Jump to content
URDU FUN CLUB
Sign in to follow this  
Asifa Kamran

اینڈرائیڈ فونز کے مواد کا پتہ چل سکتا ہے

Recommended Posts

جرمنی کی سلامتی سے متعلق محققین کی ایک ٹیم نے اس بات کا پتا چلایا ہے  کہ اگر اینڈروئیڈ فونز کو منجمد کر دیا جائے تو اس کے اندر خفیہ مواد کا  سراغ لگانے میں مدد مل سکتی ہے۔

جرمن ٹیم نے اینڈروئیڈ فونز کے خفیہ سسٹم تک رسائی کے لیے ان فونز کو ایک گھنٹے تک منجمد کیا۔

محققین کو اینڈروئیڈ فونز منجمد کرنے سے ان فونز کی کانٹیکٹ لسٹ، براؤزنگ ہسٹری اور تصاویر تک رسائی مل گئی۔

جرمن محققین کی ٹیم نے فرائیڈرچ الیگزینڈر یونیورسٹی کے بلاگ میں اپنی  تحقیق کے بارے میں بتایا کہ اینڈروئیڈ فونز کے ڈیٹا کو گڈ مڈ کرنے کا سسٹم  ان کے صارفین کے لیے اچھا ہے تاہم قانون نافذ کرنے والے اور فورینزک  کارکنوں کے لیے یہ ڈراؤنے خواب سے کم نہیں ہے۔

فرائیڈرچ الیگزینڈر یونیورسٹی سے تعلق رکھنے والی اس ٹیم کے ارکان ٹیلو  ملر، مائیکل سپریت سنبارت اور فیلکس فریلینگ نے اینڈروئیڈ فونز کو ایک  گھنٹے تک فریزر میں رکھا یہاں تک کہ اس ڈیوائس کا درجۂ حرارت منفی دس ڈگری  سے نیچے گر گیا۔

ٹیم کے ان ارکان کو معلوم ہوا کہ منجمد کیےجانے والے فون کو بیٹری سے  کنیکٹ اور ڈس کنیکٹ کرنے سے اس کا ہینڈ سیٹ غیرمحفوظ موڈ میں چلا جاتا ہے۔

محققین نے ’فراسٹ‘ نامی سافٹ وئیر کے ذریعے اینڈرائیڈ فونز سے ڈیٹا حاصل کر کے اس کا کمپیوٹر پر تجزیہ کیا۔

محققین نے اپنی تحقیق کو سام سنگ گلیکسی نیکسس ہینڈ سیٹ پر آزمایا  کیونکہ یہ ان پہلے فونز میں شامل ہے جو اینڈروئیڈ کا ڈسک اینکرپشن سسٹم  استعمال کرتےہیں۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
Sign in to follow this  

×