Jump to content
URDU FUN CLUB

Zaffar

Members
  • Content Count

    121
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    8

Zaffar last won the day on July 23

Zaffar had the most liked content!

Community Reputation

168

3 Followers

About Zaffar

  • Rank
    لکھاری

Profile Information

  • Gender
    Male
  • Location

Recent Profile Visitors

1,099 profile views
  1. ڈاکٹر صاحب ، میں صرف اس سائٹ پر ہی ہوں
  2. سچی محبت ۔۔۔ دنیا کا سب سے بڑا جھوٹ اور دھوکہ ہے ۔ یہاں صرف چوت اور لنڈ کا ملاپ ہو تو ساری محبت نکلنے والی منی کے ساتھ ہی بہہ جاتی ہے
  3. جی بلکل 3 صفے مس ہیں ۔ میں دیکھتا ہوں اگر میں نے ڈیلیٹ نہ کر دیے تو پوسٹ کر دوں گا اور کوشش ہو گی کہ آئندہ ایسا نہ ہو
  4. اور واپس میرے لن پر آ گئی ۔ پھر اس نے اپنی زبان میرے لن پر پھیرنی شروع کر دی ۔ کچھ دیر بعد اس نے میرے لن کو اپنے ہاتھ سے پکڑا اور اوپر کر کے میرے لن کی جڑ میں اپنی زبان پھیرنا شروع کر دی ۔ اور پھر میرے لن کے نیچلے حصے پر زبان پھیرتے ہوئے ، اوپر آنا شروع ہو گئی ۔ اور میرے لن کی ٹوپی تک آ کر واپس جانا شروع کر دیا ۔ کچھ دیر ایسے ہی وہ میرے لن سے کھیلتی رہی ۔ اور پھر اس نے میرے لن کی ٹوپی کو اپنے منہ میں لے لیا ۔ اور آہستہ آہستہ پورے لن کو منہ میں لیکر جانے لگی ۔ اور کچھ ہی دیر میں اس نے جتنا ہو سکتا تھا میرے لن کو اپنے منہ میں لے لیا ۔ اور پھر اس کو آہستہ آہستہ باہر نکالنے لگی ۔ اور پھر جب وہ ٹوپی تک آ گئی تو دوبارہ لن کو دوبارہ منہ میں لینے لگی ۔ وہ یہ سب کچھ بہت آہستہ آہستہ کر رہی تھی ۔ اور اس بار جب اس نے لن کو اپنے منہ میں لیا تو اس کی زبان میرے لن کے گرد گھومنے لگی ۔ کچھ دیر بعد اس نے دوبارہ سے میرے لن کو اندر باہر کرنا شروع کر دیا ۔ پر اب اس کی رفتار بڑھ گئی تھی ۔ اور پھر اس کے منہ میں ایسے اندر باہر جانے لگا کہ جیسے میں کسی کو پوری رفتار سے چود رہا ہوتا تھا تو میرا لن اس کی چوت میں جا رہا ہو ۔ کوئی 4 سے 5 منٹ تک ایسے ہی وہ میرے لن کو اپنے منہ میں لیتی اور باہر کرتی رہی ۔ پھر اس نے لن کو اپنے منہ سے نکال دیا ۔ اور اوپر آگئی ۔ کہ اس کا منہ میرے منہ کے پاس تھا ۔ اور اس کی پھدی میرے لن پر ۔ اور اس نے اپنی پھدی کو میرے لن پر رگڑنا شروع کر دیا ۔ جو کہ اس وقت پوری طرح گیلی ہو چکی تھی ۔ ساتھ ہی وہ مجھے کس Kiss کرنے لگی تو میں نے اس کو اپنے ہونٹوں کو چومنے سے روک دیا ۔ وہ منہ سے کچھ نہ بولی ۔ مگر اس کے چہرے پر غصہ نظر آیا ۔ پر اس نے نہ تو مجھے کچھ کہا ۔ اور نہ ہی مستی کرنا چھوڑی ۔ کیونکہ اس وقت وہ فل گرم ہو چکی تھی ۔ جو کہ اس کی سانسوں سے پتہ چل رہا تھا ۔ اور پھر کوئی 3 منٹ کے بعد اس نے اپنی پُھدی کو بہت تیز تیز اوپر نیچے کرنے لگی ۔ کچھ ہر دیر میں وہ جھٹکے لے کر فارغ ہو گئی ۔ اور ساتھ ہی وہ میرے اوپر لیٹ گئی بلکے کہنا چاہیے کہ گر گئی ۔ مگر وہ کافی دیر تک ہلکے ہلکے جھٹکے لے رہی تھی ۔ اور اس کی پُھدی میں سے ایسے پانی نکل رہا تھا جیسے ٹوٹی میں سے پانی نکل رہا ہو جو میرے ٹانگوں سے ہوتا ہوا نیچے بستر تک جا رہا تھا ۔ پھر کچھ دیر بعد وہ میرے اوپر سے اتر گئی ۔ اور میرے ساتھ لیٹ گئی ۔ تو میں نے اس کی طرف کروٹ لیکر لیٹ گیا ۔ اور اس کی شکل دیکھنے لگا ۔ جو کہ اس وقت سرخ ہو رہی تھی ۔ اور وہ لمبے لمبے سانس لیتے ہوئے آنکھیں بند کر کے لیٹی ہوئی تھی ۔ اور میں پھر میں نے اپنی ایک ٹانگ اس کے اوپر رکھ دی ۔ اور اپنا ہاتھ اس کے مموں پر رکھ دیا ۔ تو اس نے اپنی آنکھیں کھول کر میری طرف دیکھا ۔ اور مسکرا دی ۔ ہم کچھ دیر تو ایسے ہی لیٹے رہے ۔ پھر وہ اور میں واش روم گئے اور خود کو صاف کر کے واپس آںے لگے تو میں نے اس کو کہا کہ یار منہ بھی صاف کر لو ۔ تو اس نے مجھے غصے سے دیکھا ۔ مگر منہ سے کچھ نہ بولی ۔ اور کلی کر کے کمرے میں چلی گئی ۔ اور پیچھے پیچھے میں بھی چل دیا ۔ کمرے میں جا کر ہم دوبارہ سے بستر پر لیٹ گئے ۔ تو میں کچھ دیر تو لیٹا رہا کہ وہ کچھ بولے گی ۔ یا کرے گی ، مگر وہ چپ چاپ لیٹی رہی ۔ تو میں نے خود ہی آگے ہو کر خود کو اس پر لے گیا ۔ اور اس کے چہرے پر کسنگ کرنے لگا ۔ اور کچھ دیر اس کے منہ کو چومتا رہا ۔ اور پھر اس کے ہونٹوں پر آ گیا ۔ اور جب میں نے اس کے ہونٹوں کو کس kiss کرنا چاہی تو اس نے پہلے تو اپنا منہ دوسری طرف اور ساتھ ہی بولی اب کیوں ۔ تو میں پہلے تو کچھ نہ سمجھا ۔ پر جب سمجھ آئی تو بولا کہ یار وہ تم نے لن منہ میں لیا تھا اس لیے اس وقت منع کیا تھا ۔ تو وہ بولی لن تو تیرا تھا ۔ پر میں نے اس کو جواب نہ دیا ۔ اور منہ کو پکڑ کر اس کو کسنگ kissing کرنا شروع کر دی ۔ کچھ دیر تو اس نے رسپانس نہیں دیا ۔ پر پھر وہ بھی مجھے کسنگ کرنے لگی ۔ ہم کچھ دیر تو ایسے ہی کسنگ Kissing کرتے رہے ۔ پھر میں آہستہ آہستہ نیچے آنے لگا ۔ اور اس کی گردن پر آ کر میں نے اس کی گردن کو خوب چوسا / چوما اور جیسے ہی میں نے اس کی گردن کو چومنا شروع کیا تو وہ نہ صرف مچلنے لگی بلکے اس کے منہ سے ہلکی ہلکی آؤازیں نکلنے لگی۔ اور اس ہاتھ میرے سر پر آگئے ۔ اور اس نے میرے بالوں میں کنگھی کرنا شروع کر دی ۔ اور پھر میرے ہونٹ اس کے سینے پر آ گیے ۔ کچھ ہی دیر میں وہاں کوئی ایسی جگہ نہ بچی جہاں میں نے اپنے ہونٹوں کی مہر نہ لگائی ہو ۔ اور پھر اس کے مموں پر آ کر میں نے اس کے ایک ممے پر اپنی زبان پھیرنے لگا ۔ اور اس کے مموں کو جو کسی کنواری کی چوت کی طرح ٹائٹ تھے ۔ کے چاروں طرف اپنی زبان پھرنے لگا ۔ اور دوسرے ممے کو اپنے ہاتھ سے دبانے اور مسلنے لگا ۔ کچھ دیر بعد میں نے اس کے ممے کو جتنا ہو سکتا تھا اپنے منہ میں لے لیا ۔ اور اس کو چوسنے اور ہونٹوں سے دبانے لگا ۔ کچھ دیر بعد میں نے اس کے ممے کو منہ سے نکال دیا اور صرف نیپل Nipple کو منہ میں لیکر ایسے چوسنے لگا ۔ جیسے ابھی اس میں سے دودھ نکلے گا ۔ اور میں اس کو پیوں گا ۔ اور جیسے ہی میں نے اس کی نیپل کو چوسنا شروع کیا تو نسیمہ نہ صرف مچلنے لگی ۔ بلکہ اس کے منہ سے ہممم اور آہ جیسی آوزیں نکلنا شروع ہو گئیں ۔ اس کے میرے بالوں میں کنگھی کرتے ہوئے ہاتھوں کی رفتار بڑھ گئی۔ کافی دیر تک میں اس کے دونوں مموں کے ساتھ ایسے ہی کھیلتا رہا اور پھر میں نے اس کے مموں کو چھوڑ دیا ۔ اور آہستہ آہستہ نیچے ہونے لگا ۔ اور اس کی ناف پر پہنچ گیا ۔ اور پھر میں اس کی پُھدی پر پہنچ گیا ۔ مگر میں اس کی پُھدی کو تو کچھ نہ کیا ۔ مگر اس کے ارد گرد اپنی زبان سے خوب مستی کی ۔ اور پھر میں نے اس کو اُلٹا کیا ۔ اور اوپر ہو کر اس کی گردن سے دوبارہ سے اس کو کسنگ کرنا شروع کر دیا ۔ اور میرا لن اب اس کی گانڈ کے سوراخ پر تھا ۔ جس کو میں مستی کے لیے کبھی کبھی دبا دیتا ۔ اور پھر آہستہ آہستہ سے اپنی زبان سے اس کی پوری کمر کو چومنا اور چاٹنا شروع کر دیا ۔ اور ایسے کرتے ہوئے اس کی گانڈ کے اُبھار تک پہنچ گیا ۔ اور اس دوران وہ اپنی ٹانگ کو موڑ کر میرے لن کے ساتھ مستی کر رہی تھی ۔ کچھ دیر بعد میں نے اس کو سیدھا کیا ۔ اور اس کی ٹانگیں کھول کر اپنا لن اس کی پُھدی پر رکھا تو مجھے پتہ چلا کہ اس کی پُھدی ایک بار پھر سے اپنے پانی سے گیلی ہو چکی تھی ۔ اور اس کو اندر کرنے کی بجائے اس کی پُھدی پر پھیرنا شروع کر دیا ۔ وہ اب مچلنے لگی تھی ۔ اور ایسا لگ رہا تھا کہ وہ چاہتی تھی کہ میں لن کو جلد از جلد اس کی پُھدی میں ڈال دوں اور کچھ دیر ایسے ہی اس کو تنگ کرنے کے بعد آخر کار میں نے لن کو اس کی پُھدی کے سوراخ پر رکھا اور پھر اس کو اندر کرنے لگا ۔ جیسے ہی میرے لن کی ٹوپی اندر گئی تو اس کے منہ سے درد بھری آواز نکل گئی ۔ مجھے بھی ایسا محسوس ہوا کہ جیسے میں نے ایک کنواری پُھدی میں لن ڈالنے کی کوشش کی ہو ۔ مگر میں رکا نہیں ۔ بلکے زور لگا کر اپنا لن اس کے اندر کر دیا ۔ جیسے ہی لن اندر گیا تو وہ درد سے چیخ اُٹھی ۔ تو میں نے اس کے منہ پر ہاتھ رکھ دیا ۔ کیونکہ کوثر اور اس کی فیملی کمرے کے باہر ہی تھی ۔ مگر اس کی آواز باہر جا چکی تھی ۔ جس کا مجھے کچھ دیر بعد پتہ چلا ۔ اس کی پُھدی بہت ٹائٹ تھی ۔ جیسے کسی کنواری کی ہو ۔ کیونکہ تقریبا 450 دن سے زیادہ ہوگئے تھے کہ اس کی پُھدی میں کوئی لن نہیں گیا تھا ۔ پھر میں نے اپنے لن کو باہر کھینچا ۔ تو اسکے منہ سے دوبارہ درد بھری آہ نکل گئی ۔ پھر تو میں نے رکے بنا اپنے لن کو آہستہ آہستہ اندر باہر کرنا شروع کر دیا ۔ کچھ ہی دیر میں اس کا درد ختم ہو گیا تو میں نے اپنی سپیڈ بڑھا دی ۔ اور پھر جب میں نے اپنی پوری طاقت سے اس کو جھٹکے دینے شروع کیے تو وہ مزے سےجیسے تڑپنے لگی ۔ اور اس کے منہ سے صرف سسکیاں اور آہ آہ کی آوازیں آ رہی تھیں ۔ کوئی 3 منٹ کی چدائی کے بعد اس نے اپنی گانڈ اُٹھا اُٹھا کر میرے جھٹکوں کا جواب دینا شروع کر دیا ۔ اور مزید 1 کے بعد اس نے مجھے زور سے پکڑ لیا ۔ جس کی وجہ سے میرے جھٹکے رُک گئے ۔ اور وہ جھٹکے لیتے ہوئے فارغ ہوگئی ۔ اور جب وہ پوری طرح فارغ ہو گئی ۔ تو اس نے مجھے اپنے بازوں کے حلقے سے نکال دیا ۔ اور لمبے لمبے سانس لینے لگی ۔ جیسے ہی اس نے مجھے اپنی پکڑ سے چھوڑا تو میں نے اس کو دوبارہ سے چودنا چروع کر دیا ۔ اب اس کی پُھدی چکنی تھی ۔ جس کی وجہ سے میرا لن اس کے اندر ایسے جا رہا تھا جیسے مشین میں پسٹن Piston چلتا ہے ۔ کچھ دیر میں اس کو ایسے ہی چودتا رہا اور وہ دوبارہ سے گرم ہو گئی تھی ۔۔ اور کچھ دیر بعد چودائی کے دوران ہی میں نے اس کی دونوں ٹانگیں اُٹھا کر اس کے سینے کی طرف موڑ دی ۔ اور پھر تو جیسے مجھے دورہ پڑ گیا ہو ۔ میں اس کو بے دردی سے چودنے لگا ۔ جب میرا لن اس کی بچہ دانی سے ٹکراتا تو وہ درد سے کراہ اُٹھتی ۔ اس نے کافی بار مجھے ٹانگیں چھوڑنے کو کہا ۔ مگر میں نے اس کی ایک نہ سنی ۔ اور کوئی مزید 6 منٹ کی چدائی کے بعد وہ اور میں اکھٹے ہی فارغ ہو گئے ۔ اور میں نے اس کی ٹانگوں کو چھوڑ دیا ۔ اور اس کے اوپر ہی لیٹ گیا ۔ کچھ دیر تو ہم ایسے ہی لیٹے رہے ۔ اور پھر پہلے میں اُٹھ کر واش روم گیا ۔ اور میرے بعد نیسمہ ۔ جب وہ گئی تو میں نے دیکھا کہ بیڈ کے دونوں طرف ایسے گیلے نشان تھے جیسے کسی نے گلاس بھر کر پانی گرایا ہو ۔ اس کا صاف مطلب تھا کہ جب وہ فارغ ہوئی تو بہت زیادہ پانی نکلا تھا ۔ خیر وہ واپس آئی تو اس نے مجھے کافی دیر کسنگ کی اور پھر ہم تیار ہو کر وہاں سے نکلے تو کوثر نے مجھے پکڑ لیا کہ تم نے تو کہا تھا کہ یہ کنواری نہیں ۔ تو میں نے اس کو بہت مشکل سے یقین دلایا کہ وہ شادی شدہ ہے اور وہاں سے نکل کر ہم نے کھانا کھایا ۔ اس نے اپنے لیے اور اپنی فیملی کے لیے کچھ کپڑے لیے ۔ اور مجھے بھی ایک سوٹ لیکر دیا ۔ وہاں سے نکل کر میں نے اس کو بس اسٹینڈ پر چھوڑا۔ تو اس نے پھر سے ملنے کا وعدہ کیا ۔ اور چلی گئی کچھ مہینوں بعد مسرت سے پتہ چلا کہ نسیمہ سے اپنے شوہر کے پاس چلی گئی ہے ۔ اور پھر اس سے کبھی ملاقات نہیں ہوئی
  5. اس پر میں اور نسیمہ ایک بار تو سوچ میں پڑ گئے کہ اب کیا کریں ۔ پھر میں نے کوثر کو دوبارہ کہا کہ آپ کچھ کرو ۔ اس نے کہا کہ پہلے تم نے ایک بار کہا کہ تم آو گے مگر نہیں آئے ۔ اور اب بنا بتائے آ گئے ۔ اور ابھی تو مجھے جب تم اپنی دوست کو پہلی بار لائے تھے والے دن پر بات کرنی ہے ۔ تو میں پچھلی بار کا بتایا کہ اس دن دوست کی خالہ مر گئی تو نہیں آ سکے ۔ اور آج کا پروگرام اچانک بنا ۔ یہ آج واپس جا رہی ہے اپنے گھر تو مشکل سے کچھ وقت ملا ہے۔ جس کی گواہی کوثر کے ہاتھ میں پکڑے سفری بیگ نے بھی دے دی ۔ اور بات کرنے والی چیز کو گول کر گیا تو اس نے کہا اچھا رکو میں کچھ کرتی ہوں ۔ اور اوپر اپنے رہائشی جگہ پر گئی کہ نیچے والا ایک کمرہ اس نے سیکس کے لیے رکھا تھا اور دوسرا کمرہ صرف صوفے رکھ کر مہمانوں کے لیے تھا ۔ کہ کمرہ چھوٹا ہونے کی وجہ سے اس میں صرف ایک صوفہ سیٹ رکھنے کی جگہ تھی ۔ کچھ دیر میں کوثر واپس آئی ۔ اور بولی کہ جگہ مل جائے گی ۔ مگر پیسے دوگنے ہوں گے ۔ میں نے کہا ٹھیک تو وہ بولی تو آ جاو ۔ اور ہمیں لیکر اوپر والے حصے میں چل دی ۔ اور کمرہ جو کہ لگ رہا تھا کہ ان کا بیڈ روم ہے میں لا کر چھوڑ دیا ۔ اور بولی کہ کب تک فارغ ہو جاو گے ۔ تو مجھ سے پہلے نسیمہ بولی زیادہ سے زیادہ 2 گھنٹے جب کوثر باہر جانے لگی تو مجھ سے بولی کہ باہر آؤ ۔ اور جب میں گیا تو بولی یہ تو سیل بند نہیں ۔ میں نے کہا نہیں یہ شادی شدہ ہے ۔ تو وہ بولی جیسے پہلی والی کو بھی تم نے چودا ہوا تھا ۔تو میں نے کہا کہ وہ ایسے ہے تو وہ میری بات کاٹ کر بولی کہ بے شک وہ اپنے گھر میں بہت کم لوگوں کو آنے دیتی ہے ۔ پر اتنی بچی نہیں کہ پہلی چدائی کے خون اور گانڈ پھٹنے کے خون میں فرق نہ سمجھ سکوں ۔ تو میں چپ ہو گیا ۔ کہ اب میرے پاس کوئی جواب نہیں تھا ۔ کہ مجھے یاد تھا کہ میں نے اس وقت اس کے پوچھنے پر کہ آصفہ چیخی کیوں تھی پر کہا تھا کہ غلط کام ہو گیا تھا ۔ مطلب گانڈ میں چلا گیا ۔ خیر وہ بولی کہ اگر اب جھوٹ ہوا تو دوبارہ یہاں کا راستہ بھول جانا ۔ اور مجھے اندر جانے کا کہہ دیا ۔ میں اندر گیا تو نسیمہ چادر اتار کر بیڈ پر بیٹھی ہوئی تھی ۔ میں نے دروازے کو بند کیا ۔ اور نسیمہ کے پاس گیا تو وہ کھڑی ہو گئی اور میرے گلے لگ گئی ۔ اس کی سانسیں ابھی سے آنے والے لحموں کی وجہ سے تیز ہو چکی تھیں ۔ پھر کچھ دیر ہم ایسے کھڑے رہے ۔ اور اس کے بعد اس نے پہل کی اور مجھے کسنگ kissing کرنا شروع کر دی ۔ جس کا میں بھی جواب دے رہا تھا ۔ کچھ دیر تک تو ہم ایک دوسرے کو ہونٹوں کے اوپر ہی کسنگ kissing کرتے رہے ۔ پھر نسیمہ نے میرے ایک ہونٹ کو اپنے ہونٹ میں لے کر اس کو چوسنا شروع کر دیا ۔ اور کچھ دیر بعد اس نے میرے اوپر وایلے ہونٹ کو چھوڑ کر نیچے والے ہونٹ کو اپنے ہونٹوں میں لیکر اس کو چوسنا شروع کر دیا ۔ پھر اس نے اپنی زبان کو میرے ہونٹوں کے اندر پھیرنا شروع کر دیا ۔ جہاں مجھے مزا آ رہا تھا وہیں پر سیکس کے بارے میں بہت کچھ سیکھنے کا موقع مل رہا تھا ۔ میں نے اس وقت خود کو نسیمہ پر چھوڑ دیا کہ اس کا جو دل کر رہا ہے کر لے ۔ پھر اس نے اپنی زبان کو میرے منہ داخل کر دیا ، اور کچھ دیر تو اس کو ادھر اُدھر پھیرتی رہی ۔ پھر اس نے اپنی زبان کو میری زبان پر پھیرنا شروع کر دیا ۔ میں مزے کی اونچائی پر تھا ۔ اور میرا لن میری شلوار میں فل ٹائٹ ہو چکا تھا ۔ اور اس کی پھدی پر ٹکرا رہا تھا ۔ کچھ دیر بعد اس نے مجھے کسنگ کرنا چھوڑ دی ۔ اور مجھے کہنے لگی تم کچھ کیوں نہیں کر رہے تو میں نے کہا آج تو تم میری استانی ہو ۔ اس لیے سیکھنے کی کوشش کر رہا ہوں ۔ تو وہ ہنسنے لگی ۔ اور پھر اس نے یہ کہتے ہوئے کہ چلو آج سیکھ لو سیکس کیسے کرتے ہیں ۔ لیکن اگلی بار سبق نہ دھرایا تو سزا ملے گی ۔ اور میرے کپڑے اتار دیے ۔ اور پھر خود ہی اپنے کپڑے بھی اتار دیے ۔ اب ہم دونوں اب پورے ننگے تھے ۔ اور پھر وہ مجھے لیکر بستر پر آ گئی اور مجھے بستر پر لٹا کر خود میرے اوپر آگئی ۔ اب حالت یہ تھی کہ میں بستر پر سیدھا لٹا ہوا تھا ۔ اور وہ میرے اوپر تھی ۔ اس کے ممے میرے سینے پر تھے ۔ اور اس کی پھدی میرے لن پر تھی ۔ اس نے ایک بار پھر سے مجھے کسنگ کرنا شروع کر دی ۔ اب اس کی کسنگ میں ایک جذباتی پن تھا ۔ وہ میرے ہونٹوں کو چوسنے کے دوران اب بیچ بیچ میں میرے ہونٹوں کو اپنے ہونٹوں میں لیکر کھنچتی ۔ تو کبھی ان کے اوپر اور کبھی اس کے اندر زبان پھیرتی ۔ اور اپنی گانڈ کو اوپر نیچے کر کے اپنی پھدی کو میرے لن پر رگڑ رہی تھی پھر کچھ دیر بعد وہ نیچے جانے لگی ۔ اور اس نے میرے جسم کے ہر حصے پر اپنوں ہونٹوں سے مہر لگائی ۔ اور پھر میرے سینے پر سے ناف آگئی ۔ اور اس کے ممے میرے اب لن پر ٹکرا رہے تھے ۔ اور پھر اس نے اپنے مموں کو میرے لن پر رگڑنا شروع کر دیا ۔ کچھ دیر بعد اس کی زبان میرے لن کے اوپر والے حصے پر پہنچ گئی ۔ پھر اس نے میرے اس جگہ پر جہاں بال ہوتے ہیں پرآج بلکل صاف تھی پر اپنی زبان پھیرنی شروع کر دی ۔ اور کبھی کبھی اپنے ہونٹوں سے میرے ماس ( چمڑی ) کو جیسے کاٹ رہی ہو ایسے کھینچتی ۔ مجھے بہت مزا آ رہا تھا ۔ آج وہ کھل کر پیار کر رہی تھی ۔ پھر اس نے اپنی زبان کی نوک سے میرے لن کی جڑ پر مالش کرنا شروع کر دی ۔ اور میں مزے سے بس سیدھا لیٹا اس کی ہر حرکت کو اینجوائے کر رہا تھا ۔ کچھ دیر میں اس نے میرے ٹٹوں پر زبان پھیرنی شروع کردی ۔ اور اچانک اس نے میرے ٹٹوں کو اپنے منہ لے لیا ۔ نہ جانے کیا ہوا کہ میرے منہ سے مزے اور درد سے ملی جلی آواز نکل گئی کہ جہاں مجھے اس حرکت سے مزا آیا ۔ وہیں درد بھی ہوا تھا پھر اس نے کچھ دیر بعد میرے ٹٹوں کو منہ سے نکال دیا ۔ اور پھر ٹٹوں کو ہاتھ سے پکڑ اوپر کیا ۔ اور ان کے نیچے اپنی زبان کی نوک پھیرنی شروع کر دی ۔ اور میں مزے سے اچھل پڑا ۔ اور میرے منہ سے بے اختیار سسکی نکل گئی ۔وہ اپنی زبان کی نوک کو ٹٹوں کی جڑ سے لیکر میری گانڈ کے سوراخ تک لے جاتی ۔ اور پھر اپنی پوری زبان کو گانڈ سے ٹٹوں تک مالش کرتے ہوئے آتی ۔ جب تک وہ اپنی زبان پھیرتی رہی ۔ میں مچلتا رہا اور سسکتا رہا ۔ ایسا مزے کا تو میں سوچ بھی نہیں سکتا تھا ۔ جو مزا آج نسیمہ مجھے دے رہی تھی ۔ کچھ دیر بعد اس نے ایسا کرنا چھوڑ دیا ۔ اور پھر سے اوپر ہونے لگی
  6. یہ سب زندگی کا حصہ ہے ۔ میں اللہ سے دعا کروں گا کہ وہ آپ سب کو صبر و جمیل عطا فرمائے اور چلے جانے والے کو جنت میں بلند مقام عطا فرمائے اور صخیرہ و کبیرا گناہ معاف فرمائے
  7. کل یہ کہانی مکمل ہو جائے گی
  8. سر انسان کی اوقات اس کے بولنے سے اور پیش آنے کے طریقے سے پتہ چل جاتی ہے ۔ ایسے لوگوں کو اگنور کریں کہ یہ ہمارے معاشرے کے ناسور ہیں
  9. سر اس سے پچھلی آپ ڈیٹ کا پیج نمبر کیا ہے ۔ کیا آپ بتانا پسند کریں گے مہربانی ہو گی
  10. سر اس سے پچھلی آپ ڈیٹ کا پیج پر ہے ۔ کیا آپ بتانا پسند کریں گے مہربانی ہو گی
  11. سر اس سے پچھلی آپ ڈیٹ کا پیج پر ہے ۔ کیا آپ بتانا پسند کریں گے مہربانی ہو گی
  12. سوری ڈاکٹر صاحب اگر آپ کو میری بات بری لگے اپ پابند ہو کہ آپ کی عنایت کی وجہ سے یہ کہانی چل رہی ہے ۔ شیخو صاحب کو تو ایسے چپ چاپ چلے گے جیسےوہ کسی سے ادھار مانگ کر بھاگ جانا چاہتے ہوں مانتا ہوں کہ ان کی مجبوری ہو گی ۔ پر آپ وقت دیکھیں کہ اس تمام عرصے میں کتنا پانی پلوں کے نیچے سے گزر گیا ۔ سو ، میری تو درخواست ہے کہ آپ کو یہ کہانی مکمل کرنی چاہیے
  13. جناب معذرت کے ساتھ جب انسان بنا کسی کو بتائے ، کسی سے رابطہ کیے غائئب ہو جائے تو ایک وقت آتا ہے کہ انسان اس کو بھول جاتا ہے جہاں تک بات تک بات ہے کہانی کی تو جب آپ ایک عرصہ تک غائب رہے ۔ کسے سے رابطہ نہیں تو آپ کیسے کہتے ہو کہ سب بدل دیا گیا پھر آپ کہتے ہو کہ میں اردو فنڈا میں بھی لکھوں گا ۔ مطلب یہ کہ آپ کسی کے ساتھ مخلص ہو کر چلنا نہیں چاہتے آپ کو کہا جا رہا ہے کہ کہانی کو شروع کریں ۔ اپنا نام پھر سے دئیں پر آپ کی شرائط عجیب ہیں تو میرے بھائی ۔ کوئی کیسے آپ کے ساتھ چلے کہانی پڑھنے والے تو ہزاروں سائٹس چک کرتے ہیں ۔ بہت سے لوگ ایک کہانی کو ادھر سے کاپی کر کے دوسری جگہ یا دوسری جگہ سے کاپی کر کے ادھر پوسٹ کر دیتے ہیں ۔ تو کیا سب کو ایک جیسی عزت ملے گی ایساتو نہ ممکن ہے ۔ اس لیے میں آپ سے درخواست کروں گا کہ ایک فیصلہ کریں ۔ تاکہ ہمیں پتہ چل سکے کہ کون کیا ہے باقی بات ڈاکٹر صاحب کے لکھنے یا اس کہانی کو ادھورا چھوڑنے کی تو میں ایک ریڈر ہونے کی حثیت سے مشورہ دوں گا کہ آگر شیخو صاحب کہانی چلاتے ہیں تو ٹھیک ورنہ آپ اس کو چلاتے رہیں
×
×
  • Create New...