Jump to content
URDU FUN CLUB
adeeb

میٹھا میٹھا رس

Recommended Posts

’’جا بچہ ! تیرے آلت سے میٹھا اور خوشبو دار رس ٹپکا کرے گا۔‘‘

’’عجیب دعا دی ہے باباجی نے‘‘۔ وہ یہی سوچتا ہوا گھر کو چلا۔ راہ میں اس کی عجب حالت ہوئی۔ آلت سے سچی میں ایک قطرہ ظاہر ہوا، بعد جس کے اسے ایک خوش گوار مہک کے احساس نے بھی گھیر لیا۔ وہ کچھ سمجھ نہ پایا کہ اس کے ساتھ یہ کیا ہو رہا ہے۔

گھر پہنچا تو تھکن کے سبب سے بسترے پر اوندھا ہوتے ہی نیند نے آلیا اور لگا خوابِ خرگوش کے مزے لینے۔

اب تو وہ ایک عجب سوندھی سوندھی مہک میں رچا رہتا۔ ملاقاتی اور یاردوست اس مہک کا دریافت کرتے رہتے لیکن اس سے کچھ جواب نہ بن پڑتا۔ وہ کہتا بھی تو کیا کہتا آخر۔

جب ماں نے اس کے کپڑے دھوئے تو اس نے جانا کہ یہ خوش بو کہاں سے آتی ہے۔ اس کی لنگی پر لگے جا بجا ننھے داغ سب کچھ بتا رہے تھے۔ ماں کو فکر لاحق ہوا کہ بچہ کم زور نہ ہو جائے۔ مگر یہ تردد بھی کہ اس مادے میں سے آخر ایسی عمدہ مہک کا کیا باعث۔

پھر یہ کہ داغ بھی اس طرح کے نہیں جیسے اس کے باپ کے ہوا کرتے ہیں۔ ذہن میں خیال آیا کہیں کوئی کھانے پینے کی شے نہ گرا لی ہو نگوڑے نے، اور اُسے سونگھ کر دیکھا۔ مہک تو ذہن معطر کر دینے والی تھی، چناں چہ اُسے جِیب سے چھو کر ذائقہ لیا۔

مزہ بھی مہک کے مانند بہت بھلا معلوم ہوا۔ ذرا اچھی طرح چاٹا۔ اور پھر یہی سمجھا کہ کوئی کھانے پینے کی چیز ہے جسے لنگی پر گرا لایا ہے اس کا سپوت۔ چناں چہ اس بارے میں استفسار کا سوچ کے اپنے کام میں مشغول ہوئی۔

اب جو وہ بعد کھیل کود کے گھر کو لوٹا تو ماں نے سوال کردیا۔

’’اے ادھر آ ! یہ لنگی پر نشان کیسے ہیں؟ کیا لگایا بول جلدی سے؟‘‘

وہ گڑبڑا گیا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ (جاری)

Share this post


Link to post
Share on other sites

تمام ممبرز فورم پر موجود ایڈز پر ضرور کلک کریں تاکہ فورم کو گوگل کی طرف سے کچھ اررننگ حاصل ہو سکے۔ آپ کا ایک کلک روزانہ فورم کے لیئے کافی ہے

Dear Adeeb,

Bohat Thorra sa likha hai tumne, Lykin choonke tumne isko Continue karne ka bhi likha hai iss liye approve kar raha hooon.

Dekhte hain ke aage aage kia hota hai

Thanks and Waiting for More

Share this post


Link to post
Share on other sites

اس سے جواب نہیں بن پا رہا تھا۔ سوکھتے ہوئے گلے سے اس نے کہا۔ ’’ اماں وہ ۔۔۔۔ وہ ۔۔۔۔ ‘‘

’’ ابے وہ وہ کیا لگا رکھی ہے، بکتا کیوں نہیں ‘‘

وہ روہانسا ہو کر بولا۔ ’’ وہ اماں میری۔۔۔ میری چڑیا سے نکلتا ہے پانی۔‘‘

ماں قدرے حیران ہوئی۔ پہلے تو سمجھ نہ پائی۔ پھر سمجھ لگی تو مبہوت ہو کر لگی تکنے منھ اس کا۔ اک ذرا توقف کے بعد بولی۔

’’ ہے، ہے۔۔ یہ کیا بات ہوئی؟ تیری چڑیا سے ایسا میٹھا پانی نکلے گا کیا ؟ ‘‘

پھر اچانک یہ یاد آنے پر کہ بے خبری میں وہ کیا بول گئی، ذرا گڑبڑائی، اور جلدی سے جملہ ٹھیک کرتے ہوئے بولی۔

’’مم ۔۔۔۔۔ میرا مطلب کہ ایسا مشک دار پانی نکلے گا کیا ؟‘‘

’’اب مجھے کیا پتا اماں۔ بس نکلتا ہے، میں کیا کروں۔‘‘ اس کا لہجہ خجالت آمیز تھا۔

اس کی ماں کو ابھی بھی یقین نہ آتا تھا۔ بالآخر اس نے کہا۔

’’ اچھا اچھا ٹھیک ہے جا ، جا کے اپنا کام کر۔ ‘‘

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

کمرے میں گھپ اندھیرا تھا۔ وہ سو رہا تھا کہ ایک دم اسے کچھ احساس ہوا۔

کوئی اس کے بدن کو چھو رہا تھا۔ اور وہ بھی ٹانگوں کے ناف والے حصے کو۔

پھر اسے یہ بھی معلوم پڑ گیا کہ ناف والے حصے پر چھونے کا اصل مقصد ناڑا کھولنا تھا۔

کوئی ہاتھ ایک ذرا درمیانی رفتار سے اپنے کام میں مصروف تھا۔

اخیر کو ناڑے کا سِرا ہاتھ میں آگیا اور پھر اُس میں کھینچ پیدا ہونے لگی۔

اسے بہت عجیب لگ رہا تھا۔

اس کا ذہن ابھی تک یہی سوچنے میں کُھباہوا تھا کہ آخر یہ ہے کون، جو ایسی حرکت کر رہا ہے۔

گرہ میں سے کھنچتا ہوا آخر ناڑا کھل ہی گیا۔

جو بھی تھا اسے اِس کھینچا تانی کا مزا بہت آیا تھا اور چوں کہ چڑھتی جوانی تھی تو اسے یہ چھیڑ چھاڑ بری نہیں لگ رہی تھی، بل کہ جس جگہ یہ چھیڑ چھاڑ شروع ہوئی تھی، اس سے ہی اُسے اندازہ ہو گیا تھا کہ اُس کے آلت کو چھیڑا جانے والا ہے۔

پھر ہوا بھی یہی۔

اُس ہاتھ نے جوں ناڑا کھولا، ہاتھ اندر گھسا ناف کے بالوں کو انگلیوں سے سہلاتے ہوئے جا آلت پکڑا۔

اس کے بدن میں مستی سے جھرجھری سی پیدا ہوئی، ایک خفیف سے لرزش، جسے اس نے اپنے اندر ہی دبانے کی بھرپور کوشش کی، مگر اس تجربہ کار ہاتھ کو اس کا اندازہ ہو گیا۔

اس لیے وہ فٹا فٹ لنگی سے باہر نکل گیا۔

ہاتھ کے باہر نکل جانے پر اُسے خود پر غصہ آیا کہ وہ کیوں ہِلا۔ اس کا دل کر رہا تھا کہ آنے والا جس مقصد سے آیا ہے وہ اس پر واضح ہو جائے۔ پھر اسے مزا بھی خوب مل رہا تھا۔ اس نے خواہش کی کہ وہ ہاتھ پھر اسے پکڑے۔

اور یہ خواہش اُسی سمے پوری بھی ہو گئی۔

ہاتھ پھر سے شلوار میں گھسا اور اس کے آلت کو جا لیا۔

اب کے اُس ہاتھ کے ساتھ ساتھ اُسے خود بھی محسوس ہوا کہ خاصا لامبا ہو گیا ہے وہ۔

وہ ہاتھ اُسے دھیرے سے اپنی موٹھ میں لیے سہلانے لگا اور اُسے خوب مزا آنے لگا۔

یہ پہلی لذت تھی جو اس کو چڑھتی جوانی میں میسر آرہی تھی۔ نئی لذت میں وہ دیوانہ ہونے کے قریب تھا اور ہولے ہولے لرزنے لگا تھا۔

اُس ہاتھ کو بھی محسوس ہو چکا تھا کہ اس وقت وہ پوری مستی میں ہے، چناں چہ بے خوفی سے اپنا کام کیے جا رہا تھا۔

پھر اسے محسوس ہوا کہ جیسے اس کے آلت کو بوسے دے رہا ہے کوئی۔

اُسے بوسےلینے کی دھیمی دھیمی آواز سنائی دے رہی تھی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

×