Jump to content
URDU FUN CLUB

Search the Community

Showing results for tags 'urdu'.



More search options

  • Search By Tags

    Type tags separated by commas.
  • Search By Author

Content Type


Forums

  • ...::: U|Fun Announcements Club :::...
    • News & ­Announcements
    • Members Introduction
    • Complains & Suggestions
  • ...::: U|Fun General Knowledge Club :::...
    • General Knowledge
    • Cyber Shot (No Nude)
  • ...::: U|Fun Digital Library Club :::...
    • Own Writers Urdu Novels
    • Social New Writers Club
    • Urdu Poetry Ghazals Poems
  • ...::: U|Fun Buy and Sale Club :::...
    • Buy & Sale Your Products
  • ...::: U|Fun Adult Multimedia Club [Strictly For 18+] :::...
    • Users Chit Chat + (18)
    • Sex Advice with Doctors
    • Urdu Sexy Jokes Poetry
  • ...::: U|Fun Urdu Inpage & Pic Sex Stories Club Normal Standard :::...
    • Urdu Adult Inpage Stories
    • Roman Urdu / Hindi Sex Stories
    • Picture Stories (By UFC Writers)
    • Incomplete Stories (No Update)
  • ...::: U|Fun Premium Membership Subscribe Club :::...
    • Purchase VIP Membership
  • ...::: U|Fun High Standard Premium Club :::...
    • Pardes Serial Novel VIP Edition
    • Hawas Serial Novel VIP Edition
    • Aahni Grift Serial Novel VIP Edition
    • Kamran and Head Mistress VIP Edition
  • ...::: U|Fun Urdu Inpage & Pic Stories High Standard Paid Files :::...
    • Urdu Inpage Stories Paid Files
    • Urdu Picture Stories Paid Files
  • ...::: U|Fun Recycle Bin Club :::...
    • Recycle Bin

Categories

  • Urdu Sex Stories High Standard
  • Urdu Pic Stories High Standard

Product Groups

  • Converted Subscriptions
  • Cyber Monday Paid Files Offers
  • Old Membership Renewal Packeges

Find results in...

Find results that contain...


Date Created

  • Start

    End


Last Updated

  • Start

    End


Filter by number of...

Joined

  • Start

    End


Group


Found 6 results

  1. پرانی یادیں قسط 1 بچپن سے جوانی ، جوانی سے بڑھاپا. انسان اپنی زندگی میں بہت سارے لوگوں سے ملتا ہے یا بہت سارے واقعات ایسے ہوتے ہیں جو ہمارے دماغوں پے نقش ہو جاتے ہیں. انسان بعض اوقات عمر کے اس حصے میں جب سردی بھی زیادہ لگتی ہے اور تنہائ بھی تو بہت سے ایسے لوگ یاد آتے ہیں جن سے بہت گہرے رشتے ہوتے ہیں. اور ان رشتوں سے جڑی ہوتی ہیں ہماری پرانی یادیں.. میں آپ کو اپنے متعلق بتاتا ہوں پہلے. میرا نام سہراش ہے اور میں پاکستان لاہور کا رہنے والا ہوں. میں ایک شادی شدہ اور 2 بچوں کا باپ ہوں. بارش کی ان بوندوں کے ساتھ کچھ رم جھم کرتی قطرہ قطرہ برساتیں یادیں. آج جب یادیں دل میں پوری شدت کے ساتھ جمع ہوئیں تو سوچا کچھ کاغذ پر اتار لیا جائے. لیکن کچھ بھی لکھنے سے پہلے یہ بتا دوں کہ میں کوئی باقاعدہ لکھاری نہیں ہوں. اگر کچھ غلطی ہو تو معافی چاہتا ہوں ..... کہانی اس وقت سے شروع ہوتی ہے جب میں دوسری کلاس میں پڑھا کرتا تھا. ہمارے سکول کی دیواریں بوسیدہ سی ہوا کرتی تھیں. اور اگر کوئ کمرہ نہ ہو تو درحتوں کے نیچے بھی کلاسیں لگ جاتی تھیں. شام کو 4 بجے ساتھ والی باجی کے گھر ٹیویشن لینے بھی جانا ہوتا تھا. ماں جی کی حالہ کے ساتھ اچھی بنتی تھی تو انہی کی بیٹی کے پاس بھیج دیا. وہ بھی بنا کسی فیس کے پڑھا دیتی تھیں. حالہ کا نام تو مجھے نہیں پتا بس ہمیشہ حالہ ہی کہہ کر محاطب کیا کرتا تھا. حالہ کی بس دو ہی بیٹیاں تھیں. بڑہ نورین اور چھوٹی نسرین. نوریں باجی نے 8 تک پڑھائ کری اور نسرین نے 10 تک. ان کی عمریں بلترتیب 24 اور 22 سال ہو گی. اچھے جسموں کی مالک تھیں دونوں. ان کا سینہ بھرا ہوا تھا اور پیٹ بلکل سیدھا پھر نیچے ان کی کمر اور کولہوں کے ابھار. کالے کمر تک آتے نورین باجی کے بال جن کو وہ چٹیا کی شکل میں باندھ کر رکھتی اور ان کی گہری بڑی آنکھیں. قدرت کی ایک بہت حوبصورت تحلیق باجی نسرین کی چھاتی تھوڑی چھوٹی تھی لیکن سیڈول تھی. خالہ کی عمر لگ بگ 37یا 38 سال ہو گی لیکن ان کا جسم بھی بہت کسا ہوا تھا. اس بات کا اندازہ مجھے تب ہوا جب مجھے پہلی بار انہوں نے اپنے گلے سے لگایا. وہ مجھ سے بڑا پیار کرتی تھیں. جب بھی کھیر یا حلوہ بناتی میرے لیئے ضرور رکھتی. یا گھر لے آتیں. جب بھی کسی بات پے باجی سے ڈانٹ پڑتی حالہ ان کو ہمیشہ منع کر دیتی اور کہتی " میرے پتر نوں حبردار جے کجھ اکھیا تے" باجی کہتی" تسی "اینوں سر تے نہ چڑہاو کجھ پڑھ وی لین دیوں. مجھے جب بھی حالہ کے گلے لگتا مجھے ان کے نپلز اپنے ہونٹوں کے پاس محسوس ہوتے لیکن عمر کے اس حصے میں ان باتوں سے انجان میں ان کے سینے سے لگا رہتا اور باجی پر ہنسنے لگتا. دن یونہی پیار محبت سے گزرتے رہے. لیکن ایک بات ہمیشہ رہی کہ حالہ نے یا باجیوں نے کبھی میرے سامنے ڈوپٹہ یا چادر نہیں لی یا کسی حاص پردے کا حیال نہیں رکھا. بلکہ ایک دن تو جب میں ٹیوشن کے لئیے گیا صحن میں حالہ برتن دھو رہی تھیں اور کچھ پسینہ اور کچھ پانی کی وجہ سے ان کی قمیض پوری بھیگ گئ تھی. قمیض کے اندر سے ان کے بڑے بڑے دونوں پستان اور ان پر گہرے براؤن رنگ کے نپلز صاف دکھ رہے تھے. مانو جیسے حالہ اوپر سے بلکل ننگی ہو کر برتن دھو رہی ہیں. زندگی میں پہلی مرتبہ ایک عورت کا ننگا جسم مجھ سے صرف ایک ہاتھ کی دوری پر تھا. میری للی شلوار میں فل اکڑ گئی تھی اور میری ٹانگوں میں کپکپاہٹ شروع ہو گئی. حالہ نے مجھے دیکھا تو بولی "آ گیا پتر. باجی آتے اپنے کمرے وچ آگ جا بولا لیا" لیکن انہوں نے اپنی حالت ویسی ہی رکھی. میرے منہ سے بمشکل نکلا جی حالہ. لیکن میری آواز جیسے میرے ہی کانوں تک رہی. میرا دل نہیں تھا جانے کا مجبورا جانا پڑا. میں اور رکنا چاہتا تھا. مجھے لگا اگر میں وہاں سے ہلا تو پھر کبھی یہ نہیں دکھے گا مجھے. ڈر بھی لگ رہا تھا کہ حالہ میری حالت پڑھ لیں تو غصہ نہ ہو جائیں. بادل ناحواستہ میں اوپر گیا اور باجی کو چھت پر بیٹھا دیکھا. ان دنوں اکثر لوگ گرمیوں میں اپنی چھت پر ہی سوتے تھے. باجی بھی شاید اپنے بستر ہی لگانے آئ تھیں. میں ان کو سلام کرا تو انہوں نے گردن گھما کر مجھے دیکھا. اور کہا نیچے ہی کتابیں کھول کر بیٹھو میں آتی ہوں چارپائ لگا کر. میں بھاگ کر نیچے آیا. میری قسمت کہ حالہ نے برتن دھو لیئے تھے اور وہ صحن میں پانی لگا رہی تھیں. ان کا بالائ جسم پیٹ تک ویسے ہی گیلا تھا اور ان کے ننگے پستان میرے سامنے. میں چور آنکھوں سے ان کو دیکھنے لگا. میرا کتابوں میں بلکل بھی دل نہیں لگ رہا تھا. بس زور زور سے ڈھرک رہا تھا. کچھ دیر میں باجی نورین اور باجی نسرین دونوں ہی وہاں آ گئیں. باجی نے اپنی امی کو دیکھا اور ان کی حالت سے بےنیاز ہو کر مجھے سکول کا سبق دکھانے کو بولا. میرا زہن بس خالہ کی طرف تھا میں بار بار چوری چوری ان کو دیکھتا رہا. میری للی شلوار میں پھر سے اکڑ گئ. باجی نے مجھے دیکھ کر بولا تمہاری طبعیت تو ٹھیک ہے. اتنا پسینہ کیوں آیا ہوا تم کو؟ میں کچھ بول ہی نہ پایا. تھوڑی ہی دیر بعد انہوں نے مجھے بولا آج تم گھر جاو تمہاری طبعیت ٹھیک نہیں لگ رہی. کل پڑھ لینگے. میں جی باجی بول کر بستہ سمیٹنے لگا اور آٹھ کے جانے لگا تو خالہ نے پاس آ کر میرے ماتھے پر ہاتھ رکھا. اور بولی "لگدا میرے پتر نوں بخار ہو گیا. جا پتر جا کے آرام کر. تے بار نہ کھیڈن ٹر جائین" میں اچھا خالہ بول کر ایک گہری نگاھ ان کے پستانوں پے ڈالی اور کانپتی ٹانگوں سے گھر آ گیا... گھر آ کر بھی میرا دھیان خالہ کی ننگی چھاتیوں پر ہی رہا. کھانا کھاتے ہوئے بھی وہی منظر میری آنکھوں کے سامنے رہا. کھانا بھی ٹھیک سے نہیں کھایا گیا مجھ سے. ماں جی نے پوچھا بھی سب ٹھیک آے پتر روٹی تے رج کے کھا. میں بولا میری طبیعت ٹھیک نہیں اور اپنے کمرے میں آ گیا. لیکن ان مناظر کو یاد کرتا رہا. للی بار بار اکڑتی رہی. پھر انہی بے ترتیب حالتوں میں نہ جانے کب میں نیند کی وادیوں میں کھو گیا ....... جاری ہے......
  2. Version 1.0.0

    102 downloads

    چھوٹا چوہدری از ڈاکٹر فیصل خان

    $3.00

  3. Version 1.0.0

    83 downloads

    غافل از ڈاکٹر فیصل خان کل صفحات 125 / مکمل ناول.

    $3.00

  4. Hello Friends I am Muzamil AJ Main Aap SAB Ko bataunga key mainey apni cousin kis Ka Naam farhana hai us ko kesay blackmail Kiya aur kesay USS key Saath sex Kiya toh chalo shuru kartay hai Meri Jo cousin hai Woh Meri phupho ki beti ki beti hai jis ki Umar 19 Saal hai main in Kay Ghar jaata rehta Thaa shuru say jab Woh choti thi tab say Lekin aahista aahista Woh Bari Hoti gayi ek din jab main un key Ghar Gaya toh Meri bazar USS ke boobs par paree Jo key Jawan larki Kay hisaab say Baaray aur tight ho chukay thay aur USS waqt us Kay SAR par chaadar bhi nahen thee mujhe Dekh Kar Woh Chadar dhoondnay lagi aur chaadar aurh li Khair main SAB Ghar Walon say Mila aur phir Farhana nay mujhe Paani pilaya jab Woh Paani debanay aayi toh mainay phir say USS key boobs ki taraf Dekha aur us nay mujhe dekhtay huay Dekh liya aur apna dupatta Sahi Kar Kay doostay kamray main chali gayi garmiyon key din thay main kaafi Dino baad Gaya tha toh main woheen kaafi dair tak Ruk Gaya dophair ko jab saaray khaana wagera khaa Kar so Gaye toh mujhe chain nahen aa Raha tha main bathroom main Gaya aur baathroom main camera chuppa Kar Rakh key Aaya Jo main apni mobile say control Karta Hun aur mere pass hamesha jaib main hota hai mere camera rakhnay ke taqreeban ek ghantay baad mainay Dekha key farhana bathroom main Jaa rahi hai main apni mobile say Dekh Raha tha Kay dekhun bathroom main Kiya Kar Rahi hain mainey Dekha ke uss nay apni kameez utaari phir shalwaar US's nay black colour Ka bra aur black colour ki underwear pehni thi phir USS nay Woh utaar Di aur Woh bilkul nangi thii Mera toh Dil Kar Raha Thaa ke baathroom main ghus Jaun aur nanga hokar uss ke Saath sex Kar Kay mazay loon Lekin mainey sabar Kiya aur dekhnay laga uss nay aahista aahista apnay vagina ko touch Karna shuru Kiya Woh bathroom main mastrubation karnay gayi thi USS nay sabun lagaya aur apni vagina main unglyaan lagaanay lagi aaah aaah bhi Kar Rahi thi Jo key camera main nazar aa a Raha Thaa iss Tarah Woh farig ho Kar naahaa Kar wapas jaanay lagi toh USS ki bazar mujh par paree main ussay gor say Dekh Raha Thaa phir Woh kamray main chalo gayi mere pass video record ho chuki thi aur mainey apnay pass sanbhal Kar Rakhi aur phir main shaam ko wahan say wapas Chala Gaya apnay Ghar camera lekar bathroom say taqreeban 15/20 Dino key baad Woh apni naani yaani Meri phupho ke Saath mere Ghar par aayi Meri phupho Meri Ami Kay Saath baaton main lag gayi mainey jab ussay Dekha toh USS nay Meri taraf Dekha Ghar main Meri Ami aur mere siwa koi bhi nahen Thaa mainay ishaaray say farhaana ko bulaya toh Woh pareshani Jessa chehraa Bana Kar mere pass aayi aur Kaha ke Kiya? Mainey Kaha andar aao tumsay akelay main baat Karni hai USS Ney Kaha. Kiya baat Karni hai mainey kaha aao toh Sahi batata Hun USS waqt Woh yeh Soch rahi Hogi pakka chodnay ke liye bula Raha hai Khair Woh aayi mainey apni mobile main uss ki video ussay dekhaee toh Woh pareshan hogayi aur USS nay yeh Kab record ki aur kyoon ? Mainey kaha bass mujhe tumharey Saath sex Karna Hain mujhe sex karnay do nahen toh net par upload Kar dunga baaqi tumhari marzi hai Woh gayi aur Meri phupho ke pass jakar Beth gayi aur sochnay lagi thori dair baad USS nay phupho ko kaha key main bathroom Jaa rahi Hun USS bahanay say Woh mere kamray main aayi aur kehnay lagi tumhain Jo Karna hai jaldi Karo main bed par letaa tha mainey ussay SAB say Pehlay bed par letaaya aur kamray ki kundi laga Di aur phir USS key ooper aa Kar ussay kissing karnay laga aahista aahista USS ki kameez utaari aur boobs ko Choom bhi Raha Thaa aur chaat bhi Raha tha aur uss ki keh Raha Thaa kay mazaa aa Raha hai USS nay aahista Kaha Haan air phir mainey USS ki shalwaar utaari aur underwear phir USS ki taangain uthaee saamnay oil ki bottle paree thi USS main say oil hatheli par daal Kar phir USS key vagina ko lagaya uss ko Maza aanay lagay tha phir mainey apna baraa nota Lund nikaal Kar main bhi full nanga ho chuka Thaa aur Woh bhi mainey apna Lund Uss Kay vagina main aahista aahista daala toh ussay dard hua Woh virgin thi aur Woh pehli Baar sex Karwa rahi thi Lund daaltay waqt main issue Kay boobs ko BHI haath laga Raha Thaa US's ki seal root gayi aur Thora khoon nikla ussay dard ho Raha tha aur Maza BHI aa Raha tha main issue key vagina mai. Apna Lund andar bahar Kar Raha tha phir USS ko Zyada Maza aanay laga aur sex Kay doraan keh rahi thi aur andar daalo aah aah Maza aa Raha hai phir mainay ussay Ulta Kiya aur peechay say USS ki choot par dono hathon say oil lagaya aur pechay say apna Lund ghisanay laga aur thori dair main Woh bhi faarig ho gayi aur main bhi farig ho Gaya phir Woh baathroom main chali gayi aur nahaa Kay wapas phupho ke pass jakar Beth gayi Lekin jab shaam ko jaanay lagi toh mujhe apna number deti gayi aur phir USS Kay baad hum buhat Baar milay aur sex Kiya Kabhi chatt par Kabhi bathroom main Kabhi Kahan Kabhi Kahan . Agar aap ki Meri story Pasand aayi toh mujhe zaroor comments main batayen
  5. یارو! کل میری بڑی بے عزتی ہوئی ہے۔ دل تو کر رہا ہے ”کمپیوٹر“ کو اچھی بھلی گالیاں نکالوں کیونکہ اس نے کل وہ کیا جس کی کبھی مجھے امید نہیں تھی۔ خیر کمپیوٹر بھی اپنا یار ہے اس لئے اس کی گستاخی پر درگزر کرتے ہیں۔ ویسے بھی بات چیت کے آخر پر اس نے یاروں کا یار بنتے ہوئے بڑے پیار سے بات کی۔ ہوا یوں کہ کل میں کمپیوٹر کو یہ پوچھ بیٹھا کہ ”یارا! یہ یونیکوڈ اردو کیا ہوتی ہے؟“ کمپیوٹر سر نیچے کیے ہوئے کاغذات کی دیکھ بھال کرنے میں خوب مگن تھا، اس لئے کمپیوٹر نے میرے سوال پر ذرا بھی توجہ نہ دی۔ جب میں نے دوبارہ بڑے پیار سے اپنا سوال دہرایا تو، ناک پر رکھی ہوئی عینک کے اوپر سے آنکھیں تھوڑی زیادہ کھول کر کمپیوٹر میری طرف دیکھتے ہوئے کہنے لگا کہ ”اردو صرف اردو ہے اس لئے کسی یونیکوڈ اردو کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا“۔ مجھے سمجھ نہ آئی تو میں نے مزید سوال کیا کہ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ ”کمپیوٹر کی ایک یونیکوڈ اردو اور دوسری تصویری اردو ہوتی ہے“۔ بس میرا یہی کہنا تھا کہ کمپیوٹر کا دماغ گھوم گیا۔ غصے میں عینک اتار کر زور سے میز پر مارتے ہوا بولا ”تم پتہ نہیں کہاں کہاں سے الٹی سیدھی باتیں سن آتے ہو اور آ کر میرا دماغ کھانے لگ پڑتے ہو۔ جب میں نے کہا کہ اردو صرف اردو ہے، تو پھر مزید کسی سوال کی گنجائش باقی نہیں رہتی“۔ اس دوران مجھے صاف پتہ چل رہا تھا کہ کمپیوٹر کو بہت غصہ آیا ہوا ہے۔ کمپیوٹر کے تاثرات سے لگ رہا تھا کہ اسے اپنے اوپر کوئی تہمت لگتی ہوئی محسوس ہو رہی ہے۔ ابھی میں اندازے ہی لگا رہا تھا کہ کمپیوٹر خود بول پڑا ”یار سمراٹ! یہ کچھ اردو والوں نے مجھ پر ”تہمت“ لگا رکھی ہے کہ میری دو قسم کی اردو ہے جبکہ ایسا نہیں۔ جب میں دیگر زبانوں کی ایک ہی قسم رکھتا ہوں تو پھر مجھے اردو کی دو قسمیں رکھنے کی کیا ضرورت ہے؟ بلکہ لوگوں نے ہی میری اردو کے ساتھ ساتھ ایک تصویری اردو لا کھڑی کی ہے۔ ایک تو مجھ سے میری اردومیں بات نہیں کرتے اور اوپر سے مجھ پر دو قسم کی اردو رکھنے کی تہمت لگاتے ہیں۔ اب میں فضل الحق سری پائے اور کوزی حلیم والوں کی طرح جگہ جگہ اصلی اردو اور نقالوں سے ہوشیار رہنے کے بورڈ لگانے سے تو رہا۔ کچھ تم لوگ ہی اپنی کھوپڑی سے کام لے لو۔“ بات کرتے ہوئے کمپیوٹر کے لہجے میں تھوڑی نرمی آئی ہوئی تھی لیکن ساتھ ہی چیخ کر بولا ”تم لوگ ہو ہی ناشکرے۔ میں نے اپنے اندر ایک نظام یونیکوڈ بنایا تاکہ جہاں میں دیگر زبانوں کے لئے اچھے طریقے سے کام آتا ہوں وہاں پر اردو کے لئے بھی بہتر کام آ سکوں۔ میں نے اس جدت کی خاطر کئی پاپڑ بیلے، کئی سالوں تک محنت کی، لیکن تم ناشکرے لوگوں نے میری اس جدت سے فائدہ اٹھانے کی بجائے میری اردو کے مقابلے میں تصویری اردو کو سوتن بنا دیا۔“ کمپیوٹر نے یہاں پر تھوڑا سا سانس لیا۔ میں سمجھا مجھے بات کرنے کا موقع مل گیا ہے، آخر میں بھی اس معاشرے کا حصہ ہوں جہاں پر صرف تنقید برائے تنقید اور پوری بات سنے، سمجھے بغیر لیکن لیکن کہا جاتا ہے، اس لئے میں نے موقع سمجھتے ہوئے سوال کرنا چاہا مگر کمپیوٹر نے مجھے سوال کرنے کا موقع ہی نہ دیا اور بول پڑا۔ ”بھائی صاحب! یہ اکیسویں صدی ہے، 2011ء ختم ہو چکا ہے اور 2012ء چل رہا ہے، لیکن تم اردو والے آج بھی 1999ء کی سوچ رکھے ہوئے ہو۔ دنیا نے پچھلے دس گیارہ سالوں میں ٹیکنالوجی کے میدان میں بہت ترقی کی ہے۔ خدا کے لئے تم بھی کوئی ہوش کے ناخن لو۔“ اب کی بار کمپیوٹر تھوڑا چپ ہوا لیکن اس کا غصہ عروج پر تھا۔ میں نے کمپیوٹر کا غصہ کم کرنے اور اس کی مدد کرنے کے لئے کہا ”یار مجھے ٹھیک ٹھیک اور تفصیلی معلومات دے۔ میں چاہے ایک گیا گزرا بلاگر ہی سہی لیکن اگر تو مجھے ٹھیک معلومات دے گا تو میں اس معلومات کو لوگوں تک پہنچاؤں گا اور پھر ہو سکتا ہے لوگوں کو کچھ خیال آ جائے۔“ میرا اتنا کہنا تھا کہ کمپیوٹر نے بڑی نرمی سے کہا ”بتا تو دیا ہے لیکن پھر بھی تیرا کوئی سوال ہے تو پوچھ“۔ میں نے کہا ”یار! ٹھیک ہے مجھے سمجھ آ گئی ہے کہ تیری اردو ایک ہی ہے، لیکن انگریزی صرف انگریزی ہے اور دیگر زبانیں بھی بالکل ایسے ہی ہیں لیکن یہ اردو کے ساتھ ہی ”یونیکوڈ“ کیوں لگا ہے؟“ کمپیوٹر بولا ”بات صرف اتنی سمجھنے والی ہے کہ میرا پہلے کوئی اور نظام تھا جس میں اردو لکھنے کی گنجائش نہیں تھی۔ تب تم لوگ تصویروں کی صورت میں اردو لکھتے تھے۔ ایسی تصویری اردو نہ کل میری تھی اور نہ آج میری ہے۔ ایسی تصویری حالت میں اردو کو میں نہیں سمجھ سکتا بلکہ میں تو اسے اردو سمجھتا ہی نہیں۔ میرے لئے جیسے دیگر تصاویر ہوتی ہیں بالکل ایسے ہی یہ بھی تصاویر ہی ہیں اور ان تصاویر میں لکھی ہوئی اردو سے تم لوگ عارضی فائدہ تو اٹھا سکتے ہو لیکن اگر مجھ سے کہو کہ میں ایسی تصویری حالت میں موجود اردو کی سائبر لائیبریریوں سے مواد تلاش کر کے دوں تو یہ میرے لئے فی الحال ممکن نہیں۔ جب پرانا وقت تھا تب تو تصویری حالت میں اردو رکھنا تمہاری مجبوری تھی اور مجھے بھی بہت شرمندگی ہوتی تھی کہ میں باقی کئی زبانوں کے لئے تلاش اور دیگر کئی کاموں میں مدد دیتا ہوں لیکن اردو کے لئے سوائے ڈیسکٹاپ پبلشنگ کے اور کسی کام نہیں آ رہا تو پھر مجھے خیال آیا کہ ایسا کوئی نظام ہو جس سے میں زیادہ سے زیادہ زبانوں کو سمجھ سکوں اور انسانوں کو فائدہ پہنچاؤ۔ یوں میں نے ایک نظام بنایا جس کو یونیکوڈ کا نام دیا۔ میں نے اس یونیکوڈ نظام میں اردو کو بھی جگہ دی۔ اب میری زیادہ تر زبانیں اسی نظام میں موجود ہیں۔ میں صرف اسے زبان مانتا ہوں جو میرے زبانوں کے نظاموں کے تحت لکھی جاتی ہیں۔“ ابھی اتنی گفتگو ہوئی تھی کہ بجلی چلی گئی اور بات چیت کا سلسلہ رک گیا۔ میں باہر صحن میں چلا گیا۔ دھوپ میں بیٹھ کر مالٹے کھائے۔ مالٹے کھانا مجبوری تھی کیونکہ ایک بہت پیارے دوست نے سرگودھا سے کافی سارے مالٹے بھیج دیئے ہیں۔ مالٹے کھانے کے ساتھ میں سوچتا رہا کہ آخر کمپیوٹر آج اتنے عجیب و غریب لہجے میں بات چیت کیوں کر رہا تھا۔ خیر پانچ گھنٹے بعد شام کے وقت بجلی نے دیدار کروایا اور میں بھاگتا ہوا کمپیوٹر کے پاس پہنچا تاکہ گفتگو کا سلسلہ دوبارہ شروع کیا جائے اور یوں کمپیوٹر سے دوبارہ بات چیت شروع ہوئی۔ کمپیوٹر سے سلام دعا کے بعد میں نے کہا”تم نے مجھے اتنی لمبی چوڑی تقریر سنا دی ہے لیکن میرا سوال تو وہیں کا وہیں ہے کہ آخر اردو کے ساتھ یونیکوڈ کیوں بولا جاتا ہے؟“ سوال کرنے کی دیر تھی کہ کمپیوٹر بڑے طنزیہ انداز میں بولا ”میں نے تو تم لوگوں کو کب کہا کہ میری اردو کے ساتھ یونیکوڈ لفظ کا اضافہ کرو؟ ٹھیک ہے یونیکوڈ میرے ایک نظام، ایک ٹیکنالوجی کا نام ہے لیکن اس کا مطلب یہ تو نہیں کہ تم اس نظام کے نام کو زبان کے نام کے ساتھ ملا دو۔ بھائی صاحب! میں تو اردو کی طرح کئی دیگر زبانیں بھی یونیکوڈ نظام کے تحت ہی سمجھتا ہوں لیکن کبھی تم نے ان زبانوں کے ساتھ یونیکوڈ کا لفظ لگا دیکھا یا سنا؟ اصل میں تم لوگ پہلے تصویروں کی صورت میں اردو لکھتے تھے۔ جس کا مجھے کچھ پتہ نہیں ہوتا تھا۔ میں ان اردو لکھی تصویروں کو تصویریں سمجھ کر ادھر سے ادھر کرتا اور پرنٹر کو بھیجتا تھا لیکن جب میں نے اردو کو سمجھنا شروع کیا اور جس نظام کے تحت سمجھا تم لوگوں نے اردو کے ساتھ اس نظام کا نام لگا دیا۔ ٹھیک ہے ڈویلپر اور دیگر ماہرین تکنیکی لحاظ سے بات چیت کرتے ہوئے میرے نظام کو زیر بحث لائیں اور بات سمجھنے کے لئے یونیکوڈ اردو کہہ لیں، لیکن لوگوں کو بتا دو کہ میری اردو صرف ”اردو“ ہے کوئی ”یونیکوڈ اردو“ نہیں، اس لئے جب تم لوگ میرے حوالے سے اردو کا ذکر کرو تو زیادہ سے زیادہ یہ کہہ سکتے ہو کہ کمپیوٹر کی اردو۔“ آخر کار میں نے کمپیوٹر سے کہا ”چھوڑ ساری باتوں کو مجھے صرف دو ٹوک بتا کہ اردو کے معاملے میں آخر تو چاہتا کیا ہے؟“ کمپیوٹر نے نہایت ہی نرمی سے کہا ”دیکھو بھائی سمراٹ! پہلی بات تو یہ کہ میری صرف ایک ہی اردو ہے جس کو میں یونیکوڈ نظام کے تحت سمجھتا ہوں۔ دوسری بات اگر چاہتے ہو کہ میں انٹرنیٹ اور ہر جگہ پر اردو کے حوالے سے تم لوگوں کی مدد کر سکوں تو پھر مجھ سے میری اردو میں ہی بات کرو۔ ٹھیک ہے ابھی میں اردو کو بہتر سے بہتر انداز میں دکھانے اور دیگر کئی کاموں کے لئے نظام تیار کر رہا ہوں اور وقت کے ساتھ ساتھ میں تم لوگوں کو مزید اچھے رسم الخط (فانٹ) میں اردو دکھاؤں گا اور کئی قسم کی زیب و آرائش کر کے دوں گا لیکن یہ سارے نظام میں تب ہی بناؤں گا جب تم میری اردو میں مجھ سے مخاطب ہونا پسند کرو گے۔ اگر آج بھی تم زیب و آرائش کے چکر میں تصویروں میں ہی اردو لکھتے رہے تو پھر سوچ لو میں قیامت تک تم لوگوں کو اردو کے متعلق اچھے نظام نہیں دوں گا۔ تجھے آخری اور خاص بات بتا دوں کہ یونیکوڈ نظام کے تحت لکھی جانے والی اردو کا ہی مستقبل ہے اور یہ بات اردو کے مامے چاچے سافٹ ویئروں کو بھی سمجھ آ چکی ہے جبھی تو وہ بھی خود کو اسی نظام کے تحت لے آئے ہیں۔ باقی اب اٹھو اور جاؤ میرا زیادہ دماغ نہ کھاؤ۔ مجھے اور بھی بہت سے کام کرنے ہیں۔ یہ نہ ہو بجلی دوبارہ چلی جائے اور کام وہیں کے وہیں رکے رہ جائیں۔“ خیر میں نے بھی سوچا کمپیوٹر ٹھیک ہی کہہ رہا ہے باقی کام کاج کر لینے چاہئیں۔ یوں میں کمپیوٹر سے گفتگو کرنے کے بعد اٹھ کر جانے لگا تو کمپیوٹر نے پیچھے سے آواز دی ”اس گفتگو پر تحریر ضرور لکھنا۔ زیادہ نہیں تو لوگوں کو میرا صرف اتنا پیغام دے دینا کہ کمپیوٹر نے کہا ہے کہ میری صرف ایک ہی اردو ہے جسے میں یونیکوڈ نظام کے تحت سمجھتا ہوں، باقی رنگ برنگی تصویروں کو میں اردو نہیں سمجھتا اور میرا ان تصویروں سے اردو کے حوالے سے کوئی لینا دینا نہیں بلکہ فی الحال میرے سامنے چاہے اردو لکھی تصویریں رکھو یا وینا ملک کی تصویریں رکھو، میں دونوں کو ایک ہی کھاتے میں ڈال دوں گا۔“ نوٹ (16 جنوری 2012ء) :- شاید کچھ دوستوں کو اس تحریر پر ہونے والے تبصروں سے اندازہ نہ ہو تو سوچا وضاحت کر دوں۔ دراصل انٹرنیٹ پر ایک صاحب اردو سافٹ ویئر بیچنے کی خاطر زرد مارکیٹنگ کرتے ہوئے لوگوں میں گمراہی پھیلا رہے ہیں تو سوچا تکنیکی لحاظ سے تھوڑی وضاحت کر دوں تاکہ لوگ گمراہ نہ ہوں اور حقیقت کو پہچانیں۔
×
×
  • Create New...