبان ٹوپے پر پھیرنے لگ گئی ۔۔ عظمی کی زبان کا لمس پاتے ھی میرے منہ سے سیییی نکلا تو عظمی نے ساتھ ھی ٹوپے کو لبوں میں بھر کر چوسا لگایا افففففففففف کیا مزہ تھا عظمی کے چوسے کا۔۔ پھر عظمی لن کو جتنا منہ میں لے سکتی تھی اتنا لن منہ میں لے کر منہ کو اوپر نیچے کرتے ھوے چوپا لگانے لگ گئی ۔ کچھ دیر یہ ھی سین چلتا رھا ۔ چوپے سے میرے لن کی رگیں پھول کر ہھٹنے والی ھوچکی تھی ۔ دس پندرہ منٹ تک عظمی لگا تار لن کو ہر ذاویعے سے چوستی چاٹتی رھی ۔ اور پھر آگے کو کھسک کر اپنی گانڈ میرے لن کے قریب رکھی اور پھر گانڈ اٹھا کر میرے اوپر جھک کر اپنے ممے میرے منہ کے قریب کردیے ۔ میں نے جلدی سے منہ کھولا اور باری باری دونوں مموں کو چوسنے لگ گیا ۔ عظمی منہ چھت کی طرف کر کے سییییییییی اففففففففف آیہہہہہہہ کرنا شروع ھوگئی عظمی مزے لے لے کر خود اپنے ممے کو پکڑے نپل کو میرے منہ ڈال رھی تھی میرا لن بھی فل تنا عظمی کی پھدی کو گھور رھا تھا جو لن کے ٹوپے سے چند فاصلے پر لن جو ترسا رھی تھی ۔ میں نے عظمی کی کمر کو پکڑا اور اسے اوپر کیا تو عظمی نے اپنی پھدی میرے لن سے مذید تھوڑی اوپر کی میں نے عظمی کو کہا تھوڑا پیچھے ھو جاو عظمی ڈوگی سٹائل میں ھی پیچھے ھوئی اور پھدی کو لن کے اوپر کر دیا میں نے ہاتھ نیچے لیجا کر لن کو جڑ سے پکڑا اور عظمی کی پھدی کے ہونٹوں کے بیچ سیٹ کرنے لگ گیا عظمی سمجھ گئی تھی اب کالا ناگ پھدی کا ستیاناس کرنے لگا ھے تو عظمی نے جھٹ سے پھدی کو لن سے اوپر کیا اور خود ہاتھ نیچے کر کے لن سے میرا ھاتھ ہٹا کر خود لن کو پکڑتے ھوے بولی یاسر میں خود اندر کروں گی تم پلیز دھکا نہ مارنا نھی تو میری چیخ کمرے سے نکل کر باہر گلی تک جانی ھے میں نے بھی لن کو چھوڑ دیا اور اسکی کمر کو دونوں طرف سے پکڑ لیا عظمی نے لن کی ٹوپی کو پھدی کے لبوں میں اچھی طرح پھیر کر پھدی کے پانی سے گیلا کیا اور لن کو پھدی کے سوراخ پر رکھ کر آہستہ آہستہ نیچے بیٹھنے لگ گئی آدھا لن عظمی نے پھدی میں آہ آہ آہ اوییییی کرتے لے لیا اور پھر گانڈ کو اٹھا ااٹھا کر اوپر نیچے کرتے ھوے آدھے لن کا ھی مذہ لینے لگ گئی ۔ میں بھی نیچے سے گانڈ اٹھا کر لن مذید اندر کرنے کی کوشش کرتا مگر عظمی ساتھ ھی اوپر ھو جاتی اور کہنے لگ جاتی یاسر تم کچھ مت کرو آج میں خود ھی کروں گی میں ہمممم کر کے عظمی کے مموں کو ھاتھ میں پکڑ کر سن سے کھیلنے لگ گیا ۔ کچھ دیر ایسے ھی عظمی آدھے لن پر اوپر نیچے ھوتی رھی اور میں عظمی کے دونوں مموں کو باری باری دباتا اور نپلوں کو مسلتا رھا عظمی نے آہستہ آہستہ پورا لن پھدی کے اندر اتار لیا اور ٹانگیں میری ٹانگوں کے اوپر لمبی کر کے پورا لن اندر لے کر میرے اوپر لیٹ گئی اور بڑے فخر سے سیکسی اواز میں بولی یاسر سارا چلا گیا نہ اندر میں نے اثبات میں سر ہلا کر اوکے کیا .عظمی نے مجھے کس کر جپھی ڈال کر گانڈ کو اوپر نیچے کر کے آہستہ آہستہ گھسے مارنے شروع کردئے میں نے دونوں ھاتھ عظمی کی گانڈ پر رکھ کر گانڈ کو بھینچنے لگ گیا عظمی جیسے ھی گانڈ اوپر کرتی تو میں ھاتھوں کا دباو دے کر گانڈ کو لن کی طرف جھٹکے سے دبا دیتا عظمی ھاےےے کرتی اور مدہوش آواز میں کہتی یاسر بڑا مزہ آرھا ھے ھممممم افففففف آہ آہ آہ میں اسکی ایسی مدہوش آواز میں سیکسی باتیں سن کر جوش میں آجاتا اور زور زور سے گانڈ کو ھاتھوں میں دبوچ دبوچ کر نیچے کی طرف دباتا کچھ دیر بعد عظمی نے گھسے مارنے کی سپیڈ تیز کردی اور ساتھ ھی مدہوشی میں بولے جارھی تھی ہاں یاسر ایسے کرو ایسے ھی آہہہہہ آہ ھممممم سسسسسسیییی یاسر سارا کرو اور میں نیچے سے گانڈ اٹھا کر پورے ذور سے لن کو پھدی کے اندر تک کر دیتا عظمی نے گھسے مارنے بند کردئے اور لن کو پھدی میں جکڑ کر میرے اوپر سے کھسک کر پاوں کی طرف چلی گئی جس سے میرا لن پھدی کی ہڈی کے ساتھ لگ گیا میرا لن بری طرح پھدی میں جکڑا ھوا تھا ا عظمی لن کو پھدی میں جکڑ کر سانپ کی طرح بل کھاتے ھوے گانڈ کو ہلا رھی تھی اور مزید لن پر ہڈی کو رگڑ رھی تھی اور پیچھے جانے کی کوشش کررھی تھی میری تو درد سے جان نکلنے والی ھوگئی مجھے ایسے لگ رھا تھا کہ پھدی کی ہڈی نے میرے لن کو توڑ دینا ھے میں نے دونوں بازو لمبے کیے اور عظمی کی گانڈ کو دبوچ کر آگے کی طرف زور لگانے لگ گیا عظمی کی سانسیں بری طرح اکھڑی ہوئی تھیں اسکے ممے میرے سینے میں پوست تھے عظمی بس ایک بات ھی کری جارھی تھی یاسر بُوتتتتت مزہ آرھا ھے کہاں تھا یہ مزہ سییییی ہممممم آہہہہہہہہ عظمی ایسے کرتی کرتی یکدم اپنی ٹانگوں کو بھینچ کر لن کو پھدی میں مزید جکڑ لیا اور میرے ہونٹوں کو بےدردی سے اپنے دانتوں سے کاٹتے ھوے رک کر گانڈ کو پورے زور سے میرے لن کی طرف دبا دیا اور اپنے جسم کو زبردست جھٹکے دینے لگ گئی پانچ منٹ تک عظمی ایسے ھی میرے اوپر لیٹی رھی ۔۔ جب عظمی اچھی طرح نارمل ھوئی تو میں نے عظمی کو تھوڑا اوپر کیا اور اسکی ٹانگوں کو دونوں طرف سے پکڑ کر آگے کی طرف کھینچ کر اسے اپنے اوپر گھوڑی کی شکل میں کردیا۔ عظمی نے دونوں بازوں گدے پر کہنیوں کے بل کیے اور گھٹنوں کے بل گانڈ اوپر کر کے لن کے کچھ فاصلے پر پھدی کو کرلیا ۔ میں نے اسکےدونوں چوتڑوں پر ھاتھ رکھے اور نیچے سے اپنی گانڈ اٹھا کر لن عظمی کی پھدی میں ڈال کر اوپر کی طرف گھسے مارنے شروع کردیے میں جیسے جیسے گانڈ اٹھا کر گھسے مارتا عظمی کے ممے میرے منہ کے سامنے ہلتے میرا لن پھدی کی گہرائی تک جا رھا تھا میرے ھاتھ عظمی کی گانڈ کو دبوچ کر گانڈ کو نیچے کی طرف پُش کررھے تھے میری انگلیاں ساتھ ساتھ عظمی کی گانڈ کے دراڑ میں جاکر گانڈ کے سوراخ کا مساج بھی کرتی جارھی تھی عظمی نے بھی یس یس اففففف اممممم کرنا شروع کردیا ۔ جس سے میرا جوش مذید بڑھ رھا تھا عظمی کی سسکاریاں میرے لطف میں مذید اضافہ کرتی جارھی تھی عظمی کی پھدی کافی گیلی تھی اور اسکی پھدی سے نکلنے والی منی میرے لن پر ھی لگ گئی تھی جس کی وجہ سے لن پھدی میں فراوانی سے اندر باھر ھو رھا تھا میں گھسے مارنے کے دوران اپنا سر اونچا کر کے عظمی کے ممے کو بھی چوم لیتا میرے گھسوں سے ہلتے ممے کمال لگ رھے تھے اس کے مموں کی تھرتھراہٹ سے مجھے اپنے گھسوں کی شدت کا اندازہ ھورھا تھا کچھ دیر بعد میں گھسے مار مار کر تھک گیا عظمی بھی پھر فارغ ھونے کے قریب تھے میرے گھسوں کی رفتار کم ھوئی تو عظمی پھدی کو نیچے کی طرف پُش کرنے لگ گئی اور پھر عظمی کی سسکیاں اور پھدی کو لن پر پُش کرنے کی رفتار تیز سے تیز تر ھوتی ھوگئی اور پھر عظمی نے پورا وزن میرے لن پر ڈال کر لن کو پھدی کی گہرائی تک پہنچا دیا اور میرے ساتھ چمٹ گئی اور اسکا جسم جھٹکے کھانے لگا عظمی کی منی کی دھاریں میرے ٹوپے سے ٹکرا رھی تھی ۔ عظمی لمبے لمبے سانس لیتی ھوی میرے اوپر سے دوسری طرف گر گئی اور دونوں ھاتھ اپنے منہ پر رکھ کر افففففففففف ھاےےےےےےے ھوے ھوے ھوے کرنے لگ گئی .میں جلدی سے اٹھا اور عظمی کی ٹانگوں کے درمیان آیا اور عظمی کی ٹانگیں اٹھا کر اسکے گھٹنے اسکے پیٹ کے ساتھ لگا دیے اور لن کو پھدی پر سیٹ کر کے ایک دھکے میں سارا لن پھدی کے اندر اتار دیا عظمی نے اپنے منہ پر ھاتھ رکھتے ھوے ابھھھھھپھھھھ کیا اور ذور ذور سے سر دائیں بائیں مارنے لگی اسکے چہرے پر تکلیف کے اثار نظر آرھے تھے عظمی منہ سے ہاتھ ہٹا کر آہستہ سے بولی یاسر ررررررر مجھ پر ترس کھاو میں نے اسکو کوئی جواب نہ دیا اور لن کو باہر کھینچ کر پھر ویسے ھی ذور سے اندر کیا میرا لن اسکی ریڑھ کی ہڈی سے ٹکرایا تو عظمی نے بری طرح اپنے ہونٹوں اور آنکھوں کو بھینچ اور میرے سر کے بالوں کو ذور سے پکڑ کر میرا سر ہلاتے ھوے بولی یاسرررررررررر پلیزززززز آرام سے بہت درد ھورھا ھے میں نے گھسے مارتے ھوے عظمی کو جپھی ڈال لی عظمی کے ممے میرے سینے کے ساتھ چپکے ھوے تھے اور میں اسکی گالوں کو چومتا اور ہونٹوں کو عطمی نے اپنے دونوں ھاتھ میری کمر پر رکھے ھوے تھے ۔ میں دس پندرہ منٹ عظمی کو ایسے ھی چودتا رھا اور پھر میری سپیڈ تیز ھوئی اور عظمی کی سیکسی آوازیں بھی نکلنا شروع ھوگئے اس سے پہلے کہ میرا لن عظمی کی پھدی کو منی سے بھرتا میں نے ھاتھ نیچے کیا آخری جاندار گھسہ مارا اور لن کو باہر نکال کر پھدی کے اوپر ھی ساری منی نکال دی کچھ دیر بعد دونوں ریلیکس ھو کر اٹھنے ھی لگے تھے کہ اچانک ۔۔۔۔
  5. 1 like
  6. 1 like

    Version 1.0.0

    18 downloads

    گٹھ جوڑ از گرو سمراٹ

    $1.00

  7. 1 like
  8. 1 like
  9. 1 like

    Version 1.0.0

    6 downloads

    میٹنگ از ڈاکٹر فیصل خان

    $1.00

  10. 1 like
  11. 1 like
    Wah Sheikho Bhai kamal ki upadate hn !! Ab is achanak ke agi ke bhi update de do !!
  12. 1 like
  13. 1 like
    ویلکم ڈیئر
  14. 1 like
    very nice update . xhekho g Tabeyat theak aay na. update thori late di hai. jnab apna khyal rakha kro or hamara b. jaldi jaldi update diya krain. take care ummmah love you dear
  15. 1 like
    update.. .چیخ اتنی ذوردار تھی کہ اگر کوئی آس پاس ہوتا تو ضرور سنتا۔۔ میں جو فارغ ہونے کے مزے میں ڈوبا ہوا تھا ۔ چیخ کی آواز سے ایک دم گبھرا گیا۔ اس سے پہلے کہ میرے ہوش وحواس قائم ہوتے کہ دوسری چیخ کے ساتھ ھی ثانیہ کی آواز میرے کانوں میں گونجی ۔ آآآآآآآآآآآآئی مرگئ ییییییییییییی ھاےےےےےےےے میری بُنڈ پاٹ گئی ۔۔۔ امیییی جییییییی میں مرگئ جے ےےےےےےے اور ثانیہ نے پورے ذور سے مجھے پیچھے کو دھکا دیا ۔ اور ساتھ ھی پُچ کے آواز کے ساتھ میرا لن ثانیہ کی گانڈ کی موری سے نکل گیا۔۔۔ تو مجھے ایک سیکنڈ میں سارا ماجرا سمجھ آگیا۔ کہ چھوٹتے وقت میں نے لن ثانیہ کی گانڈ کے دراڑ میں ڈالا تھا اور سارا وزن اس پر ڈال کر مزے میں ڈوبا اپنی گانڈ کا ذور آگے کو لگا بیٹھا جس کی وجہ سے منی سے چکنی ثانیہ کی گانڈ کی موری میں لن گھس گیا۔۔۔۔ ثانیہ کے دھکے سے میں گبھراے ھوے پیچھے کو گرتا گرتا بچا ۔ اور ادھر ادھر دیکھنے لگ گیا۔ ثانیہ گانڈ پر ھاتھ رکھے گانڈ کو بائک کی سیٹ کے ساتھ لگا کر آگے کو جھکی رو رھی تھی ۔۔ میں کچھ دیر پریشانی کی عالم میں کھڑا کبھی ثانیہ کی طرف دیکھتا تو کبھی چاروں اطراف دیکھتا کہ کسی نے ثانیہ کہ چیخ نہ سن لی ھو۔۔ مگر چاروں اطراف ہو کا عالم تھا ۔ رات کے اندھیرے نے ہر طرف سیاہ چادر اوڑھ رکھی تھی ۔ میں نے جلدی سے پہلے اپنی پینٹ اوپر کی اور بیلٹ باندھ کر ثانیہ کی طرف بڑھا ۔ جو ابھی تک جھکی ھوئی ھاےےےےے مر گئی کرتے ھوے رو رھی تھی ۔۔اور ساتھ ساتھ گانڈ کو سیٹ کے ساتھ مسل رھی تھی ۔میں آگے بڑھا اور اسے کے کندھوں کو پکڑ کر اسے سیدھا کرتے ھوے سوری بولنے ھی لگا تھا کہ ثانیہ نے جھٹکے سے میرے ھاتھوں کو پیچھے جھٹکتے ھوے بولی ۔ دور رھو مجھ سے ۔جاہل گنوار خبردار مجھے چھوا بھی ۔۔ میں ہکا بکا پیچھے ہٹ کر کھڑا ھوگیا ۔۔ ثانیہ مجھے برا بھلا کہہ کر نیچے جھک کر اپنا پاجامہ اوپر کرنے لگ گئی ۔۔۔ میں نے پھر دور کھڑے ھی کہا ۔ ثانیہ سوری یار مجھے پتہ نہیں چلا غلطی سے ہوگیا۔۔ ثانیہ پھر غصے سے بولی بکواس بند کرو ایڈیٹ ۔۔ مجھے اسپر غصہ تو بہت آیا مگر میں خود پر کنٹرول کرتے ھوے بولا ۔ ثانیہ تمہارا غصہ بجا ھے جو مرضی کہہ لو جتنی مرضی گالیاں دے لو ۔ مگر قسم سے میں نے جان بوجھ کر اندر نہیں کیا ۔ بس غلطی سے اندر چلا گیا۔۔ میں تمہاری تکلیف سمجھ سکتا ھوں پلیز غصہ تھوک دو۔۔ ثانیہ اپنا دوپٹہ سر پر لے کر دوپٹے کو درست کرتے ھوے بولی ۔ مجھے پہلے پتہ ھوتا کہ تم ابھی بھی جاہل کہ جاہل ھی ھو تو تم کو کبھی پاس نہیں آنے دیتی ۔ چلو مجھے گھر چھوڑ کر آو ۔۔۔ اور یہ کہتے ھوے بڑی حقارت سے میری طرف دیکھ کر درختوں سے نکل کر سڑک کی طرف جانے لگ گئی ثانیہ کی بات سن کر میرے اندر غصے کی چنگاریاں سلگنے لگ گئیں کہ گشتی کی بچی میں آکڑ کتنی ھے ۔ میرا دل تو کررھا تھا کہ اس گشتوڑ کو ادھر ھی چھوڑ کر گھر چلا جاوں ۔ مگر پھر ضوفی کا خیال آتے ھی میں نے غصے سے ہنکارا بھرا اور بائک کو بغیر سٹارٹ کیے ثانیہ کے پیچھے پیچھے چل پڑا۔۔ سڑک پر پہنچ کر میں نے بائک سٹارٹ کی تو ثانیہ بڑے آرام سے گانڈ سیٹ ہر رکھ کر میرے پیچھے مجھ سے فاصلہ رکھ کر بیٹھ گئی ۔۔۔ میں نے بھی اس سے کوئی بات نہ کی ۔ اور بائک آگے بڑھائی اور کالونی کی طرف چل پڑا میں اب بائک سپیڈ سے چلا رھا تھا اور کچھ ھی دیر میں ۔ میں ثانیہ کے دروازے پر تھا ۔ ثانیہ خاموشی سے اتری اور ٹانگیں چوڑی کرکے چلتی ھوئی دروازے پر پہنچی میں کھڑا اسے دیکھ رھا تھا ۔کہ یہ گھر میں داخل ھوجاے تو ھی میں جاوں ثانیہ نے گردن گھما کر میری طرف دیکھا اور غصے سے بولی ۔ اب جاو بھی ادھر کھڑے کیا کررھے ھو ۔ میں نے غصے سے ایک نظر اس پر ڈالی اور بڑی پھرتی سے بائک کو ادھر کھڑے کھڑے ھی گھمایا اور بڑی سپیڈ سے بائک کو بھگا کر اسکی گلی سے نکلا ۔ میں نے پیچھے مڑ کر بھی نہ دیکھا کہ ثانیہ اتنی رات کو سنسان گلی میں اکیلی باہر کھڑی ھے ۔ میں گلیوں سے نکل کر مین روڈ پر آیا تو فل سپیڈ سے بائک کو بھگاتا ھوا ضوفی کے گھر کی طرف جانے لگا۔ میں کوئی دس پندرہ منٹ میں ۔ ضوفی کے گھر کے سامنے کھڑا تھا۔ میں نے بائک روکی اور بائک سے اتر کر گیٹ کی طرف بڑھا اور میں ابھی بیل پر ہاتھ لیجانے ھی لگا تھا کہ گیٹ کھلا اور ضوفی کا مسکراتا ھوا چہرہ مجھے نظر آیا۔۔ میری جب ضوفی سے نظر ملی تو ضوفی بولی اتنی دیر لگا دی ۔۔ میں نے کہا یار بائک پنکچر ھوگئی تھی ۔۔۔اور بڑی مشکل سے پٹرول پمپ پر پینکچر والے سے پنکچر لگوایا۔ اور میں ضوفی کا جواب سنے بغیر ھی واپس مڑا اور بائک اندر لے آیا ضوفی نے گیٹ بند کیا ۔۔ تو میں اور ضوفی آگے پیچھے چلتے ڈرائنگ روم میں پہنچے تو میں نے ماہی کا پوچھا تو ضوفی بولی وہ تمہاری لاڈلی اوپر تمہارے دیے ھوے گفٹ دیکھ رھی تھی ۔ میں تو کب کی نیچے بیٹھی تمہارا انتظار کررھی تھی ۔۔۔ میں نے کہا چلو اوپر ھی چلتےہیں ۔۔ اور یہ کہتے ھوے میں اور ضوفی آگے پیچھے سیڑھیاں چڑھتے ھوے کمرے میں پہنچے تو ۔ ماہی بیڈ پر ٹانگیں سیدھی کر کے بیڈ کے ساتھ ٹیک لگائے نیم دراز ہوکر بک پڑھ رھی تھی ۔ ہمیں دیکھ کر ماہی نے جلدی سے اپنی ٹانگوں کو سمیٹا اور بک بند کر کے سائڈ ٹیبل پر رکھ دی ۔۔ اور بولی ۔ یاسر بھائی اتنی دیر کہاں لگا دی ۔۔ میں نے پنکچر والی بین اسے بھی سنائی ۔۔۔ تو ماہی بولی ۔ بائک پنکچر تو ہونی ھی تھی ساتھ جو کرماں والی گئی تھی ۔۔۔ ضوفی ماہی کو جھاڑتے ھوے بولی ۔ ماہی تمیز نہیں ھے تمہیں بات کرنے کی ۔۔ وہ میری فرینڈ ھے اور ہماری مہمان بھی تھی ۔۔۔ ماہی بولی ۔ آپی مجھے تو وہ ذہر لگتی ھے ندیدی ھے ایک نمبر کی اور شوخی بھی بہت ھے پتہ نہیں خود کو کیا سمجھتی ھے آپکو پتہ نہیں اس میں کیا نظر آتا ھے ۔۔ آپ نے دیکھا نہیں تھا کیسے بھائی کو بار بار گھور گھور کر دیکھ رھی تھی ۔۔ ماہی کی بات سن کر میں ایک دم چونکا ۔ کہ اسے کیسے پتہ چل گیا کہ باتوں کے دوران ثانیہ مجھے بار بار دیکھ رھی تھی ۔ ضوفی بولی ۔ ماہی شرم کرو شرم یاسر کیا سوچے گا ۔۔۔ وہ میری فرینڈ ھے اور میں اسے تم سے ذیادہ جانتی ھوں ۔ وہ ایسی چھچھوری لڑکی نہیں ھے ۔۔ میں نے موقعہ کا فائدہ اٹھاتے ھوے جلتی پر تیل ڈالنے کا سوچا ۔ کیوں کہ میں بھی اب نہیں چاہتا تھا کہ ضوفی اس سے ملے یا وہ انکے گھر آے ۔۔ کیونکہ اسکے دل میں ان فرشتہ صفت لوگوں کے لیے جو میل تھی وہ میں دیکھ چکا تھا۔۔۔ میں جلدی سے بولا ۔۔ ضوفی ۔۔ماہی صحیح کہہ رھی ھے مجھے بھی وہ لڑکی صحیح نہیں لگی بہت اوور ایکٹ کررھی تھی ۔ اور مجھے ایسی لڑکیوں سے سخت نفرت ھے ۔۔ تو ماہی جلدی سے بولی دیکھا آپی اب یقین آگیا اب تو بھائی نے بھی گواہی دے دی ھے ۔۔۔ ضوفی میری طرف حیرانگی سے دیکھتی ھوئی بولی ۔ مگر یاسر مجھے تو وہ ایسی لڑکی نہیں لگتی میں تو بہت عرصہ دراز سے اسے جانتی ہوں وہ بیچاری تو پہلے ھی بڑی پریشان ھے اپنے خاوند کی وجہ سے ۔۔۔ ۔میں نے کہا یار کچھ بھی ھے مگر وہ مجھے بلکل بھی پسند نہیں ھے ۔۔۔ ضوفی سنجیدہ سی ھوکر میرے قریب آئی اور میرے کندھے کو پکڑ کر بولی ۔۔ کیا ھوا یاسر اس نے راستے میں کوئی بات کی ھے ۔۔۔ میں نے آخری وار کیا۔۔ اور بولا دفعہ کرو ضوفی. میں نہیں چاہتا کہ تمہاری اس کے ساتھ منہ ماری ھو اس لیے بہتر یہ ھی ھے کہ تم اس سے جتنا دور رھو اتنا ھی بہتر ھے ۔۔۔ میرے سسپنس سے ضوفی مذید پریشان ھوگئی اور ماہی بھی چونک کر میری طرف دیکھنے لگ گئی ۔۔۔ ضوفی نے دوسرا ہاتھ بھی میرے کندھے پر رکھا اور میرے کندھوں کو ہلاتے ھوے بولی ۔۔ یاسر بتاو کیا بات ھوئی ۔۔۔۔ میں نے کہا کچھ نہیں یار دفعہ کرو۔۔۔ ضوفی کا منہ رونے والا ھوگیا اور روہانسے لہجے میں بولی ۔۔ یاسر پلیززز بتاو کیا ھوا ھے اس نے کیا کہا ھے تمہیں ۔۔۔ میں نے ضوفی کے کندھوں کو پکڑا اور بولا کچھ نہیں ھوا یار ایسے پاگل مت بنو فضول میں بات کو بڑھا رھی ھو ۔۔۔ ضوفی کی آنکھوں سے ٹپ ٹپ کرتے آنسو گرنے لگے اور اسکے دونوں ہاتھ میرے کندھوں سے میری گالوں پر آگئے اور میری گالوں کو سہلاتے ھوے میری آنکھوں میں غور سے دیکھتے ھوے بولی ۔ یاسر مجھ سے تم کچھ چھپا رھے ھو ۔۔۔ پلیززز بتاو کیا بات ھے میرا دل بیٹھا جارھا ھے ۔۔۔ میں نے ہنستے ھوے ضوفی کی گالوں کو تھاما اور اسکے آنسو صاف کرتے ھوے بولا۔۔ ہے ناں پاگل رونے لگ گئی ۔۔ میں تو مزاق کر رھا تھا ۔۔۔ اور میں نے ماہی کی طرف دیکھتے ھوے کہا دیکھو ماہی تمہاری آپی بچوں کی طرح رو رھی ھے ۔۔۔ ضوفی میرے ھاتھ اپنی گالوں سے ہٹاتے ھوے بولی ۔۔ یاسر میں مزاق کے موڈ میں نہیں ھوں تمہیں میری قسم بتاو اس نے تمہیں کیا کہا ھے ۔۔۔ دوستو ضوفی سے مجھے واقعی سچا پیار تھا ۔۔ بیشک میں اس فرشتہ کے لائک نہیں تھا ۔ اور باہر بھی منہ ماررھا تھا ۔ .مگر ضوفی کے بارے میں میری فیلنگ بلکل ایک سچے عاشق جیسی تھی ۔ سچے سے مراد کہ مجھے اس کے جسم کی طلب نہیں تھی نہ ھی اس کو دیکھ کر میرے اندر شہوت جنم لیتی تھی ۔۔ ضوفی کو دیکھ کر مجھے سارے جہاں کا سکون مل جاتا تھا اور اس میں مجھے اپنائیت سچا پیار خلوص محبت صدق دلی دیکھائی دیتی تھی ۔۔۔ یہ ھی وجہ تھی کہ ضوفی نے جب مجھے اپنی قسم دی تو مجھے ایک دم جھٹکا لگا اور اس بات کا احساس ہوا کہ جلتی پر تیل پھینکنے سے انسان خود بھی آگ کی لپٹ میں آجاتا ھے اب میں سوچنے لگ گیا کہ ضوفی نے مجھے اپنی قسم دے دی ھے اب اسے کیا بتاوں ۔۔ میں ان ھی سوچوں میں گم تھا کہ ضوفی پھر مجھے جھنجھوڑتے ھوے بولی یاسررررررر بتاو اس نے کیا کہا ھے تمہیں ۔۔۔ اگر نہ بتایا تو میرا مرا ھوا منہ دیکھو گے ۔۔ ضوفی کے منہ سے مرا ھو کا لفظ سن کر مجھے ایسے لگا کہ جیسے میرے دل پر کسی نے چھری سے وار کردیا ھو ۔۔ میں نے تڑپ کر اسکے ہونٹوں پر ہاتھ رکھا اور روہانسے لہجے میں بولا مریں تمہاریں دشمن ۔۔۔ پاگل لڑکی اب ایسی بکواس کی تو میں نے تم سے کبھی بات بھی نہیں کرنی ۔۔۔ تو ضوفی بولی ۔ پھر بتاو کیا کہا ھے اس نے تمہیں جو تم اس سے اتنے بدزن ھوگئے ھو ۔۔ ماہی بھی ماحول کی سنجیدگی کو دیکھتے ھوے بیڈ سے نیچے اتر کر ہم دونوں سے کچھ فاصلے پر کھڑی ھوگئی تھی ۔۔ میں نے ضوفی کو کندھوں سے پکڑ کر بیڈ پر بٹھاتے ھوے کہا اچھا بیٹھو بتاتا ھوں ۔۔۔ اور ماہی کو کہا کہ جاو پانی لے کر آو۔۔ ماہی جلدی سے سیڑیاں اترتی ھوئی نیچے چلی گئی اور میں ضوفی کے ساتھ بیڈ پر بیٹھ کر ہاتھ سے اسکے آنسو صاف کرنے لگ گیا۔۔ ُچند لمحوں بعد ھی ماہی پانی کا گلاس لے کر کمرے میں داخل ھوئی اور گلاس ضوفی کی طرف بڑھایا تو میں نے ماہی سے گلاس پکڑ کر ضوفی کے لبوں سے لگایا تو ضوفی نے ایک گھونٹ بھرا اور گلاس خود پکڑ کر پانی پینے لگ گئی ۔۔ ماہی کھڑی ہمیں دیکھ کر مسکرا رھی تھی ۔۔ میں نے ماہی کی طرف دیکھا اور بولا ۔۔ تیریاں کیوں دندیاں نکلن دیاں نے ۔۔۔ پین تیری نوں رونا آئی جاندا اے تے تینوں ہاسے پئئے آندے نے ۔۔۔ مہری منہ پر دونوں ھاتھ رکھ کر ہنسی کو دباتے ھوے دوسری طرف منہ کر کے کھڑی ھوگئی ۔۔۔ میں نے پھر ضوفی کو مخاطب کرتے ھوے کہا۔۔ دیکھو ضوفی اس دور میں ہر ہاتھ ملانے والا دوست نہیں ھوتا ۔ بیشک تم مجھ سے ذیادہ سمجھدار ھو پڑھی لکھی ھو اور زندگی کے تلخ دور سے بھی گزر چکی ھو تمہارا تجربہ بھی مجھ سے ذیادہ ھے ۔ مگر دھوکا وہ ھی کھاتا ھے جو ہرکسی پر آنکھ بند کرکے بھروسہ کرلیتا ھے ۔۔ تم جسے اپنی دوست سمجھ رھی ھو ۔ اس کے دل میں تمہارے لیے بہت بغض حسد ھے ۔ وہ تمہاری ترقی سے ھی بہت جیلس ھے ۔ راستے میں میرے ساتھ تمہاری برائیاں ھی کرتی جارھی تھی ۔ کہ تم سہی لڑکی نہیں ھو تمہارے پاس اتنی دولت کیسے آئی ۔ اور میں تم سے بچ کر رھوں وغیرہ وغیرہ۔۔ میری باتیں سن کر ضوفی کا گلابی چہرہ سرخ ٹماٹر کی مشابہت اختیار کرتا جارھا تھا۔۔ میری بات مکمل ھوتے ھی ۔۔ ضوفی ایکدم کھڑی ھوئی ۔ .اور غصے سے پھنکارتے ھوے بولی ۔۔ آ لین دے ایس سوراں یاؤن نوں ایدا چُوتھا میں پُناں گی ۔۔ گندی رن کسے تھاں دی ۔۔۔ میں ضوفی کے منہ سے پنجابی میں گالیاں سن کر حیران پریشان اسکا منہ دیکھنے لگ گیا۔۔ اور ماہی بھی دونوں ھاتھ منہ پر رکھ کر ہنستے ھوے بولی اووووو ھاےےےےےے آپی کیا ھوگیا ھے آپ کو توبہ توبہ توبہ ۔ ویری بیڈ لینگوئج ۔۔۔ ضوفی نے غصے سے ماہی کی طرف دیکھا اور بولی ۔۔ بےجا ایڈی توں انگریز دی تی۔۔۔۔۔ میں نے ہنستے ھوے کہا۔۔۔ واہ جی واہ میری بیگم نوں تے پنجابی وی بالی چنگی آندی اے میں تے جماں ای نئی کُسکاں گا اپنی بیگم دے اگے ۔۔۔ ضوفی میرا سٹائل دیکھ کر غصے میں بھی ہنس پڑی ۔۔۔ اور سر پکڑ کر صوفے پر ڈھیر ہوگئی ۔۔۔۔ ماہی بھی صوفے پر ھی بیٹھ گئی ۔ اور کچھ دیر ثانیہ کے ٹاپک پر ہات ھوتی رھی ۔۔ میں نے ضوفی کو فل اسکے خلاف بھڑکا دیا تھا اور اس سے وعدہ بھی لیا تھا کہ وہ اس سے کوئی بھی ایسی ویسی بات نہیں کرے گی بلکہ اسے اس طریقہ سے چھوڑے گی کہ اسے محسوس بھی نہ ھو اور اس سے جان بھی چھوٹ جاے ۔۔۔ پھر میں. نے ماہی سے گفٹ پسند آنے کا پوچھا تو ماہی نے بڑی گرمجوشی سے میرا شکریہ ادا کیا۔۔ اور میری چوائس اور میچنگ کو دل سے سراہا۔ اور شرارتی انداز میں بولی ۔ بھائی ویسے سب باتیں ایک طرف آپی بہت خوش قسمت ہیں جن کو آپ جیسا شوہر ملے گا آپی کی تو موجیں ہیں گھر بیٹھے ھی سب کچھ مل جایا کرے گا وہ بھی اعلی سے اعلی ۔۔۔ میں. نے ہنستے ھوے کہا ۔۔ کوئی ناں میری بہن پریشان نہ ھو تیرے لیے بھی کوئی ایسا ھی لڑکا تلاش کرلیں گے ۔۔۔ ماہی میری بات سن کر شرمائی ۔ اور منہ پر دونوں ھاتھ رکھ کر بھائییییییییی آپ بھی ناں کہتے ھوے باہر کی طرف بھاگ گئی میں اسے آوازیں دیتا رھ گیا کہ بات تو سنو ۔۔ مگر ماہی تیزی سے سیڑھیاں اترتے ھوے نیچے چلی گئی ۔۔۔ ماہی کے جانے کے بعد ۔۔ میں اٹھا اور دروازہ ویسے ھی بند کیا تو ضوفی جلدی سے صوفے سے اٹھی اور بولی کیا کرنے لگے ھو ۔۔۔۔میں نے کہا کچھ نہیں بس دروازہ بند کرنے لگا ھوں ۔۔ تو ضوفی بولی ۔۔ میں بھی جارھی ھوں نیچے ۔۔ میں نے کہا کیوں ۔۔۔ ضوفی بولی ۔ ویسے ھی ۔۔ میں چلتا ھوا اسکے قریب آیا اور اسکی کمر کے گرد بازوں کا احصار باندھتے ھوے اسے اپنے ساتھ لگاتے ھوے ۔۔ ضوفی کے ہونٹوں پر کس کی تو ضوفی مجھے آرام سے پیچھے کرتے ھوے بولی ۔۔ آرام سے اب سوجاو صبح دکان بھی کھولنی ھے ٹائم دیکھو کتنا ھوگیا ھے ۔ میں نے کیا پھر کیا ھوا ٹائم ھوگیا ھے ۔ اور میں نے ساتھ ھی کلاک کی طرف دیکھا تو تین بجنے والے تھے ۔ میں نے پھر بھی ضوفی کو پکڑے رکھا تو اپنی کمر کے گرد سے میرے بازو ہٹاتے ھوے بولی ۔۔ چھوڑو یاسر مجھے بھی نیند آرھی ھے اور میں نے صبح دو برائڈل تیار کرنی ہیں ۔۔ .اس لیے تم بھی سو جاو اور میں بھی سونے جارھی ھوں ۔۔ میں نے ضوفی کو کس کر اپنے ساتھ لگایا اور کچھ دیر اسکی گلاب کی ہتیوں کا رس چوسا ۔ اور کچھ دیر بعد اسے چھوڑ دیا ۔۔۔ ضوفی کے نیچے جانے کے بعد میں بیڈ پر لیٹتے ھی سوگیا۔۔۔ صبح مجھے ضوفی نے اٹھایا . ناشتہ وغیرہ کرنے کے بعد میں اور ضوفی دکان پر آگئے۔۔۔ جنید پہلے سے ھی بوتیک کے باہر کھڑا انتظار کررھا تھا ۔ جنید نے مجھ سے چابیاں لیں اور دکان کھولی اور ہم دونوں مل کر صفائی وغیرہ کرنے میں مصروف ھوگئے۔۔ سارا دن کام میں مصروف رھے میری طبعیت بھی سارا دن سست رھی ایک تو کل دو پھدیاں وجایاں سی دوسرا رات کو لیٹ سویا تھا۔۔ جنید نے بھی میری سستی کی وجہ پوچھی مگر میں نے طبعیت ناساز ہونے کا بہانہ بنایا ۔۔ رات کو حسب معمول میں ضوفی کو گھر چھوڑنے کے بعد گاوں پہنچا ۔ امی نے پوچھا کہ یاسر پتر ۔ تیری آنٹی ناراض تو نہی ھوئیں کہ ہم ماہی کی سالگرہ پر نہیں آے ۔۔ میں نے کیا ۔ کہ ناراض تو نہیں ہوئیں مگر گلہ کر رہیں تھی کہ آپ لوگوں کو آنا چاہیے تھا ۔۔ مگر میں نے انکو مطمئن کر لیا تھا ۔۔۔ امی بولی ۔پتر دل تو میرا بھی کررھا تھا مگر تجھے اپنے ابے کا پتہ ھی ھے کہ وہ ایسے ھی لڑنے لگ جاتے ہیں میں نہیں چاھتی تھی کہ ایسے ان لوگوں کو لے کر ہمارے گھر میں کوئی جھگڑا ھو ۔۔ کوئی نہ آہستہ آہستہ سب ٹھیک ھوجاے گا ۔ میں بس کچھ دنوں میں ھی تیرے ابا سے تیرے اور ضوفی کے رشتے کی بات کروں گی ۔ مجھے تو وہ لوگ بہت بھلے لگے اور ضوفی بھی کافی سلجھی اور سمجھدار بچی ھے ۔۔۔ میں نے لاڈ سے امی کے گلے میں بازوں ڈال کر امی کے ساتھ جھولتے ھوے کہا۔۔۔ بس سلجھی اور سمجھدار ھی ھے ۔ امی نے حیران ھوکر میری طرف دیکھتے ھوے کہا۔۔ لے دس ہور سانوں کی چایے دا اے ۔۔۔ میں نے کہا میرا مطلب کہ سونی شونی نئی اے ۔۔۔ امی نے میری گال پر چپت مارتے ھوے کہا۔۔ تیرے نالوں تے سونی ای اے ۔۔ میں نے منہ بسورتے ھوے کہا۔ لو جی بہو گھر میں آئی بھی نہیں اور بیٹا برا بھی لگنے لگ گیا۔۔۔ امی نے ہنستے ھوے میرے سر پر شفقت سے ہاتھ پھیرتے ھوے میرا ماتھا چوما اور بولیں ۔ میرے پتر توں ود سونا کوئی ھے ایس دنیا تے ۔۔۔ اور میں امی کے ساتھ لپٹ گیا۔۔ کچھ دیر مقں بیٹے کا لاڈ پیار چلتا رھا ۔ پھر امی نے کہا چل میرا لال منہ ہتھ دھو لے میں تیرے لیے روٹی پکاتی ہوں ۔۔۔ میں منہ ہاتھ دھو کر فریش ھوکر کھانا کھانے کے بعد ۔۔ آنٹی فوزیہ کے گھر جا پہنچا ۔۔ گھر داخل ہوا تو صحن خالی تھا ۔۔ میں سیدھا کمرے میں جاپہنچا ۔ کمرے میں سب لوگ بیٹھے کھانا کھانے میں مصروف تھے ۔ میں نے کمرے میں داخل ہوتے سلام کیا ۔۔تو انکل مجھے دیکھ کر بولے آ بھئی یاسر پتر ۔ شکر ھے تیرا چہرہ بھی دیکھنے کو ملا۔ تم تو اب امیر بندے ھوگئے ھو ۔ میں چلتا ھوا انکل کے پاس جاکر چارپائی پر بیٹھتے ھوے بولا ۔ نہیں انکل جی ایسی تو کوئی بات نہیں بس دکان سے ھی بہت لیٹ گھر آتا ھوں آج تھوڑا جلدی آگیا تو سوچا آپ لوگوں سے مل لوں ۔ آنٹی جو میری طرف دیکھ کر مسکرا رھی تھی ۔ بولی ۔ مہربانی جو ہم کو یاد رکھا۔۔ میں نے کہا۔ .اب جانے بھی دیں آنٹی جی کیوں ایسی باتیں کر کے مجھے شرمندہ کررھیں ہیں ۔ اور پھر میں عظمی اور نسرین کا حال احوال پوچھنے لگ گیا ۔ جو انکل کی وجہ سے بہت شریف بچیاں بن کر خاموشی سے بیٹھیں ہوئیں تھی ۔۔ عظمی اور نسرین نے بتایا کہ وہ اچھے نمبروں سے پاس ھوگئیں ہیں اور اب وہ کالج میں اڈمیشن لیں گی اور روز تانگے پر ھی آیا جایا کریں گی ۔۔ میں نے انکو مبارکباد دی ۔ اور آنٹی سے بولا۔ دیکھ لیں آنٹی آپ میری دکان دیکھنے نہیں آئیں ۔۔ اور نہ ھی یہ دونوں چڑیلیں آئیں ہیں ۔ آنٹی بولی بس ٹائم ھی نہیں ملا آنا تھا ۔ تیرے انکل کی طبعیت سہی نہیں رہتی ۔ ڈاکٹر کہتے ہیں کہ انکا لاہور سے چیک اپ کروائیں ۔ بس اسی پریشانی کی وجہ سے گھر سے نکلا نہیں جارھا ۔ تمہیں تو پتہ ھے کہ اب جوان بچیاں اکیلی چھوڑ کر میں کیسے انکو لے کر جاوں ۔۔ میں نے کہا آنٹی جی آپ انکی پریشانی کیوں لی رہی ہیں ۔ انکو ہمارے گھر چھوڑ جائیں وہ بھی تو آپکا ھی گھر ھے ۔ مشکل وقت میں ہم آپ کے کام نہیں آئیں گے تو کون آے گا۔۔ آنٹی بولی جیوندا رھ ۔ میں نے تو تیرے انکل کو کہا تھا مگر یہ ھی نہیں مان رھے کہ تمہارے ابو کیا سوچیں گے ۔۔۔ میں نے انکل کی طرف منہ کیا اور انکی ران پر ہاتھ رکھتے ھوے کہا۔۔ انکل جی آپ ایسا کیوں سوچ رھے ہیں کیا ہم آپ کے اپنے نہیں ہیں ۔۔ انکل نے کھانستے ھوے کہا ۔ نہیں یاسر پتر ایسی بات نہیں بس ایسے ھی سوچ رھا تھا کہ جوان بچیاں ہیں ایسے ھی لوگ باتیں نہ کریں ۔۔ میں نے ہنستے ھوے نسرین کی طرف دیکھتے ھوے کہا ۔۔ لو جی آپ کے لیے جوان ھوں گی ۔۔ میرے لیے تو ابھی بھی یہ ناک بہتی بچیاں ھی ہیں ۔۔ آپ بے فکر ھوکر اپنا اچھے سے چیک اپ کروایں اور انکی ذمہ داری مجھ پر چھوڑ دیں ۔۔ اور اگر کسی چیز کی ضرورت ھو تو بلاجھجھک مجھے کہنا ۔ انکل نے میرے سر پر پیار سے ھاتھ پھیرتے ھوے ھاتھ میری کمر پر لیجا کر کمر کو تھپتھپایا اور بولے ۔ جیوندہ رہ پتر تم لوگ ھی تو ہمارے اپنے ھو اور تم تو ویسے بھی ہمارے گھر کے فرد ھو ہم نے تو تمہیں کبھی بھی غیر نہیں سمجھا ۔ تو میں نے کہا۔۔ تو پھر میرے ھوتے ھوے فکر کس بات کی کرتے ہیں ۔۔ اگر کوئی پیسوں کی پرابلم ھے تو بتائیں آپ کے بیٹے پر اوپر والے کا بڑا کرم ھے ۔ انکل کھانستے ھوے بولے ۔ نہیں پتر جیوندہ رھ پیسے تو ہیں بس ان بچیوں کی فکر تھی کیوں کہ لاہور میں پتہ نہیں کتنے دن لگ جائیں ۔۔ زمانہ خراب ھے بس یہ ھی ڈر تھا ۔ اور اب تیری وجہ سے وہ بھی پریشانی ختم ھوگئی ۔۔ میں تو یہ سوچ بیٹھا تھا کہ ہمارا شہزادہ اب امیر بندہ ھوگیا ھے پتہ نہیں اب ہمیں لفٹ کرواتا ھے کہ نہیں ۔۔ میں نے ہنستے ھوے کہا لو جی انکل ۔ اب ایسی بھی بات نہیں میں آپ کے لیے وہ ھی پرانا یاسر ھوں جسکو آپ کندھوں پر بیٹھا کر کھلایا کرتے تھے۔ انکل نے پھر میرے سر پر پیار دیتے ھوے مجھے دعائیں دیں ۔۔ اورپھر میں نے پوچھا انکل جی لاھور آپ رہیں گے کہاں ۔ انکل بولے تیری آنٹی کے بھائی کے سسرال لاہور میں رہتے ہیں ۔ انسے بات ھوئی ھے ۔ وہ تو کب کے کہہ رھے ہیں کہ آجاوں مگر بچیوں کی وجہ سے انکو ٹال مٹول کررھے ہیں ۔۔ آنٹی بولی ۔ چلو اب چھوڑ بھی دو بچیوں کی فکر یاسر نے تسلی دے تو دی ھے ۔ بس اب آپ ایک دو دنوں میں لاہور چلنے کی تیاری کریں ۔ میں کل ھی بھائی سے بات کرتی ھوں کہ ہم آرھے ہیں ۔۔ میں کچھ دیر مذید انکے پاس بیٹھا رھا ۔ اور پھر ان سے اجازت لینے کے بعد میں گھر واپس آگیا۔۔۔ اگلے دو تین دن بھی ایسے ھی گزر گیے ان دنوں میں کچھ خاص نہ ھوا ۔۔ بس وہ ھی روز مرہ کے معاملات ۔۔ .چوتھے دن میں گھر سے سیدھا ضوفی کے گھر پہنچا ۔ اور بیل دی تو ماہی نے دروازہ کھولا ۔ میں نے مسکراتے ھوے پوچھا خیر ھے پتر آج کالج کیوں نہیں گئی ۔ تو ماہی کچھ پریشانی سے بولی کککچھ نہیں بھائی بس ایسے ھی ۔ میں نے اسکے چہرے پر پریشانی کے آثار دیکھ کر اسکے سر پر ہاتھ پھیرتے ھوے پیار سے پوچھا کیا ھوا ماہی پریشان کیوں ھو ۔۔ تو ماہی ایک دم میرے کندھے کے ساتھ لگ کر اونچی آواز میں رونے لگ گئی ۔۔ میں ماہی کے یوں رونے سے پریشان ھوگیا اور میرا دھیان فورن آنٹی کی طرف گیا کہ کہیں انکی طبعیت نہ خراب ھو ۔۔ میں نے سنجدیگی سے ماہی کے سر کو سہلاتے ھوے پوچھا ۔ کیا ھوا بیٹا کیوں رو رھی ھو گھر میں سب خیریت تو ھے ۔۔ اتنے میں ضوفی بھی گیراج کی طرف چلتی آئی ۔۔ اورماہی کو یوں روتےھوے اسکے چہرے پر بھی پریشانی کے آثار نمایاں ہونے لگ گئے۔۔ میں نے ضوفی کی طرف دیکھتے ھوے کہا ۔ ضوفی کیا ھوا اسے یہ کیوں رو رھی ھے اور تم بھی کیوں پریشان ھو کوئی مجھے کچھ بتاے گا بھی کہ نہیں میں نے ضوفی کو دیکھتے ھوے ایک ھی سانس میں ڈھیر سارے سوال کردیے ۔۔ ضوفی ایکدم خود کو سنبھالتے ھوے میرے قریب آئی اورماہی کو پکڑ کر اسکے سر کو اپنے کندھے سے لگا کر اسکی گال تھپتھپا لر اسے چپ کرواتے ھوے ۔ ڈرائنگ روم کی طرف لیجاتے ھوے بولی کچھ نہیں ھوا ۔ بس ایسے ھی پاگل ھے یہ فضول میں روے جارھی ھے ۔۔ میں ضوفی کے پیچھے حیران ھوتا ھوا چلتا ڈرائنگ روم میں پہنچا تو ضوفی نے ماہی کو صوفے پر بیٹھایا اور اسکے ساتھ بیٹھ کر اسکے آنسو صاف کرتے ھوے اسے چپ کروانے لگ گئی ۔ ماہی بچوں کی طرح ہچکیاں لے لے کر رو رھی تھی ۔۔ میں نے نظر چاروں طرف دوڑا کر آنٹی کو دیکھا کہ اتنے میں آنٹی بھی پریشان سی کمرے سے نکلی اور میری طرف ایک نظر ڈال کر وہ بھی بھاگی ھوئی ماہی کی طرف گئی اور کیا ھوا میری بچی کو کرتی ھوئی انکے ساتھ ھی بیٹھ کر ماہی کو چپ کروانے لگ گئی ۔۔ ماہی کے ایک طرف ضوفی اور دوسری طرف آنٹی بیٹھی تھی جبکہ میں انکے سامنے منہ کھولے کھڑا باری باری تینوں کو دیکھی جارھا تھا ۔ مجھے معاملہ کافی سنجیدہ لگا ۔۔ میں نے پھر آنٹی جی کو مخاطب کرتے ھوے کہا۔ آنٹی جی ہوا کیا ھے مجھے بھی تو کچھ بتائیں ۔سب خیریت تو ھے ماہی کیوں رو رھی ھے اور آپ سب کیوں پریشان ہیں۔ اس سے پہلے کہ آنٹی کچھ بولتی ۔ ماہی میری طرف دیکھتے ھوے بولی ۔ بھائی میں نے اب کالج نہیں جایا کرنا مجھے روز ۔۔۔۔۔۔ ضوفی نے ماہی کے منہ پر ہاتھ رکھتے ھوے اس کی آواز کو دبا دیا۔۔ اور غصے سے ماہی کو گھورتی ھوئی بولی ۔۔۔ منہ بند رکھو تمہیں رات کو بھی سمجھایا تھا ۔۔ آنٹی کا رنگ بھی اڑ گیا تھا۔۔ میں ان سب کی حالت دیکھ کر مذید پریشان ھوگیا اور آگے بڑھا اور ماہی کی کلائی کو پکڑا اور اسے کھینچ کر ان دونوں کے بیچ میں سے اٹھا کر کھڑا کیا اور اسکو بازو سے پکڑے ایک طرف لیجا کر کھڑ کیا اور اسکو کندھوں سے پکڑ کر ہلاتے ھوے بولا ۔ بولو پتر کیا بات ھے کیا ھوا ھے جو تم کالج نہیں جانا چاہتی کسی نے کوئی بات کی ھے کیا۔۔۔۔ ماہی آنٹی اور ضوفی کی طرف دیکھے جارھی تھی ۔۔۔ اتنے میں ضوفی جلدی سے اٹھی اور میرے قریب آکر کھڑے ھوکر بولی ۔ یاسر کچھ بھی نہیں ھوا یہ تو پاگل ھے ایسے ھی کہہ رھی ھے ۔ کالج میں ٹیچر نے اسے ڈانٹا ھے تو بس اس بات کو لے کر ۔۔۔ میں نے اپنے ہونٹوں پر انگلی رکھتے ھوے کہا چپپپپ۔۔۔ میں بچہ نہیں ہوں جو تم مجھے یوں بیوقوف بنا رھی ھو ۔۔ جاو تم ادھر جا کر بیٹھو ۔۔ میں اپنی بہن سے خود بات کرتا ھوں ۔۔ .ضوفی بولی ۔مگر یاس۔۔۔۔۔۔۔ میں نے گرجدار آواز میں ضوفی کی بات کو ٹوکتے ھوے کہا ۔ تمہیں سنا نہیں ۔۔کہ ادھر جا کر بیٹھ جاوووووووو۔ ضوفی ایک دم کانپی اور سہم کر مجھ سے دور ہٹ کر کھڑی ھوگئی ۔ میرا رنگ غصہ سے سرخ ھوچکا تھا۔۔۔ میں نے پھر ماہی کی طرف دیکھا اور اسکے سر پر پیار سے ہاتھ پھیرتے ھوے کہا۔۔ ماہی تم مجھے اپنا بھائی سمجھتی ھو کہ نہیں۔ ماہی نے اثبات میں سر ہلاتے ھوے کہا جی۔۔۔۔ میں نے کہا ۔ تو پھر اپنی پریشانی بھائی سے چھپاتے ہیں کیا۔۔۔۔۔ماہی نے نفی میں سرہلاتے ھوے کہا نہیں۔۔ میں نے کہا۔ چلو پھر بتاو کیا بات ھے کہ میری بہن کالج کیوں نہیں جانا چاہتی ۔۔ ماہی نے پھر ضوفی اور آنٹی کی طرف دیکھا تو میں نے ماہی کو کہا ۔ ماہی ادھر میری طرف دیکھو اور بتاو کیا بات ھے ورنہ میں یہ ھی سمجھوں گا کہ تم مجھے اپنا بھائی نہیں بلکہ غیر سمجھتی ھو ۔۔۔ ماہی نے لاچارگی سے میری طرف دیکھا اور پھر اسکی آنکھوں سے ٹپ ٹپ آنسوں گرنے شروع ھوگئے ۔۔۔ میں نے کچھ دیر اسکے بولنے کا انتظار کیا تو پھر میں نے اس کے کندھوں کو چھوڑا اور بولا ۔۔۔ ٹھیک ھے اگر تم مجھے اپنا بھائی نہیں سمجھتی اور پھر میں نے غصے سے آنٹی اور ضوفی کی طرف دیکھتے ھوے کہا اور اس گھر والے بھی مجھے اپنا نہیں سمجھتے تو میرا یہاں رکنا فضول ھے ٹھیک ھے جیسے تمہاری مرضی ۔ اور میں گلوگیر آواز میں بولی ۔ اوکے میں چلتا ھوں ۔۔۔ یہ کہہ کر میں مڑ کر واپس گیراج کی طرف جانے لگا تو ۔۔ ماہی دوڑ کر میرے پیچھے آئی اور میرا بازو پکڑتے ھوے بولی ۔۔ رکو بھائی میں بتاتی ھوں ۔۔۔ میں وہیں رک گیا ۔۔۔ تو ماہی بولی ۔۔ بھائی تین چار لڑکے ہیں پتہ نہیں کون ہیں میں انکو نہیں جانتی وہ روز کالج تک میرے پیچھے آتے ہیں اور طرح طرح کی آوازیں کستے ہیں ۔۔ کل تو ان میں سے ایک لڑکے نے میرا بازو پکڑ لیا تھا ۔۔۔ ماہی کی بات سن کر میرا رنگ مذید سرخ ہوگیا غصے سے میری آنکھوں میں خون تیرنے گا ۔ میرا جسم ہلکا ہلکا کانپنے لگ گیا۔۔۔ میں نے تھرتھراتی آواز میں ماہی سے پوچھا۔ کب سے وہ تمہارا پیچھا کررھے ہیں اور کس وقت کس جگہ سے تمہارے پیچھے لگتے ہیں اور کس چیز پر سوار ھوتےہیں ۔ میں نے ایک ھی سانس میں سارے سوال کردیے ۔۔ ماہی بولی ۔ بھائی وہ پانچ چھ دنوں سے میرا پیچھا کررھے ہیں ۔ پہلے تو میں انکو اگنور کرتی رھی مگر کل تو ۔۔۔۔۔ ماہی پھر زارو قطار رونے لگ گئی ۔۔ میں نے اسکے سر پر پیار دیا اور اسے اپنے کندھے کے ساتھ لگا کر ۔ دلاسا دیتے ھوے کہا ۔ چپ کر میرا پتر تیرا بھائی ابھی زندہ ھے ۔ تو مجھے پہلے دن ھی بتا دیتی تو یہاں تک نوبت ھی نہیں انی تھی ۔۔ چل میرا پتر چپ کر اور بتا کہ تم ان کو پہچان لو گی ماہی اثبات میں سر ہلاتے ھوے بولی ۔۔ ہممممم میں نے کہا بس آج کا دن تو کالج سے چھٹی کر اور ویسے بھی اب کالج کا ٹائم ختم ھوگیا اس لیے آج تو گھر رھ کل میں تیرے ساتھ جاوں گا اور پھر تم دیکھنا تیرابھائی کیا کرتا ھے ۔ اس کے بعد کوئی بھی تیری طرف آنکھ بھی نہیں اٹھا کر دیکھے گا ۔۔۔ یہ کہتے ھوے میں ماہی کو واپس ڈرائنگ روم میں لے آیا آنٹی اور ضوفی ماہی پر بڑھک اٹھیں کہ مجھے کیوں بتایا اب کوئی خون خرابا نہ ھو جاے ۔۔ ضوفی ذیادہ ڈری ھوئی تھی کیوں کے وہ پہلے میرا پاگل پن اپنی آنکھوں سے دیکھ چکی تھی ۔۔ .میں نے آنٹی اور ضوفی کو تھوڑا نرم لہجے میں سمجھایا کہ آپ پریشان نہ ھوں کچھ بھی نہیں ھوتا ایسی لفنڈروں کو جس زبان میں سمجھایا جاتا ھے وہ مجھے اچھی طرح آتی ھے ۔ انٹی بولی پتر مجھے ڈر لگ رھا ھے اس پاگل کو سمجھایا تھا کہ تجھے نہ بتاے مگر اسکے پیٹ میں بات نہ رھی ۔۔ میں نے کہا آنٹی جی ماہی میری بلکل ایسے ھی بہن ھے جیسے نازی میری بہن ھے آپکی عزت میری عزت ھے ۔ میں نے اس گھر کا نمک کھایا ھے اور آپ لوگوں کی وجہ سے میں اس مقام پر ھوں ۔ اور میری بہن کی طرف کوئی میلی آنکھ سے دیکھے گا تو مجھ سے یہ برداشت نہیں ھوگا ۔۔ ان بہن چودوں کی وجہ سے میری بہن پڑھائی نہیں چھوڑے گی ۔۔۔ کچھ دیر مذید ہم اسی ٹاپک پر بات کرتے رھے آنٹی مجھے بار بار لڑائی سے منع کرتی رھی ضوفی بھی مجھے سمجھاتی رھی اور پھر میں اور ضوفی دکان پر آگئے راستے میں بھی ضوفی مجھ سے وعدے لیتی رھی کہ لڑنا نہیں ھے بس پیار سے سمجھا دینا ۔۔ میں ہوں ہاں میں اسکی باتوں کا جواب دیتا رھا ۔۔۔۔ دکان پر پہنچا مجھے پریشان دیکھ کر جنید نے وجہ پوچھی تو میں نے اسے ساری تفصیل بتادی ۔۔۔ جنید کا پارا بھی چڑھ گیا، اور وہ مجھے ابھی چلنے کا کہنے لگ گیا میں نے اسے سمجھا بجھا کر رلیکس کیا کہ اب وہ سالے پُھکرے ہمیں نہیں ملیں گے اس لیے کل صبح صبح تم تیار رہنا بونی ان سے ھی کریں گے ۔۔۔اور ویسے بھی کافی دن ھوگئے ہین ہاتھ گرم نہیں کئے ۔۔ جنید نے بھی کل لڑنے کی پوری تیاری کس لی ۔۔۔ اور پھر کسٹمرز کی آمد کے بعد ہم کام میں مصروف ہوگئے ۔۔ رات کو میں نے جنید کو ٹائم اور جگہ کا بتایا اور پھر ضوفی کو گھر چھوڑا اور ماہی کو حوصلہ دیا کہ صبح تم کالج کے لیے تیار رہنا اور پیدل ھی اکیلی جانا ۔۔ ہم فلاں جگہ پر کھڑے ھوں گے اور بلکل بھی نہ گبھرانا ۔۔۔۔ماہی پہلے مجھے منع کرتی رھی آنٹی بھی لاکھ سمجھاتی رھی ۔ مگر میری ضد کے سامنے سب کو ہار ماننا پڑی ۔۔ میں پھر انکے گھر سے نکلا اور سیدھا گاوں پہنچا اور گھر سے کھانا وغیرہ کھا کر باہر چوک کی طرف چل پڑا اور حسب منشا میرے لفنڈر یار چوک میں بوڑھ کے نیچے ڈیرہ جماے بیٹھے تھے ۔۔ مجھے دیکھ کر سب ھی بہت خوش ھوے ۔۔۔ سب ھی مجھے طرح طرح سے جُگتیں مار مار کر چھیڑ رھے تھے کہ آج کل خوب شہری پوپٹ بچیاں دیکھ رھا ھے ۔ کوئی کچھ کہتا کوئی کچھ ۔۔۔ شادا بھی انکا ساتھ برابر دے رھا تھا ۔۔ ہم ایسے ھی ایک گھنٹہ بیٹھے ایک دوسرے کے ساتھ ہنسی مزاق کرتے رھے ۔۔۔ پھر میں نے سب کو مخاطب کرتے ھوے کہا کہ کل کیا مصروفیت ھے ۔۔ شادا بولا توں حکم لا کی کرناں ایں ۔۔ میں نے کہا بندا مروانا ھے مار دیویں گا ۔۔۔ شادا شوخی سے بولا مار دیواں گے بندا وی بندے ای ماردے نے ۔۔۔ میں نے تھوڑا سنجیدہ ھوتے ھوے کہا ۔۔ یار ایک مسئلہ ھے ۔۔ تم سب کو صبح سات بجے میرے ساتھ شہر جانا ھے ۔۔ شادا بولا خیر تے ھے ۔۔ میں نے کہا ۔ یار کُش مُنڈے پھینٹنیں نے ۔ شادا بولا لے دس اے وی کوئی کم اے ۔ پھینٹ دیاں گے ۔۔ میں نے کہا بس پھینٹنے ھی ہیں سر نہیں پھاڑنے ۔ بس گُجیاں سٹاں مارنیاں نے ۔۔ سب ایک ساتھ بولے کوئی رولا ای نئی ۔۔ میں نے پھر سب کو ساری حقیقت بتائی مگر آدھی کیوں کہ ماہی کو میں نے جنید کی بہن بتایا ۔۔ شادا مجھے چھیڑتے ھوے بولا ۔ پھدی دیا توں ہمیشہ کُڑیاں پچھے ای سانوں لڑایا کر. کسی اپنے واسطے وی سانوں حکم لادیا کر۔۔ .میں نے کیا یار وہ لڑکی میری بہن جیسی ھے ایسی کوئی بات نہیں میرا دوست ھے نہ جو اس دن ہمارے ساتھ لڑا تھا جنید ۔۔ سب نے ہاں ھاں ھاں کہا ۔ میں نے کہا اب وہ میرے پاس کام کرتا ھے وہ لڑکی اسکی بہن ھے ۔ تو سب کا ھی پارا چڑھ گیا اور پھر شادے نے کہا کہ کل دو کو تم موٹر سائکل پر بٹھا لینا اور باقی کو میں ٹریکٹر پر لے چلوں گا ۔۔ میں مذید ایک گھنٹہ ادھر بیٹھا رھا اور پھر سب اپنے اپنے گھروں کو روانہ ہوگئے ۔۔ اگلے دن سب وقت پر چوک میں جمع ھوگئے میں نے دو لڑکوں کو بائک پر بٹھایا اورباقی کے چار لڑکے شادے کے ساتھ ٹریکٹر پر سوار ھوگئے ۔۔ ڈنڈے ہم نے ٹریکٹر پر ھی رکھ لیے تھے اور ہمارا دو سواریوں کا قافلہ شہر کی طرف روانہ ھوگیا ۔۔۔ کچھ دیر بعد ہم مقررہ جگہ پر پہنچے تو جنید بھی دو لڑکوں کو ساتھ لے کر موٹرسائیکل پر پہلے ھی اس جگہ موجود تھا ۔۔۔۔ ہم سب باری باری جنید اور اسکے دوستوں سے ملے ہم جس جگہ کھڑے تھے ہماری وجہ سے وھاں کافی ہجوم سا لگ گیا تھا ۔۔۔ میں نظر اسطرف تھی جدھر سے ماہی نے آنا تھا ۔۔۔ اور ماہی نے مجھے بتایا تھا کہ وہ لڑکے اس جگہ سے ھی میرے پیچھے لگتے ہیں ۔۔ مگر مجھے ابھی تک نہ تو ماہی آتی نظر آئی اور نہ ھی کوئی لڑکے ایسے نظر آے جو مشکوک ھوں ۔۔۔ میں ابھی یہ سوچ ھی رھا تھا کہ مجھے دور سے تین موٹر سائکلوں پر سوار چھ لڑکے پینٹیں پہنیں بال شال بنا کر سن گلاسس لگاے بڑے ہیرو بنے آہستہ آہستہ موٹر سائیکلوں کو چلاتے آتی جاتی لڑکیوں کو تاڑتے ھوے ہماری طرف آتے دیکھائی دیے ۔ انکو دور سے دیکھتے ھی میری چھٹی حس نے فورن کام کیا کہ ہو نہ ہو یہ سالے وہ ھی پُھکرے ہیں اور فورن میرے دماغ نے کام کیا کہ اگر انہوں نے ہمیں اکھٹے کھڑے دیکھ لیا تو سارا کام بگڑ جانا ھے ۔۔ ایک تو انکے کھڑے ھونے کی جگہ بھی یہ ھی تھی دوسرا ہم ڈشکروں کے سامنے وہ سب ابھی بچے تھے ۔۔ ۔۔۔ممی ڈیڈی بچے ۔۔۔ اور ہم سب کو ایک ساتھ دیکھ کر انکو کُھڑک جانی تھی کہ اج ساڈے کھڑکن گیاں میں نے سب کی توجہ ان دور سے آنے والے لڑکوں کی طرف دلائی اور شادے کو کہا کہ تم ٹریکٹر کو آگے لے جاو اور کچھ فاصلے پر کھڑے ھوجاو اور جنید کو بھی کہا کہ تم ٹریکٹر سے کچھ فاصلے پر کھڑے ھوجانا تاکہ انکو شک نہ ھو کہ ہم سب ایک ساتھ ہیں ۔۔۔ اور اگر ان مین سے کوئی بھاگنے لگے تو جنید تم آگے سے انکو گھیر لینا اور جب تک میں نہ کہوں تب تک ان کو کچھ نہیں کہنا ۔۔۔ ہم نے جلدی سے پلان تیار کیا اور اس سے پہلے کہ وہ لڑکے ہمارے قریب پہنچتے شادا اور جنید آگے نکل گئے اور میں اپنے دوستوں کے ساتھ وہیں کھڑا ھوگیا اور دوستوں کو بھی سمجھا دیا کہ تم ان کی طرف مت دیکھنا اور ہم ایسے کھڑے ھوگئے جیسے مجھے میرے دوست راستے میں راہ چلتے ملے ہوں اور ہم کھڑے ایک دوسرے سے باتیں کررھے ھوں ۔۔۔ میرے دوست بیچارے پینڈوں ٹائپ اور سادہ سے میلے کپڑوں میں تھے ۔۔ .خیر وہ لڑکے سلو موشن میں بائک کو چلاتے سیٹیاں بجاتے ہمارے قریب آکر رک گئے اور باری باری تین پیچھے بیٹھے لڑکے اتر کر پینٹوں میں ہاتھ دے کر بڑے ہیرو بن کر کھڑے ہوکر ادھر ادھر دیکھ کر سکول. وکالج کی لڑکیوں کو تاڑنے لگ گئے ۔۔ ہم اپنے دھیان کھڑے باتیں کررھے تھے ۔ کہ ان میں سے ایک ہیرو ہماری طرف بڑھا اور بڑے رعب سے بولا ۔۔ اوےےے ہیلو ادھر کھڑے کیا کررھے ھو چلو کھسکو ادھر سے ۔۔ میرا ایک دوست اسکی طرف بڑھنے لگا تو میں نے اسکی کلائی کو پکڑا اور اسے روک لیا اور اسکی طرف دیکھتے ھوے کہا ۔ اچھا بھائی چلے جاتیں ہیں ناراض کیوں ھورھے ھو۔۔ تو دوسرا لڑکا بھی اسکے پاس آکر بولا چلو چلو شاباش نکلو یہاں سے ۔۔۔ میں اسکی طرف دیکھتے ھوے پاوں سے ھی بائک کو چلاتے آگے کی طرف لے گیا اور دوستوں کو بھی آنے کا کہا ہم ان لڑکوں سے کافی آگے جاکر کھڑے ہوکر پھر باتیں کرنے لگ گئے میرے دوست مجھے برا بھلا کہی جارھے تھے کہ میں نے انہیں کیوں روکا ۔۔ میں نے انہیں صبر کرنے کا کہا اور جس طرف سے ماہی نے آنا تھا اسطرف دیکھنے لگ گیا۔۔۔ وہ لڑکے ابھی تک وہیں کھڑے تھے اور اپنے کام میں مصروف تھے ۔۔ کچھ ھی دیر گزری تھی ۔۔ کہ مجھے دور سے نقاب میں ماہی آتی ھوئی نظر آئی ۔۔ میں نے لڑکوں کی طرف دیکھا تو وہ بالوں میں انگلیاں پھیرتے ھوے آپس میں کوئی بات کر رھے تھے اور انکا دھیان بھی ماہی کی طرف ھی تھا ۔۔ جیسے جی ماہی انکے قریب سے گزری ان میں سے ایک لڑکے نے جس نے ہمیں وہاں سے بھاگنے کا کہاں تھا اس نے ماہی پر کوئی جملہ کسا ماہی نے ایک نظر اس کی طرف دیکھا اور جب اسکی نظر مجھ پر پڑی تو میں نے انگلی منہ پر رکھ کر اسے خاموش رہنے کا کہا تو ماہی میرا اشارہ پاتے ھی آگے چلتی ھوئی ہمارے قریب پہنچی اور ماہی کے پیچھے ھی وہ سب لڑکے موٹرسائیکلوں پر سوار ہوکر پیچھا کرتے ھوے ماہی کے پیچھے پیچھے آنے لگ گئیے۔۔ ماہی ہم سے کچھ فاصلے پر ھی تھی کہ ان میں سے ایک موٹر سائکل سوار ماہی کے برابر آیا اور اسکے پیچھے بیٹھے لڑکے نے ہاتھ آگے بڑھا کر ماہی کا ہاتھ پکڑنا چاہا تو ماہی جو پہلے سے ھی ہوشیار تھی اس نے جلدی سے ہاتھ پیچھے کیا اور سڑک کے کنارے پر کھڑی ھوکر انکو گالیاں دینے لگ گئی ۔ موٹر سائکل سوار نے بریک لگائی تو پیچھے بیٹھا لڑکا موٹر سائکل سے چھلانگ مار کر اترا اور ماہی کی طرف بڑھا ۔۔ ہم تینوں کھڑے یہ سب ماجرہ دیکھ رھے تھے ۔ مجھے بس اسی موقع کا انتظار تھا ۔ میں نے اپنے دونوں دوستوں کو کہا کہ تم ابھی ادھر ھی رکو اور یہ کہتے ھوے میں تیزی سے بائک کو سٹینڈ پر لگایا اور اس سے پہلے کہ وہ لڑکا ماہی کے پاس پہنچتا میں بجلی کی سی تیزی سے بھاگ کر لڑکے اور ماہی کے درمیان میں کھڑا ھوگیا۔۔۔ ماہی میرے پیچھے کھڑی تھی اور لڑکا میرے آگے ۔۔۔ لڑکے نے جب مجھے یوں کباب میں ہڈی بنتے دیکھا تو ۔۔بڑے غصے سے میری طرف دیکھا اور میرا گریبان پکڑتے ھوے بولا ۔ گانڈو تجھے پہلے بھی کہا تھا کہ ادھر سے نکل لے ۔۔۔ مگر تو سالا بیچ میں ہیرو بننے آگیا ھے ۔ جانتا نہیں مجھے کیا کہ میں کون ہوں ۔۔۔ میں نے اسکی باتوں کو نظر انداز کرتے ھوے کہا کہ ۔ اس لڑکی کو تنگ کیوں کررھے ھو۔۔ اس کے باقی ساتھ بھی بڑی شوخی سے مجھ اکیلے کو دیکھ کر میرے ارد گرد کھڑے ھوگئے تھے ۔۔ تو وہ لڑکا قہقہہ لگاتے ھوے میرے گریبان کو جھنجھوڑتے ھوے بولا ۔۔ کیوں تیری بہن ھے یا پھر توں اسکا ٹھوکو ھے ۔۔۔ لڑکے کی بات سنتے ھی میرا دماغ گھوم گیا اور میں نے اسکی کلائی کو پکڑا جس سے اس نے میرا گریبان پکڑا ھوا تھا ۔ اور ایک ذوردار جھٹکے سے اسکی کلائی کو مروڑا تو چٹخ کی آواز آئی جیسے اسکی کلائی کا جوڑ اکھڑ گیا ھو ۔ لڑکے کے منہ سے دلدوز چیخ نکلی اور ساتھ ھی میں نے ٹانگ فولڈ کی اور ذوردار کک اسکے پیٹ میں ماری ۔ لڑکا بلکتا ھوا پیچھے کھڑے لڑکے کے اوپر جاگرا ۔ پیچھے کھڑا لڑکا اپنی موٹر سائکل کے آگے کھڑا تھا ٹانگ کھانے والا لڑکا جب پیچھے کھڑے لڑکے کے اوپر گرا تو دونوں پیچھے بائک پر گرے اور بائک کو ساتھ لیتے ھوے سڑک پر جاگرے ۔۔ اتنے میں باقی چاروں لڑکے ممی ڈیڈی بھڑکیں مارتے ھوے مجھ پر یلغار ھوے اس سے پہلے کے لڑکے مجھ تک پہنچتے ان سے پہلے میرے دوست ان کے سر پر آ پہنچے اور ساتھ ھی ٹریکٹر اور جنید بھی آ پہنچا بس پھر انکو پتہ بھی نہ چلا کہ کہاں کہاں سے انکو پڑنا شروع ہوگئیں ہیں ۔۔ میں نے پھر اسی لڑکے کو گریبان سے پکڑا اور ہجوم سے باہر کھینچتا ھوا لے آیا یہ وہ ھی لڑکا تھا جس نے ماہی کا ہاتھ پکڑنے کی کوشش کی تھی ۔ .اور جسکی کلائی کا جوڑ اکھڑا تھا۔۔۔ ماہی گبھرائی ہوئی ایک طرف کھڑی دونوں ہاتھ منہ پر رکھے ۔ ان لڑکوں کی پٹائی دیکھ رھی تھی ۔ میں اس لڑکے کو کھینچتا ھوا ماہی کے سامنے لے آیا اور ماہی کے سامنے ھی اسپر لاتوں اور گھونسوں کی بارش کردی وہ بلکتا رھا چلاتا رھا معافیاں مانگتا رھا مگر میں نے اسکی ایک نہ سنی اور مسلسل اسکی ٹھکائی کرتا رھا ۔ جب وہ لڑکا بےجان ہوکر نیچے گرا تو میں اس، پر ہاتھ نرم کیا اور اسکے پیٹ پر ایک زور دار ٹھوکر ماری تو اسکے منہ سے دلدوز چیخ نکلی اور وہ پیٹ پر ھاتھ رکھے سڑک پر لیٹیاں لینے لگ گیا۔ میں نے اسے بالوں سے پکڑ کر کھڑا کیا تو لڑکے کے منہ سے خون اور تھوک ٹپک رھا تھا ۔ سالے کی ایک منٹ میں ساری ہیرو گری نکل گئی تھی میں نے اسکے سر کے بالوں کو جنجھوڑا اور ماہی کی طرف انگلی کرکے کہا پکڑ ہاتھ اسکا گشتی کے بچے اور پھر میں نے اسکا وہ ھاتھ پکڑا جسکا شاید جوڑ اکھڑ چکا تھا ۔۔اور اسکے ہاتھ کو پھر مروڑ کر بولا ۔ یہ ھی ہاتھ میری بہن کی طرف اٹھا یا تھا نہ ۔ لڑکا ذور ذور سے چیخ کر مجھ سے اور کبھی ماہی سے رحم کی بھیک مانگ رھا تھا ۔۔۔ میں نے کچھ دیر اسکا ہاتھ مروڑ کر رکھا لڑکا نیم بےہوشی کی حالت جا چکا تھا اور آہستہ آہستہ بول رھا تھا ۔۔ مجھے معاف کردو مجھے معاف کردو ۔ اور پھر میں نے اس کے پیٹ میں اپنا گھٹنا مارا تو لڑکا پھر بلبلاتا ھوا دھرا ھوا ۔ تو میں نے اسکی گردن کو پکڑ کر ماہی کے پیروں اسکو پھینکا اور بولا مانگ معافی اپنی بہن سے اور کہہ کہ تو میری بہن ھے ۔ لڑکا ماہی کے سکول جوگر کو ہکڑ کر انپر ماتھا رکھ کر ۔ روتے ھوے بولا ۔ آپی مجھے معاف کردیں مجھ سے غلطی ہوگئی پلیز میری جان بچالیں یہ مجھے ماردے گا ۔ پلیزززز آپی آپ میری بہن ھو میری توبہ آج کے بعد کبھی بھی کسی لڑکی کی طرف آنکھ اٹھا کر نہیں دیکھوں گا ۔ بس ایک بار مجھے معاف کردیں ۔۔۔ ماہی کو بھی اسپر ترس آگیا اور اپنے پاوں پیچھے کرتے ھوے میری طرف دیکھتے ھوے بولی بھائی چھوڑ دیں اسے بہت ھوگئی اسکے ساتھ ۔۔۔ میں نے پھر زوردار ٹھوکر اسکی ٹانگوں پر ماری تو وہ کلابازیاں کھاتا ھوا ایک طرف کو چلا گیا ۔۔۔۔اسے چھوڑ کر میں نے پیچھے مڑ کر دیکھا تومیرے دوستوں نے ان پانچوں کو مار مار کر باندر بنا دیا تھا ۔۔۔ اور شادا ان سب کومرغا بننے کا کہہ رھا ۔ شادے کے ہاتھ میں موٹا سا ڈنڈا پکڑا ھوا تھا ۔۔ اور پانچوں لڑکے جن کی آنکھوں پر نیل پڑے ھوے تھے مگر کمال کی مار تھی کہ خون کسی کے بھی نہیں نکل رھا تھا ۔ دوستو۔۔۔ پینڈواں دی مار تے سٹ گُجی ہُندی اے ۔ جدیاں پیڑاں بڑھاپے وچ وی نکل پیندیاں نے ۔۔۔ میرے دوستوں نے ایسا ھی کچھ ان پانچوں کا حال کیا تھا سر اور منہ چھوڑ کر انکے نچلے دھڑوں پر ڈنڈے برسائے تھے ۔۔۔ لڑکے سڑک پر لیٹیاں لے رھے تھے اورکوئی اپنے بازو کو تو کوئی اپنی ٹانگوں کو پکڑے روئی جارھے تھے ۔۔ انکی ساری ہیرو گیری نکل چکی تھی ہیرو سے اب مٹی کے باندر بنے ھوے تھے ۔۔ شادا ڈنڈا ہاتھ میں پکڑے باری باری سب کو مار کر انکو کان پکڑنے کا کہہ رھا تھا۔۔ میں نے ماہی کو کہا چلو تمہیں پہلے کالج چھوڑ آوں ۔ ماہی سر جھکائے میرے پیچھے چل دی میں نے بائک پکڑی اور دوستوں کو انکے حال پر چھوڑ کر ماہی کو پیچھے بٹھایا اور کالج چھوڑ کر واپس اسی جگہ پہنچا تو ۔۔ سب لڑکے کان پکڑے سڑک پر مرغا بن کر چل رھے تھے اور شادا انکی گانڈ پڑ باری باری ڈنڈے برسا رھا تھا ۔۔ چاروں طرف کافی لوگ جمع تھے اور ان کا تماشا دیکھ رھے تھے ۔۔۔ میں نے وہاں پہنچتے ھی سب کو نکلنے کا کہا کہ بس اتنا ھی کافی ھے ۔ .اور پھر شادے نے باری باری پانچوں کو ٹھڈے مارے اور میں نے جنید کا شکریہ ادا کیا اور پھر باقی دوستوں کو لے کر گاوں کی طرف چل دیا گاوں پہنچ کر میں نے سب کا شکریہ ادا کیا اور پھر وہیں سے واپس شہر آیا ایک حمام سے اپنا حلیہ درست کیا اور وہاں سے سیدھا ضوفی کہ گھر پہنچا ۔۔ تو ضوفی بولی یاسر اتنی دیر کہاں لگا دی ماہی کب کی کالج گئی ھے ۔ اور تم اب آرھے ھو. ۔میں نے جان بوجھ کر حیران ھوتے ھوے کہا۔ اچھااااااااا تم نے اسے اکیلی کو کیوں جانے دیا۔۔۔ ضوفی بولی ۔ وہ کہہ رھی تھی کہ تم اسے راستے میں ملو گے ۔۔۔ میں نے کہا چلو کوئی بات نہیں آجاے گی کچھ نہیں ھوتا۔۔۔ ضوفی بولی یاسر میرا دل گبھرا رھا، ھے چلو پہلے ماہی کے کالج چلتے ہیں ۔۔ میں نے بھی جلدی سے کہا ہاں ہاں چلو چلو ۔۔۔ اور ضوفی بھاگتی ھوئی باہر کی طرف لپکی اور میں مسکراتا ھوا اسکے پیچھے باہر نکلا ۔۔۔ کہ اچانک ضوفی کی نظر میری مسکراہٹ پر پڑی تو مجھے گھورتے ھوے بولی ۔ میری جان پر بنی ھوئی ھے اور تم دندیاں نکال رھے ھو ۔۔ میں نے کہا تم نکال لو تمہیں کسی نے روکا ھے ۔۔ ضوفی بولی یاسر قسم سے میں مزاق، کے موڈ میں نہیں ھوں میرا دل گبھرا رھا ھے ۔۔۔ میں نے کہا چلو کسی جوا کارنر پر تمہیں جوس پلاتا ھوں ۔۔۔تمہارے دل کی گبھراہٹ ختم ھو جاے گی ۔۔۔ ضوفی پیر پٹختے ھوے بائک کے قریب پہنچی اور انگلی کے اشارے سے حکم صادر کرتے ھوے بولی ۔ ہاسر چپ کر کے کالج کی طرف چلو۔۔۔ میں نے ہنستے ھوے کہا کیوں اب کالج میں اڈمیشن تو نہیں لے لیا۔۔ میرے ہنسنے اور بےجا مزاق کرنے پر ضوفی چونکی اور میری طرف گھورتے ھوے بولی ۔ تم ماہی کو کالج چھوڑ کر آے ھو ناں ۔۔ میں نے لاپروائی سے جواب دیتے ھوے کہا ۔۔ ی ہاں ۔۔ ضوفی بائک پر بیٹھتے ھوے میری کمر تھپڑ مارتےھوے بولی ۔۔ گنداااااااا۔ پہلے کیوں نہیں بتایا ۔ ایسے میں میرا کلو خون کم کر کے رکھ دیا۔۔۔ میں نے بائک سٹارٹ کی اور گئیر لگا کر جھٹکے سے کلچ چھوڑا تو ضوفی نے ایکدم پیچھے سے مجھے جپھی ڈالتے ھوے کہا۔۔۔ بتمیززززززز میں ابھی گرنے لگی تھی ۔۔۔ میں نے ہنستے ھوے کہا۔ میں اپنی جان کو گرنے دیتا ھوں ۔۔۔ تو ضوفی میرے کندھے پر سر رکھتے ھوے میرے پیٹ پر ہاتھ رکھے بولی ۔ یاسر نہ تنگ کیا کرو ۔۔ تم بہت بگڑ گئے ھو۔۔ میں نے کہا تم نے ھی تو بگاڑا ھے ۔۔ ضوفی میرے پیٹ کو اپنی نرم انگلیوں سے سہلاتی ھوئی بولی ۔ وہ کیسے جی ۔ میں نے کہا دور رھ رھ کر اور ترسا ترسا کر ۔۔۔ ضوفی میرے پیٹ پر چٹکی کاٹنتے ھوے بولی شوخے جب بھی موقع ملتا ھے تم باز آتے ھو پھر بھی ایسی باتیں کررھے ھو۔۔ میں نے کہا ۔ اتنے تھوڑے ٹائم میں تو تمہیں دیکھنے کا بھی موقع نہیں ملتا باقی تو اور کیا کرنا میں نے ۔۔ .ضوفی میری کمر پر ٹکر مارتے ھوے بولی ۔ اور کیا کرنا ھے تم نے ۔۔ میں نے کہا جب موقع دو گی تب پتہ چلے گا۔۔۔ ضوفی بولی تو پھر جلدی سے امی کو ہمارے گھر بھیج دو ۔ اور جلدی سے شادی کرلو پھر جو چاھے کرلینا ۔۔۔میں نے لمبا سا سانس لے کر چھوڑا اور بولا ۔ پتہ نہیں وہ حسین رات کب آنی ھے ۔۔ ضوفی تھوڑا سنجیدگی سے بولی ۔۔ اتنے جلد باز مت بنو پہلے سٹینڈ ھوجاو پھر شادی بھی کرلیں گے ۔ میں نے جلدی سے ضوفی کا ہاتھ پکڑا اور پیٹ سے ہٹا کر اہنے لن پر رکھتے ھوے کہا یہ دیکھو تمہیں دیکھتے ھی تو سٹینڈ ھوجاتا ھے اب اور کتنا سٹینڈ کرنا ھے ۔۔۔۔ضوفی نے ذور سے میرے لن کو دبایا اور شرمندہ سی ھوکر ہاتھ جلدی سے واپس کھینچا اور میری کمر پر ذور سے مکا مارا اور بولی ۔ گندااااا جاو میں نہیں بولتی تم سے ۔۔۔۔میں نے ہنستے ھوے ضوفی کا ہاتھ پکڑ کر واپس اپنے پیٹ پر رکھا مگر ضوفی نے پھر واپس ہاتھ کھینچ لیا ۔ ایسے ھی شرارتیں کرتے ہم دکان پر پہنچے ۔ جنید ابھی تک دکان پر نہیں آیا تھا، ضوفی پارلر پر چلی گئی ۔ تو میں نے دکان کھولی اورصفائی وغیرہ کرنے میں مصروف ھوگیا ۔۔ کچھ دیر بعد جنید بھی دکان پر آگیا۔۔ جنید آتے ھی مجھ پر برس پڑا ۔ اور سٹک پکڑ کر مجھے مارنے کے لیے میرے پیچھے بھاگا ۔۔ میں بھاگتا ھوا، کاونٹر کے پیچھے چلا گیا اور بولا یار ھوا کیا ھے بتاو تو سہی ۔ جنید بولا ماما میری کیڑی پین اے جنوں او منڈے چھیڑدے سی ۔۔ میں نے ہنستے ھوے کہا اچھاااا تو یہ بات ھے ۔ تمہیں کس نے کہا ھے کہ میں نے یہ کہا ھے ۔۔ جنید پھر میری طرف سٹک لہراتے ھوے بولا ۔ ماما جناں نو نال لے کے آیا سی اوناں نوں کی کیا سی کہ او میری پین نوں چھیڑدے سی تے ایس لئی اوناں نو ماریا اے ۔۔۔ میں قہقہے لگا کر ینسنے لگ گیا ۔ تو جنید مذید چڑ گیا اور میری ٹانگوں پر آہستہ سے سٹیکیں مارنے لگ گیا ۔۔ کچھ دیر ایسے ھی ہنستے رھے پھر میں نے کہا یار تیری پین تے میری پین وچ کوئی فرق اے جنید بولا ماما او تے تیری سالی اے ۔ میں نے کہا بیشک یار مگر پھر میں اسے اپنی بہن ھی سمجھتا ھوں ۔۔ پھر جنید بھی کچھ رلیکس ھوا اور بولا ٹھیک ھے یار ودائی جا میریاں پیناں ۔۔۔ میں نے کہا چل کوئی نہ یار اے بس آخری پین ای سمجھ ۔۔ پھر ہم ان لڑکوں کی چھترول کے بارے میں، باتیں کر کر کے ہنسنے لگ گئے ۔۔ کچھ دیر بعد کسٹمرز آنے شروع ھوگئے اور ہم دونوں کام میں مصروف ھوگئے ۔۔۔ رات کو دکان بند کی اور میں ضوفی کو ساتھ لے کر گھر پہنچا ۔۔ تو ماہی بڑی خوش تھی جبکہ آنٹی کافی پریشان تھی ۔۔ ماہی بھاگتی ھوئی ضوفی کے گلے ملی اور پھر ساری لڑائی حرف بحرف مزے لے لے کر ہاتھ پاوں مارتے ھوے سنانے لگ گئی ۔۔۔ جبکہ ضوفی کا رنگ بدلتا گیا ۔۔ اور پھر میری طرف دیکھتے ھوے غصے سے بولی ۔ جناب اتنا کچھ کر آے اور مجھے بھنک بھی نہ لگنے دی ۔۔ یاسر تم باز آجاو کیوں میری جان لینی ھے ۔ کیوں ایسے دشمنیاں بڑھا رھے ھو ۔ پتہ نہیں وہ لڑکے کون تھے اور اب وہ بدلہ نہ لیں ۔ اور پھر ماہی پر ضوفی بھڑک اٹھی اور اسے بولنے لگ پڑی کہ اب سکون مل گیا تمہیں مجھے پہلے ھی اسی بات کا ڈر تھا اسی لیے تمہیں منع بھی کیا تھا کہ اس پاگل کو نہ بتانا ۔ ورنہ یہ انکو جان سے مارنے پر اتر آے گا مگر تمہارے رونے ھی نہیں ختم ھوے اور نتیجہ دیکھ لیا وہ ھی ھوا نہ جسکا ڈر تھا ۔۔ .میں نے کہا ضوفی اب بس بھی کرو اس بیچاری کا کوئی قصور نہیں اگر انکی طنعیت صاف نہ ھوتی تو وہ سالے پُھکرے اس کو روز تنگ کرتے اور آج بھی میری آنکھوں کے سامنے انہوں نے اسکو تنگ کیا اور اسکا ھاتھ پکڑنے کی کوشش کی تھی ۔۔ میں نے تو پھر بھی اسے پیار سے سمجھایا کہ بات نہ بڑھے مگر اس نے آگے سے گندی گالی دے دی باس پھر ۔۔۔۔ ضوفی میری بات کاٹتے ھوے بولی ۔ پھر جناب پر جن نازل ھوگیا ھوگا اور مار دھاڑ شروع کردی ھوگی۔۔ میں نے کہا تو بتاو اور میں کیا کرتا ایک بھائی کے سامنے اسکی بہن کا سرے بازار ھاتھ پکڑا جاے اور پھر منع کرنے پر آگے سے گالی سننے کو ملے تو ۔ پھر میرا مرنا ھی بہتر تھا اگر کچھ کرتا نہ ۔ ضوفی نے جلدی سے میرے منہ پر ھاتھ رکھا اور بولی ۔ مریں تمہارے دشمن ۔ یاسر میں تو یہ کہنا چاھ رھی تھی کہ ایسے دشمنی بڑھتی ھے ۔ میں نے کہا بڑھتی ھے تو بڑھنے دو دیکھ لوں گا جو بھی ھوا ۔ مگر میری غیرت زندہ ھے بےغیرت نہیں ھوں میں ۔ شکر کرو کہ وہ لڑکا بچ گیا جس نے میری بہن کا ہاتھ پکڑا تھا ابھی تو اسکا وہ ھاتھ ھی ٹوٹا تھا ۔ جان سےنہیں گیا ۔۔ ضوفی نے دونوں ھاتھ منہ پر رکھتے ھوے کہا ہووووووو ھاےےےےےے میں مرگئی ۔۔ یاسر تم نے اسکا ھاتھ توڑ دیا ۔۔ تو ماہی بڑی شوخی سے سٹائل بنا کر بتاتے ھوے بولی ۔ آپی اس نے بھائی کا گریبان پکڑا تو بھائی نے ایسے کر کے ایک ھی جھٹکے میں اسکی کلائی مروڑ دی اور اسکا ہاتھ ٹُنڈا ھوگیا اور پھر ماہی نے ٹنڈے کی ایکٹنگ کرتے ھوے کہا پھر وہ ایسےایسے چلتا ھوا میرے قدموں میں گر کر مجھ سے معافی مانگنے لگ گیا ۔۔ باجی اک واری معاف کردے باجی مینوں معاف کردے ۔۔ ضوفی ہنستے ھوے بولی ٹھہر بتاتی ھوں تجھے کیسے چسکے لے لے کر نقلیں اتار رھی ہے ۔۔ ضوفی ماہی کو مارنے کے لیے اسکے پیچھے بھاگی تو ماہی بھاگتی ھوئی سیڑھیاں چڑھتی اوپر چلی گئی ۔۔ .2 آنٹی میرے پاس آئی اور میرے سر پر پیار دے کر میرا ماتھا چوما اور اپنے آنسو صاف کرتے ھوے بولی یاسر بیٹا مجھے آج تم پر فخر ھورھا ھے کہ تم اس گھر کی عزت کو اپنی عزت سمجھتے ھو بیٹا مجھے اب اپنی بیٹیوں کی فکر نہیں تم جیسا بیٹا مجھے مل گیا مجھے اور اب کسی چیز کی ضرورت نہیں اوپر والا تیری لمبی عمر کرے اور ہر بلا سے محفوظ رکھے اور نظر بد سے بچاے میرے بچے کو ۔۔ آنٹی کی شفقت اور محبت دیکھ کر میں نے آنٹی کو گلے لگا لیا اور آنٹی کے سر پر بوسا لیا اور بولا ۔ آنٹی جی میں اسے اپنا گھر سمجھتا ھوں اور میرے ھوتے ھوے اس گھر کی طرف کوئی میلی آنکھ سے نہیں دیکھ سکتا ۔۔۔۔ کچھ دیر میں آنٹی اور ضوفی سے باتیں کرتا رھا جبکہ ماہی اوپر چلی گئی تھی ۔ اور پھر میں ان سے اجازت لے کر نکلنے لگا تو آنٹی اور ضوفی مجھے دروازے تک چھوڑنے آئیں اور نصیحتیں کرتے ھوے مجھے اجازت دی ۔ ضوفی بار، بار دھیان سے جانا دھیان سے جانا کہے جارھی تھی ۔ میں ادھر سے نکلا اور سیدھا گاوں آیا گھر داخل ھوا تو سامنے عظمی اور نسرین کا دیدار ھوا ۔ سلام دعا اور حال احوال پوچھنے کے بعد پتہ چلا کہ آنٹی اور انکل لاہور چلے گئے ہیں ۔۔ اور ان دونوں کو ہمارے گھر چھوڑ گئے ہیں ۔۔ میں نے کھانا وغیرہ کھایا اور پھر باہر نکل گیا عظمی اور نسرین سے کوئی خاص بات نہ ھوئی ۔ باہر نکل کر میں چوک کی طرف چلا گیا اور وہاں دوستوں کے ساتھ بیٹھ کر ہنسی مزاق اور آج کی کاروائی پر باتیں کرتے ھوے گھنٹہ گزگیا گیا اور پھر میں ان سے اجازت لے کر گھر آیا ۔۔ تو عظمی نسرین اور نازی بیٹھی گپیں لگا رھی تھیں ۔۔۔ عظمی اور نسرین کی آپس میں کسی بات پر بحث ھورھی تھی ۔ میں بھی جاکر ان کے بیچ بیٹھ گیا تو ۔ پتہ چلا کہ انکے لیے بستر عظمی کے گھر سے لانے ہیں اور دونوں میں سے کوئی بھی اکیلی جانے کے لیے تیار نہیں ۔ مجھے دیکھ کر نازی بولی لو جی بھائی آگیا ھے جاو نسرین بھائی کے ساتھ جاکر لے آو ۔۔۔ میں نے کہا کیوں ہمارے گھر میں بستر نہیں ہیں کیا ۔ تو نازی بولی بستر پیٹی میں نیچے پڑے ہیں بس ایک کھیس ھی لا نا ھے اور کچھ نہیں میں نے کہا مجھ سے نہیں جایا جاتا خود لے آے جاکر یا تم چلی جاو اس کے ساتھ ۔ تو نازی بولی نہ بابا مجھے تو ڈر لگتا ھے اندھیرے میں۔۔ اور گھر بھی خالی ھے ۔۔ تو میں نے کہا کیوں چڑیلیں میری کون سا واقف ہیں جو مجھے کچھ نہیں کہیں گی ۔ تو امی کی آواز میرے کانوں میں پڑی جا یاسر پتر پین دے نال چلا جا ۔ کش نئی ہوندا ۔۔۔ میں نے مجبوری سے ہممممم کہا اور نسرین کی طرف دیکھتے ھوے کہا ۔ چلوووووو جی ۔۔۔۔ نسرین نے گھر کی چابی پکڑی اور میرے ساتھ اپنے گھر کی طرف چل پڑی راستے میں ہماری کوئی بات نہ ھوئی بلکہ میں اس سے ایک قدم آگے ھی چل رھا تھا ۔۔ دروازے پر پہنچے تو انکے لکڑی کے دروازے کی سنگلی والی کنڈی اوپر کی طرف لگی ھوئی تھی اور تالا بھی دیسی لگا ھوا تھا جو چابی گھمانے سے کھلتا تھا گلی میں گُھپ اندھیرا تھا ۔۔۔ نسرین دروازے کے پاس پہنچ کر ایڑیاں اٹھا کر تالے میں چابی پھنسانے کی کوشش کررھی تھی مگر اسکا ھاتھ سہی طرح سے پہنچ نہیں رھا تھا ۔ میں الجھن میں کھڑا تھا اور اسے دیکھ کر مجھے غصہ چڑھی جارھا تھا ۔۔۔ آخر مجھ سے انتظار کرنا برداشت نہ ھوا اور میں آگے بڑھا اور نسرین کے پیچھے جاکر ھاتھ اوپر کر کے اس کے ہاتھ سےچابی پکڑ کر تالے میں ڈال دی نسرین یوں مجھے اپنے قریب دیکھ کر گبھرا کر پیچھے ہٹی تو اسکی ابھری گانڈ میرے ساتھ لگ گئی ۔۔ نسرین کی گانڈ کا لمس اپنی رانوں پر محسوس کرتے ھی ۔ میرے اندر عجیب سی. کیفیت پیدا ھوئی اور میں بھی ایک دم کانپ گیا ۔ نسرین کی گانڈ تھی ھی بڑی نرم ۔ نسرین جلدی سے آگے کو ہوئی اور میرے بازوں کے نیچے سے نکل کر میرے آگے سے ہٹ کر ایک طرف کھڑی ھوگئی ۔ میں نے خود پر کنٹرول کرتے ھوے تالا کھولا اور نسرین کی طرف دیکھتے ھوے کہا۔۔ بندا کنڈی تے اپنے قد دے حساب نال لواوے۔۔ نسرین بولی ۔ ایڈا توں اونٹ رہندا نئی میں نے دروازہ کھولتے ھوے کہا ۔ اونٹ ہی ہوں تمہارے حساب سے اور ہم دونوں اندر داخل ھوگئے میں نے دروازہ بند کردیا اور نسرین کے پیچھے کمرے میں جانے لگ گیا ۔ نسرین کمرے کا تالا کھول کر اندر داخل ھوئی اور سامنے لگیے کڑی کے پھٹے پر سے کپڑا اٹھا کر نیچے ھاتھ مار مارکر کچھ تلاش کرنے لگ گئی ۔۔ میں نے جھنجھلا کر کہا اب ادھر کیا تلاش کررھی ھو ۔ تو نسرین نے غصے سے میری طرف دیکھتے ھوے کہا ۔ دو منٹ صبر نہیں ھوتا ۔ آتے ھی جلدی پڑ گئی ھے ۔ چابی تلاش کررھی ھوں ۔ میں نے کہا اب کونسی چابی ڈھونڈ رھی ھو ۔ تو نسرین سڑی بھلی بولی ۔ تیرے دماغ دی چابی ۔ میں نے ہنستے ھوے کہا ۔ تمہارے دماغ کو تو چابی کی ضرورت ھی نہیں گوبر کو کھول کر بدبو ھی آنی ھے ۔ نسرین میری بات سن کر پیر پٹخ کر رھ گئی اور بولی ۔ گلاں سنان وچ تے توں پورا مراثی ایں ۔۔ میں نے پھر چوٹ کی ۔ ہاں جی گوانڈیاں دا اثر اے ۔۔ نسرین میری طرف مکا لہر کر آئی اور میرے قریب آکر بولی بوتھی پن دیواں گی مُکی مار کے ۔۔۔ میں نے نسرین کی نازک کلائی پکڑی اور اسکا بازو مروڑ کر اسکی کمر کے ساتھ لگا دیا نسرین بولی ھائییییییییی چھڈ میری باں ٹُٹ جانی اے ۔۔ میں نے کہا بس نکل گئی پلوانی ۔ نسرین بولی یاسر چھوڑ دو میرا بازو قسم سے بہت درد ھورھی ھے ۔ میں نے کہا اب لڑو گی میرے ساتھ نسرین بولی ۔ نہیں لڑتی قسم سے چھوڑ دو آئییییییییی امی جی ییییییی۔ میں نے نسرین کا بازو چھوڑا تو نسرین جلدی سے اپنے بازو کو پکڑ کر دباتے ھوے مجھے گھورتے ھوے بولی ۔ ایک دفعہ گھر چلو میں خالہ کو بتاوں گی کہ تم نے میرا بازو مروڑا ھے ۔۔ میں نے کہا نہ پہلے پنگے لیا کرو ۔ نسرین بولی میں نے کیا کہا تھا ۔ میں نے بات ختم کرتے ھوے کہا چلو اب جلدی سے چابی لو اور بستر لو جونسے لینے ہیں میرے پاس تمہاری فضول باتوں کے لیے وقت نہیں ھے ۔ نسرین بولی ھاں جی اب وقت کہاں ھوگا ۔ اب تم امیر جو ہوگئے ھو اب تو ٹائم لے کر تم سےبات کرنا پڑے گی ۔۔ میں نے اپنے ماتھے پر ہاتھ مارتےھوے کہا ۔ اوووہو یار ایسی بات نہیں ھے میں سارے دن کا تھکا ہوا ھوں نیند آرھی ھے اس وجہ سے کہہ رھا ھو ۔۔ نسرین پھر پھٹے پر چابی تلاش کرنے لگ گئی میں آگے بڑھا اور کپڑا اٹھا کر چابی دیکھنے لگ گیا اور پھر نسرین کو ھی چابی مل گئی اور ۔ بولی چلو دوسرے کمرے میں پیٹی سے کھیس اور چادر نکالنی ھے ۔ میں نے کہا چلو جی ۔ نسرین نے ہلکے رنگ کا سوٹ پہنا ھوا تھا اور شفون کا باریک دوپٹہ لیا ھوا تھا ۔ نسرین میرے آگے چلتے ھوے کمرے سے نکلی تو میری نظر نسرین کی گول مٹول باہر کو نکلی گانڈ پر پڑی جو اسکے تیز تیز چلنے کی وجہ سے تھرتھراتے ھوے اوپر نیچے ھو رھی تھی اور اسکی گانڈ کی پھاڑیاں اوپر نیچے ھوتے وقت اسکی قمیض کو بھی ساتھ ھی اوپر نیچے کررہیں تھی ۔ میں اسکی گانڈ کو تاڑتا ھو اسکے پیچھے صحن میں نکلا ۔ نسرین کی سیکسی گانڈ اور 38 سائز کے ممے جو اسکی قمیض کو پھاڑ کر باہر نکلنے کے لیے بےتاب تھے ۔ دوسالوں میں نسرین کا جسم کافی سیکسی بن چکا تھا پہلے تو اسکے ممے چونتیس کے تھے ۔ مگر اب تو اسکی جوانی پاٹنے کو آئی ھوئی تھی ۔ ایک اسکی جوانی کے نظارے اوپر سے یہ سالی خلوت ۔ انسان پر سب سے کامیاب حملہ شیطان خلوت میں کرتا ھے ۔ چاہے انسان کسی بھی حالت میں ھو ۔ اور میرے دماغ پر نسرین کی جوانی سوار ھونے لگ گئی اور پھر شیطان نے میرے دماغ میں اس رات کا سین لے آیا جب غلطی سے میں نے نسرین کے ممے پکڑ لیے تھے اور پھر اسکو پھسلانے کے لیے چال بھی چلی تھی جو میری مصروفیت اور موقعہ نہ ملنے کی وجہ سے ادھوری رھ گئی تھی. ۔ خیر میں نسرین کے پیچھے چلتا ھوا دوسرے کمرے کی طرف چل دیا کمرے کے دروازے پر پہنچ کر نسرین نے تالا کھولا اور اندر داخل ھوکر لائٹ جلائی اور پھر پیٹیوں کی جانب جانے لگی میرا تو حلق خشک ھورھا تھا اور میں اندر سے گبھرا بھی رھا تھا اور شیطان مجھے نسرین سے بات کرنے پر اکسا رھا تھا ۔ میں بار بار اپنے خشک ہونٹوں پر زبان پھیر رھا تھا ۔ نسرین میرے ارادوں سے بے خبر اپنے دھیان پیٹی کھول کر اس میں سے کھیس تلاش کررھی تھی ۔ میں نے حوصلہ کیا اور نسرین کے پیچھے پہنچ کر کھڑا ھوگیا اور پیٹی کے ڈھکن کو پکڑ لیا نسرین میرے آگے کھڑی پیٹی میں جھکی ھوئی تھی اور اس نے ایک ھاتھ سے پیٹی کا ڈھکن پکڑا ھوا تھا اور پیٹی میں ہلکا سا جھک کر ہاتھ نیچے لیجا کر کھیس تلاش کررھی تھی ۔ میں نے جب پیٹی کے ڈھکن کو پکڑا تو نسرین ایکدم چونکی اور گردن گھما کر میری طرف دیکھا ۔ تو میں نے کہا تم آرام سے دیکھ لو میں ڈھکن کو پکڑ کر رکھتا ہوں ۔ نسرین بنا کچھ بولے ڈھکن کو چھوڑ کر پیٹی میں جھکی تو اسکی گانڈ مذید باہر کو آگئی ۔ میں نسرین کی سیکسی گانڈ کو دیکھ کر پاگل ھوا جارھا تھا ۔ اور وہ بھی اتنے قریب سے میرالن ٹراوز میں پورا تن کر ٹراوزر کو تمبو بناے نسرین کی گانڈ کو چھونے کے لیے بے چین تھا ۔ میں آگے کو ھونے سے ڈر رھا تھا ۔ کہ اچانک نسرین کھیس اٹھا کر پیچھے ھوئی تو اسکی گانڈ میرے لن کے ساتھ ٹکرائی اور اسکی گانڈ کی دراڑ میں میرے لن کا ابھار گھس گیا نسرین کے جسم کو ایک دم جھٹکا لگا اور وہ جلدی سے آگے کو ھوگئی ۔ نسرین نے پیچھے مڑ کر بھی نہ دیکھا کہ اسکی گانڈ کے ساتھ کیا چیز ٹکرائی ھے ۔ اب اسے پتہ چلا تھا یا نہیں ۔ I don't know مگر اسکی گانڈ کا لمس مجھے پاگل کرگیا تھا ۔ اگر مجھے ڈر نہ ھوتا تو میں نے ابھی ڈھکن چھوڑ کر نسرین کی شلوار اتارکر لن اسکی گانڈ میں اتار دینا تھا ۔ مگر مجبوری تھی کہ میں اسکے ساتھ زبردستی نہیں کرسکتا تھا۔ اور ذبردستی کرنا ویسے بھی میرے کاغذوں میں نہیں لکھا تھا۔ اپنا تو زندگی کا ایک ھی اصول تھا کہ ۔راہ جاتی چھوکری کو چھیڑنا نہیں اور جو چھوکری اپن کو چھیڑے اسکو چودے بغیر چھوڑنا نہیں ۔۔۔ میں نے اپنے آپ پر کنٹرول کرتے ھوے لرزتی آواز میں نسرین سے پوچھا کہ مل گیا کھیس تو نسرین نے کھیس مجھے پکڑاتے ھوے کہا بس ایک چادر لینی ھے ۔ میں نے کھیس پکڑ کر اپنی بغل میں لے لیا اور نسرین کو کہا جلدی کرو یار دیر ھورھی ھے ۔ نسرین بولی پیٹی میں اندھیرا ھے بس دومنٹ ۔۔ اور نسرین پھر پیٹی میں جھک کر چادر ڈھونڈنے لگ گئی ۔ میں نے کہا لگتا ھے تمہیں اٹھا کر پیٹی کے اندرپھینکنا پڑے گا پھر چادر جلدی مل جاے گی ۔۔ نسرین ہنستے ھوے بولی ۔ تمیزز نال ۔ اتنی جرات ھے کہ مجھے اٹھا کر پیٹی میں پھینک دو میں نے کہا۔ کچھ دیر پہلے کی چیخیں بھول گئی ھو ۔۔ نسرین بولی بس بس آیا وڈا ٹارزن ۔ میں نے موضوع بد لتے ھوے پھر سے نسرین پر ٹرائی مارنے کا سوچا اوربولا ۔ نسرین ایک بات پوچھوں نسرین پیٹی سے چادر باہر کھینچتے ھوے پھر میرے لن کے ساتھ گانڈ لگا کر پھر جلدی سے آگے کو ھوکر گھوم کر میری طرف منہ کرکے بولی ۔ ھاں بولو ۔۔ میں نے پیٹی کا ڈھکن واپس رکھتے ھوے بولا ۔ یار وہ جو میرا دوست تھا اسد جس کے ساتھ عظمی کا چکر تھا وہ دوبارا تو نہیں ملا تم دونوں کو ۔۔۔ نسرین ایکدم چونکی اور چادر کو تہہہ کرتے ھوے سر نیچے کیے بولی ۔ ننننہیں مگر تم کیوں پوچھ رھے ھو ۔ میں نے کہا یاد ھے نہ میں نے تمہیں بتایا تھا کہ اس دن باغ میں جو میں نے دیکھا تھا وہ ۔۔۔۔۔۔۔ نسرین بولی ۔تم نے کون سا پوری بات بتائی تھی ۔۔ میں نے کہا یار میں ڈر گیا تھا کہ کہیں تم آنٹی یا انکل سے بات نہ کردو اس وجہ سے میں نے ساری بات نہیں بتائی تھی ۔۔ تو نسرین بولی میں پاگل ھوں جو یہ بات ابو یا امی سے کرتی میں نے چھتر کھانے ہیں ۔۔۔ میں نے کہا پکا کہ تم کسی سے بات نہیں کرو گی ۔۔ نسرین بولی میں زبان کی پکی ھوں ایک دفعہ کہہ دیا نہ ۔۔۔۔ میں نے کہا بیٹھو پھر آج تمہیں ساری حقیقت بتاتا ھوں ۔ یہ کہتے ھوے میں نے نسرین کو بازوں سے پکڑا اور چارپائی پر بٹھا دیا اور خود اسکے ساتھ بیٹھ گیا ۔۔۔ نسرین میری طرف دیکھتے ھوے بولی ۔ بولو بھی اب کہ کوئی ہمارے پیچھے ادھر آگیا تب بتاو گے ۔ میں گلہ کھنگارہ اور نسرین کا نرم نازک ھاتھ پکڑا اور ۔۔۔۔۔۔
  16. 1 like
    قسط نمبر ۵ گرو جی ابھی تو کہانی کی ابتدا ہے۔ابھی تو سکندر سیکھنے کے مراحل میں ہے۔لڑکیوں بہت اور ایک سے بڑھ کر ایک ملیں گی۔ یہ گارنٹی ہے جناب۔ جناب مزید انتظار ترک کیجیے اور انجوائے کیجیے۔
  17. 1 like
  18. 1 like
  19. 1 like
  20. 1 like
  21. 1 like
  22. 1 like
  23. 1 like
  24. 1 like
  25. 1 like
  26. 1 like
  27. 1 like
    تقریبا ہر مرد عورت اور جنس کے حوالے سے ہوس پرست ہوتا ہے اور چاہتا ہے کہ روز نئی نئی عورتوں سے جنسی فعل کرے مرد کی ہوس کبھی بھی ختم نہیں ہوتی چاہے اس کے پاس سو حسین اور نوجوان لڑکیاں کیوں نا ہوں لیکن عورت اس معاملے میں باذوق ہے ہوس پرست نہیں عورت کے عام طور پر دو چار یار ہی ہوتے ہیں جن سے ہی وہ اپنی رومانی اور جنسی تسکین کر لیتی ہے کوئی عورت کتنی بھی چالو اور آوارہ کیوں نا ہو اس کے دس بارہ سے زیادہ یار نہیں ہوتے چاہے وہ ہمارے ہاں کی عورت ہو یا یورپ اور امریکہ کی ہاں یہ ہوتا ہے کہ کسی عورت کا کوئی یار اس سے دور ہو جاۓ یا اس کے دل سے اتر جاۓ تو اس کی جگہ کوئی دوسرا مرد لے لیتا ہے لیکن مرد کو اگر دولت اور اختیار مل جاۓ تو وہ حرم آباد کر لیتا ہے برصغیر کی تاریخ ان واقعات سے بھری پڑی ہے جب یہاں کے بادشاہوں اور نوابوں نے حرم کے حرم آباد کرے. ان کے حرم میں کئی کئی سو کنیزیں تھیں پھر بھی اس کی ہوس پوری نہیں ہوتی تھی اور وہ نئی نئی کنیزوں کو اپنے حرم میں دخل کرتے رہتے تھے جب کہ عورت نے آج تک ایسا نہیں کیا عورت کا جسم فروشی کرنا ایک بلکل الگ چیز ہے. کال گرلز اور طوائفیں صرف اور صرف پیسے کے لیے بے شمار مردوں سے جنسی فعل کرتیں ہیں. اس میں ان کی جنسی خواہش کا کوئی دخل نہیں ہوتا صرف پیسے کا حصول ہی ان کا مقصد ہوتا ہے
  28. 1 like
  29. 1 like
  30. 1 like
    !!!!!!!!!!!!!!!! جاری ÛÛ’ !!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!
  31. 1 like
  32. 1 like
    !!!!!!!!!!!!!!!! جاری ÛÛ’ !!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!!
  33. 1 like
  34. 1 like
  35. 1 like
×
×
  • Create New...