Jump to content
URDU FUN CLUB
  • Sign Up
Administrator

آہنی گرفت از ڈاکٹر فیصل خان ۔۔۔ تعارفی ایڈیشن

Recommended Posts

آہنی گرفت ۔۔۔اردو فن کلب کا ایک نایاب سلسلہ وار ناول ہے۔جو کسی تعارف کا محتاج نہیں۔ مارچ 2017 سے جاری یہ سلسلہ آج بھی   ڈاکٹر فیصل کے قلم  سے  پیڈ سیکشن  میں رواں دواں ہے۔ اس کے اب تک 3000 سے زائد صفحات پوسٹ ہو چکے ہیں۔ فری ممبرز کو چونکہ اس سلسلہ تک رسائی حاصل نہیں ۔ اسی لیئے اس کے کچھ صفحات بطور تعارف یہاں پوسٹ کیئے جا رہے ہیں۔مکمل ناول کے لیئے پیڈ سیکشن میں تشریف لائیں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

تمام ممبرز فورم پر موجود ایڈز پر ضرور کلک کریں تاکہ فورم کو گوگل کی طرف سے کچھ اررننگ حاصل ہو سکے۔ آپ کا ایک کلک روزانہ فورم کے لیئے کافی ہے

آہنی گرفت پہلا حصہ

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Share this post


Link to post
Share on other sites

پہلا حصہ پوسٹ نمبر ۲

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

پہلا حصہ پوسٹ نمبر ۳

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Share this post


Link to post
Share on other sites

bohat he dhamakay daar entry ha

lajwab up-date

bohat he zabardast plot aur message

un logon k leya jo exercise nai kartay

baqi lag raha ha k sex scenes b kafi hon gay is main

lekan action!!!!!!!!!! wo to ho ga he lajwab

Share this post


Link to post
Share on other sites

sub log Dr. sb kay sex scenes aur action scenes kay fan hain 

jin main main b shamil hon

lekan

jo jazbati (emotional) feeling likhtay hain in ki koi keemat he nai ha

reader ko rulanay tak emotional kar detay hain

aur parhnay wala feel karta ha k ye character wo khud ha

salute to you sir

Share this post


Link to post
Share on other sites

آؤ ماہی گاڈ یہ میں نے کیا پڑھا ہے؟؟؟

ڈاکٹر صاحب آپ ایموشنل بھی لکھ لیتے ہیں۔کمال ہے۔ مجھے تو کہانی کے ہیرو سے ہمدردی ہو رہی ہے۔

بےچارا اچھا تو ہے پھر بھی بھائی بہن اور پیرنٹس کیوں نا انصافی کرتے ہیں؟؟؟

مجھے اگلی قسط کا انتظار ہے؟؟؟؟

:58b69bfb73d4e_0(4):

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

 

ایسا پہلی بار ہوا تھا ۔کہ ہم نئے سال کے موقعہ پر وی آئی پی ممبرز کے لیئے نئی کہانی شائع نہیں کر سکے۔ دسمبر میں  ڈاکٹر فیصل صاحب بہت زیادہ مصروف تھے۔جس وجہ سے ان کو ٹائم نہ مل سکا۔مگر ان کا یہ ارادہ مضبوط تھا۔کہ جلد ہی اس کمی کا ازالہ کیا جائے گا۔اور اس سے بڑھ کر کچھ پیش کیا جائے گا۔ اس سے پہلے اردو فن کلب کی یہ خاصیت رہی ہے۔کہ ہم ہر تہوار اور نئے سال کے موقعہ پر ایک نئی کہانی ضرور شائع کرتے رہے ہیں۔ نئے سال کے موقعہ پر کہانی کے بدلے ممبرز کے لیئے یہ کہانی شائع کی گئی ہے۔اور اس میں بہتری یہ کی گئی ہے۔کہ شارٹ سٹوری کے بدلے ممبرز کو  کافی لمبی کہانی پڑھنے کو ملے گی۔یہ وی آئی پی ممبرز کے لیئے خان صاحب اور اردو فن کلب کی طرف سے نئے سال کا تحفہ ہے۔میری طرف سے اتنی اچھی کہانی لکھنے پر ڈاکٹر فیصل خان کو مبارکباد ۔۔۔۔۔

اور دس ہزار گولڈن پوائنٹس کا تحفہ قبول ہو۔شکریہ  :58b69bfca2e7a_0(5):

Share this post


Link to post
Share on other sites

Please login or register to see this quote.

بے فکر رہیے جناب۔ ہر کہانی کو وقت ملے گا۔(اگر مجھے وقت ملتا رہا تو۔) کسی نئے سلسلے کو شروع کرنے کا مقصد یہ ہوتا ہے کہ قارئین کو یکسانیت سے بچایا جا سکے۔ ورنہ فورم کو کیا پڑی ہے کہ نئی نئی کہانیوں کا جتن کرے۔

دراصل جس طرح آپ کو پردیس اور ہوس پسند ہے،ہو سکتا ہے کسی کو کچھ اور چاہیے ہو۔ تو اس سلسلے میں ہم سب کی پسند کے مطابق ورائٹی کا اہتمام کرتے ہیں۔

ان دونوں کہانیوں کو بھی اپڈیٹ کیا جائے گا مگر بہار کی آمد کے ساتھ نئی ہوا کا جھونکا تو بنتا ہے نا۔

کیا خیال ہے جناب؟؟؟

:7:

Share this post


Link to post
Share on other sites

پہلا حصہ پوسٹ نمبر ۴

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

 

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

Please login or register to see this attachment.

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

A true and great message of love " ajkal love sirf paisay, status, aur khoobsurti ki waja se hoti ha"

its right sir, 100% balke 200% reality ha hum sub ki.

Its a great message and i think it is the base of the story

aur is kay sath he civil service ki kuch highlights

jis ka hamain kuch andaza tha lekan itna clear nai jitna is story main khul k bataya gea ha

kaisay gathering hoti ha aur kia kia purpose hotay hain

new comers ki promotions aur new links kaisay bantay hain

thanks sir. ab ye sub parh k itnay pages ki doze kam lagnay lagi ha

Share this post


Link to post
Share on other sites

Please login or register to see this quote.

شکریہ جناب۔ میں نے خود ہی کوشش کی بیوروکریسی سے بھی قارئین کا تعارف کروایا جائے۔ پردیس میں جہاں فوج اور دہشت گردی میرا موضوع تھا،وہیں ہوس میں چھوٹے طبقے کی زندگی اور کاروبار کو میں نے لکھنے کی کوشش کی تھی۔

اس کہانی میں میرا ارادہ بیوروکریسی کو ٹارگٹ کرنے کا تھا۔

جناب ایڈمن نے پرزور  اصرار کیا ہے کہ کچھ دنوں تک کہانی کو اس حد تک ضرور پوسٹ کیا جائے کہ قارئین کو گلہ شکوہ نہ رہے۔ اسی لیے میری بھی کوشش ہے کہ میں کہانی کو زیادہ سے زیادہ جلد اپڈیٹ کرتا رہوں۔ اسی لیے کوشش ہے کہ شام سے پہلے ایک ڈوز اور دی جائے۔

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

×