Story Maker

VIP SILVER PRO
  • Content count

    1,139
  • Joined

  • Last visited

  • Days Won

    47

Story Maker last won the day on December 28 2017

Story Maker had the most liked content!

Community Reputation

660

Profile Information

  • Gender
    Male
  • Location

Recent Profile Visitors

6,063 profile views
  1. update 38 karan hamari bat sunne ko tayyar tha par usne chaku apne hanto pe pir liya sneha ko dar to lag raha tha par yahi karne se karan ko ham par thoda vishwas aa gaya sneha muze dek rahi thi ki main bat karna suru kar du suruvat muze hi karni thi Avi- to karan tume hamare shadi ki bat pata chali meri bat se karan ko guass aa gaya Avi- aur ab hame ek sath hotel ke room me dek liya Avi-to tume lag raha hai ham Avi- ham sirf towel ne the to tume laga Avi- deko main suru se batata hu karan- jo bhi bolna wo soch samaj kar bolna Avi- jo kuch ho raha hai usne teri sabse jada galti hai karan- meri galti , shadi tumari fix huyi meri girlfriend ke sath aur galti meri hai Avi- us raat ager tu sneha ki madat karta to ye din nahi dekna padta sneha- us raat tum muze akela chhod gaye iske liye muze tum pe guass hona chaiye lekin guass tum ho karan- hotel ke room me main nahi tum pakdi gayi ho sneha-pir ek bar ye sab kaha to hamara rsta khatam samjo karan- rista to tum Avi ke sath jod rahi ho Avi- tum dono zagda mat karo , pahale meri bat suno karan- tum bhi kohi zuti kahani bana lo Avi- main to sach bataunga , usko sach ya zut samajna tume hai mere muh se sach word sunkar sneha thodi dar gayi ager us raat ka sach bataya diya to Avi- to karan ye jo kuch ho raha hai , hamari shadi fix huyi uski vaja tum ho karan- main Avi- us raat ke bad tum ek bar bhi sneha se pucha nahi ki wo kaisi hai karan-muze manaa tumne kiya tha Avi- main kahu kuhe me jump maaro to maar doge karan ne is pe kuch nahi kaha Avi- jane do us sab ko , aaj ki bat karta hu main Avi- tumko kisne bataya ki ham hotel ke is room me hai karan- sonali ne Avi-muze laga hi tha karan- kya laga tha tume Avi- sonali ko ek mis understanding hai jiske vajase usne tume yaha bhej diya karan- kaisi misunderstaing Avi-wo badme bataunga , wo deko tumare right side me kya dik raha hai karan- sabji giri huyi hai table aur zameen lar Avi- aur baki ki sabji ham dono ke kapdo ke upar giri sneha- kapde kharab ho gaye to main ne done ke liye rake Avi- kapde sukne tak ham towel me the sneha - tumne ham pe shak kiya karan- achi kahani banayi hai Avi- ham tumare samne hi the , ab batav ham kab ye decide kiya ki tume ye kahani batayenge karan soch me pad gaya Avi-ham is hotel.me is liye aaye ki ye jo hamari shadi fix huyi hai usko cancel kaise kare , sneha- bato bato me hamara zagda ho gaya , main bol rahi thi ki isme galti Avi ki hai aur Avi bol raha tha ki galti meri hai , sneha-aur bato bato me Avi ne muze thappad maar diya to main Avi ke upar tut padi jis se sabji ham dono ke upar gir gayi Avi- to ye hai is hotel ke room ki kahani , wo na meri galti hai aur na sneha ki is sab me galti teri hai , darpok fattu karan ko hamari bate sachi lagne lagi sneha- mera pyar pe tumne shak kiya pir bhi main tumare samne hu tumse bat kar rahi, guass to muze hona chaiye tha karan- pir ye shadi , Avi- gadde ek bar muzse puch leta ki shadi kaisi aur kyu fix huyi karan- kaise huyi Avi- tere galti ki vajse karan- tab se meri galti meru galti kah rahe ho kya hai meri galti Avi- tu ham dono ko apne room.me chhod kar niche chala gaya aur ek bar bhi dekne nahi aaya , Avi- nahi aaya dekne uska gum.nahi hai par tum ne apne papa aur mousi ko upar aane se roka nahi karan- wo main karan- to kya hua wo upar aa gaye sneha- main batati hu , tumare papa ka kala chehara karan- snehaaa smeha- chilane se kuch nahi honga ,tumare papa aur tumari mousi ke bich affirs chalu hai , dono us raat upar aaker sex karne lage the karan sneha ko maarne ko khada hua main ne karan ko pakad liya Avi- chalo sneha ham chalte hai , karan ko sach sunkar guass aayenga aur ham be vaja mare jayenge karan- kya saboot hai is bat ka sneha- Avi ki chhodo , kya tume lagta hai main tumare papa pe itna bada ilajam aise laga dungi , kya tume lagta main aisi bat zut bolungi karan- par Avi- karan yahi sach hai , karan- tik hai maan leta hu unka affiars hai to iska tumare shadi se kaisa samband Avi-main aur sneha parde ke piche chup kar ye sab dek rahe the karan- to Avi- to uske bad tumare papa ne dood me neend ki goli daal di aur wo dood galti se sneha ne pi liya sex ki jaga neend ki goli bolne se sneha relax ho gayi karan- wi kyu Avi- tumare mousa ko sulana chahte the par is se sneha so gayi sneha- aur Avi muze apne ghar le aaya karan- pir Avi- pir kya subha jab sneha ki ankhion khuli to neend ki goli ka side effect hua , sneha ka sar fatne laga , usko chakker aane laga , sneha se chala hi nahi ja raha tha , sneha ko itna pasina aaya ki lagta sneha naha rahi hai sneha- meri halat dekte to tum dar jate (meri choot ki halat dekte to tum suicide kar lete ,) Avi- main sneha ko docter ke pass le gaya to docter ne kaha sneha ko aaram karne do , aise halat me sneha ko jane kaise deta uske ghar to dusare din bhi sneha mere yaha ruki karan- to tumne zut kyu kaha ki sneha ko bhej diya ghar pe sneha- main ne aisa bolne ko kaha tha , muze tum pe bahot guass aa raha tha , mere kahne pe Avi ne tumse zut kaha , sneha- main ne tumse break up karne ka faisala kiya tha sneha- par Avi- par ek gadbad ho gayi aur tu bach gaya karan- kaisi gadbad Avi-docter ne goliya to di lekin raat me pir se sneha ko side effect hone laga , ek to tumare sath adura sex jis se heat bahot jada badh gayi thi sneha ke badan me karan- to kya kiya tumne karan dar gaya ki kahi kuch ho to nahi gaya sneha bhi sochne lagi ki ab main kya bataunga Avi- itni raat me main sneha ko docter ke pass kaise le jata , to sneha thande pani se 4 bar nahayi har gante me , freeze me raki huyi sari ice creaam kha li aur kapde nikaal kar so gayi , muze ye sab dusare din pata chala sneha- main ne Avi ko jagana sahi nahi samaja Avi- raat bhar sneha ko neend nahi aayi aur jab neend aayi to bahot gahri neend aayi karan- pir kya hua Avi- subha main to jogging karne laga sneha- Avi ke jate uske maa aur papa aa gaye sneha- aur muze bina kapdo ke Avi ke bedroom.me dek liya sneha- unko laga ki Avi aur main ne raat bhar sex kiya party ki , sneha- us din cinema hall me sonali ko tumne muze Avi ko girlfriend bataya aur uske bad hame komal mili thi , aur komal ko Avi ne us wakt muze uski dost bataya sneha- komal ko laga main Avi ki girlfeiend hu sneha- Avi ke papa guasse me the , tumare vajse Avi pe mushibat aa rahi thi sneha- Avi ke maa ne muze himmat di aur mere ghar ka number liya , us wakt main dar gayi thi sneha- muze kya pata tha ki Avi ki maa ham dono ki shadi karvane vali hai sneha- jab mere papa aur maa aayi to main dar gayi laga ki ab sab khatam ho gaya hai sneha- par mere papa aur Avi ke papa bachpan ke dost nikale sneha- sara guass khatam ho gaya sneha-aur jaise Avi ki maa ne meri aur Avi ki shadi bat ki to mere papa bahot khush ho gaye , unke best friend ke bete se meri shadi ye sunte wo naachne lage aur shadi fix ki sneha- main to hang ho gayi sneha- kuch samaj nahi aaya ki kya bolu sneha- ek to main Avi ke bedroom me bina kapdo ki mili ager ye bat mere maa aur papa ko pata chal jayengi ager main ne muh khola to sneha- muze laga Avi aaker sab tik kar denga sneha- par Avi jab vapas aaya sneha- usko jab meri aur uske shadi ki bat pata chali to karan+ to sneha- to Avi behosh ho gaya aur direct sham me ankhion khuli Avi- aur tab tak der ho gayi thi sneha-Avi muzpe guass tha ki main ne sabko manaa kyu nahi kiya Avi- sneha muzpe guass thi ki main uskoo akela chhod kar kyu gaya sur badme sab tik kyu nahi kiya sneha- ye hai puri kahani Avi-ham yaha shadi thodne ka soch rahe hai aur tum apne dost pe shak kiya sneha- apne pyar pe shak kiya sneha- ab to muze hamare bareme pir se sochna honga karan sneha- muze laga is mushkil gaddi me kohi samaje ya na samaje par tum muze samajoge sneha- par tum bhi sonali ki bato me aaker sneha- muze apni bat rakne ka mokka bhi nahi diya sneha- Avi ko hi galat maan liya tumne Avi- sneha ab sach karan ke samne hai faisala usko karna hai karan ke hant se chaku niche gir gaya
  2. update 37 karan aur nere bich hatta payi suru ho gayi ham dono khusti khelne lage sneha to hang ho gayi usko samaj hi nahi aa raha tha ye ho kya raha hai karan yaha aaya kaise khud ka huliya dek kar sneha samaj gayi ki karan kya soch raha honga karan- kutte kamine main tera khoon pi jaunga Avi- karan chaku lag jayenga karan- tera khoon se lal na kiya chaku to mera naam karan nahi karan pir se muz pe hamla karne laga main chaku ke war se khud ko bacha raha tha sneha-karan ye kya kar rahe ho karan- chup sali bewafa Avi ke bad teri bari hai , karan ke muh se galiya sunkar sneha hakki bakki rah gayi sneha-karan ye kya bol rahe ho karan- chup saali randi , tuze aaj rula rula ke maarunga , tuze apni randi na banaya to naam badal dunga sneha ke ankhion se assu nikal lage muze pata tha ki karan aisa kyu bol raha hai karan ko pata chal gaya honga mere aur sneha ke shadi ke bareme tabi wo itna guqss hai par karan ko bataya kisne ki ham yaha hai hamari halat dek kar karan samaj raha honga ki hamne sex kiya hai main karan ki jaga hota to yahi karta karan ki galti nahi hai pyar aur dosti me ek sath dhokka milte kuch sochne samajne ki takat nahi rahti main khud ko karan ke war se bacha raha tha mera towel bhi nikal raha tha sneha roye ja rahi thi karan ke upar khoon ka bhoot sawar ho gaya tha sneha- karan karan- tu aisi nahi maanegi randi , , tuze to ek se kaam nahi chalta , teri pyass bhuzane ko lund chaiye na ruk tuze abi batata hu ki main kya chiz hu jaise karan sneha ki taraf badne laga to main ne apna towel nikaal kar ek jordar war kiya karan ke hant par mere war se karan ka chaku niche gir gaya karan palatne vala tha ki main ne uske pit pe ek lath maari aur karan sidha jake bed pe gir gaya karan ko main kohi chance nahi dene vala tha main karan ke pit par sawar ho gaya sneha bed se dur ho gayi main ne kas ke karan ko pakad liya Avi- sneha is towel se karan ke hant band lo sneha ko meri bat sunayi nahi di main jor se chilaya Avi- sneha karan ke hant band lo tab jake sneha hosh me aayi karan ko dek kar sneha ne mera sath diya sneha ne karan ke hant bed se band diye ab karan kohi harkat nahi karenga pass ne sukh raha sneha ke dupata se karan ko ghuma kar pair bandh diye ab karan kuch nahi kar payenga karan khud ko chudane ki kosish kar raha tha par main ne sneha ke knot ko jor se laga liya aur karan ke muh me apna mozza daal kar uski galiya band ki Karan ko kabu me karte main sofe par baite gaya sneha abi bhi ro rahi thi main nanga tha aur sneha towel me Avi- sneha tumare kapde sukh gaye honge wo pahan lo sneha bas karan ko.deke ja rahi thi Avi-sneha kapde sneha hosh me aayi sneha sukhe huye kapde lekar bathroom.me chali gayi main ne bhi apne aade gile kapde pahan liye karan muze gur raha tha Avi- aise kya gur raha hai ager aur gura to teri gaand maarunga sneha aur main ne kapde pahan liye ab karan ko samajna tha chalo acha hua karan hamare pakad me hai to wo hamari puri bat sun lenga Avi- sneha ro mat , karan guasse me hai is liye aisa kaha sneha- karan muze tumse aisi umid nahi thi Avi- sneha karan guasse me hai , shayad usko hamare shadi ki bat pata chali hongi aur ham yaha hotel ke kamre me sirf towel me hai , aise me karan ko laga ki ham sneha- karan tum aisa soch kaise sakte ho Avi- karan ki galti nahi hai , karan ki jaga main hota to main bhi yahi karta , sneha- main karan ke liye tumse ladne lagi aur karan ne kya kiya mere sath Avi- sneha santh ho jav , tum aisa karogi to ham karan ko samajyenge kaise sneha- muze bat bhi nahi karni karan se Avi- sneha pagal mat bano sneha- karan tumne aisa kyu kiya Avi- deko sneha ham baite kar aaram se bat karte hai par sneha meri bat sun nahi rahi thi.karan hamari bat sun raha tha main me sneha ko ek thappad maar diya ye dek kar karan shocked ho gaya sneha bhi shocked thi chalo ek thappad se do log hosh me aaye Avi- ab main kuch bolu sneha ne haa me gardan ghuma diya Avi- pahale sneha tum karan ko ye vishwas dila do ki tum uski ho usko pyar karti ho sneha- par kaise Avi- us din jo tum dono ne kiya vaise hi sneha- kab Avi- us din , tum dono bedroom me the akele aur main hall me sneha ko samaj nahi aa raha tha jaise samaji to wo muze gurne lagi pir thodi der sochne ke bad sneha ne ek faisala liya sneha ne thodi himmat dikayi aur karan ki jeans aur underwear nikaal li karan dekta rah gaya main ne apna sar dusari taraf ghuma liya ye sneha bhi na muze laga kiss karengi par sneha to lund pe kiss karne lagi jab se mere sath sex kiya tab se besharam ban gayi hai aur sneha ne karan ke lund ko choosna suru kiya karan ka muh khol kar kiss kar sakti thi par karan ager sneha ke hont kaat keta ya galiya suru kar deta pir bacha hi kya hai aajkal premi ki kalayi kaat kar yakin dilaya to fake lagta hai vahi ager sex kar lo to wo pyar true lagta hai sneha bhi cahi kar rahi thi sneha ne karan ke lund pe kiss kiye aur thodi der choos liya pir sneha ne vapas karan ko kapde pahna diye Avi- deko karan , ager sneha muze pasand karti to tumare sath ye sab nahi karti Avi- sneha tumari hai aur tumari rahengi Avi- ab main tume kholne vala hu , ager tume ham par thoda bhi vishwas ho to hamari bat sun lena varna ye chaku tumare hant me de raha hu ,maar dena badi himmat jama karke main ne karan ko khol diya aur uske hant me chaku diya karan shoched tha ki wo kya kare muze aur sneha ko maar dale ya hamari bat sun le
  3. update 36 karan to guasse me nikal gaya par komal bhi guasse me karan ko dundte huye karan ke ghar aa gayi komal- sonali didi , karan bhaiya kaha hai sonali- kyu kya hua komal- karan bhaiya ne mera mobile thod diya sonali- par kyu ? komal- pata nahi , bhabhi ki photo dek rahe the ki guasse me mobile thod diya sonali- khon bhabhi komal- aapko to batana bhul gayi ki Avi bhaiya ki shadi fix hi gayi Avi ki shadi ki bat sunkar sonali sofe par gir gayi sonali- Avi ki shadi komal- haa , Avi bhaiya ki shadi fix huyi hai sneha bhabhi ke sath sneha ke sath ye word sunte sonali khadi ho gayi sonali- sneha ke sath komal-haa , aap kyu itna chouk gayi sonali- Avi ne shadi ko haa kaha komal- haa , dono khush the is shadi se sonali ko bahot bada zatka laga Avi ne kaha tha ki wo bas usko pyar karta hai ek minute , Avi ne kaha sneha aur sonali ko pyar karta hai sonali ne manaa kiya to sneha ne haa kaha honga ye kya ho gaya sonali ne socha nahi tha sab itne jaldi ho jayenga sonali ke ankhion se aasu nikalne kage sonali ne jab dopehar me Avi aur sneha ko hotel ke room me jate huye deka to uska dil tut gaya tha par ab shadi ki bat sunker sonali ki aatma mar gayi sonali ko rota hua dek komal shokced thi komal-kya hua didi aap ro kyu rahi hai sonali- muze akela chhod do komal- ajib bat hai Avi bhaiya ki shadi ki bat sunkar karan bhaiya bhi rone lage aur aap bhi ro rahi hai sonali iska kya jawab deti sonali rote huye apne kamre me chali gayi komal ka mobile tut gaya in sab me komal vapas apne ghar chali gayi -------- idar hotel me Avi aur sneha sneha aur Avi dono ne apne kapde do kar sukane ko rak diye ab dono sirf towel me the Avi- sneha tum jab bhi mere sath hoti ho to kapde kyu nikaal deti hu sneha-stup up Avi- tum bina kapdo ke hot lagti ho sneha-chup nahi rah sakte Avi- sneha tumare boobs dik raha hai sneha ne jaldi towel upar kiya Avi- tum itna sharama kyu rahi ho ye pahali bar nahi hai sneha-tu muze tang karna band karo Avi- to kya karu sneha-chup chap ye socho ki is musibat se bahar kaise nikale Avi- musibat bahot badi ban gayi gai , ek to shadi fix huyi , tumare papa mere papa friend nikale , karan dost hai uski tum.girkfriend ho , karan ko dhokka dene se sonali mere hanto se chali gayi sneha-ye sab tumsre vajse hua Avi- meri vajse kyu sneha-tu muze akela chhod kar kyu gaye the Avi- kyu ki tume mere bedroom me nangi sonali ne dek liya tha , aur muze thappad maar diya jis muze laga mera pyar meri sonali muzse dur ho gayi aur main depression me chala gaya tha sneha-sonali kab aayi thi Avi- aayu thi khana lekar sneha-ab main sonali ke samne kaise jaungi Avi- kapdo me jana sneha-mazak mat karo Avi- muze sochne do ki kya karna hai sneha-Avi sab tik kar do , main tumari madat kar dungi sonali se bat karungi Avi- tum to rahne do , main apna khud dek lunga , par ye batav ki tumare ghar me hamari shadi se khon khush nahi hai sneha-papa to bahot khush hai kyu ki tum unke best friend ke bete ho , aur chutki bhi khush hai Avi- tumari maa sneha-unko rich family chaiye thi mere liye par tum mil gaye Avi- iska matlab hai ki tumari maa is shadi se jada khush nahi hai sneha-haa Avi- pir to hamara kaam ban jayenga sneha-wo kaise Avi- tum apni maa se bat karo ye kaho ki Avi tume pasand nahi hai , tum to karan se pyar karti ho aur karan to rich hai wo tumari maa ko pasand aayenga sneha-par papa unka kya Avi- unke liye main kuch sochta hu sneha-kya ? Avi- sochne do , ek to tum.mere samne nangi ho jis se main kuch soch nahi paa raha hu sneha-aisa kyu ? Avi- kyu ki tumare vajase mera lund khada ho gaya hai , dek lo aur main ne towel nikaal liya mera lund dekte sneha ne chehara ghuna diya sneha-tum bahot gande ho , chupa do isko Avi- mere lund ko to bahot pyar aa raha us din sneha-please Avi towel pahan lo Avi- bilkul nahi main aisa hi rahunga aur main sneha ke pass jaker nanga let gaya sneha ka hant pakad kar apne lund pe raka to sneha ne jor se marod diya Avi-mmaaaaaaaa Avi-ye kya kiya, aisa kohi karta hai sneha-tumare sath aisa hi hona chaiye Avi- iska badla lunga main aur main sneha ki taraf badne laga to door bell baj gayi Avi- ab khon aaya sneha-waiter honga main towel oahan kar door kholne chala gaya towel me door kholne se muze zatka laga door kholte kisi ne muze jordar dhakaaa diya main zameen par gir gaya jo.shaks under aaya wo karan tha karan ke hant me chaku tha karan bed par baiti sneha jo towel me thi usko dek raha tha sneha ko towel me dek kar sari picture karan ke samne aayi ki kya hua honga hamare bich main bhi towel me tha karan ka guass ab satve aasman me chala gaya usko ham dono rang rangila mante huye dik rahe the uske sar pe khoon sawar ho gaya wo meri taraf badne laga chaku lekar ______________________________
  4. ~:- Congratulations to "Story Maker" -:~

    thanks dost
  5. دَور ہی ایسا ہے، جو دیکھیں اُسے اُلٹا کہیں جہل کو دانش کہیں ، بینا کو نابینا کہیں شہرِ نو آباد کی یہ قُربتیں ، یہ دُوریاں یعنی ہم برسوں کے ناواقف کو ہمسایا کہیں اُن کا کہنا ہے کہ ہر ظاہر کا باطن اور ہے جاگتی آنکھیں جو دِکھلائیں اُسے سپنا کہیں وُہ جو کر دے زندگی کا سارا منظر خواب گُوں کوئی آئے بھی نظر ایسا جسے تجھ سا کہیں روز فرمائش کرے صورت گر دُنیا کہ ہم مصلحت کے چہرۂ یک چشم گو زیبا کہیں اُن میں کرتا ہے جو نا مُعتبر کو مُعتبر وُہ مدارِ قسمتِ انساں ، جسے پیسا کہیں کوئی کیوں جانے کہ ہم کب آئے کب رخصت ہوئے زندگی کر لی، اِسے اب زحمتِ بے جا کہیں آفتاب اقبال شمیم
  6. وہ جن کی چھاؤں میں پلے بڑے ہوئے ادھر ادھر پڑے ہیں سب کٹے ہوئے ہزیمتوں کے کرب کی علامتیں چراغ طاق طاق ہیں بجھے ہوئے تمام تیر دشمنوں سے جا ملے کمان دار کیا کریں ڈٹے ہوئے وصال رت میں ہجر کی حکایتیں اداس کر گئی ہیں دل کھلے ہوئے گھروں کی رونقیں وہی جو تھیں کبھی مگر بھلا دیے گئے گئے ہوئے تنی تنی سی گردنیں جھکی ہوئی دعا کو ہاتھ ہیں سبھی اٹھے ہوئے
  7. وہ اس جہان سے حیران جایا کرتے ہیں جو اپنے آپ کو پہچان جایا کرتے ہیں جو صرف ایک ٹھکانے سے تیرے واقف ہیں تری گلی میں وہ نادان جایا کرتے ہیں کسی کے ہونے نہ ہونے کے بارے میں اکثر اکیلے پن میں بڑے دھیان جایا کرتے ہیں میں اب کبھی نہ دکھوں گا کسی کے مرنے سے کہ شب گزار کے مہمان جایا کرتے ہیں جو اصل بات ہے اس کو چھپانے کی خاطر کبھی کبھی غلطی مان جایا کرتے ہیں یہ بات آتے ہوئے سوچتا نہیں کوئی کہ سب یہاں سے پریشان جایا کرتے ہیں جمالؔ ہم تو تجھے یہ بھی اب نہیں کہتے کبھی کسی کا کہا مان جایا کرتے ہیں
  8. یہ میری کچھ پسندیدہ لفظوں میں سے کچھ الفاظ ہیں ۔۔ اس امید پے شیئر کر رہا ہوں کے آپکو بہت پسند آئیں گے ********* سنو تم نے کبھی سنو تم نے کبھی ساحل پہ بکھری ریت دیکھی ہے؟؟ سمندر ساتھ بہتا ہے مگر اس کے مقدر میں ھمیشہ پیاس رہتی ہے سنو تم نے کبھی صحرا میں جلتے پیڑ دیکھے ہیں؟؟ سبھی کو چھاؤں دیتے ہیں مگر انکے مقدر میں ہمیشہ دھوپ رہتی ہے سنو تم نے کبھی میلے میں بجتے ڈھول دیکھے ہیں؟؟ عجب ہے المیہ ان کا بہت ہی شور کرتے ہیں مگر اندر سے خالی ہیں یہی میرا فسانہ ہے بس اتنی سی پہیلی ہے یہی میری کہانی ہے
  9. Friend's Baji...فرینڈز باجی

    ہیلو دوستو میں ہوں آپ کا شاہ جی۔۔۔ جیسا کہ آپ جانتے ہیں کہ ہمارے ہاں زیادہ تر لڑکے سیشنل کھلاڑی ہوتے ہیں میں جب کبھی کرکٹ کا ورلڈ کپ ہورہا ہو تو سب سٹریٹ فیلوز کرکٹ کے دیوانے نظر آتے ہیں اور ہر طرف کرکٹ ہی کرکٹ چل رہا ہوتا ہے اسی طرح جب فٹ بال کا ورلڈ کپ ہورہا ہو تو سب لڑکے فٹ بال کیلئے ہی پاگل ہوتے ہیں یہ ایک نارمل بات ہے۔ یہ کہانی فٹ بال ورلڈ کے دنوں کی ہے جیسے جیسے ورلڈ کپ آگے بڑھتا جاتا لڑکوں کا کریز بھی بڑھتا جاتا اور تب ایک دن ہم دوستوں نے فیصلہ کیا کہ ہم بھی ایک فٹ بال ٹیم بناتے ہیں اور پھر نیو سٹار فٹ بال کلب کے نام سے ہماری ٹیم بن گئی۔ جس کا میں نائب کپتان اور میرا دوست کپتان بن گئے۔ پریکٹس کے لیے ہم نے میڈیکل کالج راولپنڈی کی گراؤنڈ پسند کی لیکن ابھی ہم نے ایک دو دن ہی پریکٹس کی تھی کہ وہاں سے ہم لوگوں کو بھگا دیا گیا تب ہم نے ایک دوسری گراؤنڈ پر کھیلنا شروع کردیا۔ لیکن پہلی کی طرح وہاں سے بھی بے دخل کردیا گیا۔ اسی طرح ہم تیسری گراؤنڈ پر پہنچ گئے۔ وہاں سے بے دخلی کے بعد ہم نے ایک گورنمنٹ سکول کے گراؤنڈ پر کھیلنا شروع کیا یہ گراؤنڈ ایک گورنمنٹ سکول کی ملکیت تھا۔ جہاں پر ہمارے دوست کے پاپا نے پرنسپل سے پرمیشن لے دی تھی۔ یہ سکول ائیر پورٹ کے قریب ہی تھا۔ ہمارے گراؤنڈ سے تھوڑا دور ہی آرمی آفیسران کے گھر تھے۔ میری ذمہ داری یہ تھی کہ میں گراؤنڈ میں فٹ بال اور کھلاڑیوں کی کٹس وغیرہ لایا بھی کروں اور کسی محفوظ جگہ پر رکھا بھی کروں۔ اب ہم نے ہر شام وہاں پریکٹس کرنا شروع کردی تھی کچھ دنوں کےبعد ایک لڑکا جو شکل سے کچھ سپیشل پرسن سا لگتا تھا ہمارے پاس آکر روزانہ گیم دیکھنے لگا اس سے ہماری خاص کر میری کچھ جان پہچان بھی ہوگئی اور پھر ایک دن اس نے بھی ہمارے ساتھ کھیلنے کی ریکوسٹ کی لیکن کپتان نے درخواست صرف اسی وجہ سے قبول نہیں کیونکہ وہ خاص دکھتا تھا۔ کپتان کے صاف انکار سے وہ کافی ناامید ہوا اور وہاں سے چلا گیا اگلے دن جب ہم کھیلنے آئے تو ہم نے اس لڑکے کے ساتھ ایک بیٹ مین(آرمی والا) اور ایک میچور عورت جو کہ اس کی بڑی بہن تھی، آئے ہوئے تھے۔ بیٹ مین نے آگے آکر ہم سے کہا کہ میڈم صاحبہ بولا رہی ہیں جب میں اور کیپٹن میڈم کے پاس گیا تو وہ غصے سے بولیں: دیکھو اگر تم لوگوں کو یہاں کھیلنا ہے تو اس کو بھی ساتھ کھیلانا پڑے گا نہیں تو آپ سب کی چھٹی کردی جائے گی اس کھلی بلیک میلنگ سے ہم دونوں کافی گھبرا گئے اور ہم فوراً ہی اس لڑکے کو اپنے ساتھ کھیلانے پر آمادہ ہوگئے۔ اب وہ لڑکا ہمارے ساتھ ہی کھیلنے لگا، گیم شیم تو اس کو تو بالکل ہی نہیں آتی تھی لیکن اس کی بہن کا ڈنڈا تھا تو اس لیے ہم اسے کھلانے پر مجبور تھے۔ لڑکے کی پہلے ہی میرے ساتھ کافی گپ شپ تھی اس لیے فیصلہ ہوا کہ وہ میرے ساتھ بیک پر کھیلے گا۔ ساتھ ہونے کی وجہ سے میری اور اس کی بات چیت تھوڑے ہی دنوں میں فارمل بات چیت سے دوستی میں تبدیل ہوگئی۔ گراؤنڈ سے کچھ ہی دور اس کا گھر تھا اس لیے اسی نے آفر کی کہ میں ٹیم کی کٹ، فٹ بال اور باقی سامان اس کے گھر رکھ دیا کروں اور وہاں سے لے آیا کروں ، کچھ دنوں بعد میں اس کے گھر با آسانی آنے جانے لگا۔یہ گھر اس کے جیجا کرنل گل کا تھا۔ کرنل صاحب کی اپنی کوئی اولاد نہیں تھی اس لیے مسز گل نے اپنے والدین سے اپنا بھائی مانگ لیا تھا اور وہ ان کے ساتھ رہتا تھا۔ اس کی بہن مسز گل جس کا نام پل وشاہ مروت تھا لیکن سب اسے مسز کرنل گل کہتے تھے۔ وہ خاندانی پٹھان تھی جیسا کہ آپ لوگ جانتے ہیں کہ پٹھان خوبصورت اور گورے چٹے ہوتے ہیں اور ناجانے کیا کیا خوبیاں پائی جاتی ہیں۔ مسز گل ٹھنڈے دماغ اور سمارٹ عورت دکھتی تھی۔ فوجی کی بیوی اور اوپر سے پٹھانی عورت، ہونے کی وجہ سے سٹائلش اور کلاسی۔۔۔ اوپر سے جسم بھی مسز گل نے ویل شیپڈ بنا رکھا تھا۔ صراحی دار لمبی گردن خوبصورت آنکھیں اور گولڈن بال۔۔۔اور جب وہ اپنی آنکھوں پر خوبصورت گلاسسز لگاتی تو بس۔۔۔ قیامت ہی آجاتی۔۔۔ بڑے بڑے پستان۔۔۔ اف اس کے پورے جسم میں سب سے زیادہ خوشنما اس کی نرم اور بڑی سی گانڈ تھی۔۔۔ آہ ہ ہ ہ ہ ہ وہ مرد مار خاتون تھی جس (گانڈ) کو جب وہ ہلاہلا کر مستانی چال چلتی تو دیکھنے والے اپنا دل پکڑ کر رہ جاتے۔ مسز گل تھوڑا سپشل پرسن ہونے کی وجہ سے اپنے چھوٹے بھائی فدا سے بڑا پیار کرتی تھی اور اس کا خاص خیال رکھتی تھی فدا کا دوست ہونے کی وجہ سے میرے ساتھ بھی کافی اچھا رویہ رکھا ہوا تھا۔ ان کے شوہر گھر پر بہت کم ملا کرتے تھے زیادہ تر پل وشاہ باجی ہی گھر پر موجود ہوتی تھیں۔ فدا کی طرح میں بھی ان کو بھی پل وشاہ باجی کہہ کر پکارتا تھا شروع شروع میں تو میں ٹیم کا سامان ان کے نوکر کو دے کر چلا جایا کرتا تھا۔ پر کچھ ہی دنوں کے بعد فدا نے مجھے اپنے گھر لے جانا شروع کردیا اور پھر آہستہ آہستہ حالات یہ ہوگئے کہ ہم دونوں گھر سے ہی تیار ہوکر (کٹ میں) جاتے تھے اور واپسی پر وہیں کپڑے تبدیل کرتا تھا۔ یہ سمر سیزن کی بات ہے ہم دونوں معمول کے مطابق گھر آئے پسینے کی وجہ سے ہم دونوں کا جسم بھیگا ہوا تھا بُری طرح سے پیاس لگی ہوئی تھی۔ اس دن ان کا نوکر بھی گھر پر نہیں تھا فدا بولا: آؤ شاہ جی فریج پر حملہ کرتے ہیں۔ اکثر نوکر ہی ہم کو ٹھنڈا پانی یا شربت سرو کرتا تھا لیکن اس دن وہ گھر پر نہیں تھا اس لیے ہم دونوں فوراً ہی کچن کی طرف چل دئیے چونکہ کچن کا راستہ ڈرائنگ روم سے ہوکرگزرتا تھا، جیسے ہی ڈرائنگ روم میں پہنچے تو باجی پل وشاہ کسی خاتون کے ساتھ بیٹھی باتیں کررہی تھیں۔ ان کے سامنے مشروب پڑے ہوئے تھے۔ جیسے ہی ان کی نظر ہم پر پڑی وہ بولی: فدا دیکھو تو ہمارے گھر کون آیا ہے؟ ہم تو ابھی تمہیں ہی یاد کررہے تھیں۔ فدا اس خاتون کو دیکھ کر بڑا خوش ہوا اور فوراً ہی اس طرف چلا گیا یہ مسز سلیم تھیں پل وشاہ کی دوست۔۔۔ میں نے بھی ان کو دور سے ہائے بولا اور پھر کچن کی طرف بڑھنے لگا تو پل وشاہ باجی بولیں: شاہ جی آپ بھی آؤ نا۔۔۔ آپ سے بھی مسز سلیم ملنا چاہتی ہیں یہ سن کر میں بھی ان کے پاس چلا گیا۔مسز سلیم تو پل وشاہ باجی سے بھی دو دو ہاتھ آگے تھیں اس نے بڑے ہی ٹرانسپیرنٹ کپڑے پہنے ہوئے تھے جس سے ان کا گورا بدن صاف نظر آرہا تھا جیسے ہی میں ان کے پاس پہنچا پل وشاہ باجی بولی: یہ ہیں مسٹر شاہ جس کا میں ذکر کررہی تھی فدا کا اس ٹاؤن میں اکلوتا دوست۔۔۔ مسز سلیم صوفے سے اٹھی اور میرے ساتھ مصافہ کیا۔ میں ویسے تو ان کے ساتھ مصافہ کررہا تھا پر میری آنکھیں نہ چاہتے ہوئے بھی ان کی اوپن ٹرانسپیرنٹ شرٹ سے جھانکتی ہوئی گورے گورے موٹی پستانوں پر تھی جن کے بس نپلز ہی برا میں چھپے ہوئے تھے۔ باقی وہ ٹوٹلی ننگی تھی اتنے خوبصورت پستانوں پر میری نظر جیسے چپک سی گئی تھی میرے خیال میں پل وشاہ باجی کو میری اس بدتمیزی کا اندازہ ہوچکا تھا اس لیے وہ فوراً بولی: شاہ جی یہ مشروب لے لو۔۔۔ جیسے ہی میں نے ڈرنک کا گلاس اُن کے ہاتھ سے لیا تو انہوں نے ہلکا سا میرا ہاتھ دبایا اور سرگوشی میں بولیں:بُری بات۔۔۔ آپ اپنی نظروں پر قابو رکھیں۔
  10. یہ کہانی عظیم رائٹر شاہ جی کی ہے۔۔۔ جس کو میں نے شاہ جی کے کہنے پر بذات خود ترجمہ کررہا ہوں۔ کافی دنوں سے وقت نہیں مل رہا تھا آج فراغت کے لمحات ملتے ہی کہانی شروع کرنے کا سوچا کہانی شروع کرنے سے پہلے میں چھوٹی سی عرض کرنا چاہوں گا۔ کہانی کو میں روزانہ اپڈیٹ تو نہیں کرسکتا لیکن کوشش کروں گا کہ ہفت روز کہانی کو اپڈیٹ کرتا رہوں۔ شکریہ
  11. Jokes by STORY MAKER

    Pathan: College Ki Larki se Bola I love U Ab Tum Mujhe Bolo Girl: Me Abhi Ja K sir Ko Bolti Hun Pathan: Pagal ki bachi Sir ko mat bolna wo shadi shuda hai.
  12. Jokes by STORY MAKER

    گاؤں میں لیڈی ھیلتھ ورکر خاندانی منصوبہ بندی پر لیکچر دے رہی تھی "سب سے اسان طریقہ یہ ہے کے جب شوهر فارغ ہونے لگے تو نیچے سے نکل جاؤ..." ایک دیہاتی عورت قریب هو کر بولی؛ "میں اپنے فوجی نوں لے کے آنی آں تو مینوں تھلوں هل کے وکھائیں.
  13. مسیحا.....Maseeha

    بادلوں کی زوردار گڑگڑاہٹ کے ساتھ آسمانی بجلی کی کڑک نے رومانہ کو خوف سے ایک جھرجھری لینے پر مجبور کردیا ۔۔۔اس نے جلدی سے بستر پر لیٹے اس اجنبی کی طرف دیکھا اور اس کے ماتھے پر ہاتھ رکھ کر اس کا بخار چیک کرنے لگی ۔۔۔۔اجنبی نوجوان اب بھی بخار میں جل رہا تھا ۔۔۔۔اس نے جلدی جلدی پٹیاں پانی میں بھگو ئیں اور اس کے ماتھے پر رکھنےلگی ۔۔۔۔ اس طوفانی سرد رات میں وہ اپنی کمپنی کی میٹنگ سے فارغ ہونے کے بعد واپس آرہی تھی جب یہ نوجوان اچانک دائیں جانب سے نمودار ہوا اور اس کی کار کے آگے گر پڑا ۔۔۔رومانہ نے اتنی زور سے کار کے بریکس لگائے کہ ایک زوردار چرچراہٹ کے ساتھ ٹائرز جیسے سڑک پر دھنس کر رہ گئے ہوں اگر رومانہ ایک لمحے کی بھی تاخیر کر دیتی تو یقیناً وہ جو کوئی بھی تھا کار اس کے بدن کو روند کر رکھ دیتی ۔۔۔اس نے جلدی سے چھتر ی نکالی اور کار سے باہر آگئی ۔۔۔اجنبی منہ کے بل اس کی کار کے ٹائرز سے چند انچ دور پڑا تھا ۔۔۔رومانہ نے اس کو آوازیں دینا شروع کیں ۔۔۔ہلا کر دیکھا لیکن اجنبی بے سدھ پڑا رہا ۔۔۔۔رومانہ نے مدد کے لیے ادھر اُدھر دیکھا لیکن اس طوفانی رات میں سڑک بھی سنسان پڑی تھی ۔۔۔رومانہ جیسی حساس فطرت اس طرح اسے چھوڑ کی جا بھی نہیں سکتی تھی ۔۔۔اس نے کار سے رین کوٹ نکال کر پہنا اور بڑی مشکل سے اجنبی کو گھسیٹتے ہوئے کار کی پچھلی سیٹ پر لٹا دیا ۔۔۔۔اجنبی کیچڑ میں لت پت تھا ۔۔۔۔اس نے اس کے دل پر ہاتھ رکھ کر اس کی دھڑکنوں کو چیک کیا تو وہ بہت مدھم چل رہی تھیں ۔۔۔رومانہ بہت پریشان ہوگئی تھی ۔۔۔ اس نے کار ہاسپٹل کی جانب موڑنی چاہی پھر کچھ سوچ کر اس نے کار گھر کی طرف موڑ دی ۔۔۔ہاسپٹل کافی دور تھا جبکہ اس کا گھر چند فرلانگ کے فاصلے پر تھا ۔۔اس نے جلدی سے اپنے پڑوس میں رہنے والے ڈاکڑ عادل کو فون کیا اور انہیں ساری سیچوئشن بتا کر انہیں گیٹ پر انتظار کرنے کے لیے کہا ۔۔۔چند منٹ میں ہی گاڑی اس کے بنگلے کے گیٹ پر تھی ۔۔۔ڈاکٹر عادل اس کی گاڑی دیکھتے ہی تیزی سے اس کی طرف لپکے ۔۔اور واچ مین کی مدد سے اجنبی کو اٹھا کر رومانہ کے بنگلے میں لے گئے ۔۔۔رومانہ گاڑی پارک کرکے اپنا گیلا ڈریس چینچ کرکے کمرے میں آئی تو ڈاکٹر عادل اجنبی پر جھکے اس کے سر کی چوٹ کی ڈریسنگ کرنے میں مصروف تھے ۔۔۔اجنبی کے کپڑے فرش پر پڑے تھے ڈاکٹر عادل نے اسے کمبل میں اچھی طرح لپیٹ دیا تھا ۔۔۔رومانہ نے سامنے ہوتے ہوئے اجنبی تھی طرف دیکھا تو وہ چوبیس پچیس سال کا انتہائی ہینڈسم نوجوان تھا ۔۔۔اس کے چہرے کے خدوخال سے صاف ظاہر ہورہا تھا کہ وہ کسی اچھی فیملی سے تعلق رکھتا تھا ۔۔۔ڈاکٹر عادل نے رومانہ کی طرف دیکھتے ہوئے کہا کہ اس کے سر پر ضرب لگائی گئی ہے اور اسے شدید بخار بھی ہے میں نے اسے انجیکشن دے دئیے ہیں اب اس کی حالت خطرے سے باہر ہے ۔۔۔۔لیکن آپ کو مسلسل اس کے ماتھے پر پانی سے بھگوئی پٹیاں کرنے ہونگی اور جب اس کا بخار ٹوٹ جائے تو اسے یہ میڈیسن دینی ہیں انہوں نے میڈیسن رومانہ کو دیتے ہوئے اسے ہدایت کی ۔۔۔شاید اس کو لوٹا گیا ہے کیونکہ اس کا پرس اور فون وغیرہ کچھ بھی اس کے لباس سے نہیں ملا ڈاکڑ عادل نے اجنبی کی طرف دیکھتے ہوئے کہا ۔۔۔رومانہ نے ڈاکٹر عادل کو شکریہ ادا کیا اوروہ اپنا بیگ اور چھتری لئے گھر چلے گئے ۔۔۔رومانہ نے ایک نظر اجنبی کی طرف دیکھا اور اس کے سرہانے بیٹھ کر اس کے ماتھے پر پٹی رکھنے لگی ۔۔۔۔۔ رومانہ ایک تیس برس کی بے حد دلکش نقوش اور خوبصورت جسم کی مالک لڑکی تھی ۔۔۔ایک ملٹی نیشنل کمپنی میں بہت اعلیٰ عہدے پر فائز تھی ۔۔۔اچھی جاب ،بنگلہ ،نوکر چاکر سب کچھ اس کے پاس تھا لیکن اگر نہیں تھا تو سکون ۔۔۔۔شادی کے بھیانک تجربے نے سب کچھ ہونے کے باوجود اس کا آرام و سکون جیسے ہمیشہ کے لیے چھین لیا تھا ۔۔۔۔شرجیل اس کی محبت جس کا خیال آتے ہی اس کی پورے جسم میں نفرت کی چنگاریاں بھڑکنے لگتی ہیں ۔۔۔۔شرجیل اور رومانہ یونیورسٹی فیلو تھے جن کی دوستی محبت میں بدلی پھر جیون ساتھی میں لیکن شادی کے بعد جب شرجیل کا اصل چہرہ سامنے آیا تو سب کے سب خواب ایک ہی لمحے میں چکنا چور ہوگئے ۔۔۔اس کے ساتھ بیتے ہوئے وہ ۳ ماہ اس کی زندگی کا بدترین وقت تھا ۔۔۔شرجیل انتہائی عیاش اور کمینہ فطرت انسان ثابت ہوا ۔۔۔شراب کے نشے میں دھت پر رومانہ پر انتہائی انسانیت سوز تشدد کرتا ۔۔۔رومانہ یہ سب کچھ برداشت نہ کرسکی اور صرف ۳ ماہ بعد ہی رومانہ نے اس سے طلاق لے لی اور اس کے بعدتو جیسے اس کو دنیا کے ہر مرد سے نفرت ہوگئی ۔۔۔پھر دوبارہ کبھی اس نے شادی کے بارے میں نہیں سوچا ۔۔۔۔اس کی چاہت کے طلبگار سر پٹخ پٹخ کر رہ گئے لیکن کوئی اس کا اعتماد نہ پا سکا ۔۔۔ ۶ سال پہلے کا وقت یاد آتے ہی اسے اپنے جسم اور روح پر لگے زخم پھر سے تازہ ہوتے محسوس ہوتے ۔۔۔۔ بادلوں کی ہولناک گڑگڑاہٹ نے ماضی کی تلخ یادوں میں کھوئی ہوئی رومانہ کو چونکا دیا ۔۔۔۔اس کا ہاتھ اجنبی نوجوان کے ماتھے پر تھا اس نے جلدی سے پٹی تبدیل کی اور پھر سے اس کے ماتھے پر رکھنے لگی ۔۔۔۔گرم کمبل میں لپٹا ہوا جسم ، کمرے کے گرم ماحول ،ڈاکڑ عادل کے انجیکشن اور رومانہ کے مسلسل ماتھے پر پٹیاں کرنے سے اس اجنبی کی حالت میں کافی بہتری آ رہی تھی ۔۔۔بخار کا زور ٹوٹ رہا تھا ۔۔۔اجنبی کو ہوش میں آتا دیکھ کر رومانہ نے اس کے ماتھے سے پٹی ہٹا کر اپنا ہاتھ رکھا تو اس کا بخار سے تپتا جسم اب پسینے کی ٹھنڈک میں ڈوبا ہوا تھا ۔۔۔۔۔اجنبی نے آہستہ سے اپنی آنکھیں کھولیں اور خالی خالی نظروں سے خلا میں گھورنے لگا ۔۔۔رومانہ نے اس کے قریب آکر اسے آواز دی تو اس نے اپنی آنکھیں رومانہ کی طرف موڑیں اور اسی طرح خالی نظروں سے اسے دیکھتے ہوئے اپنی آنکھیں دوبارہ موندھ لیں ۔۔۔نقاہت اس کے چہرے سے صاف ظاہر ہورہی تھی ۔۔۔۔رومانہ نے اس کو دوبارہ آواز دی تو اس نے آنکھیں کھول کر اس کی طرف دیکھا رومانہ نے میڈیسن اور پانی کا گلاس اٹھایا اور اسے سہارا دیتے ہوئے اسے دوا دینے لگی ۔۔۔۔دوا لینے کے بعد اجنبی نے دوبارہ لیٹ کر اپنی آنکھیں بند کرلیں ۔۔۔رومانہ اس سے اس کے بارے میں پوچھنا چاہتی تھی لیکن اس کی حالت ایسی نہیں تھی کہ وہ کوئی جواب دے پاتا ۔۔۔۔اس کی طبیعت بہتر ہوتا دیکھ کر رومانہ کو بہت اطمینان ہوگیا تھا ۔۔۔۔اس نے وال کلاک کی طرف دیکھا تو رات کے بارہ بج رہے تھے ۔۔۔اسے بھوک کا احساس ہوا کچن میں جا کر مائیکرو ویو میں کھانا گرم کرنے لگی ۔۔۔اسی دوران اس نے جلدی سے شاور لیا اور نائٹی پہن کر کھانا لئے ہوئے کمرے میں آگئی ۔۔۔اجنبی اب پرسکون نیند سو رہا تھا ۔۔۔کھانا ختم کرنے کے بعد رومانہ نے کافی بنائی اور کتاب ہاتھ میں لیے اجنبی کے بیڈ کے سامنے کرسی پر بیٹھ کر کتاب پڑھنے لگی ۔۔۔ اجنبی نے کراہتے ہوئے اپنی آنکھیں کھولیں اور رومانہ کتاب سائیڈ پر رکھتے ہوئے اس کی طرف بڑھ گئی ۔۔۔اجنبی اٹھنے کی ناکام کوشش کررہا تھا رومانہ نے اسے سہارا دیتے ہوئے بیٹھایا کمبل اس کی گردن تک لپٹا ہوا تھا ۔۔۔رومانہ نے اس سے اس کی طبیعت کے بارے میں پوچھا کہ اب وہ کیسا محسوس کررہا ہے تو اس نے رومانہ کی طرف ہلکی سی مسکراہٹ کے ساتھ دیکھا ۔۔۔رومانہ نے اس سے اس کا نام پوچھا تو اس نے آہستہ آواز میں اپنا نام فراز بتایا ۔۔۔۔نقاہت اب بھی اس کے جسم پر طاری تھی ۔۔۔۔رومانہ نے جلدی سے اس کے لیے جوس تیار کیا اور ساتھ ایک ٹیبلٹ بھی دی ۔۔۔فراز آہستہ آہستہ جوس پینے لگا ۔۔۔۔جوس پینے کے بعد ایک بار پھر لیٹ گیا ۔۔۔لیکن اب وہ پہلے کی نسبت کافی بہتر محسوس کر رہا تھا ۔۔۔اس نے رومانہ کو بتانا شروع کیا کہ اسے چار ڈاکوؤں نے ہائی وے پر گن پوائنٹ پر روکا اور اس کی گاڑی ،وائلٹ ،فون لے کر فرار ہوگئے اور جاتے ہوئے گن کا دستہ اس کے سر پر مار کر اسے سڑک کے کنارے پھینک گئے ۔۔۔اسے جب ہوش آیا تو وہ بڑی مشکل سے چلتا ہوا روڈ پر آیا اور پھر اسے ایک زوردار چکر آیا اس کے بعد اس کی آنکھ یہاں کھلی ہے تو رومانہ نے اسے بتایا کہ وہ کیسے اچانک اس کی گاڑی کے سامنے آکر گرپڑا تھا اور وہ اسے لے کر اپنے گھر آگئی ۔۔۔فراز نے بڑی ممنون نگاہوں سے رومانہ کی طرف دیکھا اور اس کا شکریہ ادا کرنے لگا ۔۔۔۔اگر آج آپ نہ ہوتیں تو یقیناً سڑک پر ہی دم توڑ دیتا ۔۔۔۔آپ نے میری جان بچائی آپ کا یہ احسان تا زندگی یاد رکھوں گا ۔۔۔۔۔رومانہ نے مسکراتے ہوئے اس کی طرف دیکھا اور کہا اس میں احسان کی کیا بات ہے یہ تو میرا فرض تھا ۔۔۔اتنی بات کرتے ہوئے اس پر پھر نقاہت طاری ہونے لگی تو رومانہ نے سہارا دے کر اسے لٹا دیا ۔۔۔۔فراز ایک بار پھر نیم بے ہوشی کی حالت میں تھا ۔۔۔۔رومانہ نے اس کا ٹمپریچر چیک کیا تو بخار بالکل اتر چکا تھا ۔۔۔۔اس نے طمانیت کے ساتھ کرسی پر دوبارہ ٹیک لگالی ۔۔۔ فراز کو نیند میں شاید گرمی محسوس ہو رہی تھی اس نے اپنی ٹانگوں پر سے کمبل ہٹا دیا ۔۔۔۔رومانہ کی نظر جیسے ہی اس کی ننگی ٹانگوں کے درمیان پڑی تو اسے شدید جھٹکا لگا ۔۔۔۔فراز کا سویا ہوا لن اسے صاف دیکھائی دے رہا تھا ۔۔۔۔رومانہ نے بے اختیار اپنی نظریں اس کے لن سے ہٹائیں اور کمبل دوبارہ اس کی ٹانگوں پر ڈال دیا ۔۔۔۔اس کے دل کی دھڑکنیں بے تاب ہورہی تھیں اس نے دوبارہ کتاب میں دھیان لگانے کی کوشش کی لیکن اس کے ذہن مسلسل فراز کے بارے میں سوچ رہا تھا ۔۔۔۔اس نے اپنے ذہن کو جھٹکا ۔۔۔برسوں سے دبے ہوئے اس کے جذبات اچانک پوری شدت سے ابھر کر اس کے دل میں ہلچل مچا رہے تھے ۔۔۔۔فراز بھی ایک مرد ہے اس کے دماغ نے کہا ۔۔۔۔ہاں مجھے مردوں سے نفرت ہے اس کے دماغ نے اسے یاد دلایا ۔۔۔۔لیکن تم ایک عورت بھی ہو کب تک اس جوانی کو برباد کرو گی ؟؟ دل نے اس کے کانوں میں سرگوشی کی ۔۔۔۔نہیں تم دن بھر مردوں کے ساتھ رہتی ہو کئی مرد تمہاری طرف تن من دھن سے بڑھتے ہیں لیکن تم سب کو ان کی اوقات میں رکھتی ہو صرف پروفیشنل تعلق کی حد تک رہتی ہو ۔۔۔دل کی بات پر دھیان مت دو ۔۔۔۔دماغ نے تیز آواز سے اسے پھر سے یاد دلایا ۔۔۔۔۔سب مرد ایک جیسے نہیں ہوتے ۔۔۔کب تک اپنے جذبات کا گلا گھونٹتی رہو گی ۔۔۔کب تک اس طرح سسک سسک کر مرتی رہو گی ۔۔۔۔تمہارے اس خوبصورت بدن کو ایک طاقتور بدن کی ضرورت ہے۔۔۔جو اسے پیار کرے اس سے خراج وصول کرے اسے محبت دے یہ تم بھی جانتی ہو کہ تمہارے خوبصورت بدن کو اس کی کتنی ضرورت ہے ۔۔۔دل نے بھی جوابی وار کیا ۔۔۔اسی دوران فراز نے پھر اپنی ٹانگوں سے کمبل ہٹا دیا ۔۔۔۔رومانہ کی آنکھیں اس کے خوبصورت سڈول لن پر جمی ہوئی تھیں جو سویا ہوا بھی موٹا اور توانا دیکھائی دے رہا تھا ۔۔۔دماغ نے پھر اسے یاد دلایا کیا کر رہی ہو رومانہ یہ بھی ظالم مرد ہے بھول گئیں وہ ظلم جو ایک مرد نے ہی تم پر کئے تھے ۔۔۔۔رومانہ اٹھی اور کمبل دوبارہ فراز کی ٹانگوں پر ڈال کر کرسی پر بیٹھ کر تیز تیز سانس لینے لگی ۔۔۔۔بجلی کی کڑکڑاہٹ کے ساتھ ہی اس کے دل میں مچے ہوئے طوفان نے کہا ۔۔۔۔دماغ کی باتوں پر توجہ مت دو رومانہ ۔۔۔۔۔آج نہیں تو کل تمہیں بہرحال کسی مرد کو اپنی زندگی میں شامل کرنا ہوگا کب تک اس طرح اکیلی رہو گی ۔۔۔۔پہاڑ جیسی زندگی گزارنی ہے تمہیں ۔۔۔۔تم جتنی بھی بہادر سہی لیکن بہرحال تم ایک عورت ہو اور اس دنیا میں مرد و عورت کا ساتھ اٹل ہے ۔۔۔۔دل و دماغ کی اس جنگ نے رومانہ کو جیسے نڈھال سا کر دیا تھا ۔۔۔وہ آنکھیں بند کئے اپنے دل کی بے ترتیب دھڑکنوں کو سنے جا رہی تھی دماغ کی آواز اب اسے سنائی نہیں دے رہی تھی ۔۔۔شاید دل نے دماغ کو پچھاڑ دیا تھا ۔۔۔۔ رومانہ نے آنکھیں کھولیں اورجیسے ایک ٹرانس میں اپنی کرسی سے اٹھی ۔۔۔۔اس نے فراز کی ٹانگوں سے کمبل ہٹایا اور اس کا نیم مردہ لن دیکھنے لگی ۔۔۔اس نے کانپتے ہاتھوں سے لن کو چھوا تو ایک کرنٹ اس کے پورے جسم میں دوڑ گیا ۔۔۔۔اس نے ہاتھ فوراً پیچھے کھینچ لیا ۔۔۔۔اپنی نظریں لن پر گاڑے بس اسے دیکھتی جا رہی تھی ۔۔۔۔برسوں کے سوئے ہوئے جذبات پوری طرح بیدار ہوچکے تھے ۔۔۔اسے اپنی ٹانگوں کے درمیان والی جگہ سلگتی ہوئی محسوس ہورہی تھی ۔۔۔۔اس کے ہاتھ میکانکی انداز میں حرکت میں آئے اور اس نے اپنی نائٹی اتار کر پھینک ڈالی ۔۔۔۔اب رومانہ صرف برا اور پینٹی میں تھی ۔۔۔اس کا دلکش جسم اپنی پوری آب و تاب کے ساتھ جذبات کی حدت سے جگمگا رہا تھا ۔۔۔۔اس نے ایک نظر سوئے ہوئے فراز کی طرف دیکھا ۔۔۔۔اور ہاتھ بڑھا کر اس کا لن اپنے نرم و ملائم ہاتھ میں لے لیا ۔۔۔فراز کے لن نے جیسے ہی رومانہ کے ملائم کو محسوس کیا اس نے بے اختیار ایک انگڑائی لی ۔۔۔۔رومانہ اب فراز کا لن ہاتھ میں لیے اسے ٹک دیکھے جا رہی تھی ۔۔۔پھر سلو موشن اندز میں جھکی اور لن کی کیپ پر اپنی زبان رکھ دی ۔۔۔فراز نیند میں کسمایا اور اپنی ٹانگیں سیدھی کرلیں ۔۔۔۔وہ بدستور نیند کی آغوش میں تھا ۔۔۔رومانہ نے نرمی سے اس کے لن کی ٹوپی منہ میں لے لی اور لولی پوپ کی طرح اسے چوسنے لگی ۔۔۔لن اس کے نرم ہونٹوں اور گرم زبان کا لمس پاتے ہی بیدار ہونے لگا ۔۔۔رومانہ ہوش و حواس سے بے گانہ ہوچکی تھی ۔۔۔۔اب پورا لن اس کے منہ میں تھا ۔۔۔۔اور ایک ہاتھ پینٹی کے اندر مسلسل چوت کو مسل رہا تھا ۔۔۔۔لن جیسی ہی پوری طرح بیدار ہو کر رومانہ کے حلق سے ٹکرایا ۔۔۔فراز نے بے اختیار آنکھیں کھول دیں ۔۔۔۔پسینے سے شرابور فراز کے جسم نے مستی سے ایک انگڑائی لی اور دوبارہ آنکھیں موند کر اپنی مسیحا کے اس خوبصورت اندز ِمسیحائی کا مزہ لینے لگا ۔۔۔رومانہ کے لن چوسنے کی رفتار میں تیزی آنے لگی ۔۔۔۔کچھ دیر پہلے درد سے کراہنے والا فراز اب مزے اور مستی سے کراہ رہا تھا ۔۔۔رومانہ نے لن منہ سے نکالا اور فراز کے باقی ماندہ جسم پر پڑے ہوئے کمبل کو ہٹا کر دور پھنک دیا اور فراز کی طرف آتے ہوئے اپنے جلتے ہوئے نرم و ملائم ہونٹ فراز کے سرد ہونٹو ں پر رکھ دئیے ۔۔۔فراز نے آنکھیں کھول کر اپنی مسیحا حسینہ کی طرف دیکھا اور اس کے ہونٹ اپنے ہونٹوں میں لے کر چوسنے لگا ۔۔۔۔۔اس کے ہاتھ رومانہ کی نرم کمر پر آورہ گردی کرنے لگے ۔۔۔۔رومانہ اپنی گرم گیلی ہوتی چوت فراز کے لن پر رگڑ رہی تھی ۔۔۔اور اس کے ہونٹوں کا گرم لمس فراز کے نقاہت زدہ جسم کو بھرپور توانائی فراہم کررہے تھے ۔۔۔فراز نے اپنے ہاتھ اس کی برا کی ہک کی طرف لے جاتے ہوئے ہک کو کھول دیا اور رومانہ کے ۳۶ کے سڈول نرم ممے برا کی قید سے آزاد ہوتے ہی اس کے سینے میں گڑ گئے ۔۔۔۔بادلوں کی ایک تیز گڑگڑاہٹ کے ساتھ ہی رومانہ نے اپنی ہونٹ اور سختی سے فراز کے ہونٹوں میں پیوست کر دئیے ۔۔۔۔برسوں کی پیاس کو فراز کے ہونٹ بجھا رہے تھے ۔۔۔۔رومانہ کی چوت سے نکلنے والی برسات نے پینٹی کو پوری طرح سے گیلا کر دیا تھا ۔۔۔۔اس نے ہاتھ پیچھے لیجاتے ہوئے لن اور چوت کے درمیان بننے والی پینٹی کی رکاوٹ کو بھی ایک جھٹکے سے دور کر دیا ۔۔۔۔اور خود کو فراز سے الگ کرتے ہوئے اس کے سامنے کھڑی ہوگئی ۔۔۔فراز اس کے توبہ شکن انتہا کے خوبصورت بدن کو دیکھ کر ششدر رہ گیا ۔۔۔۔رومانہ اس کے لن کے اوپر آئی اور اپنی چوت کو اس کے لن پر سیٹ کرتے ہوئے ایک جھٹکے سے نیچے ہوئی ۔۔۔۔فراز کا لن جیسے ہی برسوں کی پیاسی چوت میں داخل ہوا رومانہ کے ہونٹوں سے ایک طویل سسکاری نکلی اور وہ لطف و کیف کے اس لمحے کا پورا مزہ لینے لگی ۔۔۔اس کی ٹائٹ چوت میں فراز کا موٹا لن آدھے سے زیادہ داخل ہوچکا تھا ۔۔۔۔۔رومانہ آنکھیں بند کئے فراز کے لن کو اپنی پیاسی چوت میں بس محسوس کئے جارہی تھی ۔۔۔۔دونوں ساکت تھے ۔۔۔۔فراز بھی آنکھیں بند کیے اس دلکش نظارے کو اپنے روئیں روئیں میں محسوس کررہا تھا ۔۔۔رومانہ نے نیچے کی طرف ایک اور جھٹکا لیا اور لن جڑ تک اس کی چوت کی گہرائیوں میں اتر گیا ۔۔۔۔۔رومانہ کے لبوں سے سسکاریوں کا ایک نہ رکنے والا سلسلہ شروع ہوگیا ۔۔۔۔اس کی برسوں کی پیاسی چوت فراز کے لن کے ملن کو اور زیادہ برداشت نہ کرسکی اور ایک طاقتور آرگیزم کے ساتھ اس کی چوت نے پانی چھوڑ دیا ۔۔۔۔۔رومانہ لن چوت میں لیے فراز کے چہرے پر جھکی اور دوانہ وار اسے چومنے لگی ۔۔۔۔فراز نے اس کی گردن کے گرد بازو لپٹتے ہوئے اس اپنے اندر سمو لیا ۔۔۔۔رومانہ کے نرم ملائم ممے اس کے سینے میں دھنسے چلے جا رہے تھے ۔۔۔اور اس کا لن رومانہ کی چوت میں دھکے لگاتا ہوا اندر باہر ہورہا تھا ۔۔۔دونوں کے ہونٹ ایک بار پھر ایک دوسرے میں پیوست تھے ۔۔۔بجلی کی ایک اور خوفناک کڑکڑاہٹ کے ساتھ رومانہ نے اپنے آپ کو فراز کے چوڑے سینے میں سما لیا ۔۔۔فراز کے جھٹکے مدھم پڑنے لگے تھے ۔۔۔شاید نقاہت کی وجہ سے وہ اس گرم پیاسی چوت کے آگے ہار گیا تھا ۔۔۔۔اب رومانہ اس کے لن کو اپنی چوت میں لیے ہوئے اوپر نیچے ہونے لگی وہ لن کو جڑ تک اپنی چوت کی گہرائیوں میں لیتی اور رک جاتی ۔۔۔۔اس کی نرم و ملائم گانڈ فراز کے بالز پر آکر ٹھہر جاتی ۔۔۔پھر تیزی سے لن اندر باہر کرتی اور دوبارہ پورا لن لے کر رک جاتی ۔۔۔۔ایک اور لذت سے بھرپور آرگیزم نے رومانہ کی چوت میں ایک ذبردست ارتعاش پیدا کیا اور رومانہ کی سسکاریاں پورے کمرے میں گونجنے لگیں ۔۔۔۔فراز کی منزل بھی اب زیادہ دور نہیں تھی رومانہ کی چوت کے رس نے فراز کے لن کو بھی جوش دلادیا اور ایک تیز جھٹکے کے ساتھ فراز کے لن نکلنے والے لاوے نے رومانہ کی برسوں سے پیاسی چوت کی پیاس بالآخر بجھا ڈالی ۔۔۔۔۔شہوت کی حدت سے جلنے والے دونوں جسم شہوت کی گرمی کے پسینے سے شرابور ہو رہے تھے ۔۔۔فراز نڈھال ہو کر آنکھیں بند کیے شاید پھر نیند کی وادی میں جانے کو تیار تھا ۔۔۔۔رومانہ ایسے ہی اس کا لن اپنی چوت میں لیے اس کے سینے پر سر رکھے ہوئے تھی ۔۔۔۔رومانہ کو ایسے محسوس ہوا جیسے صدیاں بیت گئی ہوں ۔۔۔وہ آہستہ سے اٹھی اور لن پچک کی آواز کے ساتھ اس کی چوت سے باہر آگیا ۔۔۔۔رومانہ کےخوبصورت جسم کے انگ انگ میں لطف و سکون کی لہریں دوڑ رہی تھیں ۔۔۔۔اسے اپنا آپ انتہائی ہلکا پھلکا محسوس ہورہا تھا ۔۔۔۔وہ ننگی ہی چلتی ہوئی واش روم میں گئی اور تھوڑی دیر بعد واپس آکر فراز کی بغل میں لیٹ کر اس کے بالوں میں انگلیاں پھیرنے لگی ۔۔۔۔فراز نے آنکھیں کھولتے ہوئے اس کی طرف دیکھا اور اسے اپنی بانہوں میں چھپا لیا ۔۔۔۔باہر طوفان کم ہونے کا نام نہیں لے رہا تھا جبکہ کمرے کے اندر کا طوفان کچھ دیر تھم جانے کے بعد دوبارہ زور پکڑنے لگا ۔۔۔۔ایک بار پھر چوت اور لن کا ملن ہوچکا تھا ۔۔۔۔رومانہ لن پر سوار فراز کے سینے پر ہاتھ رکھے ہوئے پوری رفتار کے ساتھ اپنی چوت کو فراز کے لن پر گھما رہی تھی ۔۔۔۔رس سے بھری چوت کا یہ انداز فراز کا لن زیادہ دیر برداشت نہ کرسکا ایک بار پھر اس کے لن سے منی کا طوفان نکلا اور رومانہ کی چوت کو پوری طاقت سے سیراب کرنے لگا ۔۔۔۔طوفانی رات میں ہونے والی اس طوفانی چدائی نے دونوں کو نڈھال کر دیا تھا ۔۔۔۔رومانہ نے اٹھ کر فراز کے لیے جوس بنایا اور دونوں جوس پی کر کمبل اوڑھے ایک دوسرے کی بانہوں میں سو گئے ۔۔۔ صبح رومانہ کی آنکھ کھلی تو فراز اس کے سینے پر سر رکھے سو رہا تھا ۔۔۔۔۔رومانہ کے پورے بدن میں سرشاری چھائی ہوئی تھی ۔۔۔اس نے فراز کو آہستگی سے جگایا ۔۔۔فراز نے آنکھیں کھول کر رومانہ کی طرف مسکرا کر دیکھا ۔۔۔رومانہ بڑی محبت پاش نظروں سے اسے دیکھے جا رہی تھی ۔۔۔۔فراز اپنے آپ کو بہت ہشاش بشاش محسوس کررہا تھا ۔۔۔۔فراز نے اٹھنا چاہا تو رومانہ نے بڑے پیار سے اسے روک دیا اور خود سہارا دے کر اسے اٹھانےلگی ۔۔۔۔فراز پہلا قدم فرش پر رکھتے ہوئے تھوڑا سا ڈگمگایا تو رومانہ نے فوراً اسے سنبھال لیا ۔۔۔۔واش روم میں جا کر رومانہ بڑی محبت سے فراز کو نہلانے لگی ۔۔۔اس نے فراز کے سر پر اچھی طرح سے ٹاول لپیٹ دیا تھا تاکہ سر کے زخم پر پانے نہ پڑے ۔۔۔۔فراز کو نہلانے کے بعد اس نے خود بھی شاور لیا اور دونوں ننگے ہی دوبارہ کمرے میں آگئے ۔۔۔رومانہ بڑی ادا سے چلتی ہوئی کچن کی طرف بڑھ گئی فراز اس کی نظریں اس کی بے انتہا سیکسی ہلتی ہوئی گانڈ پر گڑی ہوئی تھیں ۔۔۔فراز اٹھا اور کچن کی طرف چل پڑا ۔۔۔رومانہ ناشتہ تیار کررہی تھی ۔۔۔فراز نے پیچھے سے اسے اپنے بازؤں میں لے لیا ۔۔۔۔جیسے ہی اس کا ادھ کھڑا لن اس کے نرم چوتڑوں کو ٹچ ہوا رومانہ نے ایک شہوت بھری سسکاری بھری ۔۔۔۔رومانہ ناشتہ تیار کرنے میں مصروف تھی جبکہ فراز اس کی گردن پر ہونٹ رکھے اپنے اب پورے اکڑے ہوئے لن کو رومانہ کی نرم و ملائم گانڈ کی لکیر میں گھسائے ہوئے کھڑا تھا ۔۔۔۔۔دونوں کچن میں ہی ناشتہ کرنے لگے ۔۔۔ناشتے کے بعد رومانہ فراز کا ہاتھ پکڑے کمرے میں آگئی ۔۔۔۔باہر طوفان تھم چکا تھا لیکن رومانہ کی زندگی میں آنے والا یہ طوفان ابھی تھمنے کے موڈ میں بالکل نہیں تھا ۔۔۔۔فراز نے رومانہ کو بیڈ پر گرایا اور اس کی ٹانگیں کھول کر اس کی چوت کا نظارہ کرنے لگا ۔۔۔۔خوبصورت گلابی چوت ۔۔۔۔بالوں سے بالکل پاک ۔۔۔بالکل کھلے ہوئے گلاب کی مانند ۔۔۔۔اس کے ہونٹ بے اختیار رومانہ کی چوت کے لبوں میں داخل ہوگئے ۔۔۔۔مستی کی ایک تیز لہر نے رومانہ کو سر پٹخنے پر مجبور کردیا ۔۔۔۔۔فراز کی زبان اب رومانہ کی چوت میں داخل ہوچکی تھی ۔۔۔۔جیسے ہی فراز کی زبان کی نوک اس کی چوت کے دانے کو ٹچ ہوئی رومانہ کا جسم ایک بھرپور انگڑائی کے ساتھ لہرایا اور چوت اس شدت سے فارغ ہوئی کہ فراز کو اپنا پورا منہ اس کی چوت سے لگا کر اس کا سارا جوس اپنے حلق تک اتارنا پڑا ۔۔۔۔۔فراز نے لن اس کی چوت پر سیٹ کیا اور ایک ہی جھٹکے سے اسے جڑ تک رومانہ کی چوت میں اتار دیا ۔۔۔۔۔ایک بعد ایک تیز جھٹکا ۔۔۔۔۔رومانہ کی چوت ان طوفانی جھٹکوں کی تاب نہ لا سکی اور ایک بار پھر جھڑ گئی ۔۔۔فراز کا لن رومانہ کی چوت کی گہرائیوں میں اترا ہوا اس کی چدائی کر رہا تھا ۔۔۔۔رومانہ کی سسکاریاں اب مستی بھری چیخوں میں بدل رہی تھیں ۔۔۔۔۔محبت کے اس مزے کے لیے وہ کئی سال ترستی رہی تھی ۔۔۔۔اورآج ایک اجنبی سے اسے یہ محبت اور پیار مل رہا تھا ۔۔۔۔فراز کے جھٹکوں میں آتی تیزی اس بات کا صاف اشارہ تھا کہ اب رومانہ کی چوت پھر سے اس کی منی سے سیراب ہونے والی ہے ۔۔۔۔۔جیسے ہی اس نے فراز کے لن سے نکلنے والی منی کی پھوار محسوس کی اس نے اپنی چوت کو بھینچ لیا اور فراز کا لن چوت کی گہرائیوں میں اپنا رس گرا کر اسے سیراب کررہا تھا ۔۔۔۔۔فراز کے لبوں سے نکلنے والی سسکاریاں رومانہ کی سسکاریوں سے ملیں اور دونوں ایک بار پھر اس طوفان کے تھم جانے کے بعد ایک دوسرے کی بانہوں میں تھے ۔۔۔۔۔۔پورا دن اور رات دونوں ایک دوسرے میں سموئے رہے ۔۔۔۔بہت کم موقع ایسا آیا تھا جب فراز کا لن رومانہ کی چوت میں نہیں تھا ۔۔۔۔ اس طوفانی رات میں ہونے والا ملن ایک اٹوٹ رشتہ بن چکا تھا ۔۔۔۔۔رومانہ اب مسز فراز تھی ۔۔۔۔۔۔ان کی محبت وقت کے ساتھ ساتھ اور زیادہ گہری ہوتی جا رہی تھی ۔۔۔۔فراز نے رومانہ کو وہ پیار دیا جس نے اس کے سارے دکھ بھلا دئیے ۔۔۔۔۔فراز آج بھی رومانہ کو اپنا مسیحا کہہ کر چھیڑتا ہے اور رومانہ اپنے دل کو فراز پر نچھاور کر چکی ہے کیونکہ اس کا دل ہی تو تھا جس نے اس فراز کے خوبصورت دل کو پہچان لیا تھا ۔۔۔۔ (ختم شد )