Jump to content
URDU FUN CLUB
Sign in to follow this  
hasnain

! جیون ساتھی کے انتخاب میں بوسہ بہت اہم !

Recommended Posts

ایک تازہ تحقیق میں معلوم ہوا ہے کہ بوسہ ہمیں اپنے متوقع شریکِ حیات کے انتخاب میں مدد دیتا ہے۔
سائنسدانوں کا خیال ہے کہ بوسے کے مدد سے لوگ اپنے ممکنہ جیون ساتھی کے ذائقے، بو اور جسمانی فٹنس کا اندازہ لگا سکتے ہیں۔


download.jpg
تحقیق کے مطابق بھوسہ عارضی اور طویل المدمتی تعلق میں جنسی عمل سے پہلے بھی بہت اہم کردار ادا کرتا ہے

برطانیہ کی آکسفرڈ یونیورسٹی کی طرف سے کی گئی اس تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ بوسہ جیون ساتھی کے ساتھ رشتہ برقرار رکھنے میں بھی مدد دیتا ہے۔
تحقیق کے مطابق خواتین لمبے عرصے کے نجی تعلق میں بوسے کو بہت اہمیت دیتی ہیں۔
آکسفورڈ یونیورسٹی کے جنسی تعلقات کے موضوع پر شائع ہونے والے جریدے میں چھپنے والی اس تحقیق میں 900 بالغ افراد کا آن لائن سروے کیا گیا۔
آکسفرڈ یونیورسٹی کے نفسیاتی تجربات کے شعبے سے تعلق رکھنے والے پروفیسر روبن ڈیونبار کہتے ہیں کہ مرد و خواتین کے درمیان تعلق قائم ہونے سے پہلے ایک دوسرے کی جانچ پڑتال کا سلسلہ چلتا ہے۔
"ابتدائی کشش میں چہرہ، جسم اور سماجی اشارے شامل ہو سکتے ہیں۔پھر تعلق میں بہت گہرائی سے جانچ کا مرحہ شروع ہو جاتا ہے اور یہاں بھوسہ بہت اختیار کر لیتا ہے"
پروفیسر روبن ڈیونبار
’ابتدائی کشش میں چہرہ، جسم اور سماجی اشارے شامل ہو سکتے ہیں۔پھر تعلق میں گہرائی سے جانچنے کا مرحلہ شروع ہو جاتا ہے اور یہاں بوسہ بہت اہمیت اختیار کر لیتا ہے۔‘
تحقیق میں یہ بات سامنے آئی کہ جو مرد و خواتین زیادہ پر کشش تھے یا جن کے عارضی جنسی ساتھیوں کی تعداد زیادہ تھی، وہ اپنے ساتھی چننے میں زیادہ محتاط تھے اور وہ بوسے کو بہت زیادہ اہمیت دیتے تھے۔
تحقیق میں کہا گیا ہے کہ اس سے یہ بات ظاہر ہوتی ہے کہ بوسے سے متوقع جیون ساتھی کے پرکھنے میں مدد ملتی ہے۔
تحقیق سے پتہ چلا کہ اگر بوسہ جیون ساتھی کو چننے میں اہم کردار ادا کرتا ہے تو یہ عارضی اور طویل مدمت تعلق میں جنسی عمل سے پہلے بھی بہت اہم کردار ادا کرتا ہے۔

Share this post


Link to post
Share on other sites

اردو فن کلب کے گولڈ  ممبرز اور ماسٹر ممبرز کے لیئے ایک لاجواب تصاویری کہانی ۔۔۔۔۔ایک ہینڈسم اور خوبصورت لڑکے کی کہانی۔۔۔۔۔جو کالج کی ہر حسین لڑکی سے اپنی  ہوس  کے لیئے دوستی کرنے میں ماہر تھا  ۔۔۔۔۔کالج گرلز  چاہ کر بھی اس سےنہیں بچ پاتی تھیں۔۔۔۔۔اپنی ہوس کے بعد وہ ان لڑکیوں کی سیکس سٹوری لکھتا اور کالج میں ٖفخریہ پھیلا دیتا ۔۔۔۔کیوں ؟  ۔۔۔۔۔اسی عادت کی وجہ سے سب اس سے دور بھاگتی تھیں۔۔۔۔۔دو سو سے زائد صفحات پر مشتمل ڈاکٹر فیصل خان کی اب تک لکھی گئی تمام تصاویری کہانیوں میں سب سے طویل کہانی ۔۔۔۔۔کامران اور ہیڈ مسٹریس۔۔۔اردو فن کلب کے  گولڈ اور ماسٹر سیکشن میں  پوسٹ کی جا رہی ہے۔

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now
Sign in to follow this  

×
×
  • Create New...