Jump to content
URDU FUN CLUB
Sign in to follow this  
shahg

جھگڑالو عورت

Recommended Posts

اب میں نے اپنی انگلی گیلی کرنے کے لیۓ ان کے منہ کے آگے جیسے ہی اپنی انگلی  کی تو وہ میری طرف دیکھ کر بولی ۔۔۔ میرا تھوک میری ہی گانڈ پے لگانا چاہتے ہو ۔۔ تو میں نے کہا جی آنٹی جی گانڈ بھی آپ کی تھوک بھی آپ کا ۔۔۔ تب انہوں نے میری پوری انگلی اپنے منہ میں لے لی اور اسے پہلے تو لن کی طرح چوسا پھر انگلی پر زبان چلائ اور پھر منہ میں انگلی  ڈالے ڈالے  بہت سا تھوک اس پر مل دیا ۔۔۔۔ اور بولی اب تم بھی تھوڑا سا تھوک لگا کر  میری گانڈ کے سوراخ کو گیلا کر لو اور میں نے اپنی زبان ان کے ہول پر رکھی اور کافی دیر تک ان کا سوراخ چاٹتا رہا بھر وہ بولی اب چاٹنا بس کر اور ۔۔۔ ڈال میری گانڈ میں اپنی انگلی ڈال دے ۔۔۔  ۔۔۔ اب میں نے انگلی پر تھوڑا اور تھوک لگایا اور ان کی موری پر رکھ کر انگلی کو ہلکہ سا دبایا۔۔۔۔۔۔  ۔۔۔۔ انگلی بنا روکاوٹ کے ان کے گیلے سوراخ میں اترتی چلی گئ ۔۔۔ ایسے لگ رہا تھا کہ جیسے میری انگلی مکھن میں جا رہی ہے ۔۔ جیسے ہی ساری انگلی ان کی گانڈ میں چلی گئ انہوں نے  ایک مست سی آہ بھرہ اور  سر میری طرف موڑ  کر بولی۔۔ ۔۔۔ کیوں میں ٹھیک نہ کہتی تھی کہ میری گانڈ  نہیں مکھن ہے ؟ اب یقین آ گیا ہے نہ ۔۔۔  میں نے کوئ جواب نہ دیا اور انگلی اندر باہر کرتا رہا اور پھر کھچ دیر بعد دو انگلیاں ان کی گانڈ میں ڈال دیں  ۔۔۔ اس کے ساتھ ہی آنٹی بھی مستی کے عالم  میں اپنی گانڈ کو  ٹوئسٹ  کرنے لگی ۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

اردو فن کلب کے پریمیم ممبرز کے لیئے ایک لاجواب تصاویری کہانی ۔۔۔۔۔ایک ہینڈسم اور خوبصورت لڑکے کی کہانی۔۔۔۔۔جو کالج کی ہر حسین لڑکی سے اپنی  ہوس  کے لیئے دوستی کرنے میں ماہر تھا  ۔۔۔۔۔کالج گرلز  چاہ کر بھی اس سےنہیں بچ پاتی تھیں۔۔۔۔۔اپنی ہوس کے بعد وہ ان لڑکیوں کی سیکس سٹوری لکھتا اور کالج میں ٖفخریہ پھیلا دیتا ۔۔۔۔کیوں ؟  ۔۔۔۔۔اسی عادت کی وجہ سے سب اس سے دور بھاگتی تھیں۔۔۔۔۔ سینکڑوں صفحات پر مشتمل ڈاکٹر فیصل خان کی اب تک لکھی گئی تمام تصاویری کہانیوں میں سب سے طویل کہانی ۔۔۔۔۔کامران اور ہیڈ مسٹریس۔۔۔اردو فن کلب کے پریمیم کلب میں شامل کر دی گئی ہے۔

کافی دیر بعد وہ اُٹھی اور سیدھے لیٹ گئ اور بولی ۔۔۔ اب میری چوت کی باری ہے اب تم اس کو چاٹو۔۔ اب میں  نے اپنی زبان ان کی چوت پر رکھی ۔۔۔اور ۔۔اوہ ۔۔۔۔ ان کی چوت کا پانی پھدی کے  باہر تک رس رہا تھا ۔۔ اور اس پانی کے ساتھ ساتھ ان کی چوت کے بالوں کی مہک سب مل کے مجھے پاگل بنا رہے تھے سو میں نے بے خودی کے عالم میں زبان ان کی گیلی چوت میں ڈال دی اور پھر مستی میں اس کی چاٹنے لگا چوسنے لگا اورساتھ ساتھ ان کی چوت کی  مہک بھی لیتا رہا۔۔۔ پھر میں نے اپنی زبان کی نوک سی بنائ اور پھر  زبان کوان کی  چوت میں داخل کر دیا ۔۔۔اور وہ اپنے  سر کو دائیں بائیں مارتے ہوۓ سسکنے لگی ۔۔۔۔  تڑپنے لگی ۔۔۔  زبان داخل ہوتے ہی میں نے محسوس کر لیا کہ ان کی چوت بڑی تپی ہوئ ہے ۔۔  تھوڑی دیر چوت چاٹنے کے بعد میں نے وہاں سے زبان نکالی اور آنٹی سے بولا ۔۔ آنٹی آپ کی چوت بڑی تپی ہوئ ہے   تو وہ جھٹ سے مستی کے عالم میں بولی تپی ہوئ نہیں ہے میری جان میری پھدی تو دوزخ ہے    پھر بولی جب تم اپنا لن اس کے اندر ڈالو گے تو میری پھدی اسے جلا دے گی ۔۔۔۔۔ وہ بہت ہی مست ہو چکی تھیں اور میرا لن بھی بہت ہی سخت اکڑ چکا تھا۔۔


 


 سو میں نے جونہی آنٹی کی ٹاننگیں اُٹھائیں تو وہ چونک بولی کیا کرنے لگے ہو؟ تو میں نے کہا آنٹی میں لن آپ کی چوت میں ڈالنے لگا ہوں تو وہ کہنے لگی ۔۔زرا ٹھہرو۔۔ !!  میری جان کہ ابھی عشق کے امتحاں اور بھی ہیں ۔۔۔۔ اور فوراً بستر   سے اُٹھ کھڑی ہوئ پھر مجھ سے کہنے لگی ۔۔ تھینک یو ڈارلنگ تم بہت اچھے اور سیکسی  ہو ۔۔۔۔ اور تم کسی بھی خاتون کو مست کر سکتے ہو پھر بولی ۔۔۔ بستر سے نیچے اُتر کر کھڑے ہو جاؤ !!!۔۔ اور و ہ خود جلدی سے پلنگ کی کونے پر بیٹھ  گئ پھر انہوں نے میرا لن اپنے ہاتھ میں پکڑ لیا اور اور اسے بڑے پیار سے سہلانے لگی اور پھر بولی ۔۔۔ بڑا جاندار لن ہے تمھارا ۔۔۔ اور پھر لن کو نیچے  کی طرف کس کرنے لگی ۔۔۔ کس کرتے کرتے جب اس کے ہونٹ میرے ٹوپے تک پہنچے۔۔ تو عین اسی وقت میرے لن سے ایک موٹا سا مزی کا قطرہ  نکلا ۔۔۔ انہوں نے ایک نظر میری طرف دیکھا اور پھر انپی زبان ٹوپے کے نیچے رکھ دی ا ور پھر وہ قطرہ اپنے منہ میں لے گئ ۔۔۔۔۔ پھر اہنوں نے میرے ٹوپے کو اپنے ہونٹوں میں دبایا اور منہ کے اندر ہی زبان سے اسے چاٹنے لگی ۔۔۔ پھر آہستہ آہستہ سارے لن کو اپنے منہ کے اندر کرنے لگییں   ۔۔۔۔۔۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

ان کے لن چوسنے سے میں مست ہو گیا خاص کر ان کا گیلا منہ ۔۔۔ مست زبان اور نرم ہونٹ۔۔۔  لن کو اور زیادہ ۔۔۔ اکڑا رہے تھے ۔۔۔۔۔ اور میں بے اختیار سسکیاں بھرنے لگا ۔۔۔ میری آوازیں سُن کر انہوں نے لن کو اپنے منہ سے نکالا اور کہنے لگی ۔ابھی کہان جان  جی ابھی تو میں نے تم کو اور بھی تڑپانا ہے ایسے ہی جیسے تم نے مجھ کو تڑپایا تھا ۔۔ پھر سر گوشی نما آواز میں بولی میں تم کو اتنا مزہ دوں گی کہ آج تک کسی بھی لڑکی نے نہیں دیا ہو گا ۔۔ اور لن کو پھر سے اپنے منہ میں ڈال لیا اور اسے مزے لے کر چوسنے لگی ۔۔۔۔۔۔ پھر کچھ دیر بعد انہوں نے اپنی زبان کی نوک بنائ اور سارے لن پر پھیرنے لگی اور میرے منہ سے س۔۔سسسس۔۔۔۔ آہ۔ ہ۔ ہ۔ اُف ف ففف جیسی آوازیں نکلنا شروع ہو گیئں جسے سُن کر وہ مزید جوش میں آ گیئں ۔۔۔۔ کیا بتاؤن دوستو ۔۔۔ کہ پتلی سی لمبی سی رس بھر زبان کی نوک سے لنڈ کو چاٹنے کا کتنا مزہ آتا ہے ۔۔۔


 


ان کے اس طرح لن چوسنے/چاٹنے سے میرا لن اور بھی تن گیا اور میں فُل جوش میں آ گیا اور لن ان  کی گیلی چوت میں جانے کو بے تاب ہو گیا ۔۔۔ اور اس سے پہلے کہ میں ان سے کچھ کہتا وہ خود ہی  کہنے لگی ۔۔۔ بڑے بے چین نظر آ رہے ہو۔۔۔۔ ابھی تو میں نے  بس تھوڑا سا ہی لن چوسا ہے۔۔ تمہارے بالز اور سارا بدن ابھی باقی ہے ۔۔۔۔ پھر بولی کیا یاد کرو گے کہ کس سیکسی عورت سے پالا پڑا تھا ۔۔۔ یہ کہا اور میرے بالز اپنے منہ میں لے لیۓ اور ان پر زبان پھیرنے لگی ۔۔۔۔۔ کافی دیر تک وہ میرے بالز چاٹتی اور لن چوستی رہی ۔۔۔۔ اوراس کے ساتھ ساتھ سارے بدن پر ہاتھ بھی پھیرتی رہی ۔۔ اور میں ۔۔۔ ظاہر ہے ان کے ایک ایک ایکشن کا مزہ لے رہا تھا ۔۔۔۔۔ اور اب میرا جی چاہ رہا تھا کہ میں جلدی سے اپنا لن ان کی چوت میں دال ڈوں ۔۔۔ پر وہ ابھی چوت مروانے کے مُوڈ میں نہیں نظر آرہی تھی ۔۔۔۔  پھر میں نے ان کی چھاتیوں کو پکڑ لیا اور ان کے موٹے موٹے نپلز کو اپنی دونوں انگلیوں میں لے کر مسلنے لگا۔۔۔ اور جب بھی میں ان کے نپلز زور سے دباتا وہ ۔۔۔ ایک مست آواز میں کراہتی اور تیزی سے لن کو منہ میں ان آؤٹ کرنے لگتی تھی ۔۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

پھر میں نے   تھوڑے اور زور سے ان کے نپلز دبانہ شروع کر دیۓ ۔۔۔۔ اور وہ مزہ سے ہانپنے لگی میرا خیال تھا کہ اب ان کی بھی چوت لن مانگنے لگی تھی ۔۔۔۔ اور میرا اندازہ ٹھیک ہی نکلا ۔۔۔ اور جب  میں ان کا ایک نپل زرا زور سے موروڑا ۔۔۔۔ تو ان کی بس ہو گئ ۔۔۔ اب انہوں نے لن منہ سے نکالا اور پلنگ پرجا کر لیٹ گئ اور اپنی ٹانگیں اٹھا کر  بولی ۔۔۔ مجھے چودو مجھے چودو ۔۔۔۔  یہ سن کر میرا دل باغ باغ ہو گیا ۔۔۔۔۔۔۔ اور میں نے جمپ لگائ اور پلنگ پر آ گیا یہ دیکھتے ہی انہوں نے اپنی دونوں ٹانگیں اوپر اُٹھا لیں جن کو میں فور اً ہی اپنے کاندھے پر رکھ لیا  اور لن کو ان کی چوت پر ایڈجسٹ کر لیا گو کہ ان کی چوت کافی گیلی تھی پر پھر بھی میں نے اپنے ٹوپے کو تُھوک سے تر کیا اور ۔۔۔۔ اور ٹوپا ان کی گیلی پھدی کی موری پر رکھ کر جونہی دھکا مارنے لگا تو وہ بولی ایک منٹ رکو پلیز ۔!!! اور میں نے دھکا مارنا موقوف کر دیا اور سوالیہ نٖظروں سے ان کی طرف دیکھنے لگا ۔۔۔۔ تو وہ کہنے لگی ۔۔۔ دیکھو  ۔۔ تم اپنا لن میرے اندر تو کرنے لگے ہو ۔۔۔۔ پر پلیز ۔۔۔ تھوڑا ٹائم لگانا ۔۔۔۔۔ تو میں نے پوچھا وہ کیوں  آنٹی جی تو وہ بولی ۔۔۔۔   بڑے دنوں بعد کوئ لن میری چوت میں جا رہا ہے  پلیز فوراً ہی نا چھوٹ جانا ۔۔۔۔۔ ان کی بات سُن کر میں تھوڑا سا مسکُرایا اور بولا ۔۔۔۔۔ کہ آنٹی  آپ اس بات کی   آپ چنتا   نہ کریں ۔۔۔ میں آپ کو چودائ کا پورا مزہ دوں گا اور تب تک آپ نہ کہیں گی میں نہیں چھوٹوں گا ۔۔۔ آپ زرا لن کو اندر تو جانے دیں پھر اس کا کمال دیکھنا  ۔۔۔


 


پھر میں نے ان کی دونوں ٹانگوں کو اپنے کندھوں پر رکھ کر اتنا مولڈ کیا کہ جس سے ان کی چھاتیوں سے جا لگیں ۔۔۔ تھوڑا سا اور مولڈ کیا تو ٹانگیں ان کے کندھوں سے لگنے لگیں ۔۔۔ ایسا کرنے سے ان کی پھدی بڑی نمایاں ہو کر سامنے آگئ ۔۔۔۔ اور پھر میں نے ٹوپا ان کی چوت پر رکھا اور تھوڑا سا دباؤ ڈالا تو لن ان کی سلپری پھدی میں پھسلتا ہوا ۔۔ چوت کے آخری کونے  تک چلا گیا ۔۔۔۔ اور  وہ ہلکہ ہلکہ   کراہنے لگی ۔۔۔ پہلے تو میں نے بڑے آرام سے لن ان کی چوت میں اندر باہر کیا پھر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ر۔رر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ میں نے اپنی بوری طاقت سے اُوپر تلے کافی زیادہ دھکے مارے وہ اس بات کے لیئۓ مینٹلی ریڈی نہ تھیں ۔۔۔ سو اس اُفتاد پر وہ تڑپنے لگی اور لمبی لمبی سسکیاں بھرنے لگیں ۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

پر میں نے دھکے مارنے جاری رکھے اور وہ ۔۔۔اوئ ۔ی۔ی۔ی۔۔۔ ز۔ز۔ز۔ز۔زز۔۔ کرتے ہوے سر کو دائیں بائیں مارنے لگیں ۔۔۔ پھر میں نے دھکوں کی رفتار مزید بڑھا دی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اچانک وہ تڑپ کر اُٹھی اور مجھ سے لپٹ گئیں ۔۔۔ اور مجھے بے تحاشہ چومنے لگی اور بولی ۔۔۔۔۔ ہاں ایسے ۔۔۔ ہی ۔۔   ایسے ہی ۔۔۔ چودو گے نا میری جان تو مزہ آۓ گا اور اس رنڈی کی چوت ٹھنڈی ہوگی ۔۔۔ شاباش ۔۔۔ میری جان ۔۔ شاباش ۔۔ اور زور سے دھکے مارو ۔۔۔۔۔ تو میری پھدی کو ٹھنڈ پڑے گی ۔۔۔۔ یہ کہہ کر وہ دوبارہ لیٹ گئ اور اپنی ٹانگیں اور خود ہی اپنی ٹانگیں اپنے کندھوں کے پاس لے گئ  اور مٰن نے جلدی سے تانگوں کا سارا وزن اپنے کندھوں پر منتقل کیا اور لن ان کی گیی چوت میں ڈال کر  دوبارہ  زور و شور سے دھکے مارنے لگا  ۔۔۔ میرے ہر دھکے پر وہ پہلے سے زیادہ  اونچی آواز میں   سسکیاں لینے لگتی ۔۔۔


 


پاور فُل دھکوں سے جلد ہی ان کی چوت پچ پچ کرنے لگی اور ان کی چوت کا گرم پانی میرے لن کو اور بھی مست کرنے لگا ،۔۔۔ کچھ دیر بعد وہ ایک بار پھر اُٹھی اور بولی ۔۔۔ تمھارے دھکوں نے تو میری جان ہی نکال دی ہے ۔۔۔۔اور میری کمر میں درد ہونے لگا ہے ۔۔ اب ایسا کرو کہ مجھے گھوڑی بنا کر چودو ۔۔۔۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

انہوں نے یہ کہا اور میرے سامنے چوپاۓ کی طرح ہو گئ یعنی گھوڑی بن گئ ۔۔۔ اب میرے سامنے ان کی پیاری گانڈ اور بالوں ولسی پھدی تھی  میں نے ان کی ان کی خوب صورت گانڈ پر چومی دی اور ان کی ٹانگیں تھوڑی مزید کھولیں ۔۔ اب میں نے اپنا موٹا لن ان کی پھدی کے اینڈ پر رکھا اور دھیرے دھیرے اندر باہر کرنے لگا ۔۔۔۔۔ جیسے ہی لن ان کے اندر ہوا وہ سی سی سی ۔۔۔ کرنے لگی  ۔۔ اور بولی ۔۔۔ پہلے کی طرح تھو ڑا فاسٹ مارو ۔۔۔ اور میں نے ان کی یہ بات سُن کر اپنے دونوں ہاتھ ان کی گانڈ پر رکھے اور زور زور سے دھکے مارنے شروع کر دیۓ ۔۔۔ میرے یر دھکے پر وہ کہتی شاباش ۔۔۔ اور تیز۔۔۔اور فاسٹ ۔۔۔ اور میں مزید تیز اور مزید فاسٹ دھکے مارتا  ۔۔اور پھر انہی دھکوں کے پیچ میں نے محسوس کر لیا کہ آنٹی جی اب گئ ۔۔۔ کہ  اب گئ ۔۔۔۔۔ اب ان کی سسکیوں کی رفتار بھ پہلے سے زیادہ تیز ہو گئ تھی اور اب تو وہ خود اپنی گانڈ تیزی سے میرے لن پر مارنے لگی تھیں اور پھر ان کی پھدی نے تیزی کے ساتھ میرے لن کو جکڑ لیا اور ادھر میں بھی لن میں  کھچہ کھچہ محسوس کر رہا تھا پر اس سے پہلے کہ میرا لن اپنے حصے کا پانی ان کی چوت میں چھوڑتا  ۔۔۔ ان کی چوت نے ڈھیر سارا پانی چھوڑ دیا اور وہ جھٹکے لے لے کر فارغ ہو ریئ تھیں ۔۔۔۔۔۔۔ پھر آہستہ آہستہ ان کے جھٹکوں کی رفتار کم ہوتئ ۔۔۔۔ گئ اور پھر کچھ دیر بعد وہ شانت ہوئیں تو میں نے کہا کہ آنٹی میں بھی ڈسچارج ہونے والا ہوا ۔۔۔ وہ تیزی سے بولی ،۔۔۔ نہیں ۔۔میری پھدی  میں ۔۔۔۔۔۔۔ تو میں نے کہا پھر کہاں چھوٹوں    آنٹی جی ۔۔۔ تو وہ بولی ۔۔۔۔ میرے منہ میں پانی چھوڑنا پلیز ۔۔۔۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

اس کے ساتھ ہی انہوں نے اپنا ہاتھ پیچھے کر کر لن کو اپنی پھدی سے باہر نکالا اور پلنگ پر گھوٹنوں کے بل پیٹھ گئ اور  اور مجھے کھڑا ہونے کو کہا اب انہوں نے اپنا منہ پوری   پوری طرح کُھولا  ہوا تھا  اور ان کی    پوری زبان باہر نکالی ہوئ تھی اور اس  ریڈیش زبان پر میرا موٹا سا  لن رکھا ہوا  تھا اور میرا لن   اس کی پھدی  کی  آف وائیٹ منی سے لتھڑا ہوا تھا   ۔۔۔۔  پتلی سی تہہ تھی جو سارے لن پر لگی ہوئ تھی ۔۔۔ اور بلب لی روشنی میں میرا لن بڑا چمک رہا تھا  ۔۔ لن زبان پر پڑا ہونے کی  وجہ سے وہ منہ سے تو  کچھ نہ بول  سکتی تھی ۔۔ اس لیۓ وہ میری آنکھوں میں آنکھیں ڈال کے اپنے دونوں ہاتھوں کے  اشارہ سے بار  بار   یہ ہی  کہہ رہی تھی  ۔۔۔۔  آنے دو ۔۔آنے دو۔۔۔۔۔۔۔۔ چُھوٹو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چھوٹو ۔۔۔  وہ میری منی کے لیۓ بڑی بے قرار نظر آ رہی تھی ۔۔۔۔۔ اب اس نے اپنے ایک ہاتھ میں میرا لن پکڑ لیا تھا اور اس کو بڑی ہی بے تابی سے آگے پیچھے کر رہی تھی ۔۔۔۔۔۔


 


اچانک میرے بدن نے ایک زور دار جھٹا لگایا اور میرے لن نے منی فوارے کی طرح نکل کر ان کے منہ مین چلی گئ انہوں نے فوراً ہی اپنی زبان کو اپنے منہ میں واپس کھینچ لیا اور لن کو اپنے منہ میں پوری طرح ڈھانپ لیا اور اب لن نے ان کے منہ میں ہی ساری منی گرانا شروع کر دی ۔۔اور مست آنٹی نے میری منی کا ایک بھی قطرہ باہر نہ گرنے دیا اور ساری منی پی گئ کھچہ دیر بعد جب انہوں نے محسوس کیا کہ میرا لن منی سے پوری طرح خالی ہو گیا ہےتو انہوں نے میرے لن کو اپنے منہ سے باہر نکالا اور ایک دفعہ پھر سارے لن کو اپنی زبان باہر نکال کر چاٹنا شروع کر دیا کہ مبادا منی کا کوئ ڈراپ لن کے ساتھ نہ لگا رہ گیا ہو ۔۔ جب انہوں نے سارا لن چاٹ کر صاف کر لیا تو مجھ سے مخاطب ہو کر کہنے لگی سُنو۔!!!! تمھاری طرح تمھاری منی بھی بڑی  My  face book id is facebook.com/meek.....ہے یہ کہا اور پھر میرے لن کو چُومتی گئ چُومتی گئ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چُومتی گئ ئ ئ


۔۔۔۔۔۔۔


Share this post


Link to post
Share on other sites

Dear shah g buhat hi achi kahani likhi ha aap ne bas ek request ha ap se k aap her story k lie ek alag platform rakhain her kahani ko her jaga post mat karain is se ap ki dilchaspi ka saman bhi ho ga or members ki bhi .Umeed kerta hon k aap meri baat ka sahee maqsad samajh gay hon gy.

Share this post


Link to post
Share on other sites

is story main ٭٭٭٭٭ ka babarkat alfaz lakhe hain kindly administrator se guzarish he ke wo delete kar dain

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

 جھگڑالو عورت

 

 

 

آنٹی  کا منہ پوری طرح سے  کُھلا  ہوا تھا  اور اُنہوں  نے اپنے منہ  سے اپنی  ساری  زبان سے  باہر نکالی ہوئ تھی اور اس لمبی   ریڈیش زبان پر میرا موٹا سا  لن رکھا ہوا  تھا اور یہ لن   ان  کی پھدی  کی  آف وائیٹ منی سے لتھڑا ہوا تھا   ۔۔۔۔  اور منی کی ایک  پتلی سی تہہ تھی جو  لن کے چاروں طرٖف   لگی ہوئ تھی ۔۔۔ اور بلب کی روشنی میں وہ لن منی  لگی ہونے کی وجہ سے  بڑا چمک رہا تھا  ۔۔ لن آنٹی کی  زبان پر پڑا ہونے کی  وجہ سے وہ منہ سے تو  کچھ نہ بول  سکتی تھیں ۔۔ اس لیۓ وہ میری آنکھوں میں آنکھیں ڈال کے اپنے دونوں ہاتھوں کے  اشارہ سے بار  بار   یہ ہی  کہہ رہی تھی  ۔۔۔۔  آنے دو ۔۔آنے دو۔۔۔۔۔۔۔۔ چُھوٹو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چُھوٹو۔۔۔۔۔۔۔ وہ میری منی کے لیۓ بڑی بے قرار نظر آ رہی تھی ۔۔۔۔۔ اب  انہوں  نے اپنے ایک ہاتھ میں میرا لن پکڑ لیا تھا اور اس کو بڑی  بے تابی سے آگے پیچھے کر رہی تھیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔  اور   دوستو  یہ تھی ہمارے محلے کی ثوبیہ آنٹی ۔۔۔ جس کو لوگ  ماسی جھگڑا یا جھگڑالو  ماسی  بھی کہتے تھے ۔۔۔۔۔۔۔ کیونکہ جب سے وہ ہمارے محلے میں آئ  تھی۔۔۔۔ تقریباً سب سے ہی لڑ چکی تھی  اور تقریباً سارا ہی  محلہ ان سے ناک تک آیا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ اور ہمارے لیۓ  ستم بلاۓ ستم  یہ تھا کہ ان کا گھر عین  ہمارے  گراؤنڈ کے سامنے تھا اور کرکٹ کھیلتے ہوۓ اگر کوئ  بال ان کے گھر چلی جاتی تھی  تو ۔۔۔۔ وہ نہ صرف  یہ کہ بال   واپس  نہ کرتی تھی  بلکہ الٹا  ہزار ہزار باتیں بھی مفت میں  سناتی تھی ۔۔۔۔۔ اسی لیۓ محلے والوں کے ساتھ ساتھ یہ خاتون ہمیں بھی زہر لگتی تھی کہ اس نے اب تک  ہماری ایک بھی بال واپس نہ کی تھی ۔۔۔۔۔

 

 

ہیلو دوستو ۔۔۔۔ کیسے ہو آپ ۔۔۔  میں ہوں آپ کا شاہ ۔۔۔۔ آگے آپ جانتے ہی ہیں ۔۔۔ تو چلیں کہانی کر طرف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ یہ  تب کی بات ہے جب ہم ڈھوک کھبہ راولپنڈی میں رہتے تھے ۔۔ ہمارے گھر سے تھوڑے ہی فاصلے پر ایک خالی پلاٹ تھا جہاں پر ہم ہر   شام  کرکٹ کھیلتے  تھے ۔۔۔۔ اور بد پومتی سے ۔۔۔ اس خالی پلاٹ کے عین  سامنے  ثوبیہ آنٹی کا گھر تھا ۔۔ وہ لوگ  کچھ ہی دن پہلے یہاں شفٹ ہوۓ تھے گھر میں اب تک ہم نے  صرف  دو میاں بیوی ہی دیکھے تھے ۔۔۔ میاں جی تو صبح صبح کام کو چلے جاتے تھے اور کہیں رات گۓ ہی واپس آتے تھے ۔۔۔ پیچھے گھر میں یہ خاتون اکیلی رہ جاتی تھی اور جس کا مشغلہ شاید لڑائ تھا ۔۔ ان کے باقی فیملی ممبر کہاں  رہتے تھے ۔۔؟  فیملی میں اور لوگ تھے بھی کہ نہیں۔۔۔ ؟ کسی کو کچھ علم نہ تھا کہ نہ تو وہ کسی کے گھر جانا پسند کرتی تھی نا ہی ان کے ڈر سے کوئ ان کے گھر جاتا تھا   ۔۔۔  بیٹنگ کرتے ہوۓ اگر زرا بھی زور سے شارٹ لگتی  تو بال سیدھا آنٹی کے گھر جا گرتا  تھا ۔۔۔ جو وہ نہ صرف  واپس نہ کرتی   ۔۔بلکہ  اُلٹا باہر نکل کر ہمیں خوب  صلواتیں سناتیں تھیں ۔۔ہم لوگ بہتیری کوشش کرتے تھے مگر اس کے باوجود ۔۔۔ ہردوسری  شام ہمارا ایک آدھ بال  ان کے گھرضرور  جا گرتا تھا۔۔۔ جو ظاہر ہے کھبی واپس نہ ملتا تھا ۔۔ اس طرح   ہم   نۓ بال خرید خرید کر عاجز آ چکے تھے ۔۔۔ آخرتنگ آ کر  ہم لوگوں نے یہ فیصلہ کیا کہ جس کی بھی  ہٹ سے بال آنٹی کے گھر جائ گی وہ ہی نیا بال خریدے گا ۔۔۔۔ اس فیصلے کے بعد ہم  لوگ کافی محطاط ہو گۓ تھے ۔۔۔۔۔  پر کھبی کھبی ۔۔۔۔ بندہ جوش میں  آ کر ہٹ لگا ہی دیتا ہے خاص کر جب لوز بال ملے  تو۔۔۔۔۔۔۔!!!!

 

 

 

Shah Je Please Apna yeh page check karo. Thanks

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...