Jump to content
URDU FUN CLUB

khoobsooratdil

Members
  • Content Count

    2,918
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    41

khoobsooratdil last won the day on October 31

khoobsooratdil had the most liked content!

Community Reputation

682

About khoobsooratdil

  • Rank
    Super Moderator

Profile Information

  • Gender
    Male
  • Location

Recent Profile Visitors

The recent visitors block is disabled and is not being shown to other users.

  1. Zabardast plot ha Dr sahab yaqeenan buhat maza aanay wala ha is kahani me bhi or ye hamaray aas paas ki ek haqeeqat bhi ha
  2. عشق ہو تیری زات ہو پھر عشق حسن کی بات ہو کبھی میں ملوں کبھی تو ملے کبھی ہم دونوں چپ چاپ ہوں کبھی گفتگو کبھی تزکرے کبھی زکر ہو کوئی بات ہو کبھی میں تیری کبھی تو میرا کبھی ایک دوجے کے ہم رہیں کبھی رنجشیں کبھی دوریاں کبھی قربتیں کبھی الفتیں کبھی جیت ہو کبھی ہار ہو نا نشیب ہوں نا اداس ہوں صرف تیرا عشق ہو میری زات
  3. تمہیں کیسے بتائیں ہم محبت اور کہانی میں کوئی رشتہ نہیں ہوتا کہانی میں تو ہم واپس بھی آتے ہیں محبت میں پلٹنے کا کوئی رستہ نہیں ہوتا ذرا سوچو! کہیں دل میں خراشیں ڈالتی یادوں کی سفاکی کہیں دامن سے لپٹی ہے کسی بھولی ہوئی ساعت کی نم ناکی کہیں آنکھوں کے خیموں میں خراغِ خواب گل کرنے کی سازش کو ہوادیتی ہوئی راتوں کی چالاکی مگر میں بندہ خاکی نہ جانے کتنے فرعونوں سے اُلجھی ہے مرے لہجے کی بے باکی مجھے دیکھو مرے چہرے پہ کتنے موسوں کی گرد اور اس گرد کی تہہ میں سمے ی دھوپ میں رکھا اک آئینہ اور آئینے میں تاحد نظر پھیلے محبت کے ستارے عکس بن کر جھلملاتے ہیں نئی دنیاؤں کا رستہ بتاتے ہیں اسی منظر میں آئینے سے الجھی کچھ لکیریں ہیں لکیروں میں کہانی ہے کہانی اور محبت میں ازل سے جنگ جاری ہے محبت میں اک ایسا موڑ آتا ہے جہاں آکر کہانی ہار جاتی ہے کہانی میں کچھ کردار ہم خود فرض کرتے ہیں محبت میں کوئی کردار بھی فرضی نہیں ہوتا کہانی میں کئی کردار زندہ ہی نہیں رہتے محبت اپنے کرداروں کو مرنے ہی نہیں دیتی کہانی کے سفر میں منظروں کی دھول اڑتی ہے محبت کی مسافر راہ گیروں کو بکھرنے ہی نہیں دیتی محبت اک شجر ہے اور شجر کو اس سے کیا مطلب کہ اس کے سائے میں جو بھی تھکا ہارا مسافر آکے بیٹھا ہے اب اس کی نسل کیا ہے دنگ کیسا ہے کہاں سے آیا ہے کس سمت جانا ہے شجر کا کام تو بس چھاؤں دینا ہے دھوپ سہنا ہے اسے اس سے غرض کیا ہے پڑاؤ ڈالنے والوں میں کس نے چھاؤں کی تقسیم کا جھگڑا اُٹھا یا ہے کہاں کس عہد کو توڑا کہاں وعدہ نبھایا ہے مگر ہم جانتے ہیں چھاؤں جب تقسیم ہوجائے تو اکثر دھوپ کے نیزے رگ و پے میں اترتے ہیں اور اس کے زخم خوردہ لوگ جیتے ہیں نہ مرتے ہیں۔۔۔ ۔۔
  4. کہنے کو محبت ہے لیکن ، اب ایسی محبت کیا کرنی،؟ جو نیند چُرا لے آنکھوں سے، جو خواب دکھا کر آنکھوں کو، تعبیر میں کانٹے دے جاۓ، جو غم کی کالی راتوں سے، ہر آس کا جگنو لے جائے، جو خواب سجاتی آنکھوں کو، آنسو ہی آنسو دے جائے، جو مشکل کر دے جینے کو، جو مرنے کو آسان کرے، وہ دل جو پیار کا مندر ہو، اس مندر کو برباد کرے، اور یادوں کو مہمان کرے، اب ایسی محبت کیا کرنی،؟ جو عمر کی نقدی لے جائے، اور پھر بھی جھولی خالی ہو، وہ صورت دل كا روگ بنے، جو صورت دیکھی بھالی ہو، جو قیس بنا دے انساں کو، جو رانجھا اور فرہاد کرے، جو خوشیوں کو برباد کرے، اب ایسی محبت کیا کرنی،؟ دیکھو تو محبت بارے میں، ہر شخص یہی کچھ کہتا ہے، سوچو تو محبت کے اندر، اک درد ہمیشہ رہتا ہے، پھر بھی جو چیز محبت ہوتی ہے، کب ان باتوں سے ڈرتی ہے، کب انکے باندھے رکتی ہے، جس دل میں اسنے بسنا ہو، بس چپکے سے بس جاتی ہے، اک بار محبت ہو جائے، پھر چاہے جینا مشکل ہو، یا جھولی خالی رہ جائے، یا آنکھیں آنسو بن جائیں، پھر اسکی حکومت ہوتی ہے، آباد کرے، برباد کرے، اک بار محبت ہو جائے، کب ان باتوں سے ڈرتی ہے، کب کسی کے روکے رکتی ہے، اب ایسی محبت کیا کرنی،؟؟ :-)
  5. ﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﻭﻗﺖ ﺍﯾﮏ ﭼﻮﺭ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﺍ۔ ﮐﻤﺮﮮ ﮐﺎ ﺩﺭﻭﺍﺯﮦ ﮐﮭﻮﻻ ﺗﻮ ﻣﺴﮩﺮﯼ ﭘﺮ ﺍﯾﮏ ﺑﻮﮌﮬﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﺳﻮ ﺭﮨﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﮐﮭﭧ ﭘﭧ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺍٓﻧﮑﮫ ﮐﮭﻞ ﮔﺌﯽ۔ ﭼﻮﺭ ﻧﮯ ﮔﮭﺒﺮﺍ ﮐﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻟﯿﭩﮯ ﻟﯿﭩﮯ ﺑﻮﻟﯽ ’’ ﺑﯿﭩﺎ ﺗﻢ ﺷﮑﻞ ﺳﮯ ﮐﺴﯽ ﺍﭼﮭﮯ ﮔﮭﺮﺍﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﮨﻮ، ﯾﻘﯿﻨﺎً ﺣﺎﻻﺕ ﺳﮯ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺍﺱ ﺭﺍﺳﺘﮯ ﭘﺮ ﻟﮓ ﮔﺌﮯ ﮨﻮ۔ ﭼﻠﻮ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﺎﺕ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﺍﻟﻤﺎﺭﯼ ﮐﮯ ﺗﯿﺴﺮﮮ ﺧﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺗﺠﻮﺭﯼ ﮨﮯ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﺭﺍ ﻣﺎﻝ ﮨﮯ ﺗﻢ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﻭﮦ ﻟﮯ ﺟﺎﻧﺎ۔ ﻣﮕﺮ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺁﮐﺮ ﺑﯿﭩﮭﻮ، ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﺧﻮﺍﺏ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺫﺭﺍ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﮐﯽ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﺗﻮ ﺑﺘﺎ ﺩﻭ ﭼﻮﺭ ﺍﺱ ﺑﻮﮌﮬﯽ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﯽ ﺭﺣﻤﺪﻟﯽ ﺍﻭﺭ ﺷﻔﻘﺖ ﺳﮯ ﺑﮍﺍ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﺍ ﺍﻭﺭ ﺧﺎﻣﻮﺷﯽ ﺳﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺟﺎ ﮐﺮ ﺑﯿﭩﮫ ﮔﯿﺎ۔ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﺧﻮﺍﺏ ﺳﻨﺎﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﺎ ’’ ﺑﯿﭩﺎ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﺩﯾﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺻﺤﺮﺍ ﻣﯿﮟ ﮔﻢ ﮨﻮﮔﺌﯽ ﮨﻮﮞ ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﭼﯿﻞ ﻣﯿﺮﮮ ﭘﺎﺱ ﺁﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻧﮯ 3 ﺩﻓﻌﮧ ﺯﻭﺭ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﺑﻮﻻ ﻣﺎﺟﺪ ۔ ۔ ﻣﺎﺟﺪ ۔ ۔ ﻣﺎﺟﺪ !!! ﺑﺲ ﭘﮭﺮ ﺧﻮﺍﺏ ﺧﺘﻢ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﻣﯿﺮﯼ ﺁﻧﮑﮫ ﮐﮭﻞ ﮔﺌﯽ۔ ﺫﺭﺍ ﺑﺘﺎﻭٔ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﮐﯿﺎ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﮨﻮﺋﯽ؟ ‘‘ ﭼﻮﺭ ﺳﻮﭺ ﻣﯿﮟ ﭘﮍ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﺍﺑﺮ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﻤﺮﮮ ﺳﮯ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﮐﺎ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﺑﯿﭩﺎ ﻣﺎﺟﺪ ﺍﭘﻨﺎ ﻧﺎﻡ ﺯﻭﺭ ﺯﻭﺭ ﺳﮯ ﺳﻦ ﮐﺮ ﺍﭨﮫ ﮔﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﻧﺪﺭ ﺁﮐﺮ ﭼﻮﺭ ﮐﯽ ﺧﻮﺏ ﭨﮭﮑﺎﺋﯽ ﻟﮕﺎﺋﯽ۔ ﺑﮍﮬﯿﺎ ﺑﻮﻟﯽ ’’ ﺑﺲ ﮐﺮﻭ ﺍﺏ ﯾﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﮐﯿﮯ ﮐﯽ ﺳﺰﺍ ﺑﮭﮕﺖ ﭼﮑﺎ۔ ‘‘ ﭼﻮﺭ ﺑﻮﻻ ’’ ﻧﮩﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﺠﮭﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﺭﻭ ﺗﺎﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺁﺋﻨﺪﮦ ﯾﺎﺩ ﺭﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﯿﮟ ﭼﻮﺭ ﮨﻮﮞ ﺧﻮﺍﺑﻮنﮐﯽ ﺗﻌﺒﯿﺮ ﺑﺘﺎﻧﮯ ﻭﺍﻻ ﻧﮩﯿﮟی
  6. ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﮨﺮ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻟﮍﮐﮯ ﺍﻭﺭ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﺻﻼﺣﯽ ﺗﺤﺮﯾﺮ ﺧﻮﺩ ﺑﮭﻲ ﭘﮍﮬﯿﮯ ﺍﻭﺭ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺷﯿﺌﺮ ﮐﯿﺠﯿﮯ۔۔ ﺻﻨﻒ ﻧﺎﺯﮎ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺩﮬﻮﺭﯼ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﻮ ﻣﮑﻤﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﯾﮏ ﺟﯿﻮﻥ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺟﯿﻮﻥ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺷﺮﻭﻉ ﺷﺮﻭﻉ ﻣﯿﮟ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﮨﻮﺍ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﮨﻢ ﺟﺲ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺟﯽ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﺳﮯ ﺷﺮﻡ ﺣﯿﺎﺀﮐﺎ ﭘﯿﮑﺮ، ﻋﺰﺕ ﻭ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﮐﺎ ﮔﮩﻮﺍﺭﮦ ﺳﻤﺠﮭﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﻐﺮﺑﯽ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﮯ ﺑﺮﮮ ﺍﺛﺮﺍﺕ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﺳﺮﺣﺪﻭﮞ ﭘﺮ ﭘﮍ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﭘﻮﺭﯼ ﺩﻧﯿﺎ ﺳﮯ ﮨﻢ ﮐﮩﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻋﺰﺕ ﻭ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﺍﻭﺭ ﺷﺮﻡ ﻭ ﺣﯿﺎﺀﮐﯽ ﺍﻋﻠﯽٰ ﻣﺜﺎﻝ ﮨﯿﮟ، ﺟﺲ ﮐﺎ ﺍﻋﺰﺍﺯ ﻋﻔﺖ ﻭ ﻋﺼﻤﺖ ﮐﯽ ﭘﯿﮑﺮ ﻣﺸﺮﻗﯽ ﺩﻭﺷﯿﺰﮦ ﮐﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻣﮕﺮ ﮐﭽﮫ ﻋﺮﺻﮯ ﺳﮯ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﮯ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻃﺒﻘﮯ ﮐﺎ ﺭﺟﺤﺎﻥ ﻣﺎﮈﺭﻥ ﺍﺯﻡ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺑﮍﮬﺘﺎ ﺟﺎﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺣﺎﻻﺕ ﮔﻤﺒﮭﯿﺮ ﺭﺍﮨﻮﮞ ﭘﺮ ﮔﺎﻣﺰﻥ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﻭﯾﻠﻨﭩﺎﺋﻦ ﮈﮮ، ﺍﭘﺮﯾﻞ ﻓﻮﻝ ﻭﺩﯾﮕﺮ ﻏﯿﺮ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﺳﺮﮔﺮﻣﯿﺎﮞ ﺍﺱ ﺑﮯ ﮨﻨﮕﻢ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﺎ ﻣﻨﮧ ﺑﻮﻟﺘﺎ ﺛﺒﻮﺕ ﮨﯿﮟ۔ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻏﯿﺮ ﻣﻠﮑﯽ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺳﮯ ﻣﺘﺎﺛﺮ ﮨﻮﮐﺮ ﺍﭘﻨﯽ ﻃﺮﺯ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﺭﮨﻦ ﺳﮩﻦ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﻠﭽﺮ ﺍﻭﺭ ﺛﻘﺎﻓﺖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﮐﻮﺷﺶ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﺲ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻃﺒﻘﮯ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﺍ ﺣﺼﮧ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﻗﺪﺭﻭﮞ ﮐﻮ ﭘﺎﻣﺎﻝ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﺼﻮﺭﺍﺕ ﺍﻭﺭ ﺧﯿﺎﻻﺕ ﮐﻮ ﭘﺮﻭﺍﻥ ﭼﮍﮬﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺧﺎﺹ ﺣﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺗﻨﮩﺎ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﺴﻞ ﺍﭘﻨﮯ ﺟﯿﻮﻥ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﻟﮓ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﺗﮏ ﻭﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻠﺘﺎ ﺗﺐ ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺷﮩﺰﺍﺩﯼ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﮕﮧ ﺗﻮﺟﮧ ﺑﺤﺚ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﯾﮩﺎﮞ ﺑﺎﺕ ﺷﮩﺰﺍﺩﮮ ﮐﯽ ﮨﻮﺭﮨﯽ ﮨﮯ۔ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﮐﺒﮭﯽ ﺗﻮ ﮐﺴﯽ ﮐﻼﺱ ﻓﯿﻠﻮ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﺴﯽ ﺭﺷﺘﮯ ﺩﺍﺭ، ﮔﻠﯽ، ﻣﺤﻠﮯ ﮐﮯ ﺭﮨﺎﺋﺸﯽ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﺩﻝ ﮐﮯ ﻧﮩﺎ ﺧﺎﻧﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﭘﻨﮩﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻟﮍﮐﮯ ﺍﻭﺭ ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺍﭘﻨﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺍﺱ ﺧﺎﺹ ﺍﺳﭩﯿﺞ ﭘﺮ ﺟﺐ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺍﺩﮬﻮﺭﺍ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﮩﺰﺍﺩﮮ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﻧﮑﻞ ﭘﮍﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻥ ﺷﮩﺰﺍﺩﻭﮞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻃﻮﯾﻞ ﺍﻭﺭ ﻟﻤﺒﯽ ﻗﻄﺎﺭﯾﮟ ﻋﻤﻮﻣﺎً ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻟﺠﺰ ﮐﮯ ﺁﺱ ﭘﺎﺱ ﮐﺜﯿﺮ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﻣﯿﮟ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﮩﺎﮞ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺩﻭﺷﯿﺰﺍﺋﯿﮟ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﯽ ﺗﻠﺨﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺳﺨﺘﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﺎﻭﺍﻗﻒ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﮯ ﺍﻥ ﺩﺭﻧﺪﻭﮞ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮﺟﺎﺗﯿﮟ ﮨﯿﮟ۔ ﺟﻨﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﻈﺮ ﺍﻧﺘﺨﺎﺏ ﺳﻤﺠﮭﻨﮯ ﻟﮕﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﯾﺴﮯ ﺷﮩﺰﺍﺩﻭﮞ ﮐﮯ ﺟﮭﺎﻧﺴﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺩﻝ ﻭ ﺩﻣﺎﻍ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﮨﯽ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﻧﻘﺶ ﮐﺮﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺩﻥ ﮐﺎ ﭼﯿﻦ ﻭ ﺁﺭﺍﻡ، ﺭﺍﺗﻮﮞ ﮐﺎ ﺳﮑﻮﻥ ﺑﺲ ﺍﭘﻨﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﺍﺗﻔﺎﻗﯽ ﭘﺮ ﻗﺮﺑﺎﻥ ﮐﺮﺩﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﮨﺮ ﭘﻞ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﮩﺰﺍﺩﮮ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺑﯿﺘﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺗﻤﻨﺎﺋﯿﮟ، ﺁﺭﺯﻭﺋﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﻋﺎﺋﯿﮟ ﻟﺐ ﭘﺮ ﺭﻗﺺ ﮐﺮﺗﯽ ﺭﮨﺘﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﻣﺖ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﭘﮍﮬﺎ ﻟﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﮨﻮﻧﮩﺎﺭ ﻣﻌﺎﺷﺮﮦ ﺩﯾﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﯾﮧ ﺩﻭﺷﯿﺰﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺣﻘﯿﻘﯽ ﻣﻘﺼﺪ ﮐﻮ ﺑﮭﻮﻝ ﮐﺮ ﻻﯾﻌﻨﯽ ﺧﯿﺎﻻﺕ ﮐﯽ ﮐﮭﯿﺘﯽ ﮐﻮ ﺩﻝ ﻣﯿﮟ ﭘﺎﻟﻨﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﻮﮞ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﯾﮧ ﻧﻨﮭﺎ ﺳﺎ ﭘﻮﺩﺍ ﻭﻗﺖ ﺑﯿﺘﻨﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺗﻨﺎﺁﻭﺭ ﺩﺭﺧﺖ ﺑﻦ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻋﻔﺖ ﻭ ﻋﺼﻤﺖ ﮐﯽ ﭘﯿﮑﺮ ﻣﻌﺎﺷﺮﺗﯽ ﺧﺮﺍﺑﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﺑﮯ ﺧﺒﺮ ﯾﮧ ﺩﻭﺷﯿﺰﮦ ﺑﮯ ﺧﻮﺩ ﯼ ﻣﯿﮟ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﮯ ﺩﮨﺎﺭﮮ ﭘﺮ ﭼﮭﻮﮌ ﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﺎ ﻣﮑﻤﻞ ﺣﻖ ﺍﭘﻨﮯ ﻏﯿﺮ ﺷﺮﻋﯽ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﮐﺮﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﮐﻞ ﮐﺎ ﻭﮦ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﺁﺝ ﮐﺎ ﺟﯿﺘﺎ ﺟﺎﮔﺘﺎ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﺎ ﭘﻮﺭﺍ ﺣﻖ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻟﯿﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺩﻥ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﯾﮧ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﺍﯾﮏ ﺑﮯ ﺻﺒﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻃﻮﯾﻞ ﻋﺮﺻﮯ ﺳﮯ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﮐﺎ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﮐﯿﮯ ﺑﻐﯿﺮ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺍﻇﮩﺎﺭ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺑﺎﻭﺭ ﮐﺮﺍ ﺭﮨﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﮨﯽ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻭﮦ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺁﺋﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﯾﮧ ﯾﻘﯿﻨﯽ ﺩﮨﺎﻧﯽ ﺳﻨﻨﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺗﻮ ﮔﻮﯾﺎ ﻭﮦ ﺍﺱ ﭘﺮ ﻟﭩﻮ ﮨﻮﺋﮯ ﺟﺎﺭﮨﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﺴﺎ ﮨﺮﮔﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺗﺎ۔ ﺟﺐ ﻣﺤﺒﺖ ﭘﺮ ﻣﺮ ﻣﭩﻨﮯ ﮐﮯ ﻭﻋﺪﮮ ﮐﯿﮯ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﯽ ﺗﻠﺨﯿﻮﮞ ﺳﮯ ﻟﮍﻧﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﮐﮯ ﺣﺼﻮﻝ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﮨﺮ ﺣﺪ ﮐﻮ ﭘﺎﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻋﺰﻡ ﮐﺮﭼﮑﮯ ﮨﻮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﭘﮭﺮ ﻣﻌﺼﻮﻡ ﺩﻭﺷﯿﺰﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﻮ ﺧﻮﺩ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﯿﺎﻟﯽ ﮨﻤﺴﻔﺮ ﮐﻮ ﺑﮭﯽ ﻣﮑﻤﻞ ﺣﻖ ﺩﺍﺭ ﭨﮭﮩﺮﺍﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯾﺘﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺟﺐ ﻭﮦ ﻣﻘﺼﺪ ﺑﮯ ﺍﯾﻤﺎﻧﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﮨﻮﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﮯ ﺯﻭﺍﻝ ﮐﯽ ﭘﮩﻠﯽ ﺳﯿﮍﯼ ﮐﻮ ﻋﺒﻮﺭ ﮐﺮﭼﮑﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﭘﮭﺮ ﺩﻧﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﮨﻔﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﻣﺤﯿﻂ ﯾﮧ ﻣﺤﺒﺖ ﺭﯾﺖ ﮐﯽ ﺩﯾﻮﺍﺭ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺩﮬﮍﻡ ﺳﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﮔﺮ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﻮﮞ ﺁﺳﻤﺎﻥ ﮐﯽ ﺑﻠﻨﺪﯾﻮﮞ ﮐﻮ ﭼﮭﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺍﺗﻔﺎﻗﯽ ﻣﺤﺒﺖ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺠﺎﻡ ﮐﻮ ﭘﮩﻨﭻ ﭼﮑﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﻡ ﻣﺤﺒﻮﺏ ﺍﭘﻨﯽ ﺣﻮﺱ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮﮐﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺩﻭﺭ ﺟﺎ ﭼﮑﺎ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﺑﺎ ﮐﯽ ﺷﻔﻘﺖ، ﺑﮭﺎﺋﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﻏﯿﺮﺕ، ﺑﮩﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻧﺲ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﮞ ﮐﯽ ﻣﻤﺘﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﺋﮯ ﻣﯿﮟ ﭘﻠﻨﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﯾﮧ ﻋﻔﺖ ﻭ ﻋﺼﻤﺖ ﮐﯽ ﭘﯿﮑﺮ ﺩﻭﺷﯿﺰﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺮﭼﯽ ﮐﺮﭼﯽ ﻋﺰﺕ ﮐﻮ ﺳﻨﺒﮭﺎﻟﺘﯽ ﭨﻮﭨﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻭﮨﯿﮟ ﮐﯽ ﻭﮨﯿﮟ ﮐﮭﮍﯼ ﺭﮦ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺣﺎﻻﺕ ﺑﺪﻟﺘﮯ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﻣﮕﺮ ﻋﺰﺕ ﮐﺎ ﺑﯿﻮﭘﺎﺭﯼ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﺎ ﻣﺪﻋﯽ ﮐﺒﮭﯽ ﻟﻮﭦ ﮐﺮ ﻭﺍﭘﺴﯽ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﻧﮩﯿﮟ ﻟﯿﺘﺎ۔ ﯾﻮﮞ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﮩﺰﺍﺩﮮ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﻣﯿﮟ ﺩﺭ ﺩﺭ ﭘﮭﺮﺗﯽ ﯾﮧ ﺩﻭﺷﯿﺰﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﺗﮏ ﺳﮯ ﻧﻔﺮﺕ ﮐﺮﻧﮯ ﻟﮓ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﮯ ﻧﺘﺎﺋﺞ ﺧﻮﺩﮐﺸﯿﻮﮞ، ﻣﻨﺸﯿﺎﺕ ﮐﯽ ﻋﺎﺩﺕ، ﺍﺧﻼﻗﯽ ﺧﺮﺍﺑﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺻﻮﺭﺕ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﯾﺴﯽ ﮐﺌﯽ ﺩﺍﺳﺘﺎﻧﯿﮟ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﮐﮯ ﺑﺪﻧﻤﺎ ﺩﺍﻍ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺟﮕﮧ ﺟﮕﮧ ﻧﻈﺮ ﺁﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺩﺳﻤﺒﺮ 2012 ﺀﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯽ ﮔﺌﯽ ﺟﺲ ﻣﯿﮟ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺧﻮﺩﮐﺸﯿﻮﮞ ﮐﮯ 80 ﻓﯿﺼﺪ ﻭﺍﻗﻌﺎﺕ ﻣﯿﮟ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻃﺒﻘﮧ ﻣﻠﻮﺙ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺍﻥ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﮐﺴﯽ ﺧﺎﺹ ﺣﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﻗﺪﻡ ﺭﮐﮫ ﭼﮑﯽ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﮩﺰﺍﺩﮮ ﮐﯽ ﺗﻼﺵ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻧﺎﻡ ﻧﮩﺎﺩ ﻣﺤﺒﺖ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺟﮭﻠﮏ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﮮ ﭘﯿﻤﺎﻧﮯ ﭘﺮ ﺳﺮﮔﺮﻡ ﺍﯾﮏ ﺑﺮﺍﺋﯽ ﮐﯽ ﻋﮑﺎﺳﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺟﺲ ﮐﺎ ﺍﻧﺪﺍﺯﮦ ﺭﻭﺯ ﻣﺮﮦ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﮐﺌﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﻧﻮﺟﻮﻥ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﺟﮍﺗﯽ ﺯﻧﺪﮔﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﺩﯾﮑﮫ ﮐﺮ ﻟﮕﺎﯾﺎ ﺟﺎﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﮔﺮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﻭﮞ ﮐﯽ ﯾﮩﯿﮟ ﺻﻮﺭﺗﺤﺎﻝ ﺭﮨﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﻭﻗﺖ ﺑﻌﯿﺪ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮧ ﺟﺐ ( ﺧﺪﺍ ﻧﺨﻮﺍﺳﺘﮧ ) ﮨﻢ ﺧﻮﺩ ﮐﺴﯽ ﺍﯾﺴﮯ ﺣﺎﺩﺛﮯ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﮨﻮﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﺁﺝ ﮨﻤﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﺳﮯ ﺍﺱ ﺑﺮﺍﺋﯽ ﮐﻮ ﻣﭩﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﺍﺩﺍ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﻮﮔﺎ۔ ﺧﺎﺹ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺧﻮﺍﺗﯿﻦ ﺟﻦ ﮐﻮ ﺍﯾﺴﮯ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﺎ ﺳﺎﻣﻨﺎ ﮨﮯ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺳﻨﺒﮭﺎﻟﯿﮟ۔ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﮯ ﮨﺮ ﻗﺪﻡ ﮐﻮ ﺧﻮﺏ ﺳﻮﭺ ﺳﻤﺠﮫ ﮐﺮ ﺭﮐﮭﯿﮟ، ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺍﺱ ﻧﺎﺑﯿﻨﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﮧ ﺟﻮ ﭘﮩﺎﮌﯼ ﻋﻼﻗﮯ ﻣﯿﮟ ﺍﺟﻨﺒﯽ ﻣﺴﺎﻓﺮ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﮭﭩﮏ ﺭﮨﺎ ﮨﻮ۔ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﺮﮔﺰ ﺗﻠﺦ ﻧﮩﯿﮟ ﺍﮔﺮ ﺍﺱ ﮐﻮ ﮔﺰﺍﺭ ﻧﮯ ﮐﺎ ﮈﮬﻨﮓ ﺳﯿﮑﮫ ﻟﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﮐﻮﻥ ﺍﭼﮭﺎ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﻮﻥ ﺑﺮﺍ؟، ﺍﺱ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﭘﺮ ﭼﮭﻮﮌﺍ ﺟﺎﺋﮯ۔ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﮩﺰﺍﺩﮮ ﮐﯽ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻓﮑﺮ ﺍﻥ ﮐﻮ ﮨﮯ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﻧﮕﻠﯽ ﭘﮑﮍ ﮐﺮ ﭼﻠﻨﺎ ﺳﯿﮑﮭﺎﯾﺎ۔ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﺗﻮ ﺁﭖ ﻧﮯ ﭼﻠﻨﮯ ﮐﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﮨﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﺳﯿﮑﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﺎ ﻣﻘﺎﺑﻠﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﮐﯿﺴﮯ ﺳﻮﭺ ﻟﯿﺎ۔ ﯾﮧ ﺑﺎﺕ ﺣﻘﯿﺖ ﮨﮯ ﺟﺴﮯ ﮨﻢ ﺑﮭﻼ ﺑﯿﭩﮭﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻟﻠﮧ ﺗﻌﺎﻟﯽٰ ﮐﺴﯽ ﭘﺮ ﺍﺱ ﮐﯽ ﻃﺎﻗﺖ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺑﻮﺟﮫ ﻧﮩﯿﮟ ﮈﺍﻟﺘﺎ۔ ﺍﮔﺮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻣﻌﺎﺷﺮﻭﮞ ﻣﯿﮟ ﯾﮧ ﺑﺮﺍﺋﯽ ﭘﺎﺋﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺻﻨﻒ ﻧﺎﺯﮎ ﮐﻮ ﭨﺸﻮ ﭘﯿﭙﺮﺯ ﮐﯽ ﻃﺮﺡ ﺍﺳﺘﻌﻤﺎﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﻮﻗﻊ ﮨﻢ ﺧﻮﺩ ﻓﺮﺍﮨﻢ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺍﮔﺮ ﮨﻢ ﯾﮧ ﺳﻮﭺ ﻟﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺧﻮﺩ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮﻧﺎ ﺑﻠﮑﮧ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﻧﮯ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﺷﺎﯾﺪ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﻣﯿﮟ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﯽ ﺗﺼﻮﯾﺮ ﺭﻗﻢ ﮨﯽ ﻧﮧ ﮨﻮ۔ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﺭﺩﮔﺮﺩ ﻣﯿﮟ ﭘﮭﯿﻠﯽ ﺍﺱ ﺧﻠﻖ ﺧﺪﺍ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﮐﺮﯾﮟ ﻣﮕﺮ ﺍﯾﮏ ﺣﺪ ﺗﮏ۔ ﮨﺮ ﻣﺴﮑﺮﺍﮐﺮ ﻣﻠﻨﮯ ﻭﺍﻻ ﺁﭖ ﮐﺎ ﺩﻭﺳﺖ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ۔ ﺍﭘﻨﯽ ﺯﻧﺪﮔﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﻓﯿﺼﻠﮯ ﻣﮑﻤﻞ ﮨﻮﺵ ﻭ ﺣﻮﺍﺱ ﺍﻭﺭ ﺑﺎﮨﻤﯽ ﻣﺸﺎﻭﺭﺕ ﺳﮯ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺣﺎﻻﺕ ﮐﯽ ﺗﻠﺨﯿﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺟﺬﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﮨﺎﺗﮭﻮﮞ ﻣﺠﺒﻮﺭ ﮨﻮﮐﺮ ﮐﺒﮭﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﺍﯾﺴﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ ﮐﮧ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻓﺎﻧﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﻣﯿﮟ ﺑﭽﮭﺘﺎﻭﮮ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﺮﺗﯿﮟ ﺭﮦ ﺟﺎﺋﯿﮟ۔ ﮨﺮ ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺁﭖ ﮐﮯ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﺎ ﺷﮩﺰﺍﺩﮦ ﮐﺎ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﭼﮭﯽ ﺍﻭﺭ ﺑﮩﺘﺮ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺩﮮ۔ ﯾﮧ ﺷﺨﺺ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮨﻮﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﺴﮯ ﺁﭖ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺑﮭﯽ ﮐﮧ ﺟﺴﮯ ﺁﭖ ﻧﮯ ﮐﺒﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﺎ، ﺳﻮﭼﺎ ﺗﮏ ﻧﮧ ﮨﻮ۔ ﺍﺳﯽ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﮩﺘﺮ ﺍﻭﺭ ﺍﭼﮭﮯ ﻣﺴﺘﻘﺒﻞ ﺍﻭﺭ ﺳﭙﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺷﮩﺰﺍﺩﮮ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﭘﺮﺳﺖ ﺍﻋﻠﯽٰ ﭘﺮ ﺍﻋﺘﺒﺎﺭ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺑﺲ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﯾﮏ ﭼﮭﻮﭨﺎ ﺳﺎ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ، ﺁﭖ ﮐﻮ ﺟﻮ ﭘﺴﻨﺪ ﮨﮯ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﭘﺮﺳﺖ ﮐﻮ ﮐﺴﯽ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﺁﮔﺎﮦ ﺿﺮﻭﺭ ﮐﺮﺩﯾﮟ۔ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﭘﺮ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺫﻣﮧ ﺩﺍﺭﯾﺎﮞ ﻋﺎﺋﺪ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﯿﮟ۔ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮ ﺑﭽﭙﻦ ﻣﯿﮟ ﺟﺲ ﻃﺮﺡ ﺧﻮﺏ ﺳﻨﺒﮭﺎﻝ ﮐﺮ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺭﯼ ﺗﻮﺟﮧ ﺳﮯ ﺭﮐﮭﺘﯽ ﺁﺋﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﺏ ﺍﻥ ﮐﭩﮭﻦ ﺣﺎﻻﺕ ﭘﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﻮﮨﺮ ﮔﺰ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﯾﺎ ﭘﮭﺮ ﻧﻈﺮ ﺍﻧﺪﺍﺯ ﻧﮧ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺍﭘﻨﮯ ﺑﭽﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺍﻥ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺟﺬﺑﺎﺕ ﮐﺎ ﻣﻤﮑﻦ ﺣﺪ ﺗﮏ ﺍﺣﺘﺮﺍﻡ ﮐﺮﯾﮟ۔ ﻭﮦ ﮐﯿﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﯿﺎ ﺳﻮﭼﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﮐﺮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ؟ ﺳﺐ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﮐﻮ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﻧﺎ ﭼﺎﮨﺌﮯ۔ ﺟﺐ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﺳﮯ ﺩﻭﺳﺘﯽ ﮐﺎ ﺭﺷﺘﮧ ﺑﻦ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ ﺗﻮ ﻣﻌﺎﺷﺮﮮ ﻣﯿﮟ ﻧﮧ ﺧﻮﺩﮐﺸﯿﺎﮞ ﺟﻨﻢ ﻟﯿﮟ ﮔﯽ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﺑﺮﺍﺋﯿﺎﮞ ۔ ﺧﻮﺷﯿﻮﮞ ﮐﺎ ﮔﮩﻮﺍﺭﮦ ﯾﮧ ﻣﻌﺎﺷﺮﮦ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﻣﯿﮟ ﺑﺴﻨﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﻓﺮﺍﺩ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﻣﺜﺎﻟﯽ ﮐﮩﻠﻮﺍﻧﮯ ﮐﮯ ﺣﻘﺪﺍﺭ ﭨﮭﮩﺮﯾﮟ ﮔﮯ۔
  7. ﺳﯿـﺪﯼ ﻋﺸﻖ ﮐﻮ ﺣﻖ ہے ﻣﺠﮭﮯ ﻣﺴﻤﺎﺭ ﮐﺮﮮ ﺍُﺱ ﭘﮧ ﺁﻣﯿﻦ ﮐﺮﻭﮞ گی ﺟﻮ ﯾﮧ ﺳﺮﺩﺍﺭ ﮐﺮﮮ ہم ﻧﮯ ﺍﮮ ﻋﺸﻖ ﺗﺠﮭﮯ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﻣﺮﺷﺪ ﻣﺎﻧﺎ ﮐﺲ ﮐﻮ ﺟﺮٰﺍﺕ ہے ﺗﯿﺮﮮ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍﻧﮑﺎﺭ ﮐﺮﮮ ﻋﺸﻖ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯽ ﺗﺴﺒﯿﺢ ﮐﺮﻭ ﻭﺍﺟﺐ ہے یہ ﯾﮧ ﻭﮦ ﻭﺭﺩ ہے ﺟﻮ ﭘﺎﮔﻞ ﮐﻮ ﺳﻤﺠﮭﺪﺍﺭ ﮐﺮﮮ ﺍﻭﺭ ﮐﯿﺎ ﭼﺎﮨﺘﺎ ہے ﻋﺸﻖ ﺑﮭﻼ ﻣﺠﮫ ﺳﮯ ﺧﺮﺍﺝ ﻣﯿﮟ ﻧﮯ ﮔﺮﺩﻥ ﺗﻮ ﺟﮭﮑﺎ ﻟﯽ ہے ﻭﮦ ﺍﺏ ﻭﺍﺭ ﮐﺮﮮ ﮨﺎﮞ ﺍُﺳﮯ ﻋﺸﻖ ﮐﮯ ﻣﺬﮨﺐ ﻣﯿﮟ "ﻭﻟﯽ"ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ہوﻧﮯ ﮐﺎ ﺟﻮ ﺍﻋﻼﻥ ﺳﺮِ ِ ﺩﺍﺭ ﮐﺮﮮ ﺁﺝ ﭘﺘﮭﺮ ﮐﺎ ﻧﮧ ہو ﺟﺎﺋﮯ میرﺍ ﺳﺎﺭﺍ ﺑﺪﻥ ﮐﻮﺋﯽ ﺁﺋﮯ ﻣﺠﮭﮯﺍﺱ ﺧﻮﺍﺏ ﺳﮯ ﺑﯿﺪﺍﺭ ﮐﺮﮮ ﻋﺸﻖ ﺳﯿﺪ ہے ﮐﻮﺋﯽ ﻣﻌﺠﺰﮦ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ہے ﮨﺎﺗﮫ ﺳﮯ ﭼﮭﻮ ﮐﮯ ﻣﺠﮭﮯ ﺻﺎﺣﺐِ ﮐﺮﺩﺍﺭ ﮐﺮﮮ ﺳﻮﺭﮦِ ﻧﻮﺭ ﻣﻠﮯﭘﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﻣﯿﮟ ﻏﺴﻞ ﮐﺮﻭﮞ ﺍﻭﺭ ﺭﻭﺗﮯ ہوﺋﮯ ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﺮﺍ ﺩﯾﺪﺍﺭ ﮐﺮﮮ
  8. ہم میں سے اکثر لوگ سوچتے ہیں کہ مردوں کو جب ضرورت ہی نہیں ہوتی تو ان کے Nipples آخر کیوں ہوتے ہیں___؟ ڈی این اے: DNA ہر جاندار خلیے میں موجود ایک زپ نما مالیکیول ہے، تخلیق کا پورا عمل اسی میں چھپا ہے، ویسے تو DNA میں ایک پوری کائنات چھپی ہے، لیکن اس وقت ہمارا موضوع DNA نہیں بلکہ Chromosome ہے- کروموسوم: Chromosomes تخلیق کے مرکزی کردار ہیں- ڈی این اے کے اندر 46 کروموسومز ہوتے ہیں اور مرد کا آدھا ڈی این اے یعنی 23 کروموسومز اور اسی طرح عورت کا آدھا ڈی این اے یعنی 23 کروموسومز مل کر بچے کی خصوصیات کا تعین کرتے ہیں، دوسرے لفظوں میں ہم کہہ سکتے ہیں کہ ایک مردانہ سپرم میں 23 کروموسومز ہوتے ہیں جبکہ ایک زنانہ بیضے میں بھی 23 کروموسومز ہوتے ہیں اور تخلیق کے عمل میں کروموسومز کے یہی 23 جوڑے حصہ ڈالتے ہیں، ہر جوڑا مختلف خصوصیات کا حامل ہوتا ہے، خصوصیات: مثلاً بچے کی فیزیک ،نیچر یعنی طبیعت، رنگ، ہاتھوں پیروں کی بناوٹ، قد، نین نقوش، ذہانت یہاں تک کے آنکھوں اور بالوں کے رنگ اور ہر ہر خصوصیت کا تعین کروموسومز کے یہی 23 جوڑے کرتے ہیں اور انہی 23 میں سے 1 جوڑا جنس کا تعین بھی کرتا ہے، جنس کا تعین کرنے والے کروموسومز کی شکل انگریزی کے حروف ایکس X اور وائے Y سے مشابہت رکھتی ہے تبھی انہیں ایکس اور وائے کروموسومز کہا جاتا ہے- (تصویری مثالیں کمنٹس میں) ؛ X+X = Female Baby ؛ X+Y = Male Baby ماں کے ڈی این اے میں جنس کا تعین کرنے والے دونوں کروموسومز ہمیشہ XX ہوتے ہیں اس لیے ماں ڈی این اے کا جو بھی آدھا حصہ ٹرانسفر کرے ہر دو صورتوں میں ایکس کروموسومز ہی ٹرانسفر ہوگا، جبکہ باپ کے ڈی این اے میں جنس کا تعین کرنے والے دو کروموسومز میں سے ایک ہمیشہ X اور دوسرا یا تو X ہوگا یا Y، اس لیے باپ کی طرف سے ڈی این اے کا آدھا ٹرانسفر کیا جانے والا حصہ کبھی تو وائے کروموسوم ٹرانسفر کر دیتا ہے کبھی ایکس، آسان لفظوں میں یہ سسٹم "ٹاس" کی ہی طرح کام کرتا ہے، یعنی بائے چانس، ہیڈ یا ٹیل، "مرد کی پیدائش کے عمل کی شروعات میں ہمیشہ ایکس کروموسوم ہی نشوونما پاتا ہے اور پہلے پانچ سے چھ ہفتے ہر شخص، جی ہاں ہر شخص عورت ہی کی طرح بنتا ہے اور پھر پینتیس سے چالیس دن کے بعد وائے کروموسوم ایکٹو ہوتا ہے، یوں زنانہ آرگنز کی تخلیق رک جاتی ہے اور مردانہ آرگنز کی تخلیق شروع ہوتی ہے- مردوں کے سینے پر نظر آنے والے یہ نپلز اسی پیچیدہ تخلیقی عمل کی چغلی کھاتے ہیں-" اس سب سے یہ بھی ثابت ہوا کہ پیدا ہونے والے بچے کی جنس کا انحصار سو فیصد مرد پر ہوتا ہے لیکن علم و تحقیق سے نا آشنا معاشرے میں طعنے عورت کو دیئے جاتے ہیں- یہاں جب ایک عورت مسلسل لڑکیاں پیدا کرتی ہے تو مرد دوسری عورت تلاش کرتا ہے، حالانکہ سائنسی اصول کے تحت تو عورت کو دوسرا مرد تلاش کرنا چاہئیے : ) اور ہاں.... اب یہ سب کچھ جان لینے کے بعد "آپکو" عورت کو خود سے کمتر سمجھنے سے باز آ ہی جانا چاہیے- پاکستان کا میڈیا ہمیں سائنس اور ٹیکنالوجی سے دور لے کر جا رہا ہے، ہمارے سو سے زائد ٹیلی ویژن چینلز سائنس اور ٹیکنالوجی کے متعلق کوئی ایک پروگرام دکھانے سے بھی قاصر ہیں، البتہ میڈیا پر فضولیات اور لغویات پےشمار، ایسے میں ہمیں بحیثیت فرد اور بحیثیتِ کمیونٹی سائنس کو سمجھنے اور اس کے متعلق جاننے اور کائنات پر غور فکر کرنے کی ازخود کوشش کرنی ہے
  9. OK to is hisab se meri membership to 5 years se above ho chuki ha to ab 20 years wali kitnay me milay gi?
  10. Acha faisala ha sir g jab kisi section ka rahnuma hi koi kaam na karay to baqi member kia rahnumaee hasil karain gy me to buhat pehly apse apnay baray me b keh chuka hon meri modrater ship b wapas ly lain q k me b proper time ni dy PA raha ye uhday or forum k sath ziyadati ha . Bas ek request ha k Jo bunyadi asool thy un ko na badla Jay k start me Jo paid member ship di gae thi wo. life time thi mager ab her month request per Hi active ki jati ha is se me mutmain nahi hon or aisi cheezain b kafi disheart kerti han jab k baqi forums me jab paid member ban gay to saal ha saal se chahay kaam karain ya na karain ap ki ki paid member ship deactive nahi ki jati is per Zara thanday dil se ghour fermain shukriya
  11. Jawan dil pasand kerny ka buhat shukriya asal me zahir or batin dono Deen ka hissa han mager masla ye ha hum kuch hissa paker lia ha kuch chor dia ha yahan b yahi baat ha k molvi NY zahir ko dekha or batin per tawaja na di .
  12. نوراں کنجری..... دسمبر کے اوائل کی بات ہے جب محکمہ اوقاف نے زبردستی میری تعیناتی شیخو پورےکے امیر محلے کی جامعہ مسجد سے ہیرا منڈی لاہور کی ایک پرانی مسجد میں کر دی. وجہ یہ تھی کے میں نے قریبی علاقے کے ایک کونسلر کی مسجد کے لاوڈ سپیکر پے تعریف کرنے سے انکار کر دیا تھا. شومئی قسمت کے وہ کونسلر محکمہ اوقاف کے ایک بڑے افسرکا بھتیجا تھا. نتیجتاً میں لاہور شہر کے بدنام ترین علاقے میں تعینات ہو چکا تھا. بیشک کہنے کو میں مسجد کا امام جا رہا تھا مگر علاقے کا بدنام ہونا اپنی جگہ. جو سنتا تھا ہنستا تھا یا پھر اظھار افسوس کرتا تھا محکمے کے ایک کلرک نے تو حد ہی کر دی. تنخواہ کا ایک معاملہ حل کرانے اس کے پاس گیا تو میری پوسٹنگ کا سن کے ایک آنکھ دبا کر بولا، .قبلہ مولوی صاحب، آپ کی تو گویا پانچوں انگلیاں گھی میں اور سر کڑاہی میں.’ میں تو گویا زمین میں چھ فٹ نیچے گڑ گیا’ پھر الله بھلا کرے میری بیوی کا جس نے مجھے تسلی دی اور سمجھایا کہ امامت ہی توہے، کسی بھی مسجد میں سہی. اور میرا کیا ہے؟ میں تو ویسے بھی گھر سے نکلنا پسند نہیں کرتی. پردے کا کوئی مسلہ نہیں ہوگا. اور پھر ہمارے کونسے کوئی بچے ہیں کے ان کے بگڑنے کا ڈر ہو۔ بیوی کی بات سن کر تھوڑا دل کو اطمینان ھوا اور ہم نے سامان باندھنا شروع کیا. بچوں کا ذکر چھڑ ہی گیا تو یہ بتاتا چلوں کے شادی کے بائیس سال گزرنے کے باوجود الله نے ہمیں اولاد جیسی نعمت سے محروم ہی رکھنا مناسب سمجھا تھا. خیر اب تو شکوہ شکایت بھی چھوڑ چکے تھے دونوں میاں بیوی. جب کسی کا بچہ دیکھ کر دل دکھتا تھا تو میں یاد الہی میں دل لگا لیتا اور وہ بھلی مانس کسی کونے کھدرے میں منہ دے کر کچھ آنسو بہا لیتی۔ سامان باندھ کر ہم دونوں میاں بیوی نے الله کا نام لیا اور لاہورجانے کے لئے ایک پرائیویٹ بس میں سوار ہوگئے. بادامی باغ اڈے پے اترے اور ہیرا منڈی جانے کے لئے سواری کی تلاش شروع کی. ایک تانگے والے نے مجھے پتا بتانے پر اوپر سے نیچے تلک دیکھا اور پھر برقع میں ملبوس عورت ساتھ دیکھ کر چالیس روپے کے عیوض لے جانے کی حامی بھری. تانگہ چلا تو کوچبان نے میری ناقص معلومات میں اضافہ یہ کیہ کر کیا کہ ‘میاں جی، جہاں آپ کو جانا ہے، اسے ہیرا منڈی نہیں، ٹبی گلی کہتے ہیں پندرہ بیس منٹ میں ہم پوہنچ گئے. دوپہر کا وقت تھا. شاید بازار کھلنے کا وقت نہیں تھا. دیکھنے میں تو عام سا محلہ تھا. وہ ہی ٹوٹی پھوٹی گلیاں، میلے کرتوں کےغلیظ دامن سے ناک پونچھتے ننگ دھڑنگ بچے، نالیوں میں کالا پانی اور کوڑے کے ڈھیروں پے مڈلاتی بےحساب مکھیاں. سبزیوں پھلوں کے ٹھیلے والے اور ان سے بحث کرتی کھڑکیوں سے آدھی باہرلٹکتی عورتیں. فرق تھا تو صرف اتنا کے پان سگریٹ اور پھول والوں کی دکانیں کچھ زیادہ تھیں. دوکانیں تو بند تھیں مگر ان کے نۓ پرانے بورڈ اصل کاروبار کی خبر دے رہے تھے۔ مسجد کے سامنے تانگہ کیا رکا، مانو محلے والوں کی عید ہوگیی. پتہ نہیں کن کن کونے کھدروں سے بچے اور عورتیں نکل کر جمع ہونے لگیں. ملی جلی آوازوں نے آسمان سر پے اٹھا لیا. ‘ابے نیا مولوی ہے’ ‘بیوی بھی ساتھ ہے. پچھلے والے سے تو بہتر ہی ہوگا’ ‘کیا پتہ لگتا ہے بہن، مرد کا کیا اعتبار؟’ ‘ہاں ہاں سہی کہتی ہے تو. داڑھی والا مرد تو اور بھی خطرناک’ عجیب طوفان بدتمیز تھا. مکالموں اور فقروں سے یہ معلوم پڑتا تھا کے جیسے طوائفوں کے محلے میں مولوی نہیں، شرفاء کے محلے میں کوئی طوائف وارد ہوئی ہو. اس سے پہلے کے میرے ضبط کا پیمانہ لبریز ہوتا، خدا خوش رکھے غلام شببر کو جو ‘مولوی صاحب’ ‘مولوی صاحب’ کرتا دوڑا آیا اور ہجوم کو وہاں سے بھگا دیا. پتہ چلا کے مسجد کا خادم ہے اور عرصہ پچیس سال سے اپنے فرائض منصبی نہایت محنت اور دیانت داری سے ادا کر رہا تھا. بھائی طبیعت خوش ہوگیی اس سے مل کے. دبلا پتلا پکّی عمر کا مرد. لمبی سفید داڑھی. صاف ستھرا سفید پاجامہ کرتا، کندھے پے چار خانے والا سرخ و سفید انگوچھا. پیشانی پے محراب کا کالا نشان، سر پے سفید ٹوپی اور نیچی نگاہیں. سادہ اور نیک آدمی اور منہ پے شکایت کا ایک لفظ نہیں. بوڑھا آدمی تھا مگر کمال کا حوصلہ و ہمّت رکھتا تھا۔ سامان سمبھالتے اور گھر کو ٹھیک کرتے ہفتہ دس دن لگ گئے. گھر کیا تھا. دو کمروں کا کوارٹر تھا مسجد سے متصل. ایک چھوٹا سا باورچی خانہ، ایک اس سے بھی چھوٹا غسل خانہ اور بیت الخلا اور ایک ننھا منا سا صحن. بہرحال ہم میاں بیوی کو بڑا گھر کس لئے چاہیے تھا. بہت تھا ہمارے لئے. بس ارد گرد کی عمارتیں اونچی ہونے کی وجہ سے تاریکی بہت تھی. دن بارہ بجے بھی شام کا سا دھندلکا چھایا رہتا تھا. گھر ٹھیک کرنے میں غلام شببر نے بہت ہاتھ بٹایا. صفائی کرنے سے دیواریں چونا کرنے تک. تھوڑا کریدنے پے پتا چلا کے یہاں آنے والے ہر امام مسجد کے ساتھ غلام شبّیرگھر کا کام بھی کرتا تھا. بس تنخواہ کے نام پے غریب دو وقت کا کھانا مانگتا تھا اور رات کو مسجد ہی میں سوتا تھا. یوں اس کو رہنے کی جگہ مل جاتی تھی اور مسجد کی حفاظت بھی ہوجاتی تھی ایک بات جب سے میں آیا تھا، دماغ میں کھٹک رہی تھی. سو ایک دن غلام شببر سے پوچھ ہی لیا ‘میاں یہ بتاؤ کے پچھلے امام مسجد کے ساتھ کیا ماجرا گزرا؟’ وہ تھوڑا ہچکچایا اور پھر ایک طرف لے گیا کے بیگم کے کان میں آواز نہ پڑے میاں جی اب کیا بتاؤں آپ کو؟ جوان آدمی تھے اور غیر شادی شدہ بھی. محلے میں بھلا حسن کی کیا کمی ہے. بس دل آ گیا ایک لڑکی پے. لڑکی کے دلال بھلا کہاں جانے دیتے تھے سونے کی چڑیا کو. پہلے تو انہوں نے مولانا کو سمجھنے بجھانے کی کوشش کی. پھر ڈرایا دھمکایا. لیکن مولانا نہیں مانے. ایک رات لڑکی کو بھگا لے جانے کی کوشش کی. بادامی باغ اڈے پر ہی پکڑے گئے. ظالموں نے اتنا مارا پیٹا کے مولانا جان سے گئے’. غلام شبّیر نے نہایت افسوس کے ساتھ ساری کہانی سنائی پولیس وغیرہ؟ قاتل پکڑے نہیں گئے؟’ میں نے گھبرا کر پوچھا’ غلام شبّیر ہنسنے لگا. ‘کمال کرتے ہیں آپ بھی میاں جی. پولیس بھلا ان لوگوں کے چکروں میں کہاں پڑتی ہے. بس اپنا بھتہ وصول کیا اور غائب. اور ویسے بھی کوتوال صاحب خود اس لڑکی کے عاشقوں میں شامل تھے لاحول ولا قوّت الا باللہ…..کہاں اس جہنم میں پھنس گئے.’ میں یہ سب سن کر سخت پریشان ہوا’ آپ کیوں فکر کرتے ہیں میاں جی؟ بس چپ کر کے نماز پڑھیں اور پڑھاہیں. دن کے وقت کچھ بچے آ جایا کریں گے. ان کو قران پڑھا دیں. باقی بس اپنے کام سے کام رکھیں گے تو کوئی تنگ نہیں کرتا یہاں. بلکہ مسجد کا امام اچھا ہو تو گناہوں کی اس بستی میں لوگ صرف عزت کرتے ہیں.’ غلام شبّیر نے میری معلومات میں اضافہ کرتے ہوے بتایا تو میری جان میں جان آئی انہی شروع کے ایام میں ایک واقعیہ ہوا. پہلے دن ہی دوپہر کے کھانے کا وقت ہوا تو دروازے پے کسی نے دستک دی. غلام شبّیر نے جا کے دروازہ کھولا اور پھر ایک کھانے کی ڈھکی طشتری لے کے اندر آ گیا. میری سوالیہ نگاہوں کے جواب میں کہنے لگا ‘نوراں نے کھانا بھجوایا ہے. پڑوس میں رہتی ہے’ میں کچھ نا بولا اور نا ہی مجھے کوئی شک گزرا. سوچا ہوگی کوئی الله کی بندی. اور پھر امام مسجد کے گھر کا چولھا تو ویسے بھی کم ہی جلتا ہے. بہرحال جب اگلے دو دن بھی یہ ہی معمول رہا تومیں نے سوچا کے یہ کون ہے جو بغیر کوئی احسان جتاے احسان کیے جا رہی ہے.عشاء کی نماز کے بعد مسجد میں ہی تھا جب غلام شبّیر کو آواز دے کے بلایا اور پوچھا ‘میاں غلام شبّیر یہ نوراں کہاں رہتی ہے؟ میں چاہتا ہوں میری گھر والی جا کر اس کا شکریہ ادا کرآے’ غلام شبّیر کے تو اوسان خطا ہو گئے یہ سن کر. ‘ میاں جی ، بی بی نہیں جا سکتی جی وہاں میں نے حیرانی سے مزید استفسار کیا تو گویا غلام شبّیر نے پہاڑ ہی توڑ دیا میرے سر پے ‘ میاں جی ، اس کا پورا نام تو پتا نہیں کیا ہے مگر سب اس کو نوراں کنجری کے نام سے جانتے ہیں. پیشہ کرتی ہے جی’ ‘پیشہ کرتی ہے؟ یعنی طوائف ہے؟ اور تم ہمیں اس کے ہاتھ کا کھلاتے رہے ہو؟ استغفراللہ! استغفراللہ’ غلام شبّیر کچھ شرمسار ہوا میرا غصّہ دیکھ کر. تھوڑی دیر بعد ہمّت کر کے بولا: میاں جی یہاں تو سب ایسے ہی لوگ رہتے ہیں. ان کے ہاتھ کا نہیں کھاییں گے تو مستقل چولھا جلانا پڑے گا جو آپ کی تنخواہ میں ممکن نہیں یہ سن کر میرا غصّہ اور تیز ہوگیا. ‘ہم شریف لوگ ہیں غلام شبّیر، بھوکے مر جایئں گے مگر طوائف کے گھر کا نہیں کھاییں گے میرے تیور دیکھ کر غلام شبّیر کچھ نہ بولا مگر اس دن کے بعد سےنوراں کنجری کے گھر سے کھانا کبھی نا آیا جس مسجد کا میں امام تھا، عجیب بات یہ تھی کے اس کا کوئی نام نہیں تھا. بس ٹبی مسجد کے نام سے مشهور تھی. ایک دن میں نے غلام شبّیر سے پوچھا کے “میاں نام کیا ہے اس مسجد کا؟” وہ ہنس کر بولا، “میاں جی الله کے گھر کا کیا نام رکھنا؟” پھر بھی؟ کوئی تو نام ہوگا. سب مسجدوں کا ہوتا ہے.” میں کچھ کھسیانا ہو کے بولا’ بس میاں جی بہت نام رکھے. جس فرقے کا مولوی آتاہے، پچھلا نام تبدیل کر کے نیا رکھ دیتا ہے.آپ ہی کوئی اچھا سا رکھ دیں.” وہ سر کھجاتا ہوا بولا. میں سوچ میں پڑ گیا. گناہوں کی اس بستی میں اس واحد مسجد کا کیا نام رکھا جائے؟ “کیا نام رکھا جائے مسجد کا؟ ہاں موتی مسجد ٹھیک رہے گا. گناہوں کے کیچڑ میں چمکتا پاک صاف موتی.” دل ہی دل میں میں نے مسجد کے نام کا فیصلہ کیا اور اپنی پسند کو داد دیتا اندر کی جانب بڑھ گیا جہاں بیوی کھانا لگاے میری منتظر تھی اب بات ہوجاے قرآن پڑھنے والے بچوں کی. تعداد میں گیارہ تھے اور سب کے سب لڑکے. ملی جلی عمروں کے پانچ سے گیارہ بارہ سال کی عمر کے. تھوڑے شرارتی ضرور تھے مگر اچھے بچے تھے.نہا دھو کے اور صاف ستھرے کپڑے پہن کے آتے تھے. دو گھنٹے سپارہ پڑھتے تھے اور پھر باہر گلی میں کھیلنے نکل جاتے. کون تھے کس کی اولاد تھے؟ نہ میں نے کبھی پوچھا نا کسی نے بتایا. لیکن پھر ایک دن غضب ہوگیا. قرآن پڑھنے والے بچوں میں ایک بچہ نبیل نام کا تھا. یوں تو اس میں کوئی خاص بات نا تھی. لیکن بس تھوڑا زیادہ شرارتی تھا. تلاوت میں دل نہیں لگتا تھا. بس آگے پیچھے ہلتا رہتا اور کھیلنے کے انتظار میں لگا رہتا. میں بھی درگزر سے کام لیتا کے چلو بچہ ہے.لیکن ایک دن ضبط کا دامن میرے ہاتھ سے چھوٹ گیا. اس دن صبح ہی سے میرے سر میں ایک عجیب درد تھا. غلام شبّیر سے مالش کرائی، پیناڈول کی دو گولیاں بھی کھایئں مگر درد زور آور بیل کی مانند سر میں چنگھاڑتا رہا. درد کے باوجود اور غلام شبّیر کے بہت منع کرنے پر بھی میں نے بچوں کا ناغہ نہیں کیا. نبیل بھی اس دن معمول سے کچھ زیادہ ہی شرارتیں کر رہا تھا. کبھی ایک کو چھیڑ کبھی دوسرے کو. جب اس کی حرکتیں حد سے بڑھ گیئں تو یکایک میرے دماغ پر غصّے کا بھوت سوار ہوگیا اور میں نے پاس رکھی لکڑی کی رحل اٹھا کر نبیل کے دے ماری. میں نے نشانہ تو کمر کا لیا تھا مگر خدا کا کرنا ایسا ہوا کے رحل بچے کی پیشانی پر جا لگی خون بہتا دیکھ کر مجھے میرے سر کا درد بھول گیا اور میں نے گھبرا کر غلام شببر کو آواز دی. وہ غریب بھاگتا ہوا آیا اور بچے کو اٹھا کے پاس والے ڈاکٹر کے کلینک پر لے گیا. خدا کا شکر ہوا کے چوٹ گہری نہیں لگی تھی. مرہم پٹی سے کام چل گیا اور ٹانکے نا لگے. خیر باقی بچوں کو فارغ کر کے مسجد کے دروازے پے پوہنچا ہی تھا کے چادر میں لپٹی ایک عورت نے مجھے آواز دے کر روک لیا. میں نے دیکھا کے وہ عورت دہلیزپۓ کھڑی مسجد کے دروازے سے لپٹی رو رہی تھی چالیس پینتالیس کا سن ہوگا. معمولی شکل و صورت. سانولا رنگ اور چہرے پے پرانی چیچک کے گہرے داغ. آنسوؤں میں ڈوبی آنکھیں اور گالوں پر بہتا کالا سرما. زیور کے نام پے کانوں میں لٹکتی سونے کی ہلکی سی بالیاں اور ناک میں چمکتا سستا سرخ نگ کا لونگ. چادر بھی سستی مگر صاف ستھری اور پاؤں میں ہوائی چپپل .کیا بات ہے بی بی؟ کون ہو تم؟” میں نے حیرانگی سے اس سے پوچھا’ .میں نوراں ہوں مولوی صاحب.” اس نے چادر کے پلو سے ناک پونچھتے ہوئے کہا’ نوراں؟ نوراں کنجری؟” میرے تو گویا پاؤں تلے زمین ہی نکل گیئ. میں نے ادھر ادھر غلام شبّیر کی تلاش میں نظریں دوڑائیں مگر وہ تو نبیل کی مرہم پٹی کرا کے اور اس کو اس کے گھر چھوڑنے کے بہانے نجانے کہاں غایب تھا جی. نوراں کنجری!” اس نے نظریں جھکاے اپنے نام کا اقرار کیا. مجھے کچھ دیر کے لئے اپنے منہ سے نکلنے والی اس کے گالی جیسی عرفیت پے شرمدگی ہوئی مگر پھر خیال آیا کے وہ طوائف تھی اور اپنی بری شہرت کی زمہ دار. شرمندگی اس کو ہونی چاہیے تھی، مجھے نہیں. پھر اچانک مجھے احساس ہوا کے میری موتی جیسی مسجد میں اس طوائف کا نا پاک وجود کسی غلاظت سے کم نہیں تھا باہر نکل کے کھڑی ہو. مسجد کو گندا نا کر بی بی”، میں نے نفرت سے باہر گلی کی جانب اشارہ کیا. اس نے کچھ اس حیرانگی سے آنکھ اٹھا کے میری طرف دیکھا کے جیسے اسے مجھ سے اس رویے کی امید نا ہو. ڈبڈبائی آنکھوں میں ایک لمحے کے لئے کسی انکہی فریاد کی لو بھڑکی. لیکن پھر کچھ سوچ کر اس نے آنسوؤں کے پانی میں احتجاج کے ارادے کو غرق کیا اور بغیر کوئی اور بات کئے چلی گی. میں نے بھی نا روکا کے پتا نہیں کس ارادے سے آیئ تھی. اتنی دیر میں غلام شبّیر بھی پوھنچ گیا .کون تھی میاں جی؟ کیا چاہتی تھی؟” غالباً اس نے عورت کو تو دیکھا تھا مگر دور سے شکل نہیں پہچان پایا’ نوراں کنجری تھی. پتا نہیں کیوں آی تھی؟ مگر میں نے بھی وہ ڈانٹ پلائی کے آیندہ اس پاک جگہ کا رخ نہیں کرے گی.” میں نے داد طلب نظروں سے غلام شبّیر کی طرف دیکھا مگر اس کے چہرے پر ستائش کی جگہ افسوس نے ڈیرے ڈال رکھے تھے وہ بیچاری دکھوں کی ماری اپنے بچے کا گلہ کرنے آی تھی میاں جی. نبیل کی ماں ہے . بچے کی چوٹ برداشت نہیں کر سکی. اور آپ نے اس غریب کو ڈانٹ دیا.” غلام شبّیر نے نوراں کی وکالت کرتے ہوئے کہا تو نبیل نوراں کا بیٹا ہے.ایسی حرکتیں کرے گا تو سزا تو ملے گی. جیسی ماں ویسا بیٹا”. میں نے اپنی شرمندگی کو بیہودگی سے چھپانے کی کوشش کی. ایک لمحے کو خیال بھی آیا کے بچہ تو معصوم ہے اور پھر میں نے زیادتی بھی کی تھی. مگر پھر اپنے استاد ہونےکا خیال آیا تو سوچا کے بچے کی بھلائی کے لئے ہی تو مارا ہے. کیا ہوا. اور پھر ایک طوائف کو کیا حق حاصل کے مسجد کے امام سے شکایت کر سکے .کتنے بچے ہیں نوراں کے؟” میں نے بات کا رخ بدلنے کی کوشش کی’ مسجد میں پڑھنے والے سب بچے نوراں کے ہیں میاں جی. اس کے علاوہ ایک گود کا بچہ بھی ہے. بس اس محلے میں صرف نوراں اپنے بچوں کو مسجد بھیجتی ہے. باقی سب لوگوں کے بچے تو آوارہ پھرتے ہیں.” غلام شبّیر کی آواز میں پھر نوراں کی وکالت گونج رہی تھی. میں نے بھنا کر جواب دینے کا ارادہ کیا ہی تھا کے کوتوال صاحب کی گاڑی سامنے آ کر رکی. خود تو پتا نہیں کیسا آدمی تھا مگر بیوی بہت نیک تھی. ہر دوسرے تیسرے روز ختم کے نام پر کچھ نہ کچھ میٹھا بھجوا دیتی تھی. اس دن بھی کوتوال کا اردلی جلیبیاں دینے آیا تھا. گرما گرم جلیبیوں کی اشتہا انگیز مہک نے میرا سارا غصہ ٹھنڈا کر دیا اور نوراں کنجری کی بات آیی گیی ہوگیی یہ نبیل کو مار پڑنے کے کچھ دنوں بعد کا ذکر ہے. عشاء پڑھا کے میں غلام شبّیر سے ایک شرعیی معاملے پر بحث میں الجھ گیا تو گھر جاتے کافی دیر ہوگیی. مسجد سے باہر نکلے تو بازار کی رونق شروع تھی. بالکونیوں پر جھلملاتے پردے لہرا رہے تھے اور کوٹھوں سے ہارمونیم کے سر اور طبلوں کی تھاپ کی آواز ہر سو گونج رہی تھی. پان سگریٹ اور پھولوں کی دکانوں پر بھی دھیرے دھیرے رش بڑھ رہا تھا. اچانک میری نظر نوراں کے گھر کے دروازے پرجا پڑی. وہ باہر ہی کھڑی تھی اور ہر آتے جاتے مرد سے ٹھٹھے مار مار کر گپپیں لگا رہی تھی. آج تو اس کا روپ ہی دوسرا تھا. گلابی رنگ کا چست سوٹ، پاؤں میں سرخ گرگابی، ننگے سر پے اونچا جوڑا، جوڑے میں پروۓ موتیے کے پھول، میک اپ سے لدا چہرہ، گہری شوخ لپ سٹک، آنکھوں میں مسکارا اور مسکارے کی اوٹ سے جھانکتی ننگی دعوت لاحول ولا قوت اللہ باللہ” میں نے طنزیہ نگاہوں سے غلام شبّیر کی جانب دیکھا. آخر وہ نوراں کا وکیل جو تھا’ چھوڑئیے میاں جی. عورت غریب ہے اور دنیا بڑی ظالم.” اس نے گویا بات کو ٹالنے کی کوشش کی. مگر میں اتنی آسانی سے جان چھوڑنے والا نہیں تھا یہ بتاؤ میاں، جب اس کے گاہک آتے ہیں تو کیا بچوں کے سامنے ہی…………………….؟” میں نے معنی خیز انداز میں اپنا سوال ادھورا ہی چھوڑ دیا میاں جی، ایک تو اس کے بچے صبح اسکول جاتے ہیں اور اس لئے رات کو جلدی سو جاتے ہیں. دوسرا، مہمانوں کے لئے باہر صحن میں کمرہ الگ رکھا ہے.” غلام شبّیر نے ناگوار سے لہجے میں جواب دیا استغفراللہ! استغفراللہ!”. میں نے گفتگو کا سلسلہ وہیں ختم کرنا مناسب سمجھا کیوں کے مجھے احساس ہو چکا تھا کے غلام شبّیر کے لہجے سے جھانکتی ناگواری کا رخ نوراں کی جانب نہیں تھا اس کے بعد نوراں کا ذکر میرے سامنے تب ہوا جن دنوں میں اپنے اور زوجہ کے لئے حج بیت الله کی غرض سے کاغذات بنوا رہا تھا. اس غریب کی بڑی خواہش تھی کے وہ اور میں الله اور اس کے نبی پاک کی خدمت میں پیش ہوں اور اولاد کی دعا کریں. میرا بھی من تھا کے کسی بہانے سے مکّے مدینے کی زیارت ہوجاے. نام کے ساتھ حاجی لگا ہو تو شاید محکمے والے کسی اچھی جگہ تبدیلی کر دیں. زوجہ کا ایک بھانجا انہیں دنوں وزارت مذہبی امور میں کلرک تھا. اس کی وساطت سے درخواست کی قبولی کی کامل امید تھی. کاغذات فائل میں اکٹھے کیے ہی تھے کے غلام شبّیر ہاتھ میں کچھ اور کاغذات اٹھاے پوھنچ گیا .میاں جی………ایک کام تھا آپ سے. اجازت دیں تو عرض کروں.” اس نے ہچکچاتے کہا’ ہاں ہاں میاں، کیوں نہیں. کیا بات ہے؟” میں نے داڑھی کے بالوں میں انگلیوں سے کنھگی کرتے ہوئے اس کو بیٹھنے کا اشارہ کیا میاں جی، آپ کی تو وزارت میں واقفیت ہے. ایک اور حج کی درخواست بھی جمع کرا دیں.” اس نے ہاتھ میں پکڑے کاغذات میری جانب بڑھاے دیکھو میاں غلام شبّیر، تم اچھی طرح جانتے ہو کے میں گھر بار تمہارے ذمے چھوڑ کر جا رہا ہوں. اور پھر تمہارے پاس حج کے لئے پیسے کہاں سے آے؟” میں نے کچھ برہمی سے پوچھا .نہیں نہیں میاں جی. آپ غلط سمجھے. یہ میری درخواست نہیں ہے. نوراں کی ہے.” اس نے سہم کر کہا’ کیا؟ میاں ہوش میں تو ہو؟ نوراں کنجری اب مکّے مدینے جائے گی؟ اور وہ بھی اپنے ناپاک پیشے کی رقم سے؟ توبہ توبہ.” میرے تو جیسے تن بدن میں آگ لگ گیی یہ واہیات بات سن کر میاں جی. طوائف ہے پر مسلمان بھی تو ہے. اور وہ تو الله کا گھر ہے. وہ جس کو بلانا چاہے بلا لے. اس کے لئے سب ایک برابر”. اپنی طرف سے غلام شبّیر نے بڑی گہری بات کی اچھا؟ الله جس کو بلانا چاہے بلا لے؟ واہ میاں واہ. تو پھر میں درخواست کیوں جمع کراؤں؟ نوراں سے کہو سیدھا الله تعالیٰ کو ہی بھیج دے”. میں نے غصّے سے کہا اور اندر کمرے میں چلا گیا زوجہ کا بھانجا بر خوردار نکلا اور الله کے فضل و کرم سے میری اور زوجہ کی درخواست قبول ہو گیئ. ٹکٹ کے پیسے کم پڑے تو اسی بھلی لوک کے جہیز کے زیور کام آ گئے. الله کا نام لے کر ہم روانہ ہوگئے. احرام باندھا تو گویا عمر بھر کے گناہ اتار کے ایک طرف رکھ دیے. الله کا گھر دیکھا اور نظر بھر کے دیکھا. فرائض پورے کرتے کرتے رمی کا دن آ گیا. بہت رش تھا. ہزاروں لاکھوں لوگ. ایک ٹھاٹھیں مارتا سفید رنگ کا سمندر. گرمی بھی بہت تھی. میرا تو دم گھٹنا شروع ہوگیا. زوجہ بیچاری کی حالت بھی غیر ہوتی جا رہی تھی. اوپر سے غضب کچھ یہ ہوا کے میرے ہاتھ سے اس غریب کا ہاتھ چھوٹ گیا. ہاتھ کیا چھوٹا، لوگوں کا ایک ریلا مجھے رگیدتا ھوا پتا نہیں کہاں سے کہاں لے گیا. عجب حالات تھے. کسی کو دوسرے کا خیال نہیں تھا. ہر کوئی بس اپنی جان بچانے کے چکّر میں تھا. میں نے بھی لاکھ اپنے آپ کو سمبھالنے کی کوشش کی مگر پیر رپٹ ہی گیا. میں نیچے کیا گرا، ایک عذاب نازل ہوگیا. ایک نے میرے پیٹ پر پیر رکھا تو دوسرے نے میرے سر کو پتھر سمجھ کر ٹھوکر ماری. موت میری آنکھوں کے سامنے ناچنے لگی. میں نے کلمہ پڑھا اور آنکھیں بںد کی ہی تھیں کے کسی الله کے بندے نے میرا دایاں ہاتھ پکڑ کے کھینچا اور مجھے سہارا دے کر کھڑا کر دیا میں نے سانس درست کی اور اپنے محسن کا شکریہ ادا کرنے کے لئے اس کی طرف نگاہ کی. مانو ایک لمحے کے لئے تو بجلی ہی گر پڑی. کیا دیکھتا ہوں کے میرا ہاتھ مضبوطی سے تھامے نوراں کنجری کھڑی مسکرا رہی تھی. ‘یہ ناپاک عورت یہاں کیسے آ گیی؟ اس کی حج کی درخواست کس نے اور کب منظور کی؟’ میں نے ہاتھ چھڑانے کی بہت کوشش کی مگر کہاں صاحب. ایک آہنی گرفت تھی. میں نہیں چھڑا سکا. وہ مجھے اپنے پیچھے کھینچتی ہوئی ایک طرف لے گیی. اس طرف کچھ عورتیں اکٹھی تھی. اچانک میری نظر زوجہ پر پڑی جس کی آنکھوں میں آنسو تھے اور وہ بیتاب نگاہوں سے مجمع ٹٹول رہی تھی. ہماری نظریں ملیں تو سب کلفت بھول گیی. میں دوڑ کر اس تک پہنچا اور آنسو پونچھے .کہاں چلے گئے تھے آپ؟ کچھ ہوجاتا تو؟’ پریشانی سے الفاظ اس کے گلے میں اٹک رہے تھے’ بس کیا بتاؤں آج مرتے مرتے بچا ہوں. جانے کون سی نیکی کام آ گیی. میں تو پاؤں تلے روندا جا چکا ہوتا اگر نوراں نہیں بچاتی.’ میں نے اس کو تسلی دیتے ہوئے کہا .نوراں؟ ہماری پڑوسن نوراں؟ وہ یہاں کہاں آ گی؟ آپ نے کسی اور کو دیکھا ہوگا’. اس نے حیرانگی سے کہا’ ارے نہیں. نوراں ہی تھی’. میں نے ادھر ادھر نوراں کی تلاش میں نظریں دوڑایئں مگر وہ تو نجانے کب کی جا چکی تھی. بعد میں بھی اس کو بہت ڈھونڈا مگر اتنے جمے غفیر میں کہاں کوئی ملتا ہے خدا خدا کر کے حج پورا ھوا اور ہم دونوں میاں بیوی وطن واپس روانہ ہوے. لاہور ائیرپورٹ پر غلام شببر پھولوں کے ہاروں سمیت استقبال کو آیا ہوا تھا بہت مبارک باجی. بہت مبارک میاں جی. بلکہ اب تو میں آپ کو حاجی صاحب کہوں گا.’ اس نے مسکراتے ہوئے ہم دونوں کو مبارک دی تو میری گردن حاجی صاحب کا لقب سن کراکڑ گیی. میں نے خوشی سے سرشار ہوتے ہوے اس کے کندھے پے تھپکی دی اور سامان اٹھانے کا اشارہ کیا ٹیکسی میں بیٹھے. میں نے مسجد اور گھر کی خیریت دریافت کی تو نوراں کا خیال آ گیا. .میاں غلام شببر، نوراں کی سناؤ’. میرا اشارہ اس کی حج کی درخواست کے بارے میں تھا’ .اس بیچاری کی کیا سناؤں میاں جی؟ لیکن آپ کو کیسے پتا چلا؟’ اس نے حیرانگی سے میری جانب دیکھا’ .بس ملاقات ہوئی تھی مکّے شریف میں.’ میں نے اس کے لہجے میں چھپی اداسی کو اپنی غلط فہمی سمجھا’ مکّے شریف میں ملاقات ہوئی تھی؟ مزاق نا کریں میاں جی. نوراں تو آپ کے جانے کے اگلے ہی دن قتل ہوگیی تھی.’ اس نے گویا میرے سر پر بم پھوڑا .,قتل ہوگیی تھی؟’ میں نے اچھنبے سے پوچھا’ جی میاں جی. بیچاری نے حج کے لئے پیسے جوڑ رکھے تھے. اس رات کوئی گاہک آیا اور پیسوں کے پیچھے قتل کر دیا غریب کو. ہمیں توصبح کو پتا چلا جب اس کے بچوں نے اس کی لاش دیکھی. شور مچایا تو سب اکٹھے ہوئے. پولیس والے بھی پہنچ گئے اور اس کی لاش پوسٹ مارٹم کے لئے لے گئے. ابھی کل ہی میں مردہ خانے سے میّت لے کے آیا ہوں. آج صبح ہی تدفین کی اس کی.’ غلام شببر کی آواز آنسوں میں بھیگ رہی تھی .قاتل کا کچھ پتا چلا؟’ میں ابھی بھی حیرانگی کی گرفت میں تھا.’ پولیس کے پاس اتنا وقت کہاں میاں جی کے طوائفوں کے قاتلوں کو ڈھونڈہے. اس بیچاری کی تو نمازجنازہ میں بھی بس تین افراد تھے: میں اور دو گورکن.’ اس نے افسوس سے ہاتھ ملتے ہوئے کہا .اور اس کے بچے؟ ان کا کیا بنا؟’ میں نے اپنی آنکھوں میں امڈ تی نمی پونچھتے ہوئے دریافت کیا’کوئی لڑکا پیدا ہوتا ہے تو زیادہ تر اسے راتوں رات اٹھا کر کوڑے کے ڈھیرپر پھینک دیا جاتا ہے. وہ سب ایسے ہی بچے تھے. نوراں سب جانتی تھی کے کس کے ہاں بچہ ہونے والا ہے. بس لڑکا ہوتا تو اٹھا کر اپنے گھر لے آ تی. کہنے کو تو طوائف تھی میاں جی مگر میں گواہ ہوں. غریب جتنا بھی کماتی بچوں پے خرچ کر دیتی. بس تھوڑے بہت الگ کر کے حج پے جانے کے لئے جمع کر رکھے تھے. وہ بھی اس کا قاتل لوٹ کر لے گیا یہ بتاؤ غلام شببر، جب میں نے اس کی درخواست جمع کرانے سے انکار کیا تو اس نے کیا کہا؟’ مجھ پے حقیقتوں کے در کھلنا شروع ہو چکے تھے بس میاں جی، کیا کہتی بیچاری. آنکھوں میں آنسو آ گئے. آسمان کی جانب ہاتھ اٹھاے اور کہنے لگی کے بس تو ہی اس کنجری کو بلاے تو بلا لے’. مجھ پر تو پوچھو گھڑوں پانی پڑ گیا. تاسف کی ایک آندھی چل رہی تھی. ہوا کے دوش میری خطائیں اڑرہی تھیں. گناہوں کی مٹی چل رہی تھی اور میری آنکھیں اندھیائی جا رہی تھیں آپ کیوں روتے ہیں میاں جی؟ آپ تو ناپاک کہتے تھے اس کو.’ غلام شبّیر نے حیرانگی سے میری آنسوں سے تر داڑھی دیکھتے ہوئے کہا کیا کہوں غلام شببر کے کیوں روتا ہوں. وہ ناپاک نہیں تھی. ناپاک تو ہم ہیں جو دوسروں کی ناپاکی کا فیصلہ کرتے پھرتے ہیں. نوراں تو الله کی بندی تھی. الله نے اپنے گھر بلا لیا.’ میری ندامت بھری ہچکیاں بند ہونے کا نام نہیں لے رہی تھیں اور غلام شببر نا سمجھتے ہوئے مجھے تسّلی دیتا رہا ٹیکسی محلے میں داخل ہوئی اور مسجد کے سامنے کھڑی ہوگیی. اترا ہی تھا کے نوراں کے دروازے پے نظر پڑی. ایک ہجوم اکٹھا تھا وہاں ‘کیا بات ہے غلام شببر؟ لوگ اب کیوں اکٹھے ہیں؟’ میاں جی میرے خیال میں پولیس والے ایدھی سنٹر والوں کو لے کے آے ہیں. وہ ہی لوگ بچوں کو لے جاییں گے. ان غریبوں کی کوئی دیکھ بھال کرنے والا نہیں ہے.’ غلام شببر نے کچھ سوچتے ہوئے کہا میں نے زوجہ کا ہاتھ پکڑا اور غلام شببر کو پیچھے آنے کا اشارہ کرتے ہوئے نوراں کے دروازے کی جانب بڑھ گیا .کہاں چلے میاں جی؟’ غلام شببر نے حیرانگی سے پوچھا’ نوراں کے بچوں کو لینے جا رہا ہوں. آج سے وہ میرے بچے ہیں. اور ہاں مسجد کا نام میں نے سوچ لیا ہے. آج سے اس کا نام نور مسجد ہوگا
×