Search the Community

Showing results for tags 'sex'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • ...::: U|Fun Announcements Club :::...
    • News & ­Announcements
    • Members Introduction
    • Complains & Suggestions
  • ...::: U|Fun Members Club :::...
    • Greetings Club
    • Designers Club
    • Tutorials & Features
  • ...::: U|Fun Competition Club :::...
    • Competitions / Polls Club
  • ...::: U|Fun Buy and Sale Club :::...
    • Buy & Sale Your Products
  • ...::: U|Fun General Knowledge Club :::...
    • General Knowledge
    • Cyber Shot (No Nude)
  • ...::: U|Fun Digital Library & Books Club :::...
    • Digital Library Books & Novels
    • Children Library Books & Novels
    • Own Writers Urdu Novels
    • Social New Writers Club
    • Urdu Poetry Ghazals Poems
  • ...::: U|Fun Adult Multimedia Club [Strictly For 18+] :::...
    • Users Chit Chat + (18)
    • Sex Advice with Doctors
    • Urdu Sexy Jokes Poetry
  • ...::: U|Fun Urdu Inpage & Pic Sex Stories Club Normal Standard :::...
    • Urdu Adult Inpage Stories
    • Roman Urdu / Hindi Sex Stories
    • Picture Stories (By UFC Writers)
    • Incomplete Stories (No Update)
  • ...::: U|Fun Premium Membership Subscribe Club :::...
    • Purchase VIP Membership
    • Premium VIP Sections Demo's
  • ...::: U|Fun Urdu Inpage & Pic Sex Stories Club High Standard  VIP ZONE  :::...
    • Special Edition Serial Novels
    • Urdu Inpage Standard Stories
    • Urdu Picture Standard Stories
  • ...::: U|Fun Special Zone for VIP Gold & Master Pro Club VIP ZONE :::...
    • Urdu Inpage Standard Stories
    • Urdu Picture Standard Stories
  • ...::: U|Fun Urdu Inpage & Pic Stories in PDF Club High Standard VIP ZONE :::...
    • Urdu Picture Stories in PDF
    • Urdu Inpage Stories in PDF
  • ...::: U|Fun OS Downloads Club :::...
    • Androids Mobiles Downloads
    • OS Premium Softwears
  • ...::: U|Fun Help Desk Club :::...
    • Recycle Bin
  • ...::: U|Fun Staff Team Club :::...
    • Board of Writers
    • Board of Moderators
    • Board of Administrators

Categories

  • Digital Library Books & Novels
  • Children Library Books & Novels
  • Urdu Pic Stories High Standard
  • Urdu Sex Stories High Standard
  • Miscellaneous Premium Softwears
  • Websites Premium Products

Categories

  • Articles

Categories

  • You Tube Videos
  • Premium Videos

Found 19 results

  1. * ایک نوجوان کی کہانی جوگاوں سے شہر پڑھنے آیا تھا *
  2. Version

    14 downloads

    غافل از ڈاکٹر فیصل خان کل صفحات 125 / مکمل ناول.

    $2.00

  3. بدلہ از سٹوری میکر اردو فن کلب کے رائیٹرز میں ایک نیا اضافہ ہائی کلاس کہانیوں کو پہلی بار نان پیڈ ممبرز کے لیے پوسٹ کیا جا رہا ہے۔ سٹوری میکر کی اصل کاوش جو دنیا کے کسی فورم کا حصہ نہیں۔ بہترین کہانی نان پیڈ ممبران کے لیے۔
  4. Major Saab

    Raat ky 10 baj rahy thy or Saba or uska shouhar Ashraf dono apny kaanoon pr haath rakh kr apny bedroom main bethy huy thy. kabhi Ashraf apny sir ko bed pr rakhy hoy sarhaany ky neechy ghusaa daita or kabhi bechain ho kr uth bethta or apny hathoon ki aik aik ungli apny kaanon main ghusaa laita yahi haal Saba ka bhi tha. lakin in sub koshishon ky bawjood un dono ko us cheez sy chutkara nahi mil paa rha tha jiski wajah sy undono ki yeh halat ho rahi thi. ghussy ky maary Ashraf ka bura haal ho rha tha lakin wo bari hi mushkil sy khud pr qaboo kr paa rha tha. Un dono noujwaan or newly wedded jory ki pareshaani ki wajah thi buhat hi ouunchi or bhadi si music ki awaaz jo ky aik puraani si tape pr chalti hoi casset sy aa rahi thi or yeh tape recorder unky bilkul saath waly flat main rahny waly retired major Johar ky haan chal rha tha. lakin Major sb apny hamsay ko pareshaani or apny ghar main chal rahy tape recorder dono sy hi laa ilam thy. or uski wajah yeh thi ky music or tv chalta hoa chor kr wo kub ky so chuky thy or unko ab koi ilam nahi tha ky unky irdgird kya ho rha hai. so gye huy thy ya shayad apni aadat ky mutabiq sharab peety hoy behosh ho gya tha. khuch pata nahi tha. or aisa yeh koi pahli baar nhi ho rha tha balky har hafty main do teen baar aisa zaroor ho jaata tha jiski wajah sy tamam hamsaay un sy tang aa chuky hoy thy. lakin major Johar ki ghuseeli tabiat or intehaai naa munasib behavior ki wajah sy koi bhi unky saamny aany ki jurat nhi krta tha. Jub Ashraf sy bardasht na ho paya to us ny apny sir ky ooper rakha hoa takya uthaaya or zoor sy usy door pary hoy sofy pr phainkty hoy utha or bola, is buddhy ganwaar janwar ko aaj khuch sikhaa kr hi aana pary ga. is kameeny ko to insaanoo ky beech main rahny ka koi saleeqa hi nahi hai. Jaisy hi Saba ny apny shouhar ko ghussy main dekha to jaldi sy uthi or usy rokty hoy boli, nahi nahi aap nahi jaao, aap ghussy main ho aap ruko main unko kah kr aati hoon. aisy aap ky jaany sy baat barh jaay gi. apni biwi ky baar baar kahny pr Ashraf ruk gya wahin bedroom main hi or phir saba ny bed pr para hoa gown apny night suit pr daala or uski doori baandhti hoi bedroom sy bahir nikal aai. apny flat ka main gate unlock kr ky wo bahir corridor main nikli to paanchwin manzil ka corridor bilkul khaali tha. Saba apny flat ky darwazy sy nikli or bilkul saath ky darwazy ki traf barhi. usky chehry pr bhi na chaahty hoy bhi ghussa or intehaai nafrat thi.ku ky wo bhi us buddhy retired major ki tabiat sy achi trah waqif thi. Saba ny Major Johar ky darwazy pr jaa kar apni naazuk naazuk goori goori or patli unglion ko morty hoy ahista ahista knock kya......aik baar....... doosri baar....... teesri baar..........lakin har bar ki dastak ka nateeja to aik hi nikal rha tha ky darwaza nhi khulna tha nahi khula. or khulta bhi tab na jub koi andar sun rha hota to.jaisy jaisy Saba knock kye jaa rahi thi waisy waisy hi uska ghussa bhi barhta jaa rha tha. Saba ko apni unglion main thora pain mahsoos hoa to us ny apna haath poora khola or is baar ghussy ky saath poory haath ki madaad sy lakri ky darwazy ko peetny lagi. itni zoor sy darwaza peetny ky baad Saba ny idhar udhar dekha ku ky usy yaqeen tha ky wo kameena major nikly ya na nikly lakin baqi ky 4 flats main sy koi na koi zaroor nikal aaye ga bahir. Lakin Khuda ka shukar tha ky abhi tak koi nahi nikla tha waisy koi nikal bhi aata to bhi usy koi parwah nhi thi. Jub buhat zoor zoor sy do teen baar darwaza peeta gya to andar sharab pee kar sooty huy Major sab ko shayad khuch khuch hosh aany laga us ny pahly apny kaan kholy or jub usy yaqeen ho gya ky koi bahir unka darwaaza torny ky darpy hai to bari hi mushkil sy ab unhon ny apni aankhon ko khola jo ky nashy ki wajah sy dobara sy band hoi hoi jaa rahi thin. apni aankhon ko jagaany ky baad ab baari thi sub sy mushkil kaam ki yaani apny soy hoy wajood ko jagaany ki taky wo apny darwaazy tak pohnch sakain. Kisi na kisi trah sy khud ko hosh main laa kar Major Johar apny darwaazy ki traf barha lakin is doraan bhi 3 baar darwaaza peet dya gya tha. Jaisy hi Major ny darwaza khola to apni aankhon ky saamny aapny hamsaay ki intehaai khoobsorat or jawan goori chitti biwi ko dekha kr thora nasha or hawa ho gya or aankhain poori trah sy khul gain. or woh sharab or neend ky asar sy surakh ho rahi apni aankhain khool kr apny saamny khari khoobsorat Saba ko dekh kr bola, haan kya baat hai? kyun mery ghar ka darwaza torny ko aai khari ho. Saba ky chehry pr usy intehaai nafrat or ghussa to saaf nazar aarha tha lakin wo bhala kisi ky ghussy ya nafrat ki parwah kyun krny laga. Saba: koi shouq nahi hai mujhy youn aadhi raat ko tumhary ghar ka darwaza peetny ka. yeh jo shour machaa rakah hai tum ny apny ghar main isy band kr ky maro jaa kar taky koi or bhi sukoon sy so saky yaha pr. Major: hahahahaahahah................ acha acha kr daita hon band isy bhi....... lagta hai is shor main tery us thooku ka khara nahi hota jo us ny tujha is waqt mery paas bheja hai isy band karwaany. Saba ka chehra yeh baat sun kar ghussy sy surakh ho gya or uski aankhon sy jaisy aag nikal rahi ho lakin wo sirf apny haathon ki muthyaan bheench kr rah gai. is khabees insaan sy aisi hi batoon ki umeed thi usy lakin wo koi tamasha khara nahi krna chahti thi. Saba: band kro apni bakwaas or is shor ko bhi. tum sy ziada ghatya insaan to main ny aaj tak nahi dekha jisy auron sy baat krny ki bhi tameez nahi hai. yeh kah kr Saba apny flat ki traf mur gai wo koi or baat na krna chahti thi or na sun na chahti thi. Major: hahahahahahaha............ or main ny bhi tumhary shouhar jaisy ghatya aadmi nahi dekha kabhi jo aadhi raat ko apni biwi ko doosry mard ky ghar bhejta hai............hahahahhahahha Is baat ny aik baar phir Saba ky tan badan main aag laga di thi us ny foran hi mur kr peechy dekha to Major ny hansty hoy usy aik aankh maari or zoor sy apna darwaaza band kr lya. Saba ki nazar apny flat ky saamny waly flat ki darwazy pr pari to dekha ky waha pr Mansoor sb khary hain. wo bhi buhat hi bechaargi wali nazroon sy uski traf dekh rahy thy. udhair umar ky Mansoor sb intehaai shareef aadmi thy or apni family ky saath bilkul saamny rahty thy or unky saath Ashraf or Saba ky achy marasm thy. Saba ny Mansoor sb ko dekha to sharminda ho kr apni nazrain jhukaa lin. Mansoor: baiti tum is gandy insaan ky monh na laga kro. kitni baar tum logo ko mana kya hai. Saba ny sharmindi sy sir jhuka lya or jaisy uski aankhon sy aanu nikalny ko hi thy lakin saath hi nafrat bhi andar hi andar or barah gai thi. lakin aik baat thi ky apny ghar ka darwaza band krny tak us bheyaanak music ki awaaz bhi band ho chuki thi. apny ghar ka darwaza andar sy lock kr ky Saba apny bedroom ki traf barhi yeh usy hi maloom tha ky is itny sy kaam ky lye wo kis qadar zaleel ho kar aai hai us besharm buddhy ky haathon. lakin usy pata tha ky usy yeh baat apny shouhar Ashraf ko nahi batani hai balky us sy chupaani hai..................jaisy wo ab tak chupaati aai hai............... apni tazleel or beizati ko ku ky woh nahi chahti thi ky uska shouhar us sy lar pary jaa kr or phir woh kameena shahks usky shouhar ko koi nuqsaan pohnchaay. islye Saba ny fridge sy thanda paani nikaal kr peeya or phir bedroom main jaa kr khamooshi sy bed pr apny shouhar ky saath lait gai. Ashraf: koi badtameezi to nahi kr rha tha wo kameena??? Saba: nahi mazrat kr rha tha ky aankh lag gai thi is lye aisa ho gya. Ashraf ny bhi ab karwat li or sony laga. Saba bhi karwat ly kar Ashraf ki peeth sy chipak kr lait gai or us kameeny insaan ki batoon ko apny dimaagh sy nikaalty hoy khud ko neend ki waadyoon main ly jaany ki koshish krny lagi.
  5. BV ko Boht Muddat k baad pta chla k uska Shohar Mrdana Kmzori ki Waja se Plastic ka'Lun' use krta hy, Bv: Ap ne aisa Q kia? Shohar: Jany do Bat barh jay gi. Bv: wo Kesy? Shohar: Ma ne Kabhi Tum se pocha k Pinki or Papu Plastic K Lun se kese Paida ho gaye? bivi: o g tussi ta gussa hi kr gaye . "''"
  6. Hi friends Main Baani Lincoln Main Pakistan se hun yah meri pehli kahani hai jo main likh raha hun or main koi writer nahin hun is liye agar koi ghalti ho jaaye toh pls maaf karna or main start karne se pehlay Story.Maker bro ko thanx kehna chaunga jin ki badolat main yeh story start kar raha hun toh chaliye chalte hain story ki tarf yah story thodi scahi or thoda sa mirch masala hai par main poori koshish karoonga k is real banana ki koshish karoon waise isi start se meri zindagi k naye dork a aghaaz howa that oh chahalie story ki tarf Story hai Meri Meri mom ki friends sab se pehlay intro Introduction:- Main: Baani-Lincoln Age: 22 Father: Ashraf Age: 51 Mother: Ayesha Age:39 Brother: Saad Age: 16 Story: Yah aaj se 4 saal pehlay ki baat hai tab main 18 saal ka tha sab kuch acha chal raha tha Main,Mera bhai or maa sab Gujrat main 1 gaon rehaty hain abu kaam ki wajha se Lahore rehtay thay wo 1 Govt Servant thay is liye main us waqat 10 k exams de raha tha kiun k shuru main abu ki postings ki wajha se meray 3 4 saal waste ho gaye or muje classes repeat karni padi jiski wajhase main class main sab se bada tha bachay mera mazaaq udatay thay par maine himat nahin haari or sisak sisak kar matric k exams diye main tab tak sex k baare main kaaafi kuch jan chukka tha k sex kaise hota hai par kabi kia nahin tha bas ladkon se sun rakha tha tab hum ne net b nahin lagwaya tha isi beech meray exams main abi 2 month thay k mera 1 dost mujhe bulanay aa gaya meray ghar main use apne kamre main le gaya usne meri maa k samnay kaha k group study k liye aaya hai kamre main aa kar usne mujhe 1 ghanda magazine apne bags nikal kar dikhya pehlay toh meray hosh ud gaye kiunki main wo pehli baar dekh raha tha us main bohat c aurton ki adnangi tasveerain theen main fat se uth kar kamre ka darwaza band kia or uske pass aa kar wo magazine dekhne lag pada dekhte dekhte mera trouser main akadan hone lagi or mera lun tan gaya rod ki tarha mera dost (Name:Majid) kapdon k upar se he apne lun ko aagay peechay karne lag pada toh maine kaha kia kar raha hai usne kaha muth maar raha hun maine muth k baare main toh suna tha par kabi maarne ki try nahin kit hi usko dekh main b lun par hath maar raha tha k thanda ho ja or wo page palat kar magazine dekhata raha maine us se poocha yah usne kahan se lia toh usne kaha k uske 1 dost ne laya hai us se udhar le kar aaya hai dekhat dekhtay Majid ka toh paani nikal gaya or uski shalwa geeli ho gayee maine use kaha abe yah toh gandy ho gaye toh usne kaha koi nahin maza b toh aaya hai phir wo thodi der beth kar baatain karta raha sex k baare main hamari teahers k boobs etc k baare main or phhir chala gaya uske jaate main fata fat washroom main gus gaya or kapde utar diye mera lun beth chukka tha maine us pet hook lagana shuru ki or usay haath main lekar agay peechay karte un pics k baare main sochne laga bada maza aa raha tha jo yahan bayan nahin ho sakta (Pehla Nasha, Pehli Muth or Pehli Chudai Waqai badi Mazaydar hoti hai).Lekin thokk se lubrication sahi nahin ho rahee thee toh maine saabun lekar lun par lagaya or pics ko yaad kar k lun agay peecha karta raha or 1 dum aisay laga jism se khoon ki phwar phoot padegi badi mushkil se khud ko roka warna awazain bahir jaa sakti theeen or maine zindagi ki pehli mth maari pooray jism main 1 ajeeb c lehar dodth gayee sakoon mil gaya badi mushkil se naha kar bahir nikla or kamre main jaa kar bistar par so gaya. Sham ko utha toh bukhar s mehsoos ho raha tha tea pi kar baahir khelne nikal gaya raste main majid mila main or wo 1 saath ground ki taraf chalay gaye jahan ladke cricket khel rahe thay aaj khelne k mann nahin than is liye usko kaha k aa side par beth kar baatain karte hain mosam baaarish ka lag raha tha 1 side par beth gaye hum dono (aap ko batata chalun k school main mera dost sirf majid e tha uski age 16 saal thi hum dono best friends ki tarha thay par sex ki batain b 1 hadh main rah kar karte thay abi hum itne pakke nahin tha in kaamon main) toh mainne us baat start ki or use bataya k aaj maine pehli baar muth maari hai toh wo mera mun herani se dekhte howe Majid:Kya tune aaj tak kabi muth nahin maari or has diya Me:main thoda sharminda howa par kuch kaha nahin bas kaha k aaaj e magazine dekh kar maari hai Toh usne kaha Majid: or kia tune kabi kisi larki ya orat ko b nanga nahin dekha kia Me: maine haan main sir hila dia toh wo kareeb aa gaya Majid:kisi ko kia b nahin hoga Kia toh maine b nahin par Me:1 dum chonk kar par kia Majid:karna chahata hun par dar lagta hai Me: mujhe b or phir hum dono saath hans diye Phir maajid batane laga k wo apne ghar ki chath se ssath waale ghar main jo rehta hain unki larki ko ghar k sehn main safai karte howe dekhta hai or uske mammon par muth marta hai phir hum isi tarha idhar udhar ki batain karte rahe or maghrib k waqt main ghar aane laga toh usne kaha Majid:Tu kal subha 8 bajay tak meray ghar aa jaayeen. (humain School se prepration k lie chutian ho gayee theen gaon main aise sab chalta tha) Me:theek hai or ghar aa gaya Aaj bohat thakawat mehsoos ho rahee thee jaise bohat kaam kia ho or badan dard se toot raha ho khana kha kar painkiller le kar so gaya Next day: Aglay din main tayar hokar 8 bajay Majid k ghar ponch gaya wo mujhe dekh kar fat se bhaagta hiwa aa gya muhse ziada toh wo excite ho raha tha pass aatay e Majid:acha kia jo time par aa gaya warna bohat bada chance miss kar deta Me:maine chonk kar us se poocha kya Majid:Bola are yaar uski maan idhar hamaray ghar aayee howee hai baap uska kheton main hoga Bhai bahir awaara gardi par ab chal meray peechay Me: main uske peechay uske ghar ki chath par aa gaya phir hum dono ne uske ghar ki deewaar phlang kar saath walay ghar ki char=th par aa gaye or usne mujhe neechay ho jaane ko kaha or phir hum dono chath k pass jo jangla sa bana tha deewar ka usmain design k liye sorrakh tha wahan se nechay dekhnay lage or phir tabhi wo aaye Majid:iska naam Humaria hai Me:main toh usko dekh kar dang rah gaya wo kaafi khoobsurat thee saaf rang bhara howa jism uske mammay or gaand bohat moti thi jab wo aye toh usne dupatta nahin liya howa tha bas jadu pakda howa tha main or maajid us e dekh rahe tha or wo jadu laga rahee tha kabhi kabhi uske aaday mammay dekhtay toh mera toh saaans ruk jaata maine or Maajid ne apne pane lun kapdon k upar se he haaton main lekar aagay peechay kar rahe thay k tabhi darwaza baja main or majid chonkse gaye Humaira Jadu chodh kar darwaza dekhne gayee meri or majid kin azar b darwazay par he thi par jab darwaza khula toh baahir chacha Bashira Khada tha use dekh kart oh hum dono 1 dosray ko dekhne lagay k yah yahan kia kar raha hai (Chacha Bashira umar 45 saal iske baaray main gaon main mashoor tha k randi baaz is liye koi is ziada milna pasand nahin karta tha ) Chacha Bashira:Tera Abba ghar pe hai Humaira:Nahin Chacha:Teri Maa ya bhai Humaira: nahin Chacha:1 glass paani la da Humaira: theek hai Chacha: uski Gaand ko ghoor kar dekh raha tha Majid or main b neechay ka saara manzar ghoor kar dekh rahe tha Humaira: paani laa kar chachay ko dia Humaira ne abi tak dupatta nahin lia tha Chacha paani peetay howay baar baar uske Mammay ghoor raha tha Glasswapis karte howe chacha ne uska haath pakad lia humaira b kuch na boli Chacha Bola: Ni Humairay teray haath toh bade naram ho gaye hain saare ghar ka kaam teri maa kia teray se leti hai Humaira: haan chacha bohat kaam karati hai khud toh kuch karti nahin Chacha: tu kahe toh teri maa se baat karo Humaira: Kis baare main Chacha: are yah e k tujhse itne kaam n alia kare kiun tu kia samjhi Humaira: kuch nahin Chacha: kuch toh tha Phir humairaa ne apna haath chuda lia or chachay ko dekhne lagi or Humaira: aisa kuch nahin ab aap jaayie koi aa jayega Chacha: kiun darti kiun ho Humaira: nahin or mud k jaane lagi Tabhi chachay ne darwaaza band kia or jat se Humaira ko peechay se pakad lia Humaira: 1 dum chonk gayee or chutne ki koshish karne lagi or boli chodiye mujhe koi aa jayega Chacha: aa jaaye jis ne aana hai main kisi se nahin darta or Humaira apne baazon ki ghrifat main kas k pakde rakha or jatke marta raha Upar main or Majid b sab dekh kar excite ho rahe tha k tabhi chacha uske mammay dabanay laga or Humaira uchalnay lagi or chacha mazay main kabi uske mammay or kabi uski chut ko masalta jaye or wo chutne ki koshish karne lagi or haar kar masti main siskian lenay lagi uski yah halat dekh kart oh hamari b siskian nikal jaati par aankhain paadhe hum unhain dekhte rahe Tabhi chache ne use chodh dia shahaid wo farigh ho gaya tha par humaira bohat garam ho gayee the or shahaid farigh b upar majid b apna paani nikal chukka tha par main abi b khada dekh raha tha Wo dono sehn k thaday par beth kar hanpne lage phir chache nu usay kaha k kal wo uske kheton main aa jaye Or phir wo nikal gaya or hmaira darwaza band kar k washroom main ghus gayeee or majid ne mujhe kaha ab chal or haum uske ghar aa gaye or uske kamre main toh wo mera khada lun dekh k bola Majid: abay tera abi tak khada kiun hai Me: are yaar abi tak mani nahin paani nikla Majid:kya Me: mujhekal wala magzin de Majid ne mujhe dia main use dekhne laga or lun ko agay peechay karne laga tab usne kaha nikal baar or jaldi se farigh kar ise Me: pehlay toh mujhe ajeeb laga par jab uski taraf dekha toh wo apne kaode nikal kar washroom ja raha tha or phir wapas aa kar nanga e kursi par beth gaya phir maine b trouser nikal kar lun par thook laga kar muth maarne laga or wo b sex ki baatain karne laga jab main farigh ho gaya toh hum beth kar baatain karne lagay humaira or chachay k baare main toh Majid na kaha Majid: kal tayar rehna meray pass 1 plan hai kal 8 bajay yahan aa jana Toh maine kaha theek hai or phir apne ghar aa gaya or study karne laga sham ko bahir ghoomne nikal gaya wapas aa kar khana khaya or raat ko sone se pehlay main washroom gaya or aaj ke waqae ko soch kar H.P karne laga or muth maar k aa k so gaya Next day: Subha uth kar nashta kar k main jaldi se Majid k pass aa gay wo mera intzar kar raha tha hum kheton ki taraf chal pade toh maine kaha Me: kia chal raha hai teray dimagh main Majid: yaar haath maar maar k meri bas ho gayee hai ab toh chut he marni hai Me: abe wo kaise marega Majid: Yaar 1 plan hai par tu us main mera saath dega Me: pehlay bata Plan kia hai Majid: yaar hum chal k chachay bashiray ko kehtay hain k hum ne kal us dekh lia tha or agar wo 1 baar humain b Humaira p haath saaf karne de nahin toh hum HUmaira ko bata daingay k humain pata hai wo chachay k saath b nahin karegi Me: yaar sochle chacha mana na karde Majid: are wo mana nahin karega use pata hai agar mana karega toh 1 chut haath se chut jayegi Me: par Majid: par war chodh humain 1 chut mil jayegi or maza b ayega Me: chal dekhtay hain Jab hum wahan ponchay toh chacha Bashira humain wahan dekh kar chonka phir apne hwas par kaboo pata huye muskura diya Or bol oh tum log idhar kahan rasta bhool gaye aaj toh majid bola Majid: bas chacha aaj bada mann tha tum se milne ka Chacha:kiun aaj kia khaas hai (Majid ne jo kaha wo maine b nahin socha tha jab maine chachay ko dekhta toh uska b munh ada khula reh gaya.) Majid: aaj Humaira jo aane waali hai (Maine socha nahin tha wo itni jalddi pint ki baat par aa jaye ga) Chacha: khud par kaabu paa kar kon Humaira Majid: wo he Babay Dinnay Ki beti Chacha: haan toh wo yahan kia lenay ayegi Majid: Dekh chacha ziada ban mat humain sab pata kal tune us ke saath kia kiya hai or ab wo idhar aa rahi ahi hai tu uske saath kia karne waala hai Chacha 1 dum bokhlaya howa lag raha tha phir bola Chacha: acha bol tu kia chahata hai Majid: chachay hum yahan tujhe mana karne nahin aye bas itna chahate hain k tu humain b Humaira par haath saaf karne de Chacha: dekh yaar main mana nahin karoonga par yah sab kaise hoga agar usne tum dono ko yahan dekh lia toh wo mujhe b kuch nahin karne de gi Majid: are chacha jab wo ayegi toh hum chup jaingay or tu apna kaam shuru kar dena phir hum tum dono ko range haath pakadne ki acting kariaingay phir tujhe bahir bulaingay or tu dobara under ja kar us se kehna k wo humain b karne de warna hum sab ko bata daingay Chacha: theek hai phir tum dono chup jao Main or Majid chachay ke deray par 1 kamray main chup kar saath walay kamre ka nazara dekhna k intizaar karne lage kuch dair baad bahir kisi ke aane ki aahat howee Majid nab hair dekha or phir mujhe bola k wo aa gayee hai Phir hum dono kamray ki deewar se banay sorakh main se under ka nazara dekhne lagay Chachay na darwaza band kar dia or usko kiss karne laga or phir jhat se uske kapde nikalne laga or apne b phir uske motay santray jaise mammay haaton main leaky daba raha tha aise kisi ladki ko pehli baar nagna dekh kar main toh pagal sa ho gaya Under chacha uske mammay daba daba kar kabi choos choos kar mazay le raha tha phir chachay ne apna 6 inch tana howa lun uski chut pa rakha toh wo siskian leny lagi or apna dair sara thook uski choot par phenk kar or apne lun par laga kar pehlay jatka mara or Humaira cheekh padi uski cheekh sun kar hum dono 1 dosray chehray dekhnay lagay or phir under Under chacha ab uske hont chuss raha tha or uske mammay kheench kheench kar uska dard kam kar raha tha or phir dosra jatka mara is baar chachay ne apna munh uske honton par he rakha or phir munh hata lia chachay ka poora lun humaira ki chut main tha or ab wo rote howe kah rahi thee nikaalo ise bahir main mar jaongi haye meri maa par chach kahan sune ne wala tha thodi dair baad chachayne apna lun uner bahir karna shuru kar diya or 10 min b nahin howe thay ko chacha us par karata howa gir pada tab he Majid ne mujhe kaha chal hum jab bhair aye toh wahan koi nahin thodi dair baad usne chachay or humair kki chudai walay kamrayy par zor zor se hath marna shuru kar dia chachay n jab darwaza khola toh Majid chachay ko daka de kar uner ko lapka or humaira nanga dekh kar muskrat kar chachay ko bahir le aya bahrir aa kar usne chachay se kaha Majid: dekh chacha tune toh mazay kar lie ab jaa kar usay bol hamaray baaray main Or chacha kamray ki taraf mudd gaya thodi dair baad aa kar Majid ko bola k wo roye ja rahee hai Toh majid ghusay se chachay ko bola k tu yaheen ruk or mujhe lekar under aa gaya Huamira ne kapde pehn liye the Tab Majid bola Majid: ae Humaira meri baat kaam khol k sun le agar tu yah baat na maani toh terat baap or hai ko yah saari baaat bata dounga or pooray gaon main tab teri kia izat rah jayegi Humaira: main dobara nahin karoonga mauje jane do Majid yah sun kar tap gaya or bola Majid: main yah baat dobara nahin kahoonga kal sabha kuch b kar k 10 ya 11 bajay tak yahan aa jana Or mujhe lekar bahir aa gaya Jab hum wapis ja rahe the toh usne kaha kal yah jab aayegi toh hum iski jam kar chudai karaingay Phir wo apne ghar chala gaya or main apne ghar aa kar main fat sa washroom main ja kar Humaira ki chdai ka soch ka muth marne laga Aaj ka din kal jo karna usko sochte guzar gaya Next day: Main subha nashta kar Majid k pass aa gaya or hum Kheton ki taraf chal diye Wahan ponch kar humain chacha b mil gaya or humse baatain karne laga or bola k aaj mujhe b apne saath shaamil kar lo na toh majid bola Majid: Dekha chacha kal tune kia hum beech main aaye aaj tu b hamaray beech na ayeen or kissi ko aane b mat dayeen yahan par ruk kar pehra dayeen Theek 10 : 15 par wo aa gayee Wo bohat dukhi lag rahee thee Usko dukhi dekh kar mujhe waqaei bohat bura laga par main khud b 1 chut haath se nahin jaane dena chahate tha is liye kuch nahin bola phir main or majid usko lekar usi kamray main aa gaye or majid ne wo deewar ka soraakh band kar diya or kundi laganay laga Or jab wapas aaya toh mujhe laga k Humaira ko raazi karna chayie warna mazaa nahin aayega or zabardasti main karna nhain chahata that oh Humaira k pass betha or use kaha k dekho zabardasti karne ka humain koi shoq nahin par hum mazay karna chahatay hain or tumhain is baat ki guarantee deta hun k yah baat abi bahir nahin ayegi Phir uska haath pakad kar zor se daba dia or Majid bola Majid:Shuru karain or usne apne kapde utarna shuru kiya Or maine par hum ab soch rahe tha k pehlay shuru kon kare phir hum ne socha chalo toss karte hain or main toss jeet gaya Majid side wali kursi par beth gaya or main Humaira k pass aa kar uske sir ko pakad kar uske hont kiss karne laga main who lums byan nahin kar sakta zindagi ka pehal kiss wo b lipp lock oh ho main uske honton k tezi se chuss raha tha neechay meraa lun ucchal raha tha kisiing karte howe kabi wo mera thook munh main leti or kabi lain uska or saath saath uske mammay zor se dabayi jaa raha or uski kamar par hath phernay laga jo sab maine suna or kal dekha tha bas usi ko appli kiye ja raha tha Phir maine uske charpayee pe leta diya or khud uske upar aa gaya wo farigh ho chuki thee or uski chut par chip chipat mehsoos ho rahyee thee toh main Majid ko 1 kapda lane ka liye kaha or uski chut ko saaf kia kal ki chudai k baavjood uski chut bohat tight lag rahi thee toh maine b chut par thook paine or lun ko thook se geela kar k uski chut main daalne wala tha k majid Bola Majid: ruk Me: kiun Majid apne kapdon ki jaib se tail ki bottle nikal kar pass aya or uski chutt par tail dala or mujhe bottle pakda kar bola lun par laga le or hans diya maine aise e kia or phir uske upar hokar lun chut par rakh kar ragardne kaga wo siskian le rahi thee sss hhhhhhhhhhhhssssssssssssss Haaaaaaaaaaaaaassssssssssssssssssssssss jaldi karo Or maine moqay ko ghaneemat jana or chachay ki tarha chut k sorakh par rakh kar 1 zordar jatka mara or tadapne lagi or cheeekhne k mujhe chodh do uski chut ka sorak bohat tight tha aisay lag raha tha jaise kisi sorakh main phass gaya hai or ab agay rasta nahin hai Main use kiss karne lgaor uske mammay dabaanay laga uske nipples bohat tight ho gaye shahaid jawani ka asr tha ya chudai ka Or jab laga k ab araam hai toh lun bahir nikal kar dosra jatka mara toh usne meri kaa=mar ko nochna shuru kar dia par us time mujhe kuch mehsoos nahin bas sex ka nashi Chadha howa tha or main uski chut main daal kar ruk gaya or kissing start rakhi phir thodi dair baad uski jab wo thodi deli padi toh uski chut main jatkay maarnay laga is beech wo 2 baar fraigh howee uske paani se lubrication main kaafi mazza aa raha tha shahaid chut tight thee is liye or takreeban 10 12 min main main farigh ho ho gaya uske saamne tikna bohat mushkil tha or main us par gir gaya or lambi lambi saansain lenay laga 2 3 min baad Majid bol Majid: ab uth ja yaheen sona hai kia mujhe b kuch karne de Or main uth kar kapde se lun saaf karke kapde pehn kar bahir nikalne laga tab wo kissing main masroof the Bahir aa kar main chachay k pass baith gaya chacha or main 1 dusray ko dekh kar hansne lage 20,25 min baad Majid b aa gaya wo ziada kush nahin tha par maine us se poocha nahin is ke baad main Humaira se kabi nahin mila us se karne ko dil nahin karta tha jo 1 saath itne mardon se karti ho. Is waqae k baad meri zindagi badal gayee or 1 naya dor shuru howa agar aap ko or b kuch janan hai toh apna feedback comments main dijye or main aap ko yaqeen dilate hun agar aap mujhe feedback daingay toh main 1 long incest b likhoonga or use har haal main poora karooonga and once again thanx to Story.Maker Bro Update 2: So friends itne susat feedback k baad 1 baar phir hazir hun new update k saath Humaira ki chudai k baad main apni studies main masroof ho gaya tha kiunk exams sir pet ha lekin main time nikal kar Majid se milne jata raha beech beech main wo thoda upset tha kuch din toh maine us se pooocha nahin par 1 din sham ko main uske pass betha tha toh maine us se pooch he lia Me: oh mejiday tujhe kia howa us Humairaa ki chudai k baad se tu aise chup kiun hai Majid: oh yaar kuch nahin Me: kuch toh hai sach sach bata kia baat hai Majid: thoda soch kar yaar us din uski chudai karte waqt main bohat jaldi farigh ho gaya tha or wo saali randi mujh pe hans rahi thii Me: toh yah baat hai Majid: haan yaar koi rasta bata Me: yaar tu ziada muth na mara kar yah sab usi ki wajhase ho raha hai Majid: haan yaar shahaid tu theek kah raha hai Me: muth k saath saath apni seht par b dihan de Majid: theek hai yaar main is aadat par qaabu paane ki koshish karoonga Me: chal sahi hai main chalta hun exams ki tayari b karni hai tu b kuch pardh le ja kar aba ji ne is baar kaha hai agar main exams pass kar gaya toh jo kahoonga lekar denge Majid: toh kya le ga exmas k baad Me: abi kuch socha nahin yaar Majid: yaar computer mang le Me: abe uska hum kia karainge Majid: are yaar tu toh bilkul anadi hai Me: ab kia hai jo mujhe nahin pata Majid: are yaar suna hai aaj kal blufilms bohat aa rahee hain samhaj raha hai na Me: kuch kuch Majid: bas tu computer e le tujhe bluefilms la kar dena meray zimay Me: chal sahi hai ab main chalta hun Ghar aa kar daily routine start kardi subha nashtay k baad study karta dophar main aram or sham ko phir study karta Isi beech exams sir par aa gaye Exams ki tension main sex or muth ka soch nahin saka Exams k end k baad main Majid k pas gaya to usne kaha k wo apni Mausi/Maasi k ghar ja raha hai Yah sun kar mera mood off ho gaya Or main ghar aa gaya ghar aya toh Maa: are beta Baani tu aa gaya acha kal subha teray abba aa rahe hain hain unke subha ja kar le aana Pehlay b mood ioff the ab or ho gaya Abu k ghar hotay howe main bhair awara gardi nahin kar sakta tha darr lagta hai Main jakar kamre main late kar guzray howe din soch kar excite hota raha or lund ko masalta raha Raat khane k baad sone se washroom main chala gaya or Humaira ki chudai ko 1 baar phir soch kar itne dinon ki gharmi nikali par aaj pata nahin itne dinon baad paani ki miqdaar ziada hi or main thak kar zameen par beth kar saans lenay laga poora wajood halka halka lagne laga jaise bohat bada bohj utar gaya ho or phir naha kar kamre aate he so gaya pata he nahin chala subha bhai ne uthaya Saad: Bhai utho late ho jayo ge abu ko kar le aao Me: mera uthne ka dil nahin tha par abu ka naam sunte fat se uth kar haath munh dohaya or chacha k ghar chala gaya Meray chacha b isi gaon main rehtay hain wo kheti bari karte hain ziada pardhe likhe nahin hai hamari zameen b wo kaasht karte hain mujhe unse bike leni thee kiun k hamaray pass bike nahin thi kiun k abu ne mana kar dia tha lenay k liye k wo ghaaar par nahin hote is liye chacha se he zaroorat padhen par maang lia karoon Main chacha k ghar gia toh Chacha family: Chacha: Age 45 Chachi: Age toh pata nahin par chudakd lagti hai sahi baarhde barhde chutadh or tarbooz jaise mammay 2 betiyan 1st Beti: Rabia thodi sanwli bar attractive hai wo is waqt 17 ki thi Par 20 ki lagti thee 2nd Beti: Marium age 15 kad 5 feet par khoobsurat hai Chacha ka koi beta nahin tha in dono k hone k baad chacha ka 1 accident howa tha uske baad se chacha ki koi aulad nahin howee Main gaya toh chacha chichi bohat kush howe maine unhai salam kia or abu k aane ka bataya or bike maangi tab tak Rabia or MArium b aa gayeen or salam kia Main nikalne laga toh chichi ne kaha k aaj sham ka khana hamara un ki taraf hai Abu jab b aate the toh chacha hamara khana/dawat karte the (is dawat ka b 1 maqsad hota tha jo aage chal kar aap ko bataonga) Main bike lekar nikal gaya or gujraat shehr aa kar shaheen chowk par bas ka wait karne laga 30 min baad bus aa gayee or abu utray toh rasmi salam dua k baad hum chalne lage toh abu ne kaha bike wo chalaian ga unhain meri driving pasand nahin the 30 40 min baad hum ghar ponche toh saad bohat kush tha uske exams ho chuke the or usne abu se apne liye poetry books mangwayee theeen use poetry ka bohat showq hai Salam dua k baad hum sab ne subha k nashta kia toh hum sehn main bethay the jab aba ji ne guftagu main meri study ka poochna shuru kar dia Abu: haan barkhudar tumharay exmas kaise howe acha result ana chahaiye Me: g umeed toh hai 1st div main pass ho jaonga Abu: good agar 1st div main pass howe toh jo mango ga milega Me: mujhe computer chahaiye Abu: sirf 1st div ki urat main Me: ok Or main apne kamre main aa kar araam karne laga or sochne laga k jab computer aa jayega toh bluefilms dekhunga kabi dekhi jo nahin theeee (Abu k ghar rehtaymain bhair nahin jaata tha koi kaam na keh dain or main ghar pen a howa tph bohat dant padegi mujhe abu kid ant se bohat dar lagta hai bade sakht mazbhi kisam k aadmi 5 waqt k namaazi unke ghar pe hote mujhe b 5 waqt k pabadni karni padhti) Or sham ko hum sab chacha k ghar khaane pe chalne k liye tyar hone lage sab ko pata tha aaj ki dawat ka. Update No 3: Hum sab log tyar ho kar chacha g k ghar chal pade aage abu or ami or peechay main or mera bhai unko follow karte howe bhai mujhe apni books k baare main batata raha or main 1 kaan se suntan 2sre se bahir nikaal deta Chacha g k ghar par chach g ki family ne hamara welcome kia or ham unke sehn main beth gaye Chichi ne specially aaj mujhe gale b lagay kuch samhaj nahin aa rahi thee kia chal raha hai or Rabia b nazar nahin aayeee or upar se itni ao baght kuch khatka toh howa par zehn nahin maana Aaj khana b kuch special he lag raaha tha khanay par chacha ne mujhe aone pass bitha lia or stody ka poochne lage or ab aage kia karna hai etc…………………. Jab hum nikle toh chichi chichi bohat pur umeed nazron ko mujhe dekh rahe the Ghar aa kar hum sehn main beth gaye or thodi dair baad jab ami or bhai chala gaya toh main b uth kar Janay laga toh abu ne rok liya Abu: Baani ruko mujhe tumse zaroori baat karni hai Me: thoda pareshaan ho gaya pata nahin ab kia ghalti kardi maine jo inki daant sunni padegi Abu: Maine,tumhari Maa ne or chacha,chache ne tumhara rishta Rabia k saath paka kar dia hai Me: abba rock beta shocked Abu: 1 baaat kaan khol k sun lo aga is rishtay se inkar kia toh main tumhain jaidad se aaq kar doonga Me: par par…………. Abu: koi par war nahin yah akhri faisla hai Kuch dair khamoshi k baad Abu: dekho yah faisla ghaatay ka sodha nahin hai Me: ankhain phaad kar abu ko dekhne laga Abu: dekho tumhare chacha ki koi aulaad nahin hai or Rabia ki tumse shaadi k baad wo tumhain aadi jaidad daingae Rabia k hisay ki is tarha jaidad b ghar main he rah jayegi ME: chup chaap betha in sochon main k maine toh kabi use(RAbia) ko aisi nazar se nahin dekha Abu: dekhi mana k wo thodi sanwali hai par tum jaante dolat hone se jo marzi kar sakte ho Mujhe is se koi farq nahin parhdta k tum ghar se bahir kia karo par is ghar main sirf Rabia ayegi Or wo uth kar chae gaye or main abi tak sochon main ghum tha k tabhi kisi ne mujhe kandhe se hilaya Dekha toh ami khadi theen Ami: dekh beta mujhe pata hai teray aba ne tujhse jo baat ki hai dil toh mera b nahin hai par itni jaidad hum ghar se bahir nahin jane de sakte Abu ki baatain sunkar toh ehlay he shocked tha ab ami b uff maine apna sir pakad lia Ami: kisi ladki wadki ka toh chakar nahin hai Me: nahin Ami: Phir tu aise mat soch bas acha soch or ja kar araam kar kal teri phupo b aa rahe hain teri mangni jo karni hai. Or ami chali gayeen Main sochte sochte uth betha or kamre main aa gaya mujhe khud par abu ami par bohat ghusa tha k main is faislay k khilaaf kuch kar nahin sakta tha phir maine b soch lia agar yah aisa kar rahe hain toh main b ab inki nahin suno ga (Matlab bhair randi baazi karoonga faisla toh manana he padega warna aba ghar se nikal deta or iski b 1 wajha hai kiunke meri dono phupon ko abu or chachu ne bohat mehnat se cith stufy k liye bheja tha par unhon ne wahan ameer ladke phansa kar apni man maani kar k shaadi kar li unke is faislay ki wajha se chacha toh unse baat kar letay the par abu ne unke taraaf jaana band kar dia tha or agar kabi wo aati toh chaca k ghar rehti abu unse baat karna b pasand nahin karte theis liye main koi risk nahin lena chahata tha) Suha bhai ne mujhe uthaya wo hans raha tha uski hansi dekhte mera ghsua phir se jag utha or maine use bhaga diya Fresh hokar Nashta kia toh aba ji kadak awaz main poocha Abu: Haan barkhodaar kia faisla kia hai Me: kadwa paani k ghunt bharta huwa jaisa aap ko theek lage thodi der mujhe dekhte rahe phir nashta karne lage Uske baad abu jaate howe mujhe kuch kehne lage Abu: kal hum ne tumhari manni rakhi haisirf kuch khaas logon ko he bulaya or Ami ko ishara kia or chale gaye main khana khane laga toh ami boli Ami: aaj tumhari phupho dopehr main aa rhaee hain unko jaa kar le aana aaj ka din wo idhar he guzaar rain gi or raat chacha ki taraf oor sham tak tumhari khala b aa jayaingi apne bachon k saath Or main bahir nikal gaya awara gardi karta or yah sab sochte jo 1 dum se ho raha tha Phir ghar aya toh aba g ne carry dabba mangwa lia tha or mujhe kaha iske saath jaao or ghar ka saamaan le ao or phupo logon ko b (or munh ghuma kar chale gaye) Main van k driver k saath city aya zaruuri saaman shop se liya or busstand par aa kar phupo logon k aane ka wait karne laga 1 hour k baad unki bus aa gaye or wo sub utray unke saath unke husbands nahin aaye tha wo bussy rehtay thay corporate lawer thay Phupho Family: 1st phupho: Rubina: age 40 k kareeb mid fatty like chubbies 2 bachay par chotay hain Husband: Criminal Lawyer 2nd Phupho: Qudsia 37 saal body like porn star Margo Sullivan 1 beti abi 9 saal ki hai Husband: Corporate Lawer (Yah dono 1 he college main inter kar rahee theen jahan inhon ne law college k 2 friends ko pata liya or Abu or Chacha k khiaal ja kar unse shaadi ki) Dono baari baari gale mileen or tabeeyat etc poocha phir hum van main beth kar ghar ki taraf chal pade Vand Discussion: Rubina: are Baani kia zaroorat the uski kaali(Rabia) se shaadi ki Me: unka yah kehna mujhe acha nahin laga kiun k Rabia se mujhe koi problem nahin thee wo 1 achi arki thee par maine sirf itna kaha jaisa abu kahenagay waisa he hoga Qudsia: Are baani tu 1 baar mana karde baaqi hum sambhal lenghi Me; (Haan jaise apni baar kia tha) nahin phupho iski zaroorat nahin Or isi tarha ida=har udhar ki batain karte ghar ponch gaye aba g toh dikhe nahin par thodi der baad ami g nahin order kar dia ja kar bazar se shalwar qameez le aon raat k function klie Sham ko ham sab tyar hokar chacha k ghar ponche toh wahan sab bohat kush the specially chachi g Sab bohat kush khas kar abba g 8 bajay mangni ki rasam howee aaj Rabia waqi achi lag rahee the usko dekh kar main sara ghussa bhool gaya tha par maine socha liya tha aba g baat karoonga k main shaadi Gradution complete kar k he karoonga 12 bajay hum unke ghar se wapas aa gaye jab ghar ponche toh ami ne mujhe kaha k Phophu Rubin aka bag idhar rah gaya hai ja kar waapis kar aa toh main wo lekar denay chala gaya Jab main chacha k ghar gaya toh wo sone ki tayarian kar rahe the maine phophu ka poocha toh uno ne kamre k bataya main kamre ki taraf chala gay raste main mujhe Rabia kitchen main shahid chai bana rahi thee main waheen par ruka phir awaz sun kar agay chala gaya under kamre main phophu nahin shahid kamre se attach bathroom main theem main unka bag rakh k mudne laga tha k mujhe bed par unke aaj ke pehnay kapde dikhay jin main mujhe unka bra upar pada dika toh maine 1 baar bahir dekha or 1 baaar dobaara us bra ko or bina kuch sochay samhajy us brak utha kar jaib main daal lia or bag rakh kar nikalne waali ki wahan unki panty b dekhi jis ko haath lagne se he jism main karan dodhne laga Main b jald c bhaagta ghar aaa gaya or sone chala gaya kamre main aate he maine wo bra nikaala or saare kapde b utaar diya bra ko sungna shuru kardia mujhe us main ajeeb sa nashi mil raha tha or lun khada ho raha tha phir kya foran se thook laga kar bra ko songhte soonghte muth maarta raha or un k mammon k khayal karta raha (Bra abi nahin thee us par 42 ka no tha) 20 min tak main yah he karta raha or 1 lawa phut pada Phir lun ko kapde se saaf kiya or trouser pehn kar son gaya.
  7. تلخ حقیقت مگر سچ ہے یہ کہانی آک عورت کی بیا ن کردہ ہے جو جیل میں تھی انھیں وہاں وہ ملی اور سارا قصہ بیان کیا یہ آپ بیتی میں نہ لکھتا مگر اپنے پاکستانی سوشل میڈیا پہ کچھ ایسے معاملات نظر آئے جس کی وجہ سے میں نے اس “آنٹی ” کی زندگی کی سب سے تلخ حقیقت آپ لوگوں کے سامنے اُن کی اجازت سے لکھی ہے مگر نام اور جگہ اُن کی عزت کی خاطر تبدیل کئے ہیں. لیجئے ، تمام حالات و واقعات اُنہی کی زبانی سنئے. میں نے اپنے اُس جر م کی سزا پائی جس کی شروعات میرے بھائی نے کی اور ایک طویل عرصہ میں اس جرم کی مجرم رہی اور پھر جب میری برداشت یا قوت ِ برداشت ختم ہو گئی تو میں نے اپنے ہی سگے بھائی کواُس کے بڑھاپے میں قتل کر ڈالا اور اب میں خود بھی بڑھاپے کی منزل کی طرف رواں دواں ہوں. دنیا کے قانون میں تو مَیں نے سزا پا لی ، مگر آخرت کے قانون میں میرے ساتھ کیا سلوک ہوگا، یہ میں نہیں جانتی. ہاں یہ حقیقت ہے کہ میں نے اپنے ہی سگے بھائی کو قتل کر ڈالا، کیونکہ اِس جرم کی پہلی سیڑھی وہ میرا بھائی ہی تھا، جس نے وہ جرم نہ کیا ہوتا جسکی میں بھی مجرم بنی تو آج میں صاف ستھری زندگی گزار کے بڑھاپے کی حدود میں داخل ہوتی.یہ جرم تب شروع ہوا ، جب میں ایک معصوم نازک ،شرم و حیاء سے گندھی ہوئی لڑکی تھی. میرے والدین بہت سی محبتوں سےپروان چڑھا رہے تھے، کہ گاؤں سے اچانک میرے چچا کی وفات کی اطلاع آ گئی. ہم چار بہن بھائی تھے، میرا بڑا بھائی ، اُس کے بعد میں، پھر ایک اور چھوٹی بہن اور ایک بھائی تھا. اماں ابا نے فیصلہ کیا کہ بڑے دونوں بہن بھائیوں کو گھر چھوڑ جاتے ہیں اور چھوٹے دونوں کو ساتھ لے جاتے ہیں تاکہ گھر اکیلا نہ رہے.- میں نے ماں سے تھوڑی ضد کی کہ بڑے بھائی کو ہی گھر پہ رہنے دو اور مجھے بھی ساتھ لے چلو، مگراماں نے یہ کہہ کر مجھے لے جانے سے انکار کر دیا کہ بیٹی تیرے امتحانات ہونے والے ہیں اور بڑے بھائی کے بھی. تم دونوں بہن بھائی گھر پہ رہو اور اپنے امتحانات کی تیاری کرو. ہمیں تو وہاں زیادہ دن لگ جائیں گے، کیونکہ ساری برادری آئی ہوئی ہوگی.” کاش اُس دن میرے اماں ابا مجھے بھی اپنے ساتھ لے گئے ہوتے تو میں اتنی بربادی کی زندگی نہ گزارتی. ” میرے فسٹ ائیر کے پیپر ز سر پہ تھے اور بھائی ایم-اے انگلش کی تیاری میں لگا ہوا تھا. والدین نے کچھ نصیحتیں وغیرہ کر کے ہم دونوں بہن بھائیوں کو گھر چھوڑا اور خود گاؤں روانہ ہو گئے. میں اپنے امتحان کی تیاریوں میں پھر سے مصروف ہو گئی اور بڑا بھائی تو پہلے ہی کمرے میں گھنٹوں اپنی کتابوں میں سرکھپائی کرتا رہتا تھا. ہاں اب اماں کی جگہ میری یہ ڈیوٹی ہو گئی تھی کہ میں بھائی کیلئے کھانا تیار کروں، پہلے اماں خود ہی سب کچھ کرتی تھی.میں زیادہ پڑھاکو نہیں تھی، مگر سالانہ امتحانات کے نزدیک پڑھائی تو کرنا تھی، فیل ہونے کی مجھ میں ہمت نہیں تھی، کچھ ویسے بھی میری فطرت شروع سے ایسی تھی کہ کوئی مجھ پر یا میرے کام پر اعتراض نہ کرے.ابھی اماں ابا کو گھر سے گئے کوئی چار دن ہی ہوئے تھے کہ ایک دن دوپہر کے وقت بھائی گھر آیا اور ڈرائنگ روم کا دروازہ کھولا اور کسی کو اندر بٹھا کے سیدھا کچن میں آیا اور ایک لفافہ کھانے کا ہاتھ میں لئے پلیٹیں نکالنے لگا. میں بھی برتنوں کی آواز سنکے کچن میں آ گئی تو بھائی کو دیکھا کہ وہ کھانے کی چیزیں ڈش میں لگا رہا ہے. میں نے کہا کہ بھائی ! لاؤ میں لگاتی ہوں، کیا دوست ساتھ میں ہے؟”- بھائی نے مختصر سا جواب دیا، “ہاں.” اور اتنا کہہ کر پھر ڈرائنگ روم کی طرف چلا گیا.میں نے کھانا لگا کے ٹرالی تیار کر دی اور پھر جا کے ڈرائنگ روم کا دروازہ ہولے سے کھٹکھٹا دیا تاکہ بھائی کو اطلاع ہو جائے کہ میں نے کھانے کے لوازمات لگا دیئے ہیں اور ٹرالی بھائی لے جائے. بھائی نے ڈرائنگ روم کا اندر کا دروازہ کھولا تو میں مڑنے والی تھی اور مڑتے مڑتے میری نظر اندر ڈرائنگ روم میں پڑی ، اور ایسا محسوس ہوا کہ جیسے کوئی لڑکی اندر ہے، میں چونکی ضرور ، مگر بھائی کو محسوس نہ ہونے دیا. بھائی کا ویسے بھی دھیان ٹرالی کی طرف تھا، میں چونکہ مڑ چکی تھی اسلئے اب رک نہیں سکتی تھی. بھائی نے نظر اٹھائی اور شاید میرے دور جانے کا انتظار کرنے لگا تاکہ وہ مزید دروازہ کھول کر کھانے کی ٹرالی اندر لے جائے.اور میں درزیدہ نگاہوں سے دیکھتی ہوئی کچن میں چلی آئی. اوردل جو زور زور سے دھڑک رہا تھا کہ “ڈرائنگ روم میں بھائی کے ساتھ لڑکی.” ہمارا کچن ڈرائنگ روم کے بلکل سامنے تھا. خیرتھوڑی دیر میں اپنے اعصاب پہ قابو پاتے ہوئے اپنے آپ کو باور کرانے لگی کہ شاید میری نظر کا وہمہ ہے اور مجھے دھوکا ہوا ہے، ایسا کیسے ہو سکتا ہے کہ بھائی کے ساتھ ڈرائنگ روم میں کوئی لڑکی ہو.مگر تجسس تھاکہ کسی طرح ختم ہی نہیں ہو رہا تھا.میں نے سوچنا شروع کیا کہ دیکھوں تو سہی کہ کیا معاملہ ہے؟ کہ اتنے میں بھائی پھر کچن کی طرف آتا نظر آیا تو میں یونہی برتن دھونے میں مصروف ہو گئی اور آٹا گوندھنے کی پرات کو ایسے رگڑ کے دھونے لگی کہ اب میں آٹا گوندھنے لگی ہوں.بھائی کچن میں آیا اور بولا،” سعدیہ! دو کپ چائے بنا دوگی، میں اور میرا ایک دوست سٹڈی کر رہے ہیں، میں مارکیٹ سے آتے ہوئے کچن کا سامان لے آیا تھا، وہ بھی ابھی دیکھ کر بتا دو کہ مزید تو کچھ نہیں لانا کھانا پکانے کیلئے.بعد میں ہمیں ڈسٹرب مت کرنا.”- میں اچھا بھائی کہتی ہوئی چیزیں دیکھنے لگی جو بھائی لایا تھا مگر میرے دل ودماغ تجسس سے بے حال ہو رہے تھے. میں نے چیزیں دیکھ کے بھائی کو” سب ٹھیک ہے ” بولا اور پانچ منٹ میں چائے کی تیاری کا کہہ کے ساتھ ہی چائے بنانے لگی اور ساتھ ہی میں نے آٹا ڈالتے ہوئے دیکھا کہ بھائی میری مصروفیت کو کنکھیوں سے دیکھ رہا ہے اور بے مقصد ہی کچن میں کھڑا ہے، میں اچانک بول پڑی، “بھائی کچھ اور چاہیے تو بتا دو، میں آٹا گوندھ کے سونے جا رہی ہوں ، سبزی اب شام میں بناؤنگی.” تو بھائی بولا، “تم نےکھانا نہیں کھانا.” میں بولی،” نہیں بھائی، میں نے کالج میں سہیلیوں کے ساتھ کھایا تھا، اب بھوک نہیں ہے.” اتنے میں چائے تیار ہو گئی اور بھائی چائے لے کے چلا گیا.میرے دماغ میں وہ لڑکی اٹک سی گئی، نکلی تو وہ پہلے بھی نہیں تھی، اور ویسے بھی عورت کی یہ فطرت ہے کہ اُسے کسی بات کی لگن لگ جائے یا تجسس ہو جائے تو وہ پھر کسی بھی صورت پیچھے نہیں ہٹتی. میں نے آٹا گوندھا. باہر گیٹ کی طرف گئی، سُن گُن لی کہ شاید ڈرائنگ روم کے سامنے سے گزرتے ہوئے کوئی آواز آ جائے، مگر خاموشی تھی. میں اوپر کی منزل پہ جانے لگی تو اچانک میری نظر بالکنی پہ پڑی جس کے سامنے رخ پہ ڈرائنگ روم کا اکلوتا اگزاسٹ فین لگا ہوا تھا اور میری پُر تجسس طبیعت نے فوراََ اس اگزاسٹ فین کے سوراخ سے جھانکنے کا فیصلہ کر لیا، یہ محض ایک تجسس تھا، کوئی اچھی یا بری سوچ دل و دماغ میں نہیں تھی. بس میں یہ دیکھنا چاہ رہی تھی کہ آیا وہ لڑکی ہی میرے بھائی کے ساتھ ہے یا میرا وہمہ ہے. صحن پار کرکے میں بالکنی میں جا چڑھی اور اگزاسٹ فین کے سوراخ سے جونہی میں نے اندر جھانکا ، میرا دل و دماغ بھک سے اُڑ گیا. اندر میرا بھائی اور وہ لڑکی ایسی حالت میں تھے،کہ میں سُن ہو کر وہیں جام ہو گئی اور میرا دل یوں محسوس ہو رہا تھا کہ جیسے میری کھوپڑی میں بج رہا ہے. میں نے عورت اور مرد کا وہ پہلا تعلق اپنی جاگتی آنکھوں اور سُن دماغ کے ساتھ دیکھا.میرے تصور میں بھی نہیں تھا اور دل کے کہیں کسی کونے کُھدرے میں بھی ایسی ویسی کوئی بات نہیں تھی.جو کچھ میں دیکھ چکی تھی. آخر میں نے گھومتے سر کے ساتھ جتنی دیر سُن رہی دیکھتی رہی اور بالکونی سے واپس پسینے میں شرابور اور خوف سے ڈری ڈری میں اپنے کمرےمیں واپس چلی آئی اور بستر میں گر پڑی.پھر مجھے کچھ ہوش نہ رہا کہ میں کب عالم مدہوشی میں نیند میں چلی گئی.- اچانک شور سے میری آنکھ کھلی، کچھ دیر تو سمجھ نہیں آئی اور پھر نیند سے بیداری پہ پتہ چلا کہ وہ ٹیلی فون کی گھنٹی تھی ، جس کے شور کیوجہ سے میں جاگی تھی.میں نے ادھر اُدھر دیکھا، میں کمرےمیں اکیلی ہی تھی، نیند میں ہی میں نے ریسیور اٹھا لیا، اُس زمانے میں ابھی لائن فون ہی ہوتے تھے. موبائل کا زمانہ تو بہت بعد کی بات ہے. میں نے ریسیور اٹھایا تو ابھی کچھ بول بھی نہیں پائی تو مجھے لڑکی کی آواز سنائی دی اور ساتھ ہی میرے بھائی کا ہلکا سا قہقہہ بھی . میں اک دم الرٹ ہو گئی. سر تو درد سے پہلے ہی پھٹ رہا تھا. دیکھا کمرے میں اندھیرا تھا. اور فون پہ اب یہ نیا ماجرا میرا منتظر تھا.میں سب کچھ بھول بھال کے لڑکی اور بھائی کی باتیں سننے لگی اور جوں جوں میں سنتی جاتی، میرا دل دماغ دھڑکنے لگے، پسینے چھوٹ رہے تھے، جذبات کی کیفیات میں جس طرح میرا بھائی اور وہ لڑکی ایک دوسرے میں گم تھے، میں بھی اُن کے ساتھ ایک غائبانہ حصہ بن گئی. ماؤتھ پیس پہ میری ہتھیلی اس بری طرح جم گئی تھی کہ شاید ماؤتھ پیس میں سے ہواکا گزر بھی نہ ہو رہا ہوگا، میرا اُنکی باتیں سن سن کے برا حال اور جذبات کی یہ پہلی کیفیات نے مجھے اندر سے جھنجھوڑ ڈالا تھا. اوپر نیچے دن کے واقعے اور اس رات میں فون پہ ان دونوں کی مدہوش گفتگونے میرے اندر کی لڑکی کو عورت بنانا شروع کر دیا، میں اندر ہی اندر جذبات کی ہلچل جوکہ میرے لئے بلکل نئی اور نووارد تھی، مجھے اندر سے آگ بنا دیا. آگ کی چنگاریاں میرے وجود سے اور پسینے سے میں ایک بھیگی ہوئی تڑپتی مچھلی بن چکی تھی. مجھے یہ بھی پتہ نہ چلا کہ کب فون بند ہوا. مگر جب میرے دروازے پہ “ناکنگ” کی آواز آئی تو میں ہوش کی دنیا میں واپس آئی، جلدی سے بے آواز ریسیور رکھا، اور پھر سے ٹیڑھی میڑھی سوتی بن گئی. دو دفعہ کی مزید ناکنگ کے بعد مجھےدروازہ کھلنےاور بھائی کے قدموں کی چاپ اپنے کمرے میں سنائی دی، اور پھر چٹ کی آواز سے کمرے کی روشنی آن ہو گئی.سامنے آئینے میں مجھے بھائی دروازے کے درمیان کھڑا بڑبڑاتا نظر آیا، ” یہ تو ابھی تک سو رہی ہے، رات کا ایک بج گیا اور کھانے کو بھی کچھ نہیں پکایا.”- اور پھر بھائی نے ایک دم آواز دے ڈالی،” سعدیہ! کتنا سونا ہے، کیا آج سوتی ہی رہو گی؟” اور میں ہولے سے نیند کی ایکٹنگ کرتے ہوئے کروٹ لیکر اٹھ بیٹھی. “کیا وقت ہے بھائی؟” میں نے پوچھارات کا ایک بج رہا ہے، تم تو گھوڑے بیچ کے سوئی ہو، کھانے کا بھی کچھ نہیں کیا.” بھائی بولا”ہیں… رات کا ایک بج گیا… میں تو شاید دن میں سوئی تھی، آپ نے مجھے جگایا ہی نہیں.” میں حیرانی کی ایکٹنگ سے بولی”چلو…اب تم نے جو کرنا اور کھانا ہے ، وہ کر لو، میں تو ڈبل روٹی کھا کے لگا ہوں سونے…. صبح یونیورسٹی بھی جانا ہے.” اتنا کہہ کے بھائی چلتا بنا. اور میں پھر سے دن میں پیش آنے والے حادثے اور ابھی ابھی کے فون حادثے کے متعلق سوچ میں پڑ گئی.اتنے خوفناک حقائق دیکھنے اور سننے کے باوجود مجھے یقین نہیں آ رہا تھا ، حالانکہ میں نے سب کچھ خود اپنی آنکھوں سے دیکھا اور اپنے کانوں سے سنا تھا. مگر عمر بہت چھوٹی تھی اور میری تربیت میں سادگی تھی، مگر جذبات کے آگے کسی بھی انسان کا کوئی بس نہیں چلتا، چاہے وہ جتنا بھی مضبوط اعصاب کا مالک ہو. میرے بڑے بھائی کیساتھ بھی کچھ ایسا ہی ہواتھا، اور انجانے میں مَیں بھی جذبات کے دھارے میں بہنے لگی تھی، کیونکہ اب مجھے بھائی کی “ٹوہ” رہنے لگی تھی. یہ بات طے ہے کہ انسان اپنے جذبات کے آگے بے بس ہو جاتا ہے ، اور کم عمری میں تو یہ ایک ایسا زہرِ قاتل ہے کہ انسان کو اگر یہ لَت کم عمری میں لگ جائے تو وہ زندگی بھر کیلئے ایک ایسے گرداب میں پھنس جاتا ہے کہ موت کے وقت تک وہ اس گرداب سے نکل نہیں پاتا. میں نے اپنے بھائی کی ٹوہ میں وہ وہ کام کر ڈالے ، جن کے بارے میں ایک شریف ، معصوم اورکم عمر لڑکی سوچ بھی نہیں سکتی تھی. بھائی نے بھی گھر خالی دیکھ کے خوب فائدہ اُٹھایا اور وہ روز “اپنی سٹڈی کے بہانے” اُس لڑکی کو بلانے لگا اور میں بھی روز ہی بالکنی میں دھوپ کے ساتھ ساتھ اپنے اندر کے جوار بھاٹے کے ہاتھوں جلتی ہوئی اگزاسٹ فین کی جگہ سے ہوس اور تڑپ کا یہ کھیل دیکھتی رہی اور اپنے آپ سے بے خبر اپنے وجود کو آگ کی اُس لپیٹ میں لے آئی کہ جس سے میں نے دنیا جہان کے عذاب خریدے. یہ سلسلہ یونہی مزید چھ دن تک چلتا رہا. آخرکار یہ سلسلہ بند ہو گیا اور ابا جی اپنی ڈیوٹی کی وجہ سے واپس آ گئے. بھائی اپنی مصروفیت میں لگ گیا اور میں جو امتحانات کی تیاری میں تھی، مجھے ایک نئی آگ سے روشناس ہونے سے زندگی کسی اور طرف لے گئی. شیطانیت کس چیز کا نام ہوگا. ایسا کچھ نہیں ہے، انسان جو دیکھتا ہے وہ ہر حال میں حاصل کرنا چاہتا ہے. اسی طرح ایک کم عمر جب سیکس کی طرف اپنی عمر اور شادی کے بنا سب کچھ دیکھ لیتا یا لیتی ہے تو اُسکا اپنے آپکو کنٹرول کرنا مشکل بلکہ ناممکن سا ہو جاتا ہے. اماں واپس نہیں آئیں اور ابا اور بھائی صبح کے نکل جاتے اور شام میں واپس لوٹتے ، میں کالج سے امتحانات کیوجہ سے فری ہو چکی تھی. بھائی کی ٹوہ میں لگے لگے مجھے وی سی آر کی بلیو فلمز مل گئیں. اور مزید میری تباہی کا رستہ کھل گیا. مجھ پہ سیکس کے نئے ادراک ہوئے. میں اپنی عمر سے زیادہ صحتمند اور حسین بھی تھی، اٹھتی ہوئی جوانی اور ان سب باتوں نے مجھے مزید بھڑکا ڈالا. ان سب باتوں نے مجھے نئے سے نئے راستوں کی طرف راغب کرنے کی کوشش کی اور پھر مجھے گھر کی چھت سے ہی راستہ مل گیا . میں نے باہر بھی کئی ایک لڑکوں کو پھانسنے کی کوشش کی مگر گھر کی عزت کا ڈر اور شروعات کا نفسیاتی خوف آڑے آیا .- میں جلد سے جلد کچھ کر لینا چاہتی تھی کیونکہ اگر اماں آ جاتی تو وہ تو رات کے چوکیدار کی طرح تھیں جو بے وقت ہی اٹھ کے ہر بچے اور گھر کو چیک کرنا شروع کر دیتی تھی . میں نے کپڑے دھوئے اور چھت پہ لٹکاتے ہوئے مجھے اندھے پن میں دو گھر چھوڑ کے ایک کبوتر باز نظر آیا جو کہ پہلے تو بہت سے اشارے مجھے کر چکا تھا اور میرا جواب تھا نفرت … مگر آج میں اپنے اندھے پن سے اُ سکو اشارہ کر بیٹھی اور مَت جو ماری گئی تھی . اور وہ کچھ دیر تو ہونق بنا ہی مجھے گھورتا رہا جیسے اُسے یقین ہی نہ آ رہا ہو .وہ دن کے 24 میں سے 18 گھنٹے اپنے کبوتروں کے کُھڈے میں ہی گزارنے والا انسان تھا . آخر میں نے اُسے زور زور سے ہاتھ کے اشارے کر کرکے بڑی مشکل سے بلایا. تو وہ بندر کی طرح چھتیں پھلانگتا ہو ا مجھ تک بے ترتیب سانسوں سے پہنچ گیا .او ربولا کہ بی بی خیر اے، ساڈے نصیب کتھوں اج ہرے ہوگئے نیں …میں نے اُسے بازو سے پکڑا اور سیڑھیاں پھلانگتی ہوئی اُسے نیچے لے آئی اور اُس سے خود ہی جذبات کی رو میں لپٹ گئی ، اتنا کرنا تھاکہ کسی بھی بات کو موقعہ نہ ملا اور ہم جذبات کی تغیانی میں بہہ نکلے مگر اُس لڑکے نے میرے جذبات کو سمجھے بنا ہی مجھے ادھورا چھوڑ دیا میں جو جذبات کی اتنے دن کی روک سے اور شدت سے بھوکی بلی بنی ہوئی تھی ، اُسے نوچ کھسوٹ ڈالا اور دھکے مار مار کے اُسے بھگا دیا. اب میں نےانجانے میں مزید اپنے اندر آگ جلا لی . جذبات کی ان شدتوں کا تو کچھ پتہ ہی نہیں تھا مگر اُسکے ادھورا چھوڑنے سے میں زخمی ہو گئی . دل و دماغ ساتھ چھوڑتے محسوس ہو رہے تھے . وجود گرم بھٹی کی طرح جل رہا تھا، سمجھ سوچ کام نہیں کر رہی تھی . میں اُٹھی ، واش روم گئی اور شاور کھول کے کھڑی ہو گئی اور رونے لگی ، روتے روتے ہچکی سی آئی اور وہیں گر کے چیختی روتی رہی ، اپنے کپڑوں سے خون صاف کیا ، خود کو صاف کیا . شاور بے ہنگم خود ہی میرے وجو دپہ چلتا ، بہتا اور ٹھنڈا پانی بھی آگ کی طرح محسوس ہو رہا تھا. دروازہ کھلنے اور بند ہونے کی آواز نے مجھے میری ہوش کی دنیا واپس کی اور خیال آیا کہ بھائی آیا ہے . تو میں نے اپنے آپ کو سنبھالا اور جلدی سے کپڑے پہن کے باہر آئی .اتنے میں بھائی بھی باہر سے مجھے ڈھونڈتا ہو ا میرے کمرے میں آیااور بولا “کچھ کھانے کو ملے گا .”- “نہیں بھائی ، میری طبیعت ٹھیک نہیں ، باہر سے ہی کچھ لے آؤ .” میں بولی اور وہ اچھا کہتا ہوا چلتا بنا.میں نہانے کے باوجود بھی نڈھال بستر پہ گر گئی اور تنگ پڑ کے پھوٹ پھوٹ کے رو دی اور پھر زندگی بھر میں روتی ہی رہی . کبھی اپنے اندر ، کبھی چھپ چھپ کے اور بے آواز ….میری زندگی کا وہ روگ بن گیا کہ آخر کار میں ٹوٹے وجود کیساتھ جیتے جیتے اُس موڑ پہ پہنچ گئی جہاں میں نے اپنے ہی سگے بھائی کو قتل کر ڈالا اور جیل کے مزموم ماحول میں زندگی کا قیمتی وقت گزارنے پہ مجبور ہوئی .وقت گزرتا رہا ، اور میں جذبات کے اندھے دھارے میں بہتی رہی. بہت سے مردوں سے شادی سے پہلے ہی تعلق بن گیا ، ایک کو پکڑا دوسرے کو چھوڑا مگر وہ تشنگی اور ادھورے جذبات میری زندگی سے کسی طور نہ نکل سکے اور ان ادھورے جذبات نے میرے مزاج میں وحشیانہ پن اور ایک سخت گیری کا ردِ عمل بھر دیا. بی اے کیا تو ماں باپ نے شادی کر دی . شوہر میرا بہت اچھا تھا مگر جس آگ میں جل رہی تھی . وہ میرے بنا بتائےا ور بنا بولے ہی سمجھ چکا تھا . مگر اُس کے ساتھ وفا نہ کر پائی . میری شادی اپنے ماموں کے بیٹے سے ہوئی میں نے لڑ جھگڑ کر اُسکو اُسکے ماں باپ اور بہن بھائیوں سے جدا کیا . کاروباری آدمی تھا ، شادی کے بعد مزید اُسکے کاروبار نے ترقی کی اور مزید اوپر سے اوپر جانے لگا . میرے مزاج کو سمجھ کر اُس نے بہت کوشش کی کہ کسی طرح مجھے اپنی محبت سے ذہنی گرداب سے نکالے . اُس نے شادی کی پہلی رات ہی سمجھ لیا تھا کہ میں کنواری نہیں ہوں ، مگر وہ ایک اعلیٰ مزاج انسان تھا اور اُس نے مجھے بھرپور محبت دی . مگر اپنے ادھورے پن سے اُس کا ساتھ نہ دے پائی . اچھا مضبوط اور ایک اعلیٰ معیاری مرد بہت کم لڑکیوں کو ملا کرتے ہیں . مگر میں ناکام رہی کہ مزید اُس کا ساتھ نبھا سکوں . میں نے اُس سے طلاق کامطالبہ کر دیا . اُ س نے ہر ممکن مجھے منایا، سمجھایا مگر میں اُس زمین کی طرح ہو چکی تھی جس میں پھول ، خوشبو اور سرسبز ہریالی اُگتے اُگتے اچانک کسی گندی نالی کا پانی ڈال کے غلیظ کڑوی اور غلط چیزوں یا منشیات کاشت کی جائے .- اُس نے آخر مجبور ہو کر مجھے میرے کہنے کے مطابق طلاق دی ا ور ساتھ اک بار پھر اعلیٰ ظرفی دکھا گیا کہ ایک مکان اور بیس لاکھ روپیہ مجھے بطور حق مہر دے گیا . جبکہ میرا شادی کے وقت حق مہر بیس ہزار اور دو تولے سونا تھا مگر وہ جان گیا تھا کہ طلاق کے بعد میں اپنے گھر والوں یعنی میکہ کی طرف واپس نہیں لوٹوں گی . اُس نے کہا ، ” میں تم سے شدید محبت کرتا ہوں ، اس لئے تمہارے کہنے اور مطالبے کی مجبوری سے علیحدگی اختیار کی ہے مگر یہ مکان اور بیس لاکھ روپے میری طرف سے تحفہ ہیں .تم جب سے میری زندگی میں آئی ہو، میں نے بہت سے ترقی کے ادوار دیکھے ہیں .” خیر …میں طلاق لے کر اپنے میکہ والوں سے ملی تو ضرور مگر میں نے اپنی تنہائی اپنے سابقہ شوہر کے دیئے ہوئے تحفہ نما گھر میں ہی گزاری اور پھر اپنی تشنگی سے مجبور ہو کر مزید بھی کئی مردوں سے تعلقات بنائے مگر اپنی پیاس اور تشنگی کو نہ مٹا سکی . میں اس ضمن میں بہت خود سر اور بدبختی کی انتہاؤں کو چھو چکی تھی . مگر میرے لئے واپسی کا کوئی راستہ نہیں تھا . عور ت کو عزت تو سب دیتے ہیں مگر جب عورت زخمی ہو جائے تو اُسے ذلت بھی ہمارا ہندوازم کا معاشرہ خوب دیتا ہے . آج جو آپ اس معاشرہ میں عورت کی تذلیل اور سُبکی کے واقعات دیکھتے ہیں اور عورت کو مختلف مردوں کیساتھ تعلق بناتا دیکھتے ہیں تو وہ عورت کی مجبوری بن جاتی ہے . اور ایسی کوئی بھی عورت اپنے لڑکپن میں ہی اس تباہی کی طرف آتی ہے . اگر لڑکپن سے بائیس ، پچیس سال یا شادی کی عمر تک بچ جائے تو پھر سمجھ لیں کہ عورت عزت ، سمجھ ، ہوش اور اعلیٰ قدروں کیساتھ زندگی گزار جائے گی .اور اگر کوئی لڑکی اس سے پہلے ٹوٹ گئی تو پھر اُسے موت کے علاوہ سنبھالنا کسی انسان کے بس کی بات نہیں رہتی . میں مردوں کو ٹشو پیپر کی طرح استعمال کرکے پھینکتی رہی . دو مرد مجھے ایسے بھی ملے جو میری اذیت کے آگے پہاڑ بھی بنے . میں نے اپنے آپ کی خوبصورتی ، لوچ اور سیکس اپیل کا ہر حربہ آزما کے دیکھا مگر وہ دونوں ہی اپنی جگہ سے ٹس سے مس نہ ہوئے .اور میں ان کو حاصل کرنے اور ذلیل کرنے میں ناکام رہی .- میں نے اپنے گھر والوں سے ملنا کافی عرصے سے چھوڑ دیا تھا. شادی کے بعد بھی کم ہی میکہ گئی اور طلاق کے بعد بھی بس ایک ہی دفعہ اپنی بوڑھی ماں کو دیکھنے گئی. ماں نے بہت کہا کہ میں ان کے پاس آ کے رہوں مگر میں نے انکار کر دیا کیونکہ ماں کے گھر رہنے کا مطلب تھا کہ بھائی کی مجھے شکل دیکھنی پڑتی اور اذیت کا پہلادور اور وقت دوبارہ یاد آتے . اور ماں کو اپنے پاس اس لئے نہیں لا سکتی تھی کہ پھر بھائی اور اسکے بچے آتے جاتے، اور یہ اب مجھے گوارہ نہیں تھا. اباجی وفات پا چکے تھے . مگر ماں میری طلاق سے دکھی تھی ، مگر میری اذیت نے کسی کی بھی پروا کرنی چھوڑ دی تھی. میرا کام بس بینک سے پیسے لانا اور کھانا پینا اور اپنے لئے آدم خور چڑیل کی طرح شکار ڈھونڈنا اور جب کبھی شکار نہ ملنا تو اکیلی پڑی وی سی آر پہ فحش فلمیں دیکھنا یا پھر شراب پی کے لمبی نیند سو جانا. شراب میرے شکار مجھے لا کے دیا کرتے تھے ، شراب سے مجھے ایک نئی زندگی مل جاتی تھی اور میں اپنے شکار کی بوٹیاں اُدھیڑ دیتی تھی . میرا یہ ایک انتقام تھا مردوں سے . میں انہیں اتنا نڈھال کر دیتی تھی کہ وہ زیادہ سے زیادہ تین سے چار ماہ تک میرا ساتھ دے پاتے تھے . اور یہ سلسلہ کوئی بارہ تیرا سال تک چلتا رہا. پھر مجھے اپنی طاقت میں کمی ہوتی ہوئی محسوس ہوئی اور میرا لُٹا پُٹا بدن اب مجھے کبھی کبھار بتاتا تھا کہ اب وہ پہلے والی طاقت نہیں رہی . اور خوبصورتی بھی اب ڈھلنا شروع ہو گئی کیونکہ شراب بھی اپنا کام دکھا رہی تھی . عمر کے 34 سال بیت گئے تھے . اور اندر کی ادھوری عورت ابھی تک اپنی تکمیل نہیں پا سکی تھی . اب جسمانی اعضاء جواب دینے لگے تھے . اب محرومی کی سوچیں بہت بڑھ گئی تھیں. اب کسی اپنے کی کمی شدت سے محسوس ہوتی تھی . رونے کی مجھے عادت نہیں تھی . میں نے لڑکیوں بالیوں کی طرح کبھی رو کے اپنے دل کی بھڑاس نہیں نکالی تھی . جسکی وجہ سے میرا اندر ہر وقت منجمد رہتا تھا. میں اپنے آپ میں ایک وحشیہ بن چکی تھی . شادی کے بعد بھی اولاد نہیں ہوئی ، ہو سکتا تھا کہ اولاد ہو جاتی تو شاید میری تنہائی کم ہو جاتی ، یا اولاد کیساتھ مجھے صبر آ جاتا . مگر نہیں ، عورت کی اولاد بھی ہو جائے تو تب بھی اس معاملہ میں صبر نہیں آیا کرتا. ہمارے پاکیزہ دینِ اسلام نے جو ہمیں زریں اصول دیئے ہیں وہی انسان کی اصل اور بہترین زندگی کی ضمانت ہیں اور یہ سلسلہ اسلام کی پیروی کرنے والوں کیلئے قیامت تک چلتا رہے گا .- طلاق کے بعد میرا بھائی دو دفعہ ماں کو لے کے آئے اور اپنے بڑے پن کا احساس دلانے کی کوشش کی مگر میں نے ٹکا سا جواب دے دیا کہ ” میں شادی کے بعد کی زندگی گزار رہی ہوں ، شادی سے پہلے تک لڑکی کے ماں باپ اور بہن بھائی ضروری ہوتے ہیں ، بعد میں یہ رشتے ثانوی بن جاتے ہیں . اس لئے آپ لوگ مجھے میرے حال پہ چھوڑ دیں اورمجھے میری زندگی گزارنے دیں.” ماں اور بھائی نے دوسری شادی کا بھی مجھے کئی دفعہ کہا مگر میں نے ٹال دیا . میرا ایک شکار ایک چنچل شوخ اور لا ابالی سا لڑکا بنا. وہ اکثر راتوں کو باہر رہنے والا آوارہ مزاج تھا . کبھی کبھار میرے پاس بھی رات رہ جایا کرتا تھا. ایک دن اُ س نے اپنے بارے میں بتاتے ہوئے کہا کہ “میرے چچا نے میری ماں کو گالی دی تو میں نے ٹھان لی کہ چچا کے ساتھ اگر لڑوں گا تو یہ میرا باپ اور چچا دونوں مجھے مار پیٹ کے چپ کروا دیں گے . اس لئے میں نے دل میں ٹھان لی کہ چچا کو زندہ نہیں چھوڑنا اور ایک دن مجھے موقعہ مل گیا . چچا رات کے اندھیرے میں کام سے پیدل واپس موٹر سائیکل گھسیٹتا ہوا آ رہا تھاشاید موٹر سائیکل پنکچر تھا کہ اندھیرے میں مجھے تاک لگانے کا موقعہ مل گیا . میں نے چچاکی موٹر سائیکل کو دھکا مارا اور نیچے گراتے ہی چچا کی گردن تیز دھارخنجر سے کاٹ ڈالی ، وہ بیچارا چیخ بھی نہ سکا اور میں صاف بچ نکلا. ” اور وہ پھر دوبارہ دانت نکوستےہوئے ہنسا ، “ابھی بھی چچا کی برسیوں میں شدو مد کیساتھ جاتا ہوں اور بہت دکھی ہو کے چچاکی بیٹی سے افئیر چلا رہا ہوں . اب چچا کی بیٹی سے شادی کرونگا . ” مجھے اُس کی کہانی سے تحریک ہوئی اور میں نے پوچھا کہ کیا وہ مجھے کوئی پستول لا کے دے سکتا ہے ؟ تو اُس نے مجھے لیڈیزپستول کی آفر دی کہ میں تم کو لائسنس والا بنوا کے دےسکتا ہوں . ” مگر میں شروع میں اس پہ راضی نہ ہوئی. وہ مجھے ایک اسلحہ کی دکان پہ لے گیا اور وہاں اس نے بہت سے پستول مجھے دکھائے اور مجھے ہلکا اور چھوٹا سا لیڈیز پسٹل بہت پسند آیا اور میں نے اُسکی کہانی سے ہی تحریک پکڑتے ہوئے ہی اپنے بھائی اور اپنے مجرم کو مارنے کی ٹھان لی تھی کیونکہ میرابھائی اگر ایسا کام نہ کرتا تو آج میں بھی خوش وخرم اپنی زندگی میں اپنی اولاد کیساتھ مگن اور خوشحال زندگی گزار رہی ہوتی . میں نےپستول خریدا اور اپنے ارادے کی تکمیل کیلئے پلاننگ کرنے لگی ، میں چاہتی تھی کہ اپنے بھائی کو اس کے تمام جرم کی تفصیل سنا کے ماروں اور پھر میں نے ایک شام اسے چائے پہ بلایا اور اسے نیند کی گولیا ں دے کے چائے پلا دی . پھر ریشمی باریک ڈوری سے اچھی طرح کس کے باندھ ڈالا . اور گھسیٹ کے اپنے باتھ روم تک لے آئی تاکہ اس کی آواز بھی نہ آئے اور پانی سے اسے جگاؤں بھی اور پھر باتھ روم میں ہی قتل کر دوں .میں نے اپنی پلاننگ کے مطابق اسے ہاتھ پاؤں سے باندھ کے مضبوط ٹیپ اس کے منہ پہ چپکا دی . میرا وجود نفرت کی آگ سے شعلہ بنا ہوا تھا . میں نے پہلے تو بہت دفعہ سوچ کے اسے چھوڑ دیا تھا مگر اس کی عیاشیوں کی کئی داستانیں اپنی بھرجائی یعنی بھائی کی بیوی سے سن چکی تھی .میرے بھائی کے زنا کیوجہ سے آج میں بھی ٹوٹی بکھری پڑی تھی .- باتھ روم میں میں نے اسے خوب ٹھنڈے پانی سے نہلایا اور پھر جب وہ صحیح طرح اپنے ہوش میں آ گیا تو میں نے پلاسٹک کے پانی والے پائپ سے ہی اس کی دھلائی شروع کردی . مجھے نہیں پتہ کہ میں نے اسے کتنا مارا اور کتنے زخم دیئے اور کہاں اسے چوٹ لگی اور جب وہ بے ہوش ہو کر پھر ایک طرف ڈھلک گیا تو میں نے پھر پانی ڈال ڈال کے اسے ہوش دلایا اور پھر خود بھی جو میں اسے مار مار کے تھک چکی تھی .باتھ روم کے دروازے پہ ہی کرسی رکھ کے بیٹھ گئی . اُس وقت ہم صرف دو بہن بھائی ہی تھے یعنی میں اور میرا مجرم بھائی . آخر کار میں نے اس کے ہونٹوں سے ٹیپ ہٹائی اور پانی پلا یا ….اور اسے اس کے جرم کی کہانی سنائی جس کو وہ سن کر ہکا بکا رہ گیا . وہ کچھ بھی بولنے کے قابل نہ رہا تھا . اس وقت میری عمر 34 سال اور بھائی کی عمر 40 سال تھی .اور میں نے اسے اسکا جرم سناکے اپناپستول سے دو دفعہ فائر کر دیا .پستول دیکھنے کے باوجود وہ اتنا زیادہ اپنا جرم سن کر اور میری بربادی کا سن کر پشیمان اور چپ ہو گیا کہ اس نے مجھ سے رحم کی التجا ء یا اپیل بھی نہیں کی . بس اک ٹک مجھے گھورتا ہوا خاموشی سے مر گیا اور میں آج 42 سال کی عمر میں 8 سال کی سزا کاٹ کے واپس آئی ہوں .اب پھر میں اکیلی.بھائی مار ڈالا. اس کے بچے یتیم ہو گئے.اور سب کی مزید نفرتیں سمیٹی ہیں . بس گزر اوقات کے پیسے بینک سے ہر ماہ منافع یا سود کی شکل میں مل جاتے ہیں . روٹی کھا لی اور بس اپنے سانس گزار رہی ہوں . جیل میں سزا کے دوران دمہ کا مرض ہو گیا ہے ، جس سے پھیپھڑے اب جواب دیتے جا رہے ہیں . رہائی کے بعد کچھ علاج تو کروایا ہے مگر کوشش یہی ہے کہ اب زندگی ختم ہو جائے تو بہتر ہے کیونکہ مزید اب سسک کے تنہائی میں گزارا نہیں ہوتا .- دمہ کے اب آسان علاج ہیں مگر میں بس وقتی دوا کھا کے گزارا کر رہی ہوں . چاہتی ہوں کہ کسی وقت ہچکی آئے یا کسی وقت دمہ کا ہی شدید اٹیک ہو جائے اور کھانستے کھانستے سانس واپس نہ آئے تو زیادہ بہتر ہوگا. وصیت میں اُسی بھائی کے بچوں کے نام مکان اور بینک بیلنس بھی لکھوا چھوڑا ہے . جب مروں گی تو خود ہی ان کو مل جائے گا. ہاں ….سزا کاٹنے کے دوران اور سزا کاٹنے کے بعد کبھی کبھی پچھتاوا بھی ہوتا رہا ہے کہ اتنا عرصہ گزار آئی تھی تو بھائی کو نہ ہی قتل کرتی .مگر انسان بے بس ہے .جو کر بیٹھتا ہے وہی اسے بھگتنا بھی پڑتا ہے .جب ایسا انسان ٹوٹتا ہے تو پھر اپنے ساتھ ساتھ اوروں کو بھی بے حس بن کر برباد کر جاتا ہے.کسی کی بہترین قسمت ہوتی ہے کہ قدرت مہربان ہو اوروہ انسان پشیمان نہ ہو . سیکس اک قدرتی دین ہے انسان کئ بار اس میں حد سے نکل جاتا ہے میں خود انسیسٹ سیکس کا دیوانہ ہوں پر صرف پڑھنے کی حد تک پھر بھی احتیاط ضروری ہے امید کرتا ہوں آپ کو سٹوری پسند آہی ہوگی فقط بانی لنک
  8. آہنی گرفت ایکشن ،سسپنس اور محبت سے لبریز ایک داستان ایک چٹان جیسے مضبوط اور پتھر جیسے دل والے نوجوان کی کہانی جو رشتوں کی لطافت سے محروم تھا اور تنہائی کا راہی تھا۔ موت جس کے لیے ایک تفریح اور زندگی جوا تھی۔ پیڈ سیکشن میں شائع کی جا رہی ہے۔ ONLY FOR PAID MEMBERS
  9. میرے دوستوں۔ مجھے ایک ایسا خاندان بنانا ہے جس میں کھلی سیکس ہو۔ ہر کوئی اپنی من مانی مراد پورا کر سکے۔
  10. عید کے موقع پر شائع کیا جائے گا۔ کوشش ہے کہ کہانی کو یکمشت مکمل کر کے شائع کیا جائے مگر ہو سکتا ہے کہ عید پر ایسا نہ ہو سکے۔ اس صورت میں کہانی کا اسی فیصد حصہ لازمی پوسٹ کر دیا جائے گا اور بقیہ حصہ جلد ازجلد پوسٹ کر دیا جائے گا۔
  11. ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺍﮔﺮ ﻟﮍﮐﻮﮞ ﺳﮯ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﯿﺎ ﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﮐﭽﮫ ﯾﻮﮞ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﻠﯿﮟ ﮔﮯ ، ٭ ﻣﯿﮟ ﺍﮐﯿﻠﮯ ﭘﻦ/ ﮐﻨﻮﺍﺭﮮ ﭘﻦ ﺳﮯ ﺗﻨﮓ ﺁﭼﮑﺎ ﮨﻮﮞ۔ ٭ ﺍﮔﻼ ﺁﭖ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﯽ ﺟﻨﺴﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﺎ ﺭﻭﻧﺎ ﺭﻭﺗﺎ ﮨﻮﺍ ﻧﻈﺮ ﺁﺋﮯ ﮔﺎ۔ ٭ ﺗﯿﺴﺮﺍ ﮐﮩﮯ ﮔﺎ ﻣﯿﺮﮮ ﻭﺍﻟﺪﯾﻦ ﻣﯿﺮﯼ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﺍﻧﺎ ﭼﺎﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ ٭ ﺍﻭﺭ ﭼﻮﺗﮭﺎ ﮐﮩﮯ ﮔﺎ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﯿﮟ ﺑﮍﺍ ﮨﻮﭼﮑﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﭘﻮﺭﺍ ﻣﺮﺩ ﮨﻮﮔﯿﺎ ﮨﻮﮞ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﮯ ﺩﯾﮕﺮ ﺟﻤﻠﮯ ﺁﭖ ﺩﻭﺳﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺳﻨﯿﮟ ﮔﮯ۔ ﺍﺏ ﺫﺭﺍ ﻟﮍﮐﯿﻮﮞ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺑﺎﺕ ﺑﮭﯽ ﺳﻦ ﻟﯿﺠﯿﮯ : ٭ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﯿﺮﯼ ﺳﺎﺭﯼ ﺳﮩﻠﯿﺎﮞ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮ ﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ۔ ٭ ﻟﮍﮐﯽ ﮐﻮ ﮨﺮ ﺣﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺮﻧﯽ ﭼﺎﮨﯿﮯ۔ ٭ ﻣﯿﺮﯼ ﻋﻤﺮ ﺍﺏ ﮈﮬﻞ ﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﮐﮩﯿﮟ ﺭﯾﻞ ﮔﺎﮌﯼ ﻓﻮﺕ ﮨﯽ ﻧﮧ ﮨﻮﺟﺎﺋﮯ۔ ٭ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺑﭽﮯ ﺑﮩﺖ ﺍﭼﮭﮯ ﻟﮕﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺑﻌﺾ ﻟﮍﮐﯿﺎﮞ ﺷﺎﺩﯼ ﻣﯿﮟ ﺭﻏﺒﺖ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﯾﮧ ﺑﺘﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﯽ ﺳﻔﺮ ﮐﺮﻧﺎ / ﮔﮭﻮﻣﻨﺎ ﭘﮭﺮﻧﺎ ﺑﮩﺖ ﺍﭼﮭﺎ ﻟﮕﺘﺎ ﮨﮯ ﺟﺒﮑﮧ ﺑﻌﺾ ﮐﮩﺘﯽ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮ ﺳﮯ ﭼﮭﭩﮑﺎﺭﺍ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ۔ ﺍﻥ ﺳﺎﺭﮮ ﺟﻮﺍﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﯾﮧ ﻭﺍﺿﺢ ﻃﻮﺭ ﭘﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﭼﮑﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻧﻮﺟﻮﺍﻥ ﻧﺴﻞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﺑﮍﯼ ﺗﻌﺪﺍﺩ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﺳﮯ ﮨﯽ ﻧﺎﺑﻠﺪ ﮨﯿﮟ۔ ﻧﺘﯿﺠﮧ ﯾﮧ ﻧﮑﻠﺘﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﻥ ﻏﻠﻂ ﻣﻔﺎﮨﯿﻢ ﻭ ﻣﺼﻨﻮﻋﯽ ﺗﺼﻮﺭﺍﺕ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﭘﻨﯽ ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮐﺎ ﺁﻏﺎﺯ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﺲ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺳﻠﺒﯽ ﻧﺘﺎﺋﺞ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺁﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﺷﺎﺩﯼ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﯿﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﻮ ﯾﮧ ﺍﭼﮭﯽ ﻃﺮﺡ ﺳﻤﺠﮫ ﻟﯿﻨﺎ ﭼﺎﮨﯿﮯ ﮐﮧ ﺍﺯﺩﻭﺍﺟﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺍﯾﮏ ﻧﺌﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻗﺒﻞ ﺍﺯ ﻧﮑﺎﺡ ﮐﯽ ﺯﻧﺪﮔﯽ ﺳﮯ ﯾﮑﺴﺮ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮩﺎﮞ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺎ ﺣﻖ ﺍﺳﯽ ﺷﺨﺺ ﮐﻮ ﺣﺎﺻﻞ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺳﺎﺗﮭﯽ ﺗﺎ ﺣﯿﺎﺕ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮ۔ ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﻭﮦ ﺑﺎﺯﺍﺭ ﺳﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭼﯿﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﺧﺮﯾﺪ ﺭﮨﺎ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺍﺳﮯ ﭘﺴﻨﺪ ﺁﺋﯽ ﺗﻮ ﺧﺮﯾﺪﻟﯽ ﻭﺭﻧﮧ ﭘﮭﯿﻨﮏ ﺩﯼ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﺳﺮﯼ ﻟﮯ ﻟﯽ۔ ﺷﺎﺩﯼ ﺍﯾﮏ ﺑﮭﺎﺭﯼ ﺫﻣﮯ ﺩﺍﺭﯼ ﺍﻭﺭ ﮈﯾﻮﭨﯽ ﮨﮯ۔ ﯾﮩﺎﮞ ﭘﮯ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﺍﻧﺠﺎﻡ ﺩﯾﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻣﮩﺎﺑﮭﯽ ) ﻡ۔ ﻣﮩﻢ ( ﺟﺐ ﮨﻢ ﺷﺎﺩﯼ ﯾﺎ ﺯﻭﺍﺝ ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺘﺐ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺭﺟﻮﻉ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺯﻭﺍﺝ ﯾﺎ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﯽ ﺗﻌﺮﯾﻒ ﯾﻮﮞ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﻣﺮﺩ ﺍﻭﺭ ﻋﻮﺭﺕ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺑﺎﮨﻤﯽ ﺭﺿﺎ ﻣﻨﺪﯼ ﺍﻭﺭ ﺷﺮﻋﯽ ﻃﺮﯾﻘﮯ ﺳﮯ ﮨﻤﯿﺸﮧ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﺎ ﻣﻌﺎﮨﺪﮦ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﻋﻔﺖ ﻭ ﭘﺎﮐﯿﺰﮔﯽ ﮐﺎ ﺣﺼﻮﻝ ﺍﻭﺭ ﺍﯾﮏ ﻣﻀﺒﻮﻁ ﻭ ﭘﺎﺋﯿﺪﺍﺭ ﻓﯿﻤﻠﯽ ﻗﯿﺎﻡ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﻣﯿﺎﮞ ﺑﯿﻮﯼ ﮐﮯ ﺑﺎﮨﻤﯽ ﺗﻌﺎﻭﻥ ﻭ ﭘﯿﺎﺭ ﻭ ﻣﺤﺒﺖ ﺳﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﺁﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺗﻮ ﭘﺘﮧ ﭼﻼ ﮐﮧ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﻣﺤﺾ ﺟﻨﺴﯽ ﺧﻮﺍﮨﺶ ﮐﯽ ﺗﺴﮑﯿﻦ ﻓﮩﻤﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻧﮧ ﮨﯽ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﺍﯾﮏ ﺭﺳﻢ ﮐﻮ ﭘﻮﺭﺍ ﮐﺮﻧﺎ ﮨﮯ۔ ﺟﻮ ﺑﺮﺳﻮﮞ ﺳﮯ ﭼﻠﯽ ﺁﺭﮨﯽ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﺎ ﻣﻘﺼﺪ ﺍﯾﮏ ﻧﯿﮏ ﺍﻭﺭ ﭘﺎﺋﯿﺪﺍﺭ ﻓﯿﻤﻠﯽ ﮐﺎ ﻗﯿﺎﻡ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﻓﯿﻤﻠﯽ ﺍﺗﻨﯽ ﺁﺳﺎﻧﯽ ﺳﮯ ﻭﺟﻮﺩ ﻣﯿﮟ ﻧﮩﯿﮟ ﺁﺗﯽ ﺑﻠﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻨﺎﺋﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻓﯽ ﻭﻗﺖ ﺍﻭﺭ ﻣﺤﻨﺖ ﺻﺮﻑ ﮨﻮﺗﯽ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﺎﻓﯽ ﻣﺎﻝ، ﺣﮑﻤﺖ ﺍﻭﺭ ﺳﻮﭺ ﻭ ﻓﮑﺮ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺧﺮﭺ ﮐﺮﻧﯽ ﭘﮍﺗﯽ ﮨﮯ۔ ﺟﺲ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﻮ ﺷﺎﺩﯼ ﮐﮯ ﺍﺱ ﻣﻔﮩﻮﻡ ﮐﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﺳﻤﺠﮫ ﻣﯿﮟ ﺁﺟﺎﺋﮯ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﮔﮭﺮﮐﮯ ﮨﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻟﺬﺕ ﻭ ﺭﺍﺣﺖ ﻣﺤﺴﻮﺱ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔
  12. Happy new year

    نئے سال کے موقع پر ایک یادگار تحفہ اردوفن کلب کے قارئین کے لیے۔ یہ یادگار تحریر اکتیس دسمبر کو قارئین کے لیے شائع کی جائے گی۔
  13. 42 % premi sex kyun nahi kar paate? ? 1)Girlfriend nahi manti? ? 2)Seriousness? ? 3)SexuaL disorder? ? Nahi , Q K Kamino ko ROOM hi nahi milta..
  14. ہیلپ لائن:? السلام علیکم۔ دس از ہیلپ لائن کسٹمر: مجھے یہ بتائیے کہ میں?اس پروگرام کو کیسے انسٹال کروں۔ یہ میرے نئے موبائل فون کے ساتھ آیا ہے۔مجھے صرف تھوڑی سی رہنمائی چاہئے۔ مجھے پہلے سے کافی معلومات ہیں۔ میں?کمپیوٹرڈیپارٹمنٹ میں?کام کرتا ہوں۔ ہیلپ لائن: سب سے پہلے سر آپ اس پروگرام کی سی ڈی کو کمپیوٹر میں?لوڈ کریں۔ اور پھر “مائی کمپیوٹر“کو کھولیں۔ کسٹمر:?یہ آپ کیا کہ رہے ہیں؟میں?کیسے آپ کے کمپیوٹر کو کھول سکتا ہوں؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ہیلپ لائن:?ابھی آپ اپنا پاس ورڈ لکھیں۔ اے بڑے حروف میں، ایف چھوٹے حروف میں اور پھر سات کا ہندسہ۔ کسٹمر:?جی میں?سمجھ گیا۔ ویسے کیا یہ سات کا ہندسہ بھی بڑے حروف میں لکھنا ہے یا چھوٹے میں؟ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔ کسٹمر:?میں?انٹر نیٹ سے منسلک نہیں?ہو سک رہا۔ یہ پاس ورڈ کا مسئلہ دیتا ہے۔ ہیلپ لائن: جی کیا آپ کو یقین ہے کہ پاس ورڈ درست ہے؟ کسٹمر: جی، میں?نے اپنے دوست کو یہی پاس ورڈ لکھتے دیکھا تھا۔ ہیلپ لائن:?جی کیا مجھے وہ پاس ورڈ بتائیں گے؟ میں لسٹ سے چیک کر کے بتاتی ہوں۔ کسٹمر: پانچ بار ستارے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کسٹمر: ایک بہت بڑا مسئلہ ہو گیا ہے۔ میرے دوست نے مجھے ایک سکرین سیور انسٹال کر کے دیا ہے۔ویسے تو یہ صحیح کام کرتا ہے مگر جونہی ماؤس ہلاتا ہوں، وہ غائب ہو جاتا ہے۔
  15. plz help karay, mera hsbnd meri sex desire pori nahi krta. m 42 year old from lahore. wt to do?
  16. غلط فہمی

    جج: خان تم نے لیڈی پولیس افسر کے ساتھ زیادتی کیوں کی۔ خان: جج صاحب! قصور اس افسر کا بھی ہے۔ جج: کیا؟ خان: جج صاحب اس نے کہا تھا کہ ہتھیار ڈال دو۔ ۔ ۔ ۔ ۔ - بس ہم نے ڈال دیا
  17. عورت: کنڈوم کا ایک پیکٹ دینا۔ دکاندار: میڈم! کیا بات ہے پہلے تو آپ کے شوہر لے کے جاتے تھے آج آپ خود آئی ہیں، عورت: اصل میں تب میں کچھ دنوں کے لیے دوسرے شہر گئی ہوئی تھی، اور آج وہ دوسرے شہر گئے ہوئے ہیں۔
  18. EricT is here :-)

    Hello all, Sameen (SeXXXmeen) finally convinced me to come here A little intro of myself (although I would request those who know me to give my intro to others here) I am a direct but genuine person- better to be honest than waste anyone's time. I'm quite normal and laid-back really. :) I'm a executive manager in my mid thirties. 178cm, average build (could lose a few pounds!), brown hair and black eyes. I'm in good health (v imp that I am Disease free), good looking and good fun. I live and work in UAE but travel a bit for work. I'm the type who's eager to cut to the chase. Pretense isn’t for me. Since this is primarily a sex forum I would say this: I'm your typical bored husband, stuck in a marriage that's more of a static friendship. I'm no saint, but I try to live a decent life filled with an indecent amount of sex. I am always looking for someone special so that we can spend special and discreet times together. I like my partners to be down-to-earth and but also have a wild streak. She should know what she wants and not be secretive or ashamed of admitting she is looking for a sexual relationship. Should know my availability limits as I do have a family. She should know its physical with romance but not permanent. She should be available to meet, as I am not looking for cyber. I'm married and have kids, but things aren't working out on some levels. So I sometimes find someone who is also looking out for the same, so we can add some excitement to our lives. I love people who are open-minded and willing to explore and experiment. A good sense of humor is also a good thing! I'm a very sexually active person. I'm a romantic sometimes but a naughty guy and wild person other times. Depends on the situation My friends call me when they need a shoulder to cry on, to understand them, and be the voice of neutrality and reason. Rest I leave upto you to ask... Eric T