Jump to content
URDU FUN CLUB
Sign in to follow this  
Story Maker

پچھتاوا از سومی گیلانی

Recommended Posts

 

شہوانی جذبوں کا کوئی ٹھکانہ نہیں ہوتا ۔۔۔۔۔یہ جب عود آئیں تو عقل سلب ہوجاتی ہے اور کسی بھی رشتے میں اپنا بسیرا کرلیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔ انسان اور جانور میں عقل ہی تو فرق کرتی ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن !!!! کیا کہا جائے عقل سلیم پر جب شہوت کے بادل چھا جائیں تو عقل وہی سوچتی ہے جو شہوانی جذبات اسے سوچنے پر مجبور کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔آنکھیں وہی دیکھتی ہیں جو اسے شہوت دیکھاتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔فطرت ِحضرت ِانساں بھی کیا غضب شے ہے ۔۔۔۔۔ہر لمحہ ایسے بدلتی رہتی ہے جیسے گرگٹ اپنا رنگ ۔۔۔۔۔۔۔۔بیشتر اوقات تو گرگٹ بھی شرما جائے ۔۔۔۔۔۔چند لمحات کی قیمت ہمیں بیشتر اوقات پوری زندگی تک اداکرنا پڑتی ہے ۔۔۔۔۔۔اور باقی کی زندگی محض ایک شے کے ساتھ گزرتی ہے وہ ہے پچھتاوا !!!!!!!!!!!!!یہ کہانی بھی ایسے ہی لمحات کی ہے جب شہوت عقل پر غالب آگئی تھی ۔۔۔۔۔۔میں نے یہ کہانی عرصہ پہلے گلیمر میگزین میں لکھی تھی ۔۔۔۔۔۔یہ میری پہلی سیکس کہانی بھی تھی ۔۔۔۔۔۔اس فورم پر اسے نئے پیرائے میں ڈھال کر لکھ رہی ہوں ۔۔۔۔۔۔آپ کے ذوق پر پورا اترے تومیری خوش نصیبی ۔۔۔۔۔۔۔نہ پورا اترے تو میری کجیوں سے درگزر فرمائیے گا ۔۔۔۔۔۔۔آداب ۔۔۔۔۔۔۔
عاکف اور ماہم کاغان کی وادیوں کی بھول بھلیوں میں کھو گئے تھے ۔۔۔۔۔ان کا یہ ایڈونچر انہیں بڑی مصیبت میں ڈال گیا تھا۔۔۔۔۔۔موسم بے حد خراب تھا ۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش ۔۔۔۔۔۔
ماہم عاکف کی بھابھی بھی تھی اور ہونے والی خواہر نسبتی تھی ۔۔۔۔۔۔عاکف کے بڑے بھائی عاطف سے ماہم کی شادی کو ابھی چند ماہ ہی تو ہوئے تھے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور شادی کے دن ماہم کی چھوٹی بہن عرشیہ عاطف کے من کو بھا گئی ۔۔۔۔۔۔۔شادی کے چند روز بعد عاکف اور عریشہ کی منگنی کی رسم بھی ادا کردی گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم اگر حُسن و شباب میں سیر تھی تو عریشہ سوا سیر ۔۔۔۔۔۔۔۔دونوں کا حُسن دیکھنے والے کو سحرزدہ کردیتا تھا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم عاطف کی محبت تھی ۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے لیے عاطف محض محبت نہیں اس کی پوری کائنات تھی ۔۔۔۔۔۔۔عاطف ماہم کو پا کر گویا زمین سے آسمان کی طرف پرواز کر گیا تھا ۔۔۔۔۔۔۔یہی جذبات ماہم کے بھی تھے ۔۔۔۔۔۔۔
عاطف اپنے ڈیڈی کے وسیع بزنس کی دیکھ ریکھ میں اتنا مصروف تھا کہ اسے ماہم پر اپنی محبت لٹانے کو چند روز ہی مل سکے ۔۔۔۔۔۔۔لیکن یہ وعدہ ہوگیا کہ وقت ملتے ہی وہ ہنی مون کے لیے شمالی علاقہ جات جائیں گے ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ وقت آیا ضرور لیکن !!!!!!شومئی قسمت اسی دن عاطف کی اہم ارجنٹ بزنس میٹنگ ان کے ہنی مون کے درمیان حائل ہوگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔اسی دن عریشہ کا فائنل ایگزام تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔فیصلہ یہ ہوا کہ عاکف ماہم کو لے جائے گا اور اگلے روز عاطف عریشہ کو لے آئے گا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف اور ماہم فلائیٹ لے کر کاغان پہنچ گئے ۔۔۔۔۔۔ماہم اور عاکف کی خوب گاڑی چھنتی تھی ۔۔۔۔۔۔عاکف ماہم کا لاڈلا اکلوتا دیور اور ہونے والا بہنوئی جو تھا ۔۔۔۔۔۔۔ ہوٹیل سے کار لی اور وادی کی سیر کو چل نکلے ۔۔۔۔ ۔۔۔۔۔۔چلتے چلتے بہت دور آ پہنچے ۔۔۔۔۔۔۔۔اچانک موسم کے تیور بدلے اور طوفانی بارش شروع ہوگئی ۔۔۔۔۔۔دور دور تک کوئی پناہ گاہ نہ تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ایسے پُر خطر موسم میں پُر خطر پہاڑی وادیوں میں ڈرائیونگ خود اپنے آپ میں موت کو دعوت دینا تھا ۔۔۔۔۔۔۔
عاکی اب کیا ہوگا ہم ہوٹیل واپس کیسے پہنچیں گے ماہم کی متوحش آواز سن کر عاکف اسے تسلی دیتا ہوا بولا بھابھی گھبرانے کی بات نہیں میں ابھی ہوٹیل فون کرتا ہوں بات کرتے کرتے اس کی نگاہ سیل فون پر پڑی تو ۔۔۔۔۔۔۔سگنل ندارد ۔۔۔۔۔۔۔۔اوگاڈ ۔۔۔۔۔کیا ہوا عاکی ماہم نے اس کی نگاہوں کا تعاقب کرتے ہوئے پوچھا ۔۔۔۔۔عاکف فون کو گھور رہا تھا۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے اپنا سیل فون شولڈر بیگ سے نکال کر دیکھا ۔۔۔۔۔اوہ نو عاکی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا دل دہل گیا ۔۔۔۔۔۔۔بھابھی آپ پریشان نہ ہوں ہم کار میں محفوظ ہیں ۔۔۔۔۔عاکف کو اپنے لہجے کے کھوکھلے پن کا احساس تھا ۔۔۔۔۔۔کیونکہ ۔۔۔۔۔۔۔بارش مزید طوفانی ہوتی جارہی تھی ۔۔۔۔۔۔اور پانی کے ریلے کے سامنے کار کاغذ کی کشتی جتنی مزاحمت نہ کرپاتی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا حَسین چہرہ خوف کی شدت سے سفید پڑ گیا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف ونڈ سکرین کو گھورتا ہوا کچھ سوچنے لگا ۔۔۔۔۔۔۔اس نے کار کو بیک گیئر میں ڈالا اور طوفان سے زیادہ طوفانی اسپیڈ سے کار بھگانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔عاکی عاکی عاکی کیا کررہے ہو پلیز رک جاؤ ۔۔۔۔۔فار گاڈ سیک عاکی ۔۔۔۔۔۔ماہم چلاتی رہی لیکن عاکی کچھ نہیں سن پا رہا تھا۔۔۔۔۔۔کار کا انجن ہچکولے کھانے لگا ۔۔۔۔عاکف نے بہت کوشش کی لیکن کار کو رکنا ہی تھا رک گئی ۔۔۔۔۔۔آسمانی آفات کا مقابلہ انسانی تخلیق تھوڑی کر سکتی ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش کا کب تک مقابلہ کرپاتی ۔۔۔۔۔۔
بھابی وہ دیکھیں سامنے ایک کٹیا ہے ۔۔۔۔۔عاکف کی پُرجوش آواز نے ماہم میں گویا زندگی کی رمق پیدا کردی تھی ۔۔۔۔۔۔چند فرلانگ کا فاصلہ طے کرتے کرتے وہ دونوں بری طرح بھیگ گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔ویران کٹیا میں ایک چارپائی اور ٹپکتی ہوئی چھت ۔۔۔۔۔کسی ذی روح کا وجود تو نہ تھا ۔۔۔۔۔۔بھابھی آپ بیٹھ جائیں میں دیکھتا ہوں شاید کوئی ہو ۔۔۔۔۔۔عاکف اس ویرانے میں کون انسان آکر بسے گا ۔۔۔۔۔۔شاید یہ کسی گائیڈ نے عارضی آرام گاہ بنا رکھی ہے ۔۔۔۔۔۔ماہم کا اندازہ درست تھا ۔۔۔۔۔۔قریب شاید کوئی بستی ہو عاکف اب بھی پُرامید تھا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف طوفان کی شدت دیکھو اب کہاں بستی تلاش کرنے جائیں ۔۔۔۔۔۔ماہم اس گھڑی کو کوس رہی تھی جب اس نے عاکف کو مجبور کرکے اسی وقت کاغان کی وادیاں دیکھنے کی ضد کی تھی ۔۔۔۔۔۔۔لیکن ہونی کو کوئی ٹال پایا ہے آج تک؟؟؟؟؟؟۔۔۔۔۔رات بھی دبے پاؤں اپنا بسیرا کرنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔بجلی کی چمک روشنی کی جھلک دکھلا جاتی تھی وگرنہ رات کا مہیب سایہ تھا ۔۔۔۔۔ایک کٹیا ۔۔۔۔۔۔۔ایک چارپائی ۔۔۔۔۔۔اور دو انسان ۔۔۔۔۔۔آپ آرام کرلیں بھابی عاکف نے سیل فون کی لائٹ آن کرنے کی کوشش کی لیکن سیل فون کی بیٹری بھی آخری ہچکی لینے کو بے تاب تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔کٹیا کی چھت طوفانی بارش سے مزاحمت کی کوشش میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔لیکن کب تک ۔۔۔۔۔۔عاکی کہاں ہو تم ۔۔۔۔۔۔ماہم کی متوحش آواز مہیب اندھیرے میں گونجی ۔۔۔۔۔۔یہیں پہ ہوں بھابھی ۔۔۔۔۔۔تم بھیگ رہے ہو ۔۔۔۔۔چارپائی پر آجاؤ ۔۔۔۔۔۔اب اپنا فیصلہ مقدر پر چھوڑ دیتے ہیں ۔۔۔۔۔۔حالات سے سمجھوتا ہی آخری آپشن ہوتا ہے ۔۔۔۔۔جی بھابی عاکف ہاتھ سے ٹٹولتا ہوا چارپائی تک پہنچ گیا ۔۔۔۔۔طوفان میں کمی کے کچھ آثار دیکھائی نہ دے رہے تھے ۔۔۔۔۔عاکی تھک جاؤ گے تم بھی لیٹ جاؤ۔۔۔۔۔ماہم چارپائی پر لیٹ گئی ۔۔۔۔۔۔۔عاکف سوچ میں ڈوبا رہا ۔۔۔۔۔۔۔اس نے ایک سرد آہ بھری اور چارپائی پر لیٹ گیا ۔۔۔۔۔
مردوزن ایک چھت کے نیچے ہوں ایک بات ہے ۔۔۔۔۔ایک ہی جگہ پر ہوں دوسری بات ہے ۔۔۔۔۔ایک ساتھ ہوں تیسری بات ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن !!!!! اتنے قریب ہوں کہ بدن سے بدن لپٹ رہا ہو یہ معجزہ ہی ہوگا کہ اس عمل کا کوئی ردعمل پیدا نہ ہو۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا بھیگا پُرشباب بدن عاکف کے بدن میں کچھ ایسے جذبات پیدا کرنے لگا جس کا مقابلہ کرنا عاکف کے لیے جوئے شیر لانے سے بھی زیادہ کھٹن ثابت ہورہا تھا ۔۔۔۔۔اُدھر ماہم عاکف کے جذبات سے بے خبر عاطف کی محبت کی تپش کو یاد کرکے ان سنگین حالات میں اپنے لیے خوشی کا سامان مہیا کرنے کی جدوجہد میں مصروف تھی ۔۔۔۔۔۔
ماہم کے رعنائی بدن کی تپش نے عاکف کے بدن کو سلگا کر رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا لن تن کر سٹیل کی سلاخ کی مانند سخت ہوگیا ۔۔۔۔۔عاکف کے لیے اس کا لباس بوجھ بن گیا ۔۔۔۔۔اس نے پہلے اپنی پینٹ اتاری ۔۔۔۔اس کے بعد انڈوئیر اور آخر میں شرٹ ۔۔۔۔۔ماہم عاکف کی حالت سے بےخبر اپنے ہی خیالات میں کھوئی رہی ۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف کی شہوانی جذبات میں ڈوبی ہوئی آواز سن کر ماہم چونک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا ہوا عاکی اس نے رخِ زیبا عاطف کی طرف موڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔گھپ اندھیرا بھی ماہم کے حُسن کی چاندنی کو کم نہ کرسکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکی تمہاری طبیعت ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم بس اتنا ہی کہہ پائی تھی ۔۔۔۔۔۔عاکف نے اپنے سلگتے لب ماہم کے یاقوتی لبوں میں پیوست کردئیے ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی کھلی حسین آنکھیں استعجاب سے پتھرا گئیں ۔۔۔۔۔۔عاکف نے اس کا پھول جیسا نازک بدن اپنی آہنی گرفت میں جکڑ لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے لباس کو تار تار کرتے ہوئے اس نے ماہم کی مومی چوت میں اپنا تنا ہوا لن پُر قوت وار سے اندر گھسیڑ دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔لن ماہم کی نازک چوت کو بیدردی سے چیرتا ہوا اندر ۔۔۔۔۔۔۔۔بہت اندر تک گھس گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف حیوان بن چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ ماہم کے شادابی بدن کو بھنبھوڑنے لگا۔۔۔۔۔۔۔اس کے رعنائی پستان ۔۔۔۔۔۔۔اس کے یاقوتی لب ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کے شادابی رخسار ۔۔۔۔۔۔عاکف کی دردنگی کا نشانہ بننے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی التجائیں ۔۔۔۔۔اس کی آہ و بکا ۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش کے شور کا حصہ بنتی گئیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف نے اس کے پھول جیسے بدن کو کچل ڈالا۔۔۔۔۔۔۔۔۔جب اس کے شہوانی جذبات لن کے مادے کی صورت میں نکل کر ماہم کی گلابی چوت کو بھرچکے ۔۔۔۔۔۔۔۔تو عاکف شہوانی جہان سے پرواز کرتا ہوا حقیقت کی دنیا میں آبسا ۔۔۔۔۔۔۔۔پچھتاوے اور تاسف کے جذبے نمودار ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور شہوانی جذبوں کو پیچھے دھکیل دیا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف کی آنکھوں سے آنسو بہہ نکلے ۔۔۔۔۔۔وہ بلکتا ہوا ماہم کے پستانوں پر ڈھیر ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔چند لمحات پہلے تک یہی پستان جنہیں وہ بیدردی سے بھنبھوڑ رہاتھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اب ان میں اس کے لیے مامتا کا احساس تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی میں اپنے آپ کو کبھی معاف نہیں کرپاؤں گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں جیتے جی مرگیا بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔یہ مجھ سے کیا ظلم ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف کو اس حالت میں دیکھ کرماہم اپنا درد بھول گئی ۔۔۔۔۔۔۔چپ ہوجاؤعاکی ۔۔۔۔۔۔جوہوا اسے بھیانک خواب سمجھ کر بھول جاتے ہیں ۔۔۔۔۔۔ماہم عریشہ کی خوشیوں کے لیے یہ زہر بھی پینے کو تیار تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکی میری بات سمجھ رہے ہو نہ ۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف چارپائی پر ڈھیر ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم اس کے بالوں میں اپنی مخروطی انگلیاں گھماتے ہوئے اس بھیانک رات کے سحر سے نکلنے کی سرتوڑ کوششیں کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف رو رو کر سو چکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے بدن کا ریشہ ریشہ درد سے چُور تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے کروٹ بدلی اور نیند کے جھونکوں کی زد میں آگئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم تو سو گئی لیکن !!!!!!!! اس کے رعنائی بدن کے گذار کولہوں کے لمس نےعاکف کو نیند سے جگا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس کی آنکھوں کے ساتھ اس کی ہوس بھی جاگ اٹھی۔۔۔۔۔۔لن دوبارہ آپے سے باہر ہونے لگا ۔۔۔۔۔۔۔پچھتاوے کے جذبوں کو کچلتے ہوئے شہوانی جذبے قوت پکڑنے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے دلکش کولہوں کی نرماہٹ اور گرماہٹ نے عاکف کے بدن کو آتش کدہ بنا دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس کا لن تن کر دوبارہ اپنا مسکن تلاش کرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار اس کا مسکن ماہم کے دلنشیں کولہوں میں دبکا ہوا اس کا خوبصورت سوراخ تھا ۔۔۔۔۔۔۔عاکف نے لن ہاتھ میں تھاما اور اسے ماہم کے پچھلے سوراخ کی لذت آفرینی سے روشناس کروانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔درد کی کربناک لہروں نے ماہم کو بیدار کردیا ۔۔۔۔۔۔لیکن بہت دیر ہوچکی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف کے قوت سے پُر جھٹکے نے اس کے نازک سوراخ کو چیر ڈالا ۔۔۔۔۔۔۔۔اور نصف لن اندر گھس گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی آنسوؤں سے پُر خوبصورت آنکھوں میں ایک حسین منظر ڈبڈباتا ہوا ابھرنے لگا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اتنا مت ترساؤ جان من ۔۔۔۔۔عاطف کی آنکھیں شدید مزے سے بند ہونے لگیں ۔۔۔۔۔۔وہ بیڈ پر چت لیٹا ہوا تھا ۔۔۔۔۔۔ماہم اس کے لن کو اپنے روئی جیسے نرم ونازک کولہوں میں دبائے اس پہ بیٹھی ہوئی تھی ۔۔۔۔۔۔۔دونوں کے بدن پر لباس نام کی کوئی شے موجود نہیں تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے اپنی بانہوں کا ہار عاطف کے گلے میں ڈالا اور اپنے کولہوں کو اس کے لن پہ مسلتے ہوئے اس پر جھک گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہاں لوں اسے ۔۔۔۔۔۔۔اس نے عاطف کے کان میں سرگوشی کی ۔۔۔۔۔۔۔ساتھ ہی اپنے کولہوں کا دباؤ لن پر بڑھا دیا ۔۔۔۔۔۔اااااااہ وہیں جہاں کی سیر کرنے کے لیے یہ مسکین کب سے تڑپ رہا ہے ۔۔۔۔۔۔۔عاطف کی لذتوں میں ڈوبی سرگوشی اس کے کان سے ٹکرائی ۔۔۔۔۔۔بالکل نہیں ۔۔۔۔۔۔۔کی سیر نہیں کرپائے گا ۔۔۔۔۔۔یہ اس کی سزا ہے ۔۔۔۔۔۔ہنی مون ہر نئے شادی شدہ جوڑے کا سب سے حسین رومانوی ارمان ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔لیکن آپ ہیں کہ بس بزنس بزنس اور بس بزنس ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے اس کے بھپرے ہوئے لن پر اپنے کولہوں کو ذرا زور سے دبادیا ۔۔۔۔۔۔۔۔او گاڈ میں مر گیا ۔۔۔۔۔۔۔عاطف کے چہرے پر درد کے آثار نمایاں ہوئے ۔۔۔۔۔۔۔عاطی کیا ہوا آپ ٹھیک تو ہیں نہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کا دل دھک دھک کرنے لگا ۔۔۔۔۔۔عاطف نے ہنستے ہوئے اسے اپنی آہنی گرفت میں لے لیا اور اسے لٹا کر لن اس کے پچھلے سوراخ پر رکھ دیا ۔۔۔۔۔۔۔اب بتاؤ سیر کروادوں اسے اس خوبصورت جہان کی ۔۔۔۔۔۔عاطف ہنستے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔۔۔آپ کو جو جی چاہتا وہ کریں لیکن مرنے کی بات دوبارہ مت کیجئے گا ۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی خوبصورت آنکھوں میں نمی دیکھ کر عاطف کے چہرے پر ہوائیاں اڑنے لگیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے ماہم کو اپنے سینے سے لگا لیا ۔۔۔۔۔۔۔آئی ایم ساری ماہم ۔۔۔۔۔۔۔۔وہ اس کی جمالی آنکھوں کو چومتے ہوئے بولا ۔۔۔۔۔۔۔۔اچھا چھوڑو یار یہ بتاؤ ہنی مون پہ کہاں چلنا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف اس کی توجہ بٹانے لگا ۔۔۔۔۔۔۔فار گاڈ سیک عاطی یہ جملہ میں پچاسوں بار سُن چکی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی مترنم ہنسی اتنی دلکش و دلنشین تھی کہ عاطف کا جی چاہتا بس اپنی محبوبہ اپنی جان من ماہم پر فدا ہی ہوجائے ۔۔۔۔۔۔۔اس نے ماہم کو بیڈ لٹاتے ہوئے اپنے تنے ہوئے لن کو اس کی گلاب رو چوت میں ڈال دیا ۔۔۔۔۔۔
دونوں کے بدن کیف آفرین مستی سے لہرانے لگے ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دوسرے سے لذت کشید کرنے کا دل آفرین رومان پرور کھیل ۔۔۔۔۔اس کھیل میں لن چوت میں پیوست ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔لب لبوں میں پیوست ہوتے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔اور بدن بدن میں پیوست ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔ عاطی ہنی مون پہ تمہیں خاص تحفہ دوں گی ۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کی شہوانی خمار میں ڈوبی آواز سن کر عاطی نے لن کو چوت کی گہرائی میں لے جاکر روک دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کیا تحفہ دو گی جان من ۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف ماہم کی آتشی چوت کی سلگتی ہوئی تپش سے لذتوں کے انتہائی پُر لطف جہان کی سیر کررہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔ماہم نے عاطف کا ہاتھ تھام لیا اور اسے لے جا کر اپنے کولہوں کے سوراخ پر رکھ دیا۔۔۔۔۔۔۔یہ والا تحفہ وہ لجائی ہوئی آواز میں بولی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سچ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔سچ ۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف کے جنون نے اس رات کو بے حد خوبصورت بنادیا ۔۔۔۔۔۔۔
لیکن!!!!!!!!!!!!!!! یہ عاطف نہیں عاکف تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔جس شے کا ہم تصور بھی نہیں کرپاتے جب وہ حقیقت بن کر ہماری آنکھوں میں آنکھیں ڈال کر کھڑی ہوجاتی ہے تو ہم اس کا سامنا نہیں کرپاتے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے دل کی کیفیت کا حال بس وہی جانتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاکف اپنی ہوس پوری کرچکا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔اس بار کوئی تاسف کوئی پچھتاوا اسے چھو بھی نہ پایا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔وہ بے خبر سو رہا تھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم کے دل و دماغ کی جنگ میں دونوں ہی جیت گئے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔دکھ۔۔۔۔۔درد۔۔۔۔۔۔۔۔ہر احساس سے وہ بے گانہ ہوچکی تھی ۔۔۔۔۔۔۔۔چارپائی سے اتر کر اس نے اپنا بچا کچا لباس پہنا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔طوفانی بارش تھمنے لگی تھی ۔۔۔۔۔۔۔اس نے اپنا شولڈر بیگ تلاش کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس میں سے نوٹ پیڈ نکالا ۔۔۔۔۔۔۔۔ایک تحریر لکھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔نفرت بھری نگاہ عاکف کے جسم پر ڈالی ۔۔۔۔۔۔۔اور کاغذ اس کے ہاتھ میں تھما دیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔باہر نکل کر اس نے ایک آسمان کی جانب دیکھا اور کار میں بیٹھ کر اندھا دھند ڈرائیونگ کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔کار ایک چٹان سے ٹکرائی اور الٹ کر گہری کھائی میں جا گری ۔۔۔۔۔ماہم کا دلنشین بدن جل کر رکھ ہوگیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عاکف کی آنکھ کھلی تو وہ چند لمحات خلا میں گھورتا رہا ۔۔۔۔۔۔۔۔اس نے باہنے طرف نگاہ دوڑائی تو ماہم کی غیر موجودگی نے اسے دہلا دیا ۔۔۔۔۔۔۔گزری رات اس کی آنکھوں کے سامنے رقص کرنے لگی ۔۔۔۔۔۔۔اسے اپنے ہاتھ میں کسی شے کی موجودگی کا احساس ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عاکف ۔۔۔۔۔۔رات تم نے مجھ سے میرا سب کچھ چھین لیا ۔۔۔۔۔۔۔۔اب میرے زندہ رہنے کا کوئی جواز باقی نہیں رہا ۔۔۔۔۔۔میرا زندہ رہنا بہت سی زندگیوں کو زندہ درگور کردے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔پہلی بار جب تم میری عزت پر حملہ آور ہوئے۔۔۔۔۔۔۔اور اس کے بعد جس طرح تم پچھتائے میں اسے کمزور لمحات کی لغزش سمجھ کر بھول جانا چاہتی تھی ۔۔۔۔۔۔۔لیکن!!!!!!! دوسری بار تم نے میرے سارے ارمان لوٹ لیے ۔۔۔۔۔۔۔۔اور تمہیں کوئی پچھتاوا بھی محسوس نہیں ہوا ۔۔۔۔۔۔۔۔میرے اندر کی عورت جان گئی کہ اب اگر میں زندہ رہتی ہوں تو تا زندگی تمہاری داشتہ بن کررہنا پڑے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میں ایسا ہرگز نہیں ہونے دوں گی ۔۔۔۔۔۔بس ایک وعدہ کرو مجھ سے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔تم ہمیشہ عریشہ کو خوش رکھو گے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اور عاطف کو کبھی اس بات کی خبر نہیں ہونی چاہیے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک حادثہ ہوا اورمیں زندگی کی بازی ہار گئی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔عاطف اس صدمے کو برداشت کرلیں گے ۔۔۔۔۔۔لیکن جو زخم تم نے میری روح پر لگائے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔اسے جان کر ان کی روح ان کے بدن کا ساتھ چھوڑ جائے گی ۔۔۔۔۔۔۔میں تمہارے بھائی کو تم سے زیادہ جانتی ہوں ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔عریشہ کو کبھی دکھ مت دینا ۔۔۔۔۔۔۔۔اگر تم ایسا کرپائے تو شاید میری روح بھی تمہیں معاف کردے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ماہم ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
عاکف بلک بلک کر رو پڑا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بھابھی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔بہت دیر ہوچکی عاکف ۔۔۔۔۔۔دور سے ایک آواز آتی سنائی دی ۔۔۔۔۔۔۔۔اب تمہیں ایک ہی شے کے سہارے باقی کی زندگی گزارنے ہوگی ۔۔۔۔۔۔۔وہ تھا پچھتاوا۔۔۔۔۔۔ختم شد

Share this post


Link to post
Share on other sites

اردو فن کلب کے پریمیم ممبرز کے لیئے ایک لاجواب تصاویری کہانی ۔۔۔۔۔ایک ہینڈسم اور خوبصورت لڑکے کی کہانی۔۔۔۔۔جو کالج کی ہر حسین لڑکی سے اپنی  ہوس  کے لیئے دوستی کرنے میں ماہر تھا  ۔۔۔۔۔کالج گرلز  چاہ کر بھی اس سےنہیں بچ پاتی تھیں۔۔۔۔۔اپنی ہوس کے بعد وہ ان لڑکیوں کی سیکس سٹوری لکھتا اور کالج میں ٖفخریہ پھیلا دیتا ۔۔۔۔کیوں ؟  ۔۔۔۔۔اسی عادت کی وجہ سے سب اس سے دور بھاگتی تھیں۔۔۔۔۔ سینکڑوں صفحات پر مشتمل ڈاکٹر فیصل خان کی اب تک لکھی گئی تمام تصاویری کہانیوں میں سب سے طویل کہانی ۔۔۔۔۔کامران اور ہیڈ مسٹریس۔۔۔اردو فن کلب کے پریمیم کلب میں شامل کر دی گئی ہے۔

Ab pachtaye choot kia jb lun chood gya choot 🤣🤣🤣 

Achi khani thi a short burst

Share this post


Link to post
Share on other sites
6 hours ago, Cutesmile said:

App ko abi be lagta ha k story end nehi hoye wah janab

Ab to pta lag gaya ha 😂😂 

Wasy kuch to missing ha story sa 

Share this post


Link to post
Share on other sites
2 hours ago, Amara said:

Ab to pta lag gaya ha 😂😂 

Wasy kuch to missing ha story sa 

Story me mere khayal me kafi kuch missing ha but writer me larki ko foran he mar dia agar writer chahye tu is story ko kafi agee tak leja sakta tah 

Share this post


Link to post
Share on other sites

سیڈ کر دیا جی آپ نے کیا عمدگی سے سیکس کو انسانی جزبات کی لڑی میں پرویا ہے آپ نے

الفاظ کا انتخاب بھی خوب تھا

اگلی کاوش کا انتظار رہے گا

Share this post


Link to post
Share on other sites
On 1/15/2019 at 10:28 PM, Hardking said:

سیڈ کر دیا جی آپ نے کیا عمدگی سے سیکس کو انسانی جزبات کی لڑی میں پرویا ہے آپ نے

الفاظ کا انتخاب بھی خوب تھا

اگلی کاوش کا انتظار رہے گا

agreed

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...